Sections
< All Topics
Print

46. Imam Tabrezi[Mishkat Al-Masabih][D: 741]

IMAM TABREZI (رحمة الله)

“Mashkat ke maane taaqche ke hai aur taaqcha ek mehdood jagah hoti hai, jis mein charaagh diya jaaye to raushni kushada aur wasee’ maqaam ki ba-nisbat zyada hoti hai, maanvi munasibat bayen taur hai ke Masabeh As-Sunnah mein darj shudah ahadees Isnaad aur makhraj ke baghair ek khuli jagah par thi. Jab Raavi hadees aur makhraj ki nishandahi  kardi gayi  to masabeh ki yeh ahadees Mashkaat ki zeenat ban gayin aur unki raushni mein izaafa hogaya.”

Ek dusre shaareh Mashkaat likhte hain ke mashkoot, deewar ke us suraakh ko kehte hain jo aar paar na ho aur usmein charaagh jalakar rakhdiya jaata hai, matlab yeh hua ke jis tarah charagh ko taaq mein rakha jaata hai usi tarah Masabeh As-Sunnah ki ahadees ko Mashkoot mein rakh diya gaya. Usey baayen taur bhi taabeer kiya jasakta hai  ke jo ahadees Mashkoot mein zikr kiye gaye hain woh charaagh ki tarah hain aur yeh kitaab aisi hai jaisa ke ek taaqche mein kayi charaagh raushan hon. (Allama’t , Saad :49, Jeem:1)

Mashkaat aur Masabeh mein farq:

  1. Masabeh mein poori sanad mehzoof hai jab ke Mashkat mein, aakhri raavi , Sahabe Jaleel ka zikar hai.
  2. Masabeh mein maakhaz ka hawala nahi jab ke Mashkat mein chand ek maqamaat ke alawa sab jagah maakhaz ka hawaala darj hai  aur yeh hawala taqreeban 13 kutub per mushtamil hai.
  3. Sahih Bukhari
  4. Sahih Muslim
  5. Sunan Abu Dawood
  6. Jamae Tirmidhi
  7. Sunan Nisai
  8. Sunan Ibn Majah
  9. Muatta Imam Malik
  10. Sunan Imam Shafi’i

9.Musnad Imam Ibn Hanbal

  1. Sunan Darimi                
  2. Sunan Dar Qutni                
  3. Sunan Bayhaqi
  4. Musnad Razzeen
  1. Masabeh mein sirf marfoo’ ahadees thi jabke Mashkoot mein marfoo ahadees, aasaare sahaba aur akhbaare taba’een bhi zikr ki hai.
  2. Masabeh mein zayeef ya ghareeb ahadees ki nishandahi thi, Mashkoot mein inke zauf ya gharabat ki wajah bayan ki gayi hai nez is mein ahadees ke zauf aur sehat ka khaas ehtemam kiya gaya hai.
  3. Masabeh mein sirf do qism ki ahadees thi, As-Sahah ke unvaan mein sahihain aur Al-hasan ke unvaan mein Sunan Arabaa ki ahadees darj theen jabke Mashkaat mein sahihain ki ahadees ko pehli fasal mein aur deegar kutub hadees ki rivayat dusri fasal mein aur teesri fasal mein aap ne un ahadees ka izafa kiya hai jo unvaan ke munasib ho lekin Imam Baghwi ne unhe zikar nahi kiya. Teesri fasal ke zyada karne se 1511 ahadees ka izaafa hua hai, is aitebar se masabeh mein ahadees ki tadaad 4434 thi, Sahibe Mashkaat ke zyadaat se majmuyi tadaad 5945 hai.
  4. Masabeh mein Al-Sahaah ke unvaan mein Bukhari aur Muslim ke alawa deegar muhaddiseen ki marviyat aur alhasaan mein sheikhain ki marviyaat darj kardi gayi thi jab ke mashkoot mein aisi ahadees ko unke saheeh maqaam per lauta diya gaya hai. Mashkoot mein is amar ki wazahat bhi kardi gayi hai ke yeh hadees Masabeh mein falan jagah par thi lekin Mashkoot ke falan baab mein aayegi.
  5. Masabeh mein kuch ahadees mukarrar thi jab ke Mashkaat mein is takraar ko khatam kardiya gaya hai aur mukarrar ahadees ko hazaf kar diya gaya hai.
  6. Matan ahadees mein bhi kuch ikhtilaaf hai, jin ki do suratein hain.
    1. Ahadees mein iqhtisaar va tatweel: Iqhtisaar wahan kiya gaya hai jahan baab ki munasibat par asar andaaz nahi hota tha aur tatweel wahan hai jahan baab se manasibat waazeh na thi, bahar haal har do umoor mein maslehat ko paish nazar rakha gaya hai.
    2. Alfaaz ahadees mein tabdeeli yaani Masabeh aur Mashkoot mein alfaaz ke bahimi tafaut ki wajah ahadees ke muqhtalif tareeqe va asaneed hain jinke mutalliq Sahibe Mashkoot likhte hain ke shayad mujhe vo rivayat nahi mil saki jise Imam Baghwi ne buniyad banakar mazkoora alfaaz darj kiye hain.

Mashkoot Al-Masabeh ke shuroohaat:

Mashkoot ki kayi ek shuroohaat hai. Zel mein chand ek ka zikar kiya jaata hai:-

  1. Al-Kashif an haqaiq al-sunan
  2. Marqaat al-Masabeh
  3. Mara’at al-Mafateeh
  4. Lama’at al-tanqeeh
  5. Al-Ta’leeqh Al-Sabeeh
  6. Minhaj Al-Mashkoot
Mashkaat ke Urdu tarajum:

Barre sagheer mein yeh kitaab mutadawal aur deeni madaris mein shamil nasaab hai. Is bina par iske mutaddid urdu taraajim hain, un mein se kuch ka tazkirah kiya jaata hai.

  1. Tareeq An-Nijah
  2. AL-Rahmat Al-Muhdaat
  3. Sava At-Tareeq
  4. Tarjuma va Sharah Mashkaat (Sheikh Abdul Tawwab Multani)
  5. Muzahir Haq
  6. Tarjuma va Hashiya Mashkaat (Ulema Ismail Salafi)
  7. Anwar Al-Masabeh
  8. sataa’t Al- Talqeeh (Maulana Mohammed Sadiq Khaleel Marhoom)
  9. Hashiya Ala’ Mashkaat Al-Masabeh (Maulana Mohammed Rafeeq Athri)

Zere Nazar Urdu tarjuma : Is waqt Mashaat  Al-Masabeh ki afadiyat aur ahmiyat kisi se maqhfi nahi hai yahi wajah hai ke bazaar mein mutaddid tarjume dastyaab hain lekin ……

            Har      Gule    Ra       Boye    Deegar Ast

Mazkoorah urdu tarjuma ki apni shaan hai. Jise dauran-e-muta’ala mehsoos kiya ja sakta hai. Is tamam khidmate hadees ke asal muharrik barkhurdar Mohammed Sarwar Asim hain jo nashar-o-isha’at ka saaf sutra zauq rakhte hain. Mehez hadees ke nashar-o-isha’at ke jazbe se is farz ki takmeel karte hain, Allah Ta’ala in sab hazraat ko apne haan ajre jazeel ataa farmaye.

Mujhe chand dino ki notes par is ka muqadma likhne par israar kiya gaya, jo maine likh diya hai. Mujhe apni kam Ilmi aur be maayegi ka poora poora aitraaf hai. Qare’ene karaam se guzarish hai ke agar woh is mein koi kami ya ghalti mehsoos karein to hamein is se zaroor agaah karein. Allah Ta’ala hum sab ka haami-o-naasir ho.

Sheikh Al-Hadees Abu Mohammed Hafiz Abdul Sattar Ahmed

Book: “Mishkat Al-Masabih”
Tarjumah: Hafiz Abu Tahir Zubair Ali Zai(رحمه الله عليه)
 

مؤلف مشکوة المصابیح

اب ہم مشکوة المصابیح اور اس کے مؤلف کے متعلق اپنی گزارشات پیش کرتے ہیں۔

آپ کا نام و نسب: ولی الدین ابو عبداللہ محمد بن عبداللہ الخطیب العمری التبریزی۔ العمری، عمر بن عبدالعزیز کی طرف نسبت ہے کیونکہ عمر فاروق رضی اللہ عنہ کی طرف نسبت رکھنے والے کو فاروقی کہا جاتا ہے، آپ آٹھویں صدی کے ممتاز علماء میں سے تھے۔ صاحب مشکوة کے حالات زندگی کہیں سے نہیں ملتے، شاید تاتاریوں کی تباہ کاریوں اور فتنوں کی نظر ہوگئے ہونگے، ان کے فتنے سے امت مسلمہ اپنے قیمتی علمی اثاثے سے محروم کردی گئی، ممکن ہے کہ مصنف مشکوة کے حالات اس یورش کی نظر ہوچکے ہوں، حتی کہ ان کی ولادت اور وفات تک کا پتہ نہیں چلتا، البتہ یہ بات یقین سے کہی جاسکتی ہے کہ آپ کی وفات 737ھ کے بعد ہوئی ہے کیونکہ آپ نے ماہ رمضان میں 737 ہجری میں مشکوة المصابیح کی تالیف سے فراغت پائی اس بنا پر یقینا ان کی وفات اس کے بعد ہوئی ہوگی اگرچہ بعض حضرات نے اپنے ظن و تخمین سے ان کا سن وفات 748 ھ ذکر کیا ہے۔ واللہ اعلم۔
آپ کے متعلق ملا علی قاری لکھتے ہیں کہ صاحب مشکوة حبر العلام، بحر الفہام، حقائق کو ظاہر کرنے والے اور دقائق کی وضاحت کرنے والے تھے۔ [مرقاة، ص:٢، ج:1]

آپ نے مشکوة المصابیح کی شکل میں اس امت کو عظیم تحفہ دیا ہے جو آپ کے لیے بہت بڑا صدقہ جاریہ ہے، اللہ انہیں کروٹ کروٹ اپنی رحمت سے نوازے اور جنت الفردوس عطا فرمائے۔

مشکوة المصابیح :

عالم اسلام میں یہ کتاب غیر معمولی شہرت و اہمیت کی حامل ہے۔ اس کی اہمیت و افادیت کا اندازہ اس امر سے لگایا جاسکتا ہے کہ ہمارے ہر مکتب فکر کے مدارس میں یہ شامل نصاب ہے۔ یہ عظیم کتاب علامہ تبریزی رحمہ اللہ علیہ نے اپنے فاضل استاذ شیخ محترم جناب علامہ طیبی کے مشورہ سے تحریر کی کیونکہ آپ احادیث کے ایک مستند مجموعے کی ضرورت شدت سے محسوس کر رہے تھے، اس ضرورت کا،اظہار انہوں نے اپنے لائق شاگرد خطیب تبریزی سے کیا تو باہمی مشورے سے طے پایا کہ کسی نئے مجموعے کو ترتیب دینے کے بجائے امام بغوی کی کتاب “مصابیح السنہ” کی تہذیب و تکمیل کردی جائے چنانچہ اس کی تکمیل اور اس میں حک و اضافہ علامہ تبریزی کے سپرد ہوا جسے انہوں نے بڑی محنت اور جانفشانی سے پایۂ تکمیل تک پہنچایا، اس بنا پر مشکوة المصابیح دراصل مشکوة السنہ کا ہی نتیجہ اور تکملہ ہے۔ اس بات کا پہلے اظہار ہوچکا ہے کہ مصابیح السنہ میں حدیث کے مأخذ اور راوی حدیث کا ذکر نہ تھا، مؤلف مشکوة نے پوری محنت سے راوی حدیث کے نشاندہی کی پھر اس حدیث کے مخرج اور مأخذ کا بھی حوالہ دیا، مشکوة المصابیح کے نام کی وجہ تسمیہ کے متعلق علامی طیبی فرماتے ہیں:-

مشکوة کے معنی طاقچہ کے ہیں اور طاقچہ ایک محدود جگہ ہوتی ہے، جس میں چراغ دیا جائے تو روشنی کشادہ اور وسیع مقام کی بہ نسبت زیادہ ہوتی ہے۔ معنوی مناسبت بایں طور ہے کہ مصابیح السنہ میں درج شدہ احادیث اسناد اور مخرج کے بغیر ایک کھلی جگہ پر تھیں جب راوی حدیث اور مخرج کی نشاندہی کردی گئ تو مصابیح کی یہ احادیث مشکوة کی زینت بن گئیں اور ان کی روشنی میں مزید اضافہ ہو گیا۔”
ایک دوسرے شارح مشکوة لکھتے ہیں کہ مشکوة دیوار کے اس سوراخ کو کہتے ہیں جو آر پار نہ ہو اور اس میں چراغ جلا کر رکھ دیا جاتا ہے، مطلب یہ ہوا کہ جس طرح چراغ کو طاق میں رکھا جاتا ہے اسی طرح مصابیح السنہ کی احادیث کو مشکوة میں رکھ دیا گیا۔ اسے بایں طور پر بھی تعبیر کیا جاسکتا ہے کہ جو احادیث مشکوة میں ذکر کردی گئی ہیں وہ چراغ کی طرح ہیں اور یہ کتاب ایسے ہے جیسا کہ ایک طاقچہ میں کئی چراغ روشن ہوں۔ [اللمعات،ص:49،ج:1]

مشکوة اور مصابیح میں فرق:

⭐ مصابیح میں پوری سند محذوف ہے جبکہ مشکوة میں آخری راوی، صحابی جلیل کا ذکر ہے۔
⭐مصابیح میں مأخذ کا حوالہ نہیں جبکہ مشکوة میں چند ایک مقامات کے علاوہ سب جگہ مأخذ کا حوالہ درج ہے اور یہ حوالہ تقریبا 13 کتب پر مشتمل ہے۔
(1) صحیح بخاری
(2) صحیح مسلم
(3) سنن ابی داؤد
(4) جامع ترمذی
(5) سنن نسائی
(6) سنن ابن ماجہ
(7) مؤطا امام مالک
(8) سنن امام شافعی
(9) مسند امام احمد بن حنبل
(10) سنن دارمی
(11) سنن دار قطنی
(12) سنن بہیقی
(13) مسند رزین
⭐ مصابیح میں صرف مرفوع احادیث تھیں جبکہ مشکوة میں مرفوع احادیث، آثار صحابہ اور اخبار تابعین بھی ذکر کی ہیں۔
⭐ مصابیح میں ضعیف یا غریب احادیث کی نشاندہی تھی، مشکوة میں ان کے ضعف اور غرابت کی وجہ بیان کی گئی ہے نیز اس میں احادیث کے ضعف اور صحت کا خاص اہتمام کیا گیا ہے۔
⭐ مصابیح میں صرف دو قسم کی احادیث تھیں، الصحاح کے عنوان میں صحیحین اور الحسان کے عنوان میں سنن اربعہ کی احادیث درج تھیں جبکہ مشکوة میں صحیحین کی احادیث کو پہلی فصل میں اور دیگر کتب حدیث کی روایات دوسری فصل میں اور تیسری فصل میں آپ نے ان احادیث کا اضافہ کیا ہے جو عنوان کے مناسب ہوں لیکن امام بغوی نے انہیں ذکر نہیں کیا۔ تیسری فصل کے زیادہ کرنے سے 1511 احادیث کا اضافہ ہوا ہے، اس اعتبار سے مصابیح میں احادیث کی تعداد 4434 تھیں، صاحب مشکوة کی زیادات سے مجموعی تعداد 5945 ہے۔

⭐مصابیح میں الصحاح کے عنوان میں بخاری اور مسلم کے علاوہ دیگر محدثین کی مرویات اور الحسان کے عنوان میں شیخین کی مرویات درج کردی گئی تھیں جبکہ مشکوة میں ایسی احادیث کو ان کے صحیح مقام پر لوٹا دیا گیا ہے، مشکوة میں اس امر کی بھی وضاحت کردی گئی ہے کہ یہ حدیث مصابیح میں فلاں جگہ پر تھی لیکن مشکوة کے فلاں باب میں آئے گی۔
⭐ مصابیح میں کچھ احادیث مکرر تھیں جبکہ مشکوة میں اس تکرار کو ختم کردیا گیا ہے اور مکرر احادیث کو حذف کردیا گیا ہے۔

⭐مصابیح میں الصحاح کے عنوان میں بخاری اور مسلم کے علاوہ دیگر محدثین کی مرویات اور الحسان کے عنوان میں شیخین کی مرویات درج کردی گئی تھیں جبکہ مشکوة میں ایسی احادیث کو ان کے صحیح مقام پر لوٹا دیا گیا ہے، مشکوة میں اس امر کی بھی وضاحت کردی گئی ہے کہ یہ حدیث مصابیح میں فلاں جگہ پر تھی لیکن مشکوة کے فلاں باب میں آئے گی۔
⭐ مصابیح میں کچھ احادیث مکرر تھیں جبکہ مشکوة میں اس تکرار کو ختم کردیا گیا ہے اور مکرر احادیث کو حذف کردیا گیا ہے۔

متن احادیث میں بھی کچھ اختلاف ہے جن کی دو صورتیں ہیں۔
ا: احادیث میں اختصار و تطویل: اختصار وہاں کیا گیا ہے جہاں باب کی مناسبت پر اثر انداز نہیں ہوتا تھا اور تطویل وہاں ہے جہاں باب سے مناسبت واضح نہ تھی، بہرحال ہر دو امور میں مصلحت کو پیش نظر رکھا گیا ہے۔

ب: الفاظ حدیث میں تبدیلی یعنی مصابیح اور مشکوة میں الفاظ کے باہمی تفاوت کی وجہ احادیث کے مختلف طریق و اسانید ہیں جن کے متعلق صاحب مشکوة لکھتے ہیں کہ شاید مجھے وہ روایت نہیں مل سکی جسے امام بغوی نے بنیاد بنا کر مذکورہ الفاظ درج کئے ہیں۔
مشکوة المصابح کی شروحات
مشکوة کی کئی ایک شروحات ہیں۔ ذیل میں چند ایک کا ذکر کیا جاتا ہے:-
1) الکاشف عن حقائق السنن
2) مرقاة المصابیح
3) مرعاة المفاتیح
4) لمعات التنقیح
5) التعلیق الصبیح
6) منہاج المشکوة

مشکوة کے اردو تراجم
برصغیر میں یہ کتاب متد اول اور دینی مدارس میں شامل نصاب ہے اس بنا پر اس کے متعدد اردو تراجم ہیں، ان میں سے کچھ کا تذکرہ کیا جاتا ہے:-

1) طریق النجاة
2) الراحمتہ المہداة
3) سواء الطریق
4) ترجمہ و شرح مشکوة (شیخ عبد التواب ملتانی)
5) مظاہر حق
6) ترجمہ و حاشیہ مشکوة ( علامہ اسماعیل سلفی)
7) انوار المصابیح
8) سطعات التلقیح( مولانا محمد صادق خلیل مرحوم )
9) حاشیہ علی مشکوة المصابیح( مولانا محمد رفیق اثری)

زیر نظر اردو ترجمہ: اس وقت مشکوة المصابیح کی افادیت و اہمیت کسی سے مخفی نہیں ہے، یہی وجہ ہے کہ بازار میں متعدد ترجمے دستیاب ہیں، لیکن۔۔۔۔۔۔ع

ہر گل را بوئے دیگر است

مذکورہ اردو ترجمے کی اپنی شان ہے، جسے دوران مطالعہ محسوس کیا جاسکتا ہے۔ اس تمام خدمت حدیث کے اصل محرک برخوردار محمد سرور عاصم ہیں جو نشر و اشاعت کا صاف ستھرا ذوق رکھتے ہیں، محض حدیث کی نشر و اشاعت کے جذبے سے اس فرض کی تکمیل کرتے ہیں، اللہ تعالٰی ان سب حضرات کو اپنے ہاں اجر جزیل عطا فرمائے۔
مجھے چند دنوں کے نوٹس پر اس کا مقدمہ لکھنے پر اسرار کیا گیا، جو میں نے لکھ دیا ہے مجھے اپنی کم علمی اور بے مائیگی کا پورا پورا اعتراف ہے، قارئین اکرام سے گزارش ہے کہ اگر وہ اس میں کوئی کمی یا غلطی محسوس کریں تو ہمیں اس سے ضرور آگاہ کریں۔ اللہ تعالٰی ہم سب کا حامی و ناصر ہو۔
شيخ الحدیث ابو محمد حافظ عبد الستار الحمار

حوالہ :
نام كتاب : “مشکوة المصابیح”  اردو
ترجمه : ‘حافظ ابوطاہر زبیرعلی زئی (رحمه الله عليه)
 

Table of Contents