Sections
< All Topics
Print

27. EK SE ZIYAADA BIWIYON KI IJAAZAT KIS LIYE ( POLYGAMY )

EK SE ZIYADA BIWIYON KI IJAZAT KIS LIYE ( POLYGAMY )

” Islam mein ek admi ko ek se ziyada biwiyan rakhne ki ijazat kiyun di gayi hai ? ya islam mein mard ko motadid shadiyon ki kiyun ijazat hai ?

” kaseer azwaji ya motadid azwaj se murad shaadi ka aisa nizam hai jis mein ek shakhs ek se ziyada sharik-e-zindagi rakh sakta hai. Kaseer azwaji 2 qism ki hai : 

(1)  Kaseer Azwaji Zinanah: Jis men ek mard ek se ziyada auraton se shadi kar sakta hai. 

(2) Kaseer Azwaaji Mardana : Jis mein ek aurat ek se ziyada shohar rakh sakti hai. 

Islam mein mahdood had tak ziyada biwiyan rakhne ki ijazat hai jab keh ek aurat ko ek se ziyaada shohar rakhne ki ijazat nahi hai – 

KASEER AZWAJ MUKHTALIF MAZAHIB MEIN 

Ab asal sawal ki taraf atey hain keh islam ek admi ko ek se ziyada biwiyon ki ijazat kiyun deta hai ? 

Qur’an duniya mein wahid mazhabi kitab hai jis mein tahrir hai : Sirf ek se shadi karo. ” kisi dusri mazhabi kitab mein yeh hidayat nahi ki gayi keh sirf ek biwi rakho chahe Hinduon ke waid, ramayan, mahabharat ya geeta hon , ya Yahudion ki talmod ya Esaiyon ki bibal ho, un kitabon ke motabiq ek admi jitni shadiyan chahe kar sakta hai. Ye to bahot baad ki baat hai keh hindu panditon aur esaai kalisa ne biwiyon ki tadad ek tak mahdood kar di. 

Bahot si hindu mazhabi shakhsiyaat jin ka unki kitabon mein zikr hai, ek se ziyada biwiyan rakhte the. Raam ke baap raja dasrath ki ek se ziyada biwiyan thin, isi tarah krishn ki bahot si biwiyan thin. Shuru mein esaai mardon ko bhi ijazat thi keh woh jitni chahe biwiyan rakh sakte hain kiyun keh bibal mein biwiyon ki tadaad ke bare mein koi pabandi nahi. Yeh to mahez chand sadiyon pahle hua keh charch ne biwiyon ki tadad mahdood kar ke ek kardi. 

Yahudiyat mein bhi ek se ziyada biwiyan rakhne ki ijaazat hai. Yahudiyon ki talmodi qanoon ke mutabiq hazrat Ibrahim alaihis salam ki teen biwiyan thin aur hazrat Sulaiman alaihis salam ki saikron. (1) kaseer azwaj us wqt tak jari rahi jab rabbi garshoom bin yahuda ( 960 iswi  ta 1030 iswi) ne ek farman ke zariye  ziyada shadiyon par pabandi laga di magar muslim mumalik mein rahne wale sifardi yahudion ne 1950 iswi tak is par amal dar amad jaari rakha hatta keh Israil ke daftar peshwaye aala (Chief Rabbinate) ne ek se ziyada shadion par pabandi ka daira barha diya. 

Dilchasp baat yeh hai keh 1975 iswi ki bharti mardam shumari mein yeh baat samne aayi keh hinduon ne musalmanon ki nisbat ziyada shadiyan ki hain.” kameti baraye islam mein aurat ka maqam” ki report jo 1975 iswi mein shaya hui us k safhat 66-67 mein bataya gaya keh 1961 iswi se 1991 iswi tak ke doraan mein ek se ziyada shadion ke liye hinduon ka tanasub 5.06% jab keh musalmano ka ,4.31% tha. Bharat ke qanoon ke motabiq sirf musalmanon ko ek se ziyada shadion ki ijaazat hai. Wahan kisi gair muslim ke liye ek se ziyada biwiyan rakhna gair qanooni hai. Is ke bawajood keh yeh gair qanooni hai, musalmanon ki nisbat hindu ziyada biwiyan rakhte hain. Pahle bharat mein biwiyon ki ziyada tadaad ke bare mein pabandi na thi. 1954 iswi mein jab bharat mein shaadi ka qanoon (marriage act) paas kiya gaya to hinduon ke liye ek se ziyada biwiyan rakhna ghair qanooni qarar paya ( yeh baat qanoon mein hai lekin hindu mazhab ki kisi kitaab mein nahi). Ab ham jayeza lete hain keh islam ek se ziyada biwiyon ki ijaazat kiyun deta hai ? 

QURAN MAHDOOD TADAD MEIN AURTON SE SHADI KI IJAZAT DETA HAI 

Jaisa ke main ne pahle kaha ke Qur’an kurra-e-arz par wahid kitaab hai jo yeh kahti hai keh ” sirf ek se shaadi karo. 

Qur’an Azeem ki surat alnisa maen is baat ko is peraye mein bayan kiya gaya hai : 

 
”  فَانكِحُوا مَا طَابَ لَكُم مِّنَ النِّسَاءِ مَثْنَىٰ وَثُلَاثَ وَرُبَاعَ فَإِنْ خِفْتُمْ أَلَّا تَعْدِلُوا فَوَاحِدَةً 

 chunancha tum un aurton se shadi karo jo tumhen achi lagen, do do , teen teen ya chaar chaar (aurton) se, lekin agar tum ko is ka khauf ho keh tum ( un ke sath ) insaf na kar sakoge to sirf ek se ( nikah karo )

[Al Nisa : 3/4]

Nuzule Qur’an se pahle shadion  ki tadad mahdood na thi aur kayi mard besiyon biwiyan rakhte the, aur baaz ki to sainkron biwiyan thin, lekin Islam ne biwion ki tadad 4 tak mahdood rakhi hai. Islam mard ko do , teen ya chaar aurton se nikah ki ijazat deta hai bashart ye keh woh un me insaf kar sake. 

Isi surat, yaani suraye nisa ki 129 wen ayat kahti hai :- 

﴿وَلَن تَسْتَطِيعُوا أَن تَعْدِلُوا بَيْنَ النِّسَاءِ﴾

” tum aurton ke darmiyan insaf na kar sakoge.

[Al Nisa : 4 /129]

Is liye ziyada shadian karna koi qanoon nahi balke istisna hai. bahot se log yeh galat nazarya rakhte hain keh ye zaruri hai keh ek musalman ek se ziyada biwiyan rakhey. 

Hillat-o- hurmat ke aitebar se islami ahkaam ki paanch aqsam hain : 

FARZ : Yeh lazmi hai aur iska na karna baise saza-o- azaab hai. 

MUSTAHAB : Iska hukm diya gaya hai aur is par amal ki targib di gai hai. 

MUBAH : Yeh jayez hai, yaani iski ijaazat di gai hai. iska karna ya na karna barabar hai. 

MAKRUH : Ye acha kaam nahi, is par amal karne ki hoslah shikni ki gai hai. 

HARAAM : Is se mana kiya gaya hai, yaani is par amal karna haraam hai aur iska chorna baise sawab hai. 

Ek se ziyada shadiyan karna mazkurah ahkam ke darmiyane darje mein hai. iski ijaazat hai lekin yeh nahi kaha ja sakta keh ek musalman jis ki do, teen ya chaar biwiyan hain, us se behtar hai jiski sirf ek biwi hai. 

AURTON KI AUSAT UMAR 

Qudrati tor par larke aur larkiyan taqriban brabar paida hote hain lekin ek bachi mein ek bache ki nisbat quwat-e-modafeat ziyada hoti hai. Ek bachi bimariyon ka ek bache ki nisbat behtar moqabla kar sakti hai. Yehi wajah hai keh ibtedai umar mein larkon ki sharah amwat larkiyon ki nisbat ziyada hai. Isi tarah jangon mein aurton ki nisbat mard ziyada halak hote hain. Hadsaat aur amraz ke bais bhi auaton ki nisbat mard ziyada marte hain. Aurton ki ausat umar bhi mardon ki nisbat ziyada hai aur duniya mein randwe mardon ki nisbat bewah aurten ziyada hoti hain. 

BAHARAT MAiN NISWANI JANEEN AUR LARKIYON KA QATAL 

Bharat aur us ke hamsaya mumalik un chand mumalik mein shamil hain jahan aurton ki abadi mardon se kam hai. Iski wajah yeh hai keh bharat mein bachpan hi mein larkiyon ko halaak karne ki sharah bahot ziyada hai. Haqiqat yeh hai keh wahan lakhon aurten hamal ke tibbi moayene mein larki ka ilm hone par isqat( abortion) karwa deti hain. Is tarah har saal 10 lakh se ziyada bachiyan qabl az weladat maut ke ghaat utaar di jati hain. Agar is saffaki ko rok diya jaye to bharat mein bhi aurton ki tadaad mardon ki nisbat ziyada hogi. 

ALAMI SATAH PAR AURTON KI ABADI MARDON KI NISBAT ZIYADAH HAI 

America mein aurton ki tadad mardon ki nisbat taqriban 78 laakh ziyada hai. sirf newyork mein aurten mardon se 10 lakh ziyada hain, nez mardon ki ek tehai tadad ham jins parast hai. Majmui tor par America mein ham jins paraston ki tadad arhai crore hai. Iska wazeh matlab yeh hai keh un logon ko aurton se shadi ki khwahish nahi, isi tarah Bartaniya mein aurton ki tadad mardon se 40 lakh ziyada hai. Germany mein mardon ki nisbat aurten 50 lakh ziyada hain, isi tarah Russia mein bhi mardon ke moqable mein aurten 90 lakh ziyada hain. Fil jumlah Allah ta’la  hi behtar janta hai keh duniya mein majmui tor par khawateen ki tadad mardon ki nisbat kitni ziyada hai. 

 
HAR MARD KO SIRF EK SHADI TAK MAHDOOD RAKHNA NA QABIL-e-AMAL HAI 

Agar ek mard sirf ek aurat se shadi kare tab bhi America mein teen crore aurten be shohar rahengi ( yeh baat pesh-e-nazar rahe keh arhai crore American mard ham jins parast hain. Isi tarah 40 lakh bartaniyah mein, 50 lakh Germany mein aur 90 lakh Russia mein aise aurten hongi jinhen khawind nahi mil sakega. 

Farz karen keh meri bahen America mein rahne wali gair shadi shuda khawatin mein se hai ya farz karen aap ki bahen wahan is halat men rah rahi hai. Is masle ke sirf do hal hain keh ya to woh kisi shadi shuda mard se shadi kare ya phir ” public property ” ( ijtemai milkiyat ) bane. Is ke ilawa aur koi rasta nahi. Jo aurten nek hain woh yaqinan pahli surat ko tarjih dengi. Bahot si khawatin dusri aurton ke saath apne shohar ki shirakat pasand nahi kartin. lekin Islami moashre mein jab surat-e-haal gambeer aur pecheeda ho to ek sahebe eman aurat apna mamuli zaati nuqsaan bardasht kar sakti hai magar is bare nuqsan ko bardasht nahi kar sakti keh uski dusri musalman bahnen ” public property ” yani ijtemai milkiyat ban kar rahen.

Shaadi shuda mard se shaadi ijtemaai milkiyat banne se behtar hai. Magrabi moashre mein aam tor par ek shaadi shuda mard apni biwi ke ilawa dusri aurton se bhi jinsi taluqat rakhta hai. Aisi surat mein aurat hatak aamez zindagi basar karti aur adam  tahaffuz ka shikar rehti hai. Dusri taraf yahi moashra aise mard ko jiski ek se ziyada biwiyan hoti hain qabool nahi karta, halan ke is tadude azwaj ki surat mein aurat puri izzat aur hifazat ke saath nehayat ba waqar zindagi basar karti hai. Is tarah aurat ke samney do raste rah jate hain : yaa to woh shadi shuda mard se shadi kare ya ” ijtemai milkiyat ” ban jaye. Islam pahli surat ko tarjih dete hue usey ba izzat moqam dilata hai aur dusri surat ki qatan ijazat nahi deta. Is ke ilawa aur bhi kai asbab hain jin ke pesh-e-nazar islam mard ko ek se ziyada shadiyon ki ijazat deta hai. Un asbab mein asal ahmiyat ki cheez aurat ki izzat-o- namoos hai jis ki hifazat islam ke nazdik farz aur lazim hai.

Musalmanon ka safaya kar diya aur phir Spain mein ek bhi musalman aisa na tha jo azadi se “azan” de sake. 

 
TAQRIBAN DERH CRORE ARAB NASLI ESAYI HAIN

Musalman duniyaye Arab par 1400 saal se hukmaran hain. 

Iss ke bawajood abhi tak 14 Million, yaani ek karor chalis lakh  Arab aise hain jo naslon se esayi hain, jaise Misr ke qabti esayi. 

Agr islam talwar ya taqat ke zor se phela hota to Arab mein ek bhi esayi na hota. 

BHARAT ME GAIR MUSLIM

Hindustan mein musalmanon ne taqriban ek hazaar saal hukumat ki. Agar wo chahte to bazariah taaqat hindustan ke gair muslimo ko musalman kar lete. Aaj bharat ki 80 fisad Aabadi gair muslimon ki hai ye tamam ghair muslim kya is baat ki zinda shahadat nahi hain keh islam talwaar se nahi phela. 

Indonesia Aur Malaysia Mein ISLAM

Duniya bhar ke momalik mein se Indonesia mein musalmanon ki tadad sab se ziyada hai, isi tarah Malaysia mein bhi aksaryat musalmanon ki hai. Ab koi un se puche keh konsi islami fouj Indonesia aur Malaysia gayi thi ?

AFRICA KA MASHRIQI SAHIL

Isi tarah islam bahot tezi se barre Aazam Africa ke mashriqi sahil par phela. Mushriqeen se

pucha ja sakta hai keh agar islam talwar ke zariye se phela to konsi islami fauj Africa ke mashriqi sahil par gayi thi. 

THOMAS KAAR LAAYEL KI DALEEL 

Mashhoor moarrikh thomas kaarlayel apni kitab ” heero and heero worship ” mein Islam ke phelao ke baare mein magribi tasawurat ki tardeed karte hue kahta hai : ” Islam ke farog mein talwar istemal hui lekin yeh talwar kaisi thi ? ek nazariya tha. 

Har naya nazariya shuru mein fard-e-wahid ke nehan khana-e-dimaag mein janam leta hai, wahan woh nashunuma pata rahta hai. Is par duniya bhar ka sirf ek hi admi yaqin rakhta hai , goya ek shaks fikri lehaz se tamam insanon se mukhtalif hota hai. Agar  woh hath mein talwar le aur us ke zariye se apna nazariya phelane ki koshish kare to yeh koshish be sood rahegi, lekin agar aap apne nazariye ki talwar se sargarm-e-Amal rahen to woh nazariya duniya mein apni quwat se khud b khud phelta chala jaye ga – ” 

 
DEEN MEIN KOI JABAR NAHI 

Yeh durust nahi keh islam talwar ke zor se phela. Musalman farog-e-Islam ke liye talwar istemal karna chahte bhi to istemal nahi kar sakte the. 

 kyun keh Qur’an majeed mandarjah zel ayat me kehta hai :

 ﴿ لَا إِكْرَاهَ فِي الدِّينِ ۖ قَد تَّبَيَّنَ الرُّشْدُ مِنَ الْغَيِّ ۚ﴾

” Deen mein koi jabar nahi. hidayat gumrahi se wazeh ho chuki hai.

[Al Baqarah : 2/256]

Why is a Muslim man allowed to have more than
one wife?

Although it is found in many religious and cultural traditions, polygamy is most often identified with Islam in the minds of Westerners.

However, one does not find any limit to the number of wives in the Talmud, Bible, Hindu scriptures or others. Therefore, polygamy is not something exclusive to Islam. There was no restriction on Hindu men regarding the number of wives until 1954, when Indian civil law made it illegal for a non-Muslim to have more than one wife. It continued among the Jewish Sephardic communities until as late as 1950, when an Act of the Chief Rabbinate of Israel declared it unlawful to marry more than one wife. And Christian men were originally permitted to take as many wives as they wished since the Bible placed no limit on the number. It was only in recent centuries that the Church limited the number of wives to one. Unrestricted polygamy has been practiced in most human societies throughout the world until fairly recently.

In a world which allowed men an unlimited number of wives, it was Islam which limited the number to four.
Before the Qur‟an was revealed, there was no upper limit and many men had scores of wives, some into the hundreds. Islam placed the limit at four and gave a man permission to marry two, three or four on the condition that he must deal with all of them benevolently and fairly, as indicated in the Qur‟an:

But if you fear that you will not be just, then [marry] only one. [4:3]

The Qur‟an is the only religious book that says, “marry only one.” The idea that it is compulsory for a Muslim man to have more than one wife is a misconception. Polygamy  falls into the category of things that are permissible but not obligatory. Taking an additional wife is neither encouraged nor prohibited. Islam allows a man to marry up to four wives provided he can support them all adequately and treat
each one fairly. Just and fair treatment involves what is within the husband’s ability, such as the time spent with each, expenditures, gifts, etc.

 
[1] Love and physical attraction are matters of the heart, usually beyond a man‟s ability to control; therefore, those differences are excused. Not excused, however, is an obvious display of favor or aversion toward one in particular, or injustice in terms of their marital rights. Equal treatment of each remains a strict condition.

If he knows or even fears that he will be unable to do so, it is not permissible for him to marry more than one wife. This Qur’anic directive strengthens the position of the family and of women, for it provides legal security for many women who would otherwise remain unmarried.

It is a known fact that the world female population is now more than the male population. Infant mortality rates among males are higher when compared to that of females. During wars, more men are killed as compared to women. More men die due to accidents and diseases than women. The average life span of females is longer than that of males. Thus, at almost any given time and place, there is a shortage of men in comparison to women. And when men are taken out of the marriage market by wars or economic difficulties it is women who suffer.

What are women of honor and self respect to do is such situations? How can they fulfill their natural desire to have companionship and sexual relations without resorting to fornication, adultery, lesbianism or other perverted practices? The only options open to unmarried women are to remain deprived of a relationship for the rest of their lives, to become “public property” or to marry a married man. Islam prefers giving women the advantage by permitting and facilitating legal marriage and prohibiting irresponsible relationships. 

The Western insistence on monogamy is essentially false. In their societies today it is not uncommon for a man to have extramarital relations with girlfriends, mistresses or prostitutes. Seldom is this disapproved of despite the harm that comes about from it. Soaring divorce rates, broken homes, deadbeat dads, increasing numbers of children born out of wedlock and the spread of sexually transmitted diseases are just a few of the negative consequences of this common practice. Additionally, the woman in such a
relationship has no legal rights. She will easily be cast aside to fend for herself should she become pregnant or when the man simply tires of her.

Within marriage the woman has a husband who is obligated by law to provide for her and her children. There is no doubt that a second wife lawfully married and treated honorably is better off than a mistress without any legal rights or social respect. Islam has allowed more than one wife in order to protect society from immorality and to uphold the honor and dignity of women.

Polygamy protects the interests of women and children within society and also prevents the spread of venereal diseases, herpes and AIDS, which are rampant in promiscuous societies where extra-marital affairs abound. After World War II, when suggestions to legalize polygamy were rejected by the Church in Germany, prostitution was legalized instead. The rate of marriage has been steadily declining there as the new generation finds marriage increasingly unnecessary and irrelevant. 

Yet polygamy continues to be banned even though it preserves the honor and chastity of women. In Western societies men prefer to keep polygamy illegal because it absolves them of responsibility. Legalized polygamy would require them to spend for the maintenance of their additional wives and offspring while the status quo allows them to enjoy extra-marital affairs without economic consequence Granted, there is the problem of natural jealousy among wives[2].

[2]Yet no one has cited jealousy among siblings as a reason not to have another child.

However, they are encouraged to overcome it to the best of their ability on the principle of liking for others what one would like for oneself. If the first wife should find such a situation unbearable she has the option of requesting divorce. And an unmarried woman is not under obligation to accept the proposal of a man already married; she is free to decide for herself. In some societies, a wife will seek a second wife for her husband to be a companion for herself and share in some of her responsibilities.

Islam takes the society as a whole into consideration, seeking to maximize benefit and reduce harm. As long as there are certain individual and social problems whose solution lies in the taking of an additional wife, it cannot be prohibited. Yet, in spite of its legality most in Muslim countries, it is a small minority of Muslims that actually enter into a second marriage as most men cannot afford the expense of maintaining more than one family.

REFERENCE:
BOOK: “CLEAR YOUR DOUBTS ABOUT ISLAM”
COMPILED BY : SAHEEH INTERNATIONAL

ایک سے زیادہ بیویوں کی اجازت کس لیے؟
(Polygamy)

’’اسلام میں ایک آدمی کو ایک سے زیادہ بیویاں رکھنے کی اجازت کیوں دی گئی ہے؟ یا اسلام میں مرد کو متعدد شادیوں کی کیوں اجازت ہے؟‘‘

کثیر ازواجی یا تعددِ ازواج سے مراد شادی کا ایسا نظام ہے جس میں ایک شخص ایک سے زیادہ شریکِ زندگی رکھ سکتا ہے۔کثیر ازواجی دوقسم کی ہے:

(1) کثیر ازواجی زنانہ: جس میں ایک مرد ایک سے زیادہ عورتوں سے شادی کرسکتا ہے۔

(2)کثیر ازواجی مردانہ: جس میں ایک عورت ایک سے زیادہ شوہر رکھ سکتی ہے۔ اسلام میں محدود حد تک زیادہ بیویاں رکھنے کی اجازت ہے جبکہ ایک عورت کو ایک سے زیادہ شوہر رکھنے کی اجازت نہیں ہے۔

کثیر ازواجی مختلف مذاہب میں

اب اصل سوال کی طرف آتے ہیں کہ اسلام ایک آدمی کو ایک سے زیادہ بیویوں کی اجازت کیوں دیتا ہے؟

قرآن دنیا میں واحد مذہبی کتاب ہے جس میں تحریر ہے: ’’صرف ایک سے شادی کرو۔‘‘کسی دوسری مذہبی کتاب میں یہ ہدایت نہیں کی گئی کہ صرف ایک بیوی رکھو۔ چاہے

ہندوؤں کے وید، رامائن، مہا بھارت یا گیتا ہوں، یا یہودیوں کی تالمود یا عیسائیوں کی بائبل ہو، ان کتابوں کے مطابق ایک آدمی جتنی شادیاں چاہے کر سکتا ہے۔یہ تو بہت بعد کی بات ہے کہ ہندو پنڈتوں اور عیسائی کلیسا نے بیویوں کی تعداد ایک تک محدود کر دی۔

بہت سی ہندو مذہبی شخصیات جن کا ان کی کتابوں میں ذکر ہے، ایک سے زیادہ بیویاں رکھتے تھے۔ رام کے باپ راجہ دسرتھ کی ایک سے زیادہ بیویاں تھیں، اسی طرح کرشن کی بہت سی بیویاں تھیں۔

شروع میں عیسائی مردوں کو بھی اجازت تھی کہ وہ جتنی چاہے بیویاں رکھ سکتے ہیں کیونکہ بائبل میں بیویوں کی تعداد کے بارے میں کوئی پابندی نہیں۔ یہ تو محض چند صدیوں پہلے ہوا کہ چرچ نے بیویوں کی تعداد محدود کر کے ایک کر دی۔

یہودیت میں بھی ایک سے زیادہ بیویاں رکھنے کی اجازت ہے۔ یہودیوں کے تالمودی قانون کے مطابق حضرت ابراہیم علیہ السلام کی تین بیویاں تھیں اور حضرت سلیمان علیہ السلام کی سینکڑوں۔[1]

کثیر ازواجی اس وقت تک جاری رہی جب رِبّی گرشوم بن یہودا (960ء تا 1030ء) نے ایک فرمان کے ذریعے سے زیادہ شادیوں پرپابندی لگا دی مگر مسلم ممالک میں رہنے والے سیفارڈی یہودیوں نے 1950ء تک اس پر عمل درآمد جاری رکھا حتی کہ اسرائیل کے دفتر پیشوائے اعلیٰ (Chief Rabbinate) نے ایک سے زیادہ شادیوں پر پابندی کا دائرہ بڑھا دیا۔

[1] بائبل کی اس بات کی تصدیق درج ذیل حدیث سے بھی ہوتی ہے :’’ حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:’’ سلیمان علیہ السلا م نے کہا کہ میں آج رات اپنی نوے بیویوں کے پاس جاؤں گا اور ان میں سے ہر ایک، ایک سوار جنے گی جو اللہ کی راہ میں جہاد کرے گا۔ آپ کے کسی ساتھی نے کہا: ان شاء اللہ کہیں مگر انھوں نے یہ نہ کہا تو اُن میں سے کوئی بھی حاملہ نہ ہوئی سوائے ایک کے، اور اس نے بھی ادھورا بچہ جنا۔ اس پروردگار کی قسم جس کے ہاتھ میں محمد( صلی اللہ علیہ وسلم )کی جان ہے! اگر وہ ان شاء اللہ کہہ لیتے تو سب کے ہاں بچے ہوتے اور وہ سوار ہو کر اللہ کی راہ میں جہاد کرتے۔‘‘ (صحیح البخاری، الأیمان والنذور، باب کیف کانت یمین النبی صلی اللہ علیہ وسلم ، حدیث :6639)

دلچسپ بات یہ ہے کہ 1975ء کی بھارتی مردم شماری میں یہ بات سامنے آئی کہ ہندوؤں نے مسلمانوں کی نسبت زیادہ شادیاں کی ہیں۔ ’’کمیٹی برائے اسلام میں عورت کا مقام‘‘ کی رپورٹ جو 1975ء میں شائع ہوئی اس کے صفحات 67-66 میں بتایا گیا کہ 1961ء سے 1991ء تک کے دوران میں ایک سے زیادہ شادیوں کے لیے ہندوؤں کا تناسب 5.06% جبکہ مسلمانوں کا 4.31% تھا۔ بھارت کے قانون کے مطابق صرف مسلمانوں کو ایک سے زیادہ شادیوں کی اجازت ہے۔ وہاں کسی غیر مسلم کے لیے ایک سے زیادہ بیویاں رکھنا غیرقانونی ہے۔ اس کے باوجودکہ یہ غیر قانونی ہے، مسلمانوں کی نسبت ہندو زیادہ بیویاں رکھتے ہیں۔ پہلے بھارت میں بیویوں کی زیادہ تعداد کے بارے میں پابندی نہ تھی۔ 1954ء میں جب بھارت میں شادی کا قانون (میرج ایکٹ) پاس کیا گیاتو ہندوؤں کے لیے ایک سے زیادہ بیویاں رکھنا غیر قانونی قرار پایا (یہ بات قانون میں ہے لیکن ہندو مذہب کی کسی کتاب میں نہیں)۔

اب ہم جائزہ لیتے ہیں کہ اسلام ایک سے زیادہ بیویوں کی اجازت کیوں دیتا ہے؟

قرآن محدود تعداد میں عورتوں سے شادی کی اجازت دیتا ہے

جیسا کہ میں نے پہلے کہا کہ قرآن کرۂ ارض پر واحد کتاب ہے جو یہ کہتی ہے کہ ’’صرف ایک سے شادی کرو۔‘‘ قرآن عظیم کی سورۃ النساء میں اس بات کو اس پیرائے میں بیان کیا گیا ہے:

فَانكِحُوا مَا طَابَ لَكُم مِّنَ النِّسَاءِ مَثْنَىٰ وَثُلَاثَ وَرُبَاعَ فَإِنْ خِفْتُمْ أَلَّا تَعْدِلُوا فَوَاحِدَةً

’’چنانچہ تم ان عورتوں سے شادی کرو جو تمھیں اچھی لگیں دو دو، تین تین یا چارچار (عورتوں) سے، لیکن اگر تم کو اس کا خوف ہو کہ تم (ان کے ساتھ) انصاف نہ کر سکو گے تو صرف ایک سے(نکاح کرو)۔‘‘

[ النساء : 3/4 ]

نزولِ قرآن سے پہلے شادیوں کی تعداد محدود نہ تھی اور کئی مرد بیسیوں بیویاں رکھتے تھے۔ اور بعض کی تو سینکڑوں بیویاں تھیں۔ لیکن اسلام نے بیویوں کی تعداد 4تک محدود رکھی ہے۔ اسلام مرد کو دو، تین یا چار عورتوں سے نکاح کی اجازت دیتا ہے بشرطیکہ وہ ان میں انصاف کر سکے۔

اسی سورت، یعنی سورئہ نساء کی 129 ویں آیت کہتی ہے:

﴿وَلَن تَسْتَطِيعُوا أَن تَعْدِلُوا بَيْنَ النِّسَاءِ﴾

’’تم عورتوں کے درمیان انصاف نہ کر سکو گے۔‘‘

[النساء : 129/4]

اس لیے زیادہ شادیاں کرناکوئی قانون نہیں بلکہ استثنا ہے۔ بہت سے لوگ یہ غلط نظریہ رکھتے ہیں کہ یہ ضروری ہے کہ ایک مسلمان ایک سے زیادہ بیویاں رکھے۔

حلّت و حرمت کے اعتبار سے اسلامی احکام کی پانچ اقسام ہیں:

فرض: یہ لازمی ہے اور اس کا نہ کرنا باعث سزا و عذاب ہے۔

مستحب: اس کا حکم دیا گیا ہے اور اس پر عمل کی ترغیب دی گئی ہے۔

مباح: یہ جائز ہے، یعنی اس کی اجازت دی گئی ہے۔ اس کا کرنا یا نہ کرنا برابر ہے۔

مکروہ: یہ اچھاکام نہیں، اس پر عمل کرنے کی حوصلہ شکنی کی گئی ہے۔

حرام: اس سے منع کیا گیا ہے، یعنی اس پر عمل کرنا حرام ہے اور اس کا چھوڑنا باعثِ ثواب ہے۔

ایک سے زیادہ شادیاں کرنا مذکورہ احکام کے درمیانے درجے میں ہے۔ اس کی اجازت ہے لیکن یہ نہیں کہا جا سکتا کہ ایک مسلمان جس کی دو، تین یا چار بیویاں ہیں، اُس سے بہتر ہے جس کی صرف ایک بیوی ہے۔

عورتوں کی اوسط عمر

قدرتی طور پر لڑکے اور لڑکیاں تقریباً برابر پیدا ہوتے ہیں لیکن ایک بچی میں ایک بچے کی نسبت قوتِ مدافعت زیادہ ہوتی ہے۔ ایک بچی بیماریوں کا ایک بچے کی نسبت بہتر مقابلہ کر سکتی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ ابتدائی عمر میں لڑکوں کی شرح اموات لڑکیوں کی نسبت زیادہ ہے۔

اسی طرح جنگوں میں عورتوں کی نسبت مرد زیادہ ہلاک ہوتے ہیں۔ حادثات اور امراض کے باعث بھی عورتوں کی نسبت مرد زیادہ مرتے ہیں۔ عورتوں کی اوسط عمر بھی مردوں کی نسبت زیادہ ہے اور دنیا میں رنڈوے مردوں کی نسبت بیوہ عورتیں زیادہ ہوتی ہیں۔

بھارت میں نسوانی جنین اور لڑکیوں کا قتل

بھارت اور اس کے ہمسایہ ممالک ان چند ممالک میں شامل ہیں جہاں عورتوں کی آبادی مردوں سے کم ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ بھارت میں بچپن ہی میں لڑکیوں کو ہلاک کرنے کی شرح بہت زیادہ ہے۔ حقیقت یہ ہے کہ وہاں لاکھوں عورتیں حمل کے طبی معاینے میں لڑکی کا علم ہونے پر اسقاط کروا دیتی ہیں۔ اس طرح ہر سال 10لاکھ سے زیادہ بچیاں قبل از ولادت ہی موت کے گھاٹ اُتار دی جاتی ہیں ۔اگر اس سفاکی کو روک دیا جائے تو بھارت میں بھی عورتوں کی تعداد مردوں کی نسبت زیادہ ہوگی۔

عالمی سطح پر عورتوں کی آبادی مردوں کی نسبت زیادہ ہے

امریکہ میں عورتوں کی تعداد مردوں کی نسبت تقریباً 78 لاکھ زیادہ ہے۔ صرف نیویارک میں عورتیں مردوں سے 10 لاکھ زیادہ ہیں،نیز مردوں کی ایک تہائی تعداد ہم جنس پرست ہے۔ مجموعی طور پر امریکہ میں ہم جنس پرستوں کی تعداد اڑھائی کروڑ ہے۔ اس کاواضح مطلب یہ ہے کہ ان لوگوں کو عورتوں سے شادی کی خواہش نہیں، اسی طرح برطانیہ میں عورتوں کی تعداد مردوں سے 40 لاکھ زیادہ ہے۔ جرمنی میں مردوں کی نسبت عورتیں 50 لاکھ زیادہ ہیں، اسی طرح روس میں بھی مردوں کے مقابلے میں عورتیں 90 لاکھ زیادہ ہیں۔فی الجملہ اللہ تعالیٰ ہی بہتر جانتا ہے کہ دنیا میں مجموعی طور پر خواتین کی تعداد مردوں کی نسبت کتنی زیادہ ہے۔

ہر مرد کو صرف ایک شادی تک محدود رکھنا ناقابلِ عمل ہے

اگر ایک مرد صرف ایک عورت سے شادی کرے تب بھی امریکہ میں تین کروڑ عورتیں بے شوہر رہیں گی (یہ بات پیشِ نظر رہے کہ اڑھائی کروڑ امریکی مرد ہم جنس پرست ہیں۔) اسی طرح 40 لاکھ برطانیہ میں، 50 لاکھ جرمنی میں اور 90 لاکھ روس میں ایسی عورتیں ہوں گی جنھیں خاوند نہیں مل سکے گا۔

فرض کریں کہ میری بہن امریکہ میں رہنے والی غیر شادی شدہ خواتین میں سے ہے یا فرض کریں آپ کی بہن وہاں اس حالت میں رہ رہی ہے۔ اس مسئلے کے صرف دو حل ہیں کہ یا تو وہ کسی شادی شدہ مرد سے شادی کرے یا پھر ’’پبلک پراپرٹی‘‘ (اجتماعی ملکیت) بنے۔ اس کے علاوہ اورکوئی راستہ نہیں۔ جو عورتیں نیک ہیں وہ یقیناپہلی صورت کو ترجیح دیں گی۔ بہت سی خواتین دوسری عورتوں کے ساتھ اپنے شوہر کی شراکت پسند نہیں کرتیں۔ لیکن اسلامی معاشرے میں جب صورتحال گمبھیر اور پیچیدہ ہو تو ایک صاحبِ ایمان عورت اپنا معمولی ذاتی نقصان برداشت کر سکتی ہے مگر اس بڑے نقصان کو برداشت نہیں کر سکتی کہ اُس کی دوسری مسلمان بہنیں ’’پبلک پراپرٹی‘‘ یعنی اجتماعی ملکیت بن کر رہیں۔

شادی شدہ مرد سے شادی اجتماعی ملکیت بننے سے بہتر ہے۔ مغربی معاشرے میں عام طور پر ایک شادی شدہ مرد اپنی بیوی کے علاوہ دوسری عورتوں سے بھی جنسی تعلقات رکھتا ہے۔ ایسی صورت میں عورت ہتک آمیز زندگی بسر کرتی اور عدمِ تحفظ کا شکار رہتی ہے۔ دوسری طرف یہی معاشرہ ایسے مرد کو جس کی ایک سے زیادہ بیویاں ہوتی ہیں قبول نہیں کرتا، حالانکہ اس تعددِ ازواج کی صورت میں عورت پوری عزت اور حفاظت کے ساتھ نہایت باوقار زندگی بسر کر سکتی ہے۔ اس طرح عورت کے سامنے دو راستے رہ جاتے ہیں: یا تو وہ شادی شدہ مرد سے شادی کرے یا ’’اجتماعی ملکیت‘‘ بن جائے۔ اسلام پہلی صورت کو ترجیح دیتے ہوئے اسے باعزت مقام دِلاتا ہے اور دوسری صورت کی قطعًااجازت نہیں دیتا۔ اس کے علاوہ اوربھی کئی اسباب ہیں جن کے پیش نظر اسلام مرد کو ایک سے زیادہ شادیوں کی اجازت دیتا ہے۔ ان اسباب میں اصل اہمیت کی چیز عورت کی عزت و ناموس ہے جس کی حفاظت اسلام کے نزدیک فرض اور لازم ہے۔

Table of Contents