Sections
< All Topics
Print

42. RASOOL ALLAH(ﷺ)  KE AKHLAAQ AUR ADAT MUBARAK [The Prophet(ﷺ )’s features and character]

AKHLAAQ AUR AADAT

 

Kisi ne Ummahatul Momineen Ayesha(رضی اللہ عنہا ) se pucha keh Nabi kareem(ﷺ ) ke Akhlaaq kese the? Unho ne kaha “Kiya tumne Qur’an nahi parha hai? Jo kuch Qur’an mein hai Wo Nabi Kareem( ﷺ) ke Akhlaaq the .

 Gharz Aap(ﷺ ) ki saari zindagi Qur’an-e-Paak ki Amaali tafseer thi aur ye bhi Aap ka aik mojezah hai- Khud Qur’an ne iski shahadat di aur kaha:

 

وَ  اِنَّکَ لَعَلٰی خُلُقٍ عَظِیۡمٍ ﴿۴﴾

 

“Yani Beshak Ae Muhammad(ﷺ )! Aap Husn Alhlaaq ke barhe Rutbe par hain.”

 

Nabi Kareem(ﷺ ) Nihayat Khaskaar, Milansaar, Maherbaan, aur Rahem dil the- Chote barhe sabse Mohabbat karte, Nihayat sakhee, Fayaz aur Dado dahesh Waale the- Imkaan bhar sabki darkhast poori karte, Tamam Umr kisi ke suwal par nahi, Nahi kaha, Khud bhooke rahete aur dusron ko khilate- Aik martaba aik sahabi ki shadi hui – Unke paas valima ka kuch saman na tha – Aap(ﷺ ) ne unse farmaaya keh Ayesha(رضی اللہ عنہا ) ke paas jaou Aate ki tokri mangnlaou halake aate ke siwa shaam ke liye ghar mein kuch na tha. Fayaazi aur Duniya ke maal se betaluqi ka ye aalam tha keh ghar mein naqd ki qism se koi cheez bhi hoti tou jab tak wo sab khairat na kardi jaati aap aksar ghar mein aram na farmaate- Aik bar fidak ke raees ne chaar ounton par ghalla bheja- Isko baich kar qarz ada kiya gaya- Phir bhi kuch bach raha- Aap ne kaha keh jab tak kuch bhi baaqi rahega mein ghar mein nahi jaasakta- Raat masjid mein basar ki dusre din jab malum hua keh wo ghalla taqseem hochuka hai, ghar tashreef legae-

 Nabi Kareem(ﷺ ) barhe mehmaan nawaz the- Aap ke yahan musalmaan, mushreek aur kafir sabhi mehmaan hote, Aap sabki khatir karte aur khud hi sabki khidmat karte, kabhi aisa hota keh mehmaan aajate aur ghar mein jo kuch moujood hota wo unko khila pila diya jaata aur poora ghar faaqa karta- Aik dafa Aap(ﷺ ) ke yahan aik kafir mehmaan hua- Aap ne aik bakri ka doodh isko pilaya, wo sab doodh peegaya- Aap(ﷺ ) ne dusri bakri mangwaey, ye iska bhi doodh peegaya, gharz saat(7) bakriyon tak naoubat ae- Jab tak iska pait na bhara gaya Aap(ﷺ ) doodh pilate rahe, Raaton ko uth uthkar mehmaanon ki dekh bhaal farmaate keh unko koi takleef tou nahi hai- Ghar mein rahete tou ghar ke kaam kaaj apne haaton se karte , Apne phate kapre Aap silete, Apne phate joote ko khud ganthlete, Bakriyon ka doodh apne haat se dhote , majma’ mein baithte tou sabke barabar hokar baithte, Masjid Nabawi ke banane aur Khandaq khodhne mein sab logon ke sath milkar Aap(ﷺ ) ne bhi kaam kiya.

Nabi Kareem(ﷺ ) Yateemon se mohabbat rakhte aur unke sath bhalai ki takeed karte- Farmaaya: Musalmaanon ka sabse acha ghar wo hai jisme kisi yateem bache ke sath bhalai ki jaarai hai aur sabse kharab ghar wo hai jisme kisi yateem bache ke sath burai ki jaarai hai- Aap(ﷺ ) ki chaheti beti Hazrat Fatima(رضی اللہ عنہا ) jinki halat ye thi keh chakki peeste peeste hateliya ghis gae theen aur mashk mein pani bhar bharke laane se seene par neel ke dagh parhgae the- unho ne aik din Aap(ﷺ ) se aik khadma ke liye arz kiya- Aap(ﷺ ) ne jawab diya, Fatima(رضی اللہ عنہا )! Badar key yateem tum se pehle darkhast karchuke hain. Aik riwayat mein hai keh aey Fatima(رضی اللہ عنہا )! Safah keh ghareebon ka ab tak koi intezam nahi hua hai tou tumhaari darkhast kese qubool karun?.

Ghareebon ke sath Aap( ﷺ) ka bartou aesa hota tha keh unko apni ghareebi mehsoos na hoti unki madad farmaate aur unki dil joi karte, Aksar Dua mangte the “Allah Rabbul Izzat! Mjhe miskeen zindah rakh, Miskeen utha aur Miskeenon hi ke sath mera hashr kar- “Aik bar aik poora qabilah Aap(ﷺ ) ki khidmat mein hazir hua – ye log itne ghareeb the keh unme se kisi ke badan par koi theek kapra na tha- Nanage badan, Nange paou- Unko dekhkar Aap(ﷺ ) par bohat asar hua- Pareshaani mein andar gae, Bahar tashreef lae uske ba’ad sab musalmaanon ko jama karke unlogon ki imdad ke liye farmaaya-

    Aap(ﷺ ) mazloomon ki fariyaad sunte aur insaaf ke sath unko haq dilate, Kamzoron par rahem khaate , Bekasaon ka sahara bante, Maqroozon ka qarz ada karte – Hukm tha keh jo musalmaan marjae aur apne zimme qarz chor jae tou mjhe itelah do mein usko ada kardonga aur wo jo tarka chor jae wo wareson ka haq hai mjhe usse koi matlab nahi.

Aap(ﷺ ) bemaron ko tasalli dete, Unko dekhne jaate , Dost, Dushman aur momin o kafir ki isme koi qaid na thi, gunaahgaron ko muaf kardete, Dushmanon ke haq mein dua e khair farmaate- Jaani dushmaanon aur qateelana hamla karne walon tak se badla na liya- Aik bar aik shakhs ne Apke Qatl ka iradah kiya- Sahaba(رضی اللہ عنہما ) isko giraftaar karke samne lae- wo apko dekhkar dargaya- Aap(ﷺ ) ne farmaaya: Daro nahi agar tum mjhe qatl karna chahate bhi tou qatl nahi karsakte the.

Hibar bin al aswad jo aik tarha se Nabi Kareem(ﷺ) ki sahibzaadi Hazrat zainab(رضی اللہ عنہا ) ka qatil tha, Fatah makkah ke mouqe par usne chaha keh Iran bhag jae lekin wo sidha Nabi Kareem(ﷺ ) ke paas aaya aur kaha Ya Rasool Allah(ﷺ ) ! Mein bhagkar Iran jaana chahata tha lekin apka rahem o karam yaad aya- Ab mein hazir hoon aur mere jin jurmon ki khabr apko mili hai wo durust hain- Aap(ﷺ ) ne usko muaf kardiya.

Hamsayon ki khair giri farmaate, Unke yahan tohfe bhejte , Unka haq poora karne ki takeed farmaate rahete – Aik din Sahaba(رضی اللہ عنہما ) ka majmaa’ tha, Aap(ﷺ ) ne farmaaya: Allah ki qasm! Wo momin na hoga , Allah ki qasm wo momin na hoga, Sahaba(رضی اللہ عنہما ) poche kaun? ya Rasool Allah(ﷺ ), Farmaaya: wo jiska padosi uski shararton se bacha hua na ho- Aap(ﷺ ) apne padosiyon ke ghar jaakar unke kaam aate- Padosiyon ke siva aur jo bhi apse kisi kaam ke liye keheta usko poora farmaate- Medine ki laundiya Aap(ﷺ ) ki khidmat mein aaten aur keheten Ya Rasool Allah(ﷺ )! Mera ye kaam hai, Aap fauran uth khare hote aur unka kaam kardete- bewa ho ya miskeen ya koi aur zarurat mand sabhi ki zaruraton ko Aap(ﷺ ) poora farmaate aur dusron ke kaam karne mein aar mehsoos na farmaate.

Bachon se barhi mohabbat farmaate the, Unko chumte aur pyar karte the, Fasal ka nayah mewah sab se kam Umr bacha jo us waqt moujood hota usko dete, Raste mein bache miljaate tou khud unko salam farmaate, Islam se pehle hamesha aurten zaleel rahi hain- lekin Hamare Rasool Allah(ﷺ ) ne unpar bohat ehsaan farmaaya, unke huqooq muqarar farmaaye aur apne bartou se zahir farmaadiya keh ye tabqa haqeer nahi hai balkeh izzat aur hamdardi ke layeq hai, Aap(ﷺ ) ke paas har waqt mardon ka majmaa’ rehet tha- Aurton ko apki baten sunne ka maouqa na milta tha isiliye khud aurton ki darkhast par Aap(ﷺ ) ne unke liye aik khaas din muqarar farmaa diya tha, Aurten dileri aur betakalufi se Aap(ﷺ ) se masaiyl pochten lekin Aap bura na mante, unki khatir daari ka khayal rakhte the-

Aap(ﷺ ) saari duniya ke liye rahemat bankar ae the, isiliye kisi ke sath bhi ziyadati aur na insaafi ko pasand na farmaate the yahan tak ke janwaron ke sath log jo beparwae baratte the, Wo bhi Apko gawara na thi aur unke bezubanon par jo zulm hota aya tha uski rokdiya-

Aik bar aik sahab ne aik parinde ka anda uthaliya – Churiya be qarar hokar par maar rahi thi- Aap(ﷺ ) ne pocha ke kis ne iska anda liya hai aur usko dukh pohanchaya hai? un sahab ne kaha Ya Rasool Allah(ﷺ ) main ne ye kiya hai- Aap( ﷺ) ne farmaaya wahin rakhdo.

Aap(ﷺ ) ki nazar mein Ameer o ghareeb sab barabar the- Qabilah Makhzom ki aik aurat chori ke jurm mein giraftar hui- Logon ne Hazrat Osamah(رضی اللہ عنہ ) jinko Aap(ﷺ ) bohat chahate the- Unse sifarish kari- Aap(ﷺ ) ne sabse farmaaya keh tumse pehle ki qaumein isiliye barbad hogae keh jab koi barha admi jurm karta tou usko chordete aur muamooli admi jurm karta tou wo saza paata, Allah ki qasm! agar Muhammad(ﷺ ) ki beti Fatima(رضی اللہ عنہا ) bhi chori karti tou uske hath bhi kaate jaate.

 

Wo Nabiyon mein rahemat e laqab paane wala

Muraden ghareebon ki bar laane wala

Museebaton mein ghareebon ke kaam aane wala

Wo apne paraie ka gham khane wala

Faqeeron ka malja Zaeefon ka maava

Yateemon ka wali, Ghulamon ka mawla

Khatakaron se dar guzar karne wala

Badanadesh ke dil mein ghar karne wala

Mafasid(1) ka zair o zabar karne wala

Qabaiyl ka sher o shukr karne wala

Utar kar hira se soye qaum aya

Aur aik nuskha kimiya(2)  sath laya

Masi khaam ko jisne kundan banaya

Khara aur khota alag kar dikhaya

Arab jispe qarnon(3)  se tha jahail chahaya

Palat di bas ak aan mein uski kaya

Raha dar na bairey ko moj-e- bala ka

Idhar se udhar phir gaya rukh hawa ka.

 

2. Qur’an e paak. 3. Saalha saal.

 

Hazrat Anas(رضی اللہ عنہ ) kehete hain keh mein ne das(10) baras Nabi kareem(ﷺ ) ki khidmat ki magar Aap(ﷺ ) ne kabhi na danta, na mara, na yu pocha keh tumne ye kaam kyun kiya aur ye kyun na kiya- Aap(ﷺ ) ne tamam umr kabhi kisi ko nahi maara, aur ye kiya ajeeb baat hai keh aik fauj ka journal jisne musalsal 9 baras laraeeyon me guzare aur jisne kabhi laraee ke maidan se muh nahi morha , Usne apne dushmaan par kabhi talwaar nahi uthae aur na kabhi kisi par apne hath se war kiya- Uhad ke maidan mein jab har tarf se aap par pathron, teeron aur talwaaron ki barish horahi thi, Aap apni jagah par khare the aur Jaan nisar daey baey kat kat kar gir rahe the-

    Isi tarha hunain ki laraee mein aksar musalmaan ghaaziyon ke paou ukhar chuke the, Aap(ﷺ ) Pahar ki tarf apni jagah par khare the- Sahaba( رضی اللہ عنہما) kehete hain, Laraee ke aksar markon mein Aap( ﷺ) wahan hote the jahan barhe barhe bahadur khare hona apni shuja’at ka akhri karnama samjhte the aur aise khauf naak muqamat mein rahe kar bhi dushmaan par hath nahi uthate the- Uhad ke din jab mushreekon ke hamle mein sar mubarak zakhmi aur dandan mubarak shaheed hue ye farmaate the, “Ae parwardigar unhe muaf kar ke wo nahi jante”.

   Saalha saal ki naakaami ki takleefon ke ba’ad kabhi mayusi ne Aap ke dil mein raah na pae aur Akhir wo din aya Jab aap akele saare arab par chagae, Makkah ki takleefon se ghabrakar aik sahabi ne darkhast ki keh Ya Rasool Allah(ﷺ ) ! Aap hamlogon ke liye kyun dua nahi farmaate? Ye sunkar Aapka chahera surkh hogaya aur farmaaya keh tum se pehle jo log guzre unko aaron se cheera gaya, unke badan par lohe ki kanghiya chalae gaen- Jisse gosht wo post sab kat kat jata lekin ye takleefen bhi unko haq se phair na sakhen- Allah ki qasm! Deen-e-Islam apne kamal ke martabe par pohanchkar rahega yahan tak keh Sana’aa(yeman) Hazar maut tak aik sawar us tarha be khatr chala jaega keh usko Allah ke siva kisi aur ka dar na hoga.

Nabi kareem(ﷺ ) ka wo azm aur isteqlal yaad hoga jab aapne Apne chacha ko ye jawab diya tha keh Chacha jaan! Agar quraish mere dahine hath mein  suraj aur baey hath mein chand rakhden tabhi haq ke ilaan se baaz na rahoga.

     Aik bar dopaher ko aik laraee mein Aap(ﷺ ) aik darakht ke neche akele aram farmaa rahe the, aik aarabi aya aur talwaar khench kar bola : “Batey Ae Muhammad(ﷺ )! Ab tujhko mjhse kaun bacha sakta hai?” Itmenan aur tasali se bhari hui awaz mein jawab diya “Allah” wo ye jawab sunkar kanp gaya aur talwaar niyam mein karli.

   Laraeeyon ke maal-e-Ghanimat aur khaiybar wagerah ki zameenon ki paida war ka haal sunkar kisi ko ye shuba na ho keh ab Islam ki ghurbat ka zamana khatam hogaya aur paighambar Islam(ﷺ )barhe aram aur tazk wa ehtesham se zindagi basar karne lage- Azwaj mutaharat(رضی اللہ عنہا ) aur Ahle Bait(رضی اللہ عنہا ) ke gharon mein jo kuch ata wo dusre zarurat mandon aur mohtajou ke nazar hojata tha aur khud apke Ahle bait ki zindagiya isi tangi aur ghurbat se basar hoti theen, khud farmaaya karte the keh Adam(علیہ السلام ) ke bete ke liye satar chupane ko aik kapra aur pait bharne ko rokhi sukhi roti aur pani kafi hai aur isi par apka amal tha- Hazrat Ayesha(رضی اللہ عنہا ) keheti hain keh Apka kapra kabhi  teh karke rakha nahi jata yani aik hi jora kapra hota tha dusra nahi jo teh karke rakha jata.

Nabi Kareem(ﷺ) ke gharon mein aksar faaqah raheta tha aur kae kae dinon tak raat ko khana nahi milta tha- Do Do mahenon tak lagataar gharon mein chulha jalne ki nobat nahi aati thi- Hazrat Ayesha( رضی اللہ عنہا) farmaati hai keh Aap ne (Medine ke zamane qayam mein) kabhi do waqt saer hokar khana nahi khaya.   Aik dafa ka zikr hai, aik bhooka apki khidmat mein aya- Apne azwaj mutaharat(رضی اللہ عنہا ) mein se kisi ke haan kehla bheja- Jo ab aya keh gharon mein pani ke siva kuch nahi- Aap ne dusre ghar mein admi bheja- Wahan se bhi yehi jawab aya gharz 8-9 gharon mein se pani ke siva khaane ki koi cheez nahi nikli.

Aik din Aap(ﷺ ) bhook mein theek dopaher mein ghar se nikle, raste mein Hazrat Abu bakr siddeeq(رضی اللہ عنہ ) aur Hazrat Umar(رضی اللہ عنہ ) mile- ye dono bhi bhooke the, Nabi Kareem(ﷺ ) un dono ko leke Abu Ayub Ansari(رضی اللہ عنہ ) ke ghar ae- Unko khabr hui tou dore ae aur bagh se jaakar khajooron ka aik khosha tor lae aur samne rakhdiye- Uske ba’ad aik bakri zibah ki aur khaana tayar kiya aur samne lakar rakha-  Aap(ﷺ ) ne aik roti par thora sa gosht rakhkar farmaaya keh ye fatima( رضی اللہ عنہا) ke yahan bhejwaou isko kae din se khaana naseeb nahi hua hai.

Nabi kareem(ﷺ ) ne jab waffat pae tou halat ye thi keh Apki zirah teen sayr jo par aik yahudi ke paas girwi thi- Jin kapron me Waffat hui unme upar tale paiwand lage hue the-

Hazrat Fatima(رضی اللہ عنہا ) se Aap( ﷺ) ko barhi mohabbat thi magar ye mohabbat sone chandi ke zaiwaron aur eent Chune ke makanon mein kabhi zahir nahi hui. Bibi Fatima(رضی اللہ عنہا ) apne haathon se kaam karteen, mashk bharke paani laate, aata gundhteen aur agar kabhi baap se kisi ghulam ya laundi ki farmaaish karteen tou Aap(ﷺ ) farmaate the keh beti ye tasbeeh parhliya karo. aik dafa jab bohat se laundiya aur ghulam ae tou Aapki khidmat mein jaakar arz ki- Farmaaya: Jaan-e-Padar Badar ke yateem aur sufha ke musafir tum se ziyada mustahaiq hain.

 

Nabi kareem(ﷺ ) kabhi kisi ka ehsaan lena gawara na farmaate, Hazrat Abu Bakr siddeeq(رضی اللہ عنہ ) hijrat ke waqt sawari ke liye ount pesh kiya tou apne uski qeemat ada farmaadi, jin logon se tohfe qubool farmaate the, Unko iska badla zarur dete the- Aik martaba aik shakhs ne hadiya mein aik ountni pesh ki- Apne uska badla diya tou usko bura malum hua- Aap(ﷺ ) ne mimbar par khare hokar farmaaya keh tum log mjhe hadiya dete ho aur main imkaan bhar uska badla deta hoon tou naraz hote ho-

    Aap len den ke muamilat mein bohat saaf the- Farmaaya karte keh sabse behtar wolog hai jo qarz ko achi tarha ada karte hain- Aik dafa kisi se Aap(ﷺ) ne ount qarz liya- Jab wapis kiya tou usse behatar wapis kiya- Aik bar kisi se aik piyala Aariatan liya, itefaq se wo goom hogya tou Aap ne uska tawaan ada farmaaya-

        Jo wada farmaate usko poora karte- Kabhi Bad Ahdi nahi farmaaye- Suleh hudebiya mein aik shart ye bhi thi keh makkah se jo musalmaan hokar medina jaega, Wo makkah walon ke mutalebe par wapis kardiya jaega chunacha aik sahab Abu Jundal(رضی اللہ عنہ ) makkah se bhag kar ae aur faryaad ki- Sab muslamaan ye dekhkar tarap gae lekin Aap(ﷺ ) ne saaf farmadiya keh: Ae Abu Jundal! Sabr karo, Main bad ahdi nahi karonga, Allah ta’aala tumhare liye koi rasta nikalega.

    Sachai Aap( ﷺ) ki aik aisi siffat thi keh dushmaan bhi isko mante the- Abu Jahal kaha karta tha keh Muhammad! Main tumko jhoota nahi keheta, Albatta tum jo kehete ho usko sahih nahi samjhta.

    Nabi kareem(ﷺ ) Sharmile bohat the- kabhi kisi ke sath bad zubani nahi ki, Bazaron mein jaate tou chup chaap guzar jate- Bhari mehfil mein koi baat na gawar hoti tou lehaz se Zuban se kuch na kehete lekin chehere mubarak se malum hojata- Apki tabiyat mein bohat isteqlal tha- Jis cheez ka pakka iradah hojata phir usko pora hi farmaate, Ghazwa-e-Uhad mein Sahaba( ) se mashwerah kiya- Sabne hamle ki rai di lekin jab Aap(ﷺ ) zerah pehenkar tashreef lae tou ruk jaane ka mashwera diya gaya- Aap(ﷺ ) farmaaye, Paighamber zirah pehankar utar nahi sakhta.

       Aap(ﷺ ) ki bahaduri be misaal thi- aik bar medinah mein shor hue keh dushman agae-log muqable ke liye tayar hue lekin sabse pehle Aap(ﷺ ) nikal parhe aur ghore par zain ke baghair gasht laga ae aur wapis aakar logon ko taskeen di keh koi khatre ki baat nahi hai-

  Mizaj mubarak mein sadgi bohat thi- khaane, peene, aur orhne, Uthne baithne , kisi cheez mein takaluf pasand na tha, jo samne aajata khalete, pahenne ke liye mota chota jo miljaata usko pahen lete, Zameen par, chatai par, Farash par jahan jagah milti baith jaate- Allah ki nematon se jayez taur faida uthaane ki ijazat Aap ne zarur di lekin tann parori aur aish na apne liye pasand farmaaya na aam muslamaanon ke liye- Aik bar Hazrat Ayesha(رضی اللہ عنہا ) ke paas tashreef le gae, dekha keh ghar mein chat gir lagi hui hai, aur usi waqt phar dali aur farmaaya keh Allah ne ham ko daulat isisliye nahi di hai keh Ent aur pathar ko kapre pinhaye jaen- Aik bar Hazrat Fatima(رضی اللہ عنہا ) ke gale mein aik sone ka haar dekha tou farmaaya keh tumko bura na maloom hoga jab log kahinge paighambar ki beti ke gale aag ka haar hai?

       Duniya se be ragh bati ke bawajood Aap(ﷺ ) ko khush mizaji aur rukha pan pasand na tha- Kabhi kabhi dil chaspi ki baten farmaate- Aik bar aik budhiya Aap ke paas ae, Aur Jannat ke liye dua ki khaahish ki- Aap(ﷺ ) ne farmaaya keh budhiyan jannat mein nahi jaegi, isko bohat ranj hua, Roti hui wapis chali- Apne logon se kaha keh usse kehedo keh budhiya jannat mein na jaegi magar jawan hokar jaegi- Baaz log raat din Namazon mein mashghul rehena chahate the iski wajhese biwi bachon nez apne jism ke haq poore na hone ka andesha tha isisliye Aap( ﷺ) isko rokhte – Hazrat Abdullah bin Umar(رضی اللہ عنہ ) ke mutaliq khabar hui keh Unho ne hamesha din mein roze rakhne aur raat bhar ibadat karne ka ahad kiya hai- Aap(ﷺ) ne unko bula bheja aur pocha ke kiya ye khabr sahih hai? unho ne kaha Haan! – Farmaaya keh tum par tumhare jism ka haq hai, Ankh ka haq hai, Biwi ka haq hai-

      Aap(ﷺ) ki ehtiyat ka ye aalam tha keh kisi ke ghar jaate tou darwaze ke daey ya baey khare hote aur usse ijazat mangte- Samne isiliye na khare hote keh nazar ghar ke andar na parhe –

    Safai ka khaas khayal raheta – Aik shakhs ko maiyle kapre pehene dekha tou fatmaaya keh isse itna nahi hota keh kapre dholiya kare- Guftagu thair thair kar farmaate the- aik aik fuqrah alag hota, kisi ki baat kaat kar guftagu na farmaate- jo baat na pasandidah hoti usko taaldete. Ziyada tar chup rahete, be zarurat guftagu na farmaate, Hansi aati tou muskura dete-

    Aap(ﷺ) har lehaz aur har lamha Allah ki yaad mein lage rahete- Uthte baithte, chalte phirte gharz har waqt usi ki khushi ki talaash raheti aur har halat mein dil aur zuban se Allah ki yaad jaari raheti- Sahaba( رضی اللہ عنہما) ajmaen ki mehfilon mein ya biwiyon ke hujron mein hote aur yaka yak azan ki awaz aati,  Aap(ﷺ ) uth khare hote- Raat ka barha hessa Allah ki yaad mein basar karte, kabhi poori poori raat Namaz mein khare rahete aur Barhi barhi surten parhte,  Nabi kareem(ﷺ ) Allah ta’aala keh barhe pyare paigambar the, phir bhi farmaaya karte keh mjhko kuch Nahi malum keh mere upar kiya guzregi? Aik martaba barhe pur asr alfaz mein farmaaya:

“Ae Quraishiyon! Aap apni khabr lo! Main tumko Allah se nahi bacha sakta, Ae Abd munaf! Main tumko Allah se nahi bacha sakta , Ae Abbas bin Abdal muttalib! Main tumko kabhi Allah se nahi bacha sakta, Ae Safiya! Rasool Allah ki phupi! Main tumko Allah se nahi bacha sakta, Ae Muhammad(ﷺ ) ki beti Fatima(رضی اللہ عنہا )! Main tumko Allah se nahi bacha sakta.”

Aik sahabi ka bayan hai keh main aik bar Rasool Allah(ﷺ ) ki khidmat mein hazir hua, dekha tou Aap(ﷺ ) namaz parh rahe hain, Ankhon se ansu jaari hain, rote rote is qadr hichkiyan band gae thin keh malum horaha tha keh chakki chal rahi hai- Aik bar Nabi kareem(ﷺ) aik janaze mein shareek the, Qabr khodi jaarai thi, Aap(ﷺ ) qabr ke kinare baithgae aur ye manzar dekhkar rone lagae yahan tak keh zameen tar hogae- phir farmaaya:

“Bhaiyon! Is din me liye saman kar rakho“

Upar ke Safahat mein Aap(ﷺ ) ke mubarak halat aur Apke Ache akhlaaq aur Aadaat ko parh chuke, Ab iski koshish hona Chaheye keh Aap( ﷺ) ki zindagi ki ham pairwi aur Aap(ﷺ ) ki bataey hui baton par aml karen keh Allah ki khushi hasil karne ka yehi zariya hai aur deen aur duniya ki badeshahatki sirf yehi aik kunji hai.

 

REFERENCE:
BOOK: “RAHEMAT-E-ALAM”
BY ALLAMAH SAYYED SULEMAN NADWI(رحمه الله)

 

The Prophet(ﷺ )’s features and character

 

The Prophet(ﷺ )’s physical appearance was described in detail by his Companions.

 

 The Prophet(ﷺ )’s face 

 

The Prophet(ﷺ )’s face was fair, attractive and round. Whenever he was pleased, his face shone bright like the full moon, but it would turn crimson when he was angry. 

If sweat appeared on his face, the beads glistened like pearls, and the fragrance of his perspiration excelled the smell of musk.

 The Prophet(ﷺ )’s cheeks were soft, his forehead wide, and his eyebrows thin and arched. His eyes were wide, with black pupils,while the whites were mixed with crimson. 

He had long thick eyelashes. The bridge of the Prophet(ﷺ )’s nose was high and shiny. His mouth was wide, and there were spaces between each of his teeth. His teeth were bright, appearing like tiny hailstones when he smiled, and they sparkled as he talked. 

The Prophet(ﷺ )’s beard was black, thick and full, covering most of his chest. A few grey hairs showed on his ear lobes and chin.

 

Head, neck and hair 

 

The Prophet(ﷺ ) had a large head on a long neck. His hair was slightly curly, and he wore it parted in the middle. Sometimes he kept his hair so long it touched both his shoulders, while at other times it fell just above his earlobes. He had a few grey hairs on his head and beard together.

 

Limbs 

 

The Prophet(ﷺ ) was big boned with large elbows, shoulders, knees and wrists. His palms and feed were wide. His arms were heavy and hairy, and his heels and calves were light. He had broad hirsute shoulders, but his chest was broad and hairless, with only a line of hair running from his chest to his navel.

 

Build and stature

 

 The Prophet(ﷺ ) was of a medium build, being neither fat nor thin. He had a straight body. Although he was not particularly tall, he rose above most men in height.

 

Fragrance

 

 Several of the Prophet(ﷺ )’s Companions have mentioned a fragrance, sweeter than any perfume, emanating from the Prophet(ﷺ )’s body. Anas (رضی اللہ عنہ )says: “I never smelt any musk or any other such perfume that was as sweet as the fragrance of the Prophet(ﷺ ).” Jabir (رضی اللہ عنہ )says: “The Prophet(ﷺ )’s fragrance lingered after he left, and we could tell which path he had taken by sniffing the air.” If the Prophet(ﷺ ) happened to shake hands with anyone, the fragrance would remain with that person for the whole day. When he spread his hand over a child’s head, others would discern his fragrance on the child. Umm Sulaym (رضی اللہ عنہا )used to collect some of the Prophet(ﷺ )’s sweat in a small bottle and would mix it with perfume.

 

 The Prophet(ﷺ )’s gait

 

 The Prophet(ﷺ ) was swift-footed and had a firm step. He would rise with a jerk and walk swiftly but smoothly, as if going down a slope. He would turn swiftly and gracefully.

The Prophet(ﷺ ) never seemed to tire when he walked, and nobody could keep pace with him. Abu Hurayrah (رضی اللہ عنہ ) says, “I have never seen anyone who walked as quickly as the Prophet (ﷺ ) . It looked as if the earth rolled itself up for him when he walked. We would tire ourselves out walking with him, while he would move on with ease.”

 

Character 

 

The Prophet(ﷺ ) usually seemed cheerful, and he liked to smile. Even when the others were rude to him, he was never harsh and rude. He never raised his voice in the market place.

If faced with a choice between two options, the Prophet(ﷺ ) would always chose the easier one, provided that it did not lead to sin. Above anything else, he avoided sinning or anything leading to disobedience of Allah. He never sought revenge for any offense committed against himself, but when the honour of Allah was at stake, he would certainly punish the offender.

As we have seen over the course of the events in his life, the Prophet(ﷺ ) was generous, brave, strong and extraordinarily patient. Never vulgar or obscene, his dislike of something was apparent on his face. He never stared directly at anyone, nor did he ever glare at anyone in displeasure. He never rebuked his servant, nor was he ever heard saying something about anyone.

Even before his appointment as Allah’s Messenger, the Prophet(ﷺ ) was known as “Al-Ameen” (the Trustworthy). He always kept his promises, and remained humble even in victory. He respected the ties of kinship, attending the funerals of his relatives and Companions. He sat with the poor and needy, and accepted invitations extended to him from his slaves. At the height of his power as head of the Islamic state, he lived modestly. He never attempted to outdo others in serving rich food or wearing expensive clothing.

 

REFERENCE:
BOOK: WHEN THE MOON SPLIT FINAL.
Compiled by Safiur Rahman Mubarakpuri
Edited and Translated by Tabassum Siraj – Michael Richardson Badr Azimabadi

 

 

اخلاق و عادات

 

کسی نے ام المومنین حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے پوچھا کے حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے اخلاق کیسے تھے اُنہونے کہا: کیا تم نے قرآن نہیں پڑھا ہے ؟
جو کچھ قرآن میں ہے وہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے اخلاق تھے غرض آپ کی ساری زندگی قرآن پاک کی عملی تفسیر تھی اور یہ بھی آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا ایک معجزہ ہے خود قرآن نے اسکی شہادت دی اور کہا:

 

(و انك لعلى خلق عظيم) القلم:۴

یعنی بیشک اے محمد صلی اللہ علیہ وسلم آپ حسن اخلاق کے بڑے رتبے پر ہیں

حضور صلی اللہ علیہ وسلم نہایت خاک سار ملنسار مہربان اور رحم دل تھے۔۔چھوٹے بڑے سب سے محبت کرتے تھے نہایت سخی فیاض اور داد و دہش والے تھے امکان بھر سب کی خواہش پوری کرتے تمام عمر کسی کے سوال پر نہیں نہیں کہا خود بھوکے رہتے پر دوسروں کو کھلا تے ایک مرتبہ ایک صحابی کی شادی ہوئی اُنکے پاس ولیمہ کا۔ کچھ سامان نہ تھا حضور صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے ان سے فرمایا کہ عائشہ رضی اللہ عنہا کے پاس جاؤ اور آٹے کی ٹوکری مانگ لاؤ حالانکہ آٹے کے سوا شام کے لیے گھر میں کچھ نہ تھا۔ فیاضی اور دنیا کے مال سے بے تعلقی کا یہ عالم تھا کہ گھر میں نقد کی قسم سے کوئی چیز بھی ہوتی تو جب تک وہ سب خیرات نہ کر دی جاتی آپ اکثر گھر میں آرام نہ فرماتے۔ ایک بار فدک کے رئیس نے چار اونٹوں پر غلہ بھیجا۔ اس کو بیچ کر قرض ادا کیا گیا۔ پھر بھی کچھ بچ رہا۔ آپ نے کہا کہ جب تک کچھ بھی باقی رہے گا میں گھر میں نہیں جا سکتا۔ رات مسجد میں بسر کی دوسرے دن جب معلوم ہوا کہ وہ غلہ تقسیم ہو چکا ہے، گھر تشریف لے گئے۔

حضور ﷺ بڑے مہمان نواز تھے۔ آپ کے یہاں مسلمان ،مشرک اور کافر سب ہی مہمان ہوتے ، آپ سب کی خاطر کرتے اور خود ہی سب کی خدمت کرتے ، کبھی ایسا ہوتا کہ مہمان آ جاتے اور گھر میں جو کچھ موجود ہوتا وہ ان کو کھلا پلا دیا جا تا اور پورا گھر فاقہ کرتا۔ ایک دفعہ آپ ﷺ کے یہاں ایک کافر مہمان ہوا۔ آپ نے ایک بکری کا دودھ اس کو پلایا، وہ سب دودھ پی گیا۔ آپ نے دوسری بکری منگوائی ، یہ اس کا بھی دودھ پی گیا، فرض سات بکریوں تک نوبت آئی۔ جب تک اس کا پیٹ نہ بھر گیا آپ دودھ پلاتے رہے ۔ راتوں کو اٹھ اٹھ کر مہمانوں کی دیکھ بھال فرماتے کہ ان کو کوئی تکلیف تو نہیں ہے۔ گھر میں رہتے تو گھر کے کام کاج اپنے ہاتھوں سے کرتے، اپنے پھٹے کپڑے آپ سی لیتے ، اپنے پھٹے جوتے کو خود کا گاٹھ لیتے ، بکریوں کا دودھ اپنے ہاتھوں سے دھوتے مجمع میں بیٹھتے تو سب کے برابر ہو کر بیٹھتے مسجد نبوی کے بنانے اور خندق کھودنے میں سب لوگوں کے ساتھ مل کر آپ نے بھی کام کیے۔

آپ ﷺ سے یتیموں سے محبت رکھتے اور ان کے ساتھ بھلائی کی تاکید کرتے ۔ فرمایا: مسلمانوں کا سب سے اچھا گھر وہ ہے جس میں کسی یتیم بچے کے ساتھ بھلائی کی جا رہی ہے اور سب سے خراب گھر وہ ہے جس میں کسی یتیم بچے کے ساتھ برائی کی جارہی ہے۔ آپ ﷺ کی چہیتی بیٹی حضرت فاطمہ (رضی اللہ عنہا) جن کی حالت یہ تھی کہ چکی پیستے پیستے ہتھیلیاں گھس گئی تھیں اور مشک میں پانی بھر بھر کر لانے سے سینے پر نیل کے داغ پڑ گئے تھے۔ انہوں نے ایک دن آپ سے ایک خادمہ کے لیے عرض کیا۔ آپ نے ﷺ نے جواب دیا :

سَبَقَكُنَّ يَتَامَي بَدْرٍ

” بدر کے یتیم تم سے پہلے درخواست کر چکے ہیں ۔”

ایک روایت میں ہے کہ اے فاطمہ (رضی اللہ عنہا) ! صفہ کے غریبوں کا اب تک کوئی انتظام نہیں ہوا ہے تو تمہاری درخواست کیسے قبول کروں؟

غریبوں کے ساتھ آپ ﷺ کا برتاؤ ایسا ہوتا تھا کہ ان کو اپنی غریبی محسوس نہ ہوتی ان کی مدد فرماتے اور ان کی دل جوئی کرتے، اکثر دعا مانگتے تھے کہ:

اللَّهمَّ أَحيِني مِسكينًا، وأَمِتْني مِسكينًا، واحشُرني في زُمرةِ المساكينِ
[الترمذي: 2352]

’’اللہ! مجھے مسکین زندہ رکھ ،مسکین اٹھا اور مسکینوں ہی کے ساتھ میرا حشر کر ۔‘‘

 

ایک بار ایک پورا قبیلہ آپ کی خدمت میں حاضر ہوا۔ یہ لوگ اتنے غریب تھے کہ ان میں سے کسی کے بدن پر کوئی ٹھیک کپڑا نہ تھا۔ ننگے بدن، ننگے پاؤں ۔ ان کو دیکھ کر آپ پر بہت اثر ہوا۔ پریشانی میں اندر گئے ، باہر تشریف لاۓ اس کے بعد سب مسلمانوں کو جمع کر کے ان لوگوں کی امداد کے لیے فرمایا۔

آپﷺ مظلوموں کی فریاد سنتے اور انصاف کے ساتھ ان کا حق دلاتے ، کمزوروں پر رحم کھاتے ، بیکسوں کا سہارا بنتے ، مقروضوں کا قرض ادا کرتے ۔ حکم تھا کہ جو مسلمان مر جاۓ اور اپنے ذمے قرض چھوڑ جاۓ تو مجھے اطلاع دو میں اس کو ادا کر دوں گا اور وہ جوترکہ چھوڑ جاۓ وہ وارثوں کا حق ہے مجھے اس سے کوئی مطلب نہیں ۔

آپ ﷺ بیماروں کو تسلی دیتے ، ان کو دیکھنے جاتے ، دوست ، دشمن اور مومن و کافر کی اس میں کوئی قید نہ تھی ، گناہگاروں کو معاف کر دیتے ، دشمنوں کے حق میں دعاۓ خیر فرماتے۔ جانی دشمنوں اور قاتلانہ حملہ کرنے والوں تک سے بدلہ نہیں لیا۔ ایک بار ایک شخص نے آپ کے قتل کا ارادہ کیا۔ صحابہ (رضی اللہ عنہ) اس کو گرفتار کر کے سامنے لائے ۔ وہ آپ کو دیکھ کر ڈر گیا۔ آپ سے ﷺ نے فرمایا: ڈرنہیں اگر تم مجھ کوقتل کر نا چا ہتے بھی تو نہیں کر سکتے تھے۔

ہبار بن الاسود جو ایک طرح سے حضور ﷺ کی صاحبزادی حضرت زینب (رضی اللہ عنہا) کا قاتل تھا، فتح مکہ کے موقع پر اس نے چاہا کہ ایران بھاگ جائے لیکن وہ سیدھا حضورﷺ کے پاس آیا اور کہا کہ یا رسول اللہﷺ ! میں بھاگ کر ایران جانا چاہتا تھا لیکن آپ کا رحم و کرم یاد آیا۔ اب میں حاضر ہوں اور میرے جن جرموں کی خبر آپ کو ملی ہے وہ درست ہیں ۔
حضور ﷺ نے اس کو معاف کر دیا۔

ہمسایوں کی خبر گیری فرماتے ، ان کے ہاں تحفے بھیجتے ، ان کا حق پورا کرنے کی تاکید فرماتے رہتے۔ ایک دن صحابہ رضہ اللہ عنہم کا مجمع تھا، آپ ﷺ نے فرمایا:

اللہ کی قسم! وہ مومن نہ ہو گا ، اللہ کی قسم وہ مؤمن نہ ہو گا ، صحابہ رضی اللہ عنہم نے پوچھا کون ، یا رسول اللہ ﷺ ! فرمایا:وہ جس کا پڑوسی اس کی شرارتوں سے بچا ہوا نہ ہو۔ 

آپ ﷺ اپنے پڑوسیوں کے گھر جا کر ان کے کام آتے ۔ پڑوسیوں کے سوا اور جو بھی آپ سے کسی کام کے لیے کہتا اس کو پورا فرماتے۔ مدینہ کی لونڈیاں آپ کی خدمت میں آتیں اور کہتیں یا رسول اللہ ﷺ ! میرا یہ کام ہے، آپ فوراً اٹھ کھڑے ہوتے اور ان کا کام کر دیتے۔ بیوہ ہو یا مسکین یا کوئی اور ضرورت مند سب ہی کی ضرورتوں کو آپ پورا فرماتے اور دوسروں کے کام کرنے میں عار محسوس نہ فرماتے۔ بچوں سے بڑی محبت فرماتے تھے، ان کو چومتے اور پیار کرتے تھے فصل کا نیا میوہ سب سے کم عمر بچہ جو اس وقت موجود ہوتا اس کو دیتے ، راستے میں بچے مل جاتے تو خود ان کو سلام فرماتے ، اسلام سے پہلے عورتیں ہمیشہ ذلیل رہی ہیں ، لیکن ہمارے حضور ﷺ نے ان پر بہت احسان فرمایا، ان کے حقوق مقرر فرماۓ ، اور اپنے برتاؤ سے ظاہر فرما دیا کہ یہ طبقہ حقیر نہیں ہے بلکہ عزت اور ہمدردی کے لائق ہے، آپ ﷺ کے پاس ہر وقت مردوں کا مجمع رہتا تھا، عورتوں کو آپ کی باتیں سننے کا موقع نہ ملتا تھا اس لیے خود عورتوں کی درخواست پر آپ نے ان کے لیے ایک خاص دن مقرر فرما دیا تھا، عورتیں دلیری اور بے تکلفی سے آپ سے مسائل پوچھتیں لیکن آپ برا نہ مانتے ، ان کی خاطر داری کا خیال رکھتے تھے۔

آپﷺ ساری دنیا کے لیے رحمت بن کر آئے تھے، اس لیے کسی کے ساتھ بھی زیادتی اور نا انصافی کو پسند نہ فرماتے تھے یہاں تک کہ جانوروں کے ساتھ لوگ جو بے پروائی برتتے تھے وہ بھی آپ کو گوارا نہ تھی اور ان بے زبانوں پر جو ظلم ہوتا آیا تھا اس کو روک دیا۔

ایک بار ایک صاحب نے ایک پرندے کا انڈا اٹھا لیا۔ چڑیا بے قرار ہو کر پر مار رہی تھی۔ آپ ﷺ نے پوچھا کہ کس نے اس کا انڈا لیا ہے اور اس کو دکھ پہنچایا ہے؟ ان صاحب نے کہا یا رسول اللہﷺ ! میں نے یہ کیا ہے ۔ آپﷺ نے فرمایا: وہیں رکھ دو۔

آپ ﷺ کی نظر میں امیر وغریب سب برابر تھے۔ قبیلہ مخزوم کی ایک عورت چوری کے جرم میں گرفتار ہوئی۔ لوگوں نے حضرت اسامہ رضی اللہ عنہ جن کو آپ بہت چاہتے تھے، ان سے سفارش کرائی ۔حضور ﷺ نے سب سے فرمایا کہ:

تم سے پہلے کی قومیں اس لیے برباد ہوگئیں کہ جب کوئی بڑا آدمی جرم کرتا تو اس کو چھوڑ دیتے اور معمولی آدی جرم کرتا تو وہ سزا پاتا ، اللہ کی قسم ! اگر محمد ﷺ کی بیٹی فاطمہ رضی اللہ عنھا بھی چوری کرتی تو اس کے ہاتھ بھی کاٹے جاتے۔

وہ نبیوں میں رحمت لقب پانے والا
مرادیں غریبوں کی بر لانے والا
مصیبت میں غیروں کے کام آنے والا
وہ اپنے پرائے کا غم کھانے والا
فقیروں کا ملجا، ضعیفوں کا ماویٰ
یتیموں کا والی، غلاموں کا مولٰی
خطا کار سے درگزر کرنے والا
بداندیش کے دل میں گھر کرنے والا
مفاسد •‹١› کا زیر و زبر کرنے والا
قبائل کا شیر و شکر کرنے والا
اتر کر حرا سے سوئے قوم آیا
اور اک نسخۂ کیمیا•‹٢› ساتھ لایا
میسِ خام کو جس نے کندن بنایا
کھرا اور کھوٹا الگ کر دکھایا
عرب جس پہ قرنوں•‹٣›سے تھا جہل چھایا
پلٹ دی بس اک آن میں اس کی کایا
___
|• ١برائیاں |• ٢قرآنِ پاک| •٣سالہا سال
رہا ڈر نہ بیڑے کو موجِ بلا کا
ادھر سے ادھر پھر گیا رخ ہوا کا

حضرت انس رضی اللہ عنہ بن کہتے ہیں کہ میں نے دس برس آپ ﷺ کی خدمت میں گزارے مگر آپﷺ نے کبھی نہ ڈانٹا، نہ مارا، نہ یہ پوچھا کہ تم نے یہ کام کیوں کیا اور یہ کیوں نہ کیا۔ آپ نے تمام عمر میں بھی کسی کو نہیں مارا اور یہ کیا عجیب بات ہے کہ ایک فوج کا جرنیل جس نے مسلسل نو برس لڑائیوں میں گزارے اور جس نے کبھی لڑائی کے میدان سے منہ نہیں موڑا، اس نے اپنے دشمن پر بھی تلوار نہیں اٹھائی اور نہ کبھی اپنے ہاتھ سے کسی پر وار کیا۔ احد کے میدان میں جب ہر طرف سے آپ پر پتھروں،تیروں اور تلواروں کی بارش ہو رہی تھی ، آپ اپنی جگہ پر کھڑے تھے اور جاں نثار دائیں بائیں کٹ کٹ کر گر رہے تھے۔

اسی طرح حنین کی لڑائی میں اکثر مسلمان غازیوں کے پاؤں اکھڑ چکے تھے، حضور ﷺ پہاڑ کی طرح اپنی جگہ پر کھڑے تھے۔ صحابہ رضی اللہ تعالٰی عنہم کہتے ہیں، لڑائی کے اکثر معرکوں میں آپ وہاں ہوتے تھے جہاں بڑے بڑے بہادر کھڑا ہونا اپنی شجاعت کا آخری کارنامہ سمجھتے تھے مگر ایسے خوفناک مقامات میں رہ کر بھی دشمن پر ہاتھ نہیں اٹھاتے تھے۔احد کے دن جب مشرکوں کے حملے میں سر مبارک زخمی اور دندان مبارک شہید ہوئے ،یہ فرماتے تھے:

اللَّهمَّ اغفِرْ لقومي فإنَّهم لا يعلَمونَ
[صحيح ابن حبان: 973]

“اللہ ! انہیں معاف کر کہ یہ نہیں جانتے۔”

سالہا سال کی ناکامی کی تکلیفوں کے بعد کبھی مایوسی نے آپ کے دل میں راہ نہ پائی اور آخر وہ دن آیا جب آپ اکیلئے سارے عرب پر چھا گئے ،مکہ کی تکلیفوں سے گھبرا کر ایک صحابی نے درخواست کی کہ یا رسول اللہﷺ ! آپ ہم لوگوں کے لیے کیوں دعا نہیں فرماتے؟ یہ سن کر آپ کا چہرہ سرخ ہو گیا اور فرمایا کہ:

 

“تم سے پہلے جو لوگ گزرے ان کو آروں سے چیرا گیا، ان کے بدن پر لوہے کی کنگھیاں چلائی گئیں۔ جس سے گوشت و پوست سب کٹ کٹ جاتا لیکن یہ تکلیفیں بھی ان کو حق سے پھیر نہ سکیں۔ اللہ کی قسم ! دین اسلام اپنے کمال کے مرتبہ پر پہنچ کر رہے گا یہاں تک کہ صنعاء ( یمن ) حضر موت تک ایک سوار اس طرح بے خطر چلا جاۓ گا کہ اس کو اللہ کے سوا کسی اور کا ڈر نہ ہوگا۔

آپﷺ کا وہ عزم اور استقلال یاد ہو گا جب آپ نے اپنے چچا کو یہ جواب دیا تھا کہ چچا جان! اگر قریش میرے داہنے ہاتھ میں سورج اور بائیں ہاتھ میں چاند رکھ دیں تب بھی حق کے اعلان سے باز نہ رہوں گا۔

ایک بار دوپہر کو ایک لڑائی میں آپ ﷺ ایک درخت کے نیچے اکیلے آرام فرما رہے تھے، ایک عربی آیا اور تلوار کھینچ کر بولا: ’’بتا اے محمد ﷺ! اب تجھ کو مجھ سے کون بچا سکتا ہے؟‘‘ اطمینان اور تسلی سے بھری ہوئی آواز میں جواب دیا: ”الـلّٰـه“ وہ یہ جواب سن کر کانپ گیا اور تلوار نیام میں کر لی ۔

لڑائیوں کے مال غنیمت اور خیبر وغیرہ کی زمینوں کی پیداورا کا حال سن کر کسی کو یہ شبہ نہ ہو کہ اب اسلام کی غربت کا زمانہ ختم ہو گیا اور پیغمبر اسلام ﷺ بڑے آرام اور تزک و احتشام سے زندگی بسر کرنے لگے۔ ازواج مطہرات رضی اللہ عنہن اور اہل بیت کرام رضی اللہ عنہم کے گھروں میں جو کچھ آتا وہ دوسرے ضرورت مندوں اور محتاجوں کی نذر ہو جاتا تھا اور خود آپ کے اہل بیت کی زندگیاں اسی تنگی اور غربت سے بسر ہوتی تھیں، خود فرمایا کرتے تھے کہ:

آدم علیہ السلام کے بیٹے کے لیے ستر چھپانے کو ایک کپڑا اور پیٹ بھرنے کو روکھی سوکھی روٹی اور پانی کافی ہے اور اسی پر آپ کا عمل تھا۔

حضرت عائشہ رضی اللہ عنھا کہتی ہیں کہ آپﷺ کا کپڑا کبھی تہہ کر کے رکھا نہیں جاتا یعنی ایک ہی جوڑا کپڑا ہوتا تھا دوسرا نہیں جو تہہ کر کے رکھا جاتا۔

حضرتﷺ کے گھروں میں اکثر فاقہ رہتا تھا اور کئی کئی دنوں تک رات کو کھانا نہیں ملتا تھا۔ دو دو مہینوں تک لگا تار گھروں میں چولہا جلنے کی نوبت نہیں آتی تھی، چند کھجوروں پر گزارا ہوتا تھا، کبھی کوئی پڑوسی بکری کا دودھ بھیج دیتا تو وہی پی لیتے ۔ حضرت عائشہ رضی اللہ عنھا فرماتی ہیں کہ آپ نے (مدینہ کے زمانہ قیام میں) کبھی دو وقت سیر ہو کر کھانا نہیں کھایا۔

ایک دفعہ کا ذکر ہے، ایک بھوکا آپ کی خدمت میں آیا۔ آپ نے ازواج مطہرات رضی اللہ عنھُنَّ میں سے کسی کے ہاں کہلا بھیجا۔ جواب آیا کہ گھروں میں پانی کے سوا کچھ نہیں۔آپ نے دوسرے گھر میں آدمی بھیجا۔ وہاں سے بھی یہی جواب آیا۔ غرض آٹھ نو گھروں میں سے پانی کے سوا کھانے کی کوئی چیز نہیں نکلی ۔

 

ایک دن آپ ﷺ بھوک میں ٹھیک دوپہر کو گھر سے نکلے، راستے میں حضرت ابوبکر اور حضرت عمر رضی اللہ عنھما ملے۔یہ دونوں بھی بھوکے تھے۔ آپﷺ ان کو لے کر حضرت ابوایوب انصاری رضی اللہ عنہ کے گھر آۓ ۔ ان کو خبر ہوئی تو دوڑے آۓ اور باغ سے جاکر کھجوروں کا ایک خوشہ توڑ لاۓ اور سامنے رکھ دیا۔ اس کے بعد ایک بکری ذبح کی اور کھانا تیار کیا اور سامنے لا کر رکھا۔ حضرت ﷺ نے ایک روٹی پر تھوڑا سا گوشت رکھ کر فرمایا کہ یہ فاطمہ رضی اللہ عنہا کے یہاں بجھواو اس کو کئی دن سے کھانا نصیب نہیں ہوا ہے۔
آنحضرت ﷺ نے جب وفات پائی تو حالت یہ تھی کہ آپ کی زِرہ تین سیر جو پر ایک یہودی کے پاس گروی تھی۔ جن کپڑوں میں وفات ہوئی ان میں اوپر تلے پیوند لگے ہوۓ تھے۔

حضرت فاطمہ زہرا رضی اللہ عنہا سے آپ ﷺ کو بڑی محبت تھی مگر یہ محبت سونے چاندی کے زیوروں اور اینٹ چونے کے مکانوں میں کبھی ظاہر نہیں ہوئی۔ بی بی فاطمہ رضی اللہ عنہا اپنے ہاتھوں سے کام کرتیں ، مشک بھر کر پانی لاتیں، آٹا گوندھتیں اور اگر کبھی باپ سے کسی غلام یا لونڈی کی فرمائش کرتیں تو فرماتے کہ بیٹی یہ:

تسبیح پڑھ لیا کرو۔ ایک دفعہ جب بہت سی لونڈیاں اور غلام آۓ تو آپ کی خدمت میں جاکر عرض کی۔ فرمایا:

جان پدر! بدر کے یتیم اور صفہ کے مسافر تم سے زیادہ مستحق ہیں۔

افلاس سے تھا سیدہ رضی اللہ عنہا پاک کا یہ حال
گھر میں کوئی کنیز نہ کوئی غلام تھا
گھس گھس گئیں تھیں ہاتھ کی دونوں ہتھیلیاں
چکی کے پیسنے کا جو دن رات کام تھا
سینے پہ مشک بھر کے جو لاتی تھیں بار بار
گو نور سے بھرا تھا مگر نیل فام تھا
اَٹ جاتا تھا لباسِ مبارک غبار سے
جھاڑو کا مشغلہ بھی جو ہر صبح و شام تھا
آخر گئیں جناب رسول اللہﷺ کے پاس
یہ بھی کچھ اتفاق کہ واں اذنِ عام تھا
محرم نہ تھے جو لوگ تو کچھ کر سکیں نہ عرض
واپس گئیں کہ پاس حیا کا مقام تھا
پھر جب گئیں دوبارہ تو پوچھا حضور ﷺ نے
کل کس لیے تم آئی تھیں کیا خاص کام تھا
غیرت یہ تھی کہ اب بھی نہ کچھ منہ سے کہہ سکیں حیدر رضی اللہ عنہ نے ان کے منہ سے کہا جو پیام تھا
ارشاد یہ ہوا کہ غریبانِ بے وطن جن
جن کا کہ صفۂ نبوی میں قیام تھا
میں ان کے بندوبست سے فارغ نہیں ہنوز
ہر چند اس میں خاص مجھے اہتمام تھا
جو جو مصیبتیں کہ ان پر اب گزرتی ہیں
میں ان کا ذمہ دار ہوں میرا یہ کام تھا
کچھ تم سے بھی زیادہ مقدم ہے ان کا حق
جن کو کہ بھوک پیاس سے سونا حرام تھا
خاموش ہو کے سیدہ پاک رضی اللہ عنہا رہ گئیں
جرأت نہ کر سکیں کہ ادب مقام تھا
یوں کی ہے اہل بیت مطہرہ رضی اللہ عنہم نے زندگی
یہ ماجراۓ دخترِ خیر الانام تھا

 

آپ ﷺ کبھی کسی کا احسان لینا گوارا نہ فرماتے ، حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ نے ہجرت کے وقت سواری کے لیے اونٹ پیش کیا تو آپ نے اس کی قیمت ادا فرما دی ، جن لوگوں سے تحفے قبول فرماتے تھے ، ان کو اس کا بدلہ ضرور دیتے تھے۔ ایک مرتبہ ایک شخص نے ہدیہ میں ایک اونٹنی پیش کی ۔ آپ نے اس کا بدلہ دیا تو اس کو برا معلوم ہوا۔ آپ نے منبر پر کھڑے ہو کر فرمایا کہ:

تم لوگ مجھے ہدیہ دیتے ہو اور میں امکان بھر اس کا بدلہ دیتا ہوں تو ناراض ہوتے ہو ۔ آپ لین دین کے معاملات میں بہت صاف تھے ۔ فرمایا کرتے کہ سب سے بہتر وہ لوگ ہیں جو قرض کو اچھی طرح ادا کرتے ہیں۔

ایک دفعہ کسی سے آپ ﷺ نے اونٹ قرض لیا۔ جب واپس کیا تو اس سے بہتر اونٹ واپس کیا۔ ایک بار کسی سے ایک پیالہ عاریتاً لیا، اتفاق سے وہ گم ہو گیا تو آپ نے اس کا تاوان ادا فرمایا۔

جو وعدہ فرماتے اس کو پورا کرتے ۔ کبھی بدعہدی نہیں فرمائی۔ صلح جیبیہ میں ایک شرط یہ بھی تھی کہ مکہ سے جو مسلمان ہو کر مدینہ جائے گا، وہ مکہ والوں کے مطالبے پر واپس کر دیا جاۓ گا چنانچہ ایک صاحب ابو جندل رضی اللہ عنہ مکہ سے بھاگ کر آۓ اور فریاد کی ۔ سب مسلمان یہ دیکھ کر تڑپ گئے لیکن آپ ﷺ نے صاف فرما دیا کہ اے ابوجندل! صبر کرو، میں بدعہدی نہیں کروں گا ، اللہ تمہارے لیے کوئی راستہ نکالے گا۔

سچائی آپ ﷺ کی ایک ایسی صفت تھی کہ دشمن بھی اس کو مانتے تھے ۔ ابوجہل کہا کرتا تھا کہ محمد! میں تم کو جھوٹا نہیں کہتا، البتہ تم جو کہتے ہو اس کو صحیح نہیں سمجھتا۔
آپ شرمیلے بہت تھے۔ کبھی کسی کے ساتھ بدزبانی نہیں کی، بازاروں میں جاتے تو چپ چاپ گزر جاتے ۔ بھری محفل میں کوئی بات ناگوار ہوتی تو لحاظ سے زبان سے کچھ نہ کہتے لیکن چہرہ مبارک سے معلوم ہو جاتا۔ آپ کی طبیعت میں بہت استقلال تھا۔ جس چیز کا پکا ارادہ ہو جاتا پھر اس کو پورا ہی فرماتے ، غزوۂ احد میں صحابہ رضی اللہ عنہم سے مشورہ کیا۔ سب نے حملے کی راۓ دی لیکن جب آپ زِرہ پہن کر تشریف لائے تو رک جانے کا مشورہ دیا گیا۔ آپ ﷺ نے فرمایا:” پیغمبر زرہ پہن کر اتارنہیں سکتا ۔”

آپﷺ کی بہادری بے مثال تھی۔ایک بار مدینہ میں شور ہوا کہ دشمن آ گئے ۔ لوگ مقابلہ کے لیے تیار ہوۓ لیکن سب سے پہلے حضورﷺ نکل پڑے اور گھوڑے پر زین کے بغیر گشت لگا آۓ اور واپس آ کر لوگوں کو تسکین دی کہ کوئی خطرے کی بات نہیں ہے۔

مزاج مبارک میں سادگی بہت تھی ۔ کھانے پینے، پہننے اوڑھنے،اٹھنے بیٹھنے، کسی چیز میں تکلف پسند نہ تھا، جو سامنے آ جاتا وہ کھا لیتے ، پہننے کے لیے موٹا جھوٹا جو مل جاتا اس کو پہن لیتے ، زمین پر ، چٹائی پر ، فرش پر جہاں جگہ ملتی بیٹھ جاتے۔اللہ کی نعمتوں سے جائز طور پر فائدہ اٹھانے کی اجازت آپ نے ضرور دی لیکن تن پروری اور عیش نہ اپنے لیے پسند فرمایا نہ عام مسلمانوں کے لیے۔ ایک بار حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا کے پاس تشریف لے گئے ، دیکھا کہ گھر میں چھت گیر لگی ہوئی ہے، اسی وقت پھاڑ ڈالی اور فرمایا کہ خدا نے ہم کو دولت اس لیے نہیں دی ہے کہ اینٹ پتھر کو کپڑے پہناۓ جائیں ۔

ایک بار حضرت فاطمہ رضی اللہ عنہا کے گلے میں سونے کا ہار دیکھا تو فرمایا کہ تم کو برا نہ معلوم ہو گا جب لوگ کہیں گے پیغمبر کی لڑکی کے گلے آگ کا ہار ہے؟

دنیا سے بے رغبتی کے باوجود آپ ک کو خشک مزاجی اور روکھا پن پسند نہ تھا۔ کبھی کبھی دلچسپی کی باتیں فرماتے ۔ ایک بار ایک بڑھیا آپ کے پاس آئی ، اور جنت کے لیے دعا کی خواہش کی۔ آپ نے فرمایا کہ بوڑھیاں جنت میں نہ جائیں گی ، اس کو بہت رنج ہوا ، روتی ہوئی واپس چلی ۔ آپ نے لوگوں سے کہا کہ اس سے کہہ دو کہ بوڑھیاں جنت میں نہ جائیں گی مگر جوان ہو کر جائیں گی ۔

بعض لوگ رات دن نماز روزے میں مشغول رہنا چاہتے تھے اس کی وجہ سے بیوی ,بچوں اپنے جسم کے حق کو پورا نہ ہونے کا اندیشہ تھا اس لیے حضورﷺ اس کو روکتے ۔ حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہ کے متعلق خبر ہوئی کہ انہوں نے ہمیشہ دن میں روزہ رکھنے اور رات بھر عبادت کرنے کا عہد کیا ہے۔ آپ کو بلا بھیجا اور پوچھا کہ:

کیا یہ خبر صحیح ہے؟ انہوں نے کہا ہاں ۔ فرمایا کہ تم پر تمہارے جسم کا حق ہے، آنکھ کا حق ہے، بیوی کا حق ہے۔

آپ ﷺ کے احتیاط کا یہ عالم تھا کہ کسی کے گھر جاتے تو دروازے کے دائیں یا بائیں کھڑے ہوتے اور اس سے اجازت مانگتے ۔ سامنے اس لیے نہ کھڑے ہوتے کہ نظر گھر کے اندر نہ پڑے۔

صفائی کا خاص خیال رہتا۔ ایک شخص کو میلے کپڑے پہنے دیکھا تو فرمایا کہ اس سے اتنا نہیں ہوتا کہ کپڑے دھولیا کرے۔ گفتگو ٹھہر ٹھہر کر فرماتے تھے۔ ایک ایک فقرہ الگ ہوتا کسی کی بات کاٹ کر گفتگو نہ فرماتے۔ جو بات نا پسندیدہ ہوتی اس کو ٹال دیتے۔ زیادہ تر چپ رہتے، بے ضرورت گفتگو نہ فرماتے ، ہنسی آتی تو مسکرا دیتے۔

آپ ﷺ ہر لحظہ اور ہر لمحہ اللہ کی یاد میں لگے رہتے۔اٹھتے بیٹھتے، چلتے پھرتے غرض ہر وقت اسی کی خوشی کی تلاش رہتی اور ہر حالت میں دل اور زبان سے اللہ کی یاد جاری رہتی۔صحابہ رضی اللہ عنہم کی محفلوں میں یا بیویوں کے حجروں میں ہوتے اور یکا یک اذان کی آواز آتی ، آپ اٹھ کھڑے ہوتے ۔ رات کا بڑا حصہ اللہ کی یاد میں بسر ہوتا کبھی پوری پوری رات نماز میں کھڑے رہتے اور بڑی بڑی سورتیں پڑھتے ، آپ اللہ تعالی کے بڑے پیارے پیغمبر تھے۔ پھر بھی فرمایا کرتے کہ مجھ کو کچھ نہیں معلوم کہ میرے اوپر کیا گزرے گی؟ ایک مرتبہ بڑے پراثر الفاظ میں فرمایا :

“اے قریشیوں! آپ اپنی خبر لو! میں تم کو اللہ سے نہیں بچا سکتا، اے عبد مناف! میں تم کو اللہ سے نہیں بچا سکتا، اے عباس بن عبدالمطلب! میں تم کو بھی اللہ سے نہیں بچا سکتا، اے صفیہ! رسول اللہ کی پھوپھی! میں تم کو بھی اللہ سے نہیں بچا سکتا،اے محمد ﷺ کی بیٹی فاطمہ! میں تم کو بھی اللہ سے نہیں بچا سکتا۔”

ایک صحابی کا بیان ہے کہ میں ایک بار حضور ﷺﷺ کی خدمت میں حاضر ہوا، دیکھا تو آپ صلی اللہ علیہ والہ وسلم نماز پڑھ رہے ہیں ، آنکھوں سے آنسو جاری ہیں، روتے روتے اس قدر ہچکیاں بندھ گئیں تھیں کہ معلوم ہو رہا تھا کہ چکی چل رہی ہے یا ہانڈی ابل رہی ہے۔ ایک بار آپ صلی اللہ علیہ والہ وسلم ایک جنازے میں شریک تھے، قبر کھودی جا رہی تھی ، آپ ﷺ قبر کے کنارے بیٹھ گئے اور یہ منظر دیکھ کر رونے لگے یہاں تک کہ زمین تر ہوگئی ۔ پھر فرمایا:

“بھائیو! اس دن کے لیے سامان کر رکھو۔“

اوپر کے صفحات میں حضور ﷺ کے مبارک حالات اور آپ کے اچھے اخلاق اور عادات کو پڑھ چکے، اب اس کی کوشش ہونی چاہیے کہ حضور ﷺ کی زندگی کی ہم پیروی اور آپ ﷺ کی بتائی ہوئی باتوں پر عمل کر یں کہ اللہ کی خوشی حاصل کرنے کا یہی ذریعہ ہے اور دین و دنیا کی بادشاہت کی صرف یہی ایک کنجی ہے۔

 

حواله:
كتاب: “رحمتِ عَالم”
تاليف: “علاّ مه سيد سليمان ندوى”

 

 

Table of Contents