Sections
< All Topics
Print

13. Allah Ki muraqibaat ka Ehsaas.

*ALLAH KI MARAQBAT KA EHSAAS*

Tarbiyat aulaad mein zaroori hai keh bachon ko is baat ka ehsas dilaya jaye keh woh jis mabood haqeeqi ki ibadat kartay hain, Woh hamesha un ke sath hai, un ki har harkat ko dekh raha hai aur is ko qayamat ke din ke liye mehfooz kar raha hai, koi naiki is se makhfi nahi aur nah hi koi buraii, chahay woh kitney hi pardon ke andar choup kar ki jaye, is liye tum hamesha Isi se daro aur Isi se umeed rakho, jo kuch maangna ho Isi se mango, uskay ilawa aur koi dataa nahi, jaisa keh Rasool Allah (ﷺ) ne apnay chchiray bhai Hazrat Abbdulah Bin Abbas (رضی اللہ عنہما) ko naseehat kartay hue farmaaya:

 

عن عبد الله بن عباس رضی الله عنهما قال : ” كنت خلف النبي الا الله يوما، فقال : يا غلام ! إنِّي أعلمك

 

Hazrat Abdullah Bin Abbas (رضی اللہ عنہما) kehtay hain:

“Main aik din Rasool Allah ke peechay tha, Aap (ﷺ) ne farmaaya:

“Aey larkay! main tumhein kuch baatein sikhata hon”:

“Tum Allah Ta’alaa ko yaad rakho ( Is ke haqooq aur ehkamaat par amal kar ke aur Is ki mana ki hui cheezon se bach kar ) to Woh tumhein yaad rakhay ga, tum Allah ko yaad rakho to Usay apnay samnay pao gay.

Jab tum kuch mango to Allah Ta’alaa se hi mango, jab madad talabb karo to Allah hi se madad talabb karo.

Yeh baat achi tarhan jaan lo keh agar saari qoum mil kar bhi tumhein kisi cheez ka faida karna chahay to tumhara itna hi faida kar sakti hai jitna keh Allah ne tumahray liye muqarrar kar rakha hai.

Agar saari qoum mil kar bhi tumhe nuqsaan pahunchana chahay to itna hi pouncha sakti hai jitna keh Allah ne tumhari qismat mein likh rakha hai, taqdeer likhnay walay qalam uthalay gaye aur saheefay khushk ho gaye.

 

(Jo hona tha woh likh diya gaya ab is mein adal badal nahi ho sakta ) doosri riwayat mein yun hai:

Tum Allah ko yaad rakho to Usay apnay samnay paao gay.

Araam aur rahat ke zamanay mein Allah se jaan pehchan rakho to tumhein musibat Ke zamanay mein pehchanay ga.

Yaad rakho! tum se jo chowk gaya woh kabhi tumhein milnay wala nah tha, jo tumhein mila hai woh kabhi chokannay wala nah tha. yaad rakho! Allah ki madad sabar ke sath hai, aur kushadgi museebat ke sath hai aur yeh bhi yaqeen jano keh mushkil ke sath aasani hai.

 

Agar bachon mein walidain Allah Ta’alaa ke mraqbay ka ehsas paida karen to bachay nah sirf aindah zindagi mein buray kamon se daur rahen gay balkay doosron ko bhi roknay walay ban jaayen gay, jaisa keh guzashta ourak mein guzar chuka hai keh aik maa ne jab apni beti ko doodh mein pani milaanay ke liye kaha to is ne yeh karara jawab detay hue is kaam ko karnay se inkaar kar diya ke:

“Agar chay Umar Bin Khitaab nahi dekh raha hai lekin Umar ka Rab to zaroor dekh raha hai, is liye main yeh kaam nahi kar sakti”.

Isi tarhan ka aik aur waqea Hazrat Umar (رضی اللہ عنہ) se mutaliq hai.

 

Hazrat Abdullah Bin dinaar kehtay hain:

”Main Hazrat Umar (رضی اللہ عنہ) ke hamrah Makkah ke liye rawana hua, rastay mein aik charwaha aik pahari ki dhalwan se utartaa hua nazar aaya, Hazrat Umar (رضی اللہ عنہ) ne usay azmaanay ke liye kaha:

“یا راعى ! بعنى شاة من هذه الغنم “

 

“Aey charwahay! un bakrion mein se aik mujhe farokht kar day, is ne kaha:

”Main Maalik nahi ghulam hon” Hazrat Umar (رضی اللہ عنہ) ne farmaaya: koi baat nahi, mujhe farokht kar keh apnay Maalik se keh day keh is bakri ko bheriyay ne kha liya, is par charwahay ne kaha:

” فاين الله “

“Hazrat! to phir Allah kahan hai? Hazrat Umar (رضی اللہ عنہ)ro paray, aur us ke sath chal kar us ke Maalil se baat ki aur usay khareed kar azaad kar dia aur farmaaya:

 

أعتقتك فی الدنیا ھذه الكلمة ، وأرجو أن تعتقك فی الآخرة”

 

Tairay aik lafz ne tujhe duniya mein ghulami se nijaat dilaya hai aur mujhe umeed hai keh yahi lafz akhirat mein bhi tujhe dozakh ke azaab se nijaat dilay ga”.

 

“Imam Ghazali “رحم الله احياء العلوم” mein likhtay hain:

”Imam Younis Bin Ubaid (رحم الله) kapron ka kaarobar karteay thay, Aap ki dokaan mein mukhtalif qisam ke libaas, chadar mein aur joray thay, un mein se kuch ki qeemat chaar so darham aur kuch ki do so darham thi, Aap namaz parhnay ke liye masjid jatay hue dokaan mein apnay bhateejay ko chorra aur usay tamam ki qeematein bhi samjha di, is douran aik budu shakhs aaya, is ne chaar so darham ka aik jora manga larka chalaak tha is ne usay do so darham wala jora dekhaya, is ne usay pasand kar liya aur khushi khushi chaar so darham adaa kar ke chala gaya, rastay mein usay Younis bin Ubaid mil gaye, Unhon ne is kapray ko pehchan liya jo un ki dokaan se khareeda gaya tha”

 

Aap ne is budu se poocha:

”Tum ne usay kitney mein khareeda, kaha:

”Chaar so darham mein, Aap ne farmaaya:

“Yeh do so darham se ziyada ka nahi hai, is liye tum usay wapas kar aao”

Is ne kaha:

”Hazrat! yeh hamaray haan paanch so darham ka milta hai aur main ne usay apni khushi se khareeda hai”

Aap ne farmaaya:

”Meray sath wapas chalo, is liye keh khair khawahi ka maqam deen mein duniya aur is mein jo kuch hai is se behtar hai”

Phir aap apni dokaan par aaye aur usay do so darham wapas kya, apnay bhateejay ko khoob danta phutkara, is se jhagra kiya aur farmaaaya:

أما إستحييت ؟ أما إتقيت الله ؟ تربح مثل الثمن وتترك النصح للمسلمين ،،

 

“kia tumhein zarra bhi sharam nahi aayi ? Kia tum mein kuch bhi Allah ka khaof nahi? asal qeemat ke barabar faida khatay ho aur muslamano ke sath khair khawahi nahi kartay?

REFERENCE:
Book: Aulaad ki islami Tarbiyat
Taaleef: “Muhammad Anwar Muhammad Qasim Al Salfi”

اﷲ کی مراقبت کا احساس

 

تربیتِ اولاد میں ضروری ہے کہ بچوں کو اس بات کا احساس دلایا جائے کہ وہ جس معبودِ حقیقی کی عبادت کرتے ہیں، وہ ہمیشہ ان کے ساتھ ہے، ان کی ہر حرکت کو دیکھ رہا ہے اور اس کو قیامت کے دن کے لئے محفوظ کررہا ہے، کوئی نیکی اس سے مخفی نہیں اور نہ ہی کوئی بُرائی، چاہے وہ کتنے ہی پردوں کے اندر چھپ کر کی جائے، اسلئے تم ہمیشہ اسی سے ڈرو اور اسی سے امید رکھو، جو کچھ مانگنا ہو اسی سے مانگو، اسکے علاوہ اور کوئی داتا نہیں، جیسا کہ رسول اﷲ 1 نصیحت کرتے ہوئے فرمایا :

 

عن عبد اللّٰہ بن عباس رضی اللّٰہ عنہ قَالَ:”کُنْتُ خَلْفَ النَّبِیِّ صلی اللّٰہ علیہ وسلم یَوْمًا، فَقَالَ : یَا غُلَامُ ! إِنِّیْ أُعَلِّمُکَ کَلِمَاتٍ :” إِحْفَظِ اللّٰہَ یَحْفَظْکَ إِحْفَظِ اللّٰہَ تَجِدْہُ تُجَاہَکَ وَإِذَا سَأَلْتَ فَاسْئَلِ اللّٰہَ وَإِذَا اسْتَعَنْتَ فَاسْتَعِنْ بِاللّٰہِ وَاعْلَمْ لَوْ أَنَّ الْأُمَّۃَ إِجْتَمَعَتْ عَلٰی أَنْ یَنْفَعُوْکَ بِشَیْئٍ لَمْ یَنْفَعُوْکَ إِلاَّ بِشَیْئٍ قَدْ کَتَبَہُ اللّٰہُ لَکَ،وَإِجْتَمَعُوْا عَلٰی أَنْ یَضُرُّوْکَ بِشَیْئٍ لَمْ یَضُرُّوْکَ إِلاَّ بِشَیْئٍ قَدْ کَتَبَہُ اللّٰہُ عَلَیْکَ،رُفِعَتِ الْأَقْلَامُ وَجَفَّتِ الصُّحُفُ” (تر مذی: 2156 صحیح الجامع للألبانی :7957 )وفی روایۃ:”إِحْفَظِ اللّٰہَ تَجِدْہُ تُجَاہَکَ، تَعَرَّفْ إِلَی اللّٰہِ فِی الرَّخَائِ یَعْرِفْکَ فِی الشِّدَّۃَ، وَاعْلَمْ أَنَّ مَا أَصَا بَکَ لَمْ یَکُنْ لِیُخْطِئَکَ وَ مَاأَخْطَأَکَ لَمْ یَکُنْ لِیُصِیْبَکَ، وَاعْلَمْ أَنَّ النَّصْرَ مَعَ الصَّبْرِوَأَنَّ الْفَرْجَ مَعَ الْکَرْبِ وَأَنَّ مَعَ الْعُسْرِ یُسْرًا” (مسند عبد بن حمید )

 

تر جمہ : عبد اﷲ بن عباس رضی اﷲ عنہما کہتے ہیں :”میں ایک دن رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم کے پیچھے تھا، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :اے لڑکے ! میں تمہیں کچھ باتیں سکھاتا ہوں : تم اﷲ تعالیٰ کو یاد رکھو( اسکے حقوق اور احکامات پر عمل کرکے اور اس کی منع کی ہوئی چیزوں سے بچ کر ) تو وہ تمہیں یاد رکھے گا، تم اﷲ کو یاد رکھو تو اسے اپنے سامنے پاٖ ؤگے۔ جب بھی کچھ مانگو تو اﷲ تعالیٰ سے ہی مانگو، جب بھی مدد طلب کرو تو اﷲ ہی سے مدد طلب کرو۔ یہ بات اچھی طرح جان لو کہ اگر ساری قوم مل کربھی تمہیں کسی چیز کا فائدہ کرنا چاہے تو تمہارا اتنا ہی فائدہ کرسکتی ہے جتنا اﷲ نے تمہارے لئے لکھ رکھا ہے۔ اگر ساری قوم مل کر تمہیں نقصان بھی پہنچانا چاہے تو اتنا ہی پہنچا سکتی ہے جتنا کہ اﷲنے تمہاری قسمت میں لکھ رکھا ہے، تقدیر لکھنے والے قلم اٹھالے گئے اور صحیفے خشک ہوگئے۔(جو ہونا تھا وہ لکھ دیا گیا اب اس میں تبدیلی نہیں ہوسکتا ) دوسری روایت میں یوں ہے : تم اﷲ کو یاد رکھو تو اسے اپنے سامنے پاؤگے۔ آرام اور راحت کے زمانے میں اﷲ سے جان پہچان رکھو تووہ تمہیں مصیبت کے زمانے میں پہچانے گا۔ یاد رکھو ! تم سے جو چُوک گیا وہ کبھی تمہیں ملنے والا نہ تھا جو تمہیں ملا ہے وہ کبھی چوکنے والا نہ تھا۔ یاد رکھو ! اﷲ کی مدد صبر کے ساتھ ہے، اور وسعت، مصیبت کے ساتھ ہی لگی ہوئی ہے اور یہ بھی یقین جان لو کہ مشکل کے ساتھ آسانی ہے۔

اگر بچوں میں والدین اﷲ تعالیٰ کے مراقبے کا احساس پیدا کریں تو بچے نہ صرف آئندہ زندگی میں برے کاموں سے دور رہیں گے بلکہ دوسروں کو بھی روکنے والے بن جائیں گے، جیسا کہ گذشتہ اوراق میں گذر چکا ہے کہ ایک ماں نے جب اپنی بیٹی کو دودھ میں پانی ملانے کے لئے کہا تو اس نے یہ کرارا جواب دیتے ہوئے اس کام کو کرنے سے انکار کردیا کہ :” اگرچہ عمر بن خطاب نہیں دیکھ رہا ہے لیکن عمر کا رب تو ضرور دیکھ رہا ہے، اس لئے میں یہ کام نہیں کرسکتی”۔

اسی طرح کا ایک اور واقعہ عمر رضی اللہ عنہ سے متعلق ہے۔ عبد اﷲ بن دینار کہتے ہیں :

” میں عمررضی اللہ عنہ کے ہمراہ مکہ کیلئے روانہ ہوا، راستے میں ایک چرواہا پہاڑ ی کی ڈھلوان سے اترتا ہوا نظر آیا، عمر رضی اللہ عنہ نے اسے آزمانے کیلئے کہا : “یَا رَاعِیْ ! بِعْنِیْ شَاۃً مِنْ ھٰذِہِ الْغَنَمِ “ اے چرواہے ! ان بکریوں میں سے ایک مجھے فروخت کردے ” اس نے کہا : “میں مالک نہیں غلام ہوں “عمر رضی اللہ عنہ نے فرمایا : “کوئی بات نہیں، مجھے فروخت کرکے اپنے مالک سے کہہ دے کہ اس بکری کو بھیڑئے نے کھا لیا ” اس پر چرواہے نے کہا :” فَأَیْنَ اللّٰہُ “ حضرت ! تو پھر اﷲ کہاں ہے ؟ عمر رضی اللہ عنہ روپڑے، اور اسکے ساتھ چل کر اسکے مالک سے بات کی اور اسے خرید کر آزاد کردیا اور فرمایا :“أَعْتَقَتْکَ فِی الدُّنْیَا ہٰذِہِ الْکَلِمَۃُ، وَأَرْجُوْ أَنْ تُعْتِقَکَ فِی الْآخِرَۃِ مِنْ عَذَابِ النَّار” اس ایک لفظ نے تجھے دنیا میں غلامی سے نجات دلایا ہے اور مجھے امید ہے کہ یہی لفظ آخرت میں بھی تجھے آتش دوزخ سے نجات دلائے گا “۔

امام غزالی رحمہ اﷲ“إحیاء العلوم “ میں لکھتے ہیں :”إمام یونس بن عبید رحمہ اﷲ [1] کپڑوں کا کاروبار کرتے تھے، آپ کی دوکان میں مختلف قسم کے لباس، چادریں اور جوڑے تھے، ان میں سے کچھ کی قیمت چار سودرہم اور کچھ کی دوسو درہم تھی، آپ نماز پڑھنے کیلئے مسجد جاتے ہوئے دوکان میں اپنے بھتیجے کو چھوڑا اور اسے تمام کی قیمتیں بھی سمجھادیں، اس دوران ایک بدو شخص آیا، اس نے چار سو درہم کا ایک جوڑا مانگا، لڑکا چالاک تھا اس نے اسے دوسودرہم والا جوڑا دکھایا،اس نے اسے پسند کرلیا اور خوشی خوشی چار سو درہم ادا کرکے چلا گیا، راستے میں اسے یونس بن عبید رحمہ اللہ مل گئے، انہوں نے اس کپڑے کو پہچان لیا جو ان کی دوکان سے خریدا گیا تھا، آپ نے اس بدو سے پوچھا :” تم نے اسے کتنے میں خریدا ” کہا :” چار سو درہم میں” آپ نے فرمایا :” یہ دوسو درہم سے زیادہ کا نہیں ہے، اس لئے تم اسے واپس کر آؤ” اس نے کہا : “حضرت ! یہ ہمارے ہاں پانچ سو درہم کا ملتا ہے اور میں نے اسے اپنی خوشی سے خریدا ہے ” آپ نے فرمایا :”میرے ساتھ واپس چلو، اس لئے کہ دین میں خیر خواہی کا مقام دنیا اور اس میں جوکچھ ہے اس سے بہتر ہے “پھر آپ اپنی دوکان پر آئے اور اسے دو سو درہم واپس کیا، اپنے بھتیجے کو خوب ڈانٹا اور فرمایا:“أَمَا اسْتَحْیَیْتَ ؟ أَمَا اتَّقَیْتَ اللّٰہَ ؟ تَرْبَحُ مِثْلَ الثَّمَنِ وَتَتْرُکَ النُّصْحَ لِلْمُسْلِمِیْنَ “کیا تمہیں ذرا بھی شرم نہیں آئی ؟ کیا تم میں کچھ بھی اﷲ کا خوف نہیں ؟ اصل قیمت کے برابر فائدہ کھاتے ہو اور مسلمانوں کے ساتھ خیر خواہی نہیں کرتے ؟

[1] یونس بن عبیدالعبدی البصری ، مشہور محدث ، امام ، قدوہ، ثقہ اور حجت ہیں، 139ھ؁ میں انتقال ہوا

 

افسوس ایمانداری کی یہ تابناک مثالیں آج کل صرف کتابوںمیں ہی باقی رہ گئی ہیں، رہا مسلم معاشرہ، وہ بقول :”مسلمانی در کتاب ومسلمانان درگور ” (یعنی اسلام کتابوں میں ہے اور مسلمان قبروںمیں) کی زندہ مثال بن کر ساری دنیا میں زوال وذلت کی انتہا کو پہنچ چکا ہے۔ إنّا اللّٰہ وإنّا إلیہ راجعون۔

 

حواله جات : 

كتاب :  “اولاد كى اسلامى تربيت”
محمد انور محمدقاسم السّلفی

 

 

Table of Contents