Sections
< All Topics
Print

10. Abu Ubaidah Bin Jarraah (رضی اللہ عنہ)

Hazrat Abu Ubaidah Bin Jarraah (رضی اللہ عنہ)

Har Ummat ka aik Amin hota hai aur is Ummat ka Amin Abu Ubaidah Bin Jaraah (رضی اللہ عنہ) hai
Farmaan-e-Nabvi ﷺ

Khush shakal, Hans mukh, Ikehre jism, Daraaz qadd, Aur aisay teekhe Khadd-o-Khaal waale keh daikhne waale ki aankhon ko saroor haasil ho. Aap say molaqaat karne waale ki tabiyat maanoos ho aur isay dili sakoon moyassar aye. Iskay saath saath ap khush haal, Munkassir-ul-Mizaaj aur bahut hi sharmeelay thay, Lekin jab kabhi koi uftaad aan parrti ya koi mushkil waqat aa jata to phir ap shair ki maanind Chaak-o-Choband ho jatay. Ilawah azeen aap Jalaal-o-Jamaal, Tabiyat ki taizi aur Asar-o-Nufooz mein chamakdaar taiz talwaar ki maanind thay.

Aap hain Hazrat Muhammad ﷺ ki Ummat ke Amin Hazrat Aamir  Bin  Abdullah Bin Jarraah Al-Fahri Al-Qarshi jinki kuniyat Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) hai.

Hazrat Abdullah Bin Umar (رضی اللہ عنہ) apnay tassoraat bayaan  kartay huey farmaatay hain keh Quraish mein teen shakhsiyaat aisi hain jinke chehre tamaam logon say barh kar zaidah haseen, Jinka akhlaaq sab say umdah aur jinki Hayaa’a sab say ziadah paai jaati hai. Agar wohh aap say guftagu karen to qat’an jhooth nah bolen, Agar aap insay koi baat karen to aapko jhutlaaen gy nahi. Meri nazar mein wohh teen azeem shakhsiyaat yeh hain:

  • Hazrat Saddique-e-Akbar (رضی اللہ عنہ)
  • Hazrat Usmaan Bin Affaan (رضی اللہ عنہ)
  • Hazrat Abu Ubaidah Bin Jarraah (رضی اللہ عنہ)

Hazrat Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) jinka shumaar un Sahaabah-e-Kiraam (رضی اللہ عنہم) mein hota hai jinhon nay Islaam Qabool karne mein sabqat ki. Aap Hazrat Saddique-e-Akbar (رضی اللہ عنہ) ke Islaam qabool karne ke b’ad doosre roz hi Musalamaan ho gaey thay.

Hazrat Abu Ubaidah Bin Jarraah (رضی اللہ عنہ) Hazrat Abd ur Rahmaan Bin Uof (رضی اللہ عنہ), Hazrat Usmaan Bin Maz’oon (رضی اللہ عنہ) aur Hazrat Arqam Bin Abi Al Arqam (رضی اللہ عنہ) Hazrat Saddique-e-Akbar (رضی اللہ عنہ) ke humraah Rasool Akram Hazrat Muhammad ﷺ ki khidmat mein haazir huey aur aap ﷺ ke roobaroo Kalmah-e-Haqqلا الہ محمد رسول اللہ  parh kar apnay Musalmaan honay ka ilaan kiya.

Haqeeqat mein yeh azeem shakhsiyaat wohh pehli bunyaadain hain jin par Islaam ka mehal tameer hai kiya gaya hai.


Hazrat Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) nay Makkah Mo’azmah mein shuru’ say aakhir tak Musalmaanon ko paish aane waale talkh haalaat mein zindagi basar ki, Aisi shadeed takaleef aur Ranj-o-Alam mein inka saath diya keh jin Shadaaid-o-Takaleef ka Roo-e-Zameen pay basnay waale kisi bhi Deen ke pairokaaron ko kabhi bhi saamna nah karna parra ho. Aap is Daur-e-Ibtala mein saabit qadam rahay aur har soorat mein Allah T’aala aur Rasool-e-Maqbool ﷺ ko Sameem-e-Qalb say sacha maana, Lekin Maidaan-e-Badar mein Hazrat Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) ko paish aane waali aazmaaish is qadar naazuk thi keh insaani takhayyul mein bhi na aa sake. Hua yeh keh Ghazwah-e-Badar mein Hazrat Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) be-khauf-o-Khatar dushmanon ki saffon ko cheertay huey aagy barhatay jaa rahay thay. Aapkay is jurrat mandaanah iqdaam say dushmanon mein bhagdarr mach gai. Aap Maidaan-e-Jang mein is tarah biphray huey chakkar laga rahay thay ke jaisay maut ka koi dar hi na ho aapka yeh andaaz daikh kar Quraish ke shehsawaar ghabra gaey. Joonhi aap inkay saamne aatay to woh khauf zadah ho kar aik taraf ho jaatay. Lekin in mein sirf aik shakhs aisa tha, Jo aapke saamne akarr kar kharra ho jata, Lekin ap is say pehlu tahi ikheyaar kar jaatay aur iskay saath moqaablah karnay say ij’tnaab kartay. Woh shakhs bhi aap say moqaablah karnay kay liye baar baar saamne ata raha lekin aap nay bhi is say pehlu tahi ikhteyaar karnay mein koi kasar baaqi na rakhi. Bil-aakhir is shakhs nay Janab Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) kay liye tamaam raastay band kar diye. Hatt’a keh woh aapkay aur Dushmanaan-e-Islaam ke maabain haail hogaya, lekin jab ap nay daikha keh ab koi chaarah-e-Kaar baaqi nahi raha to iskay sar par Talwaar ka aisa zor-daar waar kiya jis say iski khoparri ke do tukrray ho gay. Aur woh aapkay qadmon mein dhair hogaya.

Kya! Aap andazah kar sakte hain keh yeh qatal honay wala shakhs kon tha?

Bila-shubah Maidaan-e-Badar mein Hazrat Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) ko paish aanay waali yeh aazmaaish Hisaab daanon kay Hisaab say bhi mawaraa’a thi aur aisi naazuk keh insaani Quwwat-e-Idraak mein bhi na aa sake. Jab aapko yeh m’aloom hoga keh yeh laash to Janab Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) ke waalid Abdullah Bin Jarraah ki thi to aap Angusht-e-Badindaan reh jaaen gy.


Darasal Hazrat Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) nay apnay Baap ko qatal nahi kiya, Balke unhon nay Maidaan-e-Badar mein apnay Baap kay haiwalay ki shakal mein Shirk ko Naest-o-Naabood kar diya. Aapka yeh iqdaam Allah Subahanahu wa Ta’aala ko itna pasand aya keh aapki shaan mein darj zail ayaat naazil kar din.

Irshaad-e-Baari Ta’aala hai:

لَا تَجِدُ قَوْمًا يُّؤْمِنُوْنَ بِاللّٰهِ وَالْيَوْمِ الْاٰخِرِ يُوَاۗدُّوْنَ مَنْ حَاۗدَّ اللّٰهَ وَرَسُوْلَهٗ وَلَوْ كَانُوْٓا اٰبَاۗءَهُمْ اَوْ اَبْنَاۗءَهُمْ اَوْ اِخْوَانَهُمْ اَوْ عَشِيْرَتَهُمْ ۭ اُولٰۗىِٕكَ كَتَبَ فِيْ قُلُوْبِهِمُ الْاِيْمَانَ وَاَيَّدَهُمْ بِرُوْحٍ مِّنْهُ ۭ وَيُدْخِلُهُمْ جَنّٰتٍ تَجْرِيْ مِنْ تَحْتِهَا الْاَنْهٰرُ خٰلِدِيْنَ فِيْهَا   ۭ رَضِيَ اللّٰهُ عَنْهُمْ وَرَضُوْا عَنْهُ    ۭ اُولٰۗىِٕكَ حِزْبُ اللّٰهِ ۭ اَلَآ اِنَّ حِزْبَ اللّٰهِ هُمُ الْمُفْلِحُوْنَ

Tarjamah:

“Tum kabhi yeh na paao gy keh jo log Allah aur Aakhirat par Eemaan rakhnay waale hain woh in logon say Muhabbat karte hon, Jinhon nay Allah aur iske Rasool ki mukhalifat ki hai, Khawah woh inke Baap hon, Ya inke bety ya inkay bhai, Ya inke Ehl-e-Khaandaan, Yeh woh log hain jinkay dilon mein Allah nay Eemaan sab’t kar diya hai aur apni taraf say aik rooh ata kar ke inko quwwat bakhshi hai, Woh inko aisi jannaton mein daakhil kare ga jinke neechay nehrain behti hon gi in mein woh hameshah rahen gy. Allah insay raazi hua aur woh Allah say raazi huey. Yahi Log Allah ka Giroh hain. Khabar-daar raho! Allah ka Giroh falaah paane wala hai.” ( Al’Mojaadalah: 22 )

Hazrat Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) ke liye ye koi anokha kaarnaamah nahi tha. Woh to apni Quwwat-e-Eemaani, Jazbah-e-Deeni aur Ummat-e-Muhammad ﷺ mein Amaanat-o-Diyaanat ke us a’aala maqaam par thay jiske liye bari bari hastiyan Allah Subhanahu Wa Ta’ala kay haan aarzu mand rehti hain.

Janab Hazrat Muhammad Bin J’afar (رضی اللہ عنہ) bayaan  farmaatay han keh Esaaiyoun ka aik waf’d Rasool ul Allah ﷺ ki Khidmat-e-Aqdas mein haazir hua aur arz ki keh Hazrat! Apnay Sahaabah (رضی اللہ عنہ) mein say humare saath kisi aisay shakhs ko rawaanah farmaaen jisay aap munaasib samajtay hon. Woh humare in baahami maali ikhtalaafaat ko niptaaey jo sho maii qismat say shiddat ikhteyaar kar chukay hain. Hum barmala ye tasleem karte hain keh humain Musalmaan bahut pasand hain.

Inki baaten sun kar Rasool ul Allah ﷺ nay irshaad farmaaya: Shaam ko meray paas ana. Main aapke saath aik aisa shakhs rawaanah karunga jo taqat-war bhi hai aur Diyaanat-daar bhi. Hazrat Umar (رضی اللہ عنہ) bayaan farmaatay hain keh main is roz jaldi jaldi Namaz-e-Zohar ke liye Masjid-e-Nabvi ﷺ mein aya keh shayad is intekhaab mein mera naam aa jaye. Ba-Khuda! Mujhay koi Imaarat-o-Qiyaadat ka shauq na tha. Balke meri ye tamanna thi keh waf’d ke saamne Rasool ul Allah ﷺ nay jo usaaf bayaan  farmaaey hain, Inka misdaaq main thehrun. Aap ﷺ jab Namaz-e-Zohar say faarigh huey to bare ghor say daain baain daikhnay lagy. Is doraan main nay sar uper uthaya taake Aap ﷺ ki nazar mujh par parre. Aap ﷺ musalsal Namaziyoun ki taraf daikhtay rahay, Yahan tak keh aap ﷺ ki Nazar-e-Karam Hazrat Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) par parri, Unhain ishaare say apnay paas bolaya aur irshaad farmaaya: keh aap is waf’d ke saath jaaen aur inke baahami ikhtalaafaat ko Adal-o-Insaaf ke saath niptaaen. Hazrat Umar (رضی اللہ عنہ) farmaatay hain keh main is moqa’ par be-ikhteyaar pokaar utha keh aaj Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) hum say baazi lay gaey.


Hazrat Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) Diyaanat-o-Amaanat ke a’alaa moqaam par faaiz thay aur aap mein qaaidanah Salahiyat ba-darjah-e-Atam paai jaati thi. Bahut say mawaqe’ par aapki Diyaanat-o-Amaanat aur qaaidanah salahiyaton ka nehayat khush asloobi say izhaar bhi hua.

Aik roz Rasool ul Allah ﷺ nay Sahaabah-e-Kiraam (رضی اللہ عنہم) ki aik jama’at ko Quraish ke aik Qaaflay ki sar-kobi ke liye rawaanah kiya aur Hazrat Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) ko is Jama’at ka Ameer moqarrar kar diya aur Zaad-e-Raah ke liye khajooron ka aik thaila ata kiya. Soorat-e-Haal ye thi keh aapke paas iske ilawah Mujaahideen ke Zaad-e-Raah koi aur cheez bhi na thi. Is safar mein Sahaabah-e-Kiraam nay kamaal Sabar-o-Tahammul ka mozahirah kiya aur Ameer-e-Qaafilah Hazrat Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) nay bhi Qiyaadat-o-Amaanat ka haqq ada kar diya. Aap rozanah har aik Mujaahid ko aik khajoor detay aur woh isay kha kar paani pi leta aur ye khoraak din bhar kay liye kaafi hoti.


Ghazwah-e-Uhad mein jab aarzi tor par Musalmaanon ko shikast ka saamna karna parra to to aik Mushrik baray ghazab-naak andaz mein chilla raha tha. Mujhay batao keh Musalmaanon ka Nabi Muhammad ﷺ kahan hai?

Us naazuk waqat mein Hazrat Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) un das jaan nisaar Sahaabah mein say aik thay jinhon nay Rasool ul Allah ﷺ ke gird ghaira daal rakha tha aur apnay seenon par dushman ke teer kha kar Hazrat Muhammad ﷺ ki jaanib say difaa’ ka fareezah sar-anjaam diya. Jab Jang ka zor khatam hua to Soorat-e-Haal ye thi keh aap ﷺ kay daant Mobarak shaheed ho chukkay thay, Aap ﷺ ki paishaani Mobarak zakhmi ho chukki thi aur aap ﷺ kay rukhsaar Mobarak mein khud ke do halqay paiwast ho chukay thay. Aap ﷺ ki ye haalat daikh kar Saddique-e-Akbar (رضی اللہ عنہ) taizi say aagy barhay taake aap ﷺ kay Rukhsaar Mobarak mein dhansay huey khud kay halqay nikaal dain. Itnay mein Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) nay aagy barh kar arz ki Khudara is khidmat ka mujhay moqa’ dain. Aapka shoq daikh kar Hazrat Saddique-e-Akbar (رضی اللہ عنہ) aik taraf ho gaey. Hazrat Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) ko andaishah tha keh agar haath say in halqon ko nikala to is say Rasool Akram ﷺ ko bahut takleef hogi, To aap nay is tarah kiya keh aik daant mazbooti say aik halqay mein paiwast kar diya aur pooray zor say daant daba kar isay rukhsaar Mobarak say nikaal diya, Lekin is justaju mein aapka woh daant toot gaya. Phir doosre halqay mein apna doosra daant paiwast kar diya aur issi tarah doosra halqah b nikaal diya aur iski koshish mein aapka doosra daant bhi toot gaya. Hazrat Saddique-e-Akbar (رضی اللہ عنہ) farmaatay hain keh aglay donon daant toot jaane kay bawajood Janab Abu Ubaidah Bin Jarraah (رضی اللہ عنہ) nihayat khoobsoorat dikhai detay thay.


Hazrat Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) tamaam Ghazwaat mein Rasool Akram ﷺ kay saath shareek rahay. Yahan tak aap ﷺ Allah ko piyaray ho gaey.

Saqeefah Bani Sa’edah mein Bai’at-e-Khilaafat kay din Hazrat Umar Bin Khitaab (رضی اللہ عنہ) nay Janab Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) say kaha keh apna haath aagy barhaen taake main aapki bai’at karun, Kioun keh main nay Rasool Maqbool ﷺ ko ye farmaatay huey suna hai. “Har Ummat ka Amin hota hai aur is Ummat ka Amin Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) hai” lekin Hazrat Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) nay farmaaya: Main is azeem hasti say bhala kaise sabqat lay ja sakta hun jisay Rasool Akram ﷺ nay apni zindagi mein hamara Imaam moqarrar kar diya ho. Iskay b’ad tamaam Sahaabah-e-Kiraam (رضی اللہ عنہم) nay Saddique Akbar (رضی اللہ عنہ) kay haath par bilittefaaq bai’at ki. Hazrat Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) aapke Daur-e-Khilaafat mein Mu’aawin-o-Khair khawah rahay. Jab Saddique Akbar (رضی اللہ عنہ) nay apni wafaat say pehlay Farooq-e-Aazam (رضی اللہ عنہ) ko Khaleefat-ul-Muslimeen naamzad farma diya, To Hazrat Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) Farooq-e-Aazam (رضی اللہ عنہ) kay pooray Daur-e-Khilaafat mein aapkay Madadgaar-o-Mu’aawin aur itaa’at shi’aar rahay. Sirf aik hukam kay ilawah kisi bhi mo’aamlah mein kabhi aapki hukam adooli nahi ki. Kya aapko ilm hai keh Janab Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) nay Khaleefat-ul-Muslimeen kay kis hukam ko tasleem karne say inkaar kar diya tha?

Waaqe’ah yeh hai Hazrat Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) Mulk Shaam mein Lashkar-e-Islaam ki qeyaadat ka fareezah sar-anjaam dey rahay thay aur bari taizi say Sheher dar sheher fatah huey jaa rahay thay. Poora Mulk Shaam bhi fatah hogaya aur Islaami hukoomat ki sarhadain Mashriq mein Darya-e-Furaat tak aur Shomaal mein Aisiayaa-e-Koochak tak pohnch chukki thin. Jab fatoohaat ka silsalah pooray Nuqtah-e-Urooj par tha, Ain is moqa’ par Shaam mein Taa’oon ki aisi khatar-naak wabaa’ phaili jiski pehlay koi misaal nahi milti. Log bari taizi say is bemari ka shikaar ho rahay thay. Hazrat Umar (رضی اللہ عنہ) ko jab is naazuk Soorat-e-Haal ka ilm hua to foran aik Qaasid ko Khatt dey kar Janab Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) ki taraf rawaanah kiya. Khatt mein yeh likha tha keh mujhay aap say aik bahut zaruri kaam hai. Khatt miltay hi foran meri taraf chal paren, Raat ko mera Khatt milay to Subah ka intezaar na karna, Agar din ko milay to phir raat ka intezaar na karna, Jab Hazrat Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) nay Farooque-e-Aazam (رضی اللہ عنہ) ka Khatt parha to farmaaya: Mujhay m’aloom hai keh Ameer-ul-Momineen ko mujh say kya zaruri kaam hai. Darasal woh aik aisay shakhs ko baaqi rakhna chahtay hain jo is Duniya mein hameshah baaqi rehnay wala nahi. Phir Ameer-ul-Momineen ko is Khatt ka yeh jawab tehreer kiya:

Ameer-ul-Momineen! B’ad az tasleemaat arz hai. Mujhay yeh Ilm hai keh aapko meray saath kya zaruri kaam hai. Main is waqat Lashkar-e-Islaam mein hun. Aaj Musalmaan jis musibat mein mubtelaa’a hain, Main is naazuk haalat mein inhain tanha nahi chor sakta. Na hi main insay juda hona chahta hun, Yahan tak keh Rabb-e-Zul-jalaal meray aur inkay muta’alliq apna faislah saadir farmaa dey. Mujhay aap is silsalah mein m’azoor samajtay huey in Mujahideen-e-Islaam mein hi rehnay ki ijaazat marhamat farmaaen.

Wa salam

Jab ye Khatt Ameer-ul-Momineen Hazrat Umar Farooque (رضی اللہ عنہ) kay paas pohncha, Isay parh kar aapki aankhon say be-ikhteyaar aansu jaari hogaey. Aapkay paas baithay huey Sahaabah-e-Kiraam (رضی اللہ عنہم) nay aapko Zaar-o-Qitaar rotay huey daikh kar daryaf’t kiya: kya Hazrat Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) faut hogaey hain? Farmaaya: nahi! Lekin maut ab unkay bahut qareeb pohnch chukki hai. Is silsalah mein Hazrat Farooque-e-Aazam (رضی اللہ عنہ) ka andazah ghalat na tha. Thoray hi arsah b’ad Janab Abu Ubaidah (رضی اللہ عنہ) Ta’oon ki khatarnaak bemaari mein mubtela hogaey. Jab maut ka waqat qareeb aya to aap nay Lashkar-e-Islaam ko ye wassiyat ki. Farmaaya:

“Main tumhain aaj aik wassiyat karta hun, Agar aap logon nay isay tasleem kiya to hameshah khairiyat say raho gy. Suno! Namaaz qaaim karna, Ramzaan kay Rozay rakhna, Saqdah-o-Khairaat kartay Rehna, Hajj Bait-ul-Allah karna, Umrah ada karna, Aapas mein aik doosray ko achi baaton ki talqeen kartay rehna, Apnay hukamraanon kay saath khair khawahi say paish ana, Aur inhain kabhi dhokah na daina, Daikhna kahin Duniya tumhain ghaafil na kar dey.

Meri ye baat ghor say suno! Agar kisi shakhs ko hazar saal ki bhi umar mil jaaey to aakhir kaar iska anjaam yahi hoga jo aaj mera daikh rahay ho. Maut say koi bach nahi sakta. Sabko meri taraf say salam aur tum par Khudaye zul jalaal wal ikraam ki Rahmat ho, phir Hazrat M’aaz bin Jabal (رضی اللہ عنہ) ki taraf motawajah huey ho kar farmaaya: Mu’aaz logon ko Namaaz parhaya karen. Acha Khuda Hafiz. Ye kaha aur aapki pakeezah rooh Qafs-e-Unsari say parwaaz kar gai.” Phir is moqa’ par Hazrat Mu’aaz Bin Jabal (رضی اللہ عنہ) uthay aur irshaad farmaaya:

Logo! Aaj tum aik aisi shakhsiyat kay gham mein mubtela ho, Khuda ki qasam main nay insay barh kar Naik Dil, Hasad-o-Bugh’z say Paak Seenah, Aakhirat say bahut ziyadah Muhabbat karne wala awaam un Naas ke saath khair khawahi say paish aane wala kisi aur ko na paya. Sab mil kar Khuloos-e-Dil say Du’aa karo keh Allah Ta’ala in par Rahmat ki barkha barsaye.

Khuda rahmat kund aen Asihqan-e-Paak teenat raa


Hazrat Abu Ubaidah Bin Jarraah (رضی اللہ عنہ) kay tafseeli Halaat-e-Zindagi m’aloom karne kay liye darj zail kitaabon ka mutale’ah kijiye:

1: Tabqaat Ibn Sa’d                                                        Fehrist daikhen

2: Al Isabah Mutarjim                                                     4400

3: Al Istieab                                                                         2/3

4: Hilyat ul Awliya                                                              1/100

5: Al Bidaya Wal Nihaya                                                  5/87

6: Sifat ul Safwah                                                                1/142

7: Ashar Masaheer ul Islam                                           504

8: Tarikh ul Khamis                                                            2/244

9: Al Riyaz ul Nazarah                                                        307

10: Ibn-e-Asakir                                                                   7/157 

REFERENCE:
Book: Hayat-e-Sahaba kay darakh shah pahelo.
By: Dr. Abdur Rahman Rafat Al- Pasha.

حضرت ابو عبیدہ بن جراح رضی اللہ عنہ

 

خوش شکل ‘ہنس مکھ’اکہرے جسم ‘دراز قد اور ایسے تیکھے خدو خال والے کہ دیکھنے والے کی آنکھوں کو سرور حاصل ہو۔آپ سے ملاقات کرنے والے کی طبیعت مانوس ہو اور اسے دلی سکون میسر آئے۔اس کے ساتھ ساتھ آپ خوشحال ‘منکسر المزاج اور بہت ہی شرمیلے تھے ‘لیکن جب کبھی کوئی افتادہ آن پڑتی یا کوئی مشکل وقت آجاتا تو پھر آپ شیر کی مانند چاک و چوبند ہو جاتے۔علاوہ ازیں آپ جلال و جمال ‘ طبیعت کی تیزی اور اثر ونفوذ میں چمک دار تیز تلوار کی مانند تھے۔
آپ ہیں حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی امت کے امین حضرت عامر بن عبداللہ بن جراح الفہری القرشی جن کی کنیت ابو عبیدہ ہے۔
حضرت عبداللہ بن عمر اپنے تاثرات بیان کرتے ہوئے فرماتے ہیں کہ قریش میں تین شخصیات ایسی ہیں ‘جن کے چہرے تمام لوگوں سے بڑھ کر زیادہ حسین ‘جن کا اخلاق سب سے عمدہ اور جن میں حیاء سب سے زیادہ پانی جاتی ہے ۔اگر وہ آپ سے گفتگو کریں تو قطعاً جھوٹ نہ بولیں ‘اگر آپ ان سے کوئی بات کریں تو آپ کو جھٹلائیں گے نہیں ۔میری نظر میں وہ تین عظیم شخصیات ہیں:
° حضرت صدیق اکبر
°حضرت عثمان بن عفان
°حضرت ابو عبیدہ بن جراح
حضرت ابو عبیدہ کا شمار ان صحابہ کرام میں ہوتا ہے جنہوں نے اسلام قبول کرنے میں سبقت حاصل کی۔

آپ حضرت صدیق اکبر کے اسلام قبول کرنے کے بعد دوسرے روز ہی مسلمان ہو گئے تھے۔

حضرت ابو عبیدہ بن جراح حضرت عبدالرحمان بن عوف ‘حضرت عثمان بن صفوان اور حضرت ارقم بن ابی الار حضرت صدیق اکبر کے ہمراہ رسول اکرم حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت اقدس میں حاضر ہوئے اور آپ کے روبرو کلمہ حق لا الہ الااللہ محمد رسول اللہ پڑھ کر اپنے مسلمان ہونے کا اعلان کیا ۔

حقیقت میں یہ عظیم شخصیات وہ پہلی بنیادیں ہیں جن پر اسلام کا محل تعمیر کیا گیا۔


حضرت ابو عبیدہ نے مکہ معظمہ میں شروع سے آخر تک مسلمانوں کو پیش آنے والے تلخ حالات میں زندگی بسر کی’ ایسی شدید تکلیف اور رنج و الم میں ان کا ساتھ دیا کہ جن شدائد و تکالیف کا روئے زمین پہ بسنے والے کسی بھی دین کے پیروکاروں کو کھبی بھی سامنا نہ کرنا پڑا ہو ۔

آپ اس دور ابتلا میں ثابت قدم رہے اور ہر صورت میں اللہ تعالیٰ اور رسول مقبول کو صمیم قلب سے سچا مانا ‘ لیکن میدان بدر میں حضرت ابو عبیدہ کو پیش آنے والی آزمائش اس قدر نازک تھی کہ انسانی تخیل میں بھی نہ آسکے ۔ہوا یہ کہ غزوہِ بدر میں حضرت ابو عبیدہ بے خوف وخطر دشمنوں کی صفوں کو چیرتے ہوئے آگے بڑھتے جا رہے تھے ۔آپ کے اس جرات مندانہ اقدام سے دشمنوں میں بھگدڑ مچ گئی ۔
آپ میدان جنگ میں اس بھپرے ہوئے چکر لگا رہے تھے کہ جیسے موت کا کوئی ڈر ہی نہ ہو آپ کا یہ انداز دیکھ کر قریش کے شہسوار گھبرا گئے۔جونہی آپ ان کے سامنے آتے تو وہ خوفزد ہوکر ایک طرف ہو جاتے ۔لیکن ان میں صرف ایک شخص اسیا تھا ‘ جو آپ کے سامنے اکڑ کر کھڑا ہو جاتا ‘ لیکن آپ اس سے پہلو تہی اختیار کر جاتے اور اس کے ساتھ مقابلہ کرنے سے اجتناب کرتے۔وہ شخص بھی آپ سے مقابلہ کرنے کے لئے بار بار سامنے آتا رہا لیکن آپ نے اس سے پہلو تہی اختیار کر نے میں کوئی کسر باقی نہ رکھی ۔
بالآخر اس شخص نے جناب ابو عبیدہ کے لئے تمام راستے بندکر دئیے ۔ حتی کہ وہ آپ کے اور دشمنان اسلام کے مابین حائل ہوگیا’ لیکن جب آپ نے دیکھا کہ اب کوئی چارہ کار باقی نہیں رہا ۔

تو اس کے سر پر تلوار کا اسیا زور دار وار کیا جس سے اس کی کھوپڑی کے دو ٹکڑے ہوگئے ۔اور وہ آپ کے قدموں میں ڈھیر ہوگیا ۔

کیا! آپ اندازہ کر سکتے ہیں کہ قتل ہونے والا شخص کون تھا؟
بلا شبہ میدان بدر میں حضرت ابو عبیدہ کو پیش آنے والی یہ آزمائش حساب دانوں کے حساب سے بھی ماوراء تھی اور ایسی نازک کہ انسانی قوت ادراک میں بھی نہ آسکے۔ جب آپ کو یہ معلوم ہوگا کہ یہ لاش تو جناب ابو عبیدہ کے والد عبداللہ بن جراح کی تھی تو آپ انگشت بد نداں رہ جائیں گے ۔


دراصل حضرت ابو عبیدہ نے اپنے باپ کو قتل نہیں کیا ‘ بلکہ انہوں نے میدان بدر میں اپنے باپ کے ہیولے کی شکل میں شرک کو نیست و نابود کر دیا ۔آپ کا یہ اقدام اللہ سبحانہ وتعالی کو اتنا پسند آیا کہ آپ کی شان میں درج ذیل آیات نازل کر دیں ۔
ارشاد باری تعالیٰ ہے:


لَا تَجِدُ قَوۡمًا یُّؤۡمِنُوۡنَ بِاللّٰہِ وَ الۡیَوۡمِ الۡاٰخِرِ یُوَآدُّوۡنَ مَنۡ حَآدَّ اللّٰہَ وَ رَسُوۡلَہٗ وَ لَوۡ کَانُوۡۤا اٰبَآءَہُمۡ اَوۡ اَبۡنَآءَہُمۡ اَوۡ اِخۡوَانَہُمۡ اَوۡ عَشِیۡرَتَہُمۡ ؕ اُولٰٓئِکَ کَتَبَ فِیۡ قُلُوۡبِہِمُ الۡاِیۡمَانَ وَ اَیَّدَہُمۡ بِرُوۡحٍ مِّنۡہُ ؕ وَ یُدۡخِلُہُمۡ جَنّٰتٍ تَجۡرِیۡ مِنۡ تَحۡتِہَا الۡاَنۡہٰرُ خٰلِدِیۡنَ فِیۡہَا ؕ رَضِیَ اللّٰہُ عَنۡہُمۡ وَ رَضُوۡا عَنۡہُ ؕ اُولٰٓئِکَ حِزۡبُ اللّٰہِ ؕ اَلَاۤ اِنَّ حِزۡبَ اللّٰہِ ہُمُ الۡمُفۡلِحُوۡنَ

ترجمہ: تم کھبی یہ نہ پاؤ گے کہ جو لوگ اللہ اور آخرت پر ایمان رکھنے والے ہیں وہ ان لوگوں سے محبت کرتے ہوں ‘ جنہوں نے اللہ اور اس کے رسول کی مخالفت کی ہے ‘ خواہ وہ ان لوگوں کے باپ ہوں’ یا ان کے بیٹے یا ان کے بھائی ‘ یا ان کے اہل خاندان ‘ یہ وہ لوگ ہیں جن کے دلوں میں اللہ نے ایمان ثبت کر دیا ہے اور اپنی طرف سے ایک روح عطا کر کےان کو قوت بخشی ہے ‘ وہ ان کو ایسی جنتوں میں داخل کرے گا جن کے نیچے نہریں بہتی ہوں گی ان میں ہمیشہ وہ رہے گے۔اللہ ان سے راضی ہوا اور وہ اللہ سے راضی ہوئے ۔

لوگ اللّٰہ کا گروہ ہیں۔ خبردار رہو! اللہ کا گروہ فلاح پانے والا ہے۔ (المجادلہ ٢٢)

حضرت ابو عبیدہ کے لئے یہ کوئی انوکھا کارنامہ نہیں تھا۔وہ تو اپنی قوت ایمانی ‘جذبہ دینی ‘ اور امت محمد میں امانت و دیانت کے اس اعلیٰ مقام پر فائز تھے جس کے لئے بڑی بڑی ہستیاں اللّٰہ سبحانہ و تعالیٰ کے ہاں آرزو مند رہتی ہیں ۔
جناب حضرت محمد بن جعفر بیان فرماتے ہیں کہ عیسائیوں کا ایک وفد رسول اللہ کی خدمت اقدس میں حاضر ہوا اور عرض کی کہ حضرت! اپنے صحابہ میں سے ہمارے ساتھ کسی ایسے شخص کو روانہ فرمائیں جسے آپ مناسب سمجھتے ہوں ۔ وہ ہمارے ان باہمی مالی اختلافات کو نپٹائے جو شومئی قسمت سے شدت اختیار کر چکے ہیں ۔ ہم برملا یہ تسلیم کرتے ہیں کہ ہمیں مسلمان بہت پسند ہیں ۔
ان کی باتیں سن کر رسول اللہ نے ارشاد فرمایا:شام کو میرے پاس آنا۔ میں آپ کے ساتھ ایک ایسا شخص روانہ کروں گا جو طاقتور بھی ہے اور دیانتدار بھی۔ حضرت عمر بیان فرماتے ہیں کہ میں اس روز جلدی جلدی نماز ظہر کے لئے مسجد نبوی میں آیا کہ شاید اس انتخاب میں میرا نام آجائے ۔ بخدا! مجھے کوئی امارت و قیادت کا شوق نہ تھا۔ بلکہ میری یہ تمنا تھی کہ وفد کے سامنے رسول اللہ نے جو اوصاف بیان فرمائے ہیں ‘ ان کا مصداق میں ٹھہروں ۔ آپ جب نماز ظہر سے فارغ ہوئے تو بڑے غور سے دائیں بائیں دیکھنے لگے اس دوران میں نے اپنا سر اوپر اٹھایا تا کہ آپ کی نظر مجھ پر پڑے ۔اس آپ مسلسل نمازیوں کی طرف دیکھتے رہے’ یہاں تک کہ آپ کی نظر کرم حضرت ابو عبیدہ پہ پڑی ‘ انہیں اشارے سے اپنے پاس بلایا اور ارشاد فرمایا: کہ آپ اس وفد کے ساتھ جایئں اور ان کے باہمی اختلافات کو عدل وانصاف کے ساتھ نپٹائیں۔ حضرت عمر فرماتے ہیں کہ میں اس موقع پر بے اختیار پکار اٹھا کہ آج ابو عبیدہ ہم سے بازی لے گئے ۔

حضرت ابو عبیدہ دیانت وامانت کے
اعلیٰ مقام پر فائز تھے اور آپ میں قائدانہ

صلاحیت بدرجہ اتم پائی جاتی تھی۔ بہت سے مواقع پر آپ کی دیانت وامانت اور قائدانہ صلاحیتوں کا نہایت خوش اسلوبی سے اظہار بھی ہوا
ایک روز رسول اللہ نے صحابہ کرام کی ایک جماعت کو قریش کے ایک قافلے کی سرکوبی کے لیے روانہ کیا اور حضرت ابو عبیدہ کو اس جماعت کا امیر مقرر کردیا اور زاد راہ کے لئے کھجوروں کا ایک تھیلا عطا کیا ۔صورت حال یہ تھی کہ آپ کے پاس مجاہدین کے زاد راہ کے لئے کوئی اور چیز نہ تھی۔ اس سفر میں صحابہ کرام نے کمال صبرو تحمل کا مظاہرہ کیا اور امیر قافلہ حضرت ابو عبیدہ نے بھی قیادت و امانت کا حق ادا کر دیا م آپ روزانہ ہر ایک مجاہد کو ایک کجھور دیتے اور وہ اسے کھا کر پانی پی لیتا اور یہ خوراک دن بھر کے لئے کافی ہوتی۔


غزوہِ احد میں عارضی طور پر مسلمانوں کو شکست کا سامنا کرنا پڑا ‘ تو ایک مشرک بڑے غضب ناک انداز میں چلا رہا تھا۔مجھے بتاؤ کہ مسلمانوں کا نبی محمد ﷺ کہاں ہے؟

اس نازک وقت میں حضرت ابو عبیدہ ان دس جاں نثار صحابہ میں سے ایک تھے جنہوں نے رسول اللہ کے گرد گھیرا ڈال رکھا تھا اور اپنے سینوں پر دشمن کے تیر رکھا کر حضرت محمد ﷺ کی جانب سے دفاع کا فریضہ سر انجام دیا جب جنگ کا زور ختم ہوا تو صورت حال یہ تھی کہ آپ ﷺ کے رخسار مبارک میں خود کے دو حلقے پیوست ہوچکے تھے ۔آپ ﷺ کی یہ حالت دیکھ کر صدیق اکبر تیزی سے آگے بڑھے تا کہ آپ ﷺ کے رخسار مبارک میں دھنسے ہوئے خود کے حلقے نکال دیں ۔ اتنے میں ابو عبیدہ نے آگے بڑھ کر عرض کی خدارا اس خدمت کا مجھے موقع دیں ۔ آپ کا شوق دیکھ کر حضرت صدیق اکبر ایک طرف ہوگئے ۔ حضرت ابو عبیدہ کو اندیشہ تھا کہ اگر ہاتھ سے ان حلقوں کو نکلا تو اس سے رسول اکرم کو بہت تکلیف ہوگی ‘ تو آپ نے اس طرح کیا کہ اپنا دانت مضبوطی سے ایک حلقے میں پیوست کردیا اور پورے زور سے دانت دبا کر اسے رخسار مبارک سے نکال دیا ‘ لیکن اس جستجو میں آپ کا وہ دانت ٹوٹ گیا۔

پھر دوسرے حلقے میں اپنا دوسرا دانت پیوست کر دیا اور اسی طرح دوسرا حلقہ بھی نکال دیا اور اس کی کوشش میں آپ کا دوسرا دانت بھی ٹوٹ گیا۔حضرت صدیق اکبر فرماتے ہیں کہ اگلے دونوں دانت ٹوٹ جانے کے باوجود جناب ابو عبیدہ بن جراح نہایت خوبصورت دکھائی دیتے تھے۔

حضرت ابو عبیدہ تمام غزوات میں رسول اکرم کے ساتھ شریک رہے۔یہاں تک آپ اللّٰہ کو پیارے ہوگئے ۔
سقیفہ بن ساعدہ میں بیعت خلافت کے دن حضرت عمر بن خطاب نے جناب ابو عبیدہ سے کہا کہ اپنا ہاتھ آگے بڑھائیں تا کہ میں آپ کی بیعت کروں ‘ کیونکہ میں نے رسول مقبول کو یہ فرماتے ہوئے سنا ہے ۔” ہر امت کا امین ہوتا ہے اور اس امت کا امین ابو عبیدہ ہے”لیکن حضرت ابو عبیدہ نے فرمایا: میں اس عظیم ہستی سے بھلا کیسے سبقت لے جاسکتا ہوں جسے رسول اکرم نے اپنی زندگی میں ہمارا امام مقرر کر دیا ہو۔ اس کے بعد تمام صحابہ کرام رضی اللہ عنہم نے صدیق اکبر رضی اللہ عنہ کے ہاتھ پر بالاتفاق بیعت کی۔ حضرت ابو عبیدہ رضی اللہ عنہ کے دور خلافت میں معاون و خیر خواہ رہے۔ جب صدیق اکبر رضی اللہ عنہ نے اپنی وفات سے پہلے فاروق اعظم رضی اللہ عنہ کو خلیفہ المسلمین نامزد فرمایا ‘ تو حضرت ابو عبیدہ رضی اللہ عنہ فاروق اعظم رضی اللہ عنہ کے پورے دور خلافت میں آپ کے مددگار و معاون اور اطاعت شعار رہے ۔ صرف ایک حکم کے علاوہ کسی بھی معاملہ میں کبھی آپ کی حکم عدلی نہیں کی ۔ کیا آپ کو علم ہے کہ جناب ابو عبیدہ رضی اللہ عنہ نے خلیفہ المسلمین کے کس حکم کو تسلیم کرنے سے انکار کر دیا تھا ؟
واقعہ یہ ہے کہ حضرت ابو عبیدہ رضی اللہ عنہ ملک شام میں لشکر اسلام کی قیادت کا فریضہ سر انجام دے رہے تھے اور بڑی تیزی سے شہر در شہر فتح ہوئے جا رہے تھے ۔ پورا ملک شام بھی فتح ہو گیا اور اسلامی حکومت کی سرحدیں مشرق میں دریائے فرات تک اور شمال ایشیائے کوچک تک پہنچ چکی تھیں۔ جب فتوحات کا سلسلہ پورے نکتہ عروج پر تھا ‘ عین اس موقع پر شام میں طاعون کی ایسی خطرناک وباء پھیلی جس کی پہلے کوئی مثال نہیں ملتی ۔

لوگ بڑی تیزی سے اس بیماری کا شکار ہو رہے تھے ۔حضرت عمر رضی اللہ عنہ کو جب اس نازک صورت حال کا علم ہوا تو فوراً ایک قاصد کو خط دے کر جناب ابو عبیدہ کی طرف روانہ کیا۔ خط میں یہ لکھا تھا کہ مجھے آپ سے ایک بہت ضروری کام ہے خط ملتے ہی فورآ میری طرف چل پڑیں ‘ رات کو میرا خط ملے تو صبح کا انتظار نہ کرنا ‘ اگر دن کو ملے تو پھر رات کا انتظار نہ کرنا ‘ جب حضرت ابو عبیدہ نے فاروق اعظم کا خط پڑھا تو فرمایا مجھے معلوم ہے کہ امیر المومنین کو مجھ سے کیا ضروری کام ہے۔ دراصل وہ ایک ایسے شخص کو باقی رکھنا چاہتے ہیں جو اس دنیا میں ہمیشہ باقی رہنے والا نہیں ۔پھر امیر المومنین کو اس خط کا یہ جواب تحریر کیا ۔
امیر المومنین! بعد از تعلیمات عرض ہے مجھے یہ علم ہے کہ آپ کو میرے ساتھ کیا ضروری کام ہے۔ میں اس نازک حالت میں انہیں تنہا نہیں چھوڑ سکتا۔ نہ ہی میں ان سے جدا ہونا چاہتا ہوں ‘ یہاں تک کہ رب ذوالجلال میرے اور ان کے متعلق اپنا فیصلہ صادر فرما دے۔مجھے آپ اس سلسلہ میں معزور سمجھتے ہوئے ان مجاہدین اسلام میں ہی رہنے کی اجازت مرحمت فرمائیں ۔

والسلام

جب یہ خط امیر المومنین حضرت عمر فاروق کے پاس پہنچا’ اسے پڑھ کر آپ کی آنکھوں سے بے اختیار آنسو جاری ہوگئے ۔ آپ کے پاس بیٹھے ہوئے صحابہ کرام کے آپ کو زارو قطار روتے ہوئے دیکھ کر دریافت کیا: کیا حضرت ابو عبیدہ فوت ہوگئے ہیں ‘فرمایا ! نہیں لیکن موت اب ان کے بہت قریب پہنچ چکی ہے ۔اس سلسلہ میں حضرت فاروق اعظم کا اندازہ غلط نہ تھا۔ تھوڑے ہی عرصہ بعد جناب ابو عبیدہ طاعون کی خطرناک بیماری میں مبتلا ہوگئے ۔جب موت کا وقت قریب آیا تو آپ نے لشکر اسلام کو یہ وصیت کی فرمایا: میں تمہیں آج ایک وصیت کرتا ہوں ‘ اگر آج تم لوگوں نے اسے تسلیم کیا تو ہمیشہ خیریت سے رہوں گے۔ سنو نماز قائم کرنا ‘ رمضان کے روزے رکھنا ‘ صدقہ و خیرات کرتے رہنا۔

حج بیعت اللّٰہ کرنا’ عمرہ ادا کرنا آپس میں ایک دوسرے کو اچھی باتوں کی تلقین کرتے رہنا’ اپنے حکمرانوں کے ساتھ خیر خواہی سے پیش آنا’اور انہیں کبھی دھوکہ نہ دینا’ دیکھنا کہیں دنیا تمہیں غافل نہ کردے۔
میری یہ بات غور سے سنو ! اگر کسی شخص کو ایک ہزار سال کی بھی عمر مل جائے تو آخر کار اس کا انجام یہی ہوگا جو آج میرا دیکھ رہے ہو۔ موت سے کوئی بچ نہیں سکتا سب کو میری طرف سے سلام اور تم پر خدائے ذوالجلال والا کرام کی رحمت ہو’پھر حضرت معاذ بن جبل کی طرف متوجہ ہوکر فرمایا معاذ لوگوں کو نماز پڑھایا کریں۔ اچھا خدا حافظ ۔یہ کہا اور آپ کی پاکیزہ روح نفس عنصری سے پرواز کر گئی ۔پھر اس موقع پر حضرت معاذ بن جبل اٹھے اور ارشاد فرمایا:
لوگو! آج تم ایک ایسی شخصیت کے غم میں مبتلا ہو ‘خدا کی قسم میں نے ان سے بڑھ کر نیک دل ‘ حسد و غضب سے پاک سینہ ‘آخرت سے بہت زیادہ محبت کرنے والا اور عوام الناس کے ساتھ خیر خواہی سے پیش آنے والا کسی اور کو نہ پایا۔سب مل کر خلوص دل سے دعا کرو کہ اللہ تعالیٰ ان پر رحمت کی برکھا برسائے ۔

خدا رحمت کند ایں عاشقان پاک طینت را حضرت ابو عبیدہ بن جراح کے


تفصیلی حالات زندگی معلوم کرنے کے لیے درج ذیل کتابوں کا مطالعہ کیجئے۔

 

1۔ طبقات ابن سعد فہرست دیکھیں
2۔الاصابة مترجم ٤٤٠٠
3۔الاستيعاب ٢/٣
4۔حلية الأوليا ١٠٠/١
5۔البدء والتاريخ. ٨٧/٥
6۔ صفة الصفوة. ١٤٢/١
7۔تاريخ الخميس. ٢٤٤/٢
8۔الرياض النضرة ٣٠٧
9۔ابن عساکر. ١٥٧/٧
10.اشھر مشاھیر الاسلام۔ ٥٠٤

 

حوالہ جات :

“حياتِ صحابہ کے درخشاں پہلو”

تا لیف: “داکتور عبدالر حمان رافت الباشا”

 

 

Table of Contents