Sections
< All Topics
Print

01. Ism-e-Giraami [Biography]

✦ SHAIKH MAQBOOL AHMED SALAFI (حفظه اللّٰه) KA TAARUF 

 

✦ Naam-o-waldiyat : 

 

Maqbool Ahmed Salafi Bin Abdul-khalq Faizi Bin Abdul-Baari .

 

✦ Tareekh-o-jaaye paidaiesh : 

 

Sarkari Rocord ke mutabiq 7 / July baroz Jumeraat (1984) Hindustan ke State Bahhar ke Zila Madhubani Dist Andhra Thaari mein paidaiesh hui .

 

✦ Ibtidayi T’aleem :

 

Maktab ki t’aleem Gaon ke Madrasay mein hui, yeh Madrassa to aik bahana tha asal t’aleem waalid sahib jo is Madrasay ke Naib Sadr-ul-Modarreseen aur ‘ilaqay ke M’aroof Khateeb-o-‘Aalime Deen thay ya’ani Abdul-Khaliq Faizi ( رحمه الله ) ke paas hui, ghar pay maar maar ke padhatay thay, Madrassa mein bhi kisi Jama’at mein shareek nahi tha, saari kitaaben Abbu Mohtaram apne paas hi padhatay, jab bahar jane ka khayaal aaya to aik saal ke liye Maktab ki aakhri Jama’at mein shaamil kardiya. 

 

✦ A’ala T’aleem :

 

Mere bade bhai Manzoor-ul-rab Islami ( Motakhrrij Madrasa Islamia Ragho nagar Bhauwara Madhubani, Bihar) Jamia’ Salafia Banaras mein padhnay ke bade shauqeen thay magar yahan un ka dakhla na ho saka to unhon ne apne dil mein mujhe padhanay ki thaan li aur (Sun 1996) mein mujhe leker Banaras pohanche aur Allah ke Fazl-o-karam se doosri Jama’at mein dakhla hogaya. 

 

✦ Meri asal t’aleem Jamia’ Salfiah Banaras se hi hai. 

 

Yahan par Mutawassitah sania se fazeelat awwal tak t’aleem haasil ki. Phir kuch dinon Tadrees ka silsila raha us ke ba’ad jab Ahya-al-Turas Al-Islami Kuwait se bator Dae’e bahaali hogayi to baqa’ida Markazi jam’iat Ahal-e-Hadees Kathmandu Nepal ki Zere nigrani D’awat-o-Tableegh ka fareeza anjam dene laga. Chunke Jamia’ Millia Islamia mein bhi padhnay ka shauq tha aur dakhla ke liye Test imtihan mein paas bhi hogaya magar maali majboori ki wajah se dakhla ki karwai mukammal na kar saka is bina par BA (Hons) Urdu mein correspondence course  kiya aur awwal darja se kamyaab hua. Bihar Board se bhi wastania ta Fazil ki Degree haasil hai. Is ke ‘ilawa  UP board se Farsi mein Munshi-o-Kaamil aur Moulvi paas hon .

 

✦ Jamia’ Salafia aur Asaataza Kiram :

 

Chunke Jamia’ Salafia hi meri t’aleem ka asal markaz hai is liye Waalid giraami ke ba’ad Jamia’ Salafia ke ba’az mere Asaataza Kiram  yeh hain :  

( 1 ) Dr. Raza Ullah Muhammad Idrees Mubarak Poori 

( 2 ) Dr. Muqtada Hassan Azhari 

( 3 ) Dr. Ibrahim Madni 

( 4 ) Sheikh Muhammad Raees Nadvi 

( 5 ) Sheikh Abdusalam Madni 

( 6 ) Sheikh Aziz-ul-Rahman Salafi 

( 7 ) Sheikh Mustaqeem Salafi 

( 8 ) Sheikh As’ad A’azmi 

( 9 ) Sheikh Abu-ul-Qasim Farooqi Salafi 

( 10 ) Sheikh Abdul-Matiin Madni 

( 11 ) Sheikh ‘Ubaidullah Tayyab Makki

( 12 ) Sheikh Muhammad Na’eem Madni 

( 13 ) Sheikh Muhammad Younis Madni 

( 14 ) Sheikh Ahsan Jameel Madni 

( 15 ) Sheikh Saeed Maisoori Madni 

( 16 ) Sheikh Muhammad Hanif Madni 

( 17 ) Sheikh Ali Hussain Salafi 

( 18 ) Sheikh Asghar Ali Imam Mehdi Salafi

 ( 19 ) Sheikh Ahmed Mujtaba Madni 

( 20 ) Sheikh Ehsan Ullah Salafi 

( 21 ) Sheikh Muhammad Yahya Faizi 

( 22 ) Sheikh Abdul-Wahaab Hijazi 

( 23 ) Sheikh Amrullah Rahmani.

 

‘✦ Ilmi Wa D’awati khidmaat :

 

➤ Daurane Taalib ‘Ilmi khitabat wa sahaafat mein achi dilchaspi thi aur Sanvia mein bachon ke Haytia ka Naib Mudeer aur fazeelat saal awwal mein salana Magazine Al manaar ka Editor raha. 

➤ Faraghat ke ba’ad Janakpur Nepal ke aik Idaray ne Tarjumaan ka ijra ke liye mujhe apne Madrasa mein bulaayaa us waqt main Dehli mein Graduation ke Iraday  se tha. Dehli ke qiyam ke douraan aik Madrasay mein t’aleem dainay ke sath pandrah roza Akhbar “Aayinaye Haque” ki Edarat bhi sambhale hua tha magar kuch maali aur gharelu mushkilaat ke sabab mein Janakpur aa gaya, Risala to na nikla magar Tadrees ki shuru’waat kar di. 

➤ Tafseer, Miskatul-Masabeeh Hidaya Al-Nuhoo Insha ki t’aleem di.

➤  Sath hi urdu seekhnay waalon ke liye aik Course urdu ka rakha tha. 

➤ Chand mah ba’ad Madrassa chod ke ghar aa gaya .

➤ Abhi ghar hi tha keh kathamandu se Markazi jam’iat Ahal-e-Hadees Nepal ke Naazim a’ala Sheikh ‘Ata Urrahman Madni ( Sirha Nepal ) ka phone aaya. Unhon ne kaha keh mujhe jam’iat Ahal-e-Hadees Magazine nikalna hai is liye aap mere yahan aayiyae.

➤ Main un ke bulaway pay Markazi jam’iat Ahal-e-Hadees Kathmandu Nepal gaya aur Jamiat Ahya Al-Turas Al Islami kuwait ke Lajna Al-Qarah Al-Hindia se Ta’aqud bhi hogaya. Risala to na nikal saka magar

➤ D’awati kaam achha khasa kiya. Aik Madrasay ka qiyam ‘amal mein laya, bachon ki t’aleem shuru’ ki,

➤  Jummah ki Namaz ka bhi ihtimaam kiya aur ja baja D’awati  Programme rakhay.

➤  Un kaamon mein haath batanay ke liye ✯ Haaji Abdul-Mubeen Sahib ( Saakin kathamandu, Hathi Bin ) aur deegar ahbaab qaabil shukar hain. 

➤ Us waqt Kathmandu se koi Urdu Akhbar ya Jareeda nahi nikalta tha. Main ne himmat karkay tane tanha pandrah Roza Urdu Akhbar “Lauho Qalam”  jaari kiya jo keh Musalmanon ke masail pay tajzia ki shakal mein hua karta tha .

➤ Aap hi likhta, aap hi type karta, aap hi Design karte, aap hi Press se Chhapta, aap hi Bazaar mein farokht karta. 

➤ Mehnat se jaari kiya to kuch log sath hogaye, kisi ne maali ta’awun kiya to kisi ne hausala afzai ki. Ittafaq se un hi dinon Saudi ‘Arab se Jaliyat ( اسلامی دعوہ سنٹر وسط بریدہ القصیم ) ka Viza dastyaab hogaya. Yun kathamandu mein paanch saal D’awati fareeza anjaam dainay ke ba’ad Saudi ‘Arab Bureda Al-Qasem ke Dawah Center aagaya. Yahan teen saal tak khalis Nepali zabaan mein D’awati kaam kiya aur Sekdon Nepali ko Islam mein daakhil karne ka sabab bana. 

Allhamdulillah, Allah Ta’ala hamaaray is kaam ko qubool farmaaye aur aakhirat mein nijaat ka zariy’a banaaye. Ameeen

➤ Teen saal ba’ad Buraidah Al-Qasim se Taif ke Dawah Center se jud gaye, yahan par taqreeban Nou saalon tak D’awati fareeza anjaam diya.

➤ Zameeni satah par D’awat ke sath Social Media par jis qader meri Tahreerein nazar aati hain, is ki ibtida Taif se hi hoti hain. Mustaqil tor par sawaalon ka jawab dainay ke sath sekodon ‘Ilmi wa tahqeeqee Maqalaat likhnay ka mauqa’ mila .

 

✦ Tasnifi khidmaat :

 

Mazaameen to Daur-e-Taalib ‘Ilmi se hi likhta raha hoon, asha’at ka silsila faraghat ke ba’ad shuru’ hua, Hindustan ke ‘ilawa Pakistan-o-Nepal ke Mutaddid Akhbar-o-Jarayd mein mazaameen shaya’ hotay rahay aur aaj bhi ba’az Risalon mein mustaqil tor par mere mazaameen shaya’ hotay hain .

 

✦ Tarjuma-o-Taleef ki m’aloomaat darj zail hain .

 

( 1 ) Islam ka Mu’aashi nizaam aur Jadeed iqtisaadi nazriaat ( ‘Aalmiat ka Maqalah )

( 2 ) Islam aur ‘Aalmgiriat 

( 3 ) Tableeghi Jama’at : t’aaruf-o-tajzia

( 4 ) Ma’ani لا الہ الا اللہ ( Urdu Tarjuma)

( 5 ) Al-aman Al-sani ( Matboo’ Nepali Tarjuma )

( 6 ) Surdawam Al-N’am ( Matboo’ Nepali  Tarjuma )

( 7 ) Fazal Al-Islam ( Nepali Tarjuma )

( 8 ) Ramadaan-ul-Mubarak ke fazail-o-masaail  ( Do martaba asha’at Dehli Maharashtra )

( 9 ) Janaza ke Ahkam-o-masaail

( 10 ) Janaza se muta’aliq sawaal-o-jawaab

( 11 ) Sawaal-o-jawaab ka mukhtasir majmuaa’

( 12 ) Bint-e-Hawa ke masaail ( zair-e-taba’ Mumbai )

( 13 ) Maqalate Maqbool

( 14 ) Umra ka masnoon tareeqa aur us ke ehkaam-o-masaail

( 15 ) Islam mein Zauzain ke haqooq

( 16 ) Tohfaye  Ramazan ( Ba shakal sawaal-o-jawaab )

 

✦ Maujooda khidmaat :

 

Un dinon Taif se muntaqil hokar Jeddah aa gaya hoon aur yahan par Dedh saal se Jeddah  Dawah Center ( Al-Salaamah ) se wabasta hokar D’awati fareeza anjaam day raha hoon. D’awati fareeza ke sath Social Media mere liye aik mustaqil Plate Form hai jahan par rozana logon ke masail ka jawaab deta hoon. Mazaameen-o-Maqalaat likhta hoon is liye D’awat-o-Tableegh ke sath likhnay padhnay ka ‘umdah silsila tahnooz jaari hai. 

 

Allah Ta’ala is mein Barkat nazil farmaaye aur ‘Ilmi kamon ko mere haq mein, walidain ke haq mein, Asatazah aur jumla Moaawineen ke haq mein sadqa-e-Jaria banaaye. Ameeen

 

✯✯✯✯✯✯✯✯✯✯✯✯✯✯

 

 

✦ مقبول احمد سلفی  (حفظه اللّٰه) کا مختصر تعارف ✦

 

✦ نام و ولدیت :

 

مقبول احمد سلفی بن عبدالخالق فیضی بن عبدالباری .

 

✦ تاریخ وجائے پیدائش :

 

سرکاری رکارڈ کے مطابق 7/ جولائی بروز جمعرات 1984 ہندوستان کے صوبہ بہار کے ضلع مدھوبنی کے گاؤں اندھرا ٹھاری میں پیدائش ہوئی ۔

 

✦ ابتدائی تعلیم :

 

مکتب کی تعلیم گاؤں کے مدرسے میں ہوئی ، یہ مدرسہ تو ایک بہانہ تھا اصل تعلیم والد صاحب جو اس مدرسے کے نائب صدرالمدرسین اور علاقے کے معروف خطیب و عالم دین تھے یعنی عبدالخالق فیضی رحمہ اللہ کے پاس ہوئی ، گھر پہ مارمار کے پڑھاتے تھے ، مدرسہ میں بھی کسی جماعت میں شریک نہیں تھا، ساری کتابیں ابومحترم اپنے پاس ہی پڑھاتے، جب باہر جانے کا خیال آیا تو ایک سال کے لئے مکتب کی آخری جماعت میں شامل کردیا۔

 

✦ اعلی تعلیم :

 

میرے بڑے بھائی منظورالرب اسلامی (متخرج مدرسہ اسلامیہ راگھونگر بھوارہ مدھوبنی، بہار) جامعہ سلفیہ بنارس میں پڑھنے کے بڑے شوقین تھے مگر یہاں ان کا داخلہ نہ ہوسکاتو انہوں نے اپنے دل میں مجھے پڑھانے کی ٹھان لی اور سن 1996 میں مجھے لیکر بنارس پہنچے اور اللہ کے فضل وکرم سے دوسری جماعت میں داخلہ ہوگیا۔ میری اصل تعلیم جامعہ سلفیہ بنارس سے ہی ہے ۔ یہاں پر متوسطہ ثانیہ سے فضیلت اول تک تعلیم حاصل کی ۔ پھر کچھ دنوں تدریس کا سلسلہ رہا اس کے بعدجب احیاء التراث الاسلامی کویت سے بطور داعی بحالی ہوگئی تو  باقاعدہ مرکزی جمعیت اہل حدیث کاٹھمانڈو نیپال کی زیرنگرانی دعوت وتبلیغ کا فریضہ انجام دینے لگا۔ چونکہ جامعہ ملیہ اسلامیہ میں بھی پڑھنے کا شوق تھا اور داخلہ کے لئے ٹسٹ امتحان میں پاس بھی ہوگیا مگر مالی مجبوری کی وجہ سے داخلہ کی کاروائی مکمل نہ کرسکا اس بناپر بی اے آنرس(اردو) میں کرس پونڈینس کورس کیا اور اول درجہ سے کامیاب ہوا۔ بہار بورڈ سے بھی وسطانیہ تا فضلیت کی ڈگری حاصل ہے ۔اس کے علاوہ یوپی بورڈ سے فارسی میں منشی وکامل اور مولوی پاس ہوں ۔ 

 

✦ جامعہ سلفیہ اور اساتذہ کرام :

 

چونکہ جامعہ سلفیہ ہی میری تعلیم کا اصل مرکز ہے اس لئے والد گرامی کے بعد جامعہ سلفیہ کے بعض میرے اساتذہ کرام یہ ہیں ۔ 

(1)ڈاکٹر رضاء اللہ محمد ادریس مبارک پوری(2) ڈاکٹرمقتدی حسن ازہری(3) ڈاکٹر ابراہیم مدنی(4) شیخ محمد رئیس ندوی(5) شیخ عبدالسلام مدنی(6) شیخ عزیزالرحمن سلفی(7) شیخ مستقیم سلفی(8) شیخ اسعد اعظمی(9) شیخ ابوالقاسم فاروقی سلفی(10) شیخ عبدالمتین مدنی(11) شیخ عبیداللہ طیب مکی(12) شیخ محمد نعیم مدنی(13) شیخ محمد یونس مدنی(14) شیخ احسن جمیل مدنی(15) شیخ سعید میسوری مدنی(16) شیخ محمد حنیف مدنی(17) شیخ علی حسین سلفی(18) شیخ اصغر علی امام مہدی سلفی(19) شیخ احمد مجتبی مدنی(20) شیخ احسان اللہ سلفی(21) شیخ محمد یحی فیضی(22) شیخ عبدالوہاب حجازی(23) شیخ امراللہ رحمانی

 

✦ علمی ودعوتی خدمات :

 

دوران طالب علمی خطابت و صحافت  میں اچھی دلچسپی تھی اور ثانویہ میں بچوں کے حائطیہ کا نائب مدیر اور فضیلت سال اول میں  سالانہ میگزین المنارکا ایڈیٹر رہا۔فراغت کے بعد جنکپور نیپال کے ایک ادارے نے ترجمان کا اجراء کے لئے مجھے اپنے مدرسہ میں بلایااس وقت میں دہلی میں گریجویشن کے ارادے سے تھا۔ دہلی کے قیام کے دوران ایک مدرسے میں تعلیم دینے کے ساتھ پندرہ روزہ اخبار”آئینہ حق” کی ادارت بھی سنبھالے ہوا تھامگر کچھ مالی اور گھریلو مشکلات کے سبب میں جنکپور آگیا، رسالہ تو نہ نکلا مگر تدریس کی شروعات کردی ۔تفسیر، مشکوہ المصابیح ، ہدایہ النحواور انشاء کی تعلیم دی ۔ ساتھ ہی اردو سیکھنے والوں کے لئے ایک کورس اردو کا رکھاتھا۔ چند ماہ بعد مدرسہ چھوڑ کے گھر آگیا۔ ابھی گھر ہی تھا کہ کاٹھمانڈو سے مرکزی جمعیت اہل حدیث نیپال کے ناظم اعلی شیخ عطاءالرحمن مدنی (سرہا نیپال) کا فون آیا۔ انہوں نے کہاکہ مجھے جمعیت سے اہل حدیث میگزین نکالنا ہے اس لئے آپ میرے یہاں آئیے ۔ میں ان کے بلاوے پہ مرکزی جمعیت اہل حدیث کاٹھمانڈو نیپال گیااور جمعیہ احیاء التراث الاسلامی کویت کے لجنہ القارہ الہندیہ سے تعاقد بھی ہوگیا۔ رسالہ تو نہ نکل سکا مگر دعوتی کام اچھاخاصہ کیا۔ ایک مدرسے کا قیام عمل میں لایا ، بچوں کی تعلیم شروع کی ، جمعہ کی نماز کا بھی اہتمام کیااور جابجا دعوتی پروگرام رکھے۔ ان کاموں میں ہاتھ بٹانے کے لئے حاجی عبدالمبین صاحب(ساکن کاٹھمانڈو،ہاتھی بن) اور دیگر احباب قابل شکر ہیں۔ اس وقت کاٹھمانڈو سے کوئی اردو اخبار یا جریدہ نہیں نکلتا تھا۔ میں نے ہمت کرکے تن تنہا پندرہ روزہ اردواخبار”لوح وقلم” جاری کیاجو کہ مسلمانوں کے مسائل پہ تجزیہ کی شکل میں ہوا کرتا تھا۔ آپ ہی لکھتا، آپ ہی ٹائپ کرتا، آپ ہی ڈیزائن کرتا، آپ ہی پریس سے چھاپتا، آپ ہی بازار میں فروخت کرتا۔ محنت سے جاری کیا تو کچھ لوگ ساتھ ہوگئے ، کسی نے مالی تعاون کیا تو کسی نے حوصلہ افزائی کی ۔ اتفاق سے ان ہی دنوں سعودی عرب سے جالیات (اسلامی دعوہ سنٹروسط بریدہ القصیم ) کا ویزہ دستیاب ہوگیا ۔یوں کاٹھمانڈو میں پانچ سال دعوتی فریضہ انجام دینے کے بعد سعودی عرب بریدہ القصیم کے دعوہ سنٹر آگیا۔ یہاں تین سال تک خالص  نیپالی زبان میں دعوتی کام کیا اور سیکڑوں نیپالی کو اسلام میں داخل کرنے کا سبب بنا ۔ الحمدللہ ، اللہ تعالی ہمارے اس کام کو قبول فرمالے اور آخرت میں نجات کا ذریعہ بنائے ۔آمین

تین سال بعد بریدہ القصیم سے طائف کے دعوہ سنٹر سے جڑ گیا ، یہاں پر تقریبا نوسالوں تک دعوتی فریضہ انجام دیا ۔زمینی سطح پر دعوت کے ساتھ  سوشل میڈیا پر جس قدر میری تحریریں نظر آتی ہیں ، اس کی ابتداء طائف سے ہی ہوتی ہیں ۔ مستقل طور پر سوالوں کا جواب دینے کے ساتھ سیکڑوں علمی و تحقیقی مقالات لکھنے کا موقع ملا۔

 

✦ تصنیفی خدمات: 

 

مضامین تو دور طالب علمی سے ہی لکھتا رہا ہوں ، اشاعت کا سلسلہ فراغت کے بعد شروع ہوا ، ہندوستان کے علاوہ پاکستان و نیپال کے متعدداخبار و جرائد میں مضامین شائع ہوتے رہےاور آج بھی بعض رسالوں میں مستقل طور پر میرے مضامین شائع ہوتے ہیں ۔ 

 

✦ ترجمہ و تالیف کی معلومات درج ذیل ہیں ۔

 

(1) اسلام کا معاشی نظام اور جدید اقتصادی نظریات(عالمیت کا مقالہ)

(2) اسلام اور عالمگیریت

(3) تبلیغی جماعت : تعارف و تجزیہ

(4) معنی لاالہ الا اللہ (اردوترجمہ)

(5) الامان الثانی (مطبوع نیپالی ترجمہ)

(6) سردوام النعم (مطبوع نیپالی ترجمہ)

(7) فضل الاسلام (نیپالی ترجمہ)

(8) رمضان المبارک کے فضائل ومسائل(دومرتبہ اشاعت دہلی ومہاراشٹرا)

(9)جنازہ کے احکام ومسائل

(10) جنازہ سے متعلق سوال وجواب

(11) سوال وجواب کا مختصر مجموعہ

(12) بنت حوا کے مسائل (زیرطبع ممبئی)

(13) مقالات مقبول

(14) عمرہ کا مسنون طریقہ اور اس کے احکام ومسائل

(15) اسلام میں زوجین کے حقوق

(16) تحفہ رمضان (بشکل سوال وجواب)

 

✦ موجودہ خدمات :

 

ان دنوں طائف سے منتقل ہوکر جدہ آگیا ہوں اور یہاں پر ڈیڑھ سال سے جدہ دعوہ سنٹر(السلامہ) سے وابستہ ہوکر دعوتی فریضہ انجام دے رہا ہوں ۔ دعوتی فریضہ کے ساتھ سوشل میڈیا میرے لئے ایک مستقل پلیٹ فارم ہے جہاں پر روزانہ لوگوں کے مسائل کا جواب دیتا ہوں ۔ مضامین ومقالات لکھتا ہوں اس لئے دعوت وتبلیغ کے ساتھ لکھنے پڑھنے کا عمدہ سلسلہ تاہنوز جاری ہے ۔ اللہ تعالی اس میں برکت نازل فرمائے اور علمی کاموں کو میرے حق میں ، والدین کے حق میں ، اساتذہ اور جملہ معاونین کے حق میں صدقہ جاریہ بنائے ۔ آمین

 

✯✯✯✯✯✯✯✯✯✯✯✯✯✯

 

 

Table of Contents