Sections
< All Topics
Print

(A). MUSHABAHAT KA MAFHOOM [Understanding the term “Tashbeeh”]

MUSHABAHAT KA MAFHOOM:

 

“TASHBEEH” ka lughwi ma’aana: Lafz “Tashbeeh” mushabahat se makhooz hai,  Mushabahat ke ma’aane yaksaniyat, naqsh qadm ki paravi karne key hain, Tashbeeha ke ma’aane tamseel yani ham misal qarar dene ke hai mutashabihat se yaksa aur hum misal cheezen murad hoti hain, Kaha jaata hai: “Ashbah Falan falana” yani fulah fulah ke mushabe hua, yani fulah fulah ka masal hai, fulah fulah ke naqsh e qadm par chala.

 

“TAHBEEH” ka Shara’i ma’aana:

 

Tashbeeh ka shara’i ma’aana jis sey qur’an o hadees main mumaniyat warid hui Hai yeh hai keh kuffaar ke umoomi asnaaf ke sath a’qaaid, Ibadaat, Aadaat, aur unke makhsoos taur tareeqe mein mushabahat ikhtiyaar karna, isi tarha ghair naik-o-kaar afraad ke sath mushabihat khawah musalmaan hi kyun na ho maslan Faasiqon, Jahiloon, aur Gawaaron ki mushabihat ikhtiyar karna jo Deen mein paya kamaal ko nahi pohanche hain jiska tafseeli zikar aagae ke safhaat main aye ga.Chunacha mukhtasar ahem yeh keh saktey hain keh woh tamam cheezen jo kafiron ke khasaais mein se nahi hain aur na hi unke aqaaid, aadaat aur ibaadaat se taluq rakhti hain na hi kitab-o-sunnat ke Dalail se takraaten aur na hi Un key apnaney par koi khaarabi lazim aati hai, tou wo kafiron ki mushabahat ke zumray main shumar na hon gi, yeh aik mujmal qaidah hai.

 

REFERENCE:
BOOK: “KUFFAR KI MUSHABIHAT AUR ISLAMI HIDAYAT”
BY: DR.NASR AL-AQL
URDU TRANSLATED BY: ABDUL WALI ABDUL QAWI;
NAZAR E SAANI: SHAYKH MAQSOOD AL HASAN FAIZI.

 

 

GAIRO KI MUSHABIHAT Shaikh Abu Rizwan Mohammadi Salafi Hafizahullah 27/03/2022

UNDERSTANDING THE TERM “TASHBEEH(اتشبه)

Linguistically,( (اتشبه aI-tashbeeh, means “resemblance, a similitude, a likeness.” It also means “to copy and blindly follow” someone. If you say,”Imitate so and so”, it means to be like him, to be similar to him, or to copy him.

THE IMITATION WHICH HAS BEEN FORBIDDEN

In Islamic terminology (.11), al-tashbeeh (اتشبه), refers to imitating the kufaar in matters of belief, worship, habit, behavior. It also refers to imitating the impious, whether they are sinful Muslims, or even the ignorant Muslims, or the Arabs whose religion is not complete ( as is explained later).

So generally we can say that whatever is not typical of the kufaar in, beliefs, worships, habits, and behaviors, and whatever does not contradict the Qur’an and Sunnah , then it is not imitation of the kufaar because heinous acts do not result from it.

REFERENCE:
BOOK: “IMITATION OF THE KUFFAAR”
BY Dr. Nasr Al-Haq
second edition.

مشابہت کا مفہوم

:تشبہ کا لغوی معنی

لفظ “تشبہ” مشابہت سے ماخوذ ہے، مشابہت کے معنی یکسانیت، نقش قدم کی پیروی کرنے کے ہیں، تشبیہ کے معنی تمثیل یعنی ہم مثل قرار دینے کے ہیں اور متشابہات سے یکساں اور ہم مثل چیزیں مراد ہوتی ہیں، کہا جاتا ہے: “أشبہ فلان فلانا” یعنی فلاں فلاں کے مشابہ ہوا، یعنی فلاں فلاں کا مثال ہے، فلاں فلاں کے نقش قدم پر چلا۔

:تشبہ کا شرعی معنی

“تشبہ” کا شرعی معنی جس سے قرآن و حدیث میں ممانعت وارد ہوئ ہے یہ ہے کہ کفار کے عمومی اصناف کے ساتھ عقائد، عبادات، عادات اور ان کے مخصوص طور و طریقہ میں مشابہت اختیار کرنا اسی طرح غیر نیکو کار افراد کے ساتھ مشابہت خواہ وہ مسلماں ہی کیوں نہ ہوں مثلًا فاسقوں، جاہلوں اور ان گواروں کی مشابہت اختیار کرنا جو دین میں پایہ کمال کو نہیں پہنچے ہیں جس کا تفصیلی ذکر آگے کے صفحات میں آۓ گا۔
چنانچہ مختصراً ہم ہی کہ سکتے ہیں کہ وہ تمام چیزیں جو کافروں کے خصائص میں سے نہیں ہیں اور نہ ہی ان کے عقائد، عادات اور عبادات سے تعلق رکھتی ہیں نہ ہی قرآن و سنت کے دلائل سے ٹکراتیں اور نہ ہی ان کے اپنانے پر کوئ خرابی لازم آتی ہے تو وہ کافروں کی مشابہت کے زمرے میں شمار نہ ہوں گی، ہی ایک مجمل قائدہ ہے۔

Table of Contents