Sections
< All Topics
Print

(xiii). IFTAARI MEIN DAIR NA KARNA [Delaying the Breaking of the fast]

IFTAARI MEIN DAIR NA KARNA:

Rozey daar ke liye sunnat ye hai keh wo iftaar mein jaldi kare, is mey yahud-o-Nasara ki mukhalifat hai, Chunacha Sunan Abu Dawood aur Mustadrak haakim mein hai aur Imaam Haakim(رحمه الله) ne usey sahih qarar diya hai keh Rasool Allah(ﷺ) ne farmaaya: 

 

لا يزال الدين ظاهرا ما عجل الناس الفطر لأن اليهود و النصاري يؤخرونه

“Deen baraber ghalib rahey ga jab tak log iftaar mein jaldi kartey rahain gey kyun k yahud aur nasara iftaar mein dair kartey hain.”

[Abu Dawood: 2353; Ibn Majah: 1698; Haakim: 1/431; Imaam Haakim ne is hadees ko Muslim ki shart par sahih qarar diya hai]

     Baaz log is aadat-e-bud ka shikar hain, balkey ahle tasheè تشيع rafzee ke yahan to ye cheez aam hai keh wo namaz-e-maghrib aur iftar ko sitaaron ke bilkul roshan hojane tak muakhar kartey hain.

    Isi tarha baaz afraad ehtiyaat aur deen mein ghuloo k taur par is ghalti mein mulawwas hain, yahan tk k baaz awqaat wo hazraat na to muazzinon مؤزن par bharosa kartey hain aur na hi ghuroob e aftaab se mutaliq apni rùyat par etemaad kartey hain aur iftaar ke sahih waqt se dair he kartey hain aur wo ye samjhtey hain keh aisa wo bataur e ahtiyaat kar rahey hain, Halan keh ye shaitaani waswasa aur uska dhoka hai aur is tarha sunnat k khilaf kaam main mulwwas hona hai kyun k sehri main dair aur iftaar mein jaldi karna hi sunnat hai.

     Hadees mein sabit hai keh Yahud maghrib ko sitaaron ke khoob roshan honey tak muakhar karte hain jaisa keh Imaam Abu Dawood, Haakim, Ibn Majah aur Imaam Ahmad ne masnad mein naqal kiya aur Imaam Haakim ney is hadees ko sahih qarar diya keh Nabi Kareem(ﷺ) ne farmaaya:

لا تَزالُ أمَّتي بخيرٍ ، أو عَلَى الفطرةِ ، ما لم يؤخِّروا المغربَ إلى أن تشتبِكَ النُّجومُ .

 “Meri Ummat baraber fitrat par rahey gi jab tak maghrib ko sitaaron ke khoob roshan hone tak muakhar nahi karey gi.”

[Abu Dawood: 418; Ibn majah: 689; Musnad Ahmad: 3/449; Imaam Haakim ne is hadees ko Muslim ki shart par sahih qarar diya hai]

 

      Dusri ahadees mein iski wazahat ki gae hai keh ye yahud o nasara ki mushabihat hai.

(Ibn Taimiyah(رحمه الله) ne apni kitab “Iqtidaa as sirat-al mustaqim” mein  usey sayed bin mansoor ki janib mansoob kiya hai aur usi mafhoom ka asr Ahmad bin hanbal 4/1349 aur Marasil ibn abi Haatim 121 mein bhi hai).

DELAYING THE BREAKING OF THE FAST

 

Hastening to break the fast is from the sunnah, which is contradictory to the way of the Jews and the Christians. From a report by Abu Dawud, authenticated by Al-Hakim , the Prophet(ﷺ)  said,

“The religion will remain triumphant as long as the people hasten to break the fast. For the Jews and the Christians delay it.” [1]

Some people delay breaking the fast like the Rawafidh Shia, who delay breaking fast until the appearance of the stars!! There are also some who delay it due to either their uncertainty of the sun’s setting or a lack of trust for the mu’adhin as a so-called precautionary measure. All of this is due to suspicion and is a result of Shaytaan’s tempting which leads to sin.

It is affirmed by the Sunnah that the Jews delay maghrib until they recognize the appearance of the stars. In a report from Abu Dawud which was authenticated by Al-Hakim, as well as Ibn Majah and Ahmad in his Musnad, the Prophet (ﷺ) is reported to have said,

“My ummah will remain upon the fitra as long as they do not delay maghrib until the appearance of the stars.”[2]

In other hadeeths it is said to resemble the way of the Jews and Christians. [3]

 


[1] Abu Dawud #2353. As well as fbn Majah, 1698. Al-Hakim 1/431 authenticated it according to the conditions of Muslim. Al-Albani has graded it hasan in Sahih # 7689 [3rd ed.]

[2] Abu Dawud #418 and others. Al-Hakim authenticated it upon the conditions of Muslim #190,191. Editor’s note; see Sahih al-Jami’ #7285 [3rd ed.]

[3] Ibn Taymiyyah in Al-Iqtidha’ 1/184, reports this from Sa’eed bin Mansuwr.
Ahmad 
in his Musnad 4/349, and Ibn Abi Haatim in Ai-Muraaseel #121. Editor’s
note: 
Abu Dawud #2353, Al-Hakim, Ibn Khuzaimah, Al-Albani graded it as hasan.

افطاری میں دیری کرنا :

روزہ دار کے لیے سنت یہ ہے کہ وہ افطار میں جلدی کرے ، اس میں یہود و نصاری کی مخالفت ہے ، چنانچہ سنن ابو داؤد اور مستدرک حاکم میں اور امام حاکم رحمہ اللہ نے اسے صحیح قرار دیا ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:

“لا یزال الدین ظاھرا ماعجل الناس الفطر لان الیھود و الانصاری یؤخرونه”

دین برابر غالب رہے گا جب تک لوگ افطار میں جلدی کرتے رہیں گے کیونکہ یہود و نصاری افطار میں دیری کرتے ہیں۔

(ابو داؤد ٢٣٥٣،ابن ماجہ ١٦٩٨،حاکم ٤٣١/١، امام حاکم نے اس حدیث کو مسلم کی شرط پر صحیح قرار دیا ہے)

بعض لوگ اس عادت بد کے شکار ہیں ، بلکہ اہل تشیع رافضہ کے ہاں تو یہ چیز عام ہے کہ وہ نماز مغرب اور افطار کو ستاروں کے بالکل روشن ہوجانے تک مؤخر کرتے ہیں۔

اسی طرح بعض افراد احتیاط اور دین میں غلو کے طور پر اس غلطی میں ملوث ہیں، بایں طور کہ بسا اوقات وہ حضرات نا تو مؤذنوں پر بھروسہ کرتے ہیں اور نا ہی غروب آفتاب سے متعلق اپنی رویت پر اعتماد کرتے ہیں اور افطار کے صحیح وقت سے دیری کرتے ہیں اور وہ یہ سمجھتے ہیں کہ ایسا وہ بطور احتیاط کر رہی ہیں ، حالانکہ یہ شیطانی وسوسہ اور اس کا دھوکا ہے اس طرح خلاف سنت کام میں ملوث ہونا ہے کیوں کہ سحری میں دیری اور افطاری میں جلدی کرنا سنت ہے-

حدیث میں ثابت ہے کہ یہود مغرب کو ستاروں کے خوب روشن ہونے تک مؤخر کرتے ہیں جیسا کہ امام ابوداؤد،حاکم، ابن ماجہ اور امام احمد نے مسند میں نقل کیا اور امام حاکم نے اس حدیث کو صحیح قرآن دیا کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:

“لا تزال أمتی علی الفطرۃ مالم یؤخروا المغرب الی اشتباک النجوم”

میری امت برابر فطرت پر رہی گی جب تک مغرب کو ستاروں کے خوب روشن ہونے تک مؤخر نہیں کرے گی-

(ابو داؤد ٤١٨،ابن ماجہ ٦٨٩،مسند احمد ٤٤٩/٣،امام حاکم نے اس حدیث کو مسلم کی شرط پر صحیح قرار دیا ہے)

دوسری احادیث میں اس کی وضاحت بیان کی گئی ہے کہ یہ یہود و نصاری کی مشابہت ہے.

(ابن تیمیہ رحمہ اللہ نے اپنی کتاب “اقتصاء الصراط المستقیم” میں اسے سعید بن منصور کی جانب منسوب کیا ہے اور اسی مفہوم کا اثر مسند احمد بن حنبل ٣٤٩/٤ اور مراسیل ابن ابی حاتم ۱۲۱ میں بھی ہے)
Table of Contents