Sections
< All Topics
Print

06. NAIK AUR BAD KI MAUT MEIN FARQ [Difference between the death of obedient & Disobedient Servant]

NAIK AUR BAD KI MAUT MEIN FARQ

 

Jis tarah naik aur bad ki zindagi aur Allah ke farmaabardar aur uske nafarmaan ki zindagi aik jaise nahi hoti usi tarha un dono Ki maut bhi aik jaisi nahi hoti- Allah Ta’aala ka farmaan hai:

 

أَمْ حَسِبَ الَّذِیْنَ اجْتَرَحُوا السَّیِّئَاتِ أَن نَّجْعَلَہُمْ کَالَّذِیْنَ آمَنُوا وَعَمِلُوا الصَّالِحَاتِ سَوَائً مَّحْیَاہُم وَمَمَاتُہُمْ سَائَ مَا یَحْکُمُوْنَ﴾

 

“Kiya buray kaam karne walon ka ye gumaan hai keh ham unhe un logon jaisa kardingay jo imaan laey aur naik amal kiya? Kiya unka marna jeena aik jaisa hoga? Bura hai wo faisla jo wo kar rahe hain”

[Surah Jasiya:45: 21]

 

Yani agar un mujrimon ka yeh khayal hai keh unka aur imaan walon aur amal-e-swaleh karnay waaloun ka marna jeena aik jaisa hoga tou yaqeeni taur par unka ye khayal bura hai, kyun keh unki maut o hayat me bohat bada farq hai….aur ye farq kiya hai? Is baare mein mutaddid Qurani ayaat aur Ahadees-e-Nabawi maujood hain- Inme se chand aik aap bhi sama’at farmaalen:

 

Naik aur swaleh insaan ki maut ki kaifiyat ko Allah Ta’aala yun bayan farmaata hai;

 

﴿یَا أَیَّتُہَا النَّفْسُ الْمُطْمَئِنَّۃُ. ارْجِعِیْ إِلَی رَبِّکِ رَاضِیَۃً مَّرْضِیَّۃً . فَادْخُلِیْ فِیْ عِبَادِیْ. وَادْخُلِیْ جَنَّتِیْ﴾

 

“Ae itmenaan waali rooh! Tu apne Rab ki taraf laut chal, is tarah keh tu ussay Raazi aur wo tujhse khush- phir mere bandon mein dakhil hoja aur meri jannat mein chali ja.”

[Surah Fajr:89: 27-30]

 

     Yeh Azeem khush khabri momin ko uski maut ke waqt di jaati hai- Goya uski maut asaan hoti hai aur us halat mein uspar ati hai keh jab wo Allah se aur Allah ussay raazi hota hai- Jabke Allah ke nafarmaan ki maut us halat mein aati hai keh farishta-e-maut usay maut ke waqt Allah Ta’aala ki narazgi ki khabar sunata hai aur uski rooh ko mukhatib karte hue kehta hai: tu Allah Ta’aala ke ghazab ki taraf chaali ja.

 

Buray aur nafarmaan ki maut ka tazkeerah karte huey Allah Ta’aala ka farmaan hai:

 

﴿وَلَوْ تَرَی إِذِ الظَّالِمُونَ فِیْ غَمَرَاتِ الْمَوْتِ وَالْمَلآئِکَۃُ بَاسِطُوا أَیْدِیْہِمْ أَخْرِجُوا أَنفُسَکُمُ الْیَوْمَ تُجْزَوْنَ عَذَابَ الْہُونِ بِمَا کُنتُمْ تَقُولُونَ عَلَی اللّٰہِ غَیْرَ الْحَقِّ وَکُنتُمْ عَنْ آیَاتِہِ تَسْتَکْبِرُونَ﴾

 

Aur Hazrat Abu Hurerah(رضي الله عنه) se riwayat hai keh Rasool Allah(ﷺ) ne farmaaya, Farishte hazir hote hain, phir agar marne wala naik ho tou wo kehte hain: Ae paak rooh jo paak jism mein thi, tu qabil-e-sataish halat mein nikal aur tujhe aram aur umdah rozi ki khush khabri ho aur is baat ki keh Allah tujh par raazi hai- Farishte ye batein baar baar usay kehte rahte hain yahan tak keh uski rooh nikal jaati hai- phir usay asmaan ki taraf lejaya jaata hai tou poocha jaata hai: yeh kaun hai? Wo kehte hain: ye fulah bin fulah hai- Toh kaha jata hai: is paak rooh ko khush aamdeed jo paak jism mein thi, tum qabill-e-sataish halat mein andar aa jaou- aur tumhe aram aur umdah rozi ki khush khabri ho aur is baat ki keh Allah tum par raazi hai- Farishte isay baar baar yeh khush khabriyan sunate rehete hain yahan tak keh wo us asmaan par  pohanch jaati hai jahan Allah Ta’aala hai (yani illeyeen mein)

       Aur agar marne wala bura ho tou farishta keheta hai: Ae wo na paak rooh jo na paak jism mein thi nikal, tu qabil-e-mazammat halat mein nikal- aur tujhe jahannum aur peep aur tarah tarah kay azaab ki khush khabri ho, phir ussay yeh baat baar baar kahi jaati hai yahan tak keh uski rooh nikal jaati hai, phir usay Asmaan ki taraf lejaya jaata hai aur uske liye jab asmaan ka darwaza khulwaya jaata hai tou usay kaha jaata hai: Is napaak rooh ko koi khush aamdeed nahi jo napaak jism mein thi, tum qabil-e-mazammat halat mein wapis palat jaou aur tumhaare liye asmaanon ke darwazay nahi khole jasakte – phir usay wapis bhej diya jaata hai aur phir wo qabar mein aajaati hai.

[Ibn Majah: 4262]

 

Hazrat Ubadah bin samit(رضي الله عنه) se riwayat hai keh Rasool Allah(ﷺ) ne farmaaya:

 

(( مَنْ أَحَبَّ لِقَائَ اللّٰہِ أَحَبَّ اللّٰہُ لِقَائَ ہُ ، وَمَنْ کَرِہَ لِقَائَ اللّٰہِ کَرِہَ اللّٰہُ لِقَائَ ہُ))

 

“Jo shakhs Allah ki mulaqaat ko pasand karta ho Allah uski mulaqaat ko pasand karta hai- aur jo shakhs Allah ki mulaqaat ko napasand karta ho Allah uski mulaqaat ko napasand karta hai.”

      Hazrat Ayesha(رضی اللہ عنہا) ne kaha: agar is say murad maut ko napasand karna hai tou usay tou ham sab na pasand karte hain! Aap(ﷺ) ne farmaaya:

 

(( لَیْسَ کَذٰلِکَ،وَلٰکِنَّ الْمُؤْمِنَ إِذَا حَضَرَہُ الْمَوْتُ بُشِّرَ بِرِضْوَانِ اللّٰہِ وَکَرَامَتِہٖ،فَلَیْسَ شَیْئٌ أَحَبَّ إِلَیْہِ مِمَّا أَمَامَہُ،فَأَحَبَّ لِقَائَ اللّٰہِ، وَأَحَبَّ اللّٰہُ لِقَائَ ہُ،وَإِنَّالْکَافِرَ إِذَا حَضَرَ بُشِّرَ بِعَذَابِ اللّٰہِ وَعُقُوْبَتِہٖ،فَلَیْسَ شَیْئٌ أَکْرَہَ إِلَیْہِ مِمَّا أَمَامَہُ ، فَکَرِہَ لِقَائَ اللّٰہِ، وَکَرِہَ اللّٰہُ لِقَائَ ہُ

 

“Nahi balkeh murad yeh hai keh  jab momin ki maut ka waqt qareeb aata hai tou usay Allah ki riza ki khush khabri di jaati hai aur usay yeh bataya jaata hai keh Allah Ta’aala intihaee kareem hai- isliye usay Allah Ta’aala ki mulaqaat ke siwae koi aur cheez ziyada mehboob nahi hoti- aur wo Allah ki mulaqaat ko pasand karta hai- aur jab kafir ki maut ka waqt qareeb aata hai tou usay Allah ki naraazgi aur uske azaab ki khush khabri di jaati hai, isliye usay Allah Ta’aala ki mulaqaat ke siwae koi aur cheez ziyada na pasand nahi hoti- aur wo Allah ki mulaqaat ko na pasand karta hai aur Allah uski mulaqaat ko na pasand karta hai.”

[Sahih Bukhari: 6507; Sahih Muslim: 2684]

 

REFERENCE:
BOOK: “ZAAD UL KHATEEB” JILD: 02
BY:  DR. MUHAMMAD ISHAQ ZAHID

Difference between the death of obedient & Disobedient Servant

 
أَمْ حَسِبَ الَّذِیْنَ اجْتَرَحُوا السَّیِّئَاتِ أَن نَّجْعَلَہُمْ کَالَّذِیْنَ آمَنُوا وَعَمِلُوا الصَّالِحَاتِ سَوَائً مَّحْیَاہُم وَمَمَاتُہُمْ سَائَ مَا یَحْکُمُوْنَ﴾

 

Or do those who commit evil deeds ˹simply˺ think that We will make them equal—in their life and after their death—to those who believe and do good? How wrong is their judgment!

[Surah Jasiya:45: 21]

 

﴿وَلَوْ تَرَی إِذِ الظَّالِمُونَ فِیْ غَمَرَاتِ الْمَوْتِ وَالْمَلآئِکَۃُ بَاسِطُوا أَیْدِیْہِمْ أَخْرِجُوا أَنفُسَکُمُ الْیَوْمَ تُجْزَوْنَ عَذَابَ الْہُونِ بِمَا کُنتُمْ تَقُولُونَ عَلَی اللّٰہِ غَیْرَ الْحَقِّ وَکُنتُمْ عَنْ آیَاتِہِ تَسْتَکْبِرُونَ﴾

 

˹Allah will say to the righteous,˺ “O tranquil soul!

Return to your Lord, well pleased ˹with Him˺ and well pleasing ˹to Him˺.

So join My servants,

and enter My Paradise.”

 

[Surah Fajr:89: 27-30]

 

 

عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، عَنِ النَّبِيِّ ـ صلى الله عليه وسلم ـ قَالَ ‏:‏ ‏ “‏ الْمَيِّتُ تَحْضُرُهُ الْمَلاَئِكَةُ فَإِذَا كَانَ الرَّجُلُ صَالِحًا قَالُوا ‏:‏ اخْرُجِي أَيَّتُهَا النَّفْسُ الطَّيِّبَةُ كَانَتْ فِي الْجَسَدِ الطَّيِّبِ اخْرُجِي حَمِيدَةً وَأَبْشِرِي بِرَوْحٍ وَرَيْحَانٍ وَرَبٍّ غَيْرِ غَضْبَانَ فَلاَ يَزَالُ يُقَالُ لَهَا ذَلِكَ حَتَّى تَخْرُجَ ثُمَّ يُعْرَجُ بِهَا إِلَى السَّمَاءِ فَيُفْتَحُ لَهَا فَيُقَالُ ‏:‏ مَنْ هَذَا فَيَقُولُونَ ‏:‏ فُلاَنٌ ‏.‏ فَيُقَالُ ‏:‏ مَرْحَبًا بِالنَّفْسِ الطَّيِّبَةِ، كَانَتْ فِي الْجَسَدِ الطَّيِّبِ ادْخُلِي حَمِيدَةً، وَأَبْشِرِي بِرَوْحٍ وَرَيْحَانٍ وَرَبٍّ غَيْرِ غَضْبَانَ ‏.‏ فَلاَ يَزَالُ يُقَالُ لَهَا ذَلِكَ حَتَّى يُنْتَهَى بِهَا إِلَى السَّمَاءِ الَّتِي فِيهَا اللَّهُ عَزَّ وَجَلَّ وَإِذَا كَانَ الرَّجُلُ السُّوءُ قَالَ اخْرُجِي أَيَّتُهَا النَّفْسُ الْخَبِيثَةُ كَانَتْ فِي الْجَسَدِ الْخَبِيثِ اخْرُجِي ذَمِيمَةً وَأَبْشِرِي بِحَمِيمٍ وَغَسَّاقٍ ‏.‏ وَآخَرَ مِنْ شَكْلِهِ أَزْوَاجٌ ‏.‏ فَلاَ يَزَالُ يُقَالُ لَهَا ذَلِكَ حَتَّى تَخْرُجَ ثُمَّ يُعْرَجُ بِهَا إِلَى السَّمَاءِ فَلاَ يُفْتَحُ لَهَا فَيُقَالُ ‏:‏ مَنْ هَذَا فَيُقَالُ ‏:‏ فُلاَنٌ ‏.‏ فَيُقَالُ ‏:‏ لاَ مَرْحَبًا بِالنَّفْسِ الْخَبِيثَةِ كَانَتْ فِي الْجَسَدِ الْخَبِيثِ ارْجِعِي ذَمِيمَةً فَإِنَّهَا لاَ تُفْتَحُ لَكِ أَبْوَابُ السَّمَاءِ فَيُرْسَلُ بِهَا مِنَ السَّمَاءِ ثُمَّ تَصِيرُ إِلَى الْقَبْرِ ‏”‏ ‏

 

It was narrated from Abu Hurairah that the Prophet (ﷺ) said:
“Angels come to the dying person, and if the man was righteous, they say: ‘Come out, O good soul that was in a good body, come out praiseworthy and receive glad tidings of mercy and fragrance and a Lord Who is not angry.’ And this is repeated until it comes out, then it is taken up to heaven, and it is opened for it, and it is asked: ‘Who is this?’ They say: ‘So-and-so.’ It is said: ‘Welcome to the good soul that was in a good body. Enter praiseworthy and receive the glad tidings of mercy and fragrance and a Lord Who is not angry.’ And this is repeated until it is brought to the heaven above which is Allah. But if the man was evil, they say: ‘Come out O evil soul that was in an evil body. Come out blameworthy, and receive the tidings of boiling water and the discharge of dirty wounds,’ and other torments of similar kind, all together. And this is repeated until it comes out, then it is taken up to heaven and it is not opened for it. And it is asked: ‘Who is this?’ It is said: ‘So-and-so.’ And it is said: ‘No welcome to the evil soul that was in an evil body. Go back blameworthy, for the gates of heaven will not be opened to you.’ So it is sent back down from heaven, then it goes to the grave.”

[Ibn Majah: 4262]

 

عَنْ أَبِي مُوسَى، عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏ “‏ مَنْ أَحَبَّ لِقَاءَ اللَّهِ أَحَبَّ اللَّهُ لِقَاءَهُ، وَمَنْ كَرِهَ لِقَاءَ اللَّهِ كَرِهَ اللَّهُ لِقَاءَهُ ‏”‏‏.‏

 

Narrated Abu Musa:
The Prophet (ﷺ) said: “Whoever loves to meet Allah, Allah loves to meet him; and whoever hates to meet Allah, Allah hates to meet him.”

[Sahih Bukhari: 6508]

 

حَدَّثَنَا حَجَّاجٌ، حَدَّثَنَا هَمَّامٌ، حَدَّثَنَا قَتَادَةُ، عَنْ أَنَسٍ، عَنْ عُبَادَةَ بْنِ الصَّامِتِ، عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏”‏ مَنْ أَحَبَّ لِقَاءَ اللَّهِ أَحَبَّ اللَّهُ لِقَاءَهُ، وَمَنْ كَرِهَ لِقَاءَ اللَّهِ كَرِهَ اللَّهُ لِقَاءَهُ ‏”‏‏.‏ قَالَتْ عَائِشَةُ أَوْ بَعْضُ أَزْوَاجِهِ إِنَّا لَنَكْرَهُ الْمَوْتَ‏.‏ قَالَ ‏”‏ لَيْسَ ذَاكَ، وَلَكِنَّ الْمُؤْمِنَ إِذَا حَضَرَهُ الْمَوْتُ بُشِّرَ بِرِضْوَانِ اللَّهِ وَكَرَامَتِهِ، فَلَيْسَ شَىْءٌ أَحَبَّ إِلَيْهِ مِمَّا أَمَامَهُ، فَأَحَبَّ لِقَاءَ اللَّهِ وَأَحَبَّ اللَّهُ لِقَاءَهُ، وَإِنَّ الْكَافِرَ إِذَا حُضِرَ بُشِّرَ بِعَذَابِ اللَّهِ وَعُقُوبَتِهِ، فَلَيْسَ شَىْءٌ أَكْرَهَ إِلَيْهِ مِمَّا أَمَامَهُ، كَرِهَ لِقَاءَ اللَّهِ وَكَرِهَ اللَّهُ لِقَاءَهُ ‏”‏‏.‏ اخْتَصَرَهُ أَبُو دَاوُدَ وَعَمْرٌو عَنْ شُعْبَةَ‏.‏ وَقَالَ سَعِيدٌ عَنْ قَتَادَةَ عَنْ زُرَارَةَ عَنْ سَعْدٍ عَنْ عَائِشَةَ عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم‏.‏

 

Narrated ‘Ubada bin As-Samit:
The Prophet (ﷺ) said, “Who-ever loves to meet Allah, Allah (too) loves to meet him and who-ever hates to meet Allah, Allah (too) hates to meet him”. `Aisha, or some of the wives of the Prophet (ﷺ) said, “But we dislike death.” He said: It is not like this, but it is meant that when the time of the death of a believer approaches, he receives the good news of Allah’s pleasure with him and His blessings upon him, and so at that time nothing is dearer to him than what is in front of him. He therefore loves the meeting with Allah, and Allah (too) loves the meeting with him. But when the time of the death of a disbeliever approaches, he receives the evil news of Allah’s torment and His Requital, whereupon nothing is more hateful to him than what is before him. Therefore, he hates the meeting with Allah, and Allah too, hates the meeting with him.”

 

[Sahih Bukhari: 6507; Sahih Muslim: 2684]

 

REFERENCES: 
Quran.com & Sunnah.com

 

 

نیک اور بد کی موت میں فرق

 

جس طرح نیک اور بد کی زندگی اور اللہ کے فرمانبردار اور اس کے نافرمان کی زندگی ایک جیسی نہیں ہوتی اسی طرح ان دونوں کی موت بھی ایک جیسی نہیں ہوتی۔ اللہ تعالیٰ کا فرمان ہے :

﴿ أَمْ حَسِبَ الَّذِیْنَ اجْتَرَحُوا السَّیِّئَاتِ أَن نَّجْعَلَہُمْ کَالَّذِیْنَ آمَنُوا وَعَمِلُوا الصَّالِحَاتِ سَوَائً مَّحْیَاہُم وَمَمَاتُہُمْ سَائَ مَا یَحْکُمُوْنَ﴾

’’ کیا برے کام کرنے والوں کا یہ گمان ہے کہ ہم انہیں ان لوگوں جیسا کردیں گے جو ایمان لائے اور نیک عمل کئے ؟ کیا ان کا مرنا جینا ایک جیسا ہو گا ؟ برا ہے وہ فیصلہ جو وہ کر رہے ہیں ۔ ‘‘

الجاثیۃ45 :21

 

یعنی اگر ان مجرموں کا یہ خیال ہے کہ ان کا اور ایمان والوں اور عمل صالح کرنے والوں کا مرنا جینا ایک جیسا ہو گا تو یقینی طور پر ان کا یہ خیال برا ہے ، کیونکہ ان کی موت وحیات میں بہت فرق ہے ۔۔۔ اور یہ فرق کیا ہے ؟ اس بارے میں متعدد قرآنی آیات اور احادیثِ نبویہ موجود ہیں ۔ ان میں سے چند ایک آپ بھی سماعت فرما لیں :

نیک اور صالح انسان کی موت کی کیفیت کواللہ تعالیٰ یوں بیان فرماتے ہیں :

﴿یَا أَیَّتُہَا النَّفْسُ الْمُطْمَئِنَّۃُ. ارْجِعِیْ إِلَی رَبِّکِ رَاضِیَۃً مَّرْضِیَّۃً . فَادْخُلِیْ فِیْ عِبَادِیْ. وَادْخُلِیْ جَنَّتِیْ﴾

’’ اے اطمینان والی روح ! تو اپنے رب کی طرف لوٹ چل ، اس طرح کہ تو اس سے راضی اور وہ تجھ سے خوش ۔ پھر میرے بندوں میں داخل ہو جا اور میری جنت میں چلی جا ۔ ‘‘

الفجر89: 30-2

 

یہ عظیم خوشخبری مومن کو اس کی موت کے وقت دی جاتی ہے ۔ گویا اس کی موت آسان ہوتی ہے اور اس حالت میں اس پر آتی ہے کہ جب وہ اللہ سے اور اللہ اس سے راضی ہوتا ہے۔ جبکہ اللہ کے نافرمان کی موت اس حالت میں آتی ہے کہ فرشتۂ موت اسے موت کے وقت اللہ تعالیٰ کی ناراضگی کی خبر سناتا ہے اور اس کی روح کو مخاطب کرتے ہوئے کہتا ہے : تو اللہ تعالیٰ کے غضب کی طرف چلی جا ۔

برے اور نافرمان انسان کی موت کا تذکرہ کرتے ہوئے اللہ تعالیٰ کا فرمان ہے :

﴿وَلَوْ تَرَی إِذِ الظَّالِمُونَ فِیْ غَمَرَاتِ الْمَوْتِ وَالْمَلآئِکَۃُ بَاسِطُوا أَیْدِیْہِمْ أَخْرِجُوا أَنفُسَکُمُ الْیَوْمَ تُجْزَوْنَ عَذَابَ الْہُونِ بِمَا کُنتُمْ تَقُولُونَ عَلَی اللّٰہِ غَیْرَ الْحَقِّ وَکُنتُمْ عَنْ آیَاتِہِ تَسْتَکْبِرُونَ﴾

 

’’ اور اگر آپ اس وقت دیکھیں جب کہ یہ ظالم لوگ موت کی سختیوں میں ہوتے ہیں اور فرشتے اپنے ہاتھ بڑھا کر انہیں کہہ رہے ہوتے ہیں : اپنی جانیں نکالو ، آج تم کو ذلت کی سزا دی جائے گی کیونکہ تم اللہ پر جھوٹ بولتے تھے اور تم اللہ کی آیات سے تکبر کرتے تھے ۔ ‘‘

الأنعام6: 93

 

اس آیت میں غور فرمائیں کہ ظالم کی موت کتنی بری اور کس قدر سخت ہوتی ہے کہ فرشتے اس کی جان نکالنے پر تیار نہیں ! وہ اسی کو حکم دیتے ہیں کہ تم اپنی جان خود نکالو ! اور موت کے وقت ہی اسے عذابِ الہی کی دھمکی سنا دیتے ہیں !

اور کافر کی موت کا نقشہ اللہ تعالیٰ نے یوں کھینچا ہے :

﴿ فَکَیْفَ إِذَا تَوَفَّتْہُمُ الْمَلاَئِکَۃُ یَضْرِبُوْنَ وُجُوْہَہُمْ وَأَدْبَارَہُمْ﴾[1]

’’ پس ان کی کیسی ( درگت ) ہوگی جبکہ فرشتے ان کی روح قبض کرتے ہوئے ان کے چہروں اور سرینوں پر ماریں گے ۔ ‘‘

محمد47:27

 

جبکہ سورۃ النحل میں اللہ تعالیٰ نے اپنے فرمانبرداروں اور نافرمانوں کی موت کے فرق کو یوں واضح کیا ہے:

سب سے پہلے نافرمانوں کی موت کے متعلق فرمایا :

﴿اَلَّذِیْنَ تَتَوَفَّاہُمُ الْمَلائِکَۃُ ظَالِمِیْ أَنفُسِہِمْ فَأَلْقَوُا السَّلَمَ مَا کُنَّا نَعْمَلُ مِن سُوئٍ بَلیٰ إِنَّ اللّٰہَ عَلِیْمٌ بِمَا کُنتُمْ تَعْمَلُونَ. فَادْخُلُوا أَبْوَابَ جَہَنَّمَ خَالِدِیْنَ فِیْہَا فَلَبِئْسَ مَثْوَی الْمُتَکَبِّرِیْنَ﴾

’’ وہ جو ( نافرمانی کرکے ) اپنی جانوں پر ظلم کرتے ہیں فرشتے جب ان کی جان قبض کرنے لگتے ہیں تو وہ نیاز مندی کرتے ہوئے کہتے ہیں کہ ہم توکوئی برا کام نہیں کرتے تھے ۔( تو ان سے کہا جاتا ہے) کیوں نہیں ! اللہ تمھارے عملوں کو خوب جاننے والا ہے ۔ لہٰذا تم ہمیشہ کیلئے جہنم کے دروازوں میں داخل ہو جاؤ ، پس کیا ہی برا ٹھکانا ہے غرور کرنے والوں کا ! ‘‘

النحل16:29-28

 

اس کے بعد اللہ تعالیٰ اپنے فرمانبرداراور نیک لوگوں کی موت کا تذکرہ یوں فرماتا ہے :

﴿اَلَّذِیْنَ تَتَوَفَّاہُمُ الْمَلآئِکَۃُ طَیِّبِیْنَ یَقُولُونَ سَلامٌ عَلَیْکُمُ ادْخُلُوا الْجَنَّۃَ بِمَا کُنتُمْ تَعْمَلُونَ﴾ 

’’ وہ جن کی جانیں فرشتے اس حال میں قبض کرتے ہیں کہ وہ پاک صاف ہوں فرشتے انہیں کہتے ہیں : تمھارے لئے سلامتی ہی سلامتی ہے ، جاؤ جنت میں چلے جاؤ اپنے ان اعمال کے سبب جو تم کرتے تھے ۔ ‘‘

النحل16:32

 

ان آیات سے ثابت ہوا کہ نیک لوگوں کو ان کی موت کے وقت فرشتے سلامتی اور جنت کی عظیم خوشخبری سناتے ہیں جبکہ نافرمانوں کو اللہ تعالیٰ کی ناراضگی اور اس کے غضب کی سخت وعید سناتے ہیں ۔ یہی بنیادی فرق ہے نیک اور بد کی موت میں ۔

اور حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :

’’فرشتے حاضر ہوتے ہیں ، پھر اگر مرنے والا نیک ہو تو وہ کہتے ہیں : اے پاک روح جو پاک جسم میں تھی نکل ، تُو قابلِ ستائش حالت میں نکل اور تجھے آرام اور عمدہ روزی کی خوشخبری ہو اور اس بات کی کہ اللہ تجھ پر راضی ہے ۔ فرشتے یہ باتیں بار بار اسے کہتے رہتے ہیں یہاں تک کہ اس کی روح نکل جاتی ہے ۔ پھر اسے آسمان کی طرف لے جایا جاتا ہے تو پوچھا جاتا ہے : یہ کون ہے؟ وہ کہتے ہیں : یہ فلاں بن فلاں ہے ۔ تو کہا جاتا ہے : اس پاک روح کو خوش آمدید جو پاک جسم میں تھی ، تم قابلِ ستائش حالت میں اندر آ جاؤ ۔ اور تمھیں آرام اور عمدہ روزی کی خوشخبری ہو اور اس بات کی کہ اللہ تم پر راضی ہے۔ فرشتے اسے بار بار یہ خوشخبریاں سناتے رہتے ہیں یہاں تک کہ وہ اس آسمان پر پہنچ جاتی ہے جہاں اللہ تعالیٰ ہے (یعنی علیین میں)
اور اگر مرنے والا برا ہو تو فرشتہ کہتا ہے: اے وہ ناپاک روح جو ناپاک جسم میں تھی نکل ، تُو قابلِ مذمت حالت میں نکل ۔ اور تجھے جہنم اور پیپ اور طرح طرح کے عذاب کی خوشخبری ہو ، پھر اس سے یہ بات بار بار کہی جاتی ہے یہاں تک کہ اس کی روح نکل جاتی ہے ، پھر اسے آسمان کی طرف لے جایا جاتا ہے اور اس کیلئے جب آسمان کا دروازہ کھلوایا جاتا ہے تو اسے کہا جاتا ہے : اس ناپاک روح کو کوئی خوش آمدید نہیں جو ناپاک جسم میں تھی ، تم قابلِ مذمت حالت میں واپس پلٹ جاؤ اور تمھارے لئے آسمانوں کے دروازے نہیں کھولے جا سکتے ۔ پھراسے واپس بھیج دیا جاتا ہے اورپھر وہ قبر میں آ جاتی ہے۔ ‘‘[1]

سنن ابن ماجہ :4262۔ وصححہ الألبانی

 

حضرت عبادۃ بن صامت رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :

(( مَنْ أَحَبَّ لِقَائَ اللّٰہِ أَحَبَّ اللّٰہُ لِقَائَ ہُ ، وَمَنْ کَرِہَ لِقَائَ اللّٰہِ کَرِہَ اللّٰہُ لِقَائَ ہُ))

’’جو شخص اللہ کی ملاقات کو پسند کرتا ہو اللہ اس کی ملاقات کو پسند کرتا ہے ۔ اورجو شخص اللہ کی ملاقات کو ناپسند کرتا ہو اللہ اس کی ملاقات کو ناپسند کرتا ہے۔‘‘

 

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا نے کہا : اگر اس سے مراد موت کو نا پسند کرنا ہے تو اسے توہم سب نا پسند کرتے ہیں !
آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :

” لَیْسَ کَذٰلِکَ،وَلٰکِنَّ الْمُؤْمِنَ إِذَا حَضَرَہُ الْمَوْتُ بُشِّرَ بِرِضْوَانِ اللّٰہِ وَکَرَامَتِہٖ،فَلَیْسَ شَیْئٌ أَحَبَّ إِلَیْہِ مِمَّا أَمَامَہُ،فَأَحَبَّ لِقَائَ اللّٰہِ، وَأَحَبَّ اللّٰہُ لِقَائَ ہُ،وَإِنَّ الْکَافِرَ إِذَا حَضَرَ بُشِّرَ بِعَذَابِ اللّٰہِ وَعُقُوْبَتِہٖ،فَلَیْسَ شَیْئٌ أَکْرَہَ إِلَیْہِ مِمَّا أَمَامَہُ ، فَکَرِہَ لِقَائَ اللّٰہِ، وَکَرِہَ اللّٰہُ لِقَائَ ہُ”

 

’’ نہیں بلکہ مراد یہ ہے کہ جب مومن کی موت کا وقت قریب آتا ہے تو اسے اللہ کی رضا کی خوشخبری دی جاتی ہے اور اسے یہ بتایا جاتا ہے کہ اللہ تعالیٰ انتہائی کریم ہے ۔ اس لئے اسے اللہ تعالیٰ کی ملاقات کے سوا کوئی اور چیز زیادہ محبوب نہیں ہوتی ۔ اور وہ اللہ کی ملاقات کو پسند کرتا ہے اور اللہ اس کی ملاقات کو پسند کرتا ہے ۔ اور جب کافر کی موت کا وقت قریب آتا ہے تو اسے اللہ کی ناراضگی اور اس کے عذاب کی خوشخبری دی جاتی ہے ، اس لئے اسے اللہ تعالیٰ کی ملاقات کے سوا کوئی اور چیز زیادہ ناپسندیدہ نہیں ہوتی ۔ اوروہ اللہ کی ملاقات کو ناپسند کرتا ہے اور اللہ اس کی ملاقات کو نا پسند کرتا ہے۔‘

صحیح البخاری:6507،صحیح مسلم :2684

 

 

Table of Contents