Sections
< All Topics
Print

27. Imam Marwazi [Al Sunnah][D: 294]

Imam Marwazi (رحمتہ اللہ)

 

Moallif ke halaat-e-Zindagi

 

Naam-o-Nasab:

 

Aap ka pura naam Sheikh Al Islam Imam abu Abdullah Hafiz Muhammad Nasar bin Hujjaj Mirwazi hai.

 

Tareekh-e-Wilaadat aur Jaaye parvarish:

 

Khateeb Baghdadi (رحمة الله) farmatey hain: Maine Hussain bin Muhammad Al Moadab ke samne padha, wo Abu Saad Abdul Rahman bin Muhammad Idrees se bayan karte hain ki maine Abu Yahya Ahmad bin Mohammad bin Ibrahim Samarqandi se suna, unhone Abu Abbas Mohammad bin Usman bin Salam bin Salama Samarqandi se suna, unhone Abu Abdullah Muhammad bin Nasar Maruzi se suna wo farmatey thay: Meri tarikh-e-wiladat 202 Hijri hai. Imam Shafi’i (رحمة الله) ki wafaat 204 hijri me hui, us waqt meri umar 2 saal thi.

Mery Walid sahab Maruzi thay. Meri paidaish Baghdad me huyi or maine Nishapur me parvarish payi .Ab main Samarqand me rehta hun .Mujhay maloom nahi ke Allah mere bare me kya faisla farmatay hain.

 

Shuyookh-o-Asatza karaam:

 

Aap ne jin Shuyookh-o-asatza se dars-e-hadees liya unki tadaad to khasi zyada hai, Albatta chand aik ke Asma-e-garami hasb-e-zail hain:

Abdullah bin Usman Maruzi, Sadqa bin Fazal Maruzi,Yahya bin Yahya Nisha puri ,Ishaq bin Rahwiya, Abu Qudama Sarkhusi, Hudaibiya bin Khalid, Ubaidullah bin Maaz Anbari, Muhammad bin abdul Malik bin Abi Al Shurab, Abu Kamil Jahdari, Muhammad bin Bashar Bundaar, Abu Mussa Al Zaman aur Ibrahim bin Manzar Hazami (رحم الله تعالى). Ilawah Azeen Khurasaan, Iraq, Hijaz, Sham aur Misr ke baday baday muhaddiseen-o-Fuqaha se kasb-e-faiz kiya.

 

Tilamazah Uzzam:

 

Aap ke Tilamzah me baday baday Muhaddiseen wa Rawaah-e-Hadees Shamil hain jin mein Aap ke bete Ismail, Abu Ali Abdullah bin Muhammad bin Ali Balkhi, Muhammad bin Ishaaq Rashaawi Samarqandi, Usman bin Jafar Labaan aur Muhammad bin Yaqoob bin Akhram Nishapuri Kabil-e-zikr hain.

 

Ilmi Asfaar:

 

Aap ne talab-e-Ilm wa Kasb-e-Hadees ke liye Misr, Sham, Iraq, Khurasaan aur Hijaz-e-Muqadass ke ilawah bohot se mash-hoor shehron aur mumalik ke asfaar tay kiye.

 

➡️Ilm Hadees me Maqam:

 

Aap ko Ilm Hadees me boht bara maqam hasil tha .Imam Hakim rehamatullah farmaty hain:

Aap bila Ikhtalaf Hadees ke bary me Apny zamany ke imam thay .Imam Muhammad bin Isshaq deusi rehamatullah farmaty hain:main samar qand gya to me ne wahan Muhammad Bin Nasar Maruzi ko dekha wo Ilm-o-Hadees ke samandar thay

Imam ibn-e-Hazam rehamatullah farmaty hain:sb se bara Aalim wo hota he jo sb se zyada Sanan ka jamy-o-zabit ho , In ke maani ko sb se zyada yad rakhny wala or in ki sehat ko sb se zyada janny wala ho ,nez Ullama ,Fukaha aur Muhadsin ke ijma-o-Ikhtalaf ki sb se zyada maloomat rakhny wala ho .unho ne to yahan tk farma dia ke ham sahaba karam ke bad ye khoobiyan sb se zyada puri krny wala ,Imam abu Abdullah bin Nasar Maruzi ke allawa kisi ko nahi janty .nez agar koi ye keh de ke Rasul Allah (SAW)ki koi Hadees-e-Nabvi-o-Asar Sahabi aysa nahi jo Imam Maruzi rehamatullah ke pass na ho to ye Baid az qyas na ho ga

 

*Wara’ o taqwa*:

 

Imam Abu Bakrr Ahmed Bin is’haaq  (رحمة الله) farmaate hain:

Main ne Imam Muruzi se achi namaz parhte kisi ko nahi dekha. Ek dafa ek bhirr in ki peshaani  par aa bethi aur is k kaatne se khoon behne laga, lekin unho ne harkatt tak nahi ki.

 

*Qanaa’at o sakhaawat*:

 

Imam Muhammad Bin Abdul Wahaab Saqfi (رحمة الله) farmaate hain :

Haakim e Khuraasaan Ismail Bin Ahmed,  in k bhaai Ishaaq Bin Ahmed aur ehl e Khuraasaan har saal Imam Muruzi (رحمة الله) ko chaar chaar hazaar dirham dete the. Wo is raqam (baara hazaar 12000) ko ek saal se dusre saal tak kharch kar dete the, hal aanke in ka bara kunba bhi na tha.

Main ne kaha:

Mumkin hai k in ehel ko koi maanay’ pesh aa jaey, lihaaza aap kisi zaroorat k liye is mein se kuch jamaa’ kar liya karain.

To wo farmaane lage:

Subhan Allah! main Misrr mein ittne saal raha hun, wahan mera saal bhar ka kharch sirf bees (20) dirham tha. Jis mein meri khoraak, libaas, kaaghaz, ghareloo aur dusre akhraajaat shaamil the, jo main apni zaat par kharch karta tha, to bataiyye, agar yeh raqam jaati rahi to ittni raqam bhi na bachegi?

 

*Taaleefaat o tasneefaat*:

 

Aap kutub e kaseerah o zakheemah k musannif o muallif the. “Qayaam Ul Lail” aur “Al Sunnah” ne bhtt shuhratt paai. Ilawa azeen “Kitaab ul Qisaamah” ka apna ek maqaam hai.

Faqeeh e Baghdaad, Imam Abu Bakrr Seerfii (رحمة الله) farmaate hain:

“Agar Imam Muruzi (رحمة الله) *Kitaab ul Qisaamah* k alawa koi aur kitaab na bhi tasneef karte to bhi woh sab se baray fiqeeh the.”

Pass un ka muqaam kaisa hoga jabke wo is k alawa kaii dusri kutub k muallif o musannif hain?

 

*Taareekh e wafaat*:

 

Aap apni umer e Mubarak k baanway (92) saal poori aab o taab se guzaar kar maah e muharaam 294 hijri ko Samarqandd mein daa’i e ajall ko labaikk keh gae.

*INNA LILLAH I WA INNA ILAIH E RAJIOON*.
أن الله ما اخذ وله ما اعطى وكل شيء عنده بأجل مسمى.

 

REFERENCE:
Book: “As-Sunnah”
Tarjumah: Abu Zarr Mohammad Zakariya'(حفظه الله تعالى)

 

 

امام مروزی (رحمة الله) 

 

*مؤلف کے حالات زندگی*:

 

*نام ونسب:*

 

 آپ کا پورا نام شیخ الاسلام امام ابوعبداللہ حافظ محمد بن نصر بن حجاج مروزی ہے ۔

 
*تاریخ ولادت و جاۓ پرورش:*

 

خطیب بغدادی (رحمة الله) فرماتے ہیں:

 میں نے حسین بن محمد المؤدب کے سامنے پڑھا، وہ ابو سعد عبدالرحمن بن محمد ادریس سے بیان کرتے ہیں کہ میں نے ابو یحیی احمد بن محمد بن ابراہیم سمرقندی سے سنا، انہوں نے ابو عباس محمد بن عثمان بن سلم بن سلامہ سمرقندی سے سنا، انہوں نے ابوعبداللہ محمد بن نصر مروزی سے سنا، وہ فرماتے تھے:
میری تاریخ ولادت ۲۰۲ ہجری ہے، امام شافعی (رحمة الله) کی وفات ۲۰۴ ھ میں ہوئی ، اس وقت میری عمر دو سال تھی ۔ میرے والد صاحب مروزی تھے، میری پیدائش بغداد میں ہوئی اور میں نے نیسا پور میں پرورش پائی ۔ اب میں سمرقند میں رہتا ہوں، مجھے معلوم نہیں کہ اللہ تعالی میرے بارے میں کیا فیصلہ فرماتے ہیں۔

 
 *شیوخ واسا تذہ کرام :*

 

آپ نے جن شیوخ واساتذہ سے درس حدیث لیا ان کی تعداد تو خاصی زیادہ ہے ، البتہ چند ایک کے اسماء گرامی حسب ذیل ہیں:

عبداللہ بن عثمان مروزی،
صدقہ بن فضل مروزی ،

 یحیی بن یحیی نیسا پوری ،
 اسحاق بن راہویہ،
ابو قدامه سرخسی ،
 هدبه بن خالد ،
 عبید اللہ بن معاذ عنبری ،
محمد بن عبدالملک بن ابی الشوارب ،

ابو کامل جحدری،

 محمد بن بشار بندار،

 ابوموی الزمن اور ابراہیم بن منذر حزامی رحمہم اللہ تعالی۔

علاوہ ازیں خراسان ، عراق ، حجاز ، شام اور مصر کے بڑے بڑے محدثین وفقہاء سے کسب فیض کیا۔

 

*تلامذہ عظام:*

 

آپ کے تلامذہ میں بڑے بڑے محدثین و رواۃ حدیث شامل ہیں جن میں آپ کے بیٹے اسماعیل ، ابوعلی عبداللہ بن محمد بن علی بلخی، محمد بن اسحاق رشاوی سمرقندی،
 عثمان بن جعفر لبان اورمحمد بن یعقوب بن اخرم نیشا پوری قابل ذکر ہیں ۔

 

*علمی اسفار:*

 

آپ نے طلب علم وکسب حدیث کے لیے مصر ، شام ، عراق ، خراسان اور حجاز مقدس کے علاوہ بہت سے مشہورشہروں اور ممالک کے اسفار طے کیے۔

*علماء ومحد ثین کی طرف سے خراج تحسین :*

❁  امام محمد بن عبداللہ بن عبدالحکم (رحمة الله) فرماتے ہیں:

 امام محمد بن نصر مروزی (رحمة الله) ہمارے نزدیک امام کا درجہ رکھتے ہیں۔

❁ امام اسماعیل بن قتیبہ (رحمة الله) فرماتے ہیں :

میں نے کئی بارمحمد بن يحيى سے سنا کہ جب ان سے کوئی مسئلہ دریافت کرتا وہ فرماتے :
 امام ابوعبداللہ محمد بن نصر مروزی سے پوچھو۔

❁ امام ابو بکر احمد بن اسحق (رحمة الله) فرماتے ہیں:

 میں نے مسلمان ائمہ میں سے دو بڑے ائمہ کو پایا مگر ان سے حدیث کا سماع نہیں کر سکا اور وہ یہ ہیں:

 (۱) ابو حاتم محمد بن ادریس رازی (رحمة الله) ۔

(۲) ابوعبداللہ محمد بن نصر (رحمة الله) ۔

 

*علم حدیث میں مقام:*

 

آپ کو علم حدیث میں بہت بڑا مقام حاصل تھا۔ امام حاکم (رحمة الله) فرماتے ہیں:

 آپ بلا اختلاف حدیث کے بارے میں اپنے زمانہ کے امام تھے ۔

امام محمد بن الحق دیوسی (رحمة الله) فرماتے ہیں:

 میں سمرقند گیا تو میں نے وہاں محمد بن نصر مروزی کو دیکھا وہ علم حدیث کے سمندر تھے ۔

 امام ابن حزم (رحمة الله) فرماتے ہیں: سب سے بڑا عالم وہ ہوتا ہے جو سب سے زیادہ سنن کا جامع و ضابط ہو، ان کے معانی کو سب سے زیادہ یاد رکھنے والا اور ان کی صحت کو سب سے زیادہ جاننے والا ہو، نیز علماء، فقہاء اور محدثین کے اجماع و اختلاف کی سب سے زیادہ معلومات رکھنے والا ہو۔ انہوں نے تو یہاں تک فرمادیا کہ ہم صحابہ كرام (رضي الله عنهم أجمعين ) کے بعد یہ خوبیاں سب سے زیادہ پوری کرنے والا ، امام ابوعبداللہ محمد بن نصر مروزی کے علاوہ کسی کو نہیں جانتے ۔ نیز اگر کوئی یہ کہہ دے کہ رسول اللہ ﷺ کی کوئی حدیث نبوی واثر صحابی ایسا نہیں جو امام مروزی (رحمة الله) کے پاس نہ ہوتو یہ بعید از قیاس نہ ہوگا ۔

 
*ورع و تقوى:*

امام ابوبکر احمد بن اسحق (رحمة الله) فرماتے ہیں : میں نے امام مروزی سے اچھی نماز پڑھتے کسی کونہیں دیکھا۔ ایک دفعہ ایک بھڑ ان کی پیشانی پر آ بیٹھی اور اس کے کاٹنے سے خون بہنے لگا لیکن انہوں نے حرکت تک نہیں کی ۔

 

*قناعت وسخاوت :*

 

❁ امام محمد بن عبدالوہاب ثقفی (رحمة الله) فرماتے ہیں:

حاکم خراسان اسماعیل بن احمد، ان کے بھائی اسحاق بن احمد اور اہل سمرقند ہر سال امام مروزی (رحمة الله) کو چار چار ہزار درہم دیتے تھے ۔ وہ اس رقم ( بارہ ہزار ) کو ایک سال سے دوسرے سال تک خرچ کر دیتے تھے ، حالانکہ ان کا بڑا کنبہ بھی نہ تھا۔ میں نے کہا ممکن ہے ان اہل کو کوئی مانع پیش آ جاۓ ،لہذا آپ کسی ضرورت کے لیے اس میں سے کچھ جمع کر لیا کر یں ۔

 

تو وہ فرمانے لگے :

 

 سبحان اللہ! میں مصر میں اتنے سال رہا ہوں ، وہاں میرا سال بھر کا خرچ صرف بیس درہم آتا تھا، جس میں میری خوراک ، لباس ، کاغذ ، گھر یلو اور دوسرے اخراجات شامل تھے ، جو میں اپنی ذات پر خرچ کرتا تھا تو بتایئے اگر یہ رقم جاتی رہی تو اتنی رقم بھی نہ بچے گی ؟

 

 *تالیفات وتصنيفات:*

آپ کتب کثیرہ و ضخیمہ کے مؤلف و مصنف تھے ۔” قیام اللیل “ اور ”السنۃ “ نے بہت شہرت پائی ۔علاوہ ازیں” کتاب القسامة“ کا اپنا ایک مقام ہے ۔

فقیہ بغداد، امام ابو بکر صیر فی (رحمة الله) فرماتے ہیں : ” اگر امام مروزی (رحمة الله) کتاب القسامة کے علاوہ کوئی اور کتاب نہ بھی تصنیف کرتے تو بھی وہ سب سے بڑے فقیہ تھے ۔‘

 پس ان کا مقام کیسا ہو گا جب کہ وہ اس کے علاوہ کئی دوسری کتب کے مؤلف و مصنف ہیں؟

 

*تاریخ وفات:*

 

آپ اپنی عمر مبارک کے ۹۲ سال پوری آب و تاب سے گزار کر ماہ محرم ۲۹۴ ہجری کو سمر قند میں داعی اجل کو لبیک کہہ گئے ۔ انا لله وإنا إليه راجعون .

 ان الله ما أخذ وله ما اعطى وكل شيء عنده بأجل مسمى

حوالہ :
نام كتاب : “السُّنَّةُ ”  اردو
ترجمه : ‘ابوذرمحمد زکریا(حفظه الله تعالى)’

 

Table of Contents