Sections
< All Topics
Print

06. Hazrat Sumama Bin Ussal (رضی اللہ عنہ)

Hazrat Sumama Bin Ussal(رضی اللہ عنہ)

Quraish ki iqtisadi naqa bandi kar dey ga.

6 Hijri mein Rasool-e-Aakram (ﷺ) ne dawat ilal allaah ka dairah waseeh kerne ka azam fermaya to Arab-o-Ajam ke badshaho ki taraf 8 khutut likhe aur unhein islam qubool kerne ki dawat di.

Jin sarbaraho ko khutut likhe un mein Sumamah bin Ussal رضی اللہ عنہ ka naam bhi aata hai.

Bil shiba Sumama bin Ussal رضی اللہ عنہ ka shumaar Zamana-e-Jahiliyat ke ba rub arab badshaho mein hota hai, Aur ye Qabeela Banu Hanifa ke Qaabil-e-Rashk sardaar they aur Yamama key aise har Dil azeez-o-Ba ra’ab sarbaraah thy keg jiske kabhi bhi hukm adoli na hoti thi.

Zamana-e-Jahiliyat main Sumamah رضی اللہ عنہ ko jab Nabi-e-Aakram (ﷺ) ka khat mila to us ney badi haqarat sey daikha, Us ki Sutuwwat-o-Nukhuwwat ne usey ghinauna jurm karney per aamdah kiya, Haq baat sunne ke liye uskey kaan bahere ho gaye, Phr us per ye junun taari hua keh Rasool Allah ko qatal ker dey aur aapke mission ko na kaam bana dey, Lekin woh apne mansube ko Paaya-e-Takmeel tak pahuchane key liye munasib mauqe ki talash me raha, aik dafa use mauqa mila woh dabe paaw Huzoor  Aakram (ﷺ) per peeche se waar kerney hi wala tha, lekin us ke chacha ne uska haath rok diya. Is tarha aap Allah ky Fazal-o-Karam sy dushman ky shar sy mahfooz rahy.

Sumama ny Rasool-e-Akarm sy to apna hath ruk lia, Lekin aapke Sahaba-e-Kiraam ko nuqsan pahuchane ke liye kisi munasib mauqe ki talash mein raha, Aik dafa aisa hua keh bhut se Sahaba-e-Kiraam ka muhasara ker ke unhein be dareaiqh qatl ker diya, Ye andoh naak khabar sun ker nabi (ﷺ) ne aam ailaan farma diya keh Sumamah jahan kahi mile usey qatl ker diya jaaye.

Is dil kharash waqia ko guzre abhi chand din hi huey thy keh Sumamah bin Ussal key dil me aaya keh baitullah ki ziyarat ki jaaye Isliye woh Yamama se soye Makka Muazzima rawana hua, Uski dili tamanna thi keh Tawaaf-e-Kaaba ker ke aur baitullah per rakkhe gaye buto ke naam per janwar zibah kary.


Janab Sumamah Madinah munwara ke qareeb abhi raaste mein hi the keh unke sath achanak aik aisa hadsa pesh aaya, Jo unkey Wahem-o-Gumaan mein bhi nahi tha, Hua ye ke Rasool Allah (ﷺ) ka tarteeb diya hua Mujahideen-e-Islam ka aik group Madinah munawara ki nigraani per mamur tha, Mubada ke koi Madinah munawara per raat ke waqt achanak hamla na ker de, Mujahideen ka ye group gasht ker raha tha ke unhon ney raaste me jaate hue janab Sumamah ko giraftaar ker liya, Lekin unhey malum na tha ke ye kaun hain? Woh unhey pakad kar Madinah laaye aur Masjid-e-Nabwi ke aik sutoon key sath bandh diya mujahideen ne socha key nabi (ﷺ) qaidi ko daikh lain aur uskey mutalliq jo hukum farmaye uski tameel ki jaaye.

Nabi (ﷺ) jab Masjid-e-Nabwi me tashreef laaye, Aap ne daikha ke Sumamah bin Ussaal masjid ke aik sutoon ke sath bandha hua hai, Usey is halat me daikh ker aapne irshaad farmaya:

Kya jante ho ke tum ne kise giraftaar kiya?

Sab ney kaha:

Ya Rasool Allah! Hamain to ilm nahi.

Aap ney irshaad farmaya:

Ye to Sumamah bin Ussal hai, Ab iskey sath Husn-e-Sulook se pesh aana.

Ghar me jo khana hai, Woh Sumamah bin Ussal ke liye bhej diya jaaye, Phr apne hukum diya ke meri uontni ka doodh Subah-o-Shaam usey pilaya jaaye.

Apke hukum ki fauran tameel ki gayi, Phr nabi (ﷺ) Sumamah bin Ussal ki taraf mutawajja hue taakeh usey islam qubool kerney ki dawat dain aapne bare hi mushfiqana andaaz mein dariyaft kiya:

Sumamah kya raaye hai?

Unhoney jawab diya: Bahtar hai, Agar aap mujhey qatl kar dain to yaqeenan aik aise shakhs ko qatl karenge jisney aapkey sahaba ka khoon bahaya, Agar maaf farma dain to aik qadardaan per meharbani hogi aur agar maal chahiye toh jis qadar farmaye maal aapki khidmat mein pesh ker diya jayega.

Rasool Allah (ﷺ) tashreef le gaye aur unhein do din tak isi halat mein rahne diya lekin khana paani aur doosh ba qaidgi se unhey milta raha.

Phr apne dariyaft kiya:

Sumamah kya raaye hai?

Unhoney kaha:

Baat to woh hi hai jo main pahle arz ker chuka hun.

Agar maaf farma denge to aik qadar daan per mehatbaani karengey, Agar aap mujhe qatl ker dain to aik aise shakhs ko qatl karenge jisney aap ke sathiyon ka khoon bahaya ha. Aur agar maal chahiye to aapki mansha ke mutabiq maal aapki khidmat me pesh ker diya jaiga.

Rasool Allah (ﷺ) ne ab bhi use isi halat mein rahene diya aur teesre din tashreef laaye aur dariyaft farmaya:

Sumamah رضی اللہ عنہ ab tumhari kya raaye hai?

Unho ne kaha: Meri raaye to wahi hai jo main pahle arz ker chuka hun.

Agar aap maaf farma dain toh aik qadar daan per meharbani krengain aur agar aap qatal karain to aik aise shakhs ko qatal krengain, Jis ki gardan per khoon hai, Aur agar maal chahiye to aapki mansha ke mutabiq maal diya jayega.

Rasool Allah (ﷺ) ne Sahaba-e-Kiraam رضی اللہ عنہم ko hukum diya ke ise azaad ker do.

janab Sumamah azaad honey ke baad Masjid-e-Nabwi se nikal ker aik taraf chal diye, Madinah munawara ki aik jaanib baqee ke nazdeaik aik nakhlistaan tha, Wahan aik muqam per paani bhi jama tha, Apni uontni wahan baitha ker khub achi tarah gusul kiya aur wapas Masjid-e-Nabwi mein aa ker sab logo key samney ba awaaz baland kaha:

 

أشهد أن لا إله إلا الله وأشهد أن محمدا رسول الله

 

“Main gawahi deta hun keh allah ta’aal ke siwa koi Mabood-e-Haqiqi nahi aur gawahi deta hun keh muhammad (ﷺ) uskey bandey aur rasool hain”

Baad aazaan mohabbat bhare andaaz mein yun goya hue: Merey pyaare Muhammad (ﷺ) Allah ki qasam! Islam qubool karne sey pahle Roo-e-Zameen per mujhey aapke chehre se zyada koi chehra bura na lagta tha, Lekin aaj mere liye kainaat mein tamaam chehro se mahboob tareen chehra aap hi ka hai.

Allah ki qasam aaj sey Pahle aapka ye shahr duniya ke tamaam shahero se zyada bura malum hota tha, Aur aaj ye mujhey tamam shahero se zyada mahbub dikhayi deta hai.

phr uskey baad dard bhare lahjey me arz ki:

Ya rasool Allah (ﷺ) mujhey intehai afsos hai keh main ne aapke sahaba رضی اللہ عنہم ka be dareegh khoon bahaya hai, Bhala mery is jurm ka madawa kaise hoga.

Ye sun ker nabi (ﷺ) ne irshaad fermaya:

Sumamah رضی اللہ عنہ aap ghabraiye nahi. Islam pahle sab gunaho ko mita deta hai, Aur aap ney us Khair-o-Barkat ki basharat di, Jo Allah Subhan-o-Ta’aala ney islam qubool ker ney ki badaulat us ke naseeb mein likh di.

Ye sun ker janab Sumamah رضی اللہ عنہka chehra khushinl se timtima utha aur ye kahney lage:

Allah ki qasam! Main ne apne Zamana-e-Jahiliyat mein jis qadar mussalmano ka qatal kiya hai us sey do guna zyada mushrikeen ko tahe teg karunga,  Ab meri jaan meri talwaar aur jo kuch bhi mere paas hai sab kuch aapki aur aapke deen ki khidmat ke liye waqf hai.

Phr arz ki:

Ya Rasool Allah (ﷺ) mujhey ijazat ho to main umra adaa ker aaun.

Nabi (ﷺ) ne irshaad fernaya:

Umrah zarur adaa karein lekin islami taleemat ki roshni main, Aur aap ney unhein umrah adaa kerney ka tariqa bhi samjha diya.


Hazrat Sumamah رضی اللہ عنہijazat milne key baad umrah adaa ker ney ke liye rawana ho gaye, Makkah muazzima pahuch ker aapne ba awaa ye baland ye kalimat kaheney shuru ker diye:

لبيك اللهم لبيك     لبيك لاشريك لك لبيك        إن الحمد والنعمة   لك والملك،         لاشريك لك لبيك

“Main hazir hun ilaahi mai hazir hun, Hazir hun tera koi sharik nahi main hazir hun sab tareefin aur nematein teri hain aur hukumat bhi teri, Tera koi sharik nahi.

 

Hazrat Sumamah رضی اللہ عنہ woh pahle mussalmaan hain jo Makkah muazzima mein ba awaaz baland talbiya kahte hue dakhil hue.


Quraish ne uonchi awaaz me jab ye kalimaat sune toh unkey gusse ki koi inteha na rahi, Sab log talwarein haatho me liye gharo se bahar nikal aaye taakeh us shakhs ko giraftaar ker sakain jisne makkah mein aakar unke aqaid ke khilaaf Babaang-e-Dahel kalimaat kahney ki jurait ki, Jab qaum Sumamah رضی اللہ عنہ ke paas pahuchi to aap ney phr aik baar uonchi awaaz sey talbiya kaha. Kuffar asliha taan ker khade ho gaye, Quraish main se aik naujawan neeza le ker aage badha, Taakeh aap per hamla aawar ho lekin dusro ne uskey haath pakad liye aur kaha:

Arey tum jaante nahin ho ye kaun hai?

Ye toh yamama ka badshah Sumamah bin Ussaal hai, Ba khuda agar tum ney ise koi takleef di toh uski qaum hamari iqtesadi imdaad band ker degi aur ham bhuke mar jaynege.

Qaum ney ye sun ker apni talware niyaam main daal li aur hazrat Sumamah رضی اللہ عنہse Mahw-w-Guftugu hue.

Kahney lage Sumamah tujhy kya hua?

Kya tum be deen ho gaye ho? Kya tumne apne Aaba-o-Ajdad ke deen ko chod diya.

Aap ney farmaya:

Main be deen nahi hua, Balkeh main to umdah deen ko ikhtiyaar ker liya hai.

Aur farmaya:

Rabb-e-Kaaba ki qasam! Ab sar Zameen-e-Najad me se us waqt tak tumhare liye gandam ka aik daana bhi nahi aayega jab tak keh tum mere pyaare Muhammad (ﷺ) ki ita’at ikhtiyaar kar na loge.


Hazrat Sumamah bin Ussal رضی اللہ عنہ ne quraish ke samney bilkul usi tarah umra adaa kiya, Jis tarah Rasool Allah ney unhein taleem di thi, Umrah adaa karne ke baad Allah ki raah mein aik janwar qurban kiya aur apney mulk ki taraf rawana ho gaye, Wahan pahuch ker sabse pahle yahi hukum sadir kiya keh quraish ki iqtesaadi imdaad band ker di jaaye, Aur aapki hukum ki tameel kerte hue qaum ney Ahl-e-Makka ki iqtesadi imdaad rok di.

Hazrat Sumamah bin Ussal رضی اللہ عنہ ke is hukum ke baad quraish ka Arsa-e-Hayaat tang honey laga, Mahengayi badh gayi, Bhuk aam ho gayi, Masaib-o-Mushkilat mein din ba din izaafa hone laga, Yahan tak keh unhey is baat ka andesha la haq ho gaya keh woh aur unkey bachhe bhuk se halak ho jaynge, Is nazuk tareen mauqe per unhoney Rasool Allah (ﷺ) ki taraf aik khat mein likha jisme ye tahreer tha.

Hamara to kahyal tha keh aap sila rahemi farmayenge aur dusro ko bhi iski talqeen karngey, Lekin aap ney toh qata rahmi ki aik misaal qaim ker di, Hamare Aaba-o-Ajdaad ko tahe teegh kiya, Aur hamaari aulaad ko bhi bhuk se maar diya.

Apki ittela ke liye arz hai keh Sumamah bin Ussaal ne hamari iqtesadi imdaad band ker di hai, Az Raah-e-Karam usey hukum dain keh woh hamaari iqtesadi imdaad bahaal ker de aur Ashiyaa-e-Khurudni hamain bhejna shuru kar di.

Nabi (ﷺ) ney hazrat Sumamah ko khat lika keh quraish ki iqtesadi imdaad bahal ker dain, To unhone aapke hukum ki tameel kerte hue quraish ki iqtesadi imdaad bahal kar di.


Hazrat Sumamah bin Ussaal رضی اللہ عنہ zindagi bhar apney deen ke wafadaar nabi (ﷺ) ke sath kiye gaye Ahd-o-Paiman ke paband rahe.

Jab Rasool Allah (ﷺ) Allah ta’aala ko pyaare ho gaye aur aam log Deen-e-Ilaahi sey ijtemai aur infiradi taur per munharif honey lage, Idhar Musailimah Kazzab ne nubuwwat ka dawa ker diya aur apni qaum Banu Hanifah ko apne uper imaan laane ki dawat dene laga to hazrat Sumamah رضی اللہ عنہ Musailimah Kazzab ke muqabla me utar aaye aur apni qaum se kaha:

Aye Banu Hanifa! Is andher nagri se bach jao jisme koi noor ki kiran nahi hai, Ba khuda jisney Musailima Kazzab ki dawat tasleem ki ye uski intehayi bad bakshti hogi aur jis ney us ki ko tasleem na kiya woh yaqeenan sa’adat mand hai.

Aur farmaya:

Aye Banu Hanifah! Tum baaz aa jao! Musailimah Kazzab ke shaitaani waar se bacho! Tum is baat ko achhi tarah jaan lo keh hazrat Muhammad (ﷺ) Allah ke sache Rasool hain aur aap ke baad qayamat tak koi nabi na aayega aur na unki nabuwat me Koi sharik hai.

Phr un key samne daraj zeel qurani aayat tilawat farmain:

حٰمۗ    Ǻ۝ۚتَنْزِيْلُ الْكِتٰبِ مِنَ اللّٰهِ الْعَزِيْزِ الْعَلِيْمِ   Ą۝ۙغَافِرِ الذَّنْۢبِ وَقَابِلِ التَّوْبِ شَدِيْدِ الْعِقَابِ ۙ ذِي الطَّوْلِ ۭ لَآ اِلٰهَ اِلَّا هُوَ ۭ اِلَيْهِ الْمَصِيْرُ   Ǽ۝

(Al Momin: 2-3)

 

Tarjuma: Is kitaab ka utaara jaana Khuday-e-Gaalib-o-Daana ki taraf se hai, Jo gunah bakhshne wala aur taub qubool karne wala aur Sahib-e-Karam hai, Us key siwa koi mabood nahi usi ki taraf phr kar jaana hai.

Aur un se ye dariyaft kiya bhala ye to batao keh Allah ta’aala ke is pakizah kalam ke muqable me Musailimah Kazzab ki is fizul ibarat ki kya haisiyat hai.

 

یا صفدع نقی ما تنقین                      لا الشراب تمنعین ولا الماء تکدرین

 

“Aye tarraane wale mendak! Kis qadar tu tarrata hai, Na to kisi ko peene se rokta hai aur na hi paani ko gadla kerta hai۔

Us key baad Sumamah bin Ussal رضی اللہ عنہ ne apni qaum ke un logo ko jama kiya aur jo islam per mazbuti se qayam the aur murtaddeen ke khilaaf Jidd-o-Jahed aur Roo-e-Zameen per Ailaay-e-Kalimat ul Allah ke liye maidan me utar aaye۔

Allah Subhan-e-Taala Sumamah bin Ussaal رضی اللہ عنہ ko islam aur mussalmano ki jaanib se Jazay-e-Khayer ataa farmaye aur jannat me unhe woh Ikraam-e-Aizaaz naseeb ho jiska waada Ahl-e-Taqwa se kiya gaya hai۔


Hazrat Sumamah bin Ussal رضی اللہ عنہ ke mufassal Halat-e-Zangi janny ky liy dard zial kitabun ka mutala kijiy:

 

1: Al Isaabah Fi tamyeez-e-Al Sahabaah Ibn-Hajar                           620

2: Al Istiaab Fi Asma-e-Al Ashaab                                                        1/305

3: Seerat Ibn-e-Hisham

4: Al Aalam Lil Zarkali                                                                                              2/86

 

REFERENCE:
Book: Hayat-e-Sahaba kay darakh shah pahelo.
By: Dr. Abdur Rahman Rafat Al- Pasha.
Part 6 Seerat E Sahaba || Arshad Basheer Madani

حضرت ثمامہ بن اثال رضی اللہ عنہ

2 ہجری میں رسول اکرمﷺ نے دعوت الی اللہ کا دائرہ وسیع کرنے کا عزم فرمایا، تو عرب و عجم کے بادشاہوں کی طرف آٹھ خطوط لکھے اور انہیں اسلام قبول کرنے کی دعوت دی۔
جن سربراہوں کو خطوط لکھے ان میں ثمامہ بن اثال رضی اللہ عنہ کا نام بھی آتا ہے۔

بلا شبہ ثمامہ بن اثال رضی اللہ عنہ کا شمار زمانۂ جاہلیت کے بارعب عرب بادشاہوں میں ہوتا ہے اور یہ قبیلہ بنو حنیفہ کے قابل رشک سردار تھے اور یمامہ کے ایسے ہر دلعزیز و بارعب سربراہ تھے کہ جس کی کبھی بھی حکم عدولی نہ ہوتی تھی۔

زمانہ جاہلیت میں ثمامہ رضی اللہ عنہ کو جب نبی اکرمﷺ کا خط ملا تو اس نے بڑی حقارت سے دیکھا اس کی سطوت و نخوت نے اسے گھناؤنا جرم کرنے پر آمادہ کیا۔حق بات سننے کے لئے اس کے کان بہرے ہو گئے۔ پھر اس پر یہ جنون طاری ہوا کہ رسول اللہﷺ کو قتل کردے اور آپ کا مشن کو ناکام بنا دے، لیکن وہ اپنے اس منصوبے کو پایہ تکمیل تک پہنچنے کے لئے مناسب موقعہ کی تلاش میں رہا۔ ایک دفعہ اسے موقعہ ملا، وہ ڈبے پاؤں حضور اکرمﷺ پر پیچھے سے وار کرنے ہی والا تھا، لیکن اس کے چچا نے اس کا ہاتھ روک دیا۔ اس طرح آپ اللہ تعالٰی کے فضل و کرم سے دشمن کے شر سے محفوظ رہے۔

ثمامہ نے رسول اکرمﷺ سے تو اپنا ہاتھ روک لیا، لیکن آپ کے صحابہ کرام رضی اللہ عنہ کو نقصان پہنچانے کے لئے کسی مناسب موقع کی تلاش میں رہا، ایک دفعہ ایسے ہوا کہ بہت سے صحابہ کرام رضی اللہ عنہ کا محاصرہ کر کے انہیں بے دریغ قتل کردیا، یہ اندوہناک خبر سن کر نبی علیہ السلام نے عام اعلان فرمایا دیا کی ثمامہ جہاں کہی ملے اسے قتل کر دیا جائے۔

اس دلخراش واقعہ کو گزرے ابھی چند دن ہی ہوئے تھے کہ ثمامہ بن اثال کے دل میں آیا کہ بیت اللہ کی زیارت کی جائے اس لئے وہ یمامہ سے سوئے مکہ معظمہ روانہ ہوا، اس کی دلی تمنا تھی کی طواف کعبہ کرے اور بیت اللہ میں رکھے گئے بتوں کے نام پر جانور زبح کرے۔


جناب ثمامہ مدینہ منورہ کے قریب ابھی راستہ ہی میں تھے کہ ان کے ساتھ اچانک ایک ایسا حادثہ پیش آیا، جو ان کے وہم گمان میں بھی نہ تھا ہوا یہ کہ رسول اللہﷺ کا ترتیب دیا ہوا مجاہدین اسلام کا ایک گروپ مدینہ منورہ کی نگرانی پر مامور تھا، مبادا کہ کوئی مدینہ منورہ پر رات کے وقت اچانک حملہ نہ کر دے، مجاہدین کا یہ گروپ گشت کر رہا تھا کہ انہوں نے راستے میں جاتے ہوئے جناب ثمامہ رضی اللہ عنہ کو گرفتار کر لیا، لیکن انہیں معلوم نہ تھا کہ یہ کون ہے! وہ انہیں پکڑ کر مدینہ لے آئے اور مسجد نبویﷺ کے ایک ستون کے ساتھ باندھ دیا مجاہدین نے سوچا کہ نبیﷺ قیدی کو دیکھ لیں اور اس کے متعلق جو حکم فرمائیں اس کی تعمیل کی جائے۔

نبی علیہ السلام جب مسجد نبوی میں تشریف لائے، آپ نے دیکھا کہ ثمامہ بن اثال رضی اللہ عنہ مسجد کے ایک ستون کے ساتھ بندھا ہوا ہے، اسے اس حالت میں دیکھ کر آپ نے ارشاد فرمایا:
کیا جانتے ہو کہ تم نے کسے گرفتار کیا؟

سب نے کہا یارسول اللہ! ہمیں تو علم نہیں۔

آپ نے ارشاد فرمایا:
یہ تو ثمامہ بن اثال ہے۔ اب اس کے ساتھ حسن سلوک سے پیش آنا۔

گھر میں جو کھانا ہے، وہ ثمامہ بن اثال کے لئے بھیج دیا جائے۔

پھر آپ نے حکم دیا کہ میری اونٹنی کا دودھ صبح و شام اسے پلا دیا جائے۔

آپ کے حکم کی فورا تعمیل کی گئی، پھر نبیﷺ ثمامہ بن اثال کی طرف متوجہ ہوئے تاکہ اسے اسلام قبول کرنے کی دعوت دیں آپ نے بڑے ہی مشفقانہ انداز میں دریافت کیا:
ثمامہ کیا رائے ہے؟

انہوں نے جواب دیا: بہتر ہے۔ اگر آپ مجھے قتل کر دیں تو یقینا ایک ایسے شخص کو قتل کریں گے جس نے آپ کے صحابہ رضی اللہ عنہ کا خون بہایا، اگر آپ معاف فر مادیں تو ای قدر دان پر مہربانی ہو گی اور اگر مال چاہیے تو، جس قدر فرمائیں مال آپ کی خدمت میں پیش کر دیا جائے گا۔

رسول اللہﷺ تشریف لے گئے اور انہیں دو دن تک اسی حالت میں رہنے دیا، لیکن کھانا پانی اور دودھ باقاعدگی سے انہیں ملتا رہا۔

پھر آپ نے دریافت فرمایا:
ثمامہ رضی اللہ عنہ کیا رائے ہے؟

انہوں نے کہا:
بات تو وہی ہے جو میں پہلے عرض کر چکا ہوں۔

اگر آپ معاف فرمادیں تو ایک قدر دان پر مہربانی کریں گے۔ اگر آپ مجھے قتل کر دیں تو ایک ایسے شخص کو قتل کریں گے جس نے آپ کے ساتھیوں کا خون بہایا ہے، اور اگر مال چاہیے تو آپ کی منشاء کے مطابق مال آپ کی خدمت میں پیش کر دیا جائے گا۔

رسول اللہﷺ نے اب بھی اسے اسی حالت میں رہنے دیا اور تیسرے دن تشریف لائے اور دریافت فرمایا:
ثمامہ رضی اللہ عنہ اب تمہاری کیا رائے ہے؟

انہوں نے کہا: میری رائے تو وہی ہے جو میں پہلے عرض کر چکا ہوں۔

اگر آپ معاف فرما دیں تو ایک قدردان پر مہربانی کریں گے اور اگر آپ قتل کریں تو ایک ایسے شخص کو قتل کریں گے جس کی گردن پر خون ہے اور اگر مال چاہیے تو آپ کی منشاء کے مطابق مال دیا جائے گا۔

رسول اللہﷺ نے صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کو حکم دیا کہ اسے آزاد کردو۔

جناب ثمامہ آزاد ہونے کے بعد مسجد نبوی سے نکل کر ایک طرف چل دئیے مدینہ منورہ کی ایک جانب بقیع کے نزدیک ایک نخلستان تھا۔ وہاں ایک مقام پر پانی بھی جمع تھا۔ اپنی اونٹنی وہاں بٹھا کر خوب اچھی طرح غسل کیا اور واپس مسجد نبوی میں آکر سب لوگوں کے سامنے بآواز بلند کہا:
أَشْهَدُ أَنْ لا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ وَأَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّدًا عَبْدُهُ وَرَسُوْلُهُ۔
ترجمہ:” میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ تعالٰی کے سوا کوئی معبود حقیقی نہیں اور گواہی دیتا ہوں کہ محمدﷺ اس کے بندے اور رسول ہیں۔”

بعدازاں محبت بھرے انداز میں یوں گویا ہوئے میرے پیارے محمدﷺ اللہ کی قسم! اسلام قبول کرنے سے پہلے روئے زمین پر مجھے آپ کے چہرے سے زیادہ کوئی چہرہ برا نہ لگتا تھا، لیکن آج میرے لئے کائنات میں تمام چہروں سے محبوب ترین چہرہ آپ ہی کا ہے۔

اللہ کی قسم! آج سے پہلے آپ کا یہ شہر دنیا کے تمام شہروں سے زیادہ برا معلوم ہوتا تھا اور آج یہ مجھے تمام شہروں سے زیادہ محبوب دکھائی دیتا ہے۔

پھر اس کے بعد درد بھرے لہجے میں عرض کی:
یارسول اللہﷺ مجھے انتہائی افسوس ہے کہ میں نے آپ کے صحابہ رضی اللہ عنہم کا بے دریغ خون بہایا ہے، بھلا میرے اس جرم کا مداوا کیسے ہوگا۔

یہ سن کر نبیﷺ نے ارشاد فرمایا:
ثمامہ رضی اللہ عنہ آپ گھبرائیے نہیں اسلام پہلے سب گناہوں کو مٹا دیتا ہے اور آپ نے اس خیر و برکت کی بشارت دی جو اللہ سبحانہ و تعالٰی نے اسلام قبول کرنے کی بدولت اس کے نصیب میں لکھ دی۔

یہ سن کر جناب ثمامہ رضی اللہ عنہ کا چہرہ خوشی سے تمتما اٹھا اور یوں کہنے لگے۔

اللہ کی قسم! میں نے اپنے زمانۂ جاہلیت میں جس قدر مسلمانوں کو قتل کیا ہے، اس سے دوگنا زیادہ مشرکین کو تہہ تیغ کروں گا۔ اب میری جان، میری تلوار اور جو کچھ بھی میرے پاس ہے سب کچھ آپ کی اور آپ کے دین کی خدمت کے لئے وقف ہے۔

پھر عرض کی:
یا رسول اللہ مجھے اجازت ہو تو میں عمرہ ادا کر آؤں.
نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا:
اور میرا ضرور ادا کریں لیکن اسلامی تعلیمات کی روشنی میں! اور اپ نے عمرہ ادا کرنے کا طریقہ بھی سمجھا دیا۔

حضرت ثمامہ رضی اللہ عنہ اجازت ملنے کے بعد عمرہ ادا کرنے کے لیے روانہ ہو گئے۔مکہ معظمہ پہنچ گئے آپ نی باواز بلند یہ کلمات کہنے شروع کر دیے

لبیک اللہم لبیک۔لبیک لا شریک لک لبیک۔ان الحمد ملک و النعمة لك والملك۔ لا شريك لك۔

حاضر ہوں الہی’ میں حاضر ہوں حاضر ہوں’ تیرا کوئی شریک نہیں۔میں حاضر ہوں سب تعریف ہے اور نعمتی تیری ہے اور حکومت بھی تیری تیرا کوئ شریک نہیں۔

حضرت سمامہ رضی اللہ عنہ وہ پہلے مسلمان ہیں جو مکہ معظمہ میں بآواز بلند تلبیہ کہتے ہوئے داخل ہوئے۔

قریش نے اونچی اواز میں جب یہ کلمات سنے تو ان کے غصے کی کوئی انتہا نہ رہی سب لوگ تلواریں ہاتھوں میں لیے گھروں سے باہر نکل ائے تاکہ اس شخص کو گرفتار کر سکیں جس نے مکہ میں ا کر ان کے عقائد کے خلاف ببانک دہل کلمات کہنے کی جرات کی جب قوم ثمامہ کے پاس پہنچی تو اپ نے ایک بار پھر اونچی اواز سے تلبیہ کہا کفار اسلحہ تان کر کھڑے ہو گئے قریش میں سے ایک نوجوان نیزہ لے کر اگے بڑھا تھا کہ اپ پر حملہ اور ہو لیکن دوسروں نے اس کے ہاتھ پکڑ لیا اور کہا:
ارلے ‘ تم جانتے نہیں ہو ‘ یہ کون ہے؟
یہ تو یماما کا بادشاہ ثمامہ بن اثال ہے بخدا اگر تم نے اسے کوئی تکلیف دی تو میں اس کی قوم ہماری اقتصادی امداد بند کر دے گی اور ہم بھوکوں مر جائیں گے۔

قوم نے یہ سن کر اپنی تلواریں نیام میں ڈال لیں اور حضرت ثمامہ رضی اللہ عنہ سے محو گفتگو ہوئے۔

کہنے لگے: ثمامہ رضی اللہ عنہ تجھے کیا ہوا؟

کیا تم بے دین نہیں ہوا، بلکہ میں نے تو عمدہ دین کو اختیار کر لیا ہے۔

اور فرمایا:
رب کعبہ کی قسم! اب سر زمین نجد میں سے اس وقت تک تمہارے لئے گندم کا ایک دانہ بھی نہیں آئے گا جب تک کہ تم میرے پیارے محمدﷺ کی اطاعت اختیار نہ کر لو گے۔


حضرت ثمامہ بن اثال رضی اللہ عنہ نے قریش کے سامنے بالکل اسی طرح عمرہ ادا کیا جس طرح رسول اللہﷺ نے انہیں تعلیم دی تھی۔ عمرہ ادا کرنے کے بعد اللہ کی راہ میں ایک جانور قربان کیا اور اپنے ملک کی طرف روانہ ہو گئے۔ وہاں پہنچ کر سب سے پہلے یہی حکم صادر کیا کہ قریش کی اقتصادی امداد بند کر دی جائے اور آپ کے حکم کی تعمیل کرتے ہوئے قوم نے اہل مکہ کی اقتصادی امداد روک دی۔

حضرت ثمامہ بن اثال رضی اللہ عنہ کے اس حکم کے بعد قریش کا عرصۂ حیات تنگ ہونے لگا۔ مہنگائی بڑھ گئی، بھوک عام ہو گئی۔ مصائب و مشکلات میں دن بدن اضافہ ہونے لگا۔ یہاں تک کی انہیں اس بات کا اندیشہ لاحق ہو گیا کہ وہ اور ان کے بچے بھوک سے ہلاک ہو جائیں گے۔ اس نازک ترین موقع پر انہوں نے رسول اللہﷺ کی طرف ایک خط میں لکھا جس میں یہ تحریر تھا۔

ہمارا خیال تھا کہ آپ صلہ رحمی فرمائیں گے اور دوسروں کو بھی اس کی تلقین کریں گے، لیکن آپ نے تو قطع رحمی کی ایک مثال قائم کردی، ہمارے آباؤ اجداد کو تہہ تیغ کیا اور ہماری اولاد کو بھوک سے ماردیا۔

آپ کی اطلاع کے لئے عرض ہے کہ اثال نے ہماری اقتصادی امداد بند کردی ہے۔ از راہ کرم اسے حکم دیں کہ وہ ہماری اقتصادی امداد بحال کردے اور اشیائے خوردنی ہمیں بھیجنا شروع کر دے۔

نبی علیہ السلام نے حضرت ثمامہ رضی اللہ عنہ کو خط لکھا کہ قریش کی اقتصادی امداد بحال کر دیں، تو انہوں نے آپ کے حکم کی تعمیل کرتے ہوئے قریش کی اقتصادی امداد بحال کردی۔


حضرت ثمامہ بن اثال رضی اللہ عنہ زندگی بھر اپنے دین کی وفادار نبی علیہ السلام کے ساتھ کئے گئے عہد و پیماں کے پابند رہے۔

جب رسول اللہﷺ اللہ تعالٰی کو پیارے ہو گئے اور عام لوگ دین الٰہی سے اجتماعی اور انفرادی طور پر منحرف ہونے لگے، ادھر مسلیمہ کذاب نے نبوت کا دعوٰی کردیا اور اپنی قوم بنو حنیفہ کو اپنے اوپر ایمان لانے کی دعوت دینے لگا تو حضرت ثمامہ رضی اللہ عنہ مسلیمہ کذاب کے مقابلہ میں اتر آئے اور اپنی قوم سے کہا:
اے بنو حنیفہ! اس اندھیر نگری سے بچ جاؤ جس میں کوئی نور کی کرن نہیں ہے۔ بخدا جس نے مسلیمہ کذاب کی دعوت تسلیم کی یہ اس کی انتہائی بد بختی ہو گی اور جس نے اس کی دعوت کو تسلیم نہ کیا وہ یقینا سعادت مند ہے۔

اور فرمایا:
اے بنو حنیفہ، تم باز آجاؤ! مسلیمہ کذاب کے شیطانی واؤ سے بچو! تم اس بات کو اچھی طرح جان لو کہ حضرت محمدﷺ اللہ کے سچے رسول ہیں اور آپ کے بعد قیامت تک کوئی نبی نہیں آئیگا اور نہ ان کی نبوت میں کوئی شریک ہے۔

پھر ان کے سامنے درج زیل قرآنی آیات فرمائیں۔
حمَ تَنْزِيلُ الكِتَابِ مِنَ اللَّهِ الْعَزِيزِ الْعَلِيمِ غَافِرِ الذَّنْبِ وَ قَابِلِ القَوْبِ شَدِيدِ العِقَابِ ذِي الطَّولِ لَا إِلَهَ إِلَّا هُوَ الِيهِ الْمَصِير۔ (المؤمن:3-2)
ترجمہ:” اس کتاب کا اتارا جانا خدائے غالب و دانا کی طرف سے ہے۔ جو گناہ بخشنے والا اور توبہ قبول کرنے والا (اور) سخت عذاب دینے والا (اور) صاحب کرم ہے۔ اس کے سوا کوئی معبود نہیں۔ اسی کی طرف پھر کر جانا ہے۔”

اور ان سے یہ دریافت کیا بھلا یہ تو بتاؤ کہ اللہ تعالٰی کے اس پاکیزہ کلام کے مقابلے میں مسلیمہ کذاب کی اس فضول عبارت کی کیا حیثیت ہے۔
يَا ضِفْدَعُ نَقِيٌّ مَا تُنقِينَ لَا الشَّرَابَ تَمْنِعْينَ وَلَا المَاءَ تُكَذِرِينَ○
ترجمہ: “اے ٹرانے والے مینڈک، کس قدر تو ٹراتا ہے۔ نہ تو کسی کو پینے سے روکتا ہے اور نہ ہی پانی کو گدلا کرتا ہے۔”

اس کے بعد ثمامہ بن اثال رضی اللہ عنہ نے اپنی قوم کے ان لوگوں کو جمع کیا جو اسلام پر مضبوطی سے قائم تھے اور مرتدین کے خلاف جدوجہد اور روئے زمین پر اعلائے کلمتہ اللہ کے لئے میدان میں اتر آئے۔

اللہ سبحانہ و تعالٰی ثمامہ بن اثال رضی اللہ عنہ کو اسلام اور مسلمانوں کی جانب سے جزائے خیر عطا فرمائے اور جنت میں انہیں وہ اکرام و اعزاز نصیب ہو جس کا وعدہ اہل تقوٰی سے کیا گیا ہے۔


ثمامہ بن اثال رضی اللہ عنہ کے مفصل حالات زندگی معلوم کرنے کے لئے درج ذیل کتابوں کا مطالعہ کریں۔

 

1۔ الاصابة في تمييز الصحابة – ابن حجر 104/1
2- الاستيعاب في اسماء الاصحاب 305/1
3۔سیرت ابن هشام
4۔الاعلام للزركلي 86/2

حوالہ جات :

“حياتِ صحابہ کے درخشاں پہلو”

تا لیف: “داکتور عبدالر حمان رافت الباشا”

Table of Contents