Sections
< All Topics
Print

SALAF AUR SALAFI KA TARUF QURAN-O-AHADEES KI RAUSHANI MEIN

Salafiyat Aur Salafi Ka Ta’ruf Quraan Aur Hadees Ke Aaine Me

Deen E Islaam Ek Saaf Shuthra Fitri Nizaame Hayaat Hai Isme Zindagi Guzarne Ke Tamaam Tar Paakizah Usool Maujood Hai Dar Asal Isi Deen Me Insaaniyat Nawaazi,Sulah Aur Aashti,Ittihaad Aur Ittifaaq Adal Aur Masaawaat,Huqooq Aur Maraa’aat,Ukhoowat Aur Muhabbat,Sidaq Aur Safa,Aman Aur Raahat Aur Itminaan Aur Sukoon Maujood Hai Duniya Ke Baaqi Tamaam Adyaan Aur Mazaahib Me Fitrat Se Bagawat Aur Zindagi Ki Paakizah Usool Aur Ta’leemaat Se Bezaari Hai. Deen E Islaam Ko Dusre Lafzo Me Salfiyat Se Bhi Mausoom Kiya Jata Hai Kuy Ke Yahi Islaam Ki Mukammal Ta’beer Hai.


Salfiyat Koi New Firqah Aur Khood Sakhta Nizaam E Zindagi Ka Naam Nahi Balke Quroon E Mufazla Ke Salaf Saaleheen Ke Manhaj Par Chalne Ka Naam Hai Salaf E Saleheen Se Muraad Sahaba,Tabe’een Aur Unke Ittiba Yani Rasool SAV Ne Jin 3 Zamano Ki Khair Aur Bhalaai Ka Zikar Farmaya Hai. Un Zamano Ke Nek Aur Saleh Afraad Jinhone Rasool SAV Ke Deen Ko Sahih Se Samjha Aur Us Par Usi Tarah Amal Kiya Jis Tarah Aap Ne Hukam Diya. Jo Log In Aslaaf E Kiraam Ke Tariqah Par Chale Unhe Salafi Kaha Jata Hai Aur Jo Us Se Bichad Jaae Khalaf Me Iska Shumaar Hoga.


Jis Tarah Allaah Ne Quraan Ki Hifazat Farmaai Rasool SAV Ke Farmoodaat Ki Hifazat Ke Asbaab Paida Farmaae Usi Tarah Ahde Rasool SAV Se Le Kar Ab Tak Ek Jamat Ki Hifazat Karta Raha Aur Qayamat Tak Karta Rahe Jis Jamat Ka Mishon,Nabvi Mishon Yani Haq(Kitabullaah Aur Sunnat E Rasool)Ka Daman Thamte Hue Usi Ki Nashar O Isha’at Karna Aur Baatil Ki Tardeed Me Kisi Qisam Ki Musalihat Na Karna Hai.


Chunke Salfiyat Asal Islaam Ka Naam Hai Aur Salfi Duniya Walo Par Asal Islaam Ko Paish Karte Hai Us Wajah Se Manhaj E Salaf Par Chalne Walo Ko Na Sirf Baatil Deeno Ki Taraf Se Khatraat Aur Mushkilaat Aur Mukhtalif Qisam Ke Challenge Ka Samna Hai Balke Islaam Ka Libadah Odhe Mukhtalif Masaalik Me Bate Musalmaano Se Bhi Hai.


Sateezah Kaar Raha Hai Azal Se Ta Amrooz
Chiraag Mustafawah Se Sharaare Bu Lehbi.


Allaama Iqbaal Ne Nabvi Mashion Se Mutasadim Har Daur Ke Bulehbi Jamaat Ki Taraf Isharah Kar Ke Haq Bayani Se Kaam Liya Hai Aur Is Haqeeqat Par Har Daur Ki Tajrubaati Aur Mushahedaati Taarikh Been Saboot Hai Jise Is Taarikhi Sachchaai Se Inkaar Se Woh Ta’ssub Ki Chashma Utaar Kar Apne Hi Daur Ka Khuli Aankho Se Mushahida Kar Le.


Jo Islaam Ke Dushman Hai Woh To Islaam Dushmani Nibhaen Ge Magar Hairat Islaami Libadah Odhe Apne Bhaiyo Par Hai Jinhone Salafiyo Ko Badnaam Karne,Unhe Maali Aur Jismaani Taklif Pohnchane Aur Kuffar Ke Liye Un Musalamno Ke Khilaaf Raah Hamwaar Karne Me Koi Kasar Nahi Chhodi Salafiyo Ko Angrez Ki Paidawaar Qaraar Diya Jata Hai Unko Intiha Pasand Aur Dehshat Garad Jamat Ke Taur Par Gair Muslimo Me Mutaaruf Kiya Jata Hai. Nabi Ke Gustaakh, Fazaail E Sahaba Ke Munkar,Auliya Ki Shaan Ghataane Wala Aur Aimma Kiraam Ka Ahtaraam Na Karne Wala Keh Kar Aam Musalmaano Me Nafrat Paida Ki Jati Hai. Quraan Aur Hadees Ke Mani Aur Mafaaheem Badal Badal Kar Salafiyo Ko Deen Me New Firqa Batlaya Jata Hai Aur Un Salafiyo Ki Kitaabe Padhne Unse Talluqaat Istiwaar Karne Yaha Tak Ke Mamlaat Karne Se Bhi Man’a Kiya Jata Hai Wahabi Aur Gair Muqallid Ka Tana Gaali Ke Taur Par Diya Jata Hai. Khair Jo Chahe Aap Ka Husan Ka Karishma Saaz Kare.


Salfiyat Kya Hai Upar Waazeh Kar Diya Gaya Aur Ab Is Salfiyat Ke Pairokaar Kon Hai,Unki Sifaat Kya Hai Quraan Aur Hadees Ki Roshni Me Dekhte Hai Taaki Awaam Par Haq Waazeh Ho Jaae Toliyo Me Bate Khawaas Ko Haqeeqat Ka Pata Hai Magar Woh Apni Awaam Par Na Haq Paish Karte Hai Aur Na Hi Haq Zaahir Hone Dete. Uski Khaas Wajah Yah Hai Ke Jab Kisi Ko Maloom Ho Jata Hai Ke Salfiyat Hi Haq Ki Dawat Hai Aur Use Sirf Allaah Aur Uske Rasool Ki Pairvi Ka Hi Hukam Hua Hai To Fir Woh Taqleedi Aur Fuqhi Mazaahib Se Aazaad Ho Kar Us Salafi Tariqah Ko Ikhtiyaar Kar Leta Hai.


Pehle Quraan Se Salafiyo Ke Chand Awsaaf Bayan Karta Hu.


(1) Sifat: Woh Allaah Aur Uske Rasool Ki Pairwi Karne Wale Hai:


Allaah Ne Apni Kitaab Me Baishtar Maqaamaat Par Apni Aur Apne Rasool Ki Pairwi Ka Hukam Diya Hai Allaah Ka Farmaan Hai:


أطيعوا الله والرسول لعلكم ترحمون.(آل عمران:132)


Tarjumah:Aur Allaah Aur Uske Rasool Ki Farmabardaari Karo Taaki Tum Par Raham Kiya Jaae.


Allaah Ka Farmaan Hai:


فليحذر الذين يخالفون عن أمره ان تصيبهم فتنة اؤ يصيبهم عذاب اليم.(النور:63)


Tarjumah:Suno! Jo Log Hukme Rasool SAV Ki Mukhalifat Karte Hai Unhe Darna Chahiye Ke Un Par Koi Zabardast Aafat Na Aa Padhe Ya Unhe Koi Dukh Ki Maar Na Padhe.


Allaah Ka Farmaan Hai:


يا أيها الذين آمنوا أطيعوا الله ورسوله ولا تولوا عنه وانتم تسمعون.(الانفال:20)


Tarjumah: Ay Imaan Walo Allaah Ka Aur Uske Rasool Ka Kehna Mano Aur Us Se Roogardaani Na Karo Halanki Tum Sun Rahe Ho.
Allaah Ka Farmaan Hai:


وما آتاكم الرسول فخذوه وما نهاكم عنه فانتهوا.(الحشر:7)


Tarjumah: Aur Tumhe Jo Kuch Rasool De,Le Lo Aur Jis Se Roke Ruk Jao.


In Aayat Ki Roshni Me Wahi Musalmaan Haq Par Hai Jo Allaah Aur Uske Rasool Ki Pairwi Karte Hai Unki Pairwi Ke Bagair Koi Amal Maqbool Nahi Hoga Aur Hame Yah Kehne Me Koi Jhijhak Nahi Ke Allaah Aur Uske Rasool Ki Pairwi Me Sachche Aur Pakke Salafi Hai.


(2) Sifat: Muhammad SAV Ko Hi Apna Imaam Aur Paishwa Mante Hai. Allaah Ka Farmaan Hai:

لقد كان لكم في رسول الله اسوة حسنة.(الأحزاب:21)


Tarjumah:Beshak Tumhare Liye Rasool SAV Ki Zindagi Me Behtareen Namuna Hai.


Kaainaat Me Sab Se Afzal Hasti Muhammad SAV Ki Hai Salafi Na Sirf Iska Aqeeda Rakhte Hai Balke Allaah Ke Mazkoorah Farmaan Ke Mutaabiq Apna Imaam E Aazam Bhi Muhammad SAV Ko Hi Mante Hai Aur Aap Ki Seerat E Taiyibah Ke Mutabiq Apni Zindagi Guzarte Hai Jab Ke Slaafi Ke Alawah Musalmaano Ke Tamaam Jamaat Muhammad SAV Ko Chhod Kar Kisi Aur Ko Apna Apna Imaam Mante Hai Aur Apne Man Maane Imaam Ki Taqleed Ko Raahe Najaat Qaraar Dete Hai.


(3) Sifat: Rasool SAV Ki Pairwi Karne Me Salaf Ke Tariqah Par Chalne Wale Hai Allaah Ka Farmaan Hai:


والسابقون الأولون من المهاجرين والأنصار والذين اتبعوهم بإحسان رضي الله عنهم ورضوا عنه وأعد لهم جنات تجري تحتها الأنهار خالدين فيها ابدا ذللك الفوز العظيم.(التوبه:100)


Tarjumah:Jin Logo Ne Sabqat Ki(Yani Sab Se Pehle)Imaan Laae Muhajereen Me Se Bhi Aur Ansaar Me Se Bhi Aur Jinhone Bataur Ahsan Unki Pairwi Ki Allaah Unse Raazi Hai Aur Woh Allaah Se Raazi Hai Aur Usne Unke Liye Baagaat Taiyyar Kiye Hai Jin Ke Niche Nehre Beh Rahi Hai Aur Woh Hamesha Unme Rahen Ge Yahi Badi Kaamiyabi Hai.


Yah Imriyaazi Sifat Sirf Salafiyo Ki Hai Ke Woh Pairvi Nabi Me Sahaba Kiraam Ke Naqsha E Qadam Par Chalte Hai.


(4) Sifat: Deen E Haq Ki Kaamil Taur Par Daawat Dene Wali Jamaat Hai.


Allaah Ka Farmaan Hai:


وممن خلقنا امة يهدون بالحق وبه يعدلون.(الاعراف:181)


Tarjumah:Hamari Makhlooq Me Ek Aysi Jamaat Bhi Hai Jo Deen E Haq Ki Rehnumaai Karti Hai Aur Usi Ke Zariya Insaaf Karti Hai.
Allaah Ne Is Aayat Ke Zariya Batla Diya Ke Deen E Muhammadi Ki Kama Haqqahu Tableeg Karne Wali Ek Jamaat Hamesha Qaaim Rahe Gi Aur Woh Salafiyo Ki Jamaat Hai. Mukhtalif Jamaat Me Bate Musalmano Ke Paas Bhi Tableeg Hai Magar Apne Apne Buzurgo Aur Imaamo Ki. Duniya Is Baat Par Shaahid Ke Mimbar Aur Mehraab Se Le Kar Ijtimaa’aat Aur Conference Tak Salafi Hazaraat Sirf قال اللہ Aur قال الرسول Ki Dawat Paish Karte Hai.


(5) Sifat: Haq Parsto Ki Tadaad Kam Hoti Hai Allaah Ka Farmaan Hai:

وان تطع أكثر من في الأرض يضلوك عن سبيل الله ان يتبعون إلا الظن وان هم إلا يخرصون.(الانعام:116)


Tarjumah:Aur Duniya Me Ziyadah Log Ayse Hai Ke Aap Unka Kehna Manne Lage To Woh Aap Ko Allaah Ki Raah Se Be Raah Kar Den Woh Sirf Be Asal Khayalaat Par Chalte Hai Aur Bilkul Qiyaasi Bate Karte Hai. Is Mani Ki Kai Aayat Hai Magar Ek Hi Aayat Se Hame Bakhubi Maloom Ho Jata Hai Ke Sidhe Raste Par Chalne Walo Ki Kasrat Nahi Hoti Balke Kami Hoti Hai Isi Liye Ham Salafiyo Ki Tadaad Duniya Me Thodi He Aur Raae Aur Qayaas Par Chalne Walo Ki Kasrat Hai.


(6) Sifat: Ikhtilaaf Ke Waqt Kitabullaah Aur Sunnat E Rasool Ki Taraf Lautne Wale Hai,Allaah Ka Farmaan Hai:

يا ايها الذين امنوا أطيعوا الله وأطيعوا الرسول وأولي الأمر منكم فإن تنازعتم في شيء فردوه إلى الله والرسول ان كنتم تؤمنون بالله واليوم الآخر ذلك خير واحسن تاويلا.(النساء: 59)


Tarjumah: Ay Imaan Walo Farmabardari Karo Allaah Ki Aur Farmabardaari Karo Rasool Ki Aur Tum Me Se Ikhtiyaar Walo Ki Fir Agar Kisi Chiz Me Ikhtilaaf Karo To Use Lautaao Allaah Ki Taraf Aur Rasool SAV Ki Taraf Agar Tumhe Allaah Par Aur Qayamat Ke Din Par Imaan Hai Yah Bahut Behtar Hai Aur Ba Atibaar Anjaam Ke Bahut Achcha Hai.
Allaah Ne Moamino Ko Ikhtilaaf Ke Waqt Apni Taraf Aur Apne Rasool Ki Taraf Lautne Ka Hukam Diya Hai Jab Ham Is Sifat Ko Musalmano Me Talash Karte Hai To Na Hanfi Milte Hai Na Shafai Me,Na Maliki Me,Aur Na Hi Hambali Me Agar Kahi Yah Sifat Milti Hai To Salfiyo Me Milti Hai.


(7) Sifat: Ittifaaq Aur Ittihaad Ki Dawat Dene Wale Hai,Allaah Ka Farmaan Hai:

واعتصموا بحبل الله جميعا ولا تفرقوا.(آل عمران:103)


Tarjumah: Aur Tum Sab Log Mil Kar Allaah Ki Rassi Ko Mazbuti Se Pakad Lo Aur Tukde Tukde Mat Ho Jaao Salafiyo Ne Hamesha Allaah Aur Uske Rasool Ki Bato Ki Taraf Logo Ko Bulaya Hai Aur Yahi Ittihaad Hai Jo Kitaab Aur Sunnat Ke Alawah Aqwaale Rijaal Aur Malfuzaat E Akaabereen Ki Dawat De Woh Sarapa Ikhtilaaf Aur Deen Se Doori Hai Balke Deen Me Firqa Bandi Karna Hai Aur Allaah Ne Is Aayat Me Firqa Bandi Se Man’a Farmaya Hai.


Quraan Me Aur Bhi Bahut Se Sifaat Hai Jin Ka Zikar Lamba Ki Wajah Se Nahi Kar Pa Raha Hu Samjhne Walo Ke Liye Itne Dalaail Kaafi Hai Ab Ahaadees Ki Roshni Me Chand Sifaat Par Gaur Karte Hai.


Nabi SAV Ne 3 Zamaano Me Khair Aur Bhalaai Ki Shahaadat Di Hai Isi Sabab In Zamaano Ke Nek Logo Ko Salaf E Saaleheen Kaha Jata Hai Farmaan E Nabvi Hai:


خير أمتي القرن الذين يلوني ثم الذين يلونهم ثم الذين يلونهم.(صحيح مسلم:2532)


Tarjumah:Sab Se Behtar Zamana Mera Zamana Hai Fir Woh Log Jo Unse Qareeb Honge Fir Woh Log Jo Unse Qareeb Honge.
Jo Log Nabi SAV Ki Pairwi Salaf E Saaleheen Ke Tariqah Par Karte Hai Unhe Salafi Kaha Jata Hai Aur Manhaj E Salaf Ikhtiyaar Karne Ka Hukam Quraan Se Bhi Hai Ummat E Muslima Ke 73 Firqo Me Batne Wali Hadees Me Najaat Paane Wali Jamaat Ki Pehchaan Rasool SAV Ne Batlaai Hai:


ما انا عليه وأصحابي.(صحيح الترمذي:2641)


Tarjumah:Yani Yah Woh Log Honge Jo Mere Aur Mere Sahaba Ke Naqsh E Qadam Par Hon Ge.


Manhaj E Salaf Par Chalne Wali Jamaat Ki Ek Azeem Pehchaan Ka Zikar Karte Hue Nabi SAV Ne Farmaya:


لا تزال طائفة من أمتي بامر الله لا يضرهم من خذلهم أو خالفهم حتى يأتي أمر الله وهم ظاهرون على الناس.(صحيح مسلم:1037)


Tarjumah: Meri Ummat Me Hamesha Ek Giroh Haq Par Qaaim Rahe Ga Jo Koi Unhe Nuqsaan Pohnchana Chahe Ga Unhe Nuqsaan Nahi Pohncha Sake Ga Yaha Tak Ke Allaah Ka Hukam Aa Jaae Ga Aur Woh Usi Tarah Qaaim Rahe Ga.
Jab Bhi Salafiyo Par Sitam Dhaae Jaate Hai Unki Mukhalifat Ki Jati Hai Unhe Dehshat Gard Kaha Jata Hai Bure Alqaab Se Pukara Jata Hai To Yahi Qimati Farmaan Muhammadi Muvahedeen Ko Tassali Dilati Hai Ke Ghabraao Nahi Yah Tumhare Hi Shaayaan E Shaan Hai Jis Ki Bashaarat Ba Zubaan Risalat Di Gai Hai Yah Jamaat Ikhtilaaf Ke Waqt Me Sunnat Ko Thamne Wale Aur DEEN Me Har Qisam Ki Bid’at Aur Khuraafaat Se Apna Daman Bachane Wali Hai. Nabi SAV Ka Farmaan Hai:


اوصيكم بتقوى الله والسمع والطاعة وان عبدا حبشيا فإنه من يعش منكم بعدي فسيرى اختلافا كثيرا فعليكم بسنتي وسنة الخلفاء المهديين الراشدين تمسكوا بها وعضوا عليها بالنواجذ واياكم ومحدثات الأمور فإن كل محدثة بدعة وكل بدعة ضلالة.(صحيح ابي داؤد:4607)


Tarjumah:Me Tumhe Wasiyat Karta Hu Ke Allaah Ka Taqwah Ikhtiyaar Kiye Rehna Aur Apne Hukkaam Ke Ahkaam Sunna Aur Manna Khawah Koi Habshi Gulaam Hu Kuy Na Ho Bilashuba Tum Me Se Jo Mere Baad Zinda Raha Woh Bahut Ikhtilaaf Dekhe Ga Chunacha In Haalat Me Meri Sunnat Aur Mere Khulfa Ki Sunnat Apnaae Rakhna Khulfa Jo Ashaab Rushad Aur Hidaayat Hai Sunnat Ko Khub Mazbooti Se Thamna Balke Dadho Se Pakde Rehna New New Bid’at Aur Ikhtira’at Se Apne Aap Ko Bachaae Rakhna Bilashuba Har New Baat Bidaat Hai Aur Har Bid’at Gumraahi Hai.


Chiraag Le Kar Talash Kare Aur Musalmano Ka Haal Dekhe To Aksar Firqo Me Bid’at Ke Anwa Aur Aqsaam Paae Jate Hai Aur Salfiyat Hi Ek Aysa Khaalis Muhamadi Tariqah Hai Jis Me Bid’at Ki Qatai Koi Gunjaish Nahi Hai Gurba Ki Nishani Bhi Salafiyo Me Hi Paai Jati Hai. Farmaan E Nabvi Hai:


بدأ الإسلام غريبا وسيعود كما بدأ غريبا فطوبى للغرباء.(صحيح مسلم:145)


Tarjumah:Islaam Gurbat Aur Ajnabiyat Ki Haalat Me Shuru Hua Aur Anqareeb Isi Ajnabiyat Aur Gurbat Ki Taraf Laut Aae Ga To Gurba Ke Liye Khushkhabri Hai.


Ek Dusri Rivayat Me Gurba Ki Wazaahat Baae Alfaaz Aai Hai Nabi SAV Farmate Hai:


طوبى للغرباء اناس صالحون في اناس سوء كثير من يعصيهم أكثر ممن يطيعهم.(صحيح الجامع:3921)


Tarjumah:Ajnabiyo Ke Liye Khushkhabri Ho Yah Kuch Nek Log Honge Jin Ke Atraaf Bure Logo Ki Ek Badi Tadaad Hogi Unki Baat Ko Thukraane Dene Wale Qabool Karne Walo Se Bahut Ziyadah Honge.


Aksariyat Haq Par Hone Ka Dawa Karne Walo Ke Liye Isme Ibrat Hai Aksariyat Bilkul Meyaar Nahi Hai Balke Bahut Sare Nusoos Se Maloom Ho Gaya Ke Haq Parasat Kam Hote Hai Aur Wahi Nijaat Paane Wale Hai Ek Aakhri Sifat Zikar Kar Ke Usi Par Iktifa Karunga.


وعن مالك بن أنس مرسلا قال قال رسول الله صلى الله عليه وسلم تركت فيكم أمرين لن تضلوا ما تمسكتم بهما كتاب الله وسنة رسوله.(رواه مالك في الموطأ)


Tarjumah: Malik Bin Anas RA Mursal Rivayat Bayan Karte Hai Ke Rasool SAV Ne Farmaya:Me Tum Me 2 Chize Chode Ja Raha Hu Pas Jab Tak Tum Un Dono Par Amal Karte Raho Ge To Kabhi Gumraah Nahi Honge(Yani)Allaah Ki Kitaab Aur Uske Rasool Ki Sunnat.
Is Hadees Ko Shaikh Albaani RH Ne Hasan Kaha Hai.(Takhreej Mishkaatul Masaabih:184)


Rasool SAV Ne Najaat Paane Wali Aur Har Daur Me Maujood Rehne Wali Jamaat Ki Nishani Yah Batalaai Ke Woh Kitaab Aur Sunnat Ko Thamne Wali Hogi Aur Jo Jamaat Unhe Chod De Barbaadi Uska Muqaddar Ban Jati Hai Kaamil Taur Par Kitaab Aur Sunnat Ko Thamne Ki Sifat Bhi Siwaae Salaf Aur Salafi Ke Aur Kahi Maujood Nahi.


Mazkoorah Bala Nusoos Kitaab Aur Sunnat Ki Roshni Me Maloom Hota Ke Yah Awsaaf Salaf Saaleheen Ke Hai Aur Salaf Ki Pairwi Karne Wale Alfaaz Deegar Salaf Ke Yah Awsaaf Kaamil Taur Par Sirf Salafiyo Me Maujood Hai Unka Ek Dusra Mashhoor Naam Ahlul Hadees Bhi Hai.


Koi Maane Ya Na Maane Magar Mera Yah Manna Hai Ke Agar Koi Jamaat Deen Islaam Ke Liye Mukhlis Hai Woh Quraan Aur Hadees Par Chalne Ka Dawa Karti Hai Aur Woh Apne Dawa Me Sachchi Aur Pakki Hai To Us Jamaat Ko Bhi Salafi Ahlul Hadees Aur Muhammadi Keh Sakte Hai Magar Kiya Aap Ko Maloom Hai Ke Ahle Taqleed Aur Khaas Maslak Ki Taqleed Karne Wala Khood Ko Muhammad SAV Ki Taraf,Sahaba Ki Taraf Aur Muhaddeseen Ki Taraf Nisbat Kar Ke Muhammadi Salafi Aur Ahlul Hadees Kuy Nahi Kehlwaate?Kuy Ke Woh Quraan Aur Hadees Ki Ta’leemaat Se Door Hai Bafarz E Mahaal Woh Dawah Bhi Kare Ke Ham Quraan Aur Hadees Ke Manne Wale Hai To Woh Apne Dawa Me Jhoothe Hai Sabhi Jante Hai Ke Dawa Bagair Daleel Ke Baatil Hai.


Aakhri Baat Par Dhiyaan Dene Ki Zaroorat Hai Woh Yah Ke Hamare Liye Salafi Ya Ahlul Hadees Ki Nisbat Zaroori Nahi Thi Allaah Ne Hamara Naam Musalmaan Rakha Hai Yahi Naam Hamare Liye Kaafi Hai Magar Ummat E Muslima Me Fairqa Bandi Ke Sabab Ta’ruf Ke Taur Par Khood Ko Khawaarij,Rawaafiz Qadariya,Marajiya,Jabariya,Jehmiya Aur Motazila Wagairah Se Alag Karne Ke Liye Uski Ashad Zaroorat Padh Gai Sath Hi Yah Baat Bhi Janna Zaroori Hai Ke Salaf Saaleheen Ki Iqtida Ka Matlab Yah Hai Ke Allaah Aur Uske Rasool Ki Pairvi Karne Me Kitaab Aur Sunnat Ke Nusoos(Aqeedah Aur Sulook Ibaadaat Aur Maamlaat)Ko Jis Tarah Salaf Ne Samjha Hai Usi Tarah Samjhege Yani Deen Samjhne Aur Us Par Amal Karne Ke Liye Salaf Hamare Liye Mashale Raah Hai.

 

Shaikh Maqbool Ahmad Salafi Hafizahullaah
Islamic Dawah Center Taif Saudi Arab

 

سلفیت اور سلفی کا تعارف قرآن وحدیث کے آئینے میں

 

 

دین اسلام ایک صاف ستھرا فطری نظام حیات ہے ، اس میں زندگی گزارنے کے تمامتر پاکیزہ اصول موجود ہیں ۔ دراصل اسی دین میں انسانیت نوازی، صلح وآشتی،اتحاد واتفاق، عدل ومساوات، حقوق ومراعات، اخوت ومحبت ، صدق وصفا، امن وراحت اوراطمینان وسکون موجود ہے ، دنیا کے باقی تمام ادیان ومذاہب میں فطرت سے بغاوت اور زندگی کی پاکیزہ اصول وتعلیمات سے بیزاری ہے ۔ دین اسلام کو دوسرے لفظوں میں سلفیت سے بھی موسوم کیا جاتا ہے کیونکہ یہی اسلام کی مکمل تعبیر ہے۔

سلفیت کوئی نیا فرقہ اور خودساختہ نظام زندگی کا نام نہیں بلکہ قرون مفضلہ کے سلف صالحین کے منہج پر چلنے کا نام ہے ۔سلف صالحین سے مراد صحابہ ، تابعین اور ان کے اتباع یعنی رسول اللہ ﷺ نے جن تین زمانوں کی خیروبھلائی کا ذکر فرمایا ہے ان زمانوں کے نیک وصالح افراد جنہوں نے رسول اللہ ﷺ کے دین کو صحیح سے سمجھا اور اس پر اسی طرح عمل کیا جس طرح آپ نے حکم دیا  ۔جو لوگ ان اسلاف کرام کے منہج پر چلے انہیں سلفی کہا جاتا ہے اور جو اس سے بچھڑ جائے خلف میں اس کا شمار ہوگا۔

جس طرح اللہ تعالی نے قرآن کی حفاظت فرمائی، رسول اللہ ﷺ کے فرمودات کی حفاظت کےاسباب پیدا فرمائے اسی طرح عہد رسول سے لیکر ابتک ایک جماعت کی حفاظت کرتا رہا اور قیامت تک کرتا رہے جس جماعت کا مشن ،نبوی مشن یعنی حق(کتاب اللہ اور سنت رسول ) کا دامن تھامتے ہوئے اسی کی نشر واشاعت کرنا اور باطل کی ترید میں کسی قسم کی مصالحت نہ کرناہے ۔

چونکہ سلفیت اصل اسلام کا نام ہے اور سلفی دنیا والوں پر اصل اسلام کو پیش کرتے ہیں اس وجہ سے منہج سلف پر چلنے والوں کو نہ صرف باطل ادیان کی طرف سے خطرات ومشکلات اور مختلف قسم کے چیلنجز کا سامنا ہے بلکہ اسلام کا لبادہ اوڑھے مختلف مسالک میں بٹے مسلمانوں سے بھی ہے ۔

ستیزہ کار رہا ہے ازل سے تا امروز
چراغِ مصطفوی سے شرارِ بولہبی

علامہ اقبال نے نبوی مشن سے متصادم ہردور کے بولہبی جماعت کی طرف اشارہ کرکے حق بیانی سے کام لیا ہے اوراس حقیقت پر ہردور کی تجرباتی ومشاہداتی تاریخ بین ثبوت ہے جسے اس تاریخی سچائی سے انکار سے وہ تعصب کی عینک اتارکراپنے ہی دور کا کھلی آنکھوں سے مشاہدہ کرلے ۔

جو اسلام کے دشمن ہیں ، وہ تو اسلام دشمنی نبھائیں گے مگر حیرت اسلامی لبادہ اوڑھے اپنے بھائیوں پر ہے جنہوں نے سلفیوں کو بدنام کرنے،انہیں مالی و جسمانی گزند پہنچانے اور کفار کے لئے ان مسلمانوں کے خلاف راہ ہموار کرنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی ۔سلفیوں کو انگریز کی پیداوار قرار دیا جاتا ہے ، ان کو انتہا پسنداور دہشت گردجماعت کے طور پر غیرمسلموں میں متعارف کیا جاتا ہے۔ نبی کے گستاخ، فضائل صحابہ کے منکر، اولیاء کی شان گھٹانے والا اور ائمہ کرام کا احترام نہ کرنےوالا کہہ کر عام مسلمانوں میں نفرت پیدا کی جاتی ہے ۔قرآن وحدیث کے معانی ومفاہیم بدل بدل کر سلفیوں کو دین میں نیا فرقہ بتلایا جاتا ہے اور ان سلفیوں کی کتابیں پڑھنے ، ان سے تعلقات استوار کرنے حتی کہ معاملات کرنے سے بھی منع کیا جاتا ہے ، وہابی اورغیرمقلد کا طعنہ گالی کے طور پر دیا جاتا ہے ۔ خیر جو چاہے آپ کا حسن کرشمہ ساز کرے۔

سلفیت کیا ہے اوپر واضح کردیا گیا اور اب اس سلفیت کے پیروکار کون ہیں ، ان کی صفات کیا ہیں قرآن وحدیث کی روشنی میں دیکھتے ہیں تاکہ عوام پر حق واضح ہوجائے ،ٹولیوں میں بٹے خواص کو حقیقت کا پتہ ہے مگروہ اپنی عوام پر نہ حق پیش کرتے ہیں اور نہ ہی حق ظاہر ہونے دیتے ۔ اس کی خاص وجہ یہ ہے کہ جب کسی کو معلوم ہوجاتا ہے کہ سلفیت ہی حق کی دعوت ہے اور اسے صرف اللہ اور اس کے رسول کی اتباع کا ہی حکم ہوا ہے تو پھر وہ تقلیدی اور فقہی مذاہب سے آزاد ہوکراس سلفی منہج کواختیار کرلیتا ہے ۔

پہلے قرآن سےسلفیوں کے چند اوصاف بیان کرتا ہوں ۔

پہلی صفت :وہ اللہ اور اس کے رسول کی اتباع کرنے والے ہیں :

اللہ نے اپنی کتاب میں بیشتر مقامات پہ اپنی اور اپنے رسول کی اتباع کا حکم دیا ہے،اللہ کا فرمان ہے:

وَأَطِيعُوا اللَّهَ وَالرَّسُولَ لَعَلَّكُمْ تُرْحَمُونَ(آل عمران:132)

ترجمہ:اور اللہ اور اس کے رسول کی فرمانبرادری کرو تاکہ تم پر رحم کیا جائے۔

اللہ کا فرمان ہے : فَلْيَحْذَرِ الَّذِينَ يُخَالِفُونَ عَنْ أَمْرِهِ أَن تُصِيبَهُمْ فِتْنَةٌ أَوْ يُصِيبَهُمْ عَذَابٌ أَلِيمٌ(النور:63)

ترجمہ: سنو! جو لوگ حکم رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی مخالفت کرتے ہیں انہیں ڈرتے رہنا چاہئے کہ ان پر کوئی زبردست آفت نہ آپڑے یا انہیں کوئی دُکھ کی مار نہ پڑے۔

اللہ کا فرمان ہے:يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا أَطِيعُوا اللَّهَ وَرَسُولَهُ وَلَا تَوَلَّوْا عَنْهُ وَأَنتُمْ تَسْمَعُونَ (الانفال:20)

ترجمہ: اے ایمان والو! اللہ تعالیٰ کا اور اس کے رسول کاکہنا مانو اور اس سے روگردانی نہ کرو حالانکہ تم سن رہے ہو۔

اللہ کا فرمان ہے:وَمَا آتَاكُمُ الرَّسُولُ فَخُذُوهُ وَمَا نَهَاكُمْ عَنْهُ فَانتَهُوا ۚ (الحشر:7)

ترجمہ: اور تمہیں جو کچھ رسول دے ،لے لو اور جس سے روکے رُک جاؤ۔

ان آیات کی روشنی میں وہی مسلمان حق پر ہیں جو اللہ اور اس کی رسول کی اتباع کرتے ہیں ، ان کی اتباع کے بغیر کوئی عمل مقبول نہیں ہوگا اور ہمیں یہ کہنے میں کوئی جھجھک نہیں کہ اللہ اور اس کے رسول کی اتباع میں سچے اورپکے سلفی ہیں ۔

دوسری صفت : محمد ﷺ کو ہی اپناامام اور پیشوا مانتے ہیں ۔ اللہ کا فرمان ہے :

لَّقَدْ كَانَ لَكُمْ فِي رَسُولِ اللَّهِ أُسْوَةٌ حَسَنَةٌ (الاحزاب:21)

ترجمہ:بے شک تمہارے لئے رسول اللہ کی زندگی میں بہترین نمونہ ہے ۔

کائنات میں سب سے افضل ہستی محمد ﷺ کی ہے ، سلفی نہ صرف اس کا اعتقاد رکھتے ہیں بلکہ اللہ کے مذکورہ فرمان کے مطابق اپنا امام اعظم بھی محمد ﷺ کو ہی مانتے ہیں اور آپ کی سیرت طیبہ کے مطابق اپنی زندگی گزارتے ہیں جبکہ سلفی کے علاوہ مسلمانوں کے تمام گروہ محمد ﷺ کو چھوڑکر کسی اور کو اپنا اپنا امام مانتے ہیں اور اپنے من مانے امام کی تقلید کو راہ نجات قرار دیتے ہیں۔

تیسری صفت : رسول اللہ ﷺ کی اتباع کرنے میں سلف کے منہج پر چلنے والے ہیں ، اللہ کا فرمان ہے :

وَالسَّابِقُونَ الْأَوَّلُونَ مِنَ الْمُهَاجِرِينَ وَالْأَنصَارِ وَالَّذِينَ اتَّبَعُوهُم بِإِحْسَانٍ رَّضِيَ اللَّهُ عَنْهُمْ وَرَضُوا عَنْهُ وَأَعَدَّ لَهُمْ جَنَّاتٍ تَجْرِي تَحْتَهَا الْأَنْهَارُ خَالِدِينَ فِيهَا أَبَدًا ۚ ذَٰلِكَ الْفَوْزُ الْعَظِيمُ (التوبہ:100)

ترجمہ:جن لوگوں نے سبقت کی(یعنی سب سے پہلے) ایمان لائے مہاجرین میں سے بھی اور انصار میں سے بھی ،اور جنہوں نے بطورِ احسن ان کی پیروی کی، اللہ ان سے راضی ہے اور وہ اللہ سے راضی ہیں، اور اس نے ان کے لئے باغات تیار کئے ہیں جن کے نیچے نہریں بہہ رہی ہیں اوروہ ہمیشہ ان میں رہیں گے ، یہی بڑی کامیابی ہے۔

یہ امتیازی صفت صرف سلفیوں کی ہے کہ وہ اتباع نبی میں صحابہ کرام کے نقش قدم پر چلتے ہیں ۔

چوتھی صفت: دین حق کی کامل طورپر دعوت دینے والی جماعت ہے۔

اللہ کا فرمان ہے : وَمِمَّنْ خَلَقْنَا أُمَّةٌ يَهْدُونَ بِالْحَقِّ وَبِهِ يَعْدِلُونَ (الاعراف:181)

ترجمہ: ہماری مخلوق میں ایک ایسی جماعت بھی ہے جو دین حق کی رہنمائی کرتی ہے اور اسی کے ذریعہ انصاف کرتی ہے۔

اللہ تعالی نے اس آیت کے ذریعہ بتلادیا کہ دین محمدی کی کماحقہ تبلیغ کرنے والی ایک جماعت ہمیشہ قائم رہے گی اور وہ سلفیوں کی جماعت ہے۔مختلف گروہ میں بٹے مسلمانوں کے پاس بھی تبلیغ ہے مگر اپنےاپنے بزرگوں اور اماموں کی ۔دنیا اس بات پر شاہد کہ ممبرومحراب سے لیکر اجتماعا ت وکانفرنس تک سلفی حضرات صرف قال اللہ اور قال الرسول کی دعوت پیش کرتے ہیں ۔

پانچویں صفت : حق پرستوں کی تعداد کم ہوتی ہے ۔ اللہ کا فرمان ہے :

وَإِن تُطِعْ أَكْثَرَ مَن فِي الْأَرْضِ يُضِلُّوكَ عَن سَبِيلِ اللَّهِ ۚ إِن يَتَّبِعُونَ إِلَّا الظَّنَّ وَإِنْ هُمْ إِلَّا يَخْرُصُونَ (الانعام:116)

ترجمہ: اور دنیا میں زیادہ لوگ ایسے ہیں کہ اگر آپ ان کا کہنا ماننے لگیں تو وہ آپ کو اللہ کی راہ سے بے راہ کردیں وہ محض بے اصل خیالات پر چلتے ہیں اور بالکل قیاسی باتیں کرتے ہیں ۔

اس معانی کی کئی آیات ہیں مگر ایک ہی آیت سے ہمیں بخوبی معلوم ہوجاتا ہے کہ سیدھے راستے پر چلنے والوں کی کثرت نہیں ہوتی بلکہ قلت ہوتی ہے اسی لئے ہم سلفیوں کی تعداددنیا میں تھوڑی ہے اور رائے وقیاس پر چلنے والوں کی کثرت ہے۔

چھٹی صفت : اختلاف کے وقت کتاب اللہ اور سنت رسول کی طرف رجوع کرنے والے ہیں ، اللہ کا فرمان ہے :

يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا أَطِيعُوا اللَّهَ وَأَطِيعُوا الرَّسُولَ وَأُولِي الْأَمْرِ مِنكُمْ ۖ فَإِن تَنَازَعْتُمْ فِي شَيْءٍ فَرُدُّوهُ إِلَى اللَّهِ وَالرَّسُولِ إِن كُنتُمْ تُؤْمِنُونَ بِاللَّهِ وَالْيَوْمِ الْآخِرِ ۚ ذَٰلِكَ خَيْرٌ وَأَحْسَنُ تَأْوِيلًا (النساء:59)

ترجمہ:اے ایمان والو! فرمانبرداری کرو اللہ تعالٰی کی اور فرمانبرداری کرو رسول ﷺ کی اور تم میں سے اختیار والوں کی ۔ پھر اگر کسی چیز میں اختلاف کرو تو اسے لوٹاؤ اللہ تعالٰی کی طرف اور رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف اگر تمہیں اللہ تعالٰی پر اور قیامت کے دن پر ایمان ہے ۔ یہ بہت بہتر ہے اور باعتبارِ انجام کے بہت اچھا ہے ۔

اللہ نے مومنوں کو اختلاف کے وقت اپنی طرف اور اپنے رسول کی طرف لوٹنے کا حکم دیا ہے ، جب ہم اس صفت کو مسلمانوں میں تلاش کرتے ہیں تو نہ حنفی میں ملتی ہے ، نہ شافعی میں ، نہ مالکی میں اور نہ ہی حنبلی میں ، اگر کہیں یہ صفت ملتی ہے تو سلفیوں میں ملتی ہے۔

ساتویں صفت : اتفاق واتحاد کی دعوت دینے والے ہیں ، اللہ کا فرمان ہے :

وَاعْتَصِمُوا بِحَبْلِ اللَّهِ جَمِيعًا وَلَا تَفَرَّقُوا ۚ(آل عمران:103)

ترجمہ: اور تم سب لوگ مل کر اللہ کی رسی کو مضبوطی سے پکڑلو اور ٹکڑے ٹکڑے مت ہوجاؤ۔

سلفیوں نے ہمیشہ اللہ اور اس کے رسول کی باتوں کی طرف لوگوں کو بلایا ہے اور یہی اتحاد ہے ، جو کتاب وسنت کے علاوہ اقوال رجال اور ملفوظات اکابرین کی دعوت دے وہ سراپا اختلاف اور دین سے دوری ہے بلکہ دین میں فرقہ بندی کرنا ہے اور اللہ نے اس آیت میں فرقہ بندی سے منع فرمایا ہے ۔

قرآن میں اور بھی بہت سے صفات ہیں جن کا ذکر طوالت کی وجہ سے نہیں کرپارہاہوں ، سمجھنے والوں کے لئے اتنے دلائل کافی ہیں ۔اب احادیث کی روشنی میں چندصفات پہ غور کرتے ہیں ۔

نبی کریم ﷺ نے تین زمانوں میں خیروبھلائی کی شہادت دی ہے ،اسی سبب ان زمانوں کے نیک لوگوں کو سلف صالحین کہا جاتا ہے ۔فرمان نبوی ہے :خيرُ أمتي القرنُ الذين يلوني . ثم الذين يلونهم . ثم الذين يلونهم . (صحيح مسلم:2532)

ترجمہ: سب سے بہتر زمانہ میرا زمانہ ہے پھر وہ لوگ جو ان سے قریب ہونگے پھر وہ لوگ جو ان سے قریب ہونگے۔

جو لوگ نبی ﷺ کی اتباع سلف صالحین کے منہج کے مطابق کرتے ہیں انہیں سلفی کہا جاتا ہے اور منہج سلف اختیار کرنے کا حکم قرآن سے بھی ہے جیساکہ اوپرقرآنی آیت گزری اورحدیث میں بھی ہے ۔ امت مسلمہ کے تہتر فرقوں میں بٹنے والی حدیث میں نجات پانے والی جماعت کی پہچان رسول اللہ ﷺ نے بتلائی ہے : ما أَنا علَيهِ وأَصحابي(صحيح الترمذي:2641)

یعنی یہ وہ لوگ ہوں گے جو میرے اور میرے صحابہ کے نقش قدم پر ہوں گے۔

منہج سلف پر چلنے والی جماعت کی ایک عظیم پہچان کا ذکر کرتے ہوئے نبی ﷺ نے فرمایا:

لا تزال طائفةٌ من أمتي قائمةً بأمرِ اللهِ ، لا يضرُّهم من خذلهم أو خالفهم ، حتى يأتي أمرُ اللهِ وهم ظاهرون على الناسِ(صحيح مسلم:1037)

ترجمہ: میری امت میں ہمیشہ ایک گروہ حق پر قائم رہے گا جو کوئی انہیں نقصان پہنچانا چاہے گا انہیں نقصان نہیں پہنچا سکے گا یہاں تک کہ اللہ کا حکم آجائے گا اور وہ اسی طرح قائم رہے گا ۔

جب بھی سلفیوں پر ستم ڈھائے جاتے ہیں ،ان کی مخالفت کی جاتی ہے، انہیں دہشت گرد کہا جاتا ہے ، برے القاب سے پکارا جاتا ہے تو یہی قیمتی فرمان محمدی موحدین کو تسلی دلاتی ہے کہ گھبراؤ نہیں یہ تمہارے ہی شایان شان ہے جس کی بشارت بزبان رسالت دی گئی ہے۔

یہ جماعت اختلاف کے وقت میں سنت کو تھامنے والے اور دین میں ہرقسم کی بدعت وخرافات سے اپنا دامن بچانے والی ہے ۔نبی ﷺ کا فرمان ہے :

أوصيكم بتقوى اللهِ والسمعِ والطاعةِ وإن عبدًا حبشيًّا، فإنه من يعِشْ منكم بعدي فسيرى اختلافًا كثيرًا، فعليكم بسنتي وسنةِ الخلفاءِ المهديّين الراشدين تمسّكوا بها، وعَضّوا عليها بالنواجذِ، وإياكم ومحدثاتِ الأمورِ فإنَّ كلَّ محدثةٍ بدعةٌ، وكلَّ بدعةٍ ضلالةٌ(صحيح أبي داود:4607)

ترجمہ: میں تمہیں وصیت کرتا ہوں کہ اللہ کا تقویٰ اختیار کیے رہنا اور اپنے حکام کے احکام سننا اور ماننا ، خواہ کوئی حبشی غلام ہی کیوں نہ ہو ۔ بلاشبہ تم میں سے جو میرے بعد زندہ رہا وہ بہت اختلاف دیکھے گا ، چنانچہ ان حالات میں میری سنت اور میرے خلفاء کی سنت اپنائے رکھنا ، خلفاء جو اصحاب رشد و ہدایت ہیں ، سنت کو خوب مضبوطی سے تھامنا ، بلکہ ڈاڑھوں سے پکڑے رہنا ، نئی نئی بدعات و اختراعات سے اپنے آپ کو بچائے رکھنا ، بلاشبہ ہر نئی بات بدعت ہے اور ہر بدعت گمراہی ہے ۔

چراغ لیکر تلاش کریں اور مسلمانوں کا حال دیکھیں تو اکثر فرقوں میں بدعت کے انواع واقسام پائے جاتے ہیں اور سلفیت ہی ایک ایساخالص محمدی طریقہ ہے جس میں بدعت کی قطعی کوئی گنجائش نہیں ہے ۔ غرباء کی نشانی بھی سلفیوں میں ہی پائی جاتی ہے ، فرمان نبوی ہے :

بدأَ الإسلامُ غريبًا، وسيعودُ كما بدأَ غريبًا، فطوبى للغرباءِ(صحيح مسلم:145)

ترجمہ: اسلام غربت اور اجنبیت کی حالت میں شروع ہوا اور عنقریب اسی اجنبیت اور غربت کی طرف لوٹ آئے گا ۔ تو غربا ءکے لئے خوشخبری ہے۔

ایک دوسری روایت میں غرباء کی وضاحت بایں الفاظ آئی ہے ،نبی ﷺ فرماتے ہیں :

طوبى للغرباءِ أناسٌ صالِحونَ في أناسٍ سوءٍ كثيرٍ ، مَنْ يَعصيهم أكثرُ ممَّنْ يُطِيعُهُمْ( صحيح الجامع:3921)

ترجمہ: اجنبیوں کے لئے خوشخبری ہو ، یہ کچھ نیک لوگ ہوں گے جن کے اطراف برے لوگوں کی ایک بڑی تعداد ہوگی ،ان کی بات کو ٹھکرانے دینے والے قبول کرنے والوں سے بہت زیادہ ہوں گے ۔

اکثریت حق پر ہونے کا دعوی کرنے والوں کے لئے اس میں عبرت ہے ، اکثریت بالکل معیار نہیں ہے بلکہ بہت سارے نصوص سے معلوم ہوگیا کہ حق پرست کم ہوتے ہیں اور وہی نجات پانے والے ہیں ۔ ایک آخری صفت ذکر کرکے اسی پہ اکتفا کروں گا ۔

وَعَن مَالك بن أنس مُرْسَلًا قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: تَرَكْتُ فِيكُمْ أَمْرَيْنِ لَنْ تَضِلُّوا مَا تَمَسَّكْتُمْ بِهِمَا: كِتَابَ اللَّهِ وَسُنَّةَ رَسُولِهِ « رَوَاهُ مالك فِي الْمُوَطَّأ»

ترجمہ: مالک بن انس ؒ مرسل روایت بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا :میں تم میں دو چیزیں چھوڑ کر جا رہا ہوں ، پس جب تک تم ان دونوں پر عمل کرتے رہو گے تو کبھی گمراہ نہیں ہو گے ، (یعنی) اللہ کی کتاب اور اس کے رسول کی سنت ۔

اس حدیث کو شیخ البانی نے حسن کہا ہے ۔ (تخريج مشكاة المصابيح للالبانی:184)

رسول اللہ ﷺ نے نجات پانے والی اور ہردور میں موجود رہنےوالی جماعت کی نشانی یہ بتلائی کہ وہ کتاب وسنت کو تھامنے والی ہوگی اور جو جماعت انہیں چھوڑ دے بربادی اس کا مقدر بن جاتی ہے ۔کامل طور پر کتاب وسنت کو تھامنے کی  صفت بھی سوائے سلف اور سلفی کے اور کہیں موجود نہیں ۔

مذکورہ بالا نصوص کتاب وسنت کی روشنی میں معلوم ہوتا کہ یہ  اوصاف سلف صالحین کے ہیں اور سلف کی پیروی کرنے والےبالفاظ دیگر سلف کے یہ اوصاف کامل طورپر محض سلفیوں میں موجود ہیں ، ان کا ایک دوسرامشہور نام  اہل الحدیث بھی ہے۔

کوئی مانے یا نہ مانے مگر میرا یہ ماننا ہے کہ اگر کوئی جماعت دین اسلام کے لئے مخلص ہے ، وہ قرآن وحدیث پر چلنے کا دعوی کرتی ہے اور وہ اپنے دعوی میں سچی اور پکی ہے تو اس جماعت کو بھی سلفی ، اہل الحدیث اورمحمدی کہہ سکتے ہیں مگرکیا آپ کو معلوم ہے کہ اہل تقلیداورخاص مسلک کی تقلیدکرنے والے خود کومحمد ﷺ کی طرف ، صحابہ کی طرف اور محدثین کی طرف نسبت کرکے محمدی، سلفی اور اہل الحدیث کیوں نہیں کہلواتے ؟ کیونکہ وہ قرآن وحدیث کی تعلیمات سے دور ہیں، بفرض محال وہ دعوی بھی کریں کہ ہم قرآن وحدیث کے ماننے والے ہیں تو وہ اپنے دعوی میں جھوٹے ہیں ۔ سبھی جانتے ہیں کہ دعوی بغیر دلیل کے باطل ہے۔

آخری بات پہ دھیان دینے کی ضرورت ہے وہ یہ کہ ہمارے لئے سلفی یا اہل الحدیث کی نسبت ضروری نہیں تھی،اللہ نے ہمارا نام مسلمان رکھا ہے یہی نام ہمارے لئے کافی ہے مگر امت مسلمہ میں فرقہ بندی کے سبب تعارف کے طور پر خود کوخوارج، روافض ، قدریہ، مرجیہ ، جبریہ ، جہمیہ اورمعتزلہ وغیرہ سے الگ کرنے کے لئے اس کی اشد ضرورت پڑگئی ۔ ساتھ ہی یہ بات بھی جاننا ضروری ہے کہ سلف صالحین کی اقتدا کا مطلب یہ ہے کہ اللہ اور اس کے رسول کی اتباع کرنے میں کتاب وسنت کے نصوص (عقیدہ وسلوک ، عبادات ومعاملات)کو جس طرح سلف نے سمجھا ہے اسی طرح سمجھیں گے یعنی دین سمجھنے اور اس پر عمل کرنے کے لئے سلف ہمارے لئے مشعل راہ ہے۔

 

تحریر: مقبول احمد سلفی
اسلامک دعوۃ سنٹر، شمالی طائف (مسرہ)

 

 

Table of Contents