Sections
< All Topics
Print

10. ISLAM KA MITNA AUR QUR’AN KA UTHAAYA JANA [The disappearance of the Quran and Knowledge]

ISLAM KA MITNA AUR QUR’AN KA UTHAAYA JANA:

Hazrat Huzaifah bin al yaman(رضي الله عنه) se riwayat hai keh Rasool Allah(ﷺ) ne farmaaya:

    “Islam is tarah mitjaega jaise kapre ka aik daagh mitjaata hai yahan tak keh ye bhi maloom na hoga keh Namaz kiya hai? Roza kiya hai? Aur qurbaani aur sadqa kiya hai? Aik raat aegi jab kitaab Allah (Qur’an-e-majeed) ko uthaaliya jaega hatta keh uski aik ayat bhi zameen par baaqi na rahegi- (Aur aik waqt aega jab) badi umr kay log kahengay: hamne apne abaaou ajdaad se ye kalma (Lailaha illallah) suna tha tou ham bhi usay padhte hain.”

    Hazrat Salhar(رحمه الله) ne hazrat Huzaifah(رضي الله عنه) se kaha: unhay mahez kalma padhne se kiya faida hoga jabke wo namaz, roza, qurbaani aur sadqa ko nahi jantay hongay? Tou Hazrat Huzaifah(رضي الله عنه) ne muh pherliya aur usay koi jawab nahi diya.

       Hazrat Salah(رحمه الله) ne teen bar yehi suwaal kiya aur har bar Hazrat Huzaifah(رضي الله عنه) ne muh pherliya- phur unho ne kaha : Ae salah! Yeh kalma unhay jahannum se najaat dilaega- (unho ne teen bar yehi kaha).

 

[Ibn Majah: 4049]

     Yaad rahe ye surat-e-haal Hazrat Isa(علیہ السلام) ki maut kay ba’ad hogi.

REFERENCE:
BOOK: “ZAAD UL KHATEEB” JILD: 02
BY:  DR. MUHAMMAD ISHAQ ZAHID

The disappearance of the Quran and Knowledge

حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ، حَدَّثَنَا أَبُو مُعَاوِيَةَ، عَنْ أَبِي مَالِكٍ الأَشْجَعِيِّ، عَنْ رِبْعِيِّ بْنِ حِرَاشٍ، عَنْ حُذَيْفَةَ بْنِ الْيَمَانِ، قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ ـ صلى الله عليه وسلم ـ ‏ “‏ يَدْرُسُ الإِسْلاَمُ كَمَا يَدْرُسُ وَشْىُ الثَّوْبِ حَتَّى لاَ يُدْرَى مَا صِيَامٌ وَلاَ صَلاَةٌ وَلاَ نُسُكٌ وَلاَ صَدَقَةٌ وَلَيُسْرَى عَلَى كِتَابِ اللَّهِ عَزَّ وَجَلَّ فِي لَيْلَةٍ فَلاَ يَبْقَى فِي الأَرْضِ مِنْهُ آيَةٌ وَتَبْقَى طَوَائِفُ مِنَ النَّاسِ الشَّيْخُ الْكَبِيرُ وَالْعَجُوزُ يَقُولُونَ أَدْرَكْنَا آبَاءَنَا عَلَى هَذِهِ الْكَلِمَةِ لاَ إِلَهَ إِلاَّ اللَّهُ فَنَحْنُ نَقُولُهَا ‏”‏ ‏.‏ فَقَالَ لَهُ صِلَةُ مَا تُغْنِي عَنْهُمْ لاَ إِلَهَ إِلاَّ اللَّهُ وَهُمْ لاَ يَدْرُونَ مَا صَلاَةٌ وَلاَ صِيَامٌ وَلاَ نُسُكٌ وَلاَ صَدَقَةٌ فَأَعْرَضَ عَنْهُ حُذَيْفَةُ ثُمَّ رَدَّهَا عَلَيْهِ ثَلاَثًا كُلَّ ذَلِكَ يُعْرِضُ عَنْهُ حُذَيْفَةُ ثُمَّ أَقْبَلَ عَلَيْهِ فِي الثَّالِثَةِ فَقَالَ يَا صِلَةُ تُنْجِيهِمْ مِنَ النَّارِ ‏.‏ ثَلاَثًا ‏.‏

It was narrated from Hudhaifah bin Yaman that the Messenger of Allah (ﷺ) said:
“Islam will wear out as embroidery on a garment wears out, until no one will know what fasting, prayer, (pilgrimage) rites and charity are. The Book of Allah will be taken away at night, and not one Verse of it will be left on earth. And there will be some people left, old men and old women, who will say: “We saw our fathers saying these words: ‘La ilaha illallah’ so we say them too.” Silah said to him: “What good will (saying): La ilaha illallah do them, when they do not know what fasting, prayer, (pilgrimage) rites and charity are?” Hudhaifah turned away from his. He repeated his question three times, and Hudhaifah turned away from him each time. Then he turned to him on the third time and said: “O Silah! It will save them from Hell,” three times.

[Ibn Majah: 4049]

REFERENCE: Sunnah.com

اسلام کا مٹنا اور قرآن کا اٹھایا جانا :

حضرت حذیفہ بن الیمان رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :

’’ اسلام اس طرح مٹ جائے گا جیسے کپڑے کا ایک داغ مٹ جاتا ہے یہاں تک کہ یہ بھی معلوم نہ ہوگا کہ نماز کیا ہے ؟ روزہ کیا ہے ؟اور قربانی اور صدقہ کیا ہے ؟ ایک رات آئے گی جب کتاب اللہ (قرآن مجید ) کو اٹھالیا جائے گا حتی کہ اس کی ایک آیت بھی زمین پر باقی نہ رہے گی۔ ( اور ایک وقت آئے گا جب ) بڑی عمر کے لوگ کہیں گے: ہم نے اپنے آباؤ اجداد سے یہ کلمہ ( لَا إِلٰہَ إلَّا اللّٰہُ ) سنا تھا تو ہم بھی اسے پڑھتے ہیں ‘‘

حضرت صلہرحمہ اللہ نے حضرت حذیفہ رضی اللہ عنہ سے کہا : انھیں محض کلمہ پڑھنے سے کیا فائدہ ہو گا جبکہ وہ نماز ، روزہ ، قربانی اور صدقہ کو نہیں جانتے ہو ں گے ؟تو حضرت حذیفہ رضی اللہ عنہ نے منہ پھیر لیا اور اسے کوئی جواب نہ دیا ۔ حضرت صلہ رضی اللہ عنہ نے تین بار یہی سوال کیا اور ہر بار حضرت حذیفہ رضی اللہ عنہ نے منہ پھیر لیا ۔ پھر انھوں نے کہا : اے صلہ ! یہ کلمہ انھیں جہنم سے نجات دلائے گا ۔ ( انھوں نے تین بار یہی کہا ) 

سنن ابن ماجہ :4049، وصححہ الألبانی فی الصحیحۃ :87

یاد رہے کہ یہ صورت حال حضرت عیسی علیہ السلام کی موت کے بعد ہو گی ۔

ریفرنس:
کتاب:”زادالخطیب” جلد:دوم
ڈاکٹر محمد اسحاق زاہد
Table of Contents