Sections
< All Topics
Print

41. Hazrat Khabbab Bin Arat (رضی اللہ عنہ)

Hazrat Khabbab Bin Arat رضی اللہ عنہ

Allah Khabbab par rahem kare, Is ne dili raghbat se islaam qubool kya, Khushi se hijrat ki aur ba-hasiat Mujahid zindagi basar ki.

Farmaan Ali bin Abi Taalib رضی اللہ عنہ.

 

Umm-e-Anmar Khuzaiyyah Makkah mu’azmah main ghulamon ki mandi main gayi, Woh chahti thi keh aik aisa ghulaam khareed laaye jis se woh gharelu khidmaat bhi le aur usay koi kaarobar bhi sikhla day jo us ke liye maali tor par mufeed aur naffa bakhash saabit ho, Woh un ghulamoo ko baghor dekhnay lagi jinhein baichnay ke liye mandi main laaya gaya tha, Us ki Nigah-e-Intikhab aik aisay bachay par padi jo sehat mand tha aur abhi woh Sann-e-Buloghat ko nahi pouncha tha, Sharaafat ke aasaar us ke chehray se numaaya thay usay yeh honehaar bacha pasand aa gaya. Qeemat ada ki aur usay apne saath le kar ghar ki taraf rawaana ho gayi, Raastay main Umm-e- Anmar ne bachay se poocha:

 

Arey ladke! Tera naam kya hai?

Bataya: Khabbab

Us ne poocha:

Tairay baap ka naam?

bataya Arat.

Pucha kahan se aaye ho?

Bataaya Najad se.

Us ne kaha: Phir to tum arabi ho?

Kaha: Haan main arabi aur Qabeela Bano Tameem se talluq rakhta hoon.

Umm-e-Anmar ne poocha: Yahan Makkah main tum ghulamon ke sodaagaron ke haath kaisay chadh gaye? Bataya: Hamaray mohalla main aik arab qabeelay ne lout maar ki. Hamaaray maweshi haank kar le gaye aurton ko girftaar kar liya. Bachon ko bhi apne qabzay main le liya, Un bachon main, Main bhi tha jo haathon haath bikta hua yahan pouncha aur ab main aap ke qabzay main hoon.


Umm-e-Anmar ne is ladke ko Makkah ke aik mashhoor kaarigar ke hawalay kya taakeh woh usay talwaar banaana sikha day. Is ladke ne badi hi jaldi talwaar banaanay main mahaarat haasil kar li. Jab Khabbab aik acha kaarigar ban gaya to Umm-e-Anmar ne us ke liye aik dukaan kiraya par le li aur usay is main kaam kaaj ke liye bitha diya taakeh is fun se maali fawaid haasil kare.


Hazrat Khabbab thoday hi arsay main apne fun main maahir ho gaye. Log un ke haath ki bani hui talwaarain baday shoq se kharidne lagay, Is liye ke yeh khush akhlaaq, Naram khoo, Shereen guftaar honay ke sath sath talwaar bohat mazboot nafees, Aala qisam ki banaatay thay.


Hazrat Khabbab no umri ke bawajood baday zairak, Maamla fahem aur danishwer thay, Jab woh apne kaam se faarigh hotay to aksar jahliat se maamoor Arab muashray ki Haalat-e-Zaar par Ghhor-o-Khoz kya karte jo paaon ke talwon se le kar sar ki chooti tak Sharr-o-Fasaad main ghark ho chuka tha. Arab muashray ki jahaalat gumraahi, Anarki aur Zulm-o-Sitam dekh kar un ka dil dehel jaata, Aur woh is ahsaas se kanp uthte keh main bhi to isi muashray ka aik fard hoon.

Aur aksar kaha karte thay keh is Shab-e-Tareek ki bil akhir saher bhi hogi aur un ki yeh dili tamanna thi keh mujhe umar daraaz milay taakeh main apni aankhon se andheray ka injaam aur subah noor ka dil aawaiz tulu dekh sakoo.


Hazrat Khabbab ko ziyada der intzaar nah karna pada ke aik roz inhen dilruba khabar mili keh bano Hashim ke aik nojawaan Hazrat Muhammad ﷺ ne nubuwat ka daawa kardiya hai aur woh apne Deen-e-Mubarak se noorani kalimaat ke zariye insaani dilon ko musakkhar kar rahay hain yeh khabar suntay hi un ki Khidmat-e-Aqdas main haazir hue, Dilpazair naseehat amooz noorani kalimaat suntay hi yun maloom hua keh aap ke zehen mubarak se motiyon ki ladiyan ya misri ki daliyan gir rahi hain, Aap ki baaton ne un ke dil par aisa assar kya keh foran apna haath bashaya, Aap ke haath par bai’t ki aur zabaan se pukaar utthay:

 

اشھد ان لا الہ الا اللہ واشهد ان محمدا عبده ورسوله

 

“Main gawaahi deta hoon keh Allah ke siwa koi Ma’bood-e-Haqeeqi nahi aur Hazrat Muhammad ﷺ Allah ke bande aur us ke rasool hain.”

Is roye zameen par basnay waalay insanon main se chhatay number par musalman honay ka aizaz haasil kya.


Hazrat Khabbab ne apne islaam laane ko kisi se chupaya nahi, Yeh khabar un ki malika Umm-e-Anmar  ko jab mili to woh ghusse se bhadak uthi, Apne bhai SIba bin Abdul Uzza ko hamrah liya aur yeh dono bano khuzza ke nojawaanon se milay. Unhen Soorat-e-Haal se aagah kiya aur Hazrat Khabbab رضی اللہ عنہ ke musalman honay ki khabar di aur un ke khilaaf nojawanon ko bhadkaya. Phir yeh sab mil kar Hazrat Khabbab رضی اللہ عنہ ke paas gaye, Kya dekhte hain keh woh apne kaam main munhamik hai. Umm-e- Anmar ka bhai Sibaa  aagay badha aur kaha:

 

Aey  Khabbab! Hamain aik aisi khabar mili hai keh hamaaray dil usay sahih nahi maantay.

Hazrat Khabbab ne poocha: Konsi khabar?

Siba ne kaha: Yeh khabar mashhoor ho chuki hai keh tum be deen ho gaye ho aur tum ne bano Hashim ke ladke ki pairwi ikhtiyar kar li hai.

Hazrat Khabbab رضی اللہ عنہ ne yeh baat sun kar baday hi naram lehjay main irshaad farmaya: Main be deen nahi hua main to Allah wahdaho laa shareek par imaan laaya hoon. Main ne tumhaaray buton ko pheink diya hai aur main ne yeh iqraar kar liya hai Hazrat Muhammad ﷺ Allah ke bande aur us ke Rasool hain. Hazrat Khabbab رضی اللہ عنہ ke mun se yeh kalimaat niklay hi thay keh sab aap par toot pade Aur ghonson, Jooton, Lohay ki salaakhon aur hathodhon se aap ko itna mara ke aap behosh ho kar gir pade aur aap ke jism ke mukhtalif hisson se khoon ke fawaray phoot niklay.


Hazrat Khabbab aur Umm-e-Anmar ke mabain paish aanay waalay is waqiye ki khabar Makkah main jungle ki aag ki tarhan phail gayi.

Log Hazrat Khabbab رضی اللہ عنہ ki jurrat se Warta-e-Herat main pad gaye kyunk unhon ne is se pehlay yeh suna hi nah tha keh kisi ne Hazrat Muhammad ﷺ ki itebaa ikhtiyar ki ho aur phir logon ke saamnay dileri ka muzaahara karte hue poori wazahat se apne islaam laane ka ailaan kya ho, Quraish ke boodhay Hazrat Khabbab رضی اللہ عنہ ke is jurrat mandana iqdaam par Angusht-e-Badndan reh gaye. Unhon ne dil main socha kya aik lohaar se yeh tawaqa rakhi ja sakti hai keh woh ailania hamaaray khudaaon ko bura bhala kahe aur hamaaray Aba-o-Ajdaad ke deen ko Hadaf-e-Tanqeed banaye.

Unhen is baat ka yaqeen ho gaya ke aaj Khabbab ne jis Dileri-o-Shujaiat ka muzahira kiya hai, Aagay chal kar is main mazeed izafah ho ga, Quraish ka yeh andesha durust saabit hua.

Hazrat Khabbab رضی اللہ عنہ ki Jurrat-e-Mominaana ne beshtar Sahaba رضی اللہ عنہ ko is baat par barangikhta kya keh woh bhi isi tarhan apne islaam laane ka barmila ailaan karen, Lihaza woh Yakk-e-Baad deegray Kalima-e-Haq ka Babang-e-Dahal ailaan karne lagay.


Aik roz Quraish sardar Kaa’ba ke nazdeek ikathay hue un main Abu Sufyan bin Harb, Waleed bin Mughira, Abu Jahel bin Hisham ke ilawa aur bhi sarkardah sardaar mojood thay, Woh is mauzo par Tabadlah-e-Khayaal karne lagay keh Hazrat Muhammad ﷺ ki dawat din badan aur lhzh bah lhzh phelti jarahi hai. Is Soorat-e-Haal ke Paish-e-Nazar unhon ne pukhta iradah kya keh bemari ko shiddat ikhtiyar karne se pehlay hi khatam kar diya jaye aur unhon ne yeh tay kya keh har qabeela apne us fard ko aisi ibratnaak saza day jis ne Hazrat Muhammad ﷺ ki ittibaa ikhtiyar ki hai jis se yaa to woh apne aabai deen ki taraf lout aaye ya phir woh mar jaye.


Is faislay ki ro se Sibaa bin Abdul Uzza aur us ke qabeelay ke hissay Hazrat Khabbab رضی اللہ عنہaaye. Jab dopehar ke waqt garmi Nuqta-e-Urooj par hoti to woh Hazrat Khabbab ko Makkah ke qareeb chatail pathirelay maidan main le jaatay un ke kapray utaar dete lohay ki dirha pehna dete. Peenay ka paani band kar dete. Jab piyaas aur takleef se woh nidhaal ho jaatay to yeh qareeb aatay aur puchhte ke ab Hazrat Muhammad ﷺ ke mutaliq tumhari kya raye hai?

 

Aap farmatay:

Woh Allah ke bande aur us ke Rasool hain, Hamaray paas Hidaayat-o-Sadaqat ka deen le kar aaye taakeh hamain taarikeon se noor ki taraf nikaal layein. Yeh sun kar woh bhipar jaatay aur be tahasha pitaayi shuru kar dete maar maar kar jab thak jaatay to woh puchhte Laat aur Uzza ke mutaliq tumhari kya raaye hai.

Aap farmaatay: Yeh dono gungay behray but hain nah kisi ko naffa day satke hain aur nah hi nuqsaan.

Yeh sun kar woh aapay se bahar ho jaatay. Garam pathar utha kar laatay aur aap ki peeth ke sath lagaye rakhtay, Patharon main is qader tamaazat hoti ke un ki garmi se Hazrat Khabbab ke kaandhon se charbi aur khoon behnay lagta.


Umm-e-Anmar sakht geeri aur pathar dili main apne bhai se ratti barabar kam nah thi, Is ne aik roz Hazrat Muhammad ﷺ ko apni dukaan par khaday Hazrat Khabbab رضی اللہ عنہse baatein karte dekh liya to ghusse se bhar gayi. Us ke baad us ne apna yeh ma’mool bna liya keh har doosray teesray roz aati. Lohay ki Bhatti se garam salaakh nikalti aur us se Hazrat Khabbab ke sar ko daagh deti jis se aap behosh ho jaatay aur aap ki zabaan se Umm-e-Anmar aur us ke bhai ke baray main bad dua nikalti.


Jab Rasool-e-Akram ﷺ ne Sahaba Karam رضی اللہ عنہم  ko Madinah-e-Munawara ki taraf hijrat ki ijazat day di to Hazrat Khabbab bhi hijrat ke liye tiyar ho gaye. Lekin woh us waqt tak Makkah ko chodna nahi chahtay thay jab tak Allah Subhanah-o-Wa Ta’alaa Umm-e-Anmar ke khilaaf ki gayi dua ko qubool nah farmaen.

Chand roz ke baad Umm-e-Anmar ke sar main aisa dard utha keh is jaisa dard pehlay sunnay main nah aaya. Woh shiddat se is tarhan karrahti Aur aawaz nikaalti jis tarhan koi kutta bhonkta hai us ke betay kaamil hakeem ki talaash main har jagah puhanche, Hukama ne is ka yeh ilaaj tajweez kia keh is keh sar ko lohay ki garam salakh se daagha jaye, Is ke ilawa is ka koi aur ilaaj nahi hai. Is tarhan us ke sar ko lohay ki garam salaakh se daagha jane laga. Jab garam salaakh sar ko lagti to us ki takleef da tamaazat se sar ke dard ko kuch der ke liye bhula deti.


Hazrat Khabbab رضی اللہ عنہ Madinah ki ziyafat main aisi Raahat-o-Aaraam ki zindagi basar karne lagay jis se woh aik taweel muddat se mahroom thay. Nabi Akram ﷺ ka qurb un ki aankhon ki thandak ka baa’is bana.

Hazrat Khabbab رضی اللہ عنہ, Nabi Akram ﷺ ke hamrah Badar main shareek hue. Aur Aap ﷺ ke jhanday talay ladaai ke jawaahiir dikhlaaye aur isi tarhan Ghazwah-e-Uhad main shareek hue, Maidan-e-Uhad main jab unhon ne Umm-e-Anmar ke bhai Sibaa bin Abdul Uzza ki laash dekhi to bohat khush hue aankhon ki thandak naseeb hui, Sibaa ko Sher-e-Khuda Hazrat Hamza رضی اللہ عنہne mout ke ghaat utaara tha.

Allah Subhanaho Wa Ta’alaa ne Hazrat Khabbab رضی اللہ عنہ ko taweel umar ataa ki, Yahan tak keh unhon ne khulfay-e-Arbah ka door dekha aur har door main inhen aik Jaleel-ul-Qadar sahabi ki hesiyat haasil rahi.


Aik roz Hazrat Umar bin Khattaab رضی اللہ عنہ ke paas tashreef laaye. Woh is waqt Masand-e-Khlaafat par jalwa Afroz thay, To Farooq-e-Azam رضی اللہ عنہ ne Hazrat Khabbab  ko apni masnad par bithaya aur Farmaaya: Tamaam sahaba main aap ya hazrat Bilal رضی اللہ عنہ is ke haqdaar hain keh is masnad par bithaaya jaaye. Phir aap ne mushrikeen ke haathon pounchnay waali takaleef ki roydad sunnay ka mutalba kya to aap jawab dainay main hichkichaay.

Jab Hazrat Umar رضی اللہ عنہ ne israar kya to aap ne peeth se chaadar surkaa di, To Hazrat Umar رضی اللہ عنہ jism par zakhamon ke nishanaat dekh kar Angushte-e-Badndan reh gaye aur poocha: Jism main yeh gehray zakham kaisay aaye?

Hazrat Khabbab رضی اللہ عنہ farmaanay lagay:

Mushrikeen lohay ki chaadar garam karte jab woh angaara ban jati to mere kapray utaar kar mujhe peeth ke bal us par ghasettay jis se mere badan ka gosht peeth ki hadion se allag ho jaata. Aag woh khoon aur paani bujhaata jo mere badan se nikalta.


Hazrat Khabbab رضی اللہ عنہ apni zindagi ke aakhri dour main bohat maaldaar ho gaye aur itnay sonay chaandi ke maalik ban gaye jis ka inhen Wahem-o-Gumaan hi nah tha, Lekin unhon ne apna maal Raah-e-Khuda main kharch karne ka aik aisa anokha tareeqa ikhtiyar kya jo pehlay kisi ne bhi ikhtiyar nahi kya tha, Yeh Dirham-o-Dinaar ghar main aik aisi jagah par rakh dete jis ka zaroorat mandon, Fuqraa-o-Masakeen ko bhi pata tha. Nah to us par kisi ko nigraan muqarrar kya aur nah tala lagaaya, Zaroorat mand un ke ghar aatay aur pouchay aur ijazat talab kiye baghair apni zaroorat ke mutaabiq wahan se maal le jatay. Us ke bawajood inhen yeh andesha tha keh is maal ke mutaliq qayaamat ke roz mera hisaab liya jaaye ga aur mabada ke mujhe is ki wajah se azaab main mubtala kar diya jaye ga.


Aap ke hum nasheen sahaba رضی اللہ عنہم ne yeh bataya:

Hum Hazrat Khabbab رضی اللہ عنہ ke paas us waqt gaye jab aap Marz-ul-Maut main mubtila thay, Hamain dekh kar aap ne irshaad farmaya:

Is ghar main mere paas assi hazaar darham hain, Allah ki qisam! Main ne kabhi un ko kahin chupaya nahi aur nah kisi saail ko main ne mahroom wapis lotaaya. Yeh baat kahi aur zaaro qitaar rona shara kar diya.

Ham ne poocha:

Aap rotay kyun hain?

Farmaaya:

Main is liye rota hoon keh mere bohat se saathi is duniya se is haalat main coach kar gaye keh unhen dunyaawi Maal-o-Mataa se kuch bhi nah mila mujhe yeh maal mil gaya mujhe andesha hai keh yeh maal kahin mere Aamaal-e-Saliha ka badla nah ho aur aakhirat main mahroom reh jaoon.

Jab hazrat Khabbab رضی اللہ عنہ apne Allah ko piyare ho gaye, To Ameer ul Momineen Hazrat Ali bin Abi Taalib رضی اللہ عنہ qabar ke paas khaday ho kar farmanay lagay:

Allah Khabbab رضی اللہ عنہ par rahem farmaay.

Us ne dili raghbat se islaam qubool kya, Khush dili se hijrat ki aur mujahid ke roop main zindagi basar ki. Allah Subhana Wa Ta’alaa neki karne waalay ka ajar hargiz zaaya nahi kere gaa.


Hazrat Khabbab رضی اللہ عنہkay mufassal Halaat-e-Zindagi ma’loom karnay kay liye darjzail kitaabon ka mutaall’a karain:

 

1: Al Isabaah (Mutarjim)                                                                   2210

2: Usd ul Ghabah                                                                                    2/98-100

3: Al Istiaab                                                                                                1/423

4: Tahzeeb ul Tahzeeb                                                                       3/133

 

REFERENCE:
Book: Hayat-e-Sahaba kay darakh shah pahelo.
By: Dr. Abdur Rahman Rafat Al- Pasha.

آ

حضرت خباب بن ارت رضی اللہ عن

 

اللہ خباب پر رحم کرے، اس نے دلی رغبت سے اسلام قبول کیا، خوشی سے ہجرت کی اور بحیثیت مجاہد زندگی بسر کی۔ (فرمان علی بن ابی طالب رضی اللہ عنہ)

 

ام انمار خزاعیہ مکہ معظمہ میں غلاموں کی منڈی میں گئی وہ چاہتی تھی کہ ایک ایسا غلام خرید لائے جس سے وہ گھریلو خدمت بھی لے اور اسے کوئی کاروبار بھی سکھلا دے جو اس کے لئے مالی طور پر مفید اور نفع بخش ثابت ہو، وہ ان غلاموں کو بغور دیکھنے لگی جنہیں بیچنے کے لئے منڈی میں لایا گیا تھا، اس کی نگاہ انتخاب ایک ایسے بچے پر پڑی جو صحت مند تھا اور ابھی وہ سن بلوغت کو نہیں پہنچا تھا، شرافت کے آثار اس کے چہرے سے نمایاں تھے، اسے یہ ہو نہار بچہ پسند آ گیا۔ قیمت ادا کی اور اسے اپنے ساتھ لے کر گھر کی طرف روانہ ہو گئی، راستے میں ام انمار نے بچے سے پوچھا:

ارے لڑکے! تیرا نام کیا ہے؟
بتایا: خباب
اس نے پوچھا: تیرے باپ کا نام؟
بتایا: ارت
پوچھا: کہاں سے آئے ہو ؟
بتایا: نجد سے
اس نے کہا: پھر تو تم عربی ہو؟
کہا: ہاں میں عربی اور قبیلہ بنو تمیم سے تعلق رکھتا ہوں۔

ام نمارہ نے پوچھا: یہاں مکہ میں تم غلاموں کے سوداگروں کے ہاتھ کیسے چڑھ گئے؟ بتایا: ہمارے محلہ میں ایک عرب قبیلے نے لوٹ مار کی۔ ہمارے مویشی ہانک کر لے گئے عورتوں کو گرفتار کر لیا۔ بچوں کو بھی اپنے قبضے میں لے لیا’ ان بچوں میں، میں بھی تھا جو ہاتھوں ہاتھ بکتا ہوا یہاں پہنچا اور اب میں آپ کے قبضے میں ہوں۔


ام انمار نے اس لڑکے کو مکہ کے ایک مشہور کاریگر کے حوالے کیا تاکہ وہ اسے تلوار بنانا سکھا دے۔ اس لڑکے نے بڑی ہی جلدی تلوار بنانے میں مہارت حاصل کر لی۔ جب خباب ایک اچھا کاریگر بن گیا تو ام انمار نے اس کے لئے ایک دکان کرایہ پر لے لی اور اسے اس میں کام کاج کے لئے بٹھا دیا تاکہ اس فن سے مالی فوائد حاصل کرے۔


حضرت خباب تھوڑے ہی عرصے میں اپنے فن میں ماہر ہو گئے۔ لوگ ان کے ہاتھ کی بنی ہوئی تلواریں بڑے شوق سے خریدنے لگے، اس لئے کہ یہ خوش اخلاق، نرم خو, شیریں گفتار ہونے کے ساتھ ساتھ تلوار بہت مضبوط، نفیس، اعلیٰ قسم کی بناتے تھے۔


حضرت خباب نو عمری کے باوجود بڑے زیرک’ معاملہ فہم اور دانشور تھے، جب وہ اپنے کام سے فارغ ہوتے تو اکثر جاہلیت سے معمور عرب معاشرے کی حالت زار پر غور و خوض کیا کرتے جو پاؤں کے تلووں سے لے کر سر کی چوٹی تک شر و فساد میں غرق ہو چکا تھا۔ عرب معاشرے کی جہالت، گمراہی، انار کی اور ظلم و ستم دیکھ کر ان کا دل دہل جاتا اور وہ اس احساس سے کانپ اٹھتے کہ میں بھی تو اسی معاشرے کا ایک فرد ہوں۔

اور اکثر کہا کرتے تھے کہ اس شب تاریک کی بالآخر سحر بھی ہو گی اور ان کی یہ دلی تمنا تھی کہ مجھے عمر دراز ملے تاکہ میں اپنی آنکھوں سے اندھیرے کا انجام اور صبح نور کا دلآویز طلوع دیکھ سکوں۔


حضرت خباب رضی اللہ عنہ کو زیادہ دیر انتظار نہ کرنا پڑا کہ ایک روز انہیں دلربا خبر ملی کہ بنو ہاشم کے ایک نوجوان حضرت محمدﷺ نے نبوت کا دعویٰ کر دیا ہے اور وہ اپنے دین مبارک سے نورانی کلمات کے ذریعے انسانی دلوں کو مسخر کر رہے ہیں یہ خبر سنتے ہی ان کی خدمت اقدس میں حاضر ہوئے، دلپذیر نصیحت آموز نورانی کلمات سنتے ہی یوں معلوم ہوا کہ آپ کے ذہن مبارک سے موتیوں کی لڑیاں یا مصری کی ڈلیاں گر رہی ہیں، آپ کی باتوں نے ان کے دل پر ایسا اثر کیا کہ فوراً اپنا ہاتھ بڑھایا، آپ کے ہاتھ پر بیعت کی اور زبان سے پکار اٹھے۔

*اشهد ان لااله الا الله و اشهد ان محمداً عبده ورسوله*

“میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی معبود حقیقی نہیں اور حضرت محمدﷺ اللہ کے بندے اور اس کے رسول ہیں۔”

اس روئے زمین پر بسنے والے انسانوں میں سے چھٹے نمبر پر مسلمان ہونے کا اعزاز حاصل کیا۔


حضرت خباب نے اپنے اسلام لانے کو کسی سے چھپایا نہیں، یہ خبر ان کی مالکہ ام انمار کو جب ملی تو وہ غصے سے بھڑک اٹھی، اپنے بھائی سباع بن عبد العزیٰ کو ہمراہ لیا اور یہ دونوں بنو خزاعہ کے نوجوانوں سے ملے۔ انہیں صورت حال سے آگاہ کیا اور حضرت خباب میں رضی اللہ عنہ کے مسلمان ہونے کی خبر دی اور ان کے خلاف نوجوانوں کو بھڑکایا۔ پھر یہ سب مل کر حضرت خباب رضی اللہ عنہ کے پاس گئے’ کیا دیکھتے ہیں کہ وہ اپنے کام میں منہمک ہے۔ ام انمار کا بھائی سباع آگے بڑھا اور کہا:

اے خباب! ہمیں ایک ایسی خبر ملی ہے کہ ہمارے دل اسے صحیح نہیں مانتے۔
حضرت خباب نے پوچھا: کونسی خبر؟
سباع نے کہا: یہ خبر مشہور ہو چکی ہے کہ تم بے دین ہو گئے ہو اور تم نے بنو ہاشم کے لڑکے کی پیروی اختیار کرتی ہے۔

حضرت خباب رضی اللہ عنہ نے یہ بات سن کر بڑے ہی نرم لہجے میں ارشاد فرمایا: میں بے دین نہیں ہوا میں تو اللہ وحدہ لا شریک پر ایمان لایا ہوں۔ میں نے تمہارے بتوں کو پھینک دیا ہے اور میں نے یہ اقرار کر لیا ہے حضرت محمدﷺ اللہ کے بندے اور اس کے رسول ہیں۔ حضرت خباب رضی اللہ عنہ کے منہ سے یہ کلمات نکلے ہی تھے کہ سب آپ پر ٹوٹ پڑے اور گھونسوں، جوتوں، لوہے کی سلاخوں اور ہتھوڑوں سے آپ کو اتنا مارا کہ آپ بے ہوش ہو کر گر پڑے اور آپ کے جسم کے مختلف حصوں سے خون کے فوارے پھوٹ نکلے۔


حضرت خباب اور ام نمار کے مابین پیش آنے والے اس واقعے کی خبر مکہ میں جنگل کی آگ کی طرح پھیل گئی۔

لوگ حضرت خباب رضی اللہ عنہ کی جرات سے ورطہ حیرت میں پڑ گئے’ کیونکہ انہوں نے اس سے پہلے یہ سنا ہی نہ تھا کہ کسی نے حضرت محمدﷺ کی اتباع اختیار کی ہو اور پھر لوگوں کے سامنے دلیری کا مظاہرہ کرتے ہوئے پوری وضاحت سے اپنے اسلام لانے کا اعلان کیا ہو، قریش کے بوڑھے حضرت خباب رضی اللہ عنہ کے اس جرات مندانہ اقدام پر انگشت بدنداں رہ گئے۔ انہوں نے دل میں سوچا کیا ایک لوہار سے یہ توقع رکھی جا سکتی ہے کہ وہ اعلانیہ ہمارے خداؤں کو برا بھلا کہے اور ہمارے آباؤ اجداد کے دین کو ہدف تنقید بنائے۔

انہیں اس بات کا یقین ہو گیا کہ آج خباب نے جس دلیری و شجاعت کا مظاہرہ کیا ہے، آگے چل کر اس میں مزید اضافہ ہو گا، قریش کا یہ اندیشہ درست ثابت ہوا۔

حضرت خباب رضی اللہ عنہ کی جرات مومنانہ نے بیشتر صحابہ رضی اللہ عنہم کو اس بات پر برانگیختہ کیا کہ وہ بھی اسی طرح اپنے اسلام لانے کا برملا اعلان کریں، لہذا وہ یکے بعد دیگرے کلمہ حق کا ببانگ دہل اعلان کرنے لگے۔


ایک روز قریش سردار کعبہ کے نزدیک اکٹھے ہوئے’ ان میں ابو سفیان بن حرب، ولید بن مغیره اور ابو جہل بن ہشام کے علاوہ اور بھی سرکردہ سردار موجود تھے وہ اس موضوع پر تبادلہ خیال کرنے لگے کہ حضرت محمد ﷺ کی دعوت دن بدن اور لحظہ بہ لحظہ پھیلتی جا رہی ہے۔ اس صورت حال کے پیش نظر انہوں نے پختہ ارادہ کیا کہ بیماری کو شدت اختیار کرنے سے پہلے ہی ختم کر دیا جائے اور انہوں نے یہ طے کیا کہ ہر قبیلہ اپنے اس فرد کو ایسی عبرتناک سزا دے جس نے حضرت محمدﷺ کی اتباع اختیار کی ہے جس سے یا تو وہ اپنے آبائی دین کی طرف لوٹ آئے یا پھر وہ مر جائے۔


اس فیصلے کی رو سے سباع بن عبد العزی اور اس کے قبیلے کے حصے حضرت خباب رضی اللہ عنہ آئے۔ جب دوپہر کے وقت گرمی نقطۂ عروج پر ہوتی تو وہ حضرت خباب کو مکہ کے قریب چٹیل پتھریلے میدان میں لے جاتے ان کے کپڑے اتار دیتے لوہے کی درع پہنا دیتے۔ پینے کا پانی بند کر دیتے۔ جب پیاس اور تکلیف سے وہ نڈھال ہو جاتے تو یہ قریب آتے اور پوچھتے کہ اب حضرت محمدﷺ کے متعلق تمہاری کیا رائے ہے؟

آپ فرماتے:

وہ اللہ کے بندے اور اس کے رسول ہیں، ہمارے پاس ہدایت و صداقت کا دین لے کر آئے تاکہ ہمیں تاریکیوں سے نور کی طرف نکال لائیں۔ یہ سن کر وہ بھپر جاتے اور بے تحاشہ پٹائی شروع کر دیتے مار مار کر جب تھک جاتے تو وہ پوچھتے لات اور عزی کے متعلق تمہاری کیا رائے ہے۔

آپ فرماتے’ یہ دونوں گونگے بہرے بت ہیں نہ کسی کو نفع دے سکتے ہیں اور نہ ہی نقصان۔

یہ سن کر وہ آپے سے باہر ہو جاتے۔ گرم پتھر اٹھا کر لاتے اور آپ کی پیٹھ کے ساتھ لگائے رکھتے، پتھروں میں اس قدر تمازت ہوتی کہ ان کی گرمی سے حضرت خباب کے کندھوں سے چربی اور خون بہنے لگتا۔


ام انمار سخت گیری اور پتھر دلی میں اپنے بھائی سے رتی برابر کم نہ تھی اس نے ایک روز حضرت محمدﷺ کو اپنی دکان پر کھڑے حضرت خباب رضی اللہ عنہ سے باتیں کرتے دیکھ لیا تو غصے سے بھپر گئی۔ اس کے بعد اس نے اپنا یہ معمول بنا لیا کہ ہر دوسرے تیسرے روز آتی۔ لوہے کی بھٹی سے گرم سلاخ نکالتی اور اس سے حضرت خباب کے سر کو داغ دیتی جس سے آپ بے ہوش ہو جاتے اور آپ کی زبان سے ام نمار اور اس کے بھائی کے بارے میں بد دعا نکلتی۔


جب رسول اکرمﷺ نے صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کو مدینہ منورہ کی طرف ہجرت کی اجازت دے دی تو حضرت خباب بھی ہجرت کے لئے تیار ہو گئے۔ لیکن وہ اس وقت تک مکہ کو چھوڑنا نہیں چاہتے تھے جب تک اللہ سبحانہ و تعالی ام انمار کے خلاف کی گئی دعا کو قبول نہ فرمالیں۔

چند روز کے بعد ام انمار کے سر میں ایسا درد اٹھا کہ اس جیسا درد پہلے سننے میں نہ آیا۔ وہ شدت سے اس طرح کراہتی اور آواز نکالتی جس طرح کوئی کتا بھونکتا ہے اس کے بیٹے کامل حکیم کی تلاش میں ہر جگہ پہنچے، حکماء نے اس کا یہ علاج تجویز کہ اس کے سر کو لوہے کی گرم سلاخ سے داغا جائے، اس کے علاوہ اس کا کوئی اور علاج نہیں ہے۔ اس طرح اس کے سر کو لوہے کی گرم سلاخ سے داغا جانے لگا۔ جب گرم سلاخ سر کو لگتی تو اس کی تکلیف دہ تمازت سے سر کے درد کو کچھ دیر کے لئے بھلا دیتی۔


حضرت خباب رضی اللہ عنہ انصار مدینہ کی ضیافت میں ایسی راحت و آرام کی زندگی بسر کرنے لگے جس سے وہ ایک طویل مدت سے محروم تھے۔ نبی اقدسﷺ کا قرب ان کی آنکھوں کی ٹھنڈک کا باعث بنا۔

حضرت خباب رضی اللہ عنہ’ نبی اکرمﷺ کے ہمراہ بدر میں شریک ہوئے۔ اور آپﷺ کے جھنڈے تلے لڑائی کے جواہر دکھلائے اور اسی طرح غزوہ احد میں شریک ہوئے’ میدان احد میں جب انہوں نے ام انمار کے بھائی سباع بن عبدالعزیٰ کی لاش دیکھی تو بہت خوش ہوئے آنکھوں کی ٹھنڈک نصیب ہوئی، سباع کو شیر خدا حضرت حمزہ رضی اللہ عنہ نے موت کے گھاٹ اتارا تھا۔

اللہ سبحانہ و تعالیٰ نے حضرت خباب رضی اللہ عنہ کو طویل عمر عطا کی، یہاں تک کہ انہوں نے خلفائے اربعہ کا دور دیکھا اور ہر دور میں انہیں ایک جلیل القدر صحابی کی حیثیت حاصل رہی۔


ایک روز حضرت عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ کے پاس تشریف لائے۔ وہ اس وقت مسند خلافت پر جلوہ افروز تھے، تو فاروق اعظم رضی اللہ عنہ نے حضرت خباب رضی اللہ عنہ کو اپنی مسند پر بٹھایا اور فرمایا: تمام صحابہ میں آپ یا حضرت بلال رضی اللہ عنہ اس کے حقدار ہیں کہ اس مسند پر بٹھایا جائے۔ پھر آپ نے مشرکین کے ہاتھوں پہنچنے والی تکالیف کی روئداد سنانے کا مطالبہ کیا تو آپ جواب دینے میں ہچکچائے۔

جب حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے اصرار کیا تو آپ نے پیٹھ سے چادر سرکا دی، تو حضرت عمر رضی اللہ عنہ جسم پر زخموں کے نشانات دیکھ کر انگشت بدنداں رہ گئے اور پوچھا: جسم میں یہ گہرے زخم کیسے آئے؟

حضرت خباب رضی اللہ عنہ فرمانے لگے:
مشرکین لوہے کی چادر گرم کرتے جب وہ انگارہ بن جاتی تو میرے کپڑے اتار کر مجھے پیٹھ کے بل اس پر گھسیٹتے جس سے میرے بدن کا گوشت پیٹھ کی ہڈیوں سے الگ ہو جاتا۔ آگ وہ خون اور پانی بجھاتا جو میرے بدن سے نکلتا۔


حضرت خباب رضی اللہ عنہ اپنی زندگی کے آخری دور میں بہت مالدار ہو گئے اور اتنے سونے چاندی کے مالک بن گئے جس کا انہیں وہم و گمان ہی نہ تھا، لیکن انہوں نے اپنا مال راہ خدا میں خرچ کرنے کا ایک ایسا انوکھا طریقہ اختیار کیا جو پہلے کسی نے بھی اختیار نہیں کیا تھا، یہ درہم و دینار گھر میں ایک ایسی جگہ پر رکھ دیتے جس کا ضرورت مندوں، فقراء و مساکین کو بھی پتہ تھا۔ نہ تو اس پر کسی کو نگران مقرر کیا اور نہ تالا لگایا، ضرورت مندان کے گھر آتے اور پوچھے اور اجازت طلب کئے بغیر اپنی ضرورت کے مطابق وہاں سے مال لے جاتے۔ اس کے باوجود انہیں یہ اندیشہ تھا کہ اس مال کے متعلق قیامت کے روز میرا حساب لیا جائے گا اور مباداکہ مجھے اس کی وجہ سے عذاب میں مبتلا کر دیا جائے گا۔


آپ کے ہم نشین صحابہ رضی اللہ عنہم نے یہ بتایا:

ہم حضرت خباب رضی اللہ عنہ کے پاس اس وقت گئے جب آپ مرض الموت میں مبتلا تھے،

ہمیں دیکھ کر آپ نے ارشاد فرمایا:

اس گھر میں میرے پاس اسی ہزار درہم ہیں، اللہ کی قسم! میں نے کبھی ان کو کہیں چھپایا نہیں اور نہ کسی سائل کو میں نے محروم واپس لوٹایا۔ یہ بات کہی اور زاروقطار رونا شرع کر دیا۔

ہم نے پوچھا:
آپ روتے کیوں ہیں؟
فرمایا:

میں اس لئے روتا ہوں کہ میرے بہت سے ساتھی اس دنیا سے اس حالت میں کوچ کر گئے کہ انہیں دنیاوی مال و متاع سے کچھ بھی نہ ملا مجھے یہ مال مل گیا مجھے اندیشہ ہے کہ یہ مال کہیں میرے اعمال صالحہ کا بدلہ نہ ہو اور آخرت میں محروم رہ جاؤں۔

جب حضرت خباب رضی اللہ عنہ اپنے اللہ کو پیارے ہو گئے، تو امیرالمؤمنین حضرت علی بن ابی طالب رضی اللہ عنہ قبر کے پاس کھڑے ہو کر فرمانے لگے:

اللہ خباب رضی اللہ عنہ پر رحم فرمائے۔

اس نے دلی رغبت سے اسلام قبول کیا، خوش دلی سے ہجرت کی اور مجاہد کے روپ میں زندگی بسر کی۔ اللہ سبحانہ وتعالی نیکی کرنے والے کا اجر ہرگز ضائع نہیں کرے گا۔


حضرت خباب بن ارت رضی اللہ عنہ کے مفصل حالات زندگی معلوم کرنے کے لئے درج ذیل کتابوں کا مطالعہ کریں۔

 

۱- الاصابه (مترجم) ۲۲۱۰
۲- اسد الغابه ۲/ ۹۸۔۱۰۰
۳۔ الاستيعاب ۱/ ۴۲۳
۴- تهذيب التهذيب ۳/ ۱۳۳

 

 

حوالہ جات :
“حياتِ صحابہ کے درخشاں پہلو”
تا لیف: “داکتور عبدالر حمان رافت الباشا”

 

 

 

 

Table of Contents