Sections
< All Topics
Print

25. Imam Abdullah Moallif Musnad Usamah Bin Zaid Kay [Musnad][D: 282]

IMAM ABDULLAH(رحمه الله عليه): 

MOALLIF MUSNAD USAMAH BIN ZAID

 

*Naam o Nasab*:

 

Musnad Usama Bin Zaid kay moallif ka naam Abdullah aur kuniyat Abu Ul Qasim thi. Aap (رحمة الله) ka silsila e nasab is tarah hai:

Abdullah Bin Muhammad Bin Abdul Aziz Bin Almurr zubaan Bin Saaboor Bin Shahenshah.

Aap (رحمة الله) Baghdaad mein paida hue. Aap ne Quran e Majeed ki qiraat aur ibtidaai deeni taaleem apne nana jaan Haafiz Abu Jaafar Ahmed Bin Munee’ Ul Muhaddis Al Baghwi (رحمة الله) se haasil ki. Aap (رحمة الله) ne apni nana jaan ki nisbat se Abdullah Bin Munee’ (Ibn e Munee’) k naam se maa’roof hue. Makhtoota k sar e warqq (jildd) par aap ka naam Yazeed Bin Munee’ likha gaya hai. Jabke is matboo’ah nuskhay k muhaqqiq Abu Ul Ashbaal Al Zuheeri Hassan Bin Ameen farmaate hain:

Main ne bhtt talaash kiya lekin muallifeen o rijaal k mutaalliq kisi bhi kitaab mein Yazeed Bin Munee’ ka zikrr nahi mila tha. Aur jab is kitaab ka mukammal makhtoota muyassar aaya to is se waazih hua k muallif ka naam Abu Ul Qaasim Abdullah Bin Munee’ hai.

 

*Kitaab e Hadees ka zauq*:

 

Imam Abu Ul Qaasim Bin Muhammad Bin Abdul Aziz (رحمة الله) k chacha Ali Bin Abdul Aziz (رحمة الله) aur nana jaan Ahmed Bin Munee’ (رحمة الله) k aap ki taaleem o tarbiyat ka bakhubi ehtimaam kiya. Aur aap ko taqreeban dus saal ki umer mein riwaayaat likhne ki taaleem se araasta kar diya. Imam Zahbi (رحمة الله) farmaate hain:

Abu ul Qaasim Abdullah Bin Munee’ (رحمة الله) k alawa is daur ka koi aisa muhaddis hamare ilm mein nahi hai jis ne is qadar choti umer mein talb e hadees aur kitaab e hadees ka amal shuru kiya ho.

 

Aap (رحمة الله) khud farmaate hain keh:

 

Main ne 225 hijri ko maah-e-Rabi’ ul Awwal mein pehli riwaayat likhi. Aur yeh pehli riwaayat Imam Ishaqq Bin Ismaa’el Al Taaliqaani (رحمة الله) se likhi. In ki majlis mein bahut se muhaddiseen haazir hua karte the. 

Imam Abu ul Qaasim nihaayat nafees aur ‘umdah kitaabat karne wale khush katt naasikh the. Unho ne apne liye, apne aur nana jaan k liye bhtt si riwaayaat aur kutubb ki kitaabat kar k inhain mehfooz kiya. Iman Haakim (رحمة الله) ne bayaan kiya hai k Abu Ul Qaasim (رحمة الله) farmaate hain:

Main ne taqreeban ek hazaar shuyyukh kay liye kitaabat ki khidmaat anjaam di.

 

*Kutub e Ahaadees ka mutalla’*:

 

Imam Abu ul Qaasim (رحمة الله) ko kitaabat e ahaadess k sath sath kutub-e-ahaadees k mutall’ay ka zauq bhi bhtt choti umer se hi tha. Aur yeh zauq waqtt k sath sath pukhta aur wasee’ hota gaya. Aap (رحمة الله) farmaate hain:

Ek roz main kuch pareshan tha. Main saahil par jaa betha. Mere hath mein Juzz e Yahya Bin Mu’een tha, jisay main parh raha tha. Wahan Moosa Bin Haaroon al Hamaal aaey aur kaha:

Abu Ul Qaasim! Tumhare hath mein kya hai?

Main ne kaha: Juzz e Yahya Bin Mu’een.

Moosa Bin Haroon ne wo kitaab mere hath se pakri aur Dajla mein phenk di. Aur kaha:

Aap Ahmed Bin Hanbal,  Yahya Bin Mu’een aur Ali Bin Almadeeni ko jama’ karna chahte hain?

Aap (رحمة الله) farmaate hain k mujhe is qadar dilli ranjj hua k main bayaan nahi kar sakta.  Is waqiye k pesh e nazar Allama Zahbi (رحمة الله) farmaate hain:

Moosa Bin Haroon ne acha nahi kiya tha.

 

*Riwaayat e Hadees mein asaatizah*:

 

Imaam Abu Ul Qaasim (رحمة الله) ne bhtt si riwaayaat ko ‘aali asnaad se riwaayat kiya hai. Aap (رحمة الله) ko muta’ddid sighaar taaba’een se ahaadees riwaayat karne ka sharff haasil hai.

Aap (رحمة الله) ne Kibaar Huffaz o muhaddiseen, zabtt e hadees aur taqwa mein maaroof o mustanad naaqideen o muhaqqiqeen se kasb e faiz kiya. Aap (رحمة الله) k bhtt se asaatizah aur tilaamizah aise hain jo Imam Bukhaari aur Imam Muslim (رحمهما الله) k asaatizah o talaamizah bhi hain. Aap (رحمة الله) k asaatizah mein darjj zail muhaddiseen shaamil hain:

✯ Ahmed Bin Hanbal.

✯ Ali Bin al madeeni.

✯ Ali Bin Al Ju’dd.

✯ Abu Ansar Al tumaar.

✯ Khalff Bin Hashsham Al bazzaar.

✯ Hudbah Bin Khalid.

✯ Shebaan Bin Farookh.

✯ Abu Al Rabee’ Al Zehraani.

✯ Muhamaad Bin Abdul Waahib Al Haarsi.

✯ Yahya Bin Abdul Hameed Al hamaani.

✯ Basharr Bin Waleed Al kindii.

✯ Ubaid Ullah Bin Muhammad Al ‘Aishi.

✯ Haajib Bin Al Waleed.

✯ Abu Ul Ahwas Muhammad Bin Hayyan.

✯ Muharriz Bin ‘Aunn.

✯ Suwaid Bin Saeed.

✯ Dawood Bin Umro Al Zammi.

✯ Dawood Bin Rasheed.

✯ Abu Bakrr Bin Abi Shebah.

✯ Muhammad Bin Hassaan Al Sumti.

✯ Ubaid Ullah Bin Umer al Qawaareeri.

✯ Muhammad Bin Jaffer Al Warkaani.

✯ Haaroon Bin Maa’roof.

✯ Suraij Bin Younus.

✯ Abu Khusaimah Zaheer Bin Harbb.

✯ Abdul Jabbar Bin ‘Aasim.

✯ Muhammad Bin Abi Sameena.

✯ Ahmed Bin Munee’.

✯ Mus’ab Bin Abdullah Al Zubairi.

✯ Muhammad Bin Bakaar Bin Rayyan.

✯ Ibrahim Bin Al Hajjaaj Al Saami.

✯ Umro Bin Muhammad Bin Bakeer Bin Al Naaqid.

✯ Al’alaa Bin Moosa Al Baahili.

✯ Taaloot Bin Ibaad us Sairifi.

✯ Na’eem Bin Al Hessam.

✯ Qatan Bin Naseer Al Ghubrii.

✯ Kaamil Bin Talha.

✯ Abdul A’alaa Bin Hammad.

✯ Ubaid Ullah  Bin Mu’aaz.

✯ Ishaaq Bin Abi Israel Al Marwazi.

✯ ‘Ammar Bin Nasrr.

✯ Abdullah Bin ‘Aunn Al khizaar.

✯ Aasim Bin Abi Sheebah (رحمهم الله).

Imam Zahbi farmaate hain k Aap (رحمة الله) k asaatizah ki taadaad teen sau se zaada hai.

 

*Riwaayat e Hadees mein talaamizah*:

 

Imam Abu Ul Qaasim Abdullah Bin Munee’ (رحمة الله) k talaamizah ki fehristt bhi taweel hai, jis mein se chand naam yeh hain:

✿ Yahya Bin Saa’id.

✿ Ibn e Qaan’ay.

✿ Abu Ali Alneesa Poori.

✿ Abu Haatim Ibn e Hibban.

✿ Abu Bakrr ismaa’ili.

✿ Abu Ahmed Abdullah Bin ‘Addii.

✿ Abu Bakrr Al Shafa’ii.

✿ Da’lajj Al Sijzii.

✿ Abu Bakrr Al J’aabai.

✿ Abu Ali Bin Alsakan.

✿ Abu Bakrr Al Sinni.

✿ Abu Ahmed Nisa poori.

✿ Abu Ahmed Al Haakim.

✿ Muhammad Bin al Muzaffar.

✿ Abu Hifzz Bin Al ziyaat.

✿ Abu Umar Bin Haiwiyah.

✿ Abu Ul Hassan Al Daar Qittni.

✿ Abu Bakrr Bin Shaazaan.

✿ Abu Hafss Bin Shaheen.

✿ Abu Ul Qaasim Bin Habaabah.

✿ Abu Bakrr Bin Al muhandis al misri.

✿ Abu Ul Fathh Al Qawaas.

✿ Abu Abdullah Bin Battah.

✿ Zaahir Bin Ahmed Al surkhsi.

✿ Abu Bakrr Muhammad Bin Muhammad Al Taraazi.

✿ Abu Ul Qaasim Essa Bin Ali al Wazeer.

✿ Abu Muhammad Al harwi.

✿ Abu Hifss ul Kitaani.

✿ Abu Taahir ul Mukhliss.

✿ Abu Bakr Bin Al Muqraii Al Asbahaani.

✿ Abu Bakrr Bin Muhammad Bin Ismaa’el Al Waraaq.

✿ Abu Suleiman Bin Zabarr.

✿ Abu Bakrr Bin Abdaan al sheraazi.

✿ Al Mu’aafi Bin Zakariya Al Jareeri.

✿ Abu Muslim Al Kaatib Muhammad Bin Ahmed.

 

*Wafaat o Tadfeen*:

 

Abu ul Qaasim Abdullah Bin Munee’ (رحمة الل) ne ek sau saal se zaada umer paai. Aap (رحمة الله) 213 hijri ko Baghdaad mein paida hue. Aur 317 hijri ko Eid ul Fitrr ki raat aap (رحمة الله) ki wafaat hui. Aap (رحمة الله) ko Eid ul Fitrr k roz Baghdaad mein Baab Ul Teen k qabristaan mein dafan kiya gaya. Jahan Imam Ahmed Bin Hanbal k saahab zaaday Abdullah Bin Ahmed (رحمة الله) madfoon hain.

 

*Ulamaa k bayaanaat*:

 

❁ Imam Abu Muhammad Al Raamuhurmizi (رحمة الله) farmaate hain:

Zamaana e qadeem k muhaddiseen mein samaa’ k e’tibaar se Abu ul Qaasim (رحمة الله) k paaey ka koi aalim na tha.

❁ Moosa bin Haaroon (رحمة الله)  kehte hain:

Abu ul Qaasim Baghwi (رحمة الله) sudooq aur siqa e Imam the. Agar siqa se aage bhi koi murtaba hota to aap (رحمة الله) hi us k haqdaar hote.

❁ Umer Bin Hassan Ashnaani kehte hain:

Yeh log Abu ul Qaasim Baghwi par rashk karte hain. Kyunk inhain Ibn e Abi Ayesha (رضي الله عنها) se riwayat k samaa’ ki sa’aadat naseeb hui hai aur in logo ko yeh sa’aadat na mil saki. Aur Ibn e Munee’ Abu ul Qaasim hamesha such bolte the.

 

*Taaleefaat o tasneefaat :

 

Imam Abu ul Qaasim Abdullah Baghwi(رحمة الله) ki Muta’did Taaleefaat o tasneefaat hain jinki fehrist hasb zayl hai:

معجم الصحابہ ۔۔المعجم الکبیر ۔۔المعجم الصغیر ۔۔الجعدیات ۔۔مسند اسامہ بن زید ( جو اسوقت آپکے ہاتھوں میں ہے ) السنن علی مذاہبِ الفقہاء ۔۔تاریخ وفاہ الشیوخ ۔۔الذین ادرکہم البغوی ۔۔جزء منتقی من حدیث ابی الجہم العلاء بن موسیٰ الباہلی ۔۔حدیث ابی الجہم عن شیوخہ ۔۔حدیث مصعب بن عبداللہ ۔۔حکایات شعبہ بن الحجاج ۔۔مسائل عن ابی عبداللہ احمد بن حنبل ۔۔من حدیث ابی خالد ہدبہ بن خالد ۔۔من حدیث کامل بن طلحة.

 

REFERENCE:
Book: “MUSNAD USAMA BIN ZAID(رضي الله عنه)
Tarjumah: ‘Amanullah Asim’
Takhreez: “Fazilatus Shaykh Abdullah Nasir Rahmaani (حفظه الله تعالى)”

 

 

امام عبداللہ رحمہ اللہ

مسند اسامہ بن زید (رضي الله عنه) کے مؤلف کا نام  امام عبداللہ .

 

 

مؤلف کا مختصر تعارف :

 

نام و نسب :

مسند اسامہ بن زید رحمہ اللہ کے مؤلف کا نام عبداللہ اور کنیت ابو القاسم تھی آپ رحمہ اللہ کا سلسلہ نسب اس طرح ہے.

عبداللہ بن محمد بن عبد العزیز بن المرزبان بن ساہور بن شاہنشاہ

آپ رحمہ اللہ بغداد میں پیدا ہوئے آپ نے قرآن مجید کی قراءت اور ابتدائی دینی تعلیم اپنے نانا جان حافظ ابو جعفر احمد بن منیع المحدث البغوی رحمہ اللہ سے حاصل کی آپ رحمہ اللہ اپنے نانا جان کی نسبت سے عبداللہ بن منیع (ابن منیع) کے نام سے معروف ہوئے مخطوطہ کے سرورق (جلد) پر آپکا نام یزید بن منیع لکھا گیا ہے جبکہ اس مطبوعہ نسخہ کے محقق ابو الاشبال الزہیری حسن بن امین فرماتے ہیں میں نے بہت تلاش کیا لیکن مؤلفین و رجال کے متعلق کسی بھی کتاب میں یزید بن منیع کا ذکر نہیں ملا تھا اور جب اس کتاب کا مکمل مخطوطہ میسر آیا تو اس سے واضح ہوا کہ مؤلف کا نام ابو القاسم عبداللہ بن منیع ہے.

 

کتابت حدیث کا ذوق :

 

امام ابو القاسم عبداللہ بن محمد بن عبد العزیز رحمہ اللہ کے چچا علی بن عبد العزیز رحمہ اللہ اور نانا جان احمد بن منیع رحمہ اللہ نے آپ کی تعلیم و تربیت کا بخوبی اہتمام کیا اور آپ کو تقریبا دس سال کی عمر میں روایات لکھنے کی تعلیم سے آراستہ کر دیا امام ذہبی رحمہ اللہ فرماتے ہیں ابوالقاسم عبداللہ بن منیع رحمہ اللہ کے علاؤہ اس دور کا کوئی ایسا محدث ہمارے علم میں نہیں ہے جس نے اس قدر چھوٹی عمر میں طلب حدیث اور کتابت حدیث کا عمل شروع کیا ہو
آپ رحمہ اللہ خود فرماتے ہیں کہ میں نے 225 ہجری کو ماہ ربیع الاول میں پہلی روایت لکھی اور یہ پہلی روایت امام اسحاق بن اسماعیل الطالقانی رحمہ اللہ سے لکھی ان کی مجلس میں بہت سے محدثین حاضر ہوا کرتے تھے.
امام ابو القاسم نہایت نفیس اور عمدہ کتابت کرنے والے خوش خط ناسخ تھے انہوں نے اپنے لئے اپنے چچا اور نانا جان کے لئے بہت سی روایات اور کتب کی کتابت کر کے انہیں محفوظ کیا امام حاکم نے بیان کیا ہے کہ ابو القاسم رحمہ اللہ فرماتے ہیں کہ میں نے تقریبا ایک ہزار شیوخ کے لئے کتابت کی خدمات انجام دی.

کتب احادیث کا مطالعہ:

امام ابو القاسم رحمہ اللہ کو کتابت حدیث کے ساتھ ساتھ کتب احادیث کے مطالعہ کا ذوق بھی بہت چھوٹی عمر سے ہی تھا اور یہ ذوق وقت کے ساتھ ساتھ پختہ اور وسیع ہوتا گیا آپ رحمہ اللہ فرماتے ہیں ایک روز میں کچھ پریشان تھا میں ساحل پر جا بیٹھا میرے ہاتھوں میں جزء یحیی بن معین تھا جسے میں پڑھ رہا تھا وہاں موسی بن ہارون الحمال آئے اور کہا ابو القاسم تمہارے ہاتھ میں کیا ہے میں نے کہا جزء یحیی بن معین موسی بن ہارون نے وہ کتاب میرے ہاتھ سے پکڑی اور دجلہ میں پھینک دی اور کہا آپ احمد بن حنبل اور یحییٰ بن معین اور علی بن المدینی کو جمع کرنا چاہتے ہیں آپ رحمہ اللہ فرماتے ہیں کہ مجھے اس قدر دلی رنج ہوا کہ میں بیان نہیں کر سکتا اس واقعہ کے پیش نظر امام ذہبی رحمہ اللہ فرماتے ہیں موسی ہارون نے اچھا نہیں کیا تھا.

روایت حدیث میں اساتذہ :

امام ابو القاسم رحمہ اللہ نے بہت سی روایات کو عالی اسناد سے روایت کیا ہے آپ رحمہ اللہ کو متعدد صفار تابعین سے احادیث روایت کرنے کا شرف حاصل ہوا ہے
آپ رحمہ اللہ نے کبارحفاظ ومحدثین ضبط حدیث اور تقوی میں معروف ومستند ناقدین ومحققین سے کسب فیض کیا آپ رحمہ اللہ کے بہت سے اساتذہ اور تلامذہ ایسے ہیں جو امام بخاری اور امام مسلم کے اساتذہ اور تلامذہ بھی ہے آپ رحمہ اللہ کے اساتذہ میں درج ذیل محدثین شامل ہیں.

احمد بن حنبل ۔۔علی بن المدینی ۔۔علی بن الجعد ۔۔ابو النصر التمار ۔۔خلف بن ہشام البزار ۔۔ہدبہ بن خالد ۔۔شیبان بن فروخ ۔۔ابو الربیع الزہرانی ۔۔محمد بن عبد الواہب الحارثی ۔۔ یحیی بن عبد الحمید الحمانی ۔ بشر بن ولید الکندی ۔۔عبید اللہ بن محمد العیشی ۔۔حاجب بن الولید۔ ابو الاحوص محمد بن حیان۔ ۔ محرز بن عون ۔۔ سوید بن سعید ۔ داؤد بن عمر الضبی ۔۔ داؤد بن رشید ۔۔ابو بکر بن ابی شیبہ ۔۔محمد بن حسان السمتی عبیداللہ بن عمر القواریری۔ محمد بن جعفر الورکانی۔۔ہارون بن معروف ۔۔سریج بن یوسف ۔۔ابوخثیمہ زبیر بن حرب ۔۔عبدالجبار بن عاصم ۔۔محمد بن ابی سمینہ ۔۔احمد بن منیع ۔ مصعب بن عبداللہ الزبیری ۔۔محمد بن بکار بن ریان۔ ۔ابراہیم بن الحجاج السامی ۔۔ عمرو بن محمد بن بکیر الناقد ۔۔العلاء بن موسیٰ الباہلی ۔۔۔طالوت بن عباد الصیرفی ۔۔۔نعیم بن الہیصم ۔۔قطن بن نسیر الغبری ۔۔کامل بن طلحہ ۔۔عبد الاعلی بن حماد ۔۔عبید اللہ بن معاذ ۔۔اسحاق بن ابی اسرائیل المروزی عمار بن نصر ۔۔عبداللہ بن عون الخزار ۔۔عاصم بن علی ۔۔عثمان بن ابی شیبہ ۔۔رحمہ اللہ علیہم

امام ذہبی فرماتے ہیں آپ رحمہ اللہ کے اساتذہ کی تعداد تین سو سے زیادہ ہیں.
روایت حدیث میں تلامذہ:

امام ابو القاسم عبداللہ بن منیع رحمہ اللہ کے تلامذہ کی فہرست بھی طویل ہے جس میں سے چند کے نام یہ ہے :

یحییٰ بن صاعد ۔۔ابن قانع ۔۔ابو علی النیساپوری ۔۔ابو حاتم ابن حبان ابو بکر اسماعیلی۔۔ ابو احمد عبداللہ بن عدی۔۔ابو بکر الشافعی ۔۔وعلج السجزی۔۔الطبرانی ۔۔ابو بکر الجعابی ۔۔ابو علی بن السکن ۔۔ابو بکر بن السنی ۔۔ابو احمد نیساپوری ۔۔ابو احمد الحاکم ۔۔محمد بن المظفر ۔۔ابو حفص بن الزیات ابو عمر بن حیویہ ۔۔ابو الحسن الدار قطنی ۔۔ابو بکر بن شاذان ۔۔ابو حفص بن شاہین ۔۔ابو القاسم بن حباب ۔۔ابو بکر بن المہندس المصری ۔۔ابو الفتح القواس ۔ ابو عبداللہ بن بطہ ۔۔زاہر بن احمد السرخسی ۔۔ابو بکر بن المقرئ الاصبہانی ۔۔ابو بکر بن اسماعیل الوراق ۔۔ابو سلیمان بن زبر ۔۔ابو بکر احمد بن عبدان الشیرازی ۔۔المعافی بن زکریا الجریری ۔۔ابو مسلم الکاتب محمد بن احمد.

وفات و تدفین :

ابو القاسم عبداللہ بن منیع رحمہ اللہ نے ایک سو سال سے زیادہ عمر پائی آپ رحمہ اللہ نے 213 ہجری کو بغداد میں پیدا ہوئے اور 317 ہجری کو عید الفطر کی رات آپ رحمہ اللہ کی وفات ہوئی آپ رحمہ اللہ کو عید الفطر کے روز بغداد میں باب التین کے قبرستان میں دفن کیا گیا جہاں امام احمد بن حنبل رحمہ اللہ کے صاحبزادے امام عبداللہ بن احمد رحمہ اللہ مدفون ہیں.

علماء کے بیانات

 امام ابو محمد الرامہرمزی رحمہ اللہ فرماتے ہیں: کہ زمانہ قدیم کے محدثین میں سماع کے اعتبار سے ابو القاسم رحمہ اللہ کے پایہ کا کوئی عالم نہ تھا.
موسی بن ہارون رحمہ اللہ کہتے ہیں ابو القاسم بغوی رحمہ اللہ صدوق اور ثقہ امام تھے اگر ثقہ سے آگے بھی کوئی رتبہ ہوتا تو آپ رحمہ اللہ ہی اس کے حقدار ہوتے .
عمرو بن حسن اشنانی کہتے ہیں یہ لوگ ابو القاسم بغوی رحمہ اللہ پر رشک کرتے ہیں کیونکہ انہیں ابن ابی عائشہ رحمہ اللہ سے روایت کے سماع کی سعادت نصیب ہوئی اور ان لوگوں کو یہ سعادت نہ مل سکی اور ابن منیع ابو القاسم ہمیشہ سچ بولتے تھے.
نقاش رحمہ اللہ نے کہا میں نے ابو القاسم بغوی میں انکساری اور آخرت کا غم دیکھا وہ ثقہ امام تھے.

تصانیف و تالیفات :

امام ابو القاسم عبداللہ بغوی رحمہ اللہ کی متعدد تالیفات و تصانیف ہیں جن کی فہرست حسب ذیل ہیں

معجم الصحابہ ۔۔المعجم الکبیر ۔۔المعجم الصغیر ۔۔الجعدیات ۔۔مسند اسامہ بن زید ( جو اسوقت آپکے ہاتھوں میں ہے ) السنن علی مذاہبِ الفقہاء ۔۔تاریخ وفاہ الشیوخ ۔۔الذین ادرکہم البغوی ۔۔جزء منتقی من حدیث ابی الجہم العلاء بن موسیٰ الباہلی ۔۔حدیث ابی الجہم عن شیوخہ ۔۔حدیث مصعب بن عبداللہ ۔۔حکایات شعبہ بن الحجاج ۔۔مسائل عن ابی عبداللہ احمد بن حنبل ۔۔من حدیث ابی خالد ہدبہ بن خالد ۔۔من حدیث کامل بن طلحة.

 

حوالہ :
نام كتاب : “مسند اسامہ بن زید (رضي الله عنه) ”  اردو
ترجمه : ‘امامان اللہ عاصم’
تقدیم : ‘شيخ الحديث عبد اللہ ناصر رحمانی حفظہ اللہ’

 

 

Table of Contents