Sections
< All Topics
Print

05. JUMADA AL ULAA

05. Jumad-ul-Uola

Faza’il-O-A’amaal Aur Rusoomaat

Jumad-ul-Uola ♦

Islami sal ka panchawan aur chhatta maheena Jumad-ul-Uola aur Jumad-ul-Ukhra hein.


Wajah-E-Tasmiyah:


Jumada, Barozan-e-Munada, Jumood se hai jis ke ma’ani jamne ke hein. Jis zamane mein, In maheenon ke yeh nam pade, Us zamane mein in maheenon mein sardi ki shiddat ki wajah se pani jam jata tha, Is liye in donon maheenon ka nam Jumada qarar pa gaya aur unhein Al-Uola aur Al-Ukhra ya Al-Saniyah ke sath aik dosare se mumtaz kar diya geya.

 

Jumada, M’onas hai, Is liye donon ki sifat Al-Uola, Al-Ukhra ya Al-Saniyah hogi. Al-Ukhra aur Al-Saniyah, Donon ke ma’ani hein: Doosra, Is liye Jumad-ul-Ukhra ya Jumad-ul-Saniyah donon tarah sahih hai, Is liye keh donon hum ma’ani hein.

 

Inhein Ahal-e-Urdu Jumad-ul-Awwal aur Jumad-ul-Sani likhte aur bolte hein jo ghalat hai jo arabi qawa’id ke khilaf hai, Yeh mosoof siffat hein, In mein mutabaqat zaroori hai. Bina bareen is ghalti ki tashih zaroori hai, Aur woh tashih yehi hai keh unhein Jumad-ul-Uala aur Jumad-ul-Ukhra ya Jumad-ul-Saniyah likha aur bola jaye.


Fazail:


In donon mahinon ki koi fazilat ahadith main warid nain hoi.

 


Masnoon aamal:


 

Quran-o-Hadith main in donon mahinon main kisi amal ki koi khas fazilat bayan nahi ki gai, lihaza jo masnon aamal digar ayyam main kiy jaty hain, woh in mahinon main bhi kiy jain.


Rusoomat-o-bidaat:


 

In mahinon main hamary haan koi khas Rasam aur bidaat bhi raij nahin ha, yaani ye mahiney ghair shari Rusoomat-o-Khurafat sey paak hain.

REFERENCE:
Book: Masla Rooet-e-Hilal aur 12 Islami mahene.
 By Hafiz Salah uddin yusuf.

جمادی الأُولی 

 

 

اسلامی سال کا پانچواں اور چھٹا مہینہ جمادی الاولیٰ اور جمادی الاخریٰ ہیں۔


وجۂ تسمیہ


جُمَادیٰ، بروزنِ مُنَادیٰ، جمود سے ہے جس کے معنی جمنے کے ہیں۔ جس زمانے میں، ان مہینوں کے یہ نام پڑے، اس زمانے میں ان مہینوں میں سردی کی شدت کی وجہ سے پانی جم جاتا تھا، اس لیے ان دونوں مہینوں کا نام جُمادیٰ قرارپاگیا اورانھیں اَلْأُولٰی اور اَلْأُخْرٰی یا اَلثَّانِیَۃ کے ساتھ ایک دوسرے سے ممتاز کردیا گیا۔

جُمادیٰ، مؤنث ہے، اس لیے دونوں کی صفت اَلْأُوْلٰی اور اَلْأُخْرٰی یا اَلثَّانِیَۃ ہوگی۔ اَلْأُخْرٰی اور اَلثَّانِیَۃ، دونوں کے معنی ہیں: دوسرا، اس لیے جمادی الاخریٰ یا جمادی الثانیہ، دونوں طرح صحیح ہے، اس لیے کہ دونوں ہم معنی ہیں۔

انھیں اہل اردو جمادی الاول اور جمادی الثانی لکھتے اور بولتے ہیں جو غلط ہے کیونکہ یہ عربی قواعد کے خلاف ہے، یہ موصوف صفت ہیں، ان میں مطابقت ضروری ہے۔ بنا بریں اس غلطی کی تصحیح ضروری ہے۔ اور وہ تصحیح یہی ہے کہ انھیں جُمادَی الْأُوْلٰی اور جُمادَی الْأُخْریٰ یا جُمادَی الثانیۃ لکھا اور بولا جائے۔


فضائل


ان دونوں مہینوں کی کوئی فضیلت احادیث میں وارد نہیں ہوئی۔


مسنون اعمال


قرآن و حدیث میں ان دونوں مہینوں میں کسی عمل کی کوئی خاص فضیلت بیان نہیں کی گئی، لہٰذا جو مسنون اعمال دیگر ایام میں کیے جاتے ہیں، وہ ان مہینوں میں بھی کیے جائیں۔


رسوم و بدعات


ان مہینوں میں ہمارے ہاں کوئی خاص رسم اور بدعت بھی رائج نہیں ہے، یعنی یہ مہینے غیر شرعی رسومات و خرافات سے پاک ہیں۔

 

 

 

حواله جات : 

كتاب : ” مسئله  رؤیتِ ہلال اور اسلامى ١٢ مہینہے “
 قلم کار حافظ صلاح الدین یوسف حفظہ اللہ 

 

 

 

Table of Contents