Sections
< All Topics
Print

07. KIYA MUSLAMAAN KAABA KO POOJTAY HAIN? [If Islam opposes idol worship, why do Muslims pray to a square structure?]

KYA MUSLAMAAN KAABA KO POOJTE HAIN?

 

 

“Jab Islam Buton ko poojne ke khilaf hai to musalmaan apni namazon mein kaaba ke aage kyun jhukte hain aur uski ibadat kyun karte hain?”

     Kaaba hamara qibla hai, yani wo simt jiski taraf munh kar ke musalmaan namaz parhte hain.

    Ahem baat ye hai keh agarche musalmaan namazon mein kaaba ki taraf rukh karte hain lekin wo kaaba ko poojte hain na uski ibadat karte hain balkeh musalmaan sirf Allah ke aage jhukte hain aur Allah hi ki ibadat karte hain.

 

Iska zikar Surah Baqarah mein hai:

 
قَدْ نَرَىٰ تَقَلُّبَ وَجْهِكَ فِي السَّمَاءِ ۖ فَلَنُوَلِّيَنَّكَ قِبْلَةً تَرْضَاهَا ۚ فَوَلِّ وَجْهَكَ شَطْرَ الْمَسْجِدِ الْحَرَامِ﴾

 

“(Ae Nabi!) Ham aap ke chehre ka baar baar asmaan ki taraf uthna dekh rahe hain, lehaza ham zarur aapko is qible ki taraf  pher denge, jise aap pasand karte hain. So aap apna munh masjid-e-haram ki taraf pher len.”

[Surah Baqarah:02: 144]

 

QIBLA ITTEHAAD-O-ITTEFAAQ KA ZARIYA HAI 

 

Islaam Wahdat ka Deen hai, Chunaanche musalmaanon me Ittehaad aur Ittefaaq paida karne ke liye Islaam ne un ka ek Qibla Motaayyen kiya hai aur un ko hukm diya gaya hai keh woh Jahan kahin bhi hon namaaz ke waqt Kaabey ki taraf rukh karen. 

Jo Musalmaan Kaabe ke magrib ki taraf rahte hon, woh apna rukh mashriq ki taraf karenge aur jo Mashriq ki taraf rahte hon, woh apna rukh Magrib ki taraf karenge. 

 
KA’ABAH NAQSHA-E-AALAM KE WAST MEIN HAI

 

Ye Musalmaan hi the jinhon ne sab se pahle Duniyaa ka Naqsha banaya. Un ke Naqshon mein junoob upar ki taraf tha aur shimaal neeche ki taraf aur Ka’aba darmiyaan mein tha, baad mein magribi Naqsha Nigaaron ne jo naqshe banaye, un mein Shimaal upar aur Junoob neeche ki taraf dikhaya gaya jaisa ke aaj kal Duniya ke naqshey banaye jaate hain. Baharhaal  Alhamdulillah Ka’aba duniya ke naqshe ke taqreeban wast mein hai. 

 

TAWAF -E-KA’ABA

 

Jab musalmaan Makkah ki Masjid e Haram mein jaate hain, woh Ka’aba ke gird chakkar laga kar Tawaf karte hain. Unka ye amal wahid sachhey mabood par imaan aur uski Ibaadat ki alaamat hai. Jaise har dayere ka ek hi markaz hota hai, isi tarah Allah Ta’ala bhi ek hai jo Ibaadat ke laeq hai. 

 

HAZRAT UMAR RAZI ALLAAHU ANHU KI EK HADITH MEIN
AQEEDA-E-TAWHEED 

 

Jahan tak siyaah Patthar, yaani Hajre Aswad ki hurmat ka taalluq hai, Hazrat Umar Razi Yalaahu Anhu ki ek Hadith se wazeh hai. Hazrat Umar Razi allaahu Anhu ne Hajre Aswad ko bosa diya aur kaha, 

 [ إِنِّی أَعْلَمُ أَ نَّکَ حَجَرٌ لاَّ تَضُرُّ]تَنْفَعُ،وَلَوْلَا أَ نِّی رَأَیْتُ رَسُوْلَ اللّٰہِ صلى اللّٰه عَلَيْهِ وَسلم یُقَبِّلُکُ مَا قَبَّلْتُکَ ] 

 

“main yaqeenan jaanta hoon keh tu ek patthar hai, na tu koi faida phahuncha sakta hai na nuqsaan, agar main ne Nabi Kareem Salallahu Alaihi Wasallam ko tujhe chumtey na dekha hota to main tujhe kabhi na chumta.” (Sahih Albukhaari, Alhajj Hadith : 1597)

 

KAABE Ki CHHATH( roof ) PAR AZAAN

 

Nabi Kareem Salallahu Alaihi Wasallam ke daur mein log Ka’ba ki chhat ke oopar khare ho kar Azaan dete the.

( Tajalliyaat Nabuwwat: 226 )

 

Ab jo log ye Aitraaz karte hain keh Musalmaan Ka’ba ko poojte hain to bhala kon sa buton ko poojne wala iss but ke upar khara hota hai jis ki woh pooja karta hai?

“KABATULLAH”

If Islam opposes idol worship, why do Muslims pray to a square structure?

The simple cube shaped stone building located in Makkah is called the Ka„bah or the Sacred House. It is the
point toward which Muslims face when they pray. Although Muslims face the direction of Ka’bah during prayer, they do
not worship it. Muslims worship and pray only to God.

The Ka’bah was built by the prophet Abraham and hisson, Ishmael in response to God’s command over 4000 years
ago. Abraham consecrated the House for the worship of the one true God and invited all of humanity to visit it for that purpose. Even today Muslims who are physically and financially able are required to make a pilgrimage to it once in a lifetime. The Ka’bah has remained at the center of a continuous tradition of worship and devotion up to the present day, symbolic of permanence, constancy and renewal.

There were periods in human history during which mankind deviated from the monotheism taught by God’s prophets. Before the advent of Muhammad religion among the Arabs had degenerated into polytheism and paganism and Makkah was completely submerged in idolatry; some 360 idols had been placed in and around the Ka’bah to be worshipped there along with God. Prophet Muhammad was sent to restore to mankind the pure monotheism taught by all the messengers of God and reinstate the worship of Him alone. This he accomplished, and the Ka’bah was finally cleared of all man-made deities.

Among the ancient religious rites particular to the Ka’bah is walking around it. This suggests the integrating and unifying power of monotheism in human life and how a Muslim‟s existence should revolve around a pure devotion to God. The Ka’bah symbolizes the unity of all true religion, the brotherhood of all the prophets and the essential consistency of their message.

When Muslims pray facing toward this single central point they are reminded of their common purpose and long term goal. Even when standing directly before the Ka„bah in prayer one is not to look at it but rather at the ground before him. The spiritual focus is on God alone and never upon any created object.

REFERENCE:
BOOK: “CLEAR YOUR DOUBTS ABOUT ISLAM”
COMPILED BY : SAHEEH INTERNATIONAL
 

کیا مسلمان کعبہ کو پوجتے ہیں؟

 

 

’’جب اسلام بتوں کی پوجا کے خلاف ہے تومسلمان اپنی نمازوں میں کعبہ کے آگے کیوں جھکتے ہیں اور اس کی عبادت کیوں کرتے ہیں؟‘‘

کعبہ ہمارا قبلہ ہے، یعنی وہ سمت جس کی طرف منہ کر کے مسلمان نماز پڑھتے ہیں۔ اہم بات یہ ہے کہ اگرچہ مسلمان نمازوں میں کعبہ کی طرف رُخ کرتے ہیں لیکن وہ کعبہ کو پوجتے ہیں نہ اس کی عبادت کرتے ہیں بلکہ مسلمان صرف اللہ کے آگے جھکتے ہیں اور اس کی عبادت کرتے ہیں۔

اس کا ذکر سورۂ بقرۃ میں ہے:
﴿قَدْ نَرَىٰ تَقَلُّبَ وَجْهِكَ فِي السَّمَاءِ ۖ فَلَنُوَلِّيَنَّكَ قِبْلَةً تَرْضَاهَا ۚ فَوَلِّ وَجْهَكَ شَطْرَ الْمَسْجِدِ الْحَرَامِ﴾

’’ (اے نبی!) ہم آپ کے چہرے کا بار بار آسمان کی طرف اُٹھنا دیکھ رہے ہیں، لہٰذا ہم ضرور آپ کو اس قبلے کی طرف پھیر دیں گے جسے آپ پسند کرتے ہیں۔ سو آپ اپنا منہ مسجد حرام کی طرف پھیر لیں۔‘‘

[ البقرة:144:2]

 

قبلہ اتحاد و اتفاق کا ذریعہ ہے

اسلام وحدت کا دین ہے، چنانچہ مسلمانوں میں اتحاد اور اتفاق پیدا کرنے کے لیے اسلام نے ان کا ایک قبلہ متعین کیا ہے اور ان کو حکم دیا گیا ہے کہ وہ جہاں کہیں بھی ہوں، نماز کے وقت کعبے کی طرف رُخ کریں۔ جو مسلمان کعبے کے مغرب کی طرف رہتے ہوں، وہ اپنا رُخ مشرق کی طرف کریں گے اور جو مشرق کی طرف رہتے ہوں، وہ اپنا رُخ مغرب کی طرف کریں گے۔

کعبہ نقشۂ عالم کے وسط میں ہے

یہ مسلمان ہی تھے جنھوں نے سب سے پہلے دنیا کا نقشہ بنایا۔ ان کے نقشوں میں جنوب اوپر کی طرف تھا اور شمال نیچے کی طرف اور کعبہ درمیان میں تھا۔ بعد میں مغربی نقشہ نگاروں نے جو نقشے بنائے ،ان میں شمال اوپر اور جنوب نیچے کی طرف دکھایا گیا جیسا کہ آج کل دنیا کے نقشے بنائے جاتے ہیں ۔ بہر حال الحمدللہ کعبہ دنیا کے نقشے کے تقریبًا وسط میں ہے۔

طوافِ کعبہ

جب مسلمان مکہ کی مسجد حرام میں جاتے ہیں، وہ کعبے کے گرد چکر لگا کر طواف کرتے ہیں۔ ان کا یہ عمل واحد سچے معبود پر ایمان اور اس کی عبادت کی علامت ہے۔ جیسے ہر دائرے کا ایک ہی مرکزہوتا ہے،اسی طرح اللہ تعالیٰ بھی ایک ہے جو عبادت کے لائق ہے۔

حضرت عمررضی اللہ عنہ کی ایک حدیث میں عقیدۂ توحید جہاں تک سیاہ پتھر، یعنی حجرِ اسود کی حرمت کا تعلق ہے، حضرت عمر عمررضی اللہ عنہ کی ایک حدیث سے واضح ہے۔ حضرت عمررضی اللہ عنہ نے حجر اسود کو بوسہ دیا اور کہا:

[ إِنِّی أَعْلَمُ أَ نَّکَ حَجَرٌ لاَّ تَضُرُّ تَنْفَعُ،وَلَوْلَا أَ نِّی رَأَیْتُ رَسُوْلَ اللّٰہِ اللّٰه صلى اللّٰه عَلَيْهِ وَسلمیُقَبِّلُکُ مَا قَبَّلْتُکَ ]

 

میں یقینا جانتا ہوں کہ تو ایک پتھر ہے، نہ تو کوئی فائدہ پہنچا سکتا ہے نہ نقصان۔ اگر میں نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو تجھے چومتے نہ دیکھا ہوتا تو میں تجھے کبھی نہ چومتا۔‘‘ 

[صحیح البخاری، الحج، باب ماذکر فی الحجر الأسود، حدیث :1597]

کعبے کی چھت پر اذان

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے دور میں لوگ کعبہ کی چھت کے اُوپر کھڑے ہو کر اذان دیتے تھے۔

[تجلیات نبوت ، ص : 226]

اب جو لوگ یہ اعتراض کرتے ہیں کہ مسلمان کعبہ کو پوجتے ہیں توبھلا کون سا بتوں کو پوجنے والا اس بُت کے اُوپر کھڑا ہوتا ہے جس کی وہ پوجا کرتا ہے؟

 

اسلام میں پوجنے اور عبادت کرنے کا تصور صرف ذات باری تعالیٰ کے لیے ہے۔ حجر، شجر، شخصیات یا استھان کی پوجا کا تصور اسلام میں نہیں پایا جاتا۔ اسلام نے تو ایسی جگہ پر بھی عبادت سے روک دیا ہے جہاں اللہ کے علاوہ کسی اور کی عبادت کا شبہ پیدا ہو سکتا ہو، مثلاً قبرستان میں نماز ادا کرنا، یا ایسی جگہ عبادت کرنا جہاں غیراللہ کی عبادت کی جاتی ہو، ممنوع ہے۔ تاریخ شاہد ہے کہ کسی دور میں کوئی ایک مثال بھی نہیں ملتی کہ مسلمانوں نے کسی مکان یا عمارت کی عبادت کی ہو۔ اسلام میں اگر اللہ کے علاوہ کسی اور کی عبادت کا تصور ہوتا تو محمدصلی اللہ علیہ وسلم اس لائق تھے کہ آپ کی قبر کو قبلہ بنایا جاتا اور اس کی عبادت کی جاتی۔ لیکن آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس سے سختی سے منع کر دیا، اسی طرح آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اللہ تعالیٰ کے سوا کسی اور کو سجدہ جائز ہوتا تو میں عورت کو حکم دیتا کہ وہ اپنے خاوند کو سجدہ کرے، پھر یہ بات بھی ہے کہ بتوں کے پجاری تو بت خانے میں جا کر عبادت کرتے ہیں یا ان بتوں کے ماڈل بنا کر سامنے رکھتے ہیں جب کہ مسلمان قبولیت عبادت کے لیے خانہ کعبہ جانے کو شرط قرار دیتے ہیں نہ اس کا ماڈل اپنے سامنے رکھنا جائز سمجھتے ہیں۔ وہ تو جہتِ کعبہ کو سامنے رکھ کہ کعبہ کے بجائے رب کعبہ کی عبادت کرتے ہیں ۔ ( عثمان منیب)
Table of Contents