Sections
< All Topics
Print

10. Shuja’at aur Bahaduri.

*SHUJAIAT AUR BHAHADARI*

Walidain ke liye zaroori hai keh woh apnay bachon ko ba himmat, jafakash, shuja aur bahadur banayen, is maqsad ke husool ke liye inhen un tamam jaaiz khelon ki ijazat dein, islam un tamam khelon ki ijazat deta hai jis se jism ko sehat haasil hoti ho aur jehaad fi Sabeel Allah ki tayari hoti ho, jaisay ghora sawari, nezah baazi, teer andazi, gashti aur tera ki waghairah, RasoolAllah (ﷺ) ne un ki khud targheeb di hai : عن أبی

هريرة رضى الله عنه قال خرج النبى الله الله و وقوم من أسلم يرمون ، فقا : “إرموا بني إسماعيل ! فإنّ أباكم كان راميا . إرموا وأنا مع مع بن الأدرع ، فأمسك القوم قسيّهم فقالوا يا رسول الله من كنت معه غلب ، فقال : إرموا وأنا معكم كلكم .
( صحیح ابن حبان : (548/1)

 

Tarjumah:

“Aap (ﷺ) ka guzar qabeela bano aslam par se hua jo teerandazi mein masroof thay”, Aap ne inhen dekh kar farmaaya:

“Aey aulaad Ismael! tum teerandazi karo, is liye keh tumahray baap ( Hazrat Ismael (علیہ السلام ) behtareen teerandaz thay, tum teer phenko, mein Ibn Ala Dirha ke sath hon”.

Logon ne apni kamaanein jhuka li aur kaha:

“Aey Allah ke Rasool! Aap jis ke sath hungay wohi jeetay ga”.

Aap (ﷺ) ne farmayaa:

“Tum teerandazi karo mein tum tamam ke sath hon”.

Un tamam khelon par bachon ki himmat afzai karni chahiye, un ki nasho numa RasoolAllah (ﷺ),

Aap ke Ahal Bait aur kitaab Allah o sunnat RasoolAllah ki mohabbat par karni chahiye, neez inhen Sahaba Karaam ki shujaiat o bahaduri, tabayn Azaim ki jaan nisari aur deegar islami fateheen ki himmat o jawanmardi ke waqeat sunaye jayen taakeh aindah chal kar un ke dilon mein islami ghairat, jehaad aur is ke wasail ke husool ki tarap aur kalma haq ko buland karnay ka jazba paida ho.

Hazrat Saad Bin Aabi Waqas (رضی اللہ عنہ) farmatay hain:

” كنا نعلم أولادنا مغازى رسول الله الا الله كما نعلمهم السورة من القرآن ،،

Hum apnay bachon ko Rasool Akram (ﷺ) ke jahadi waqeat aisay sikhatay thay jaisay keh inhen Quran sikhatay thay.

 

Hazrat Umar (رضی اللہ عنہ) aaba ko takeed kartay hue farmatay hain:

”علموا أولادكم الرمایة والسباحة, ومروهم فلیثبوا على الخیل وثبا”.

 

“Tum apnay bachon ko teerandazi aur teraki sikhao aur inhen ghoray ki peeth par chhalang laga kar baithna sikhao”.

 

 

RasoolAllah (ﷺ) ke mubarak zamana mein bachon ke bahaduri aur shoq shahadat ke waqeat aulaad ko azbar karaye jayen, jin mein se chand yeh hain.

  1. Hazrat Abdul Rehman Bin Aouf (رضی اللہ عنہ) farmatay hain:

 

“Maidan badar mein, main ne meray dayen bayen janib ka jaiza liya to main ne apnay janib do no umar Ansari bachon ko paaya, abhi main kuch soch hi raha tha keh aik ne mujhe ishara kiya aur kehnay laga”:

“Chacha jaan! aap Abbu Jahel ko jantay hain?” main ne kaha:

”Haan! jaanta to hon lekin tumhein is se kya gharz hai?” kehnay laga:

“Mujhe maloom hua hai keh woh RasoolAllah (ﷺ) ko gaaliyan bakta hai, Is zaat ki qasam jis ke haath mein meri jaan hai, agar mein ne usay dekh liya to hargiz nahi choroon ga yahan tak keh hum dono mein se koi aik khatam ho jaye, yahi baat doosray larkay ne bhi kahi.

Itnay mein mujhe Abbu Jahel logon ke darmiyan tehalta hua nazar aaya,”

Main ne un dono se kaha:

“Yahi woh shakhs hai jis ke mutaliq tum pooch rahay thay”.

Yeh suntay hi woh dono is par apni talwaron se pal parray aur usay qatal kar diya.

Phir Aap (ﷺ) ke paas aaye aur Aap ko is ke qatal ki khabar di.

Aap (ﷺ) ne un bachon se poocha:

” ایکما قتله?”

“Tum dono mein se kis ne usay qatal kya”?

Dono ne kaha ”أنا قتلته” “main ne usay qatal kya”.

RasoolAllah (ﷺ) ne dono ki talwaron ko dekh kar farmaaya:

” كلا كما قتله”

“Tum dono ne usay qatal kya

Yeh dono bachay Hazrat Maaz Bin Umr Bin Al Jamooh aur Maaz Bin Afraa (رضی اللہ عنہما) thay.

Abbu Jahel martay hue bhi yeh afsos karta hua mara:

” فلو غير إبنا أكار قتلنی”

“Kash mujhe kaasht karon ke do kam umar bachay nah qatal kiye hotay”.

 

( بخاری . کتاب المغازی, باب : قتل ابو جہل )

 

2 Jang-e-Ahad ke moqa par jis waqt Aap (ﷺ) musalmanoon ka lashkar lay kar nikal parray to lashkar ke sath do bachay bhi is umeed par chal parray keh shayad hamein bhi jehaad mein shirkat ka moqa mil jaye.

Jis waqt saf bandi ka waqt aaya to RasoolAllah (ﷺ) ne un dono bachon, Hazrat Simra Bin Jundab aur Rafay Bin Khadeej (رضی اللہ عنہما) ko un ki sagar sanni ki wajah se wapas kar diya, jab Aap (ﷺ) se yeh kaha gaya Rafay Bin Khadeej bohat achay teer andaaz hain to Aap (ﷺ) ne inhen ijazat day di, jab Simra Bin Jundab (رضی اللہ عنہ) ne yeh dekha to rotay hue kehnay lagey:

” Main to kushti mein Rafay ko pichhar deta hon, jab inhen ijazat mili to mujhe bhi wapsi ki ijazat milni chahiye,” aakhir-kaar dono ki kushti karaai gayi aur waqai Hazrat Simra ne Rafay ko pichhar diya to inhen bhi Aap (علیہ السلام ) ne ijazat marhamat farmaa di.

 

( الرحیق المختوم )

 

3 . Maaein bhi apnay bachon ko apnay sath maidan jehaad mein lati aur inhen islam ki azmat par qurbaan ho janay ki talqeen kartin.

Jung qadsih ke moqa par Arab ki mashhoor shaeirah Hazrat Khansa (رضی اللہ عنہا) apnay paanch beton ke sath midan jehaad mein is haal mein tashreef laati hain keh umar assi saal ko tajawaz kar chuki hai, chal nahi sakti, beton ke kaandho par sawaar ho kar aati hein aur unhein khitaab karti hui farmati hein:

Meray bachcho! jis tarhan tum aik maa ki aulaad ho isi tarhan aik baap ki aulaad bhi ho, main ne tumahray baap se koi khayanat nahi ki aur nah tumahray mamuon ko ruswa kya.

Meray bachcho! aaj islam aur kufar ki jung hai, dekhna peeth nah pherna, islam ki Azmat par qurbaan ho jana.

Dekhna! tum mein se koi wapas palat kar nah aaye, meray liye yeh izzat afzai ka yeh maoqa faraham karna keh mujhe qayamat ke din paanch shaheedon ki maa ki hesiyat se Rab-ul-alameen ke darbaar mein bulaya jaye.

Jab bachay janay lagey to Allah Ta’alaa se dua kartay hue kaha:

اللهم أرزقهم شهادت فی سبیلک,,

“Ya Allah! Tu inhen apni raah mein shahadat ataa farma”.

Jab unhon ne apnay paanchon bachon ki shahadat ki khabar suni to Allah Ta’alaa ka shukar adaa kartay hue farmaaya:

”الحمد الله الذی شرفنی بقتلهم, وأرجو من الله أن یجمعنی وأیاهم فی مقرر رحمته”

“Us Allah Ta’alaa ka shukar hai jis ne inhen shahadat ataa kar ke mujhe Sharf bakhsha hai aur mujhe umeed hai keh Allah Ta’alaa mujhe un ke sath apni rehmat ke thikaanay ( jannat) mein akatha farmaaye ga”.

اسلامی تعلیم: از مولانا عبد الاسلام صاحب بستوی رحمہ اللہ )

 

Yeh tarbiyat ke woh Zarin usool hain jin par hamaray islaaf ne apnay nonhalon ki tarbiyat ki jis ka nateeja duniya ki nazron mein bhi Hazrat Umar Bin Khattaab, kabhi Khalid Bin Waleed, Saad Bin Aabi Waqas , Tariq Bin Ziyaad, Mohammad Bin Qasim, Mohlab Bin Aabi Safra, Salah Aldeen Ayobi, Sultan Mohammad Faateh (رضی اللہ عنہم ورحمہم) ki shakal me zahir hua. Sach hai:

“Sabaq phir parh ita’at ka shuja’at ka sadaqat ka

Lia jaye ga tujh se kaam dunia ki imamat ka”

Afsos ab woh sanchay toot gaye jin mein zindagi ke yeh haqeeqi hero dhala kartay thay, nah ab ummat ke muheet mein woh gohar giran maaya hain, hamari ghalat tarbiyat ne filmi pardon ke to kayi hero paida kar diye lekin zamana ke taweel intizaar ke bawajood zindagi ke haqeeqi maidan ka koi hero paida nah ho saka, Bait-ul-Muqaddas agay barh barh kar ummat ko sadayen day raha hai lekin ummat apni kasrat tadaad, samaan Harb-o-zarb ki kasrat aur be panah maadi wasail ke bawajood jis tarhan muthi bhar yahood ke panja istibdaad mein jakray hue hain yeh ummat ke liye tareekh ka sab se bara saneha hai.

Jo qoum saari aqwam aalam ki rahnumai karti thi aaj woh khud kisi salaar karwan ko taras rahi hai.

Sach hai:

“Nishaan raah dikhatay thay jo sitaron ko Taras gaye hain kisi mard raah daan ke liye”

Gharz mazkoorah khelon ke sath mojooda daur ke khelion mein, Shooting, Waheet lifting, Football, Wali baal, Bat menten, Hockey aur Cricket waghairah bhi khailay ja saktay hain bashartekah namazon ki pabandi ho aur deegar deeni dunewi sargarmia mutasir nah hon.

Islam un tamam khelion ko na jaaiz qarar deta hai jis se nah sehat haasil hoti ho aur nah jehaad ki tayari hoti ho balkay waqt ka zeyaa aur faraiz deeni se kotahi hoti ho jaisay:

Shatranj, Askwaysh waghairah.

 

REFERENCE:
Book: Aulaad ki islami Tarbiyat
Taaleef: “Muhammad Anwar Muhammad Qasim Al Salfi”

شجاعت اور بہادری

 

والدین کے لئے ضروری ہے کہ وہ اپنے بچوں کو باہمت، جفاکش، شجاع اور بہادر بنائیں، اس مقصد کے حصول کے لئے انہیں ان تمام جائزکھیلوں کی اجازت دیں، اسلام ان تمام کھیلوں کی اجازت دیتا ہے جس سے جسم کو صحت حاصل ہوتی ہواور جہاد فی سبیل اﷲ کی تیاری ہوتی ہو،جیسے : گھوڑ سواری، نیزہ بازی، تیر اندازی، کُشتی اور تیراکی وغیرہ، رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان کی خود ترغیب دی ہے :

عن أبی ھریرۃ رضی اللّٰہ عنہ قال خرج النبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم وقوم من أسلم یَرْمُوْنَ، فَقَالَ :

” إِرْمُوْا بَنِیْ إِسْمَاعِیْلَ ! فَإِنَّ أَبَاکُمْ کَانَ رَامِیًا۔إِرْمُوْا وَأَنَا مَعَ ابْنِ الْاَدْرَعِ، فَأَمْسَکَ الْقَوْمُ قِسِیَّہُمْ فَقَالُوْا یَا رَسُوْلَ اللّٰہِ ! مَنْ کُنْتَ مَعَہُ غَلَبَ،فَقَالَ: إِرْمُوْا وَأَنَا مَعَکُمْ کُلِّکُمْ۔(صحیح إبن حبّان : 1؍548)

 

ترجمہ : آپ صلی اللہ علیہ وسلم قبیلہ بنو أسلم سے گذرے جو تیر اندازی میں مصروف تھے، آپ نے انہیں دیکھ کر فرمایا : ” اے اولادِ اسماعیل ! تم تیر اندازی کرو، اسلئے کہ تمہارے باپ ( اسماعیل علیہ السلام ) بہترین تیر انداز تھے، تم تیر پھینکو، میں إبن الأدرع کے ساتھ ہوں ” لوگوں نے اپنی کمانیں جھکالیں اور کہا : یا رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم! آپ جسکے ساتھ ہونگے وہی جیتے گا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :تیر اندازی کرو میں تم سب کے ساتھ ہوں۔

ان تمام کھیلوں پر بچوں کی ہمّت افزائی کرنی چاہئے،ان کی نشو نما رسول اﷲصلی اللہ علیہ وسلم، اورآپکے اہلِ بیت اور کتاب اﷲوسنت رسول اﷲ کی محبت پر کرنی چاہئے، نیزانہیں صحابہ کرام کی شجاعت وبہادری، تابعین عظام کی جان نثاری اوردیگر اسلامی فاتحین کی ہمت وجوانمردی کے واقعات سنائے جائیں تاکہ آئندہ چل کر انکے دلوں میں اسلامی غیرت، جہاد اور اسکے وسائل کے حصول کی تڑپ اور کلمۂ حق کو بلند کرنے کا جذبہ پیدا ہو۔ سعد بن أبی وقاص رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں :“کُنَّا نُعَلِّمُ أَوْلَادَنَا مَغَازِیَ رَسُوْلَ اللّٰہِ صلی اللّٰہ علیہ وسلم کَمَا نُعَلِّمُہُمْ السُّوْرَۃَ مِنَ الْقُرْآنِ “ ہم اپنے بچوں کو رسولِ اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے جہادی واقعات ایسے سکھاتے تھے جیسے کہ انہیں قرآن سکھاتے تھے۔

سیدناعمر رضی اللہ عنہ باپوں کو خطاب کرتے ہوئے فرماتے ہیں:

 

” عَلِّمُوْا أَوْلَادَکُمْ الرِّمَایَۃَ وَالسَّبَاحَۃَ وَمُرُوْہُمْ فَلْیَثْبُوْا عَلَی الْخَیْلِ وَثْبًا”

 

تم اپنے بچوں کو تیر اندازی اور تیراکی سکھاؤ اور انہیں گھوڑے کی پیٹھ پر چھلانگ لگاکر بیٹھنا سکھاؤ۔

 

رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم کے مبارک زمانہ میں بچوں کے بہادری اور شوقِ شہادت کے واقعات اولاد کو ازبر کرائے جائیں، جن میں سے چند یہ ہیں :

 

1۔ عبد الرحمن بن عوف رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں :”میدانِ بدر میں، میں نے میرے دائیں بائیں جانب کا جائزہ لیا تو میں نے اپنے جانب دو نوعمر انصاری بچوں کو پایا، ابھی میں کچھ سوچ ہی رہا تھا کہ ایک نے مجھے اشارہ کیا اور کہنے لگا :” چچا جان ! آپ ابوجہل کو جانتے ہیں ؟” میں نے کہا : “ہاں ! جانتا تو ہوں لیکن تمہیں اس سے کیا غرض ہے ؟ کہنے لگا : “مجھے معلوم ہوا ہے کہ وہ رسول اﷲصلی اللہ علیہ وسلم کو گالیاں بکتا ہے اس ذات کی قسم !جس کے ہاتھ میں میری جان ہے، اگر میں نے اسے دیکھ لیا تو ہرگز نہیں چھوڑوں گا یہاں تک کہ ہم دونوں میں سے کوئی ایک ختم ہوجائے ” یہی بات دوسرے لڑکے نے بھی کہی۔ اتنے میں مجھے ابوجہل لوگوں کے درمیان ٹہلتا ہوا نظر آیا، میں نے ان دونوں سے کہا :”یہی وہ شخص ہے جس کے متعلق تم پوچھ رہے تھے ” یہ سنتے ہی وہ دونوں اس پر اپنی تلواروں سے پِل پڑے اور اسے قتل کردیا.پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آئے اور آپ کو اس کے قتل کی خبر دی۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان بچوں سے پوچھا :” أَیُّکُمَا قَتَلَہُ ؟” تم دونوں میں سے کس نے اسے قتل کیا ؟ دونوں نے کہا ” أَنَا قَتَلْتُہُ “ میں نے اسے قتل کیا۔ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم نے دونوں کی تلواروں کو دیکھ کر فرمایا :“کِلَاکُمَا قَتَلَہُ “ تم دونوں نے اسے قتل کیا۔ یہ دونوں بچّے معاذ بن عمرو بن الجموح اور معاذ بن عفراء رضی اﷲ عنہما تھے۔ ابوجہل مرتے ہوئے بھی اپنی ذلت ناک موت کا ماتم کرتا ہوا مراکہ :” فَلَوْ غَیْرَ ابْنَا أَکَّارٍ قَتَلَنِیْ “ کاش مجھے کاشت کاروں کے دو کم عمر بچے نہ قتل کئے ہوتے۔( بخاری: 4020)

2۔ جنگِ اُحد کے موقعہ پر جس وقت آپ صلی اللہ علیہ وسلم مسلمانوں کا لشکر لے کر نکل پڑے تو لشکر کے ساتھ دو بچے بھی اس امید پر چل پڑے کہ شاید ہمیں بھی جہاد میں شرکت کا موقعہ مل جائے۔ جس وقت صف بندی کا وقت آیا تو رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان دونوں بچوں، سمرہ بن جندب اور رافع بن خدیج رضی اﷲ عنہما کو ان کی صغر سنّی کی وجہ سے واپس کردیا، جب آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے یہ کہا گیا رافع بن خدیج بہت اچھے تیر انداز ہیں تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے انہیں اجازت دے دی، جب سمرہ بن جندب رضی اللہ عنہ نے یہ دیکھا تو روتے ہوئے کہا :” میں تو کُشتی میں رافع کو پچھاڑ دیتا ہوں،جب انہیں اجازت ملی تو مجھے بھی شرکت کی اجازت ملنی چاہئے آخر کار دونوں کی کُشتی کرائی گئی اور واقعی سمرہ نے رافع کو پچھاڑ دیا تو انہیں بھی آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اجازت مرحمت فرمادی۔( الرحیق المختوم )

3۔ مائیں بھی اپنے بچوں کو اپنے ساتھ میدانِ جہاد میں لاتیں اور انہیں اسلام کی عظمت پر قربان ہوجانے کی تلقین کرتیں۔ جنگِ قادسیہ کے موقعہ پر عرب کی مشہور شاعرہ خنساء رضی اللہ عنہا اپنے پانچ بیٹوں کے ساتھ میدانِ جہادمیں اس حال میں تشریف لاتی ہیں کہ عمر اسّی سال کو تجاوز کرچکی ہے،چل نہیں سکتیں، بیٹوں کے کندھوں پر سوار ہوکر آتی ہیں اور انہیں خطاب کرتی ہوئی فرماتی ہیں :

” میرے بچّو ! جس طرح تم ایک ماں کی اولاد ہو اسی طرح ایک باپ کی اولاد بھی ہو، میں نے تمہارے باپ سے کوئی خیانت نہیں کی اور نہ تمہارے ماموؤں کو رُسوا کیا۔ میرے بچو! آج اسلام اور کفر کی جنگ ہے، دیکھنا !پیٹھ نہ پھیرنا، اسلام کی عظمت پر قربان ہوجانا۔ دیکھنا !تم میں سے کوئی واپس پلٹ کر نہ آئے، میرے لئے عزّت افزائی کا یہ موقعہ فراہم کرنا کہ مجھے قیامت کے دن پانچ شہیدوں کی ماں کی حیثیت سے رب العالمین کے دربار میں بلایا جائے۔ جب بچّے جانے لگے تو اﷲ تعالی سے دعا کرتے ہوئے کہا :“أَللّٰھُمَّ ارْزُقْھُمْ شَھَادَۃً فِیْ سَبِیْلِک” یا اﷲ ! تو انہیں اپنی راہ میں شہادت عطا فرما۔جب انہوں نے اپنے پانچوں بچوں کی شہادت کی خبر سنی تو اﷲ تعالی کا شکر ادا کرتے ہوئے فرمایا :” أَلْحَمْدُ ِاللّٰہِ الَّذِیْ شَرَّفَنِیْ بِقَتْلِہِمْ، وَأَرْجُوْ مِنَ اللّٰہِ أَن یَّجْمَعَنِیْ وَإِیَّاہُمْ فِیْ مَقَرِّ رَحْمَتِہِ “ ا س اﷲ تعالیٰ کا شکر ہے جس نے انہیں شہادت عطا کرکے مجھے عزت بخشی اور امید ہے کہ اﷲ تعالیٰ مجھے انکے ساتھ اپنی رحمت کے ٹھکانے ( جنت ) میں اکٹھے فرمائے گا۔

( اسلامی تعلیم : از مولانا عبد السلام صاحب بستوی رحمہ اﷲ )

 

یہ تربیت کے وہ زرّین اصول ہیں جن پر ہمارے اسلاف نے اپنے نونہالوں کی تربیت کی جس کا نتیجہ دنیا کی نظروں میں کبھی سیدنا عمر بن خطاب، کبھی سیدناخالد بن ولید،سیدنا سعد بن أبی وقاص، طارق بن زیاد،محمد بن قاسم، مہلب بن أبی صفرہ، صلاح الدین أیوبی، سلطان محمد فاتح رحمہم اللہ کی شکل میں ظاہر ہوا.سچ ہے :

سبق پھر پڑھ اطاعت کا شجاعت کا صداقت کا
لیا جائے گا تجھ سے کام دنیا کی امامت کا

 

افسوس اب وہ سانچے ٹوٹ گئے جن میں زندگی کے یہ حقیقی ہیرو ڈھلا کرتے تھے، نہ اب امّت کے محیط میں وہ گوہرِ گراں مایہ ہیں، ہماری غلط تربیت نے فلمی پردوں کے تو کئی ہیرو پیدا کردئے لیکن زمانہ کے طویل انتظار کے باوجود زندگی کے حقیقی میدان کا کوئی ہیرو پیدا نہ ہو سکا، بیت المقدس آگے بڑھ بڑھ کر امّت کو صدائیں دے رہا ہے لیکن امت اپنی کثرتِ تعداد، سامانِ حرب وضرب کی کثرت اور بے پناہ مادّی وسائل کے باوجود جس طرح مٹھی بھر یہود کے پنجہء استبداد میں جکڑی ہوئی ہے یہ امت کے لئے تاریخ کا سب سے بڑا سانحہ ہے۔جو قوم ساری اقوام عالم کی رہنمائی کرتی تھی آج وہ خود کسی سالار کارواں کو ترس رہی ہے سچ ہے :

نشانِ راہ دکھاتے تھے جو ستاروں کو
ترس گئے ہیں کسی مردِ راہ داں کیلئے

 

غرض مذکورہ کھیلوں کے ساتھ موجودہ دور کے کھیلوں میں، شوٹنگ، وہیٹ لفٹنگ، فٹبال، والی بال،بیٹ مینٹن،ہاکی اور کرکٹ وغیرہ بھی کھیلے جاسکتے ہیں بشرطیکہ نمازوں کی پابندی ہو اور دیگر دینی ودنیوی سرگرمیاں متأثر نہ ہوں،اسلام ان تمام کھلیوں کو ناجائز قرار دیتا ہے جن سے نہ صحت حاصل ہوتی ہو اور نہ جہاد کی تیاری ہوتی ہو، بلکہ جن سے وقت کا ضیاع اور فرائض دینیہ(نماز وغیرہ )میں کوتاہی ہوتی ہو، جیسے : شطرنج، اسکوائش وغیرہ.

 

حواله جات : 

كتاب :  “اولاد كى اسلامى تربيت”
محمد انور محمدقاسم السّلفی

 

 

Table of Contents