Sections
< All Topics
Print

03. JANNAT KA RASTA

JANNAT KA RASTA

 

Jannat ka raasta intehaee asaan aur bohat hi roshan hai- Qur’an-e-majeed mein Allah Ta’aala ne aur Ahadees mubarak mein Rasool Akram(ﷺ) ne usay wazeh taur par bayan kardiya hai- tou lijie chand aayaat-e-qur’aniya aur ahadees-e-Nabawwi mein dekheye Jannat tak pohanchne walay ka rastay ka taeen kiya gaya hai.

Allah Ta’aala farmaata hai:

 

﴿تِلْکَ الْجَنَّۃُ الَّتِیْ نُوْرِثُ مِنْ عِبَادِنَا مَنْ کَانَ تَقِیًّا﴾

 

“Yeh hai wo jannat jiska waaris ham apnay bandon mein se unhay banatay hain jo muttaqee (parhezgaar) hon.”

[Surah Maryam:19: 63]

 

      Isi tarah Allah Ta’aala ka farmaan hai:

 

﴿وَأُزْلِفَتِ الْجَنَّۃُ لِلْمُتَّقِیْنَ غَیْرَ بَعِیْدٍ. ہٰذَا مَا تُوْعَدُوْنَ لِکُلِّ أَوَّابٍ حَفِیْظٍ. مَنْ خَشِیَ الرَّحْمٰنَ بِالْغَیْبِ وَجَآئَ بِقَلْبٍ مُّنِیْبٍ. أُدْخُلُوْہَا بِسَلاَمٍ ذٰلِکَ یَوْمُ الْخُلُوْدِ. لَہُمْ مَّا یَشَآؤُوْنَ فِیْہَاوَلَدَیْنَا مَزِیْدٌ﴾

 

“Aur Jannat parhezgaaron kay liye bilkul qareeb kardi jaegi- zara bhi dur na hogi, ye hai jiska tum se wada kiya jaata tha har us shakhs kay liye jo (Allah ki taraf) rujoo karne wala, paabandi karne wala ho, jo rehmaan ka ghaybana khouf rakhta ho aur tawajjo wala dil laya ho- Tum is Jannat mein salamati kay sath dakhil hojou- yeh hamesha rehne ka din hai- yeh wahan jo chahengay unhay milega (Balkeh) hamare paas aur bhi ziyada hai.”

[Surah Qaaf: 50: 31-35]

 

Nez farmaaya:

﴿ وَأَمَّا مَنْ خَافَ مَقَامَ رَبِّہٖ وَنَہَی النَّفْسَ عَنِ الْہَوٰی. فَإِنَّ الْجَنَّۃَ ہِیَ الْمَأْوٰی))

 

“Haan jo shakhs Apne rab kay samne khara hone se darta raha hoga aur apnay nafs ko khwaahish (ki pairvi karne) se roka hoga to uska thikana jannat hi hai.”

[Surah Na’aziyat:79: 40-41]

 

Aur farmaaya:

﴿وَلِمَنْ خَافَ مَقَامَ رَبِّہٖ جَنَّتَانِ)

 

“Aur is shakhs ke liye jo apnay Rab ke samne khada honay se dara do(2) jannatein hain.” 

[Surah Rahman:55: 46]

 

        Yeh aur unkay alawah digar kaey aayaat (Jinme se baishtar ka zikr ham khutbe kay aaghaaz mein karchukay hain) se maloom hota hai keh Allah Rabbul izzat ne jannat un logon kay liye tayyar ki hai jo parhezgaar hon, Allah Ta’aala se darnay walay hon, uski taraf bakasrat rujoo karne walay hon,  Allah Ta’aala kay Deen ki hifazat  karne walay hon aur nafsaani khwaahishat ki pairvi karne kay bajaey shariyat—e-illahi kay parhezgaar aur paband hon- Lihaza taqwa hi jannat ka raasta hai-

     TAQWAA aisa jame’ lafz hai jisay har khair ki buniyad qaraar diya jasakta hai aur issay murad Allah Rabbul izzat kay ahkamaat ki pairvi karna hai- lihaza jo shakhs bhi is sifat ka hamil hoga wo jannat mein janay ka haqdaar hoga.

Isi tarah Rasool Allah(ﷺ) ka irshad-e-giraami hai:

 

(( حُفَّتِ الْجَنَّۃُ بِالْمَکَارِہِ،وَحُفَّتِ النَّارُ بِالشَّہَوَاتِ))

 

“Jannat ko in kaamon se dhanpa gaya hai jo keh (Tab’ee  insaani ko) napasand hotey hain- aur jahannum ko shahwaat se dhanpa gaya hai.” 

[Sahih Musim: 2822]

 

    Isi hadees mein (  المکارہ ) se murad wo aamaal hain jo insaani tabiyat ko napasand hote hain aur unka baja laana unpar giran hota hai , Maslan garmi mein garam pani se aur sardi mein thanday pani se wudu karna, panch waqt namaz ki pabandi karna, zakat ada karna aur rozay kay darwazay se khaane peene se parhez karna waghera- Is hadees se maloom hota hai keh jo aamaal tab’ee taur par mushkil samjhay jaate ho unhain anjaam dena jannat ka rasta hai jabke nafsaani khwaahishaat par amal karna jahannum ka rasta hai.

       Isi tarah Rasool Allah(ﷺ) ka irshad hai:

 

(( کُلُّ أُمَّتِیْ یَدْخُلُوْنَ الْجَنَّۃَ إِلَّا مَنْ أَبٰی،قِیْلَ:مَنْ أَبٰی یَا رَسُوْلَ اللّٰہِ ! قَالَ : مَنْ أَطَاعَنِیْ دَخَلَ الْجَنَّۃَ،وَمَنْ عَصَانِیْ فَقَدْ أَبٰی))

 

“”Meri Ummat kay tamam log jannat mein dakhil hongay siwae uske jisne inkaar kardiya.”

      Aap(ﷺ) se poocha gaya keh: Ae Allah Kay Rasool(ﷺ) ! inkaar kaun karta hai? Tou Aap(ﷺ) ne farmaaya: Jisne meri ata’at ki wo jannat mein dakhil hoga aur jisne meri nafarmaani ki usne inkaar kardiya.”

[Sahih Al Bukhari: 7280]

 

      Yeh Hadees bhi jannat ka rasta muta’een kar rahi hai aur ussay maloom hota hai keh Rasool Allah(ﷺ) kay pairokaar hi jannat mein dakhil hongay-

    Isi tarah Rasool Allah(ﷺ) ka irshaad giraami hai:

 
(( اِتَّقُوْا اللّٰہَ،وَصَلُّوْا خَمْسَکُمْ،وَصُوْمُوْا شَہْرَکُمْ،وَأَدُّوْ ا زَکَاۃَ أَمْوَالِکُمْ ، طَیِّبَۃً بِہَا أَنْفُسُکُمْ ، وَأَطِیْعُوْا ذَا أَمْرِکُمْ ، تَدْخُلُوْا جَنَّۃَ رَبِّکُم))

 

“Tum sab Allah se daro, panchon namazen ada karo, Maah-e-ramazan kay rozay rakho, apnay maalon ki zakat bakhushi ada karo aur apnay hukmraan ki ita’at karo, is tarah tum apnay Rab ki jannat mein dakhil hojougay.

Is hadees mein bhi jannat mein pohanchanay waalay raste ka ta’een kardiya gaya hai- Agar ham Allah Ta’aala se dartay rahe aur mazkoorah aamaal pabandi se anjaam detay rahen tou Nabi Kareem(ﷺ) ka hamse wada hai keh ham zarur jannat mein dakhil hongay-

Allah Ta’aala ham sabko Jannat ul firdous kay warison mein shamil karde- Aameeen.

 
Book:
Part of “Zaad Ul Khateeb” ; Volume: 02
Taleef: By Dr. Hafiz Muhammad Ishaq Zahid.

 

 

THE WAY OF PARADISE’

 

Allah says:

تِلْكَ الْجَنَّةُ الَّتِي نُورِثُ مِنْ عِبَادِنَا مَنْ كَانَ تَقِيًّا

 

Such is the Paradise, which We shall give as an inheritance to those of Our slaves who have been Al-Muttaqoon [pious and righteous].

 

(Qur’an 19: 63)
 
لَهُمْ مَا يَشَاءُونَ فِيهَا وَلَدَيْنَا مَزِيدٌ

 

There they will have all that they desire, – and We have more [for them, i.e. a glance at the All-Mighty, All-Majestic].

 (Q ur’an 50: 35)

 

وَلِمَنْ خَافَ مَقَامَ رَبِّہٖ جَنَّتَانِ)

 

But for him who fears the standing before his Lord, there will be two Gardens [i.e. in Paradise].

(Q ur’an 55: 46)

 

An-Nawawi commented on the first hadith: “This is an example of the beautiful, eloquent and concise speech of which the Prophet (ﷺ) was capable, in which he gives a beautiful analogy. It means that nothing will help you to reach Paradise except going throughhardships, and nothing will lead you to Hell but whims and desires.

Both are veiled as described, and whoever tears down the veil will reach what was hidden behind it. The veil of Paradise is tom down by going through hardships, and the veil of Hell is tom down by giving into whims and desires. Hardship includes striving consistently and patiently in worship, restraining one’s anger, forgiving, being patient, giving charity, being kind to those who mistreat, resisting physical desires, etc.”

Sharh an-Nawawi ‘ala Muslim, 17/165.

 

May Allah Ta’ala include us among the inheritors of Jannah Al-Firdous – Ameen.

 

REFERENCE:
BOOK: “PARADISE AND HELL In the Light of the Qur’an and Sunnah”
Dr. ‘Umar S.al-Ashqar
Compiled by Monis Begum

 

 

جنت کا راستہ

 

جنت کا راستہ انتہائی آسان اور بہت ہی روشن ہے ۔ قرآن مجید میں اللہ تعالیٰ نے اوراحادیثِ مبارکہ میں رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے اسے واضح طور پر بیان کردیا ہے ۔ تو لیجئے چند آیاتِ قرآنیہ اور احادیثِ نبویہ سماعت کیجئے جن میں جنت

تک پہنچانے والے راستے کا تعین کیا گیا ہے ۔

اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں 

 

 ﴿تِلْکَ الْجَنَّۃُ الَّتِیْ نُوْرِثُ مِنْ عِبَادِنَا مَنْ کَانَ تَقِیًّا﴾ 

 

’’ یہ ہے وہ جنت جس کا وارث ہم اپنے بندوں میں سے انہیں بناتے ہیں جو متقی ( پرہیز گار ) ہوں۔ ‘‘

مریم19:63

 

اسی طرح اللہ تعالیٰ کا فرمان ہے :

 

﴿وَأُزْلِفَتِ الْجَنَّۃُ لِلْمُتَّقِیْنَ غَیْرَ بَعِیْدٍ. ہٰذَا مَا تُوْعَدُوْنَ لِکُلِّ أَوَّابٍ حَفِیْظٍ. مَنْ خَشِیَ الرَّحْمٰنَ بِالْغَیْبِ وَجَآئَ بِقَلْبٍ مُّنِیْبٍ. أُدْخُلُوْہَا بِسَلاَمٍ ذٰلِکَ یَوْمُ الْخُلُوْدِ. لَہُمْ مَّا یَشَآؤُوْنَ فِیْہَاوَلَدَیْنَا مَزِیْدٌ﴾ 

 

’’ اور جنت پرہیزگاروں کیلئے بالکل قریب کردی جائے گی۔ ذرا بھی دور نہ ہو گی ، یہ ہے جس کا تم سے وعدہ کیا جاتا تھاہر اس شخص کیلئے جو ( اللہ کی طرف) رجوع کرنے والا ، پابندی کرنے والا ہو ، جو رحمان کا غائبانہ خوف رکھتا ہو اور توجہ والا دل لایا ہو ۔ تم اس جنت میں سلامتی کے ساتھ داخل ہو جاؤ ۔ یہ ہمیشہ رہنے کا دن ہے ۔ یہ وہاں جو چاہیں گے انھیں ملے گا (بلکہ ) ہمارے پاس اور بھی زیادہ ہے ۔ ‘‘

ق50 :35-31

 

نیز فرمایا:

 

﴿ وَأَمَّا مَنْ خَافَ مَقَامَ رَبِّہٖ وَنَہَی النَّفْسَ عَنِ الْہَوٰی. فَإِنَّ الْجَنَّۃَ ہِیَ الْمَأْوٰی﴾ [3]

 

’’ہاں جو شخص اپنے رب کے سامنے کھڑے ہونے سے ڈرتا رہا ہو گا اور اپنے نفس کو خواہش ( کی پیروی کرنے ) سے روکا ہو گا تو اس کا ٹھکانا جنت ہی ہے ۔ ‘‘

النازعات79: 41-40

 

اور فرمایا : ﴿وَلِمَنْ خَافَ مَقَامَ رَبِّہٖ جَنَّتَانِ﴾

 

’’ اور اس شخص کیلئے جو اپنے رب کے سامنے کھڑا ہونے سے ڈرا دو جنتیں ہیں ۔‘‘

الرحمن55 :46

 

یہ اور ان کے علاوہ دیگر کئی آیات ( جن میں سے بیشتر کا ذکر ہم خطبہ کے آغاز میں کر چکے ہیں ) سے معلوم ہوتا ہے کہ اللہ رب العزت نے جنت ان لوگوں کیلئے تیار کی ہے جو پرہیز گار ہوں ، اللہ تعالیٰ سے ڈرنے والے ہوں ، اس کی طرف بکثرت رجوع کرنے والے ہوں ، اللہ تعالیٰ کے دین کی حفاظت کرنے والے ہوں اور نفسانی خواہشات کی پیروی کرنے کی بجائے شریعتِ الہیہ کے پیروکار اور پابند ہوں ۔ لہٰذا تقوی ہی جنت کا راستہ ہے۔ تقوی ایسا جامع لفظ ہے جسے ہر خیر کی بنیاد قرار دیا جا سکتا ہے اور اس سے مراد اللہ رب العزت کے احکامات کی پیروی کرنا اور اس کی منع کردہ چیزوں سے پرہیز کرنا ہے ۔ لہٰذا جو شخص بھی اس صفت کا حامل ہو گا وہ جنت میں جانے کا حقدار ہو گا ۔

اسی طرح رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد گرامی ہے:

 

(( حُفَّتِ الْجَنَّۃُ بِالْمَکَارِہِ،وَحُفَّتِ النَّارُ بِالشَّہَوَاتِ)) 

 

’’ جنت کو ان کاموں سے ڈھانپا گیا ہے جو کہ ( طبعِ انسانی کو ) نا پسند ہوتے ہیں۔ اور جہنم کو شہوات سے ڈھانپا گیا ہے ۔ ‘‘

صحیح مسلم:2822

 

اس حدیث میں ( المکارہ ) سے مراد وہ اعمال ہیں جو انسانی طبیعت کو نا پسند ہوتے ہیں اور ان کا بجا لانا ان پر گراں ہوتا ہے مثلا گرمی میں گرم پانی سے اور سردی میں ٹھنڈے پانی سے وضو کرنا ، پانچ وقت نماز کی پابندی کرنا ، زکاۃ ادا کرنا اور روزے کے دوران کھانے پینے سے پرہیز کرنا وغیرہ ۔ اس حدیث سے معلوم ہوتا ہے کہ جو اعمال طبعی طور پرمشکل سمجھے جاتے ہوں انھیں انجام دینا جنت کا راستہ ہے جبکہ نفسانی خواہشات پر عمل کرنا جہنم کا راستہ ہے ۔

اسی طرح رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد ہے :

 

(( کُلُّ أُمَّتِیْ یَدْخُلُوْنَ الْجَنَّۃَ إِلَّا مَنْ أَبٰی،قِیْلَ:مَنْ أَبٰی یَا رَسُوْلَ اللّٰہِ ! قَالَ : مَنْ أَطَاعَنِیْ دَخَلَ الْجَنَّۃَ،وَمَنْ عَصَانِیْ فَقَدْ أَبٰی))

 

’’ میری امت کے تمام لوگ جنت میں داخل ہونگے سوائے اس کے جس نے انکار کردیا ۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے پوچھا گیا کہ اے اللہ کے رسول! انکار کون کرتا ہے ؟ تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : جس نے میری اطاعت کی وہ جنت میں داخل ہو گا اور جس نے میری نافرمانی کی اس نے انکار کردیا۔‘‘

صحیح البخاری:7280

 

یہ حدیث بھی جنت کا راستہ متعین کر رہی ہے اور اس سے معلوم ہوتا ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پیروکار ہی جنت میں داخل ہو نگے ۔

اسی طرح رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد گرامی ہے :

 

(( اِتَّقُوْا اللّٰہَ،وَصَلُّوْا خَمْسَکُمْ،وَصُوْمُوْا شَہْرَکُمْ،وَأَدُّوْ ا زَکَاۃَ أَمْوَالِکُمْ ، طَیِّبَۃً بِہَا أَنْفُسُکُمْ ، وَأَطِیْعُوْا ذَا أَمْرِکُمْ ، تَدْخُلُوْا جَنَّۃَ رَبِّکُم))

 

’’ تم سب اللہ سے ڈرو ، پانچوں نمازیں ادا کرو ، ماہِ رمضان کے روزے رکھو ، اپنے مالوں کی زکاۃ بخوشی ادا کرو اور اپنے حکمران کی اطاعت کرو ، اس طرح تم اپنے رب کی جنت میں داخل ہوجاؤگے ۔ ‘

سنن الترمذی،ابن حبان وغیرہ ۔ صحیح الجامع للألبانی :109

 

اس حدیث میں بھی جنت میں پہنچانے والے راستے کا تعین کردیا گیا ہے۔ اگر ہم اللہ تعالیٰ سے ڈرتے رہیں اور مذکورہ اعمال پابندی سے انجام دیتے رہیں تو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کاہم سے وعدہ ہے کہ ہم ضرور جنت میں داخل ہو نگے۔
اللہ تعالیٰ ہم سب کو جنت الفردوس کے وارثوں میں شامل کردے ۔ آمین

 

ریفرنس:
کتاب:”زادالخطیب” جلد:دوم
ڈاکٹر محمد اسحاق زاہد

 

 

Table of Contents