Sections
< All Topics
Print

19. Hazrat Usaid Bin Huzair(رضی اللہ عنہ)

Hazrat Usaid Bin Huzair رضی اللہ عنہ

Usaid! woh to farishtay thay jo teri tilaawat sun rahay thay”
Farmaan-e-Nabwi ﷺ

Hazrat Musa’b Bin Umair رضی اللہ عنہ jab pehlay tableeg’hi mission par Yasrab puhanche to aap ne qabeela khazraj ke aik sardar Asad Bin zurarah  ke haan qiyam kiya.

Us ne apne ghar mein se aik kamrah un ke qiyam ke liye makhsoos kar diya, Jisay woh tableeg’hi maqaasid ke liye istemaal karte, Hazrat Musa’b Bin Umair رضی اللہ عنہ ki shireen kalaami, Saaf goi, Khush akhlaaqi aur Noor-e-Emani ki badolat Bashindgaan-e-Yasrab taizi se un ke garweedah honay lagey, Sab se badh kar jis khoobi ne logon ko mutaasir kiya woh un ka nihaiyat surilee aawaaz mein Quran-e-Majeed ki tilaawat ka dilkash andaaz tha, Jis se pathar jaisay dil naram ho jatay, Sunney walon ki aankhon se aansoo jari ho jatay, Aap ki har majlis mein kuch afraad Wa’az-o-Naseehat se mutaasir ho kar Dairaa-e-Islam mein daakhil ho jatay.


Aik din Asad Bin Zurarah apne Mu’aziz mahman Hazrat Musa’b Bin Umair رضی اللہ عنہ ke sath ghar se bahir niklay taakeh qabeela bano Abdulasahl ke chand afraad se mulaqaat karein, Aur un ke samnay islam ki dawat paish karein, Dono aik baagh mein daakhil hue aur meethay pani ke aik chashmay ke paas baith gaye, Dekhte hi dekhte woh log un ke ird gird jama ho gaye jo abhi naye naye musalman hue thay aur chand ghair muslim bhi aap ki baatein sunnney ke liye qareeb aa kar baith gaye, Aap ne nihaiyat piyare andaaz mein un ke samnay islam ki sachi dawat paish karni shuru ki,  Sab hi khaamoshi aur tawajah se sunney aur aap ki jadu baiyani se mutaasir honay lagey.


Aik roz Ahal-e-Yasrab mein eik shakhs ne Usaid Bin Huzair aur Saad Bin Mu’az ko ittila di, ( yeh dono qabeela Uos ke sardar thay) ke aik makki nojawaan un ke gharon ke qareeb sukoonat pazeer hai, Logon ko apne deen ki taraf dawat dainay mein din raat masroof hai aur Asad Bin Zaraah ne usay apne ghar thehraya huwa hai, Yeh khabar sun kar Sa’ad Bin Mu’az ne Usaid Bin Huzair se kaha:

“tera kuch nah rahay, Foran jao,  Is Makki nojawaan ki khabar lo jis ne hamaray gharon ka rukh kar rakha hai, Woh chahta hai ke hamaray kamzor dil logon ko warghalaye aur hamaray khudaaon ki tuheen kere,  Usay roko aur tanbeeh kar do ke aaj ke ba’ad hamaray ilaqay mein qadam nah rakhay, Phir afsurdah ho kar kehnay laga: Agar yeh meri khaala ke betay Asad Bin Zurarah ke haan mahman nah hota to mein khud is ki khabar laita aur usay foran yahan se bhaag jane par majboor kar deta.”


Sa’ad Bin Mu’az ki baatein sun kar Usaid Bin Huzair  ne naiza pakra aur seedha baagh ki taraf chal diya, Asa’d Bin Zurarah ne jab door se usay baagh ki taraf atay hue dekha to Hazrat Musa’b Bin Umair رضی اللہ عنہ ke kaan mein kaha woh dekho qabeeley ka sardar Usaid Bin Huzair  aa raha hai, Bohat se kamalaat ki bina par usay qabeeley mein Izzat-o-Ahtraam ki nigaah se dekha jata hai, Agar yeh musalman ho jaye to is ki wajah se bohat se log islaam qubool kar lein ge. Az Raah-e-Karam is ke samnay Allah ka paighaam umdah aur dil-nasheen andaaz mein paish karen.


Dekhte hi dekhte Usaid Bin Huzair barray tumturaq aur Roab-o-Dabdaba ke sath majma’en ke samnay aa kharaa huwa Hazrat Musa’b Bin Umair رضی اللہ عنہ ko mukhaatib kar kay kehnay laga: “Mujhe yeh batao ke tumhen hamaray gharon ki taraf rukh karne ki jurrat kaisay hui? Hamaray kamzor dil logon ko phislaney aur warghalanay ke liye tumhen kis ne ijazat di. Kaan khol kar meri baat suno agar tumhen apni jaan ki zaroorat hai to isi waqat hamari basti se nikal jao”.

Hazrat Musa’b Bin Umair رضی اللہ عنہ ne Noor-e-Imaan se chamakate hue chehray ke sath Usaid Bin Huzair ki taraf dekhaa aur nihaiyat naram lehjey aur meethay andaaz mein irshad farmaya:

” Mere bhaai! kiya tumhen khair aur bhalaai matloob hai ?”

 Us ne badi be niayazi se jawab diya

Khair aur bhalai kiya hoti hai ?”

Aap ne farmaya:

Aap hamaray paas chand lamhay bathain, Meri baatein sunien, Agar aap ko yeh pasand aayen to qubool kar lena aur agar pasand nah aayen hamara aap se waadaa rahaa ke hum yahaan se chalay jayein ge aur dobarah kabhi is taraf ka rukh nahi karein ge, Yeh sun kar Usaid Bin Huzair ne kaha:

“Baat to aap ne dil lagti ki hai.” Sath hi apnaa naizah zameen mein garhaa aur aaraam se baith gaya, Hazrat Musa’b Bin Umair رضی اللہ عنہ dill-nasheen  andaaz mein us ke samnay islaam ki khoobiyan aur fazaail baiyaan karne aur dill-pazeer lehjey mein aayaat Qurani ki tilaawat karne lagey, Jis se us ke chehray se dheeray dheeray inqibaaz door honay laga. Bil aakhir woh Jazb-o-Kaif ke aalam mein pukaar utha, Aap ki baatein kiya khoob hain? Kis qadar dill-nasheen aur dil ghudaaz hain? Jis kalaam ki aap tilawat karte hain woh bohat azeem kalaam hai, Phir us ne jhuki hui nazron se baa adab andaaz mein poocha:

“Islaam mein daakhil honay ka kiya tareeqa hai? “Hazrat Musa’b Bin Umair رضی اللہ عنہ ne irshad farmaya: “Pehlay ghusal karo, Pakeeza libaas pehano aur phir yeh kalmaa parho:

لاالہ الا اللہ محمد رسول اللہ

“Allah ta’ala ke siwaa koi Ma’abood-e-Haqeeqi nahi aur Hazrat Mohammad (ﷺ) Allah ke rasool hain.”

Is ke ba’ad do (2) raka’at namaz adaa karo, Yeh sun kar woh majlis se uthaa, Qareebi kunwein par gaya, Ghusal kiya kapray dhoye kalma tayyiba parha, Do (2) raka’at namaz adaa ki aur Sarzameen-e-Arab ka aik azeem supoot maahir shehsawaar, Danishwar aur qabeela uos ka har dil-azeez sardaar Daira-e-Islaam mein daakhil ho gaya.

Zaati kamalaat ki binaa par qabeeley ke afraad se Kaamil ke laqab se pukaraa karte thay, Yeh baik waqat Saif-o-Qalam , Shahsawaari-o-Teerandazi,  Najaabat-o-Sharaafat, Aqal-o-Danish aur Fun-e-Kitaabat mein khaas maqam rakhtay thay, Ba’ad mein yehi Hazrat Sa’ad Bin Mu’az ke islam qubool karne ka baai’s banay phir un dono ke zari’ye qabeela uos ke aksar afraad Daira-e-Islaam mein daakhil ho gaye, Is ke ba’ad Madinah Tayyiba ko Rasool Allah (ﷺ) ke liye Maqaam-e-Hijrat, Jaye panah aur Daar-ul-Hukoomat ban’nay ka Sharf haasil huwa.


Jab Hazrat Musa’b Bin Umair رضی اللہ عنہ se Hazrat Usaid Bin Huzair رضی اللہ عنہ ne Qura’an Majeed ki tilaawat suni thi to un ke dil mein Qura’an Majeed ki walehaanaa mohabbat paida ho gayi thi, Aap Qura’an Majeed ki taraf is tarhan mutwajjah hue jaisay koi piyasaa garam tareen din mein meethay aur thanday chashmey ki taraf lapaktaa hai, Bil aakhir yeh Qura’an-e-Majeed hi ke ho kar reh gaye, Is ke ba’ad inhein yaa to ghaazi Mujaahid ke roop mein aur yaa phir Qura’an-e-Majeed ki tilaawat mein munhamik dekhaa gaiya, Aap ko qudrat ki jaanib se shereen kalaami, Khush zouqi aur surilee  aawaaz ka waafir hissa mila tha, Jab raat ka sannataa chaa jata, Log neend ki aagosh mein loriyaan lainay lagtay to aap khush ilhaani se Qura’an-e-Majeed parhna shuru kar dete, Sahaba karaam رضی اللہ عنہم aap ki tilaawat sunney ke muntazir rehtay, Khush naseeb hai woh insaan jisay Hazrat Usaid Bin Huzair رضی اللہ عنہ ki zubaan mubarak se tilaawat Qura’an sunney ka ittafaq huwa, Aap hoo baahoo usi tarhaan Qura’an-e-Majeed parhte jaisa ke Rasool Allah (ﷺ) par naazil huwa tha.


Insaan to kujaa farishtay bhi aap ki tilaawat sun kar lutaf andoz hotay, Aik raat ka waqi’ya hai keh Hazrat Usaid Bin Huzair apne ghar ke sehan mein letey hue thay, Aap ka betaa Yahyaa sehan ki aik janib soya huwa tha aur paas hi woh ghora bandha huwa tha jisay aap ne jihaad ke liye tayyaar kiya tha, Raat pur sukoon thi, Aasman saaf shafaaf tha, Chasham-e-Falak piyar bharay andaaz mein pur sakoon zameen ko dekh rahi thi, Hazrat Usaid Bin Huzair رضی اللہ عنہ ke dil mein aaya ke pur num fizaa ko Qura’ani mehek se mua’ttar kiya jaye unhon ne dil gudaaz aawaaz se in aayaat ki tilaawat shuru kar di:

الۗمّۗ     Ǻ۝ ذٰلِكَ الْكِتٰبُ لَا رَيْبَ     ٻ فِيْهِ   ڔ ھُدًى لِّلْمُتَّقِيْنَ    Ą۝ الَّذِيْنَ يُؤْمِنُوْنَ بِالْغَيْبِ وَ يُـقِيْمُوْنَ الصَّلٰوةَ وَ مِمَّا رَزَقْنٰھُمْ يُنْفِقُوْنَ    Ǽ۝ۙ وَ الَّذِيْنَ يُؤْمِنُوْنَ بِمَآ اُنْزِلَ اِلَيْكَ وَمَآ اُنْزِلَ مِنْ قَبْلِكَ    ۚ   وَبِالْاٰخِرَةِ ھُمْ يُوْقِنُوْنَ   Ć۝ۭ “Al-Baqraah  ” 

“alif, laam, meem. Yeh Allah ki kitaab hai, Is mein koi shak nahi, Hidaiyat hai un parhez gaar logon ke liye jo ghaib par imaan laatay hain, Namaz qaaim karte hain, Jo rizaq hum ne un ko diya hai, Is mein se kharch karte hain aur jo kitaab tum par naazil ki gayi hai ( yani Qura’an ) aur jo kitaaben tum se pehlay naazil ki gayi theen, Un sab par imaan laatay hain aur aakhirat par yaqeen rakhtay hain. “

Jab ghoday ne aap ki dil soaz aawaaz suni to taizi se aik chakkar lagaya, Khatrah tha ke rassi toot jaye, Yeh manzar dekh kar aap ne tilaawat rok di, Ghoda bhi sukoon se khara ho gaya, Aap ne phir parhna shuru kya.

اُولٰۗىِٕكَ عَلٰي ھُدًى مِّنْ رَّبِّهِمْ   ۤ   وَاُولٰۗىِٕكَ ھُمُ الْمُفْلِحُوْنَ   Ĉ۝

“Aisay log apne Rab ki taraf se Raah-e-Raast par hain aur wohi Falaah panay walay hain .”

Ghoday ne phir uchalnaa shuru kar diya, Aap khamosh hue to ghoda bhi sukoon se khara ho gaya, Aap ne waqfay waqfay se tilaawat ki joun-hi aap tilaawat shur’u kar dete ghoda bidakney aur uchalnay lagta, Jab aap khaamosh ho jatay woh bhi aaraam se khara ho jata aap ko yeh khatrah la-haq huwa ke kahin yeh ghoda masti mein aa kar mere betay Yahyaa ko rond nah daaley. Aap betay ko jaganay ke liye is ki taraf gaye. Kiya dekhte hain ke aasman par aik chhatri numaa baadal ka tukraa hai aur is ke sath chairaagh numaa roshan qandeelein latak rahi hain, Jin ki ziaa paashiyon ne charoun taraf roshni aur chamak damak phailaa rakhi hai, Aap ke dekhte hi yeh baadal ka tukraa uopar chadhnaa shuru huwa yahan tak ke aankhon se ujhal ho gaya, Subah hui to Hazrat Usaid Bin Huzair رضی اللہ عنہ ne Rasool-e-Akram (ﷺ)  ki khidmat-e-Aqdas mein haazri di aur raat ka yeh Ajeeb-o-Ghareeb waqi’yaa baiyaan kiya, Aap ne maajraa sun kar irshad farmayaa:

“Usaid! yeh to farishtay thay jo teri tilaawat sun rahay thay.

Agar tum apni tilaawat ko musalsal jaari rakhtay to yeh bilkul qareeb aa jate aur log inhen Bachasham-e-Khud dekh satke .”


Jis tarhan Hazrat Usaid Bin Huzair رضی اللہ عنہ ko Qura’an Majeed ke saath mohabbat thi, Isi tarhan Rasool-e-Akram (ﷺ) ke sath walehaanaa ulfat thi. Yeh apne baray mein baiyaan karte hue irshaad farmatay hain ke: “Jab mein Qura’an Majeed ki tilaawat karta hon to mera dil Emaan-o-Yaqeen ki doulat se malaa maal ho jata hai, Dil par noorani tajlliyaat ka Wurood honay lagta hai aur bi ainihe mere dil ki yeh kefiyat us waqat hoti hai jab mein Rasool-e-Aqdas (ﷺ) ke Chehra-e-Anwar ko apni nigahon se daikhta hon.” Farmatay hain keh meri dili tamannaa thi ke mujhe mauqa miley to aap ke jism Athar-o-Aqdas ko choom lon, Aik din meri yeh dili tamannaa bhi poori ho gayi, Huwa is tarhaan ke aik roz mein majlis mein betha logon ko naseehat aamoz kahaniyaan suna raha tha, Rasool-e-Akram (ﷺ) ne Ba-nazr-e-Istahsaan dekhte hue meri baghal mein chutki li, Mein ne arz ki: “Ya Rasool Allah (ﷺ)! Is se mujhe takleef hui,” Rahmat-ul-Lila’alaameen ne  irshad farmaya:

“Usaid! agar tumhen takleef hui hai to mujh se badlaa le lo,” Mainey arz ki: Yaa Rasool Allah (ﷺ) aap ke badan par to qameez  hai, Lekin mere badan par qameez  nahi”.

Yeh sun kar aap ne badlaa dainay ke liye qameez  utaar di to mein aap se lipat gaya aur aap ke jisam Athar- o-Aqdas ko choomnay laga,  Aur sath hi mein ne apni is tamannaa ka izhaar karte hue arz ki:

Yaa Rasool Allah (ﷺ)! Mere maan baap aap par qurbaan hon, jab se mein aap par imaan laayaa hon, isi din se meri yeh dili tamannaa thi keh aap ke Jism-e-Athar ko choomoon, Allah ta’alaa ka shukar hai ke aaj meri yeh tamannaa poori hui .”


Rasool Allah (ﷺ) bhi Hazrat Usaid رضی اللہ عنہ se bohat piyaar karte thay, Islaam qubool karne mein un ki Sabqat ko qadar ki nigaah se dekhte ghazwah u’had mein jis andaaz se unhon ne Rasool-e-Akram (ﷺ) ka jawaanmardi aur bahaduri se difa’a kiya, Woh bila-shubaa aik Azeem-ul-Shaan karnaamaa hai, Jidhar se aap ki taraf koi teer aataa foran agay badhatay aur teer seedhaa in ke jisam mein paivast ho jata, Is tarhaan ghazwah Uhad mein saat (7) muhlik teer unhon ne apne badan par jhail kar Rasool-e-Aqdas (ﷺ) ke sath walehaanaa Aqeedat-o-Mohabbat ka haq adaa kar diya, Koi teer bhi aap tak nah pounchanay diya, Apne qabeeley ke kisi fard ki sifarish karte to An-Hazrat (ﷺ) usay bakhushi qubool kar lete.

Hazrat Usaid رضی اللہ عنہ farmatay hain keh: Aik roz mein Rasool-e- Akram (ﷺ) ki khidmat-e-Aqdas mein haazir huwa aur aik ansaari gharaane ki Maflook-ul-Haali ka tazkirah kiya,” Haqeeqatan yeh gharaanaa tang dasti aur Be-sar-o-Samaani ki haalat mein zindagi basar kar raha tha, Mein ne arz ki: “Ya Rasool Allah (ﷺ)! Yeh log maali ta’awun ke mustahiq hain, “Aap ne irshaad farmayaa: “Usaid! Tum us waqat aaye jab hum sab kuch Raah-e-Khuda mein kharch kar chuke hain, Aaindah jab bhi hamaray paas kahin se maal aaye to mujhe yaad dilaanaa In sha Allah un ki poori madad ki jaye gi.” Kuch hi arsaa ba’ad Khybar se waafir miqdaar mein maal aa gaya, Aap ne mustahiq musalmanon mein usay taqseem kiya aur khaas kar us gharaane ki dil khol kar madad ki jiski nishaandahi Hazrat Usaid رضی اللہ عنہ ne ki thi.

Hazrat Usaid رضی اللہ عنہ farmatay hain keh: Jab mein ne is gharaane ki aasooda haali dekhi to meri khushi ki intihaa  nah rahi, Be-saakhtaa meri zubaan se niklaa,  Yaa Rasool Allah (ﷺ)! Allah aap ko Jaza-e-Khair a’taa farmaaye.”

Aap ne jawaabun irshaad farmayaa: “Ae Khandaan-e-Ansaar! Tumhen bhi Allah Jaza-e-Khair ataa farmaaye, Jab se mera aap logon se ta’aruf huwa hai, Mein ne tumhen paak-daaman aur bohat ziyaadaa Sabr-o-Tahammul karne wala paaya hai, Lekin tum mere ba’ad dekho ge ke Ansaar ki nisbat deegar logon se acha salook bartaa jaye ga, Lekin tum meri mulaaqaat tak sabar karna, Yeh mulaqaat In  sha Allah Houz-e-Kousar par ho gi.”

Hazrat Usaid رضی اللہ عنہ farmaatay hain: “Jab Hazrat Umar Bin Khattaab رضی اللہ عنہ Masnad-e-Khilaafat par mutmakin hue, To aap ne musalmanoon mein Maal-o-Mata’a taqseem kiya, Mere hissay mein aik choghaa aaya jo meri nigaah mein aik mamooli saa tha, Mein abhi masjid mein hi betha tha keh mere paas se aik Qureshi noujawaan guzraa jis ne bohat qeemti aur umdah libaas zaib tan kar rakha tha.

Yeh libaas Ameer-ul-Momineen ne usay Bait-ul-Maal se inaayat kiya tha aur yeh itnaa lambaa tha ke zameen par ghasit’taa huwa jaa rahaa thaa, Yeh manzar dekh kar mujhe woh Farmaan-e-Rasool (ﷺ) yaad aa gaya jo aap ne ansaar ke muta’aliq irshaad farmaya tha ke mere ba’ad ansaar se ziyada dosray logon ko tarjeeh di jaye gi, Aur yeh farmaan nabwi (ﷺ) mein ne apne paas baithey hue aik saathi ko bhi sunaya, Woh shakhs meri baat suntay hi uthaa aur Ameer-ul-Momineen Hazrat Umar رضی اللہ عنہ ke paas pouncha aur aap ko woh sab kuch bataa diyaa jo mein ne is ke samnay kaha tha, Hazrat Umar رضی اللہ عنہ yeh baat suntay hi mere paas puhanche, Mein us waqat namaz padh raha tha, Aap ne garajdaar aawaaz mein kaha: ” Usaid! jaldi namaz padho,”  Jab mein ne namaz poori kar li to Aap meri taraf mutwajjah ho kar farmanay lagey:

“Bhala mere muta’aliq tum ne kiya kaha hai”?

 Mein ne harf ba-harf sab kuch bataa diya.

 Hazrat Umar رضی اللہ عنہ ne yeh sun kar irshaad farmaya:

“Usaid! Allah aap ko ma’af farmaaye, Yeh libaas mein ne is shakhs ko diya tha jisay ansaari honay ke sath sath Baiyat-e-Uqbaah, Ghazwah-e-Baddar aur ghazwah Uhad mein shareek honay ka Sharf bhi haasil hai, Waqi’yaa Dar-asal yeh hai ke libaas is Qureshi noujawaan ne un se khareed liya, Ab bataiye is mein mera kiya qasoor hai?

Tumharaa kiya khaiyaal hai ke jis Soorat-e-Haal ki khabar Rasool-e-Aqdas (ﷺ) ne tumhen di thi, Woh mere Daur-e-Hukoomat mein zahuur Pazeer hogi?”

Yeh sun kar Hazrat Usaid Bin Huzair رضی اللہ عنہ foran bolay: ” Ameer-ul-Momineen! Allah jaantaa hai mera bhi yeh hi  khaiyaal hai ke aap ke Daur-e-Hukoomat mein aisa nahi ho sakta .”


Hazrat Usaid Bin Huzair رضی اللہ عنہ is ke ba’ad ziyadaa dair tak zindah nah rahay Allah Ta’alaa ne Hazrat Umar رضی اللہ عنہ ke Daur-e-Khilaafat hi mein un ko apne Jawaar-e-Rahmat mein bulaa liyaa, Jab Aap Allah ko piyaare ho gaye to pataa chalaa keh chaar hazaar (4000) dirham ke maqrooz hain, Aap ke waarison ne socha, Qarz adaa karne ke liye un ki zarrai  zameen ko bech diya jaye, Ameer- ul-Momineen Hazrat Umar رضی اللہ عنہ ko pataa chalaa to Aap ne foran qaraz  khuwahon se rabita qaaim kiya aur unhen saalanaa aik hazaar dirham kaa anaaj lainey par raazi kar liyaa, Is tarhaan chaar (4) saal ke arsay mein qaraz addaa ho gaiya aur zameen aulaad ki milkiyat rahi .


Hazrat Usaid Bin Huzair رضی اللہ عنہ ke tafseeli Halaat-e-Zindagi ma’aloom karne ke liye darj zail kitaabon ka mutale’a karein:

1: Bukhari- Muslim                                                                              Baab Fazail ul Sahabah

2: Jami ul Usool                                                                                      9/378

3: Tabaqat Ibn-e-Saad                                                                     3/203

4: Tahzeeb ul Tahzeeb                                                                       1/347

5: Usd ul Ghabah                                                                                    1/92

6: Hayat ul Sahabah                                                                  jild charam ki fahrist dikhiy

7: Al Aelaam w Marajioho

REFERENCE:
Book: Hayat-e-Sahaba kay darakh shah pahelo.
By: Dr. Abdur Rahman Rafat Al- Pasha.

حضرت اسید بن حضیر رضی اللہ عنہ

اسید۔۔۔ وہ تو فرشتے تھے جو تیری تلاوت سن رہے تھے:
فرمان نبوی

 

حضرت مصعب بن عمیر جب پہلے تبلیغی مشن پر یثرب پہنچے تو آپ نے قبیلہ خزرج کے ایک سردار اسعد بن زرارہ کے ہاں قیام کیا۔ اس نے اپنے گھر میں سے ایک کمرہ ان کے قیام کے لئے مخصوص کردیا، جسے وہ تبلیغی مقاصد کے لئے استعمال کرتے، حضرت معصب بن عمیر جیل کی شیریں کلامی، صاف گوئی خوش اخلاقی اور نور ایمانی کی بدولت باشندگان یثرب تیزی سے ان کے گرویدہ ہونے لگے، سب سے بڑھ کر جس خوبی نے لوگوں کو متاثر کیا وہ ان کا نہایت سریلی آواز میں قرآن مجید کی تلاوت کا دلکش انداز تھا جس سے پتھر جیسے دل نرم ہو جاتے، سننے والوں کی آنکھوں سے آنسو جاری ہو جاتے آپ کی ہر مجلس میں کچھ افراد وعظ و نصیحت سے متاثر ہو کر دائرہ اسلام میں داخل ہو جاتے۔


ایک دن اسعد بن زرارہ اپنے معزز مہمان حضرت مصعب بن عمیر کے ساتھ گھر سے باہر نکلے تاکہ قبیلہ بنو عبد الاسل کے چند افراد سے ملاقات کریں’ اور ان کے سامنے اسلام کی دعوت پیش کریں، دونوں ایک باغ میں داخل ہوئے اور میٹھے پانی کے ایک چشمے کے پاس بیٹھ گئے، دیکھتے ہی دیکھتے وہ لوگ ان کے ارد گرد جمع ہو گئے جو ابھی نئے نئے مسلمان ہوئے تھے اور چند غیر مسلم بھی آپ کی باتیں سننے کے لئے قریب آکر بیٹھ گئے آپ نے نہایت پیارے انداز میں ان کے سامنے اسلام کی سچی دعوت پیش کرنی شروع کی سبھی خاموشی اور توجہ سے سننے اور آپ کی جادو بیانی سے متاثر ہونے لگے۔

ایک روز اہل میثرب میں ایک شخص نے اُسید بن حضیر اور سعد بن معاذ کو اطلاع دی (یہ دونوں قبیلہ اوس کے سردار تھے) کہ ایک مکی نوجوان ان کے گھروں کے قریب سکونت پذیر ہے، لوگوں کو اپنے دین کی طرف دعوت دینے میں دن رات مصروف ہے اور أسعد بن زرارہ نے اسے اپنے گھر ٹھرایا ہوا ہے، یہ خبر سن کر سعد بن معاذ نے اسید بن حضیر سے کہا، تیرا کچھ نہ رہے، فوراً جاؤ’ اس مکی نوجوان کی خبر لو جس نے ہمارے گھروں کا رخ کر رکھا ہے، وہ چاہتا ہے کہ ہمارے کمزور دل لوگوں کو ورغلائے اور ہمارے خداؤں کی توہین کرے’ اسے روکو اور تنبیہ کردو کہ آج کے بعد ہمارے علاقے میں قدم نہ رکھے، پھر افسردہ ہو کر کہنے لگا، اگر یہ میری خالہ کے بیٹے اسعد بن زرارہ کے ہاں مہمان نہ ہو تا تو میں خود اس کی خبر لیتا اور اسے فوراً یہاں سے بھاگ جانے پر مجبور کر دیتا۔


سعد بن معاذ کی باتیں سن کر اسید بن حضیر نے نیزا پکڑا اور سیدھا باغ کی طرف چل دیا’ اسعد بن زرارہ نے جب دور سے اسے باغ کی طرف آتے ہوئے دیکھا تو حضرت مصعب بن عمیر کے کان میں کہا وہ دیکھو قبیلے کا سردار اسید بن حضیر آرہا ہے’ بہت سے کمالات کی بنا پر اسے قبیلے میں عزت و احترام کی نگاہ سے دیکھا جاتا ہے، اگر یہ مسلمان ہو جائے تو اس کی وجہ سے بہت سے لوگ اسلام قبول کرلیں گے۔ از راہ کرم اس کے سامنے اللہ کا پیغام عمدہ اور دلنشین انداز میں پیش کریں۔


دیکھتے ہی دیکھتے اسید بن حضیر بڑے طمطراق اور رعب و دبدبہ کے ساتھ مجمعے کے سامنے آکھڑا ہوا’ حضرت مصعب بن عمیر کو مخاطب کرکے کہنے لگا’ مجھے یہ بتاؤ کہ تمہیں ہمارے گھروں کی طرف رخ کرنے کی جرات کیسے ہوئی؟ ہمارے کمزور دل لوگوں کو پھسلانے اور ورغلانے کے لئے تمہیں کس نے اجازت دی۔ کان کھول کر میری بات سنو اگر تمہیں اپنی جان کی ضرورت ہے تو اسی وقت ہماری بستی سے نکل جاؤ۔ حضرت مصعب بن عمیر نے نور ایمان سے چمکتے ہوئے چہرے کے ساتھ اسید بن حضیر کی طرف دیکھا۔

اور نہایت نرم لہجے اور میٹھے انداز میں ارشاد فرمایا:
” میرے بھائی! کیا تمہیں خیر اور بھلائی مطلوب ہے؟”

اس نے بڑی بے نیازی سے جواب دیا “خیر اور بھلائی کیا ہوتی؟”

آپ نے فرمایا:

آپ ہمارے پاس چند لمحے بیٹھیں ‘ میری باتیں سنیں’ اگر آپ کو یہ پسند آئیں تو قبول کر لیا اور اگر پسند نہ آئیں ہمارا آپ سے وعدہ رہا کہ ہم یہاں سے چلے جائیں گے اور دوبارہ کبھی اس طرف کا رخ نہیں کریں گے’ یہ سن کر اسید بن حضیر نے کہا: بات تو آپ نے دل لگتی کہی ہے۔ ساتھ ہی اپنا نیزہ زمین میں گاڑا اور آرام سے بیٹھ گیا’ حضرت مصعب بن عمیر دلنشیں انداز میں اس کے سامنے اسلام کی خوبیاں اور فضائل بیان کرتے اور دلپذیر لہجے میں آیات قرآنی کی تلاوت کرنے لگے، جس سے اس کے چہرے دھیرے دھیرے انقباض دور ہونے لگا۔

بالآخر وہ جذب و کیف کے عالم میں پکار اٹھا آپ کی باتیں کیا خوب ہیں؟ کس قدر دلنشیں اور دلگداز ہیں؟ جس کلام کی آپ تلاوت کرتے ہیں وہ بہت عظیم کلام ہے’پھر اس نے جھکی ہوئی نظروں سے با ادب انداز میں پوچھا: اسلام میں داخل ہونے کا کیا طریقہ ہے؟ حضرت مصعب بن عمیر نے ارشاد فرمایا: پہلے غسل کرو’ پاکیزہ لباس پہنو اور پھر یہ کلمہ پڑھو:
لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ مُحَمَّدٌ رَسُولُ الله اللہ تعالیٰ کے سوا کوئی معبود حقیقی نہیں اور حضرت محمد اللہ کے رسول ہیں ۔

اس کے بعد دو رکعت نماز ادا کرو’ یہ سن کر وہ مجلس سے اٹھا’ قریبی کنوئیں پر گیا’ غسل کیا کپڑے دھوئے کلمہ طیبہ پڑھا، دو رکعت نماز ادا کی اور سرزمین عرب کا ایک عظیم سپوت ‘ماہر شہسوار’ دانشور اور قبیلہ اوس کا ہر دلعزیز سردار دائرہ اسلام میں داخل ہو گیا۔

ذاتی کمالات کی بنا پر قبیلے کے افراد سے کامل کے لقب سے پکارا کرتے تھے ‘ یہ بیک وقت سیف و قلم شهسواری و تیراندازی نجابت و شرافت، عقل و دانش اور فن کتابت میں خاص مقام رکھتے تھے’ بعد میں یہی حضرت سعد بن معاذ من اللہ کے اسلام قبول کرنیکا باعث بنے۔

پھر ان دونوں کے ذریعے قبیلہ اوس کے اکثر افراد دائرہ اسلام میں داخل ہو گئے’ اس کے بعد مدینہ طیبہ کو رسول اللہ کے لئے مقام ہجرت’ جائے پناہ اور دار الحکومت بننے کا شرف حاصل ہوا۔


جب حضرت مصعب بن عمیر رضی اللہ سے حضرت اسید بن حضیر نے قرآن مجید کی تلاوت سنی تھی تو ان کے دل میں قرآن مجید کی والہانہ محبت پیدا ہو گئی تھی’ آپ قرآن مجید کی طرف اس طرح متوجہ ہوئے جیسے کوئی پیاسا گرم ترین دن میں میٹھے اور ٹھنڈے چشمے کی طرف لپکتا ہے’ بالآخر یہ قرآن مجید ہی کے ہو کر رہ گئے، اس کے بعد انہیں یا تو غازی مجاہد کے روپ میں اور یا پھر قرآن مجید کی تلاوت میں منہمک دیکھا گیا’ آپ کو قدرت کی جانب سے شیریں کلامی’ خوش ذوقی اور سریلی آواز کا وافر حصہ ملا تھا’ جب رات کا سناٹا چھا جاتا ‘لوگ نیند کی آغوش میں لوریاں لینے لگتے تو آپ خوش الحانی سے قرآن مجید پڑھنا شروع کر دیتے’ صحابہ کرام آپ کی تلاوت سننے کے منتظر رہتے’ خوش نصیب ہے وہ انسان جسے حضرت اسید بن حضیر کی زبان مبارک سے تلاوت قرآن سننے کا اتفاق ہوا’ آپ ہو بہو اسی طرح قرآن مجید پڑھتے جیسا کہ رسول اللہ میری کلم پر نازل ہوا تھا۔


انسان تو کجا فرشتے بھی آپ کی تلاوت سن کر لطف اندوز ہوتے ‘ ایک رات کا واقعہ ہے کہ حضرت اسید بن حضیر اپنے گھر کے صحن میں لیٹے ہوئے تھے’ آپ کا بیٹا یحییٰ کی ایک جانب سویا ہوا تھا اور پاس ہی وہ گھوڑا بندھا ہوا تھا جسے آپ نے جہاد کے لئے تیار کیا تھا’ رات پر سکون تھی’ آسمان صاف شفاف تھا’ چشم فلک پیار بھرے انداز میں پر سکوں زمین کو دیکھ رہی تھی’ حضرت اسید بن حضیر کے دل میں آیا کہ پر نم فضا کو قرآنی مہک سے معطر کیا جائے انہوں نے دلگداز آواز سے ان آیات کی تلاوت شروع کردی۔
الم ذَالِكَ الْكِتَابُ لَا رَيْبَ فِيهِ هُدًى لِلْمُتَّقِيْنَ الَّذِينَ يُؤْمِنُوْنَ بِالْغَيْبِ وَيُقِيمُونَ الصَّلوةَ وَمِمَّا رَزَقْنَا هُمْ يُنْفِقُونَ وَالَّذِيْنَ يُؤْمِنُوْنَ بِمَا أُنْزِلَ إِلَيْكَ وَمَا أُنْزِلَ مِنْ قَبْلِكَ وَبِالْآخِرَةِ هُمْ يُوقِنُونَ۔

الف’ لام’ میم۔ یہ اللہ کی کتاب ہے’ اس میں کوئی شک نہیں’ ہدایت ہے ان پر ہیز گار لوگوں کے لئے جو غیب پر ایمان لاتے ہیں’ نماز قائم کرتے ہیں جو رزق ہم نے ان کو دیا ہے’ اس میں سے خرچ کرتے ہیں اور جو کتاب تم پر نازل کی گئی ہے (یعنی قرآن) اور جو کتابیں تم سے پہلے نازل کی گئی تھیں، ان سب پر ایمان لاتے ہیں اور آخرت پر یقین رکھتے ہیں۔
جب گھوڑے نے آپ کی دل سوز آواز سنی تو تیزی سے ایک چکر لگایا’ خطرہ تھا کہ رسی ٹوٹ جائے’ یہ منظر دیکھ کر آپ نے تلاوت روک دی’ گھوڑا بھی سکون سے کھڑا ہو گیا’

آپ نے پھر پڑھنا شروع کیا۔

أولئكَ عَلَى هُدًى مِنْ رَبِّهِمْ وَ أُولَئِكَ هُمُ الْمُفْلِحُونَ°

ایسے لوگ اپنے رب کی طرف سے راہ رست پر ہیں اور وہی فلاح پانے والے ہیں۔

گھوڑے نے پھر اچھلنا شروع کر دیا’ آپ خاموش ہوئے تو گھوڑا بھی سکون سے کھڑا ہو گیا’ آپ نے وقفے وقفے سے تلاوت کی جو نہی آپ تلاوت شروع کر دیتے گھوڑا بدکنے اور اچھلنے لگتا جب آپ خاموش ہو جاتے وہ بھی آرام سے کھڑا ہو جاتا آپ کو یہ خطرہ لاحق ہوا کہ کہیں یہ گھوڑا مستی میں آکر میرے بیٹے یحییٰ کو روند نہ ڈالے۔ آپ بیٹے کو جگانے کے لئے اس کی طرف گئے۔ کیا دیکھتے ہیں کہ آسمان پر ایک چھتری نما بادل کا ٹکڑا ہے اور اس کے ساتھ چراغ نما روشن قندیلیں لٹک رہی ہیں، جن کی ضیا پاشیوں نے چاروں طرف روشنی اور چمک دمک پھیلا رکھی ہے’
آپ کے دیکھتے ہی یہ بادل کا ٹکڑا اوپر چڑھنا شروع ہوا، یہاں تک کہ آنکھوں سے اوجھل ہو گیا، صبح ہوئی تو حضرت اسید بن حضیر نے رسول اکرم کی خدمت اقدس میں حاضری دی اور رات کا یہ عجیب و غریب
واقعہ بیان کیا’ آپ نے ماجرا سن کر ارشاد فرمایا۔
اسید : یہ تو فرشتے تھے جو تیری تلاوت سن رہے تھے۔ اگر تم اپنی تلاوت کو مسلسل جاری رکھتے تو یہ بالکل قریب آجاتے اور لوگ انہیں بچشم خود دیکھ سکتے۔


جس طرح حضرت اسید بن حضیر کو قرآن مجید کے ساتھ محبت تھی’ اسی طرح
رسول اکرم کے ساتھ والہانہ الفت تھی۔
یہ اپنے بارے میں بیان کرتے ہوئے ارشاد فرماتے ہیں کہ جب میں قرآن مجید کی تلاوت کرتا ہوں تو میرا دل ایمان و یقین کی دولت سے مالا مال ہو جاتا ہے’ دل پر نورانی تجلیات کا ورود ہونے لگتا ہے اور بعینہ میرے دل کی یہ کیفیت اس وقت ہوتی ہے جب میں رسول اقدس کے چہرہ انور کو اپنی نگاہوں سے دیکھتا ہوں۔
فرماتے ہیں کہ میری دلی تمنا تھی کہ مجھے موقع ملے تو آپ کے جسم اطہر واقدس کو چوم لوں ایک دن میری یہ دلی تمنا بھی پوری ہو گئی ‘ ہوا اس طرح کہ ایک روز میں مجلس میں بیٹھا لوگوں کو نصیحت آموز کہانیاں سنا رہا تھا، رسول اکرم نے بنظر استحسان دیکھتے ہوئے میری بغل میں چٹکی لی’ میں نے عرض کی یا رسول اللہ اس سے مجھے تکلیف ہوئی’رحمت للعالمین نے ارشاد فرمایا:

اسید! اگر تمہیں تکلیف ہوئی ہے تو مجھ سے بدلہ لے لو میں نے عرض کی یارسول اللہ آپ کے بدن پر تو قمیص ہے’ لیکن میرے بدن پر قمیص نہیں۔ یہ سن کر آپ نے بدلہ دینے کے لئے قمیض اتار دی تو میں آپ سے لپٹ گیا اور آپ کے جسم اطہر و اقدس کو چومنے لگا اور ساتھ ہی میں نے اپنی اس تمنا کا اظہار کرتے ہوئے عرض کی یا رسول اللہ! میرے ماں باپ آپ پر قربان ہوں’ جب سے میں آپ پر ایمان لایا ہوں ‘اسی دن سے میری یہ دلی تمنا تھی کہ آپ کے جسم اطہر کو چوموں اللہ تعالیٰ کا شکر ہے کہ آج میری یہ تمنا پوری ہوئی۔


رسول اللہ بھی حضرت اسید سے بہت پیار کرتے تھے’ اسلام قبول کرنے میں ان کی سبقت کو قدر کی نگاہ سے دیکھتے غزوہ اُحد میں جس انداز سے انہوں نے رسول اللہ کا جوانمردی اور بہادری سے دفاع کیا’ وہ بلاشبہ ایک عظیم الشان کارنامہ ہے جدھر سے آپ کی طرف کوئی تیر آتا فوراً آگے بڑھتے اور تیر سیدھا ان کے جسم میں کے پیوست ہو جاتا

اس طرح غزوہ اُحد میں سات مہلک تیر انہوں نے اپنے بدن پر جھیل کر رسول اقدس کے ساتھ والہانہ عقیدت و محبت کا حق ادا کر دیا’ کوئی تیر بھی آپ تک نہ پہنچنے دیا اپنے قبیلے کے کسی فرد کی سفارش کرتے تو آنحضرت اسے بخوشی قبول کرلیتے۔

حضرت اسید فرماتے ہیں کہ ایک روز میں رسول اکرم کی خدمت اقدس میں حاضر ہوا اور ایک انصاری گھرانے کی مفلوک الحالی کا تذکرہ کیا حقیقتاً یہ گھرانہ تنگ دستی اور بے سرو سامانی کی حالت میں زندگی بسر کر رہا تھا’ میں نے عرض کی یارسول اللہ یہ لوگ مالی تعاون کے مستحق ہیں’ آپ نے ارشاد فرمایا: اسید! تم اس وقت آئے جب ہم سب کچھ راہ خدا راہ خدا میں خرچ کر چکے ہیں’ آئندہ جب بھی ہمارے پاس کہیں سے مال آیا تو مجھے یاد دلانا’ انشاء اللہ ان کی پوری مدد کی جائے گی۔ کچھ ہی عرصہ بعد خیبر سے وافر مقدار میں مال آگیا آپ نے مستحق مسلمانوں میں اسے تقسیم کیا اور خاص کر اس گھرانے کی دل کھول کر مدد کی جسکی نشاندہی حضرت اسید نے کی تھی۔

حضرت اسید فرماتے ہیں کہ جب میں نے اس گھرانے کی !آسودہ حالی دیکھی تو میری خوشی کی انتہار نہ رہی۔
بے ساختہ میری زبان سے نکلا’
یا رسول اللہ ! اللہ آپ کو جزائے خیر عطا فرمائے’آپ نے جواباً ارشاد فرمایا اے خاندان انصار! تمہیں بھی اللہ جزائے خیر عطا فرمائے، جب سے میرا آپ لوگوں سے تعارف ہوا ہے، میں نے تمہیں پاکدامن اور بہت زیادہ صبر و تحمل کرنے والا پایا ہے، لیکن تم میرے بعد دیکھو گے کہ انصار کی نسبت دیگر لوگوں سے اچھا سلوک برتا جائے گا، لیکن تم میری ملاقات تک صبر کرنا’ یہ
ملاقات انشاء اللہ حوض کوثر پر ہو گی۔
حضرت اسید فرماتے ہیں’جب حضرت عمر بن خطاب مسند خلافت پر متمکن ہوئے تو آپ نے مسلمانوں میں مال و متاع تقسیم کیا’ میرے حصے میں ایک چوند آیا جو میری نگاہ میں ایک معمولی سا تھا’ میں ابھی مسجد میں ہی بیٹھا تھا کہ میرے پاس سے ایک قریشی نوجوان گزرا جس نے بہت قیمتی اور عمدہ لباس زیب تن کر رکھا تھا۔ یہ لباس امیر المؤمنین نے اسے بیت المال سے عنایت کیا تھا اور یہ اتنا لمبا تھا کہ زمین پر گھسٹتا ہوا جا رہا تھا۔

یہ منظر دیکھ کر مجھے وہ فرمان رسول یاد آگیا جو آپ نے انصار کے متعلق ارشاد فرمایا
تھا کہ میرے بعد انصار سے زیادہ دوسرے لوگوں کو ترجیح دی جائے گی’ اور یہ فرمان نبوی میں نے اپنے پاس بیٹھے ہوئے ایک ساتھی کو بھی سنایا’ وہ شخص میری بات سنتے ہی اٹھا اور امیر المؤمنین حضرت عمر کے پاس پہنچا اور آپ کو وہ سب کچھ بتا دیا جو میں نے اس کے سامنے کہا تھا’حضرت عمر بھی یہ بات سنتے ہی میرے پاس پہنچے ‘میں اس وقت نماز پڑھ رہا تھا’ آپ نے گرجدار آواز میں کہا اسید’ جلدی نماز پڑھو، جب میں نے نماز پوری کرلی تو آپ میری طرف متوجہ ہو کر فرمانے لگے۔

بھلا میرے متعلق تم نے کیا کہا ہے؟
میں نے حرف بحرف سب کچھ بتا دیا۔
حضرت عمر نے یہ سن کر ارشاد فرمایا:
اسید! اللہ آپ کو معاف فرمائے، یہ لباس میں نے اس شخص کو دیا تھا جسے انصاری ہونے کے ساتھ ساتھ بیعت عقبہ غزوہ بدر اور غزوہ اُحد میں شریک ہونے کا شرف بھی حاصل ہے واقعہ دراصل یہ ہے کہ لباس اس قریشی نوجوان نے ان سے خرید لیا اب بتائیے اس میں میرا کیا قصور ہے؟
تمہارا کیا خیال ہے کہ جس صورت حال کی خبر رسول نے تمہیں دی تھی، وہ میرے دور حکومت میں ظہور پذیر ہوگی۔ یہ سن کر حضرت اسید بن حضیر فوراً بولے: امیر المؤمنین! اللہ جانتا ہے میرا بھی یہی خیال ہے کہ آپ کے دور حکومت میں ایسا نہیں ہو سکتا۔


حضرت اسید بن حضیر اس کے بعد زیادہ دیر تک زندہ نہ رہے، اللہ تعالیٰ نے حضرت عمر کے دور خلافت ہی میں ان کو اپنے جوار رحمت میں بلالیا ، جب آپ اللہ کو پیارے ہوگئے تو پتہ چلا کہ چار ہزار درہم کے مقروض ہیں، آپ کے وارثوں نے سوچا قرض ادا کرنے کے لئے ان کی زرعی زمین کو بیچ دیا جائے ، امیر المؤمنین حضرت عمر کو پتہ چلا تو آپ نے فوراً قرض خواہوں سے رابطہ قائم کیا اور انہیں سالانہ ایک ہزار درہم اناج لینے پر راضی کر لیا۔ اس طرح چار سال کے عرصے میں قرض ادا ہوگیا۔ اور زمین اولاد کی ملکیت رہی۔


حضرت اسید بن حضیر کے تفصیلی حالات زندگی معلوم کرنے کے لئے درج ذیل کتابوں کا مطالعہ کریں۔

 

1۔ بخاری مسلم ۔ باب فضائل صحابہ
2- جامع الاصول۔ 378/9
3 طبقات ابن سعد۔ 603/3
4- تهذيب التهذيب۔ 347/1
5- اسد الغابة۔ 96/1
6۔ حياة الصحابة
جلد چہارم کی فہرست دیکھئے
7۔الاعلام و مراجعه

 

حوالہ جات :

“حياتِ صحابہ کے درخشاں پہلو”

تا لیف: “داکتور عبدالر حمان رافت الباشا”

 

 

Table of Contents