Sections
< All Topics
Print

28. Hazrat Abdul Rehmaan Bin ‘Awf (رضی اللہ عنہ)

Hazrat Abdul Rehmaan Bin ‘Awf رضی اللہ عنہ

Jo maal tu ne Raah-e-Khuda mein kharch kia us mein Allah Ta’alaa barkat ataa kere aur jo maal apne paas rakha us mein bhi barkat inayat kere.
Dua-e-Rasool-e-Akram ﷺ

Un aath khush naseeb sahaba  رضی اللہ عنہmain se aik hain jinhein sab se pehlay islam qubool karne ka sharf haasil hoa.

Un das jaleel-ul-Qadar sahaba رضی اللہ عنہ main se aik hain jinhein duniya main jannat ki basharat di gayi.

Un chhe sahaba رضی اللہ عنہ main se aik hain jinhein Farooq-e-Azam ke baad khalifa muntakhib karne ke liye muqarrar kia gaya.

Un Jayyad ulama sahaba رضی اللہ عنہ main aik jisay Rasool-e-Aqdas ﷺ ki Hayaat-e-Tayyiba main fatwa jaari karne ki ijazat thi.

Zamana-e-Jahliat main un ka naam Abdul Amar tha jab islam qubool kia to Rasool-e-Aqdas ﷺ ne un ka naam Abdul Rahmaan rakha. Jo baad main Abdul Rahmaan Bin’Aof ke naam se mashhoor hoye.

Allah Ta’alaa un se raazi aur yeh apne Allah se raazi..


Hazrat Abdul Rahmaan Bin’Aof  ne Rasool-e-Aqdas ﷺ ke Daar-e-Arqam main baith kar Taleem-o-Tarbiyat ka aaghaz karne se pehlay aur Siddique-e-Akbar رضی اللہ عنہ ke islam qubool karne ke do roz baad islam qubool karliya tha. Islaam ki raah main woh tamaam museebatein bardasht ki jo Saff-e-Awwal ke musalmanoon ne jhelai theen, Lekin aap ne kamaal Sabr-o-Tahammul se kaam liya…Aap Raah-e-Haq Sadaaqat main saabit qadam rahay.

Aap ne deen ki hifaazat ke liye Saff-e-Awwal ke musalmanoon ke hamrah Habsah ki taraf hijrat ka safar ikhtiyar kia.

Jab kufar ki jaanib se pounchanay wali takaleef ki koi intahaa nah rahi to Allah Ta’alaa ne Rasool-e-Aqdas ﷺ  aur aap kay jaan nisar sahaba رضی اللہ عنہ ko Madinah  tayyiba hijrat kar jane ki ijazat day di to yeh un aali maqaam mohajir sahaba رضی اللہ عنہ main Sare-e-Fahrist thay jo soye Madinah deewana waar chalay, Jab Rasool-e-Aqdas ﷺ ne muhajreen aur Ansar kay darmiyaan bhai chaaray ki faza qaim ki, To Hazrat Abdul Rahman bin Auf رضی اللہ عنہ aur Hazrat S’aad bin Rabi رضی اللہ عنہ ke mabain rishta ukhuwwat qaim hoa. Hazrat S’aad ban Rabi رضی اللہ عنہ ne apne deeni bhai Hazrat Abdul Rahman bin Auf  se kaha: Aey bhai jaan! Main Ahal-e-Madinah main sab se ziyada maldaar hoon mere do baagh hain aur do biwiyan. Un main se jo baagh aap ko pasand hai main usay aap ke naam hiba kar deta hon aur aik biwi ko talaaq day deta hoon takeh aap us se shaadi kar ke apna ghar basayen.

Hazrat Abdul Rehmaan Bin Aof  ne kaha: Allah Ta’alaa aap ke Ahl-o-Ayaal aur maal main barket ataa farmaae. Aap mujhe manndi ka pata bta dein, Main wahan mahnat kar ke kamaon ga, Hazrat Abdul Rehmaan Bin Aof رضی اللہ عنہ ne Madinah tayyiba ki manndi main tijaarat ka pesha apnaya aur us kaarobar main Allah Ta’alaa ne itni barkat ataa farmai ke thoday hi arsay main achi khaasi raqam jama ho gayi.

Aik roz Rasool-e-Aqdas ﷺ  ki khidmat main haazir hoye, Aap se itar ki mehak aa rahi thi.

Rasool-e-Aqdas ﷺ ne khushtabee se farmaya : Abdul Rahman yeh kia?

Ba adab bolay: huzoor! Main ne shaadi kar li hai.

Aap ne poocha: Biwi ko kitna mahar diya hai ?

Arz ki: Sonay ki aik dali.

Aap ne farmaya: Walima karo, Khuwa aik bakri zibah karo. Allah Ta’ala aap ke Maal-o-Doulat main barkat ata a farmaay.

Hazrat Abdul Rehmaan Bin Aof farmanay lagay: Duniya mujh par fareeza hai, Main koi pathar bhi uthata hoon to us ke neechay se sona aur chandi haath lagta hai.

Medaan-e-Badar main Hazrat Abdul Rehmaan Bin Aof ne Allah ki raah main jihaad ka haq ada karte hue muqablay main aanay walay dushman deen Umair bin Usman ka’ab ka sir tan se judda kar diya.

Ghazwah uhad main yeh us waqt saabit qadam rahay jab aam mujahideen ke qadam dagmaga gaye thay, Aur yeh us waqt chattaan ki terhan jamay rahay jab ke shikast khorda bhaagnay par majboor hogaye thay. Jab aap is jihaad se faarigh hue to jism par bees se zayed gehray zakham aa chukay thay aur un main se baaz itnay gehray thay ke un main poora haath daakhil ho sakta tha.

Agar jaani aur maali jihaad ka mawazna kya jaye to Hazrat Abdul Rehmaan Bin Aof رضی اللہ عنہ jaani ki  bajaae maali jihaad main do qadam ag nazar atay hain.

Aik dafaa Rasool-e-Aqdas ﷺ ne lashkar tarteeb diya aur sahaba رضی اللہ عنہ main yeh Ailaan kya:

Jihad fund main chandah do, Main dushman ki srkobi ke liye aik lashkar rawana karna chahta hon Yeh ailaan suntay hi Hazrat Abdul Rahman Bin Aof jaldi se apne ghar gaye aur usi waqt wapas lout aay aur arz ki:

Ya Rasool Allah ﷺ! Ghar main chaar hazaar dinaar thay, Do hazaar aap ki khidmat main paish karta hon aur do hazaar apne Ahal-o-Ayaal kay liye ghar chore aaya hoon.

Rasool-e-Aqdas ﷺ ne yeh sun kar irshaad farmaya: Jo to ne Allah ki raah main paish kiye, Unhein Allah Ta’alaa qubool farmaay aur jo Ahal-o-Ayaal ke liye baaqi rakhay un main barket ataa farmaay.


Rasool-e-Aqdas ﷺ ne Ghazwah-e-Tabook ka iradah kya. Yeh woh aakhri jung hai jo aap ne ladi, Is main Mardaan-e-Jung ki tarhan Maal-o-Doulat ki bhi shadeed zaroorat thi, kyunkeh Roomi lashkar bohat bara tha, Us ke paas Maal-o-Mataa ki bhi rail pail thi safar bara taweel aur dushwaar guzaar tha, Sawaari kay liye uont aur ghoday bohat thodi tadaad main dastyab thay.

Yeh manzar bhi dekhnay main aaya ke chand Ahal-e-Emaan ne jihaad main shirkat ke liye Rasool-e-Aqdas ﷺ se ijazat talab ki aur aap ne un ki darkhwast mahz is liye mustard kar di keh un ke liye sawaari ka koi intizam nahi. Woh Zaar-o-Qitaar rotay hue wapas lautay aur yeh kehte jarahay thay kash! Aaj hamaray paas Zaad-e-Raah hota sawaari ka intizam hota to aaj is azeem sharf se mahroom nah hotay, Ghazwah tabook ke liye rawaana honay walay lashkar ko Jaish-ul-Usrah yani lashkar tang haal ka naam diya gaya.

Is ahem tareen moqay par Rasool-e-Aqdas ﷺ ne apne tamaam sahaba رضی اللہ عنہ ko Allah ki raah main kharch karne ka hukum diya aur yeh targheeb dilae ke is ka ajar Allah Ta’alaa ke haan bohat miley ga.

Musalman Nabi Akram ﷺ ki dawat par labbaik kehte hoye Sadqa-o-Khairaat jama karanay ke liye aik dosray se aagay badhay is dafaa bhi Hazrat Abdul Rahman ban Auf  ka palla bhaari raha aur jihaad ke liye be daregh chandah jama karaya, Un ka yeh andaaz dekh kar syyiduna Farooq-e-Azam farmanay lagey yun lagta hai ke aaj Abdul Rahman bin Auf  ne ghar waalon ke liye kuch baqi nahi rehne diya, Saara maal Hazoor ke qadmon main laakar dhair kar diya hai, Rasool-e-Aqdas ﷺ ne poocha:

Abdul Rehmaan! Kia tum kuch maal ghar walon ke liye bhi chode aay ho.

Arz ki: Haan! yaa Rasool Allahﷺ! jitna aaj aap ki khidmat main paish kya hai is se ziyada aur umdah maal Ahal-e-Khanah ke liye chode aaya hon.

Aap ne poocha kitna?

Arz ki: Kya Allah Ta’alaa ne us ki raah main kharch karne par rizaq ki farawani, Khair-o-Barkat aur Ajar-o-Sawaab ka wada nahi kia?


lashkar-e-Islaam Tabook ki taraf rawaana hogaya, Is safar main Allah Ta’alaa ne Hazrat Abdul Rahman bin Aof رضی اللہ عنہ ko woh sharf ataa kia jo is se pehlay kisi ko haasil nah hoa, Woh is tarhan ke namaz ka waqt ho gaya, Rasool-e-Aqdas ﷺ tashreef farmaan thay hazrat Abdul Rahman bin Aof ne imaamat ke faraiz anjaam diye pehli rak’at abhi khatam nah hui thi ke Rasool-e-Aqdas ﷺ tashreef le aaye aur jamaat main shaamil ho gaye, Aap ne yeh namaz Hazrat Abdul Rahman bin Aof ki iqtdaa main parhi.

Yeh hai naseeb ki baat: Yeh kitna bara sharf hai ke sayyid-ul-Mursaleen, Rahmat-ulil-Aalameen, Nabi ul Maznibeen apne jaan nisaar sahabi ki imaamat main namaz ada kar rahay hain.


Rasool-e-Aqdasﷺ ke wisaal ke baad Hazrat Abdul Rahman bin Auf رضی اللہ عنہ Ummhaat-ul-Momineen, Azwaaj-e-Mutahhrat ke gharelo akhrajaat ka khayaal rakhtay, Jab unhon ne safar par jaana hota to khidmat ke liye sath ho letay, Jab safar hajj ka iradah kartin to aap un ke liye sawaari ka intizam karte hodaj par sabz rang ka nihayat hi umdah kapra dalwa dete, Douraan-e-Safar jo jagah bhi unhein pasand aati wahein parao karne ka fori intizam karte, Bilashuba yeh bohat bara sharf hai jo Hazrat Abdul Rahman bin Aof رضی اللہ عنہ ko haasil hoa  Umahat-ul-Momineen ko un par bohat aetmaad tha jis par yeh Allah Ta’alaa ka har dam shukar ada karte rehtay.


Hazrat Abdul Rahman bin Auf ka aam musalmanoon aur khaas tor par Umhaat-ul-Momineen ke sath Husn-e-Sulooq ka is se andaza lagaya ja sakta hai ke aik dafaa aap ne apni zameen chalees hazaar dinaqr main farokht ki aur yeh saari raqam Rasool-e-Aqdas ﷺ ki waalida majida kay khandaan bani Zohrah aur Ahal-e-islam main se Fuqraa-o-Msakeen aur Azwaaj-e-Mutahhrat main baant di, Jab Umm-ul-Momineen hazrat Aisha Sadiqa رضی اللہ عنہ ki khidmat main un ka hissa paish kia gaya to aap ne poocha.

Yeh maal kis ne bheja hai? Aap ko bataaya gaya, Hazrat Abdul Rahman Bin Aof ne.

Aap ne farmaya: aik dafaa Rasool Allah ﷺ ne apni biwion ko mukhaatib karkay irshaad farmaya tha. Mere baad sirf wohi log tumhaari khidmat baja layein ge jo Saabir-o-Shaakir hon gay.”


Hazrat Abdul Rahman bin Aof ke baaray main Rasool-e-Aqdas ﷺ ki Du’aa-e-Khair-o-Barkat poori zindagi un par saaya figan rahi, Yahan tak keh aap tamaam sahaba رضی اللہ عنہ se ziyada maldaar aur Saahib-e-Sarwat ho gaye, Aap ki tijarat musalsal naffa bakhash hoti chali gayi. Aap kay tijaarti qaafiley Madinah Munawrah atay to Bashindgaan-e-Madinah ke liye gandum, ghee, Kapday, Bartan, khushbu aur deegar zaroriat ki cheeze apne hamrah laatay aur jo ashiya bach jatein, Unhen kisi doosri manndi main muntaqil kar dete.


Aik din Hazrat Abdul Rahman Bin Aof ka saat soo uonton par mushtamil tijaarti qaafila Madinah tayyiba main daakhil hoa, Sab uontniyan Saaz-o-Samaan se ldi hui theen, Jab yeh qaafla wahan pouncha to zameen thar tharanay lagi, Hazrat Aisha Sadiqa رضی اللہ عنہا ne poocha aaj yeh thar tharahat kaisi hai. Aap ko bataaya gaya ke Hazrat Abdul Rahman bin Aof ka saat soo uontnion par mushtamil tijaarti qaafila aa raha hai.

Yeh sun kar Hazrat Aisha رضی اللہ عنہ bohat khush huien aur bargaah Ilaahi main du’aa ki:

Ilaahi! Jo kuch tu ne inhen duniya main diya hai is main barkat ataa farma aur aakhirat main is se badh kar Ajar-o-Sawab se nawazna.

Phir kehnay lagein ke main ne Rasool-e-Aqdas ﷺ ko yeh irshaad farmaatay hue suna hai:

“Hazrat Abdul Rahman Bin Aof jannat main khushi se uchaltay hue daakhil ho ga”

Is se pehlay kay tijaarti qaafla padaao karta aik shakhs ne Hazrat Aisha رضی اللہ عنہا ke hawaalay se Hazrat Abdul Rahman bin Aof رضی اللہ عنہ ko jannat ki bishaarat di, Jab aap ne yeh bishaarat suni to khushi ki koi intahaa nah rahi dodtay hue Hazrat Aisha Sadiqa رضی اللہ عنہا ke paas puhanche aur arz ki:

Amma jaan! Kia aap ne mere liye jannat ki bishaarat kay kalimaat Rasool Aqdas ﷺ ki zabaan-e-Mubarak se khud sune  hain.

Farmaaya: Haan! Yeh sun kar kuch nah pouchiye keh un ki khushi ka kia aalam tha.

Farmanay lagey: Amma jaan! Gawah rehna. Main is khushi main saat soo uontnion par mushtamil apna tijaarti qaafila ma tamam Saaz-o-Samaan ke Allah ki raah main paish karta hoon.


Jis din se Hazrat Abdul Rahman Bin Aof ko jannat ki bishaarat mili, Us din se aur ziyadah hauslay kay saath Allah ki raah main dono hathon se be daregh dayen baen, Khufia-o-Ailania kharch karne lagey yahan tak keh chalees hazaar dinaar Allah ki raah main sirf kar diye.

Aik dafaa Mujahideen-e-Islam kay liye paanch so tarbiyat yaafta jungi ghoday aur aik dosray moqay par aik hazaar paanch so Arabi-ul-Nasal aseel ghoday mujahideen ke liye khareeday, Wafaat se chand roz pehlay tamam ghulam aazad kar diye, Aur yeh wasiyat lkhwayi ke Ahal-e-Badar main se jo sahaba bhi zindah hon, Un main se har aik ko chaar so dinar mere maal main se day diye jayen, Jin badri sahaba kiraam رضی اللہ عنہ ne wasiyat ke mutaabiq raqam wusool ki un ki tadaad taqreeban aik so thi wasiyat main yeh bhi likhwaya ke Umhaat-ul-Momineen main se har aik ko meri jaedad main se waafar miqdaar main hissa diya jaae.

Umm-ul-Momineen Hazrat Aisha Sadiqa رضی اللہ عنہ aksar un ke haq main yeh dua kartin:

“Ilaahi! Abdul Rahman bin Auf ko jannat ke thanday meethay chashme salsabeel se pani pilaana.”

Wasiat ke mutaabiq maal taqseem karne ke baad bhi wursa ke liye bohat sa maal baqi bach gaya, Unhon ne wirsay main aik hazaar uont, Chaar so ghoday, Teen hazaar bakriyan aur sogwaron main chaar biwiyan choden, Un main se har aik ke hissay main assi assi hazaar dinar aay, Wursa main sona aur chandi taqseem karne ke liye sonay aur chaandi ki dalionko kulhadihyon se kaatna padi, Jis se katnay walon ke haath zakhmi ho gaye, Yeh sab kuch Rasool-e-Aqdas ﷺ ki is duaa ka asar tha jo aap ne un kay Maal-o-Mataa main Khair-o-Barket kay liye ki thi.


Waafar miqdaar main Maal-o-Doulat se hazrat Abdul Rahman bin Aof nah kisi dunyawi ftne main mubtala hue aur nah un ki zaahiri haalat main koi tabdeeli peda hui, Jab log unhein apne khuddam aur ghulamoo ke darmiyan dekhte to hazrat Abdul Rahman ban auf aur ghulamoo ke darmiyan koi farq mahsoos nah karte.

Aik roz aap ki khidmat main khana paish kya gaya, Aap ka roza tha, Iftaar ka waqt qareeb tha. Aap ne pur takalouf khanay ki taraf dekhte hoye farmaya: Hazrat Wahab Bin Umair رضی اللہ عنہ shaheed hoye, Aur mujh se kahin behtar thay. Hamaray paas kafan ke liye sirf itna kapda tha keh agar un ka sir dhanpte to paon nangay ho jatay aur paon dhanpty to sir nanga ho jata, Phir Allah Ta’alaa ne hamaray liye dunyawi Maal-o-Mataa ki farawani kar di, Mujhe dar lagta hai ke kahin duniya hi main hamain. Nipata nah diya gaya ho. Is keh baad aap ne Zaar-o-Qitaar rona shuru kardiya, Hazrat Abdul Rahman Bin Aof par hazaar rashk qurbaan, Aap ko Sadiq-o-Masdooq sayyid-ul-Mursaleen, Shafi ul Maznibeen, Rasool-e-Aqdas ﷺ ne zindagi main jannat ki basharat di, Aap kay Jasd-e-Khaaki ko Rasool-e-Aqdas ﷺ ke mamu Hazrat S’aad bin Abi Waqas ne lahad main utaara. Aap ki Namaz-e-Janaza Zulnoorain sayyidna Usman ghanni ne padhaai janazay kay peechay chaltay hue Ameer-ul-Momineen hazrat Ali ne Kharaaj-e-Tahseen paish karte hoye farmaya:

Aey Abdul Rahman! To ne kharay sikkay haasil kiye aur khote sikkay mustard kardiye.” Aur jannat ke Khalis-o-Pakeeza mahol ko pa liya Allah aap par raham farmaay aasman teri lahad par shabnam afshani kere.


Hazrat Abdul Rahman Bin Aof mufassal Halaat-e-Zindagi ma’loom karnay kay liye darjzail kitaabon ka mutaall’a karain:

1: Sifat ul Safwah                                                                                   2/257

2: Hilyat ul Awliyaa                                                                               1/98

3: Tarikh ul Khamis                                                                               2/257

4: Al bad’o wal Tarikh                                                                           5/86

5: Al Riyaz ul Nazarah                                                                           2/214

6: Al Jam’o Bain Rijal al Sahihain                                                      241

7: Al Isaabah Mutarjim                                                                          5171

8: Al Seerat ul Nabawiyyah Libn-e-Hisam                                      fahrsid mulahazah kijiy

9: Hayat ul Sahabah     رضی اللہ عنہم                                                        fahrsid mulahazah kijiy

10: Hayat ul Sahabah                                                                              2/163

11: Al Bidayah wal Nihayah                                                                     2/340

12: Al Tabaqat ul Kibra                                                                              2/340

13: Tahzeeb ul Tahzeeb                                                                            6/162

REFERENCE:
Book: Hayat-e-Sahaba kay darakh shah pahelo.
By: Dr. Abdur Rahman Rafat Al- Pasha.

حضرت عبدالرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ

 

جو مال تونے راہ خدا میں خرچ کیا اس میں اللہ تعالٰی برکت عطا کرے اور جو مال اپنے پاس رکھا اس میں بھی برکت عنایت کرے:

(دعائے رسول اکرمﷺ)

 

ان آٹھ خوش نصیب صحابہ رضی اللہ عنہم میں سے ایک ہیں جنہیں سب سے پہلے اسلام قبول کرنے کا شرف حاصل ہوا۔

ان دس جلیل القدر صحابہ رضی اللہ عنہم میں سے ایک ہیں جنہیں دنیا میں جنت کی بشارت دی گئی۔

ان چھ ذیشان صحابہ رضی اللہ عنہم میں سے ایک ہیں جنہیں فاروق اعظم رضی اللہ عنہ کے بعد خلیفہ منتخب کرنے کے لئے مقرر کیا گیا۔

ان جید علماء صحابہ رضی اللہ عنہم میں ایک جسے رسول اقدسﷺ کی حیات طیبہ میں فتویٰ جاری کرنے کی اجازت تھی۔

زمانہ جاہلیت میں ان کا نام عبد عمرو تھا’ جب اسلام قبول کیا تو رسول اقدسﷺ نے ان کا نام عبدالرحمان رکھا۔ جو بعد میں عبدالرحمان بن عوف کے نام سے مشہور ہوئے۔

اللہ تعالیٰ ان سے راضی اور یہ اپنے اللہ سے راضی۔


حضرت عبدالرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ نے رسول اقدسﷺ کے دار ارقم میں بیٹھ کر تعلیم و تربیت کا آغاز کرنے سے پہلے اور صدیق اکبر رضی اللہ عنہ کے اسلام قبول کرنے کے دو روز بعد اسلام قبول کر لیا تھا۔ اسلام کی راہ میں وہ تمام مصیبتیں برداشت کیں جو صف اول کے مسلمانوں نے جھیلی تھیں، لیکن آپ نے کمال صبر و تحمل سے کام لیا…. آپ راہ حق و صداقت میں ثابت قدم رہے۔

آپ نے دین کی حفاظت کے لئے صف اول کے مسلمانوں کے ہمراہ حبشہ کی طرف ہجرت کا سفر اختیار کیا۔

جب کفار کی جانب سے پہنچنے والی تکالیف کی کوئی انتہا نہ رہی’ تو اللہ تعالیٰ نے رسول اقدسﷺ اور آپ کے جاں نثار صحابہ رضی اللہ عنہم کو مدینہ طیبہ ہجرت کر جانے کی اجازت دے دی تو یہ ان عالی مقام مہاجر صحابہ رضی اللہ عنہم میں سر فہرست تھے’ جو سوئے مدینہ دیوانہ وار چلے’ جب رسول اقدسﷺ نے مہاجرین اور انصار کے درمیان بھائی چارے کی فضا قائم کی’ تو حضرت عبدالرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ اور حضرت سعد بن ربیع رضی اللہ عنہ کے مابین رشتہ اخوت قائم ہوا۔ حضرت سعد بن ربیع رضی اللہ عنہ نے اپنے دینی بھائی حضرت عبد الرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ سے کہا اے بھائی جان! میں اہل مدینہ میں سب سے زیادہ مالدار ہوں، میرے دو باغ ہیں اور دو بیویاں۔ ان میں سے جو باغ آپ کو پسند ہے میں اسے آپ کے نام ہبہ کر دیتا ہوں اور ایک بیوی کو طلاق دے دیتا ہوں تاکہ آپ اس سے شادی کر کے اپنا گھر بسا لیں۔

حضرت عبدالرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ نے کہا: اللہ تعالی آپ کے اہل و عیال اور مال میں
برکت عطا فرمائے۔ آپ مجھے منڈی کا پتہ بتا دیں، میں وہاں محنت کرکے کماؤں گا، حضرت عبد الرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ نے مدینہ طیبہ کی منڈی میں تجارت کا پیشہ اپنایا اور اس کاروبار میں اللہ تعالی نے اتنی برکت عطا فرمائی کہ تھوڑے ہی عرصے میں اچھی خاصی رقم جمع ہو گئی۔

ایک روز رسول اقدسﷺ کی خدمت میں حاضر ہوئے، آپ سے عطر کی مہک آ رہی تھی۔

رسول اقدسﷺ نے خوش طبعی سے فرمایا: عبد الرحمان یہ کیا؟
باادب بولے: حضور! میں نے شادی کر لی ہے۔
آپ نے پوچھا: بیوی کو کتنا مہر دیا ہے؟
عرض کی: سونے کی ایک ڈلی۔

آپ نے فرمایا: ولیمہ کرو خواہ ایک بکری ذبح کرو’ اللہ تعالی آپ کے مال و دولت میں برکت عطا فرمائے۔

حضرت عبدالرحمان رضی اللہ عنہ فرمانے لگے: دنیا مجھ پر فریضہ ہے’ میں کوئی پتھر بھی اٹھاتا ہوں تو اس کے نیچے سے سونا اور چاندی ہاتھ لگتا ہے۔

میدان بدر میں حضرت عبد الرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ نے اللہ کی راہ میں جہاد کا حق ادا کرتے ہوئے مقابلے میں آنے والے دشمن دین عمیر بن عثمان بن کعب کا سر تن سے جدا کر دیا۔

غزوة احد میں یہ اس وقت ثابت قدم رہے جب عام مجاہدین کے قدم ڈگمگا گئے تھے اور یہ اس وقت چٹان کی طرح جمے رہے جب کہ شکست خوردہ بھاگنے پر مجبور ہو گئے تھے۔ جب آپ اس جہاد سے فارغ ہوئے تو جسم پر بیس سے زائد گہرے زخم آ چکے تھے اور ان میں سے بعض اتنے گہرے تھے کہ ان میں پورا ہاتھ داخل ہو سکتا تھا۔

اگر جانی اور مالی جہاد کا موازنہ کیا جائے تو حضرت عبدالرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ جانی کی بجائے مالی جہاد میں دو قدم آگے نظر آتے ہیں۔

ایک دفعہ رسول اقدسﷺ نے لشکر ترتیب دیا اور صحابہ رضی اللہ عنہم میں یہ اعلان کیا۔

“جہاد فنڈ میں چندہ دو’ میں دشمن کی سرکوبی کے لئے ایک لشکر روانہ کرنا چاہتا ہوں”

یہ اعلان سنتے ہی حضرت عبدالرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ جلدی سے اپنے گھر گئے اور اسی وقت واپس لوٹ آئے اور عرض کی:

یا رسول اللہﷺ گھر میں چار ہزار دینار تھے، دو ہزار آپ کی خدمت میں پیش کرتا ہوں اور دو ہزار اپنے اہل و عیال کے لئے گھر چھوڑ آیا ہوں۔

رسول اقدسﷺ نے یہ سن کر ارشاد فرمایا: جو تو نے اللہ کی راہ میں پیش کئے’ انہیں اللہ تعالیٰ قبول فرمائے اور جو اہل و عیال کے لئے باقی رکھے ان میں برکت عطا فرمائے۔


رسول اقدس صلی اللہ علیہ وسلم نے غزوہ تبوک کا ارادہ کیا۔ یہ وہ آخری جنگ ہے جو آپ نے لڑی، اس میں مردان جنگ کی طرح مال و دولت کی بھی شدید ضرورت تھی، کیونکہ رومی لشکر بہت بڑا تھا، اس کے پاس مال و متاع کی بھی ریل پیل تھی، سفر بڑا طویل اور دشوار گذار تھا، سواری کے لئے اونٹ اور گھوڑے بہت تھوڑی تعداد میں دستیاب تھے۔

یہ منظر بھی دیکھنے میں آیا کہ چند اہل ایمان نے جہاد میں شرکت کے لئے رسول اقدسﷺ سے اجازت طلب کی اور آپ نے ان کی درخواست محض اس لئے مسترد کر دی کہ ان کے لئے سواری کا کوئی انتظام نہیں۔ وہ زار و قطار روتے ہوئے واپس لوٹے اور یہ کہتے جا رہے تھے’ کاش! آج ہمارے پاس زاد راہ ہوتا’ سواری کا انتظام ہوتا’ تو آج اس عظیم شرف سے محروم نہ ہوتے، غزوہ تبوک کے لئے روانہ ہونے والے لشکر کو جيش العسرۃ یعنی لشکر تنگ حال کا نام دیا گیا۔

اس اہم ترین موقعے پر رسول اقدسﷺ نے اپنے تمام صحابہ رضی اللہ عنہم کو اللہ کی راہ میں خرچ کرنے کا حکم دیا اور یہ ترغیب دلائی کہ اس کا اجر اللہ تعالی کے ہاں بہت ملے گا۔

مسلمان نبی اکرمﷺ کی دعوت پر لبیک کہتے ہوئے صدقہ و خیرات جمع کرانے کے لئے ایک دوسرے سے آگے بڑھے، اس دفعہ بھی حضرت عبدالرحمان بن عوف کا پلہ بھاری رہا اور جہاد کے لئے بے دریغ چندہ جمع کرایا ان کا یہ انداز دیکھ کر سیدنا فاروق اعظم رضی اللہ عنہ فرمانے لگے یوں لگتا ہے کہ آج عبد الرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ نے گھر والوں کے لئے کچھ باقی نہیں رہنے دیا’ سارا مال حضورﷺ کے قدموں میں لا کر ڈھیر کر دیا ہے، رسول اقدسﷺ نے پوچھا:
عبد الرحمان! کیا تم کچھ مال گھر والوں کے لئے بھی چھوڑ آئے ہو۔
عرض کی: ہاں یا رسول اللہﷺ! جتنا آج آپ کی خدمت میں پیش کیا ہے اس سے زیادہ اور عمدہ مال اہل خانہ کے لیے چھوڑ آیا ہوں۔
آپ نے پوچھا کتنا؟
عرض کی: کیا اللہ تعالی نے اس کی راہ میں خرچ کرنے پر رزق کی فراوانی’ خیرو برکت اور اجر وثواب کا وعدہ نہیں کیا؟


لشکر اسلام تبوک کی طرف روانہ ہو گیا، اس سفر میں اللہ تعالٰی نے حضرت عبدالرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ کو وہ شرف عطا کیا جو اس سے پہلے کسی کو حاصل نہ ہوا’ وہ اس طرح کہ نماز کا وقت ہو گیا۔ رسول اقدسﷺ تشریف فرما نہ تھے، حضرت عبدالرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ نے امامت کے فرائض انجام دیئے پہلی رکعت ابھی ختم نہ ہوئی تھی کہ رسولﷺ تشریف لے آئے اور جماعت میں شامل ہو گئے، آپ نے یہ نماز حضرت عبدالرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ کی اقتداء میں پڑھی۔

یہ ہے نصیب کی بات: یہ کتنا بڑا شرف ہے کہ سید المرسلین، رحمتہ للعالمین، شفیع المذنبین اپنے جاں نثار صحابی کی امامت میں نماز ادا کر رہے ہیں۔


رسول اقدسﷺ کے وصال کے بعد حضرت عبدالرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ امهات المؤمنین، ازواج مطہرات کے گھریلو اخراجات کا خیال رکھتے۔ جب انہوں نے سفر پر جانا ہوتا تو خدمت کے لئے ساتھ ہو لیتے، جب سفرحج کا ارادہ کرتیں تو آپ ان کے لئے سواری کا انتظام کرتے’ ہودج پر سبز رنگ کا نہایت ہی عمدہ کپڑا ڈلوا دیتے، دوران سفر جو جگہ بھی انہیں پسند آتی، وہیں پڑاؤ کرنے کا فوری انتظام کرتے، بلاشبہ یہ بہت بڑا شرف ہے جو حضرت عبدالرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ کو حاصل ہوا، امہات المؤمنین کو ان پر بہت اعتماد تھا جس پر یہ اللہ تعالیٰ کا ہر دم شکر ادا کرتے رہتے۔


حضرت عبدالرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ کا عام مسلمانوں اور خاص طور پر امہات المومنین کے ساتھ حسن سلوک کا اس سے اندازہ لگایا جاسکتا ہے کہ ایک دفعہ آپ نے اپنی زمین چالیس ہزار دینار میں فروخت کی اور یہ ساری رقم رسول اقدسﷺ کی والدہ ماجدہ کے خاندان بنی زہرہ اور اہل اسلام میں سے فقراء و مساکین اور ازواج مطہرات میں بانٹ دی’ جب ام المومنین حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہ کی خدمت میں ان کا حصہ پیش کیا گیا تو آپ نے پوچھا۔

یہ مال کس نے بھیجا ہے، آپ کو بتایا گیا۔ حضرت عبد الرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ نے۔

آپ نے فرمایا: ایک دفعہ رسول اللہﷺ نے اپنی بیویوں کو مخاطب کر کے ارشاد فرمایا تھا۔ “میرے بعد صرف وہی لوگ تمہاری خدمت بجا لائیں گے جو صابر و شاکر ہوں گے۔”


حضرت عبدالرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ کے بارے میں رسول اقدسﷺ کی دعائے خیر و برکت پوری زندگی ان پر سایہ فگن رہی، یہاں تک کہ آپ تمام صحابہ رضی اللہ عنہم سے زیادہ مالدار اور صاحب ثروت ہو گئے، آپ کی تجارت مسلسل نفع بخش ہوتی چلی گئی۔ آپ کے تجارتی قافلے مدینہ منورہ آتے تو باشندگان مدینہ کے لئے گندم، گھی، کپڑے، برتن، خوشبو اور دیگر ضروریات کی چیزیں اپنے ہمراہ لاتے اور جو اشیاء بچ جاتیں، انہیں کسی دوسری منڈی میں منتقل کر دیتے۔


ایک دن حضرت عبد الرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ کا سات سو اونٹوں پر مشتمل تجارتی قافلہ مدینہ طیبہ میں داخل ہوا’ سب اونٹنیاں ساز و سامان سے لدی ہوئی تھیں، جب یہ قافلہ وہاں پہنچا تو زمین تھر تھرانے لگی۔ حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا نے پوچھا، آج یہ تھر تھراہٹ کیسی ہے۔ آپ کو بتایا گیا کہ حضرت عبدالرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ کا سات سو اونٹنیوں پر مشمتل تجارتی قافلہ آ رہا ہے۔

یہ سن کر حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا بہت خوش ہوئیں اور بارگاہ الہی میں دعا کی۔

الہی! جو کچھ تو نے انہیں دنیا میں دیا ہے اس میں برکت عطا فرما اور آخرت میں اس سے بڑھ کر اجر و ثواب سے نوازنا۔

پھر کہنے لگیں کہ میں نے رسول اقدسﷺ کو یہ ارشاد فرماتے ہوئے سنا ہے:
“حضرت عبدالرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ جنت میں خوشی سے اچھلتے ہوئے داخل ہو گا”

اس سے پہلے کہ تجارتی قافلہ پڑاؤ کرتا ایک شخص نے حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا کے حوالے سے حضرت عبدالرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ کو جنت کی بشارت دی’ جب آپ نے یہ بشارت سنی تو خوشی کی کوئی انتہا نہ رہی، دوڑتے ہوئے حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا کے پاس پہنچے اور عرض کی: اماں جان! کیا آپ نے میرے لئے جنت کی بشارت کے کلمات رسول

اقدسﷺ کی زبان مبارک سے خود سنے ہیں۔
فرمایا: ہاں۔ یہ سن کر کچھ نہ پوچھئے کہ ان کی خوشی کا کیا عالم تھا۔
فرمانے لگے: اماں جان! گواہ رہنا۔ میں اس خوشی میں سات سو اونٹنیوں پر مشتمل اپنا تجارتی قافلہ مع تمام ساز و سامان کے اللہ کی راہ میں پیش کرتا ہوں۔


جس دن سے حضرت عبدالرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ کو جنت کی بشارت ملی’ اس دن سے اور زیادہ حوصلے کے ساتھ اللہ کی راہ میں دونوں ہاتھوں سے بے دریغ دائیں بائیں، خفیہ و اعلانیہ خرچ کرنے لگے، یہاں تک کہ چالیس ہزار دینار اللہ کی راہ میں صرف کر دیئے۔

ایک دفعہ مجاہدین اسلام کے لئے پانچ سو تربیت یافتہ جنگی گھوڑے اور ایک دوسرے موقعے پر ایک ہزار پانچ سو عربی النسل اصیل گھوڑے مجاہدین کے لئے خریدے، وفات سے چند روز پہلے تمام غلام آزاد کر دئیے، اور یہ وصیت لکھوائی کہ اہل بدر میں سے جو صحابہ بھی زندہ ہوں، ان میں سے ہر ایک کو چار سو دینار میرے مال میں سے دے دیئے جائیں’ جن بدری صحابہ کرام رضی اللہ عنہم نے وصیت کے مطابق رقم وصول کی ان کی تعداد تقریباً ایک سو تھی وصیت میں یہ بھی لکھوایا کہ امہات المومنین میں سے ہر ایک کو میری جائیداد میں سے وافر مقدار میں حصہ دیا جائے۔

ام المومنین حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا اکثر ان کے حق میں یہ دعا کرتیں۔

الہی! عبد الرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ کو جنت کے ٹھنڈے میٹھے چشمے سلسبیل سے پانی پلانا”

وصیت کے مطابق مال تقسیم کرنے کے بعد بھی ورثاء کے لئے بہت سا مال باقی بچ گیا’ انہوں نے ورثے میں ایک ہزار اونٹ، چار سو گھوڑے، تین ہزار بکریاں اور سوگواروں میں چار بیویاں چھوڑیں، ان میں سے ہر ایک کے حصے میں اسی اسی ہزار دینار آئے’ ورثاء میں سونا اور چاندی تقسیم کرنے کے لئے سونے اور چاندی کی ڈلیوں کو کلہاڑیوں سے کاٹنا پڑا’ جس سے کاٹنے والوں کے ہاتھ زخمی ہو گئے’ یہ سب کچھ رسول اقدسﷺ کی اس دعا کا اثر تھا جو آپ نے ان کے مال و متاع میں خیر و برکت کے لئے کی تھی۔



وافر مقدار میں مال و دولت سے حضرت عبدالرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ نہ کسی دنیاوی فتنے میں مبتلا ہوئے اور نہ ان کی ظاہری حالت میں کوئی تبدیلی پیدا ہوئی، جب لوگ انہیں اپنے خدام اور غلاموں کے درمیان دیکھتے تو حضرت عبدالرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ اور غلاموں کے درمیان کوئی فرق محسوس نہ کرتے۔

ایک روز آپ کی خدمت میں کھانا پیش کیا گیا، آپ کا روزہ تھا، افطار کا وقت قریب تھا۔ آپ نے پر تکلف کھانے کی طرف دیکھتے ہوئے فرمایا: حضرت وہب بن عمیر رضی اللہ عنہ شہید ہوئے اور مجھ سے کہیں بہتر تھے۔ ہمارے پاس کفن کے لئے صرف اتنا کپڑا تھا کہ اگر ان کا سر ڈھانپتے تو پاؤں ننگے ہو جاتے اور پاؤں ڈھانپتے تو سر ننگا ہو جاتا’ پھر اللہ تعالیٰ نے ہمارے لئے دنیاوی مال و متاع کی فراوانی کر دی، مجھے ڈر لگتا ہے کہ کہیں دنیا ہی میں ہمیں نپٹا نہ دیا گیا ہو۔ اس کے بعد آپ نے زار و قطار رونا شروع کر دیا، حضرت عبد الرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ پر ہزار رشک قربان، آپ کو صادق و مصدوق سید المرسلین، شفیع المذنبین’ رسول اقدسﷺ نے زندگی میں جنت کی بشارت دی، آپ کے جسد خاکی کو رسول اقدسﷺ کے ماموں حضرت سعد بن ابی وقاص رضی اللہ عنہ نے لحد میں اتارا۔ آپ کی نماز جنازہ ذوالنورین سیدنا عثمان غنی رضی اللہ عنہ نے پڑھائی، جنازے کے پیچھے چلتے ہوئے امیر المومنین حضرت علی رضی اللہ عنہ نے خراج تحسین پیش کرتے ہوئے فرمایا: “اے عبد الرحمان! تو نے کھرے سکے حاصل کئے اور کھوٹے سکے مسترد کر دیئے۔” اور جنت کے خالص و پاکیزہ ماحول کو پا لیا اللہ آپ پر رحم فرمائے، آسمان تیری لحد پر شبنم افشانی کرے۔


حضرت عبدالرحمان بن عوف رضی اللہ عنہ کے مفصل حالات زندگی معلوم کرنے کے لئے درج ذیل کتابوں کا مطالعہ کریں۔
ا- صفته الصفوة ۲/ ۲۵۷
٢- حلية اولياء ۱/ ۹۸
۳- تاريخ الخميس ۲/ ۲۵۷
۴۔ البدء والتاريخ ۵/ ۸۶
٥- الرياض النضرة ۲/ ۲۴۱
۶- الجمع بين رجال الصحيحين ۲۴۱
۷۔ الاصابة مترجم ۵۱۷۱
۸۔ السيرة النبوية لابن هشام
(فهرست ملاحظہ کیجئے)
۹۔ حياة الصحابة رضی اللہ عنہم
(فهرست ملاحظہ کیجئے)
٩- حياة الصحابة ۶/ ۱۶۳
١٠- البداية والنهاية ۲/ ۳۴۰
۱۱- الطبقات الكبرى ۲/ ۳۴۰
١٣- تهذيب التهذيب ١٦٢/٦

 

حوالہ جات :

“حياتِ صحابہ کے درخشاں پہلو”

تا لیف: “داکتور عبدالر حمان رافت الباشا”

 

 

Table of Contents