Sections
< All Topics
Print

05. Baap Apne Bachoun ko kin Alfaaz se Khitaab kare?

*BAAP APNAY BACHON KO KIN ALFAZ MEIN MUKHATIB HO*

Quran-e-Majeed ne apnay maan-ne walon ko is ki bhi taleem di hai keh baap apnay bachon ko kin alfaaz se mukhatib ho aur aulaad kin alfaaz se apnay baap ko khitaab karein, Quran-e-Majeed mein is tarhan kay kayi waqeaat mazkoor hain jin mein Allah kay naik bandon ne apni naik aulaad ko khitaab kiya aur intehai mohabbat o shafqat kay un alfaaz mein kiya jin se ziyada mohabbat kay alfaaz kahin nahi mil satkay.

Hazrat Nooh (علیہ السلام ) ne apnay larkay Kunaan ko tufaan mein aawaz detay hue kaha:?

:﴿ وَنَادٰی نُوْحُ نِ ابْنَہٗ وَکَانَ فِیْ مَعْزَلٍ یّٰبُنَیَّ ارْکَبْ مَّعَنَا وَلَا تَکُنْ مَّعَ الْکَافِرِیْنَ ﴾ (ہود :42)

“Nooh ne apnay betay ko pukara aur woh door faaslay par tha, beta! hamaray sath sawaar hoja kafiroon kay sath nah reh.”

Hazrat Ibrahim (علیہ السلام ) ne apnay betay Hazrat Ismaeel (علیہ السلام) ko khitaab kartay hue farmaaya:

: ﴿ یٰبُنَیَّ اِنِّیْ ٓ اَرٰی فِیْ الْمَنَامِ اَنِّیْ اَذْبَحُکَ فَانْظُرْ مَاذَا تَرٰی﴾( صآفّات : 102)

“Meray bachay! main ne khawab mein dekha hai keh mein tujhe zibah kar raha hun, zara patla tera kya iradah hai.”

Hazrat Yaqoob (علیہ السلام ) ne apnay betay Hazrat Yousuf (علیہ السلام ) ko mukhatib kartay hue farmaaya:

:﴿ یٰبُنَیَّ لَا تَقْصُصْ رُوْیَاکَ عَلٰی اِخْوَتِکَ فَیَکِیْدُوْا لَکَ کَیْدًا ط اِنَّ الشَّیْطَانَ لِلْاِنْسَانِ عَدُوٌّ مُّبِیْنٌ ﴾ (یوسف : 5)

“Beta! tum apna khawab apnay ( soutelay) bhaiyon ko nah bayaan karna woh tumahray liye zaroor koi saazish karein gay Bilaa shuba shaitan insaan ka khula dushman hai.

Hazrat Luqman Hakeem (الله رحم) ne apnay larkay ko naseehat kartay hue farmaaya:

﴿ وَاِذْ قَالَ لُقْمَانُ لِاِبْنِہٖ وَہُوَ یَعِظُہٗ یٰبُنَیَّ لَا تُشْرِکْ بِاللّٰہِ اِنَّ الشِّرْکَ لَظُلْمٌ عَظِیْمٌ ﴾( لقمان :13)

“Is waqt ko yaad karo Jab Luqman ne apnay betay ko naseehat kartay hue kaha tha:”

“Betay! Allah kay sath kisi ko shareek nah karna, kyunkay bilaa shuba shirk bohat bara zulm hai.”

۔﴿اَقِمِ الصَّلٰوۃَ وَاْمُربِالْمَعْرُوْفِ وَانْہَ عَنِ الْمُنْکَرِ وَاصْبِرْ عَلٰی مَآ اَصَابَکَ ط اِنَّ ذٰلِکَ مِنْ عَزْمِ الْاُمُوْرِ﴾ ( لقمان : 17)

“Beta! namaz qaim karna, naiki ka hukam karna aur burai se rokna aur jo bhi musibat tujh par aan parray sabar karna, kyunkay yeh barray hauslay kay kamon mein se hai.”

REFERENCE:
Book: Aulaad ki islami Tarbiyat
Taaleef: “Muhammad Anwar Muhammad Qasim Al Salfi”

باپ اپنے بچوں کو کن الفاظ سے خطاب کرے ؟

 

قرآن مجید نے اپنے ماننے والوں کو اس بات کی بھی تعلیم دی ہے کہ باپ اپنے بچوں سے کن الفاظ سے مخاطب ہواور اولاد کن الفاظ سے اپنے باپ کو خطاب کرے، قرآن مجید میں اسطرح کے کئی واقعات مذکور ہیں جن میں اﷲ کے نیک بندوں نے اپنی اولاد کو انتہائی محبت وشفقت کے ایسے الفاظ سے خطاب کیا جن سے زیادہ محبت کے الفاظ کہیں نہیں مل سکتے۔ حضرت نوح علیہ السلام نے اپنے لڑکے کنعان کو طوفان میں آواز دیتے ہوئے کہا :

 

﴿ وَنَادٰی نُوْحُ نِ ابْنَہٗ وَکَانَ فِیْ مَعْزَلٍ یّٰبُنَیَّ ارْکَبْ مَّعَنَا وَلَا تَکُنْ مَّعَ الْکَافِرِیْنَ ﴾ (ہود :42)

 

ترجمہ : نوح نے اپنے بیٹے کوپکار اور وہ دور فاصلے پر تھا، بیٹا !ہمارے ساتھ سوار ہوجا کافروں کے ساتھ نہ رہ۔

 

حضرت ابراہیم علیہ السلام نے اپنے بیٹے حضرت اسماعیل علیہ السلام کو خطاب کرتے ہوئے فرمایا :

 

﴿ یٰبُنَیَّ اِنِّیْ ٓ اَرٰی فِیْ الْمَنَامِ اَنِّیْ اَذْبَحُکَ فَانْظُرْ مَاذَا تَرٰی﴾( صآفّات : 102)

 

ترجمہ : میرے بچّے ! میں نے خواب میں دیکھا ہے کہ میں تجھے ذبح کررہا ہوں، ذرا بتلا تیرا کیا ارادہ ہے۔

 

حضرت یعقوب علیہ السلام نے اپنے بیٹے حضرت یوسف علیہ السلام کو مخاطب کرتے ہوئے

 

فرمایا :﴿ یٰبُنَیَّ لَا تَقْصُصْ رُوْیَاکَ عَلٰی اِخْوَتِکَ فَیَکِیْدُوْا لَکَ کَیْدًا ط اِنَّ الشَّیْطَانَ لِلْاِنْسَانِ عَدُوٌّ مُّبِیْنٌ ﴾ (یوسف : 5)

 

ترجمہ : بیٹا ! تم اپنا خواب اپنے (سوتیلے ) بھائیوں کو نہ بیان کرنا وہ تمہارے لئے ضرور کوئی سازش کریں گے، بلا شبہ شیطان انسان کا کُھلا دشمن ہے۔

 

حضرت لقمان حکیم رحمہ اﷲ نے اپنے لڑکے کو نصیحت کرتے ہوئے فرمایا :

 

﴿ وَاِذْ قَالَ لُقْمَانُ لِاِبْنِہٖ وَہُوَ یَعِظُہٗ یٰبُنَیَّ لَا تُشْرِکْ بِاللّٰہِ اِنَّ الشِّرْکَ لَظُلْمٌ عَظِیْمٌ ﴾( لقمان :13)

 

ترجمہ : ( اس وقت کو یاد کرو) جب لقمان نے اپنے بیٹے کو نصیحت کرتے ہوئے کہا تھا : بیٹے ! اﷲ کے ساتھ کسی کو شریک نہ کرنا، کیونکہ بلا شبہ شرک بہت بڑا ظلم ہے

 

۔﴿اَقِمِ الصَّلٰوۃَ وَاْمُربِالْمَعْرُوْفِ وَانْہَ عَنِ الْمُنْکَرِ وَاصْبِرْ عَلٰی مَآ اَصَابَکَ ط اِنَّ ذٰلِکَ مِنْ عَزْمِ الْاُمُوْرِ﴾ ( لقمان : 17)

 

بیٹے ! نماز قائم کرنا، نیکی کا حکم کرنا اور برائی سے روکنا اور جو بھی مصیبت تجھ پر آن پڑے صبر کرنا، کیونکہ یہ بڑے حوصلے کے کاموں میں سے ہے۔

 

حواله جات : 

كتاب :  “اولاد كى اسلامى تربيت”
محمد انور محمدقاسم السّلفی

 

 

Table of Contents