Sections
< All Topics
Print

19. HAAMILA AUR MURZIA RAMAZAAN KE CHHUTE HUE ROZO KI QAZA KARE GI

HAAMILA AUR MURZIA RAMAZAAN KE CHHUTE HUE ROZO KI QAZA KARE GI

 

Hamila Aur Murzia Ke Chhute Hue Rozo Se Mutalliq Ahle Ilm Ke Darmiyaan Ikhtilaaf Paya Jata He,Me Ne Ikhtisaar Se Is Masala Ko Bayaan Karne Ki Koshish Ki He Allah Se Dua He Ke Mujhe Sawaab Aur Durustagi Ki Taufeeq De. Aameen

Hamila(Hamal Wali) Aur Murzia(Bachche Ko Dudh Pilaane Wali)Ke Liye Rozo Se Mutalliq 2 Haalaat Ho Sakte Hai.

(1) Ya To Haamila Aur Murzia Ko Roza Rakhne Me Apne Liye Ya Bachche Ke Liye Mashaqqat Nahi Ho Sakti Hai Aysi Surat Me Unhe Ramazaan Ka Roza Rakhna Chaahiye.

(2) Ya Fir Rozah Rakhne Me Unhe Apne Liye Ya Bachche Ke Liye Mashaqqat Mehsoos Ho Sakti He Aysi Surat Me Haamila Aur Murzia Ramazaan Ke Roze Chhorh Sakti He Aur Jab Mashaqqat Door Ho Jaae Tab Ramaazaan Ke Chhute Rozo Ki Qaza Kare Gi.

Yaad Rahe Kuch Ahle Ilm Ne Kaha He Ke Haamila Aur Murzia Ramazaan Ke Chhute Rozo Ki Qaza Nahi Karegi Balke Fidya Degi, Yah Baat Sahih Nahi He. Sahih Baat Yah He Ke Haamila Aur Murzia Agar Ramazaan Me Mashaqqat Ki Wajah Se Rozah Chhorhti He To Baad Me Un Rozo Ki Qaza Karegi. Is Baat Ko Daleel Se Samjhne Ke Liye Pehle Yah Janna Zaroori He Ke Haamila Aur Murzia Kis Hukam Me Daakhil Hai?

Ham Haamila Aur Murzia Ko Zaeeful Umar Burhi Aurat Ke Hukam Me Nahi Maan Sakte Kuy Ke Na Is Bare Me Shariat Se Koi Daleel Waarid He Aur Na Hi Mushahida Aur Tajrubah Me Woh Burhi He Ke Kabhi Bhi Rozah Nahi Rakh Sakti Balke Woh Waqti Taur Par Rozah Rakhne Se Qaasir Hai Baad Me Rozah Rakhne Ki Taaqat Rakhti Hai. Ibne Majah Ki Sahihul Asnaad Hadees Par Gaur Kar Ke Uska Hukam Jaante Hai. Nabi Kareem Sallallaahu Alyhi Wasallam Ka Farmaan He:

إن الله عزوجل وضع عن المسافر شطر الصلاة وعن المسافر والحامل والمرضع الصوم.(صحيح ابن ماجه وقال الشيخ الألباني حسن صحيح:١٦٣١)

Tarjumah:- Allah Ne Musaafir Ke Liye Aadhi Namaaz Maaf Farma Di Aur Musaafir Aur Haamila Aur Dudh Pilane Wali Ko Roze Maaf Farma Diye.

Alfaaz E Hadees Par Gaur Kare Ke Waaw E Atf Ke Zariya Nabi Sallallaahu Alyhi Wasallam Ne Musaafir, Haamila Aur Murzia Ka Hukam Bataya He Jis Se Saaf Maloom Hota He Ke Yah Dono Rozah Ke Baab Me Musaafir Ki Tarah Hai Yani Jis Tarah Musaafir Ko Haalat E Safar Me Mashaqqat Ki Wajah Se Rozah Chhorhne Ki Rukhsat Di Gai He Baad Me Un Rozo Ki Qaza Kare Gi,Thik Usi Tarah Haamila Aur Murzia Bhi Mashaqqat Ki Wajah Se Ramazaan Ke Roze Chhorh Sakti He Aur Ramazaan Ke Baad Jab Unhe Mashaqqat Se Raahat Mile Tab Un Rozo Ki Qaza Kare Gi.

Ab Musaafir Ki Rozo Ki Rukhsat Ko Quraani Aayat Ke Tanaazur Me Dekhte Hai Allah Ka Farmaan He:

فمن كان منكم مريضا اؤ على سفر فعدة من ايام اخر.(البقرة: ١٨٤)

Tarjumah:- Tum Me Se Jo Shakhas Bimaar Ho Ya Safar Me Ho To Woh Aur Dino Me Ginti Ko Pura Kar Le.

Yani Yah Bimaar Aur Musaafir Ko Rukhsat Di Gai He Ke Woh Bimaari Ya Safar Ki Wajah Se Ramazaanul Mubarak Me Jitne Roze Na Rakh Sake Ho Woh Baad Me Rakh Kar Ginti Puri Kar Le.(Tafseer Ahsanul Bayaan)

Yaha Par Allah Ne Musaafir Ko Mareez Ke Sath Zikar Kiya Kuy Ke Dono Ki Haalat Me Mashaqqat Paai Jati He Is Liye Dono Ka Hukam Barabar He Woh Yah Ke Haalat E Safar Ki Mashaqqat Se Ya Bimaari Ki Mashaqqat Se Jo Roze Chhut Jaae Unhe Baad Me (Mashaqqat Door Hone Par)Pure Kiye Jaae.

Ibne Majah Ki Mazkoorah Hadees Aur Surah Baqarah Ki Upar Zikar Ki Gai Aayat Ko Mila Kar Dekhne Se Maloom Hota He Ke Haamila Aur Murzia Musaafir Ke Hukam Me Hai Aur Musaafir Mareez Ke Hukam Me Hai Goya Haamila Aur Murzia Musaafir Aur Mareez Ke Hukam Me Hui Is Wajah Se Haamila Aur Murzia Ramazaan Ke Chhute Hue Rozo Ki Baad Me Qaza Kare Gi.

Jo Log Kehte Hai Ke Haamila Aur Murzia Ramazan Ke Chhute Hue Rozo Ka Fidya Degi Unki Baat Sahih Nahi He Uski Ek Wajah To Yah He Ke Woh Ahle Ilm Haamila Aur Murzia Ke Hukam Ki Wazaahat Nahi Karte,Dusri Wajah He Ke Haamila Aur Murzia Ko Burhi Aurat Par Qiyaas Karna Galat He Uska Zikar Pehle Kar Chuka Hu. Teesri Wajah Yah He Ke Fidya Ke Silsile Me Farmaan E Rasool Sallallaahu Alyhi Wasallam Me Koi Saraahat Nahi Milti Aur Chhothi Wajah Yah He Ke Ek Nas Ki Wazaahat Jab Dusre Nusoos Se Hoti Ho Waha Aasaar Aur Aqwaal Marjoo Qaraar Paaenge Is Wajah Se Fidya Se Mutalliq Ibne Abbas Wala Asar Marjoo Qaraar Paae Ga Nez Ali RA Se To Basaraahat Qaza Karna Manqool He.

Is ka Urdu version padne ke lia click karai.

REFERENCE:
Book: “Ramzaniyaat”
Tahreer: Shaikh Maqbool Ahmad Salafi Hafizahullah”

حاملہ اور مرضعہ رمضان کے چھوٹے روزوں کی قضا کرے گی

 

حاملہ اور مرضعہ کے چھوٹے روزوں سے متعلق اہل علم کے درمیان اختلاف پایا جاتا ہے ، میں نے اختصار سے اس مسئلے کو بیان کرنے کوشش ہے ، اللہ سے دعا ہے کہ مجھے صواب ودرستگی کی توفیق دے۔

حاملہ(حمل والی) اور مرضعہ(بچے کو دودھ پلانے والی) کے لئے رمضان کے روزوں سے متعلق دو حالات ہوسکتے ہیں ۔

پہلی حالت : یاتو حاملہ اور مرضعہ کو روزہ رکھنے میں اپنے لئے یا بچے کے لئے مشقت نہیں ہوسکتی ہے ایسی صورت میں انہیں رمضان کا روزہ رکھنا چاہئے ۔

دوسری حالت: یا پھر روزہ رکھنے میں انہیں اپنے لئے یا بچے کے لئے مشقت محسوس ہوسکتی ہے ایسی صورت میں حاملہ یا مرضعہ رمضان کے روزے چھوڑ سکتی ہے اور جب مشقت دور ہوجائے تب رمضان کے چھوٹے روزوں کی قضا کرے گی ۔

یاد رہے بعض اہل علم نے کہا ہے کہ حاملہ اور مرضعہ رمضان کے چھوٹے روزوں کی قضا نہیں کرے گی بلکہ فدیہ دے گی ، یہ بات درست نہیں ہے ۔ صحیح اور درست بات یہ ہے کہ حاملہ اور مرضعہ اگر رمضان میں مشقت کی وجہ سے روزہ ترک کرتی ہے تو بعد میں ان روزوں کی قضاکرے گی ۔ اس بات کو دلیل سے سمجھنے کے لئے پہلے یہ جاننا ضروری ہے کہ حاملہ اور مرضعہ کس حکم میں داخل ہیں ؟

ہم حاملہ اور مرضعہ کو ضعیف العمر بوڑھی عورت کے حکم میں نہیں مان سکتے کیونکہ نہ اس بارے میں شریعت سے کوئی دلیل وارد ہے اور نہ ہی مشاہدہ وتجربہ میں وہ بوڑھی ہے کہ کبھی بھی روزہ نہیں رکھ سکتیں بلکہ وہ وقتی طور پر روزہ رکھنے سے قاصر ہیں بعد میں روزہ رکھنے کی طاقت رکھتی ہیں ۔ ابن ماجہ کی صحیح الاسناد حدیث پر غور کرکے اس کا حکم جانتے ہیں ۔ نبی ﷺ کا فرمان ہے :

إنَّ اللَّهَ عزَّ وجلَّ وضعَ عنِ المسافرِ شطرَ الصَّلاةِ، وعنِ المسافرِ والحاملِ والمرضعِ الصَّومَ(صحيح ابن ماجه وقال الشيخ الألباني حسن صحيح:1361)

ترجمہ: اللہ تعالی نے مسافر کے لئے آدھی نماز معاف فرما دی اور مسافر اور حاملہ اور دودھ پلانے والی کو روزے معاف فرما دیئے۔

الفاظ حدیث پہ غور کریں کہ واؤ عاطفہ کے ذریعہ نبی ﷺ نے مسافر، حاملہ اورمرضعہ کا حکم بتایا ہے جس سے صاف معلوم ہوتا ہے کہ یہ دونوں روزہ کے باب میں مسافر کی طرح ہیں یعنی جس طرح مسافرکو حالت سفر میں مشقت کی وجہ سے روزہ چھوڑ نے کی رخصت دی گئی ہے بعد میں وہ ان روزوں کی قضا کرے گا ،ٹھیک اسی طرح حاملہ اور مرضعہ بھی مشقت کی وجہ سے رمضان کے روزے چھوڑ سکتی ہے اور رمضان بعد جب انہیں مشقت سے راحت ملے تب ان روزوں کی قضا کریں گی ۔

اب مسافر کے روزوں کی رخصت کو قرآنی آیت کے تناظر میں دیکھتے ہیں ، اللہ تعالی کا فرمان ہے :

فَمَن كَانَ مِنكُم مَّرِيضًا أَوْ عَلَىٰ سَفَرٍ فَعِدَّةٌ مِّنْ أَيَّامٍ أُخَرَ (البقرة:184)

ترجمہ: تم میں سے جو شخص بیمار ہو یا سفر میں ہو تو وہ اور دنوں میں گنتی کو پورا کرلے۔

یعنی یہ بیمار اور مسافر کو رخصت دی گئی ہے کہ وہ بیماری یا سفر کی وجہ سے رمضان المبارک میں جتنے روزے نہ رکھ سکے ہوں ،وہ بعد میں رکھ کر گنتی پوری کرلیں ۔(تفسیر احسن البیان)

یہاں پر اللہ تعالی نے مسافر کو مریض کے ساتھ ذکر کیا کیونکہ دونوں کی حالت میں مشقت پائی جاتی ہے اس لئے دونوں کا حکم یکساں ہے ، وہ یہ کہ حالت سفر کی مشقت سے یا مرض کی مشقت سے جو روزے چھوٹ جائیں انہیں بعد میں (مشقت دور ہونے پر )پورے کئے جائیں ۔

ابن ماجہ کی مذکورہ حدیث اور سورہ بقرہ کی مندرجہ بالا آیت کو ملاکردیکھنے سے معلوم ہوتا ہے کہ حاملہ اور مرضعہ مسافر کے حکم میں ہیں اور مسافر مریض کے حکم میں ہے گویا حاملہ اور مرضعہ مسافر ومریض کے حکم ہوئیں، اس وجہ سے حاملہ اور مرضعہ رمضان کے چھوٹے ہوئے روزوں کی بعد میں قضا کریں گی ۔

جو لوگ کہتے ہیں کہ حاملہ اور مرضعہ رمضان کے چھوٹے ہوئے روزوں کا فدیہ دیں گی ، ان کی بات صحیح نہیں ہے ۔ اس کی ایک وجہ تو یہ ہے کہ وہ اہل علم حاملہ اور مرضعہ کے حکم کی وضاحت نہیں کرتے ، دوسری وجہ ہے کہ حاملہ ومرضعہ کو بوڑھی عورت پر قیاس کرنا غلط ہے اس کا ذکر پہلے کرچکا ہوں ، تیسری وجہ یہ ہے کہ فدیہ کے سلسلے میں فرمان رسول میں کوئی صراحت نہیں ملتی اور چوتھی وجہ یہ ہے کہ ایک نص کی وضاحت جب دوسرے نصوص سے ہوتی ہو وہاں آثار واقوال مرجوح قرار پائیں گے اس وجہ سے فدیہ سے متعلق ابن عباس والا اثر مرجوح قرار پائے گا نیز حضرت علی سے تو بصراحت قضا کرنا منقول ہے۔

 

مقبول احمد سلفی
اسلامک دعوہ سنٹر طائف

 

 

Table of Contents