Sections
< All Topics
Print

24. Hazrat Zaid Bin Harisa (رضی اللہ عنہ)

 Hazrat Zaid Bin Harisa رضی اللہ عنہ

Ba khuda Zaid Bin Harisa Mansab-e-Amaarat ke laaiq thaa aur mujhe tamaan logon se ziyada piyaraa thaa.
Farmaan-e-Nabawi ﷺ

Sa’ada bint Sa’alba apni qoum bano man’an se mulaqaat ke liye apne betay Zaid Bin Harisa رضی اللہ عنہ ke hamraah rawanaa hui, Woh apni biraadri ke aik ghar main abhi farokash hui hi thi ke bani qain ke daakuon ne loot maar shuru kar di, Un ka maal apne qabzay main le liya, Maweshi haank kar le gaye aur bachon ko qaid kar liya. Un qaidiyoun main Zaid Bin Harisa رضی اللہ عنہ bhi thay, Us waqat un ki umar sirf aath (8) saal thi, Woh unhein farokht karne ke liye ukaaz mandi main le gaye, Aik doulat mand sardaar Hakeem Bin Hazaam Bin khuwaild ne chaar so (400) darham main unhein khareed liya, Is ke ilawa us ne aur bhi ghulaam khareeday aur un sab ko apne hamraah Makkah Muazzama le aaya, Jab is sardaar ki aamad ka Hazrat Khadija Bint-e-Khuwaild ko pataa chala to woh usay khush aamdeed kehnay ke liye is ke ghar tashreef le gaein, Kiyunkeh rishte main yeh us ki phophi thein. Hakeem Bin Hazaam ne kahaa:

Phophi jaan main ukaaz mandi se kaafi ta’daad main ghulaam khareed kar laya hoon, un main se jo ghulaam Aap ko pasand ho, Usay main Aap ki khidmat main Bator-e-Tohfaa paish kar ke khushi mahsoos karoon ga. Sayyieda khadija-ul-Kubraa رضی اللہ عنہا ne tamaam ghulaamoon ko dekha aur un main se Zaid Bin Harisa رضی اللہ عنہ ka intikhaab kiya, kiyunkeh zahaanat aur sharaafat us ke chehray se tapakti thi, Thoday hi a’rsay ba’ad Hazrat Khadija رضی اللہ عنہا ne Sardaar-e-Do jahaan Hazrat Mohammad (ﷺ) se shaadi kar li, Is mo’aqay par Aap ki Khidmat-e-Aqdas main Hazrat Khadija رضی اللہ عنہا ne tohfaa paish karne ka iradaah kiya to unhein Zaid Bin Harisa رضی اللہ عنہ se behtar koi cheez dikhaai nah di, Chunancha Huzoor (ﷺ) ki khidmat main Zaid ko Bator-e-Tohfaa paish kar diya.

Isi tarhaan yeh khush naseeb ghulaam Aaqa-e-Do jahaan Hazrat Mohammad (ﷺ) ke A’ala-o-Arfa’a akhlaaq se faiz-yaab honay laga.

Is ki ghamzadaa maa’n ko pal bhar ke liye chain nah aa rahaa tha, Woh is ki ghumshudgi ke gham main ro, Ro kar be haal ho chuki thi, Kabhi aansoo khushk nah hotay, Apne ladlay betay ki muhabbat ka sho’la jwaala dil par musalsal dehaktaa rahaa, Gham-o-Andoh ke aisay mooheeb baadal chaaye keh chhutne ka naam nah letay, Har waqt isi soch main Ghaltaan-o-Pareshaan rehti, Kiya mera Lakht-e-Jigar zindah hai ke us ki aamad ka intzaar karoon? Ya faut ho chukaa hai ke na umeed ho jaoon? Baap ne apne Lakht-e-Jigar ki talaash main mulk ka konaa konaa chhaan mara, Har guzarnay walay qaafilay se poochta keh logo! Mujhe bataao, Mera Lakht-e-Jigar kahaan hai? Mere Noor-e-Chasham ko zameen nigal gayi ya aasman uchak kar le gaya?

Ba’az auqaat Gham-o-Andoh main mubtilaa aisay dildoz andaaz main sha’ir kehnay lagtaa keh sun’nay waalon ke jigar chhalni ho jatay, Bator-e-Misaal chand asha’ar ka tarjuma mulaahiza ho:

  • Main apne Lakht-e-Jigar ki ghumshudgi par ansoo bahaata hoon, Mujhe ilm nahi keh us par kiya guzri, Kiya woh zindah hai keh us ki aamad ka intzaar karoon? Ya mout ke be reham panje ne usay apni giraft main le liya?
  • Ba khudaa! Main nahi jaanta mere betay tujhe kiya huwa? main to har raahi se poochta hoon, Tujhe naram zameen ne apne daaman main chupaa liya yaa Buland-o-Baala pahad ne.
  • Aaftaab apne tulo’o ke waqat betay ki yaad dilaata hai aur ghuroob ke waqat phir us ki yaad taaza kar deta hai.
  • Main Roo-e-Zameen par teri talaash main uont par sawaar sargardaan phir raha hoon, Aur main is sar gardani se nahi uktaaon ga.
  • Betay zindagi bhar teri talaash jaari rakhoon ga, Yahan tak keh mujhe mout aa jaye bil-aakhir har shakhas ko fanaa hona hai, Agarchay umeedein usay dhokay main mubtilaa rakhein.

Aik saal hajj ke ma’uqa par Zaid Bin Harisa رضی اللہ عنہ ke khaandaan ke chand afraad Makkah  Mukkarmaa main aaye, Woh log Bait-ul-llah ka tawaaf kar rahay thay ke achaanak un ki nazar Zaid Bin Harisa رضی اللہ عنہ par padi, Unhon ne say pehchaan liya aur Zaid رضی اللہ عنہ ne bhi unhein pehchaan liya, Aapas main aik dosray ke halaat ma’aloom kiye, Jab woh hajj se farigh hue aur apne watan wapas lautay to un ke baap Harisa ko ittila’a di keh tera beta zindah salamat hai aur woh is waqat Makkah main hai, Ham ne Bachsahm-e-Khood usay dekha us se baatein kein aur is ke halaat ma’aloom kiye hain.


Khushi ki yeh khabar sun kar Harisa ne foran apni sawaari tayyaar ki, Kuch naqdi bhi apne sath le li taakeh Bator-e-Fidiyaa adaa ki jaa sakay aur apne bhai Ka’ab ko hamsafar banayaa, Dono taiz raftaari ke sath Makkah Muazzama ki taraf rawaana hue, Wahaan pahunchte hi Rasool-e-Akram (ﷺ) ki khidmat-e-Aqdas main haazir ho kar araz ki:

Aap Bait-ul-lah ke hamsaaya hain. Mangnay walon ki jholiyaan bhar dete hain, Bhookhon ko khana khilaate hain, Be kason ki fariyaad rassi karte hain, Ham Aap ki Khidmat-e-Aqdas main apne betay ke liye haazir hue hain, Ham Noor-e-Chasham ko haasil karne ki gharz se bohat sa maal bhi laaye hain, Lillah! Ham par karam kijiye. Jo Aap is ki qeemat lenaa chahain, Ham ba-khushi dainay ko taiyaar hain.

Rasool-e-Akram (ﷺ) ne un ki baatein sun kar irshaad farmaaya:

“Kon hai tumharaa beta jis ka mutalba kar rahay ho?”

Araz ki: Aap ka ghulaam Zaid Bin Harisa رضی اللہ عنہ.

Aap ne farmaayaa:

“Kiya main tumhen aik aisi tajweez nah dun jo fidiyaa se kahin behtar ho?”

Dono ne ta’ajjub se poocha: Woh kiya ?

Aap ne farmaayaa:” Main usay tumahray samnay bulaataa hoon. Agar woh tumahray sath janaa pasand kere to usay ikhtiyaar hai, Badi khushi se le jaaein, Main us ke badlay kuch bhi nahi loon ga, Lekin agar us ne mere paas rehne ko tarjeeh di to phir main usay tumahray sath jane par majboor nahi karoon ga.”

Yeh tajweez sun kar dono khushi say bolay: Aap ne Khudaa lagti kahi hai.

Aap ne Adal-o-Insaaf ka haq adaa kar diya hai, Hamain Aap ki tajweez Manzoor hai.

Rasool Allah (ﷺ) ne Hazrat Zaid رضی اللہ عنہ ko bulaayaa aur dariyaaft kiya:

Yeh dono kon hain?

Arz ki: yeh meraa baap Harisa Bin Sharjeel hai aur yeh meraa chacha Ka’ab hai.

Aap ne farmayaa:

“Meeri taraf se tumhen ikhtiyaar hai, In ke saath chalay jao ya mere paas raho.”

Hazrat Zaid رضی اللہ عنہ ne yeh farmaan suntay hi baghair kisi taraddud ke araz ki:

Huzoor! Main to Aap ke sath hi rahoon ga.

Baap ne betay ke mooun se yeh kalmaat sunay to kahaa:

Zaid! Baday afsos ki baat hai, Kya tu apne maa baap par ghulaami ko tarjeeh deta hai.

Zaid ne kaha: Abba jaan! Main ne yahaan Huzoor (ﷺ)  ke jin Auwsaf-e-Hamidaa kaa mushahidaa kiya hai aur jis tarhaan Aap mushfiqanaa andaaz main mere sath paish atay hain, Main un se bohat ziyadaa mutaasir huwa hoon, Lihaaza main inhein chod kar kahin nahi jaa saktaa.


Jab Rasool-e-Akram (ﷺ)  ne Zaid Bin Harisa رضی اللہ عنہ ka yeh andaaz dekha aur us ki taraf se walehaana muhabbat ke muzaahirey ka mushahidaa kiya to Aap bohat khush hue, Jaldi se utthay us ka haath pakda seedhay Bait-ul-llah tashreef le gaye, Sardaaraan-e-Quraish ke samnay ba-aawaaz buland irshad farmaayaa:

“Ae Khandaan-e-Quraish! Gawaah rehna yeh mera beta hai, Yeh mera waris hai aur main is ka waris hoon,” Yeh ailaan sun kar Hazrat Zaid رضی اللہ عنہ ke chacha aur baap hairaan bhi hue aur khush bhi, Bahar haal yeh khush aaind ailaan sun kar Shaadaan-o-Farhaan apne ghar rawanaa ho gaye, Us din se Zaid Bin Harisa رضی اللہ عنہ Zaid Bin Mohammad (ﷺ) ke naam se pukaare jane lagey, An-Hazrat (ﷺ) ke Ailaan-e-Nabuwat ke ba’ad Hazrat Zaid ko Zaid Bin Mohammad  (ﷺ) ke naam se pukaaraa jata rahaa, Yahan tak ke Qura’an-e-Majeed main Allah Ta’alaa ka yeh hukum nazil huwa:

اُدۡعُوۡهُمۡ لِاٰبَآئِهِمۡ

Is Hukum-e-Khuda wandi ke nuzool ke ba’ad Aap ko Zaid Bin Harisa رضی اللہ عنہ ke naam se pukaara jane laga.


Hazrat Zaid Bin Harisa  رضی اللہ عنہ ne jis waqt Raasool-e-Akram (ﷺ) ko apne maa baap par tarjeeh di thi us waqt unhein yeh ilm nah tha keh unhon ne kon si ghaneemat haasil ki hai, Woh yeh bhi nah jantay thay ke An-Hazrat (ﷺ) buland martabaa par faiz honay walay hain ya Aap ke sir par nabuwat ka taaj rakha jaye ga aur Aap ko poori duniya ki rahnumaai ke liye Rasool bana kar bheja jaye ga, Unhein yeh kabhi khaiyaal tak nah tha ke aik din aisa anay walaa hai jis main aasmani hukoomat Roo-e-Zameen par qaaim hogi aur Khittaa-e-Arz ko Adal-o-Insaaf aur Aman-o-Sukoon ka gehwaara bana de gi aur unhein us azeem saltanat ke aali-shaan mahal ki pehli eint ban’nay ka Sharf haasil ho ga.

Bilaa-shubaa yeh Allah Ta’laa ka karam hai, Woh jisay chahay a’taa karta hai aur Allah baraa hi Fazl-o-Sharf wala hai.

Habib-e-Kibriyaa (ﷺ) ko apne maa baap par tarjeeh dainay ke waqi’ye par abhi chand saal hi guzray thay ke Allah Ta’alaa ne apne piyare Nabi ko Tuheed-e-Khaalis aur Deen-e-Haq ka paighaam dainay ke liye risalat ke azeem mansab par faaiz kar diya, Zaid Bin Harisa رضی اللہ عنہ woh khush naseeb insaan hain jo sab se pehlay Aap par imaan laaye. Bhalaa is se badh kar koi Sharf-e-Insaani ho sakta hai, Jis ke husool ke liye badh chadh kar koshish ki jaye, Hazrat Zaid Bin Harisa رضی اللہ عنہ ko raaz Daan-e-Raasool (ﷺ)  aur sipah salaar Lashkar-e-Islaam ban’nay ka aizaaz haasil huwa aur Madinah Munawwara main Huzoor (ﷺ) ki niyaabat ka azeem sharf bhi un ke hissay main aaya.

Aap (ﷺ)  aik Ghazwaah main shirkat ke liye bahir tashreef le gaye thay.


Jis tarhaan Hazrat Zaid Bin Harisa رضی اللہ عنہ ne Nabi-e-akram (ﷺ) ke sath walehaana muhabbat ka muzaahiraa kiya, Isi tarhaan Aap bhi un se shafqat bharay andaaz se paish aaye aur unhein apne khandaan ka aik fard bna liyaa, Jab kisi mission ke liye Hazrat Zaid Bin رضی اللہ عنہ rawanaa hotay to Aap un ke liye du’aa karte, Jab us mission se waapis lout’tay to Aap ko dili musarrat honay kaa izhaar karte.

Umm-ul-Momineen Hazrat A’isha Sadiqa رضی اللہ عنہا Hazrat Zaid Bin Harisa رضی اللہ عنہ ki Rasool-e- Akram (ﷺ) ke saath aik mulaaqaat ka manzar baiyaan karte hue farmaati hain ke:

Aik dafa’a ka zikar hai, Zaid Bin Harisa رضی اللہ عنہ aik safar se wapas Madinah Munawwara aaye,  Rasool-e-Akram (ﷺ) mere ghar tashreef farmaa thay.

Us nay darwaazay par dastak di, Aap jaldi se darwaaza kholnay ke utthay darwaaza khola to samnay Zaid Bin Harisa ko kharray paaya, Aap ki khushi ki koi intahaa nah rahi. Unhein galay lagayaa maatha chooma ba-Khudaa main ne poori zindagi is tarhaan kisi Sahaabi ko khush aamdeed kehte hue nahi dekhaa, Isi liye Hazrat Zaid Bin Harisa رضی اللہ عنہ musalmanoon main Habib-e-Rasool Allah (ﷺ)  ke naam se Ma’roof thay, Aur Sahabaa رضی اللہ عنہم ne Hazrat Zaid رضی اللہ عنہ ke betay ko Farzand-e-Habib Allah (ﷺ) ka naam day rakha tha.


8 hijri main Allah Ta’alaa ne apni Hikmat-e-Balighaa se chahaa ke Rasool Allah (ﷺ)  ko apne aik jaan nisaar aur aulaad ki tarhaan piyaare Sahaabi ki judaai main mubtilaa kere.

Huwa yeh ke An-Hazrat (ﷺ) ne Haris Bin Umair رضی اللہ عنہ ko aik khatt day kar Shah-e-Basraa ki taraf rawanaa kiya taakay usay islaam ki taraf da’awat di jaye, Jab Hazrat Haris Bin Umair رضی اللہ عنہ yeh khatt le kar Urdan ki mashriqi jaanib muqaam” mouta” puhanche to wahaan Ameer Ghassan Sharjeel Amar Aap ke samnay aaya aur unhein giraftaar kar ke qatal kar diya, Yeh andohnak khabar jab Rasool-e-Akram ke paas pohanchi to Aap ko bohat sadmaa huwa. Teen hazaar (3000) mujaahideen par mushtamil lashkar Jung-e-Moutaa ke liye rawanaa kiya aur is lashkar ka sipah salaar Hazrat Zaid Bin Harisa رضی اللہ عنہ ko muqarrar kiya.

Irshaad farmayaa keh: Agar Zaid رضی اللہ عنہ shaheed ho jaye to Jaffar Bin Abbi Taalib رضی اللہ عنہ ko lashkar ki qaiyaadat saunmp di jaye aur agar Jaffar shaheed ho jaye to Abdullah Bin Rawahaa  رضی اللہ عنہ ko Qaaid-e-Lashkar bana diya jaye aur agar usay bhi shaheed kar diya jaye, To phir Mujaahideen-e-Islaam apne main se jisay behtar samjhain apnaa qaaid banaa lein.


Lashkar-e-Islaam Allah ka naam le kar rawana huwa. Urdan ki mashriqi jaanib “Ma’an” muqaam par pounchaa to Shah-e-Room aik laakh fouj le kar muqaablay main utra aur us ke sath mushrikeen-e-Arab main se aik laakh afraad shaamil ho gaye aur yeh lashkar kham thonk kar musalmaanoon ke bil-muqaabil aa khadaa huwa.


Musalmaan “Ma’aan” muqaam par do raatain aapas main musalsal mashwaray aur jungi nuqta nigaah se mansoobah bandi karte rahay.

Aik Mujaahid ne raaye di ke hamain dushman ki ta’daad ke muta’aliq Rasool-e-Akram (ﷺ) ko ba-zari’aa khatt ittila’a deni chahiye aur Aap ke hukum ka intzaar karna chahiye.

Dosray ne kaha:

Allah ki qasam! Nah to hum ta’adaad ke bal botay par ladtay hain aur nah hi quwat aur kasrat ki bina par! Ham to sirf is Deen-e-Mateen ki hifazat ke liye bar sir pekaar hain.

Mere saathiyo! Jo maqsad le kar Maidaan-e-Jihaad ki taraf niklay ho hameshaa usay Paish-e-Nazar rakho. Allah Ta’alaa ne do ina’amaat main se aik ki tumhen zamaanat di hai.

Ya fatah naseeb hogi. .. . Ya phir Jaam-e-Shahaadat nosh karo ge.


Muqaam “Moutaa” par dono faujein bil-muqabil aaein. Lashkar-e-Islaam sirf teen hazaar (3000) afraad par mushtamil tha, Lekin dushman ki fouj do laakh (2,0000) afraad par mushtamil thi, Is jung main musalmaan aisi be jigaree se laday ke Roomi fouj ke chhakay chudaa diye, Dushmanon ke dilon par Lashkar-e-Islaam ki dhaak baith gayi.

Rasool Allah (ﷺ) ke a’taa kardah jhanday ki hifazat ke liye sipah salaar Hazrat Zaid Bin Harisa رضی اللہ عنہ ne aisi jawaanmardi ke sath jung ladi keh jungi karnaamon ki tareekh main is ki misaal nahi millti. Bil-aakhir dushman ke naizon ne Aap ke jism ko chalni kar diya aur Aap shaheed ho gaye, Un ke ba’ad jhandaa Hazrat Jaffar Bin Abbi Taalib ne thaam liya aur is ki hifaazat ke liye badi  jaanfishaani se dushman ke muqablay main Nabard-e-Aazmaa rahay. Yahan tak keh Jaam-e- Shahaadat nosh kiya, Un ke shaheed ho jane ke ba’ad Hazrat Abdullah Bin Rawahaa  رضی اللہ عنہ ne agay badh kar jhandaa thaam liya aur aisi bahaduri se dushman ka muqaablaa kiya ke dekhnay walay shashdar reh gaye, Lekin bil-akhir lartay lartay Allah ko piyaare ho gaye, Un ke ba’ad Hazrat Khalid Bin Waleed رضی اللہ عنہ ko sipah salaar muntakhib kiya gaya, Abhi Aap naye naye Halqa-e-Bagosh-e-Islaam hue thay, Lekin Aap ne apne tajurbaat ki bina par aisi jungi tadbeer ikhtiyaar ki ke Lashkar-e-Islaam ko hazeemat se bcha liya.


Jab Jung-e-Mouta ki khabar Rasool Allah (ﷺ) ko pohanchi aur Lashkar-e-Islaam ke teen sipah salaaron ki shahaadat ka ilm huwa to Aap itnay ghamgeen hue ke is se pehlay kabhi Aap ko is tarhaan Haalat-e-Gham main nahi dekhaa gaya aur Aap khabar suntay hi fori tor par ta’aziyat ke liye un ke Ahal-e-Khanah ke paas gaye.

Jab Aap Hazrat Zaid Bin Harisa رضی اللہ عنہ ke ghar pauhanche to Un ki choti beti Aap se chimat kar Zaar-o-Qitaar ronay lagi, Rasool Allah (ﷺ) bhi Aabeedah ho gaye, Yeh manzar dekh kar Hazrat Sa’ad Bin Ubadah رضی اللہ عنہ ne poocha ya Rasool Allah (ﷺ) kiya Aap bhi ro rahay hain?

Aap (ﷺ) ne irshaad farmayaa:

“Yeh aik habib ka apne habib ke gham main ronaa hai.”


Hazrat Zaid Bin Harisa رضی اللہ عنہ Ke mufassil Haalaat-e-zindagi ma’aloom karne ke liye darj zail kitaabon ka mutali’aa karein:

1: Sahi Muslim                                                                            7/313 baab Fazail ul Sahabah

2: Jami ul Usool                                                                            10/25-26

3: Al Isaabah                                                                              690

4: Al Istiaab                                                                                   1/544

5: Al Seerat ul Nabawiyyah                                                      Ibn-e-Hisam

6: Sifat ul Safwah                                                                          1/147

7: Khizanat ul Adab                                                                     1/362

8: Al Bidayah wal Nihayah                                                           8 hijri ke waqiat dikhiy

9: Hayat ul Sahabah                                                                          jild caharam ki fahrist dikhiy 

REFERENCE:
Book: Hayat-e-Sahaba kay darakh shah pahelo.
By: Dr. Abdur Rahman Rafat Al- Pasha.

حضرت زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ

 

بخدا! زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ منصب امارت کے لائق تھا اور مجھے تمام لوگوں سے زیادہ پیارا تھا۔

(فرمان نبویﷺ)

 

سعدی بنت ثعلبہ اپنی قوم بنو معن سے ملاقات کے لئے اپنے بیٹے زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ کے ہمراہ روانہ ہوئی’ وہ اپنی برادری کے ایک گھر میں ابھی فروکش ہوئی ہی تھی کہ بنی قین کے ڈاکوؤں نے لوٹ مار شروع کر دی’ ان کا مال اپنے قبضے میں لے لیا، مویشی ہانک کر لے گئے اور بچوں کو قید کر لیا۔ ان قیدیوں میں زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ بھی تھے، اس وقت ان کی عمر صرف آٹھ سال تھی، وہ انہیں فروخت کرنے کے لئے عکاظ منڈی میں لے گئے’ ایک دولت مند سردار حکیم بن حزام بن خویلد نے چار سو درہم میں انہیں خرید لیا’ اس کے علاوہ اس نے اور بھی غلام خریدے اور ان سب کو اپنے ہمراہ مکہ معظمہ لے آیا’ جب اس سردار کی آمد کا حضرت خدیجہ بنت خویلد کو پتہ چلا تو وہ اسے خوش آمدید کہنے کے لئے اس کے گھر تشریف لے گئیں، کیونکہ رشتے میں یہ اس کی پھوپھی تھیں۔ حکیم بن حزام نے کہا پھوپھی جان میں عکاظ منڈی سے کافی تعداد میں غلام خرید کر لایا ہوں، ان میں سے جو غلام آپ کو پسند ہو’ اسے میں آپ کی خدمت میں بطور تحفہ پیش کر کے خوشی محسوس کروں گا۔ سیدہ خدیجتہ الکبری نے تمام غلاموں کو دیکھا اور ان میں سے زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ کا انتخاب کیا، کیونکہ ذہانت اور شرافت اس کے چہرے سے ٹپکتی تھی، تھوڑے ہی عرصے بعد حضرت خدیجہ رضی اللہ عنہا نے سردار دوجہاں حضرت محمدﷺ سے شادی کر لی، اس موقعے پر آپ کی خدمت اقدس میں حضرت خدیجہ رضی اللہ عنہا نے تحفہ پیش کرنے کا ارادہ کیا تو انہیں زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ سے بہتر کوئی چیز دکھائی نہ دی، چنانچہ حضورﷺ کی خدمت میں زید کو بطور تحفہ پیش کر دیا۔ 

اس طرح یہ خوش نصیب غلام آقائے دو جہاں حضرت محمدﷺ کے اعلیٰ و ارفع اخلاق سے فیضیاب ہونے لگا۔

اس کی غمزدہ ماں کو پل بھر کے لئے چین نہ آ رہا تھا’ وہ اس کی گمشدگی کے غم میں رو رو کر بے حال ہو چکی تھی’ کبھی آنسو خشک نہ ہوتے’ اپنے لاڈلے بیٹے کی محبت کا شعلہ جوالہ دل پر مسلسل دہکتا رہا’ غم واندوہ کے ایسے مہیب بادل چھائے کہ چھٹنے کا نام نہ لیتے’ ہر وقت اسی سوچ میں غلطاں و پریشاں رہتی، کیا میرا لخت جگر زندہ ہے کہ اس کی آمد کا انتظار کروں؟ یا فوت ہوچکا ہے کہ نا امید ہو جاؤں؟ باپ نے اپنے لخت جگر کی تلاش میں ملک کا کونہ کونہ چھان مارا، ہر گزرنے والے قافلے سے پوچھتا کہ لوگو! مجھے بتاؤ’ میرا لخت جگر کہاں ہے؟ میرے نور چشم کو زمین نگل گئی یا آسمان اچک کر لے گیا؟

بعض اوقات غم واندو میں مبتلا ایسے دلدوزانداز میں شعر کہنے لگتا کہ سننے والوں کے جگر چھلنی ہو جاتے بطور مثال چند اشعار کا ترجمہ ملاحظہ ہو۔

▪️میں اپنے لخت جگر کی گمشدگی پر آنسو بہاتا ہوں، مجھے علم نہیں کہ اس پر کیا گزری’ کیا وہ زندہ ہے کہ اس کی آمد کا انتظار کروں؟ یا موت کے بے رحم پنجے نے اسے اپنی گرفت میں لے لیا؟

▪️بخدا! میں نہیں جانتا میرے بیٹے تجھے کیا ہوا؟ میں تو ہر راہی سے پوچھتا ہوں، تجھے نرم زمین نے اپنے دامن میں چھپا لیا یا بلند و بالا پہاڑ نے۔

▪️آفتاب اپنے طلوع کے وقت بیٹے کی یاد دلاتا ہے اور غروب کے وقت پھر اس کی یاد تازہ کر دیتا ہے۔

▪️میں روئے زمین پر تیری تلاش میں اونٹ پر سوار سرگرداں پھر رہا ہوں اور میں اس سرگردانی سے نہیں اکتاؤں گا۔

▪️بیٹے زندگی بھر تیری تلاش جاری رکھوں گا یہاں تک کہ مجھے موت آ جائے’ بالآخر ہر شخص کو فنا ہونا ہے، اگرچہ امیدیں اسے دھوکے میں مبتلا رکھیں۔

ایک سال حج کے موقع پر زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ کے خاندان کے چند افراد مکہ مکرمہ میں آئے، وہ لوگ بیت اللہ کا طواف کر رہے تھے کہ اچانک ان کی نظر زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ پر > 

پڑی’ انہوں نے اسے پہچان لیا اور زید رضی اللہ عنہ نے بھی انہیں پہچان لیا، آپس میں ایک دوسرے کے حالات معلوم کئے، جب وہ حج سے فارغ ہوئے اور اپنے وطن واپس لوٹے تو ان کے باپ حارثہ کو اطلاع دی کہ تیرا بیٹا زندہ سلامت ہے اور وہ اسوقت مکہ میں ہے’ ہم نے بچشم خود اسے دیکھا اس سے باتیں کیں اور اس کے حالات معلوم کئے ہیں۔


خوشی کی یہ خبر سن کر حارثہ نے فوراً اپنی سواری تیار کی، کچھ نقدی بھی اپنے ساتھ لے لی تاکہ بطور فدیہ ادا کی جا سکے اور اپنے بھائی کعب کو ہمسفر بنایا’ دونوں تیز رفتاری کے ساتھ مکہ معظمہ کی طرف روانہ ہوئے، وہاں پہنچتے ہی رسول اکرمﷺ کی خدمت اقدس میں حاضر ہو کر عرض کی: آپ بیت اللہ کے ہمسایہ ہیں۔ مانگنے والوں کی جھولیاں بھر دیتے ہیں، بھوکوں کو کھانا کھلاتے ہیں، بے کسوں کی فریاد رسی کرتے ہیں، ہم آپ کی خدمت اقدس میں اپنے بیٹے کے لئے حاضر ہوئے ہیں’ ہم نور چشم کو حاصل کرنے کی غرض سے بہت سا مال بھی لائے ہیں’ للّٰه! ہم پر کرم کیجئے۔ جو آپ اس کی قیمت لینا چاہیں، ہم بخوشی دینے کو تیار ہیں۔

رسول اکرمﷺ نے ان کی باتیں سن کر ارشاد فرمایا۔
کون ہے تمہارا بیٹا جس کا مطالبہ کر رہے ہو؟
عرض کی: آپ کا غلام زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ۔
آپ نے فرمایا:
کیا میں تمہیں ایک ایسی تجویز نہ دوں جو فدیہ سے کہیں بہتر ہو؟
دونوں نے تعجب سے پوچھا وہ کیا؟

آپ نے فرمایا: میں اسے تمہارے سامنے بلاتا ہوں۔ اگر وہ تمہارے ساتھ جانا پسند کرے تو اسے اختیار ہے، بڑی خوشی سے لے جائیں، میں اس کے بدلے کچھ بھی نہیں لوں گا، لیکن اگر اس نے میرے پاس رہنے کو ترجیح دی تو پھر میں اسے تمہارے ساتھ جانے پر مجبور نہیں کروں گا۔

یہ تجویز سن کر دونوں خوشی سے بولے: آپ نے خدا لگتی کہی ہے۔ آپ نے عدل و 

انصاف کا حق ادا کر دیا ہے، ہمیں آپ کی تجویز منظور ہے۔

رسول اللہﷺ نے حضرت زید رضی اللہ عنہ کو بلایا اور دریافت کیا:
یہ دونوں کون ہیں؟
عرض کی: یہ میرا باپ حارثہ بن شراحبیل ہے اور یہ میرا چچا کعب ہے۔
آپ نے فرمایا:
میری طرف سے تمہیں اختیار ہے، ان کے ساتھ چلے جاؤ یا میرے پاس رہو۔
حضرت زید رضی اللہ عنہ نے یہ فرمان سنتے ہی بغیر کسی تردد کے عرض کی۔
حضور! میں تو آپ کے ساتھ ہی رہوں گا۔
باپ نے بیٹے کے منہ سے یہ کلمات سنے تو کہا!

زید! بڑے افسوس کی بات ہے کیا تو اپنے ماں باپ پر غلامی کو ترجیح دیتا ہے۔

زید نے کہا: ابا جان! میں نے یہاں حضورﷺ کے جن اوصاف حمیدہ کا مشاہدہ کیا ہے اور جس طرح آپ مشفقانہ انداز میں میرے ساتھ پیش آتے ہیں، میں ان سے بہت زیادہ متاثر ہوا ہوں، لہذا میں انہیں چھوڑ کر کہیں نہیں جا سکتا۔


جب رسول اکرمﷺ نے زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ کا یہ انداز دیکھا اور اس کی طرف سے والہانہ محبت کے مظاہرے کا مشاہدہ کیا تو آپ بہت خوش ہوئے، جلدی سے اٹھے اس کا ہاتھ پکڑا سیدھے بیت اللہ تشریف لے گئے، سرداران قریش کے سامنے بآواز بلند ارشاد فرمایا۔

اے خاندان قریش! گواہ رہنا یہ میرا بیٹا ہے، یہ میرا وارث ہے اور میں اس کا وارث ہوں، یہ اعلان سن کر حضرت زید رضی اللہ عنہ کے چچا اور باپ حیران بھی ہوئے اور خوش بھی’ بہر حال یہ خوش آئند اعلان سن کر شاداں و فرحاں اپنے گھر روانہ ہو گئے، اس دن سے زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ زید بن محمد رضی اللہ عنہ کے نام سے پکارے جانے لگے، آنحضرتﷺ کے اعلان نبوت کے بعد حضرت زید رضی اللہ عنہ کو زید بن محمد رضی اللہ عنہ کے نام سے پکارا جاتا رہا’ یہاں تک کہ قرآن مجید میں اللہ تعالی کا یہ حکم نازل ہوا *ادعُوهُمْ لِآبَائِهِمْ* اس حکم خداوندی کے نزول 

کے بعد آپ کو زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ کے نام سے پکار جانے لگا۔


حضرت زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ نے جس وقت رسول اکرمﷺ کو اپنے ماں باپ پر ترجیح دی تھی، اس وقت انہیں یہ علم نہ تھا کہ انہوں نے کون سی غنیمت حاصل کی ہے، وہ یہ بھی نہ جانتے تھے کہ آنحضرتﷺ بلند مرتبہ پر فائز ہونے والے ہیں یا آپ کے سر پر نبوت کا تاج رکھا جائے گا اور آپ کو پوری دنیا کی راہنمائی کے لئے رسول بنا کر بھیجا جائے گا’ انہیں یہ کبھی خیال تک نہ تھا کہ ایک دن ایسا آنے والا ہے جس میں آسمانی حکومت روئے زمین پر قائم ہو گی اور خطہ ارض کو عدل و انصاف اور امن و سکون کا گہوارہ بنا دے گی اور انہیں اس عظیم سلطنت کے عالیشان محل کی پہلی اینٹ بننے کا شرف حاصل ہو گا۔

بلاشبہ یہ اللہ تعالیٰ کا کرم ہے، وہ جسے چاہے عطا کرتا ہے اور اللہ بڑا ہی فضل و شرف والا ہے۔

حبیب کبریاﷺ کو اپنے ماں باپ پر ترجیح دینے کے واقعے پر ابھی چند سال ہی گزرے تھے کہ اللہ تعالٰی نے اپنے پیارے نبی کو توحید خالص اور دین حق کا پیغام دینے کے لئے رسالت کے عظیم منصب پر فائز کر دیا، زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ وہ خوش نصیب انسان ہیں جو سب سے پہلے آپ پر ایمان لائے۔ بھلا اس سے بڑھ کر کوئی شرف انسانی ہو سکتا ہے، جس کے حصول کے لئے بڑھ چڑھ کر کوشش کی جائے، حضرت زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ کو راز دان رسولﷺ اور سپہ سالار لشکر اسلام بننے کا اعزاز حاصل ہوا اور مدینہ منورہ میں حضورﷺ کی نیابت کا عظیم شرف بھی ان کے حصے میں آیا۔ آپﷺ ایک غزوہ میں شرکت کے لئے باہر تشریف لے گئے تھے۔


جس طرح حضرت زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ نے نبی اکرمﷺ کے ساتھ والہانہ محبت کا مظاہرہ کیا، اسی طرح آپ بھی ان سے شفقت بھرے انداز سے پیش آئے اور انہیں اپنے خاندان کا ایک فرد بنا لیا، جب کسی مشن کے لئے حضرت زید رضی اللہ عنہ روانہ ہوتے تو آپ ان کے لئے دعا کرتے’ جب اس مشن سے واپس لوٹتے تو آپ کو دلی مسرت ہونے کا اظہار  کرتے۔
ام المؤمنین حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا حضرت زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ کی رسول اکرمﷺ کے ساتھ ایک ملاقات کا منظر بیان کرتے ہوئے فرماتی ہیں کہ:

ایک دفعہ کا ذکر ہے زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ ایک سفر سے واپس مدینہ منورہ آئے’ رسول اکرمﷺ میرے گھر تشریف فرما تھے۔

اس نے دروازے پر دستک دی، آپ جلدی سے دروازہ کھولنے کے لئے اٹھے’ دروازہ کھولا تو سامنے زید بن حارثہ کو کھڑے پایا’ آپ کی خوشی کی کوئی انتہا نہ رہی۔ انہیں گلے لگایا، ماتھا چوما، بخدا میں نے پوری زندگی اس طرح کسی صحابی کو خوش آمدید کہتے ہوئے نہیں دیکھا’ اسی لئے حضرت زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ مسلمانوں میں حبیب رسول اللہ کے نام سے معروف تھے، اور صحابہ رضی اللہ عنہم نے حضرت زید رضی اللہ عنہ کے بیٹے کو فرزند حبیب اللہﷺ کا نام دے رکھا تھا۔

8 ہجری میں اللہ تعالیٰ نے اپنی حکمت بالغہ سے چاہا کہ رسول اللہﷺ کو اپنے ایک جاں نثار اور اولاد کی طرح پیارے صحابی کی جدائی میں مبتلا کرے۔

ہوا یہ کہ آنحضرتﷺ نے حارث بن عمیر رضی اللہ عنہ کو ایک خط دے کر شاہ بصری کی طرف روانہ کیا تاکہ اسے اسلام کی طرف دعوت دی جائے، جب حضرت حارث بن عمیر یہ خط لے کر اردن کی مشرقی جانب مقام “موتہ” پہنچے تو وہاں امیر غساسنہ شرحبیل بن عمرو آپ کے سامنے آیا اور انہیں گرفتار کر کے قتل کر دیا’ یہ اندوہناک خبر جب رسول اکرمﷺ کے پاس پہنچی تو آپ کو بہت صدمہ ہوا۔ تین ہزار مجاہدین پر مشتمل لشکر جنگ موتہ کے لئے روانہ کیا اور اس لشکر کا سپہ سالار حضرت زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ کو مقرر کیا۔ ارشاد فرمایا کہ: اگر زید رضی اللہ عنہ شہید ہو جائے تو جعفر بن ابی طالب رضی اللہ عنہ کو لشکر کی قیادت سونپ دی جائے اور اگر جعفر شہید ہو جائے تو عبد اللہ بن رواحہ رضی اللہ عنہ کو قائد لشکر بنا دیا جائے اور اگر اسے بھی شہید کر دیا جائے’ تو پھر مجاہدین اسلام اپنے میں سے جسے بہتر سمجھیں اپنا قائد بنالیں۔ 

لشکر اسلام اللہ کا نام لے کر روانہ ہوا۔ اردن کی مشرقی جانب ”معان” مقام پر پہنچا تو شاہ روم ایک لاکھ فوج لے کر مقابلے میں اترا اور اس کے ساتھ مشرکین عرب میں سے ایک لاکھ افراد شامل ہو گئے اور یہ لشکر خم ٹھونک کر مسلمانوں کے بالمقابل آ کھڑا ہوا۔

مسلمان “معان” مقام پر دو راتیں آپس میں مسلسل مشورے اور جنگی نقطہ نگاہ سے منصوبہ بندی کرتے رہے۔

ایک مجاہد نے رائے دی کہ ہمیں دشمن کی تعداد کے متعلق رسول اکرمﷺ کو بذریعہ خط اطلاع دینی چاہئے اور آپ کے حکم کا انتظار کرنا چاہئے۔ دوسرے نے کہا:

اللہ کی قسم! نہ تو ہم تعداد کے بل بوتے پر لڑتے ہیں اور نہ ہی قوت اور کثرت کی بنا پر! ہم تو صرف اس دین متین کی حفاظت کے لئے بر سر پیکار ہیں۔

میرے ساتھیو! جو مقصد لے کر میدان جہاد کی طرف نکلے ہو ہمیشہ اسے پیش نظر رکھو۔ اللہ تعالیٰ نے دو انعامات میں سے ایک کی تمہیں ضمانت دی ہے۔
یا فتح نصیب ہوگی۔۔۔ یا پھر جام شہادت نوش کرو گے۔

مقام “موتہ” پر دونوں فوجیں بالمقابل آئیں۔ لشکر اسلام صرف تین ہزار افراد پر مشتمل تھا، لیکن دشمن کی فوج دو لاکھ افراد پر مشتمل تھی، اس جنگ میں مسلمان ایسی بے جگری سے لڑے کہ رومی فوج کے چھکے چھڑا دیے، دشمنوں کے دلوں پر لشکر اسلام کی دھاک بیٹھ گئی۔

رسول اللہﷺ کے عطا کردہ جھنڈے کی حفاظت کے لئے سپہ سالار حضرت زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ نے ایسی جوانمردی کے ساتھ جنگ لڑی کہ جنگی کارناموں کی تاریخ میں اس کی مثال نہیں ملتی۔ بالآخر دشمن کے نیزوں نے آپ کے جسم کو چھلنی کر دیا اور آپ شہید ہو گئے، ان کے بعد جھنڈا حضرت جعفر بن ابی طالب رضی اللہ عنہ نے تھام لیا اور اس کی حفاظت کے 

لئے بڑی جانفشانی سے دشمن کے مقابلے میں نبرد آزما رہے۔ یہاں تک کہ جام شہادت نوش کیا’ ان کے شہید ہو جانے کے بعد حضرت عبداللہ بن رواحہ رضی اللہ عنہ نے آگے بڑھ کر جھنڈا تھام لیا اور ایسی بہادری سے دشمن کا مقابلہ کیا کہ دیکھنے والے ششدر رہ گئے، لیکن بالآخر لڑتے لڑتے اللہ کو پیارے ہو گئے، ان کے بعد حضرت خالد بن ولید رضی اللہ عنہ کو سپہ سالار منتخب کیا گیا، ابھی آپ نئے نئے حلقہ بگوش اسلام ہوئے تھے، لیکن آپ نے اپنے تجربات کی بنا پر ایسی جنگی تدبیر اختیار کی کہ لشکر اسلام کو ہزیمت سے بچا لیا۔

جب جنگ “موتہ” کی خبر رسول اللهﷺ کو پہنچی اور لشکر اسلام کے تین سپہ سالاروں کی شہادت کا علم ہوا تو آپ اتنے غمگین ہوئے کہ اس سے پہلے کبھی آپ کو اس طرح حالت غم میں نہیں دیکھا گیا اور آپ خبر سنتے ہی فوری طور پر تعزیت کے لئے ان کے اہل خانہ کے پاس گئے۔

جب آپ حضرت زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ کے گھر پہنچے تو ان کی چھوٹی بیٹی آپ سے چمٹ کر زار و قطار رونے لگی، رسول اللہﷺ بھی آبدیدہ ہو گئے، یہ منظر دیکھ کر حضرت سعد بن عبادہ رضی اللہ عنہ نے پوچھا یا رسول اللہﷺ کیا آپ بھی رو رہے ہیں؟
آپﷺ نے ارشاد فرمایا:
یہ ایک حبیب کا اپنے حبیب کے غم میں رونا ہے۔


حضرت زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ کے مفصل حالات زندگی معلوم کرنے کے لئے درج ذیل کتابوں کا مطالعہ کریں۔

 

ا۔ صحیح مسلم
۳۱۳/۷ باب فضائل صحابہ
۲۔ جامع الاصول ۱۰/ ۲۵۔۲۶
٣- الاصابه ۲۹۰
۴۔ الاستيعاب ۵۴۴/۱
٥- السيرة النبويه ابن ہشام 
۶- صفة الصفوة ۱/ ۱۴۷
۷۔ خزانة الأدب ۱/ ۳۶۲
۸۔ البداية والنهايه
۸ ہجری کے واقعات دیکھئے
۹۔ حیاةالصحابه
جلد چہارم کی فہرست دیکھئے

 

حوالہ جات :

“حياتِ صحابہ کے درخشاں پہلو”

تا لیف: “داکتور عبدالر حمان رافت الباشا”

 

 

Table of Contents