Sections
< All Topics
Print

03. AHMIYAT TAWHEED WA FAZAIYL [The importance & merits of Tawheed]

1. Tawheed Islam ka sabse bara rukn : 

Islam ka sabse bara satoon aur rukn Tawheed hai- kisi insaan ke liye is waqt tak islam mein dakhil hona mumkin nahi jab tak wo tawheed ki gawaahi na den- aur jab tak tawheed ka iqrar aur uske elawa baqi tamam cheezon ki nafi na kar le.

Muhammad Rasool Allah(ﷺ) ne farmaaya hai:

((شَہَادَۃٌ اَنْ لَا اِلٰہَ اِلَّا اللّٰہُ، وَاَنَّ مُحَمَّدً رَّسُوْلَ اللّٰہِ، وَاِقَامِ الصَّلَاۃِ، وَاِیْتَائِ الزَّکاۃِ، وَصَوْمِ رَمَضَانَ، وَحِجُّ الْبَیْتِ۔))

“Islam ki bunyaad 5 cheezon par hai: is baat ki gawaahi dena keh Allah Ta’alaa ke elawa koi mabood-e-bar haqq nahi aur Muhammad(ﷺ) Us ke Rasool hain- aur Namaz qaym karna, zakat dena, Ramazan ke roze rakhna, aur Baitullah ka Hajj karna.”

[Bukhari : & Muslim]

2. Tawheed sabse ahm aur pehle wajib:

Isay tamam a’maal par awalliyat hasil hai- aur apni azeem ul shaan manzilat aur intehai ahmiyat ki wajha se tamam ahm umoor par sabqat rakhti hai- tawheed ki dawat sabse pehli dawat hai- Muhammad (ﷺ) ne jab Maaz bin Jabal (ﷺ) ko Yemen bheja tou Aap(ﷺ) ne farmaaya: “Tum Ahle kitaab ki ek qoum ke paas ja rahe ho- sabse pehle unhe ‘لاإلہ إلا اللّٰہ” ke iqrar ki dawat dena.“

3. Tawheed aur Qubooliyat A’maal:

Tawheed ke baghair ibadaat qubool nahi hoteen – Ibadat ke sahih hone ke liye tawheed ahm tareen shart hai- ibadat ko us waqt tak ibadat nahi kaha jasakta jab tak us mein tawheed na ho- jese namaz ko us waqt tak namaz nahi kaha jasakta jab tak usay paakizgi ke sath ada na kiya jae- jab us mein shirk dakhil hojata hai tou ibadat tabah o barbad hojati hai- jese keh agar taharat ki halat mein koi hadas paish ajae tou taharat baqi nahi rehti- tawheed ke baghair ibadat shirk banjati hai- jis ki wajha se amal tabah o barbad hojate hain aur is amal ka karne wala hamesha hamesha ke liye jahannumi qarar paata hai.

4. Tawheed duniya o akhirat mein aman o hidayat ka sabab:

Iski daleel Allah Ta’alaa ka ye farmaan hai:

﴿اَلَّذِیْنَ اٰمَنُوْا وَ لَمْ یَلْبِسُوْٓا اِیْمَانَہُمْ بِظُلْمٍ اُولٰٓئِکَ لَہُمُ الْاَمْنُ وَہُمْ مُّہْتَدُوْنَ﴾[الأنعام:۸۲]

“Jo log imaan rakhte hain aur apne imaan ko shirk ke saat makhloot nahi karte- aison hi ke liye aman hai aur wohi raah-e-rast par chal rahe hai.”

Yahan par zulm se murad shirk hai, jese ke Rasool Allah() ne wazeh kiya hai.

Imaam ibn Katheer (رحمہ اللّٰہ ) farmaate hain:

“Yehi wo log hain jo sirf Aik Allah Wahdahu lashareek ki ibadat baja late rahe- aur Allah ke sath kisi bhi cheez ko shareek nahi thehraya- ye log qayamat ke din amal mein honge aur duniya aur akhirat mein raah hidayat par honge.”

Chunacheh jo koi tawheed ko poori tarha se baja laega; iske liye poora poora aman aur bharpur hidayat hogi aur baghair kisi azab ke jannat mein dakhil hovjaega- shirk sabse bara zulm hai jabke tawheed sabse bara adl hai.

5. Tawheed Jannat mein dakhilay ka sabab:

Jannat mein dakhil hone aur jahannum ke azab se najaat paane ka bunyadi sabab tawheed hi hai- Muhammad Rasool Allah(ﷺ) ne farmaaya:

((مَنْ قَالَ: اَشْہَدُ اَنْ لَّا اِلٰہَ اِلَّا اِلَّا اللّٰہُ وَحْدَہُ لَا شَرِیْکَ لَہُ، وَاَنَّ مُحَمَّدًا عَبْدُہٗ وَرَسُوْلُہٗ وَاَنَّ عِیْسٰی عَبْدُ اللّٰہِ وَرَسُوْلَہُ وَکَلِمَتُہُ اَلْقَاہَا إِلٰی مَرْیَمَ وَرُوْحٌ مِنْہُ وَاَنَّ الْجَنَّۃَ حَقٌّ وَاَنَّ النَّارَ حَقٌّ اَدْخَلَہُ اللّٰہُ الْجَنَّۃَ عَلٰی مَا کَانَ مِنَ الْعَمَلِ۔))
[متفق علیہ]

“Jo is baat ka qael hojae keh   Allah Ta’alaa ke sivae koi mabood-e-bar haq nahi aur Muhammad (ﷺ) Us ke bande aur Us ke Rasool hain aur Esa (علیہ السلام) uske bande aur Rasool hain aur kalimah hai jo Us ne Maryam (علیہ السلام) ki tarf alqaa kiya tha aur Rooh Allah hain aur ye keh jannat haqq hai aur dozaq haqq hain; tou Allah Ta’alaa usay jannat mein dakhil karega, khwah uske a’maal kaise bhi ho.”

Neez Muhammad Rasool Allah(ﷺ) ne ye bhi farmaaya hai:

“Beshak jo insaan Allah Ta’alaa ki raza mandi ke liye “lailaha illallah” ka iqraar kare Allah Ta’alaa ne us par jahannum ki aag ko haraam kardiya hai.”

6. Tawheed Duniya aur Akhirat ki takleef se najaat ka sabab:

Allamah ibn Qayyim (رحمہ اللہ ) farmaate hain:

“Tawheed is ke doston aur dushmanon ko khouf se najaat dilane waali hai.”

(i) Dushmaanon ke mutaliq:

Pus tawheed Allah ke dushmaanon ko bhi duniya ki takleef aur sakhtiyon se najaat dilane ka sabab hai- Allah ta’aala ka farmaan: 

﴿فَاِذَا رَکِبُوْافِی الْفُلْکِ دَعَوُا اللّٰہَ مُخْلِصِیْنَ لَہُ الدِّیْنَ فَلَمَّا نَجّٰہُمْ اِلَی الْبَرِّ اِذَا ہُمْ یُشْرِکُوْنَ﴾[العنکبوت:۶۵]

“Pus wo log jab kashtiyon mein sawar hote hain toh Allah Ta’alaa hi ko pukaarte hain Is ke liye ibadat ko khalis karke ; phir jab Woh unhe khushki ki tarf bacha laata hai  tou usi waqt shirk karne lagte hain.”

(ii) jahan tak doston ka ta’aluq hai:

Toh unhe duniya aur akhirat ki taklif aur sakhtiyon se najaat deta hai- ye Allah Ta’alaa ke bandon mein iski sunnat hai- pus tawheed jese koi cheez nahi jisse sakhtyon ka muqaabilah kiya jasake- yehi wajha hai keh masaiyb ki duaaon mein Allah Ta’alaa ki tawheed paee jaati hai- jese ke Yunus (علیہ السلام) ki dua : jab koi bhi pareshan-e-haal is dua ke sath Allah ke samne dua mangta hai toh Allah Ta’alaa us tawheed keh sabab uski pareshaaniyon ka azalah karte hain-

    Insaan ko pareshaaniyon aur mushkilat se do chaar karne waali sabse barhi musibat shirk ki bemaari hai- isse najaat sirf tawheed ki badoulat hi mumkeen hai- tawheed hi tamam maqhluq ke liye haqeeqi panha gaah ar unke liye mazboot qal’ah aur unki haqeeqi madad hai.

7. Jinnat aur insaan ko peda karne ki hikmat; Tawheed :

Allah Ta’alaa farmaate hain:

﴿وَمَا خَلَقْتُ الْجِنَّ وَالْاِنسَ اِلَّا لِیَعْبُدُوْنِ﴾[الذاریات: ۵۶]

“Aur Mein ne jinn aur insaan ko sirf apni ibadat ke liye peda kiya hai.”

Ibadat ke liye yani Allah Ta’alaa ki tawheed bajlane ke liye.

Pus jitne bhi Rasool bheje gae aur jitni bhi kitaaben nazil  ki gaen aur jitne bhi Allah Ta’alaa ki tarf se sharaiyaten aen aur jitni bhi makhluqaat peda ki gae un sab ka maqsad ye tha keh tamam makhluqaat ko chorkar sirf aik Allah ta’aala ki tawheed bajlae jae.

Note: Tawheed ke jumla fazaiyl o fawaid mein se ye bhi hai keh Allah ta’aala qayamat ke din tamam makhluqaat ke samne usay najaat ata karen ge.

Rasool Allah (ﷺ) ne farmaya keh : “ Qayamat ke din pori kainat ke samne ek shakhs ko bulaya jaega aur uske samne uske 99 daftar(registers) buraiyon ke rakhdiye jaenge- har daftar itna lamba chorha hoga keh jahan tak nazar kaam karti hai- magar usay kaha jaega… “tumhari ek neki hamare paas mehfooz hai tum par aj zulm nahi kiya jaega , us aik kagaz ka purza nikala jaega jis par likha hoga: “la ilaha illallahu”. Gunaah gaar banda arz karega: “Ya Allah itne bare bare daftaron ke muqable mein ek kagaz ke purze ki kiya haisyat hai?”

Jawab milega keh: “aj tujh par zarra bhar zulm na hoga – chunacheh wo bare bare daftar tarazoo ke ek palre mein aur kagaz ka wo purza dosre palre mein rakhkar jab wazn kiya jaega tou “La ilaha illallahu” ke kagaz wala palra bhari hojaega.

[Tirmidhi]

Anas(رضی اللہ عنہ) kehete hai keh: mein ne Rasool Allah(ﷺ) ko farmate suna :

(قَالَ اللّٰہُ تَعَالٰی یَابْنَ اٰدَمَ لَوْ اَتَیْتَنِیْ بِقُرَابِ الْاَرْضِ خَطَایَا ثُمَّ لَقِیْتَنِیْ لَا تُشْرِکُ بِیْ شَیْئًا لَاَتَیْتُکَ بِقُرَابِہَا مَغْفِرَۃً)

“Allah Ta’aala ne farmaya hai keh Ae adam! Agar tu mere paas gunaahon se pori zameen bhar kar le aa, phir usme shirk na ho tou mein usi miqdar me bakhshish tere paas le aounga.”

[Tirmidhi]

*Abu sayed kudri (رضی اللہ عنہ) Rasool Allah(ﷺ) se bayan karte hain keh janab Musa (علیہ السلام) ne Allah Ta’alaa se arz kiy: “Ae mere Rabb! Mujhe aisi cheez bata jis se mein teri yaad karun aur tujhse dua kiya karun.” Allah Ta’alaa ne farmaaya:” Ae Musa (علیہ السلام) ! La ilaha illallahu parha kar-” Janab Musa (علیہ السلام) ne arz ki keh:” Ae mere Rab! Usay tou tere sab bande parhte hain” – Allah Ta’alaa ne farmaaya : “Ae Musa (علیہ السلام) ! Siwae mere agar saaton asmaan aur  unke bashinde aur saaton zameenen, tarazo ke aik palre mein rakhdiye jae aur dosre palre mein sirf ‘la ilaha illallahu’  wala palra bhari hoga-

[Is hadees ko Ibn hibban aur hakim ne riwayat kiya hai aur hakim ne isko sahih qaraar diya hai aur imaam Tirmidhi rahimuhullah kehte hain keh ye hadees hasan hai]

Bukhari aur Muslim mein: Sayiduna Itban (رضی اللہ عنہ) se riwayat hai keh Rasool Allah(ﷺ) ne farmaaya:

’’فَاِنَّ اللّٰہَ حَرَّمَ عَلَی النَّارِمَنْ قَالَ: لَآ اِلٰہَ اِلَّا اللّٰہُ یَبْتَغِیْ بِذٰلِکَ وَجْہَ اللّٰہِ

“Jo shakhs Allah Ta’alaa ki raza ke liye “la ilaha illallah” ka iqraar kerta hai tou Allah Ta’alaa uspar dozakh ke azab ko haraam kardeta hai.”

REFERENCE:
KITAAB “TAWHEED MUYASSAR” 
BY: “ABDULLAH BIN AHMAD AL HAWAIL”
03 / 50 Sharah Kitaab Al Tawheed Class 02 Part 01

The importance & merits of Tawheed:

 

1) Tawheed is the greatest pillar of the five pillars of Islam, and it is not possible that one can become Muslim without singling out Allaah (in all three types), and approving his worship to Allaah alone, and denying all false deities.

2) Tawheed is the greatest of all tasks, and it is the first of all duties. It comes before all deeds due to its great status, and it is the first thing that we shall call others to, the Prophet Salla Allaahu Alayhi Wa Sallam said to Moaz when he sent him to Yemen: (You are heading to people of the book “Christians”, let it be that the first thing you call them to is to single out Allaah.)

3) All acts of worship are unaccepted without Tawheed; it is the condition of its acceptance & the worship isn’t called worship unless Tawheed is involved just as the prayers aren’t called prayers unless Wudu’u (purification) is involved. Worship without Tawheed becomes Shirk (Polytheism), damages all the deeds, and causes the person to be of the dwellers of fire.

4) Tawheed is the reason for security and guidance in the dunya (this worldly life) & in the Akhira (the hereafter), and the proof of that from the Quran is:

اَلَّذِیْنَ اٰمَنُوْا وَ لَمْ یَلْبِسُوْٓا اِیْمَانَہُمْ بِظُلْمٍ اُولٰٓئِکَ لَہُمُ الْاَمْنُ وَہُمْ مُّہْتَدُوْنَ﴾[الأنعام:۸۲]﴿

Ibn Kathir (The Quran interpreter) said: (The meaning of this verse is that those who devoted all acts of worship to Allaah alone “according to the Quran and Sunnah”, without associating any partners to him are the secured ones on the Day of Recompense, and are well guided in this life and in the hereafter. Who meets Allaah with pure Tawheed is offered pure security and pure guidance. Shirk is the greatest oppression, and Tawheed is the greatest justice.)

5) Tawheed is the reason for entering Janna (Heaven), and it is a reason for being saved from hell-fire. The prophet Salla Allaahu Alayhi WA Sallam said: (Allaah has prohibited the fire from burning whoever says “La Ilaha Illa Allaah” with devotion.)

6) Tawheed is salvation from the distress of the dunya (this life) and Akhira (hereafter).

It is those who believe (in the Oneness of Allah and worship none but Him Alone) and confuse not their belief with Zulm (wrong i.e. by worshipping others besides Allah), for them (only) there is security and they are the guided.

Ibn Ul Qayyim (a great Muslim scholar) said: (Tawheed is the helper of both its enemies and its friends).

As for its enemies: It is the salvation of the distresses and hardships of this life. And the proof of that is:

And for its friends: It is the salvation of the distresses and hardships of this life and the hereafter. There is nothing that fights hardship and distress like Tawheed does. When Prophet Yunes was swallowed by the whale he was not saved from that distress until he said: (La Ilaha Illa Anta Subhanak Inny Kuntu Min ath’thalimeen), and that is when Allaah commanded the whale to spit him out to the land, only after he declared that there is no God other than Allaah.

And when they embark on a ship, they invoke Allah, making their Faith pure for Him only, but when He brings them safely to land, behold, they give a share of their worship to others.

7) Tawheed is the wisdom behind the creation of mankind and jinn. Allaah says in the Quran:

– Not a single prophet or messenger was sent, nor were the books revealed, nor were the laws obligated on mankind except that Allaah should be singled out and should be worshipped alone.

 

 

REFERENCE:
BOOK: “THE TAWHEED MADE EASY “

 

 

اہمیت توحید و فضائل

۱۔ توحید اسلام کا سب سے بڑا رکن:

اسلام کا سب سے بڑا ستون اوررکن توحید ہے۔ کسی انسان کے لیے اس وقت تک اسلام میں داخل ہونا ممکن نہیں جب تک وہ توحیدکی گواہی نہ دے۔اورجب تک توحید کااقراراور اس کے علاوہ باقی تمام چیزوں کی نفی نہ کرلے۔

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ہے:

’’اسلام کی بنیاد پانچ چیزوں پر ہے:

((شَہَادَۃٌ اَنْ لَا اِلٰہَ اِلَّا اللّٰہُ، وَاَنَّ مُحَمَّدً رَّسُوْلَ اللّٰہِ، وَاِقَامِ الصَّلَاۃِ، وَاِیْتَائِ الزَّکاۃِ، وَصَوْمِ رَمَضَانَ، وَحِجُّ الْبَیْتِ۔))

’’ اس بات کی گواہی دینا کہ اللہ تعالیٰ کے علاوہ کوئی معبود برحق نہیں اور محمد صلی اللہ علیہ وسلم اللہ کے رسول ہیں، اور نماز قائم کرنا،زکوٰۃ دینا، رمضان کے روزے رکھنا، اور بیت اللہ کا حج کرنا۔‘‘(متفق علیہ)

۲۔توحید سب سے اہم اور پہلا واجب:

توحید سب سے اہم اور پہلا واجب ہے۔ اسے باقی تمام اعمال پر اولیت حاصل ہے۔ اوراپنی عظیم الشان منزلت اور انتہائی اہمیت کی وجہ سے تمام اہم امور پر سبقت رکھتی ہے۔ توحید کی دعوت سب سے پہلی دعوت ہے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے حضرت معاذ رضی اللہ عنہ کو جب یمن بھیجا تو آپ نے فرمایا:

’’تم اہل کتاب کی ایک قوم کے پاس جارہے ہو۔ سب سے پہلے انہیں لاإلہ إلا اللّٰہ کے اقرار کی دعوت دینا۔‘‘ ایک روایت میں ہے: ’’سب سے پہلے اس

بات کی گواہی دینا کہ وہ اللہ تعالیٰ کی توحید بجالائیں۔‘‘(متفق علیہ)

۳۔ توحید اورقبولیت اعمال:

توحید کے بغیر عبادات قبول نہیں ہوتیں۔ عبادات کے صحیح ہونے کے لیے توحید اہم ترین شرط ہے۔عبادت کو اس وقت تک عبادت نہیں کہا جاسکتا جب تک اس میں توحید نہ ہو۔جیسے نماز کو اس وقت تک نماز نہیں کہا جاسکتا جب تک اسے پاکیزگی کے ساتھ ادا نہ کیا جائے۔ جب اس میں شرک داخل ہوجاتا ہے تو عبادت تباہ وبرباد ہوجاتی ہے۔جیسا کہ اگر طہارت کی حالت میں کوئی حدث پیش آجائے تو طہارت باقی نہیں رہتی۔ توحید کے بغیر عبادت شرک بن جاتی ہے۔ جس کی وجہ سے عمل تباہ و برباد ہوجاتا ہے۔اور اس عمل کے کرنے والا ہمیشہ ہمیشہ کے لیے جہنمی قرار پاتا ہے۔

۴۔ توحید دنیا و آخرت میں امن و ہدایت کا سبب:

اس کی دلیل اللہ تعالیٰ کا یہ فرمان ہے:

﴿اَلَّذِیْنَ اٰمَنُوْا وَ لَمْ یَلْبِسُوْٓا اِیْمَانَہُمْ بِظُلْمٍ اُولٰٓئِکَ لَہُمُ الْاَمْنُ وَہُمْ مُّہْتَدُوْنَ﴾[الأنعام:۸۲]

’’جو لوگ ایمان رکھتے ہیں اور اپنے ایمان کو شرک کے ساتھ مخلوط نہیں کرتے۔ ایسوں ہی کے لئے امن ہے اور وہی راہ راست پر چل رہے ہیں۔‘‘

یہاں پر ظلم سے مراد شرک ہے، جیسا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے واضح کیا ہے۔[1]

[1] بخاری ۲/۴۸۴؛عن عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ۔ آیت میں یہاں ظلم سے مراد شرک ہے، جیسا کہ ترجمہ سے واضح ہے۔ حدیث میں آتا ہے کہ جب یہ آیت نازل ہوئی تو صحابہ کرام رضی اللہ عنہم نے ظلم کا عام مطلب(کوتاہی، غلطی، گناہ اور زیادتی وغیرہ)کوسمجھا، جس سے وہ پریشان ہوگئے اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں آکر کہنے لگے: یارسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم! ہم میں سے کون شخص ایسا ہے جس نے ظلم نہ کیا ہو، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:’’ اس ظلم سے مراد وہ ظلم نہیں جو تم سمجھ رہے ہو بلکہ اس سے مراد شرک ہے جس طرح حضرت لقمان علیہ السلام نے اپنے بیٹے کو کہا:﴿اِنَّ الشِرْکَ لَظُلْمٌ عَظِیْمٌ﴾(لقمان: ۱۳) یقینا شرک ظلم عظیم ہے۔‘‘]

امام ابن کثیر رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں:

’’یہی وہ لوگ ہیں جو صرف ایک اللہ وحدہ لاشریک کی عبادت بجالاتے رہے۔ اوراللہ کے ساتھ کسی بھی چیز کو شریک نہیں ٹھہرایا۔یہ لوگ قیامت کے دن امن میں ہوں گے اوردنیاو آخرت میں راہ ہدایت پر ہوں گے۔‘‘

چنانچہ جو کوئی توحید کو پوری طرح سے بجالائے گا؛ اس کے لیے پورا پورا امن اور بھر پور ہدایت ہوگی اور بغیر کسی عذاب کے جنت میں داخل ہوجائے گا۔ شرک سب سے بڑا ظلم ہے جب کہ توحید سب سے بڑا عدل ہے۔

۵۔ توحید جنت میں داخلے کا سبب:

جنت میں داخل ہونے اور جہنم کے عذاب سے نجات پانے کابنیادی سبب توحیدہی ہے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:

((مَنْ قَالَ: اَشْہَدُ اَنْ لَّا اِلٰہَ اِلَّا اِلَّا اللّٰہُ وَحْدَہُ لَا شَرِیْکَ لَہُ، وَاَنَّ مُحَمَّدًا عَبْدُہٗ وَرَسُوْلُہٗ وَاَنَّ عِیْسٰی عَبْدُ اللّٰہِ وَرَسُوْلَہُ وَکَلِمَتُہُ اَلْقَاہَا إِلٰی مَرْیَمَ وَرُوْحٌ مِنْہُ وَاَنَّ الْجَنَّۃَ حَقٌّ وَاَنَّ النَّارَ حَقٌّ اَدْخَلَہُ اللّٰہُ الْجَنَّۃَ عَلٰی مَا کَانَ مِنَ الْعَمَلِ۔))
[متفق علیہ]

’’جو اس بات کا قائل ہو جائے کہ اللہ تعالی کے سوا کوئی معبودبرحق نہیں اور محمد(صلی اللہ علیہ وسلم) اس کے بندے اور اس کے رسول ہیں اور عیسیٰ علیہ السلام اللہ کے بندے اور اس کے رسول اور کلمہ ہیں جو اس نے مریم علیہا السلام کی طرف القاء کیا تھا اور روح اللہ ہیں اور یہ کہ جنت حق ہے اور دوزخ حق ہے؛ تو اللہ تعالیٰ اسے جنت میں داخل کریں گے، خواہ اس کے اعمال کیسے بھی ہوں۔‘‘

نیز رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے یہ بھی فرمایاہے:

’’بیشک جو انسان اللہ تعالیٰ کی رضامندی کے لیے لاَ اِلٰہَ اِلَّا اِلَّا اللّٰہ کا اقرار کرے اللہ تعالیٰ نے اس پر جہنم کی آگ کو حرام کردیا ہے۔‘‘
[متفق علیہ]
 

۶۔ توحید دنیا و آخرت کی تکالیف سے نجات کا سبب: 

علامہ ابن قیم رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں:

’’ توحید اس کے دوستوں اور دشمنوں کو خوف سے نجات دلانے والی ہے۔‘‘

الف: دشمنوں کے متعلق: پس توحید اللہ کے دشمنوں کو بھی دنیا کی تکالیف اور سختیوں سے نجات دلانے کا سبب ہے۔ اللہ تعالیٰ کا فرمان ہے:

﴿فَاِذَا رَکِبُوْافِی الْفُلْکِ دَعَوُا اللّٰہَ مُخْلِصِیْنَ لَہُ الدِّیْنَ فَلَمَّا نَجّٰہُمْ اِلَی الْبَرِّ اِذَا ہُمْ یُشْرِکُوْنَ﴾
[العنکبوت:۶۵]

’’پس جب وہ لوگ کشتیوں میں سوار ہوتے ہیں تو اللہ تعالیٰ ہی کو پکارتے ہیں اس کے لئے عبادت کو خالص کرکے؛ پھر جب وہ انہیں خشکی کی طرف بچا لاتاہے تو اسی وقت شرک کرنے لگتے ہیں۔‘‘

ب: جہاں تک دوستوں کا تعلق ہے:تو انہیں دنیاو آخرت کی تکالیف اورسختیوں سے نجات دیتا ہے۔یہ اللہ تعالیٰ کے بندوں میں اس کی سنت ہے۔ پس توحید جیسی کوئی چیز نہیں جس سے سختیوں کا مقابلہ کیا جاسکے۔یہی وجہ ہے کہ مصائب کی دعاؤں میں اللہ تعالیٰ کی توحید پائی جاتی ہے۔ جیساکہ یونس علیہ السلام کی دعا؛جب کوئی بھی پریشان حال اس دعا کے ساتھ اللہ کے سامنے گریہ و زاری کرتا ہے تو اللہ تعالیٰ اس توحید کے سبب اس کی پریشانیوں کا ازالہ کرتے ہیں۔

انسان کو پریشانیوں اورمشکلات سے دو چار کرنے والی سب سے بڑی مصیبت شرک کی بیماری ہے۔ اس سے نجات صرف توحید کی بدولت ہی ممکن ہے۔توحید ہی تمام مخلوق کے لیے حقیقی پناہ گاہ اوران کے لیے مضبوط قلعہ اوران کی حقیقی مددہے۔

۷۔جنات اور انسانوں کے پیدا کرنے کی حکمت توحید:

اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں:

﴿وَمَا خَلَقْتُ الْجِنَّ وَالْاِنسَ اِلَّا لِیَعْبُدُوْنِ﴾
[الذاریات: ۵۶]

’’اور میں نے جن اور انسان کو صرف اپنی عبادت کے لیے پیدا کیا ہے۔‘‘

عبادت کے لئے:… یعنی اللہ تعالیٰ کی توحید بجا لانے کے لیے۔

پس جتنے بھی رسول بھیجے گئے،اور جتنی بھی کتابیں نازل کی گئیں اور جتنی بھی اللہ تعالیٰ کی طرف سے شریعتیں آئیں اور جتنی بھی مخلوقات پیدا کی گئیں ان سب کا مقصد یہ تھا کہ تمام مخلوقات کو چھوڑ کر صرف ایک اللہ تعالیٰ کی توحید بجالائی جائے۔

ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

[نوٹ]:

…توحید کے جملہ فضائل وفوائد میں سے یہ بھی ہے کہ اللہ تعالیٰ قیامت کے دن تمام مخلوق کے سامنے اسے نجات عطا کریں گے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ:’’ قیامت کے دن پوری کائنات کے سامنے ایک شخص کو بلایا جائے گا اور اس کے سامنے اُس کے ۹۹ دفتر[رجسٹر]برائیوں کے رکھ دیئے جائیں گے۔ ہر دفتر اتنا لمبا چوڑا ہو گا کہ جہاں تک نظر کام کرتی ہے…مگر اسے کہا جائے گا…: ’’تمہاری ایک نیکی ہمارے پاس محفوظ ہے تم پر آج ظلم نہیں کیا جائے گا، اس کا ایک کاغذ کا پرزہ نکالا جائے گا جس پر لکھا ہو گا:’’لَا اِلٰہَ اِلَّا اللّٰہُ ‘‘ گناہ گار بندہ عرض کرے گا کہ یااللہ اتنے بڑے بڑے دفتروں کے مقابلے میں ایک کاغذ کے پرزے کی کیا حیثیت ہے؟ جواب ملے گا کہ آج تجھ پر ذرہ بھر ظلم نہ ہو گا۔ چنانچہ وہ بڑے بڑے دفتر ترازو کے ایک پلڑے میں اور کاغذ کا وہ پرزہ دوسرے پلڑے میں رکھ کر جب وزن کیا جائے گا تو لَا اِلٰہَ اِلَّا اللّٰہُ کے کاغذ والا پلڑا بھاری ہو جائے گا۔‘‘(ترمذی)۔

٭ سیدنا انس رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو یہ فرماتے ہوئے سنا ہے:(قَالَ اللّٰہُ تَعَالٰی یَابْنَ اٰدَمَ لَوْ اَتَیْتَنِیْ بِقُرَابِ الْاَرْضِ خَطَایَا ثُمَّ لَقِیْتَنِیْ لَا تُشْرِکُ بِیْ شَیْئًا لَاَتَیْتُکَ بِقُرَابِہَا مَغْفِرَۃً)

’’ اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہے کہ اے ابن آدم! اگر تو میرے پاس گناہوں سے پوری زمین بھر کر لے آئے، پھر اس میں شرک نہ ہو تو میں اسی مقدار میں بخششیں تیرے پاس لے آؤں گا۔‘‘(ترمذی)

٭ سیدنا ابوسعید خدری رضی اللہ عنہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے بیان کرتے ہیں کہ جناب موسیٰ علیہ السلام نے اللہ تعالیٰ سے عرض کیا: اے میرے رب! مجھے ایسی چیز بتا جس سے میں تیری یاد کروں اور تجھ سے دُعا کیا کروں۔‘‘ اللہ تعالیٰ نے فرمایا: اے موسیٰ! لَا اِلٰہَ اِلَّا اللّٰہُ پڑھا کر۔ جناب موسیٰ علیہ السلام نے عرض کی کہ اے میرے رب: اسے تو تیرے سب بندے پڑھتے ہیں۔ اللہ تعالیٰ نے فرمایا: اے موسیٰ! سوائے میرے اگر ساتوں آسمان اور ان کے باشندے اور ساتوں زمینیں، ترازو کے ایک پلڑے میں رکھ دیئے جائیں اور دوسرے پلڑے میں صرف لَا اِلٰہَ اِلَّا اللّٰہُ رکھ کر وزن کیا جائے تو لَا اِلٰہَ اِلَّا اللّٰہُ والا پلڑا بھاری ہو گا۔ اس حدیث کو ابن حبان اور حاکم نے روایت کیا ہے اور حاکم نے اس کو صحیح قرار دیا ہے۔ اور امام ترمذی رحمۃ اللہ علیہ کہتے ہیں کہ یہ حدیث حسن ہے۔

٭ بخاری و مسلم میں سیدنا عِتبان رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:’’فَاِنَّ اللّٰہَ حَرَّمَ عَلَی النَّارِمَنْ قَالَ: لَآ اِلٰہَ اِلَّا اللّٰہُ یَبْتَغِیْ بِذٰلِکَ وَجْہَ اللّٰہِ ‘‘…’’ جو شخص اللہ تعالیٰ کی رضا کے لیے لَا اِلٰہَ اِلَّا اللّٰہُ کا اقرار کرتا ہے اللہ تعالیٰ اس پر دوزخ کے عذاب کو حرام کردیتاہے۔‘‘

REFERENCE:
KITAAB “TAWHEED MUYASSAR” 
BY: “ABDULLAH BIN AHMAD AL HAWAIL”

Table of Contents