Sections
< All Topics
Print

07. Umm-ul-Momineen Hazrat Zainab Bint-e-Jahash (رضی اللہ عنہا)

Umm-ul-Momineen Hazrat Zainab Bint-e-Jahash (رضی اللہ عنہا)

Rasool-e-Aqdas صلی اللہ علیہ وسلم  ne aik roz Azwaaj-e-Mutahharrat ko yeh baat batai keh “Tum mein sab se pahle mujhe akhirat mein woh milegi jiske hath lambe hain.

(Farman-e-Rasool صلی اللہ علیہ وسلم)

 

  • Azwaaj-e-Mutahharat mein Hazrat Zainab sab se pehle faut huin aur Khuld-e-Bareen Jannat-ul-Firdous ki mehman bani.
  • Hazrat Zainab Sakhawat-o-Fayyazi mein Yad-e-Toola rakhti thin.
  • Sakhawat ko lambe hathon se tabeer kiya gaya.

Khandani wajahat, Sharafat aur najabat se aarasta Umaimah Bint-e-Abd ul Muttalib Bin Hisham ki beti, Garneral sahabi Abdullah Bin Jahash Shair-e-Islam Abu Ahmad Bin Jahash aur Azeem-ul-Martabat sahabiya Hamna Bint-e-Jahash (رضی اللہ عنہا) ki behan, Sayyid-ul-Shuhada Hazrat Hamzah Bin Abd ul Muttalib ki bhanjhi, Dariya dili, fayyaazi, Sakhawat aur Ghuraba-o-Masakeen ke sath hamdardi mein Yadd-e-Toola rakhne wali naik khu, Ibadat guzar, Shab zindadaar, Muttaqqi, Parhezgaar, Allah ki raza-joi mein hardam sargaram, Jiska pehla nikah Hazrat Zaid Bin Haris(رضي الله عنه) ke sath hua to muashirey mein Ghulam-o-Azaad ke imtiyazaat mit gaye, Talaq ke baad dusra nikah Sayyid-ul-Mursaleen (صلی اللہ علیہ وسلم) se wahi ilaahi ki buniyad par hua, Jis se le-palak ko haqiqi bete ka darja dene ki qadeem rasam toot gayi, Jis ki Dawat-e-Walima ke dauran parde ka hukm nazil hua, Jis ke baare mein Umm-ul-Mumineen Hazrat Umm-e-Salimah (رضی اللہ عنہا) ne farmaya: کانت زینب صالحۃ صوامۃ قوامۃ Zainab naik khaslat, Kasrat se roze rakhne wali aur kasrat se namaz padhne wali thi.  Jis ne wirsey mein aik makaan chhoda jise Waleed Bin Abdul Malik ne apne Daur-e-Hukumat mein 50 hazar dirham ka khareed kar Masjid-e-Nabwi mein shamil kar diya, Jis ke baare mein Rasoolullah ne Hazrat Umar Bin Khattab se kaha: Zainab Khauf-e-Khuda ki khoogar, tab`an Tawaze-o-Inkasaari aur aajizi ki paikar hai, Jis ki wafaat par madine ke masakeen, Ghurba aur fuqra dhadein maar kar rone lage kyunkeh unki sakhawat se woh sab faizyaab hua karte the, Is liye apni hamdard, Gham gusaar muhsina ka duniya se rukhsat ho jaana unhe bahut mehsoos hua, Jise tareaikh mein Zainab Bint-e-Jahash ke naam se yaad kiya jaata hai. Jise Umm-ul-Mumineen hone ka aizaaz hasil hua, Jise Lisaan-e-Risaalat se duniya mein Jannat ki basharat mili. Aaiyye! Khatoon-e-Jannat ke Halat-e-Zindagi se Noor-e-Imaan hasil karte huye apni akhirat sawarne ka samaan muhayya karein.


Umm-ul-Momineen Zainab Bint-e-Jahash (رضی اللہ عنہا) Waqia-e-Hijrat se taqreeban 30 saal pehle Makkah Muazzamah mein paida huye, Unki walida ka naam Umaimah Bint-e-Abd ul Muttalib tha. Hazrat Zainab apne bhai Abdullah Bin Jahash ki Dawat-o-Tableegh se mutassir ho kar musharraf ba-Islam huyeen. Husn-o-Jamaal, Aqal-o-Danish aur Fahem-o-Farasat ke aitibaar se quraishi khwateen mein Qaabil-e-Rashk maqam par faiz thin.

Jab Makkah Muazzamah mein Islam ki dawat ke asraat phailne lage to Sardaran-e-Quraish Gaiz-o-Gazab se aag babula ho gaye.  Nau-amuzaan-e-Islam ko tarah tarah ki aziyaton se do chaar karne lage kisi ko aag ke dehaikte huye angaron par litaya gaya, Kisi ke jism ko uonton se baandh kar unhe mukhalif simat dauda kar do tukron mein cheer phaad diya gaya. Garz yeh keh koi aisi aziyat naak tadbeer na thi, Jo Daira-e-Islam mein dakhil hone wale ko tadpaane ke liye aur Islam se bargazishta karne ke liye ikhtiyar na ki gayi ho. Islam se munharif karne ke liye nit-naye taraiqe azmaaye gaye. Musalmanon  ka Makkah Muazzamah mein Arsa-e-Hayat tang kar diya gaya, Is andohnaak Surat-e-Haal ko daikhte huye Rasoolullah ne Daira-e-Islam mein dakhil hone wale ja nisaron ko Sabar-o-tTahammul ki talqeen karte huye pehle Habsha aur phir Madina Munawwarah ki janib hijrat karne ka hukm diya.

Sayyid-ul-Mursaleen ke hukm ki ta‘meel karte huye Abdullah Bin Jahash ki qiyadat mein Banu Jahash ke khandan ka qafila hijrat ki garaz se Madina Munawwarah ki jaanib rawana hua jis mein Abu Ahmad Bin Jahash رضي الله عنه jo beenai se mahroom they laikin Qadir-ul-Kalam shair thay, Zainab Bint-e-Jahash, Mubalig-e-Islam Hazrat Musab Bin Umair ki biwi Hamna Bint-e-Jahash aur Hazrat Abd ul Rahman Bin Aauf ki biwi Umm-e-Habeeb Bint-e-Jahash shamil thin. Kuch arse baad Sayyid-ul-Mursaleen (صلی اللہ علیہ وسلم) Makkah chod kar Madina Munawwarah tashreef laye. Chunke Jahash ka pura kunba bayak waqt Safar-e-Hijrat par rawana hua is liye unka alishaan ghar khaali ho gaya, Jis par qurasih ke sardar Abu Sufyan ne qabza kar liya, Jab pata chala keh jis ghar mein Allah Ta’ala  ki ibadat hua karti thi Qur`an-e-Hakeem ki tilawat hua karti thi woh aaj Abu Sufyan ke Zair-e-istimal hai to Hazrat Abdullah Bin Jahash (رضي الله عنه) ranjeeda khatir huye. Rasoolullah ki khidmat mein hazir hokar araz ki ya Rasoolullah mere ghar par Abu Sufyan qabiz ho gaya hai, Aapne apne jaan-nisaar ko pareshani mein mubtala daikh kar irshad farmaya:

 

لا ترضی یا عبداللہ ان یعطیک اللہ  بھا دارا فی الجنۃ خیرا منھا

 

“Aye Abdullah kya tujhe ye pasand nahi keh Allah Ta’ala  tujhe Jannat mein is se behtar ghar aata kar de.”

Hazrat Abdullah (رضي الله عنه) ne kaha ya Rasoolullah  (صلی اللہ علیہ وسلم) mujhe ba-khushi manzur hai.  Farmaya: Yaqeen rakho Jannat mein tujhe is se behtar ghar milega. Hijrat ke mauqa par shair-e-Islam Abu Ahmad Bin Jahash (رضي الله عنه) ne aik qaseeda kaha jis mein hijrat ke asbaab, Quraish ke Zulam-o-Sitam aur Farzandan-e-Islam ki imaan afroz dastaan tafseel se bayan ki jise Arabi adab ka shahkar tasawwur kiya gaya.


Khandan-e-Banu Jahash Madina Munawwarah mein abaad ho gaya, Shab-o-Roz tezi se guzarne lage.  Ansaar-o-Muhajireen mein Qabil-e-Rashk bahami ukhwwaat ki fiza qayam hui. Shah-e-Umam, Sultan-e-Madina (صلی اللہ علیہ وسلم) ne Islami musawaat ki buniyad par muasharati nizam qayam kar diya, Ghulam-o-Azaad ke tabqati imtiyazaat ko khatam karte huye taqwa ko Wajah-e-Imtiyaaz kar diya gaya.  

Yeh taqreeban 5 Hijri ka waqia hai keh aik roz Rasool-e-Aqdas (صلی اللہ علیہ وسلم) ne apni qareebi rishtidar Zainab se kaha keh main ney Zaid Bin Haris ke sath teri nisbat tay kar di hai. Is waqt unki Umar 35 baras thi, Achanak yeh baat sun kar Hazrat Zainab (رضی اللہ عنہا) sakte mein aa gayen, Pareshani aur Gham-o-Andoh ki halat mein Arz ki ya Rasoolullah  (صلی اللہ علیہ وسلم) main  Khandan-e-Quraish ki Chashm-o-Chiraagh hun aur Zaid aik azad kardah ghulam hai. Mery dil mein to is rishte ki koi chahat nahi, Mujhe to pasand nahi, Nibaah kaise hoga? Zindagi khush gawar kaise guzregi? Aapne yeh baat sun kar irshaad farmaya: Main ney tere liye Zaid (رضي الله عنه) ko pasand kiya use qubool kar lo. Is se pahle ki Hazrat Zainab (رضی اللہ عنہا) koi dusri baat kartin Allah Subhan-o-Ta’ala  ne yeh aayat nazil kar di:

وَمَا كَانَ لِمُؤْمِنٍ وَّلَا مُؤْمِنَةٍ اِذَا قَضَى اللّٰهُ وَرَسُوْلُهٗٓ اَمْرًا اَنْ يَّكُوْنَ لَهُمُ الْخِـيَرَةُ مِنْ اَمْرِهِمْ ۭ وَمَنْ يَّعْصِ اللّٰهَ وَرَسُوْلَهٗ فَقَدْ ضَلَّ ضَلٰلًا مُّبِيْنًا

 

“Kisi momin mard aur kisi momin aurat ko yeh haq nahi hai keh jab Allah aur uska Rasool (صلی اللہ علیہ وسلم) kisi mamle mein faisla kar de to phir use apne mamle mein khud faisla karne ka ikhtiyaar hasil rahe aur jo koi Allah aur uske Rasool ki na farmani kare to woh sareeh gumraahi mein pad gaya.” (Al Ahzab: 36)

Allah Ta’ala  ka yeh hukm sun kar Hazrat Zainab (رضی اللہ عنہا) ne Sar-e-Tasleem kham kar liya.  Zainab Bint-e-Jahash aur Zaid Bin Haris Rishta-e-Azwaj mein munsalik ho gaye, Laikin azdawaji zindagi pur sukoon guzarne ke bajaye din ba din talkh dar talkh hoti chali gayi.  


Rasoolullah  (صلی اللہ علیہ وسلم) ne Hazrat Zaid ko apna beta bana rakha tha, Aur yeh Zaid Bin Muhammad ke naam se pukare jaate the. Zahiri Shakl-o-Surat ke aitibaar se koi zyada jazib nazar na the, Rang bhi sanwla tha. Hazrat Zainab ke dil mein aik girah pad chuki thi.  Jis ki wajah se gharelu mahaul mein talkhi din ba din badhti chali ja rhi thi. Jo izzat, Waqaar, Ahmiyat, Aur pazeerayi har khawand apni Rafeeqa-e-Hayat se chahta hai, Woh Zaid Bin Haris ko ghar mein muyassar na thi.  Is Surat-e-Haal se dil bardashta ho kar aik roz unho ne Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) ki khidmat mein Arz kiya Ya Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) main gharelu halaat se pareshan hun hamara nibaah mushkil nazar aata hai, Mera dil chahta hain keh Zainab ko talaq de dun, Aapne Zaid ko jo mashwara diya Allah Ta’ala  ne use Qur’an mein shaamil kar diya. Aapne farmaya:

 

اَمْسِكْ عَلَيْكَ زَوْجَكَ وَاتَّقِ اللّٰهَ          

“Apni biwi ko apne paas rakho aur Allah se daro.”  (Al-Ahzab :37)

 

Laikin yeh silsila zyada der tak na chal saka, Akhir kaar gharelu halaat ko Pesh-e-Nazar rakhte huye apni biwi Zainab Bint-e-Jahash ko talaq de di.


Arab qabail mein yeh rawaj tha keh le-palak betay ki bewa ya mutalliqah ke sath munh bole baap ka nikah mayooub samjha jaata tha laikin Allah Subaha-o-Ta’ala ko Daur-e-Jahiliyat ki is rasam ko mitana maqsud tha. Aik roz Hazrat Jibreel (علیہ السلام) ne Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) ko raaz darana andaaz mein paigham diya keh Zainab aapki biwi banegi. Aapne is khabar ko shiddat se mehsus kiya keh log kya kahenge keh le-palak ki mutallaqah se nikah kar liya hai, Aap apne dil mein bahut zayada sharm mehsus kar rahe the.  Chunke asmanon par yeh faisla ho chuka tha lihaza thode hi arse baad Allah Ta’ala  ne ye wahi nazil kar di:

 

وَاِذْ تَقُوْلُ لِلَّذِيْٓ اَنْعَمَ اللّٰهُ عَلَيْهِ وَاَنْعَمْتَ عَلَيْهِ اَمْسِكْ عَلَيْكَ زَوْجَكَ وَاتَّقِ اللّٰهَ وَتُخْــفِيْ فِيْ نَفْسِكَ مَا اللّٰهُ مُبْدِيْهِ وَتَخْشَى النَّاسَ ۚ وَاللّٰهُ اَحَقُّ اَنْ تَخْشٰـىهُ ۭ فَلَمَّا قَضٰى زَيْدٌ مِّنْهَا وَطَرًا زَوَّجْنٰكَهَا لِكَيْ لَا يَكُوْنَ عَلَي الْمُؤْمِنِيْنَ حَرَجٌ فِيْٓ اَزْوَاجِ اَدْعِيَاۗىِٕهِمْ اِذَا قَضَوْا مِنْهُنَّ وَطَرًا ۭ وَكَانَ اَمْرُ اللّٰهِ مَفْعُوْلًا

“Aye Nabi yaad karo woh mauqa jab tum us shakhs se kah rahe the jis par Allah ne aur tumne ahsaan kiya tha keh “Apni biwi ko apne paas rakh aur Allah se dar”, Us waqt tum apne dil mein yeh baat chupaye huye the jise Allah kholna chahta tha. Tum logon se dar rahe the, Halaanke Allah uska zayada haq daar hai keh tum us se daro, Phir jab Zaid us se apni hajat puri kar chuka to ham ne us mutallaqah khatoon ka nikah tum se kar diya taake mominon par apne munh bole betay ki biwiyon ke muamle mein koi tangi na rahe jabke woh unse apni hajat puri kar chuke hon, Aur Allah ka hukm to amal mein aana hi chahiye tha.”

Sahih Muslim aur Musnad Ahmad mein Hazrat Anas Bin Malik (رضي الله عنه) se marwi hai keh jab Hazrat Zainab ki talaq ke baad iddat puri ho gayi to Nabi Akram (صلی اللہ علیہ وسلم) ne Zaid Bin Haris ke zariye apne nikah ka paigham  bheja, Woh Tameel-e-Hukm ke liye Hazrat Zainab ke ghar tashreef le gaye, Farmate hain keh jab main wahan pahuncha to daikha keh Zainab aanta goondh rahi hain, Main ney sharmate huye apna rukh dusri taraf karte huye kaha Zainab main tumhare liye aik khushkhabari le kar aaya hun.  Rasoolullah  (صلی اللہ علیہ وسلم) ne mujhe yeh paigham de kar bheja hai keh tumhe apne Hibal-e-Aqad mein le kar Azwaaj-e-Mutaharrat ki fahrist mein shamil kar liya jaaye, Tumhari kya raaye hai? Hazrat Zainab ne baghair nazar uthaye aata ghundte huye irshaad farmaya: Main apne Allah se mashwara karne ke baad hi is mamle mein kuch kah sakti hun, Iske baad woh istaikhara karne ke liye musalle par khadi ho gayi, Woh abhi Halat-e-Namaz mein hi thin keh Allah Ta’ala  ne wahi nazil kar di aur Rasoolullah  (صلی اللہ علیہ وسلم) ko paigham  de diya ki hamne tumhari shaadi Zainab ke sath asmaano mein kar di hai. Yeh asmaani hukm nazil hone ke baad Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) baghair ijaazat talab kiye aur peshgi ittila diye Hazrat Zainab ke ghar tashreef le gaye.

 

  • Is shadi mein wali aur gawahon ki bajaye Qur`ani hukm ko buniyaad banaya gaya.
  • Is shadi se jahiliyat ki us Qadeem rasam ko tod diya gaya keh le-palak ki mutallaqah biwi se munh bole baap ka shaadi karna mayub tasawwur kiya jaata tha.
  • Is shaadi ka tazkirah Hazrat Zainab Azwaaj-e-Mutaharrat ke samne bade fakhr se karte huye kaha karti thin tumhari shaadi tumhare ghar walon ne ki aur meri shadi Allah Subhan-o-Ta’ala ne saat asmaanon par apne mahbub paighambar Muhammad (صلی اللہ علیہ وسلم) se ki, Main apni is khush naseebi par Shadan-o-Farha hun.
  • Is shaadi ke baad munafiqeen ne hairat ka andaaz apnaate huye jagah jagah yeh hawaiyya udani shuru kar di keh daikho gazab khuda ka hamein to mana kiya jaata hai keh apne beton ki talaq yaafta biwiyon se nikah na karna aur khud apne bete Zaid ki mutallaqah biwi se nikah kar liya. Iske jawab mein Allah Ta’ala ne yeh Ayat nazil ki:

 

مَا كَانَ عَلَي النَّبِيِّ مِنْ حَرَجٍ فِيْمَا فَرَضَ اللّٰهُ لَهٗ ۭ سُـنَّةَ اللّٰهِ فِي الَّذِيْنَ خَلَوْا مِنْ قَبْلُ ۭ وَكَانَ اَمْرُ اللّٰهِ قَدَرًا مَّقْدُوْرَۨاالَّذِيْنَ يُبَلِّغُوْنَ رِسٰلٰتِ اللّٰهِ وَيَخْشَوْنَهٗ وَلَا يَخْشَوْنَ اَحَدًا اِلَّا اللّٰهَ ۭوَكَفٰى بِاللّٰهِ حَسِيْبًا

 

“Nabi ke liye kisi aise kaam mein koi rukawat nahi hai jo Allah ne uske liye muqarrar kar diya ho.  Yahi Allah ki sunnat aur sab anbiya ke maamle mein rahi jo pahle guzar chuke hain aur Allah ka hukm aik qa‘atai tay-shuda faisla hota hai. (Yeh Allah ki sunnat hai un logon ke liye) Jo Allah ke paighamaat pahuchate hain aur us se darte hain aur Allah ke siwa kisi se nahi darte aur muhasibe ke liye sirf Allah kaafi hai.”

(Al-Ahzab :38-39)

 

Phir masle ko mazeed nikharne ke liye Allah Ta’ala  ne irshaad farmaya:

 

مَا كَانَ مُحَـمَّـدٌ اَبَآ اَحَدٍ مِّنْ رِّجَالِكُمْ وَلٰكِنْ رَّسُوْلَ اللّٰهِ وَخَاتَمَ النَّـبِيّٖنَ ۭ وَكَانَ اللّٰهُ بِكُلِّ شَيْءٍ عَلِــيْمًا

 

“Logon! Muhammad (صلی اللہ علیہ وسلم)  tumhare mardon mein se kisi ke baap nahi hain. Magar woh Allah ke Rasool Aur khatam-ul-Nabiyyin hain, Aur Allah har cheez ka ilm rakhne wala hai. “

 

Allah Ta’ala  ne le-palak beton ke baare mein wazahati hukm bhi isi shaadi ke mauqa par nazil farmaya, Irshaad-e-Baari Ta’ala  hai:

 

وَمَا جَعَلَ اَدْعِيَاۗءَكُمْ اَبْنَاۗءَكُمْ ۭذٰلِكُمْ قَوْلُكُمْ بِاَفْوَاهِكُمْ ۭ وَاللّٰهُ يَـقُوْلُ الْحَـقَّ وَهُوَ يَهْدِي السَّبِيْلَاُدْعُوْهُمْ لِاٰبَاۗىِٕهِمْ هُوَ اَقْسَطُ عِنْدَ اللّٰهِ

 

“Aur na usne tumhare munh bole beton ko tumhara haqiqi beta banaya hai. Yeh to woh baatein hain jo tum apne munh se nikal dete ho. Aur Allah haq baat kehta hai, Aur wahi sahi raaste ki taraf rahnumai karta hai. Munh bole beton ko unke baapon ki nisbat se pukaro, Yeh Allah ke nazdeaik zayada munsifana baat hai. “

(Al-ahzab 4-5)

Is shaadi ke mauqa par Allah Ta’ala ne auraton ke liye parde ka hukm nazil kiya, Aur Ummat-e-Muslimah ke liye yeh wazahat bhi nazil kar di keh Azwaaj-e-Mutaharrat mein kisi ke sath koi ummati qata‘yi taur par shadi nahi kar sakta, Yeh dono hukm darja zail Ayat mein nazil kiye gaye:

 

يٰٓاَيُّهَا الَّذِيْنَ اٰمَنُوْا لَا تَدْخُلُوْا بُيُوْتَ النَّبِيِّ اِلَّآ اَنْ يُّؤْذَنَ لَكُمْ اِلٰى طَعَامٍ غَيْرَ نٰظِرِيْنَ اِنٰىهُ ۙ وَلٰكِنْ اِذَا دُعِيْتُمْ فَادْخُلُوْا فَاِذَا طَعِمْتُمْ فَانْتَشِرُوْا وَلَا مُسْـتَاْنِسِيْنَ لِحَدِيْثٍ ۭ اِنَّ ذٰلِكُمْ كَانَ يُؤْذِي النَّبِيَّ فَيَسْتَحْيٖ مِنْكُمْ ۡ وَاللّٰهُ لَا يَسْتَحْيٖ مِنَ الْحَقِّ ۭ وَاِذَا سَاَلْتُمُوْهُنَّ مَتَاعًا فَسْـَٔــلُوْهُنَّ مِنْ وَّرَاۗءِ حِجَابٍ ۭ ذٰلِكُمْ اَطْهَرُ لِقُلُوْبِكُمْ وَقُلُوْبِهِنَّ ۭ وَمَا كَانَ لَكُمْ اَنْ تُــؤْذُوْا رَسُوْلَ اللّٰهِ وَلَآ اَنْ تَنْكِحُوْٓا اَزْوَاجَهٗ مِنْۢ بَعْدِهٖٓ اَبَدًا ۭ اِنَّ ذٰلِكُمْ كَانَ عِنْدَ اللّٰهِ عَظِيْمًا

 

“Aye logon jo imaan laye ho mat jaya  karo nabi (صلی اللہ علیہ وسلم) ke gharon mein illa yeh keh bulaya jaye tumhe khaane par, Na daikhne wale uske bartan, Haan jab bulaya jaye tumhen to zarur jao phir jab khana kha chuko to muntashir ho jao aur na baithe raha karo baatein karne ke liye yaqeenan tumhari yeh harkatein takleef deti hain nabi ko magar woh lihaaz karte hain  tumhara (aur kuch nahi kahte). Laikin Allah nahi sharmata haq baat kehne se aur agar mangna ho nabi ki biwiyon se kuch saman to maango un se parde ke peeche se, Yeh tareeqa tumhare aur unke dilon ki pakizgi ke liye zayada munasib hai aur nahi jaiz tumhare liye keh takleef do Allah ke Rasool ko aur na yeh keh nikah karo uski biwiyon se uske baad kabhi, Beshak aisa karna Allah ke nazdeaik bahut bada gunaah hai.“


Hazrat Ayesha (رضی اللہ عنہا) farmati hain keh Qadar-o-Manzilat ke aitibar se Zainab mere sath muqabla kiya karti thi, Main ney apni zindagi mein us se badh kar koi dusri sadqa karne waali, Silah rahmi se pesh aane wali  aur Allah ka taqarrub hasil karne wali nahi daikhi.  Farmati hain keh jis din mujh par jhuta ilzaam ayid kiya gaya tha, Mere khilaf Madina mein Tufaan-e-Badtamizi barpa kiya gaya, Munafiqeen ki resha dawaniyon se fiza mukddar ho chuki thi, Jis se Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) bhi pareshan ho gaye aur Shakuk-o-Shobhaat mein mubtala ho gaye. Aik roz Zainab se mere bare mein pucha keh Ayesha teri nazron mein kaisi hai? To usne barjista yeh kaha ya Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) main is Buhtan-e-Azeem se apne kaanon, Ankhon aur zaban ko mahfuz rakhna chahti hun. Ba-khuda main Ayesha ko aik azeem aur baland kirdaar khatoon daikhti hun.  Wallah Khair-o-Bhalayi, Sadaqat-o-Amanat aur Taqwa-o-Taharat se muttasif hai. Farmaya: ما علمت فیھا الا خیرا khubi ke siwa aur kuch main ney us mein nahi jaana. Agar woh chahtin to is mauqa se faida uthate huye Darbar-e-Risalat mein apni hareef ko pachaad sakti thin laikin Sohbat-e-Rasool ne un kamzorion se unko baala bana diya tha. Hazrat Ayesha ne unke is ahsaan ko zindagi bhar yaad rakha.

Aik dafa Hazrat Zainab (رضی اللہ عنہا) ne Hazrat Safiyyah (رضی اللہ عنہا) ko yahudiya keh diya, Is baat ka ilm jab Sayyid-ul-Mursaleen (صلی اللہ علیہ وسلم) ko hua to aap bahut ranjeeda khatir huye. Itne naraz huye keh Hazrat Zainab se Qata` kalami kar di.  Hazrat Zainab yeh Surat-e-Haal daikh kar pareshan ho gayen. Aik roz Hazrat Ayesha (رضی اللہ عنہا) se kaha baraye meharbani mera qasoor maaf kara do! Aap mera ye kaam bade asani se karwa sakti hain.  Jab Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) Hazrat Ayesha ke yahan tashreef le gaye to unho ne bade saleeqe se aur khushgawar mahaul mein yeh baat aap ki khidmat mein arz ki. Aapne Hazrat Zainab ka qasoor maaf kiya, Aur maamla Rafat-e-Gazasht ho gaya.

Duniya se rukhsat ho jaane ke baad kisi ki khubiyon ka tazkirah use Zinda-o-Jaweed bana deta hai.  Jab Hazrat Zainab (رضی اللہ عنہا) Qaza-e-Ilaahi se Allah ko pyaari ho gayin to Hazrat Ayesha (رضی اللہ عنہا) ne apni khush akhlaqi ka izhaar karte huye irshaad farmaya bayan karti hain keh: Aik dafa Rasool-e-aqdas ((صلی اللہ علیہ وسلم)) ne apni tamaam biwiyon ko mukhatib karke irshaad farmaya: Tum mein sab se pehle mujh se woh aa kar milegi jiske haath sabse lambe honge. Hazrat Ayesha farmati hain keh ham apne hathon ko naapa karte they, Tamaam Azwaaj-e-Mutaharrat mein sab se pehle jab Zainab (رضی اللہ عنہا) ka intiqaal hua to hamein yeh nuqta malum hua keh hathon ki lambai se apki muraad fayyazi aur sakhawat thi.  Hazrat Zainab apne haath se kaam kiya karti thin aur us se jo aamdani hoti use Allah ki raah mein kharch kar diya karti thin.  Neez farmaati hain keh: Main ney koi aurat Zainab se badh kar zayada deendar, Parhezgar, Raast guftar, Fayyaz, Sakhi, Mukhaiyyar aur Allah ki taqarrub joi mein zayada sargaram nahi daikhi. Faqat mizaaj mein Qadar-e-Tezi thi, Jis par use bahut jald nadamat bhi hoti thi.  

Azwaaj-e-Mutaharrat ke do group the. Aik mein Hazrat Ayesha, Hazrat Hafsa, Hazrat Sauda aur Hazrat Safia thin aur dusre mein Hazrat Zainab aur dusri biwian thin. Aap ka rozana yeh mamul tha keh Namaz-e-Asar ke baad tamam biwiyon ke paas jate, Thodi dair baithte, Haal ahwaal puchte, Adal-o-Insaaf ke taqaze Malhuz-e-Khatir rakhte huye har aik ke paas aik jaisa waqt guzarte. Laikin aik martaba chand roz Hazrat Zainab ke ghar Qadar-e-Zayada waqt guzara, Jo dusri Azwaaj-e-Mutaharrat ko na-gawaar guzra.  Hazrat Ayesha (رضی اللہ عنہا) ne Adab-o-Ahtiraam se dariyaft kiya to malum hua keh Hazrat Zainab ke yahan kisi azeez ne shehed bheja hai, Chunke shahed Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) ki marghoob gaza thi, Use nosh karne ke liye Qadar-e-Der lag jaati. Hazrat Ayesha, Hafsa aur Saudah ne baahami mashware se yeh tay kiya keh jab Rasoolullah  ((صلی اللہ علیہ وسلم)) ham mein se kisi ke paas aaye to dariyaft kare keh ya Rasoolullah  ((صلی اللہ علیہ وسلم)) aapke Dahen-e-Mubarak se khushboo ki bajaye kuch bu si mahsus ho rahi.  Jab aik jaisi baat yake baad-deegare teen biwion se suni to aapne farmaya main ney shahed ke ilawah to kuch khaya piya nahi chunke aap bahut zyada nafasat pasand the, Lihaza shehed se karahiyat paida ho gayi, Aur aayinda ke liye shehed na peene ka ailaan kar diya. Azwaaj-e-Mutaharrat ki janib se yeh schem aap ki azmat, Mohabbat aur Qadar-o-Manzilat ki bina par thi. Har biwi ki yeh khawish thi keh Huzoor (صلی اللہ علیہ وسلم) uske yahan qadam ranja farmayen.  Takheer se aamad unke liye na-Qabil-e-Bardasht thi. Laikin jab aik halal chiz ko aapne apne liye haram qarar de diya to Allan Ta’ala  ne fauran yeh hukm nazil kiya:

 

يٰٓاَيُّهَا النَّبِيُّ لِمَ تُحَرِّمُ مَآ اَحَلَّ اللّٰهُ لَكَ ۚ تَبْتَغِيْ مَرْضَاتَ اَزْوَاجِكَ    ۭ وَاللّٰهُ غَفُوْرٌ رَّحِيْمٌ

 

“Aye nabi (صلی اللہ علیہ وسلم) Allah ne jo tere liye halal kiya hai apni biwiyon ki khushnudi ke liye usko apne upar kyun haraam karte ho, Allah bakhshne wala meharban hai.” (At-Tehreem:1)

Hazrat Zainab (رضی اللہ عنہا) ki dili khawish yahi thi keh Huzoor (صلی اللہ علیہ وسلم) Qadar-e-Zayada der unke ghar tashref farma rahein. Kyunkeh Sayyid-ul-Mursaleen, Shah-e-Umam, Sultan-e-Madina kainat ki woh azeem hasti hain jinki har adaa shari` qanoon ki buniyad ban jati hai. Is liye Allah Ta’ala ne mundarja bala Ayat wahi ke zariye fauran nazil farma di, Warna dil to tamam Azwaaj-e-Mutaharrat ke saaf shaffaf thay. Un pakiza khwateen ki azmat ka tazkirah Allah subhan-o-Ta’ala ne Qur’an-e-Hakeem mein kiya hai. Jaisa keh Farman-e-Baari Ta’ala  hai:

 

يٰنِسَاۗءَ النَّبِيِّ لَسْتُنَّ كَاَحَدٍ مِّنَ النِّسَاۗءِ

 

“Aye Nabi ki biwiyon tum aam auraton jaisi nahi ho.”


Umm-ul-Momineen Hazrat Zainab ne apne ghar ke aik kone mein aik choti si masjid bana rakhi thi, Jis mein woh aksar auqaat ibadat mein masroof rahtin.  Gaahe bagaahe Rasoolullah (صلی اللہ علیہ وسلم) bhi masjid mein namaz adaa kiya karte the.  Hazrat Zainab ka mamul yeh tha keh koi bhi kaam karne se pehle istaikhara zarur kiya karti thin.  

Hazrat Zainab woh khush naseeb hain jise Rasoolullah  (صلی اللہ علیہ وسلم) ne Jannat ki basharat is andaaz mein di keh aik roz tamam Azwaaj-e-Mutaharrat ko mukhatib karte huye farmaya: Tum mein sab se pehle mujhe woh milegi jis ke haath sab se zayada lambe honge, Is paigham mein Jannat ki basharat di gayi. Hazrat Zainab ka qad dusri Azwaaj-e-Mutaharrat ki nisbat chota tha, Aur haath bhi unki nisbat chote thay. Laikin jab sab biwion se pehle unka intiqaal ho gaya to pata chala keh lambe hathon se murad fayyazi aur sakhawat hain jo Hazrat Zainab mein dusron ki nisbat zayada thi.  

Umm-ul-Momineen Hazrat Zainab ka intiqaal  Faruq-e-Azam (رضي الله عنه) ke Daur-e-Khilafat mein hua us waqt unki Umar 53 saal thi.  Jab unho ne maut ke aasar daikhe to waheen se kaha mera aakhiri waqt aa chuka hai, Main ney apna kafan khud tayyar kar rakha hai, Agar Hazrat umar mere liye kafan bhejen to un dono mein se aik Allah ki raah mein de dena. Unki maiyyat par parda taana gaya. Hazrat umar ne Namaz-e-Janaza padhai. Madine ke qabristan Jannat-ul-Baqi mein dafan kiya gaya. Maiyyat ko lahad mein utarne ke liye Usama Bin Zaid, Muhammad Bin Abdullaah Jahash, Abdullah Bin Abi Ahmad Jahash, Muhammad Bin Talha Bin Abdullah qabar mein utre aur yeh tamaam aapke qareebi rishtadar thay, Is tarah Khatoon-e-Jannat ko Supurd-e-Khaak kiya gaya.  

 

Allah unse Razi aur yeh apne Allah se Razi.

Umm-ul-Momimin Zainab Bint-e–e-Jahas (رضی اللہ عنہا)key mufassal Halat-e-Zindagi maloom karny key liy darj zail kitaboon ka mutala kijiy:

 

1: Tabaqat Ibn-e-Saad                                                                                       8/101-110
2: Musnad Imam Ahmad                                                                                   6/324
3: Mustadrak Hakim                                                                                                4/23-25
4: Al Marifah wal Tarikh                                                                                           2/722
5: Usd-ul-Ghabah                                                                                                       6/125-127
6: Al Istiaab                                                                                                                    4/306-310
7: Al Isaabah                                                                                                                  4/307-308
8: Al Ibar                                                                                                                             1/5
9: Majm`a-ul-Zawaid                                                                                                  9/246
10: Tahzeeb-ul-Tahzeeb                                                                                             12/420
11: Shazarat-ul-Zahab                                                                                                  1/171
12: Kanz-ul-Ummal                                                                                                      13/700
13: Sifat-ul-Safwah                                                                                                      2/46
14: Talqih-o-Fuhoom-al-Asar                                                                               22
15: Siar-o-Aalam-al-Nubalaa                                                                                2/211-218
16: Tafseer Qurtubi                                                                                                          14/187
17: Uyoon-ul-Asar                                                                                                          2/382
18: Al Muhabbar                                                                                                             85
19: Zaad-ul-Maad                                                                                                       1/108
20: Hilyat-ul-Awliyya                                                                                                2/51
21: Tahzeeb-ul-Asmaa wal lughat                                                                    2/344
22: Al Seerat-ul-Halabiyyah                                                                                  3/411
23: Futooh-ul-Buldaan                                                                                               555
24: Dalail-ul-Nubuwwah                                                                                           3/465
25: Tarikh-e-Islam Lil Zahabi                                                                                   211-214

REFERENCE:
Book: Sahabiyaat-e-Mubashiraat”
By Mahmood Ahmed Ghaznofar.

ZAYNAB – the Mother of the Believers

Allah Gave Her in Marriage From Above His Throne

She was the Mother of the Believers, Zaynab bint Jahsh bin Rayab. She is a cousin to Allah’s Messenger. She was among those who made the first hijrah. Her mother was Aminah bint ‘Abdul-Muttalib bin Hashim. She was one of the most noble women in religion, piety and her benevolence was well-known.

 

Her Marriage to Zayd bin Harithah

When Islam came, part of its goal was the eradication of differences between men. No one has precedence above another except in righteousness. The Prophet wanted to implement that in practical terms and that was with the marriage of Zaynab bint Jahsh, his own relative to his freed slave, Zayd bin AI-Harithah so that class differences could be obliterated.

Allah’s Messenger presented this proposal to Zaynab and sought her hand for Zayd. However, Zaynab turned over this disturbing idea and this irreconcilable question in her mind: “How could she accept this incompatible marriage from a former slave while she was a noble and high-born lady?”

So she said to the Prophet, “O Messenger of Allah, I do not approve of him for myself (as husband) while I am a widow of the Quraish.” The Prophet ﷺ said: “As for me, I have approved of him for you.” Then the words of Allah was revealed: “It is not for a believer, man or woman, when Allah and His Messenger have decreed a matter that they should have any option in their decision. And whoever disobeys Allah and His Messenger, he has indeed strayed in a plain error.” (AlAhzab:36)

Therefore, no room was left for Zaynab to contradict the command of Allah and His Messenger. She submitted and Zayd bin Harithah married her.

Very serious differences began to crop up between the two spouses. Life became extremely difficult and living together very stressful. Zayd would come to the Prophet complaining about Zaynab and the Prophet ﷺ  would tell him: “Keep your wife to yourself, and fear Allah.”

Similarly, for Zaynab too, life did not bring her matrimonial happiness and harmony. So verses of the Qur’an came down cancelling the established practice. Jibril had informed Allah’s Messenger that Zaynab will become his wife but the Prophet found it objectionable in his heart that he should tell Zayd to divorce her and then for him to many her thereafter. Word would spread amongst the people that Muhammad married the wife of his son. That was the intensity of the fear of people which made him conceal what Allah had informed him i.e. marrying her. This is what Allah faulted him for in the statement of the Most High: “But you did hide in yourself (i.e. what Allah has already made known to you that He will give her to you in marriage) that which Allah will make manifest, you did fear the people (i.e., Muhammad married the divorced wife of his manumitted slave) whereas Allah had a better right that you should fear Him.” (AI-Ahzab:37)

Allah is very clear about the reason for this marriage. He says: “So that (in future) there may be no difficulty to the believers in respect of (the marriage of) the wives of their adopted sons when the latter have no desire to keep them (i.e. they have divorced them). And Allah’s Command must be fulfilled.” (Al Ahzab:37)

When Zayd came once again complaining about Zaynab, the Prophet permitted him to divorce her.

The Prophet’s Marriage to Zaynab


After Zayd had divorced Zaynab R.A., the Prophet married her by the command of Allah. Allah says:

So when Zayd had accomplished his desire from her (i.e. divorced her), We gave her to you in marriage.” (Al-Ahzab: 37)

So Allah married her to His Prophet by the text of His Book without a wali or witness. Zaynab used to boast with that over the rest of the Mothers of the Believers. She would say: “Your people gave you out in marriage but I was given out in marriage by Allah from above His Throne.”

Anas bin Malik R.A. said: “Zayd bin Harithah came to complain and the Prophet kept saying: ‘Keep your wife to yourself, and fear Allah.”‘

Anas said: “If the Messenger of Allah were to conceal anything, he would have concealed this. Zaynab used to boast over the rest of the wives of the Prophet.

With that blessed marriage, Zaynab was added to the list of the Mothers of the Believers. Perhaps this is from the blessing of her obedience to the command of Allah when she married Zayd.

Al-Hijab

From the blessing of Zaynab R.A, is that the verse of hijab came down at her instance. Anas R.A., said: “Allah’s Messenger consummated his marriage with Zaynab upon bread and meat and he sent me to invite people (to a meal). A group of people would come, eat and they would leave. Another set of people would come, eat and leave. I kept inviting the people until I did not find any more people to invite. So I said: 0 Prophet of Allah, I do not find anyone to invite again and he said: ‘Then take your own food.’

“A batch of three people remained in the house chatting so the Prophet went out to the dwelling place of ‘A’ishah and said: ‘Peace and Allah’s Mercy be upon you, 0 the people of the house!’ She responded, ‘Peace and the mercy of Allah be on you too. How did you find your wife? May Allah bless you.’ Then he went to the dwelling places of all his other wives and said to them the same as he said to ‘A’ishah and they said to him something similar to what’ A’ishah had said to him.

“Then the Prophet returned and found the group of three persons still in the house chatting. The Prophet was an extremely shy person, so he went out (for the second time) and went toward the dwelling place of A’ ishah. I do not remember whether I informed him that the people have gone away. So he returned and while his legs were still bestriding the doorway, he drew the curtain between me and him, and then the verse of Al-Hijab was revealed:

0 you who believe! Enter not the Prophet’s houses, except when leave is given to you for a meal, (and then) not (so early as) to wait for its preparation. But when you are invited, enter, and when you have taken your meal, disperse, without sitting for a talk. Verily, such (behaviour) annoys the Prophet, and he is shy of (asking) you (to go), but Allah is not shy of (telling you) the truth. And when you ask (his wives) for anything you want, ask them from behind a curtain, that is purer for your hearts and for their hearts. And it is not (right) for you that you should annoy Allah’s Messenger, nor that you should ever marry his wives after him (his death). Verily! With Allah that shall be an enormity.”‘ (Al Ahzab: 53)

The verse contains manners that were hitherto unknown during the jahiliyyah period regarding entering houses. The people used to enter other people’s houses without the permission of the owners (of the house). Some of them would enter when they saw that food was being prepared and they would sit waiting for the food to be done so that they may partake in it even without prior invitation to the meal. Some of them would also sit after the meal regardless of whether they were previously invited or they barged in upon them without invitation. They would break into conversation and chat for a long time without any realization of what inconvenience that would cause.

Then this verse came teaching people to avoid entering into other people’s houses without permission. If they were invited to a meal, they should enter. However, if they were not invited, they should not enter and sit for the food to be done. Even after they had partaken in the meal, they should leave and not remain after the meal to chat and to engage in conversation.

The Muslims are in no need of any manners as much as they are in need of this which incidentally many are deprived of. Many guests at meals remain after the meal. In fact they would remain at the dining table chatting for long hours. Meanwhile, the inhabitants of the house which keep to the command of Allah regarding veiling are inconvenienced and impeded while the guests persist in their discussion and chatting unaware. In this Islamic manner, there is sufficiency for all situations if we but hold on to this divine upright manner.

Then this verse also establishes the use of curtain between the wives of the Prophet and other men: And when you ask (His wives) for anything you want, ask them from behind a curtain.”

And it also establishes that such screening is purer for the heart of everyone: that is purer for your hearts and for their hearts.”

No one should say other than what Allah has said: No one should say that intermingling,removal of veil, freedom of speech, meetings, sittings and mutual participation between the opposite sex is purer for the hearts and more decent for the conscience and more helpful in managing the suppressed natural feelings. Informing the two sexes of the refined manner of comportment up to the end of what a group of the creatures of Allah who are dim-witted often say.

Her Benevolence and Generosity


‘A’ishah narrated: “The Prophet said to his wives: ‘One who has the longest hands amongst you would come after me (i.e. at my death).’ She further said: ‘after his death, we would stretch our hands on the wall to measure their length. We never ceased doing that until Zaynab died and she was a small woman so she could not have been the one with the longest hand. It is at that point we realized that what he meant (by the longest hand) was charity. She used to work with her hand, she used to tan (leather) and pierce leather and she would spend (that income) on charity.”

Zaynab, Allah be pleased with her, understood that what was meant was the longest hand in goodness. She used to work and spend the income in charity. She was the quickest of the wives of the Prophet in meeting him (in death). She used to be known as “the Mother of the Poor.

To the Companion on High

Barazah bint Rafi’ narrated: “‘Umar bin Al-Khattab sent Zaynab her stipend. So she said: ‘May Allah forgive ‘Umar, someone other than me is more deserving of this stipend.’ The people said to her: ‘All of it is for you.”‘

She said: “Glory be to Allah!” She shielded herself from it with a garment and said: “Pour’ it and cover it with a cloth.” Then she began to distribute it among her relatives and orphans and gave me the remainder. I counted the money and it was eighty-five dirhams. Then she raised her hands toward heaven and prayed: “0 Allah, do not let ‘Umar’s stipend meet me alive after this year.”

From Al-Qasim: Zaynab bint Jahsh said at the point of death: “I have prepared my shruoud, if ‘Umar sends me a shroud, give one out in charity. If you are able to give my waist-wrapper out in charity after you have lowered me (into the grave), then do so.”

In the year 20th (hijrah) she soared to the neighbourhood of her Lord and ‘Umar bin Al-Khattab led her funeral prayer.

Before we stop writing about her history, we close with what was said regarding her by ‘A’ishah ~. “I have never seen a woman who was better in her religion, who feared Allah more, who was more truthful in speech, who strengthened the ties of kinship more and was more benevolent in charity than Zaynab. May Allah be pleased with her.”

 

SOURCE:
https://learn-islam.org

 

 

 

*ام المؤمنین حضرت زینب بنت جحش رضی الله عنها*

رسول اقدس ﷺ نے ایک روز ازواج مطہرات کو یہ بات بتائی کہ ”تم میں سب سے پہلے مجھے آخرت میں وہ ملے گی جس کے ہاتھ لمبے ہیں” (فرمان رسول) “


*” ازواج مطہرات میں حضرت زینب سب سے پہلے فوت ہو ئیں اور خلد بریں جنت الفردوس کی مہمان بنیں۔”
* حضرت زینب رضی اللہ عنھا سخاوت و فیاضی میں ید طولٰی رکھتی تھیں۔“
سخاوت کو لمبے ہا تھوں سے تعبیر کیا گیا ہے۔

خاندانی وجاہت ، شرافت اور نجابت سے آراستہ ‘ اميمة بنت عبد المطلب بن ہشام کی بیٹی ، جرنیل صحابی عبد اللہ بن جحش، شاعر اسلام ابو احمد بن جحش اور عظیم المرتبت صحابیہ حمنہ بنت جحش کی بہن , سید الشہداء حضرت حمزہ بن عبد المطلب , دریا دل فیاض حضرت عباس بن عبد المطلب اور حضرت صفیہ بنت عبد المطلب کی بھانجی ، دریادلی , فیاضی ، سخاوت اور غرباء و مساکین کے ساتھ ہمدردی میں ید طولیٰ رکھنے والی نیک خو ,عبادت گزار ، شب زنده دار ، متقی ، پرہیز گار ,l اللہ کی رضا جوئی میں ہر دم سر گرم، جس کا پہلا نکاح حضرت زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ کے ساتھ ہوا تو معاشرے میں غلام و آزاد کے امتیازات مٹ گئے , طلاق کے بعد دوسرا نکاح سید المرسلین ﷺ سے وحی الہی کی بنیاد پر ہوا جس سے لے پالک کو حقیقی بیٹے کا درجہ دینے کی قدیم رسم ٹوٹ گئی، جس کی دعوت ولیمہ کے دوران پردے کا حکم نازل ہوا، جس کے بارے میں ام المؤمنین حضرت ام سلمہ رضی اللہ عنہا نے فرمایا (*كانت زينب صالحة صوّامة قوامة*) زینب نیک خصلت , کثرت سے روزے رکھنے والی اور کثرت سے نماز پڑھنے والی تھی ، جس نے ورثے میں ایک مکان چھوڑا جسے ولید بن عبد الملک نے اپنے دورِ حکومت میں پچاس ہزار درہم کا خرید کر مسجد نبوی میں شامل کر دیا، جس کے بارے میں رسول اقدس ﷺ نے حضرت عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ سے کہا زینب خوف خدا کی خوگر ، طبعاً تواضع و انکساری اور عاجزی کی پیکر ہے، جس کی وفات پر مدینے کے مساکین , غرباء اور فقراء دھاڑیں مار کر رونے لگے کیونکہ ان کی سخاوت سے وہ سب فیض یاب ہوا کرتے تھے۔ اس لئے اپنی ہمدرد، غمگسار محسنہ کا دنیا سے رخصت ہو جانا انہیں بہت محسوس ہوا جسے تاریخ میں زینب بنت جحش کے نام سے یاد کیا جاتا ہے۔

جسے ام المؤمنین ہونے کا اعزاز حاصل ہوا ، جسے لسانِ رسالت سے دنیا میں جنت کی بشارت ملی۔ آئیے اس خاتونِ جنت کے حالات زندگی سے نورِ ایمان حاصل کرتے ہوئے اپنی آخرت سوار نے کا سامان مہیا کریں۔

                   


ام المؤمنین زینب بنت جحش رضی اللہ عنہا واقعہ ہجرت سے تقریباً تیس سال پہلے مکہ معظمہ میں پیدا ہو ئیں۔ ان کی والدہ کا نام اميمة بنت عبد المطلب تھا۔ حضرت زینب اپنے بھائی عبداللہ بن جحش رضی اللہ عنہ کی دعوت و تبلیغ سے متاثر ہو کر مشرف باسلام ہو ئیں۔ حسن و جمال ، عقل و دانش اور فہم و فراست کے اعتبار سے قریشی خواتین میں قابل رشک مقام پر فائز تھیں۔

جب مکہ معظمہ میں اسلام کی دعوت کے اثرات پھیلنے لگے تو سردارانِ قریش غیظ و غضب سے آگ بگولا ہو گئے ۔ نو آموزان اسلام کو طرح طرح کی اذیتوں سے دو چار کرنے لگے کسی کو آگ کے دہکتے ہوئے انگاروں پر لٹایا گیا، کسی کو تپتی ہوئی ریت پر برہنہ بدن گھسیٹا گیا , کسی کو تختہ دار پر لٹکایا گیا , کسی کے جسم کو اونٹوں سے باندھ کر انہیں مخالف سمت دوڑا کر دو ٹکڑوں میں چیر پھاڑ دیا گیا ، غرضیکہ کوئی ایسی اذیت ناک تدبیر نہ تھی جو دائرہ اسلام میں داخل ہونے والے کو تڑپانے کے لئے اور اسلام سے برگشتہ کرنے کے لئے اختیار نہ کی گئی ہو۔ اسلام سے منحرف کرنے کے لئے نت نئے طریقے آزمائے گئے ۔ مسلمانوں کا مکہ معظمہ میں عرصہ حیات تنگ کر دیا گیا۔ اس اندوہناک صورتِ حال کو دیکھتے ہوئے رسول اقدس ﷺ نے دائرہ اسلام میں داخل ہونے والے جاں نثاروں کو صبر و تحمل کی تلقین کرتے ہوئے پہلے حبشہ اور پھر مدینہ منورہ کی جانب ہجرت کرنے کا حکم دیا۔

سید المرسلین ﷺ کے حکم کی تعمیل کرتے ہوئے عبداللہ بن جحش کی قیادت میں بنو جحش خاندان کا قافلہ ہجرت کی غرض سے مدینہ منورہ کی جانب روانہ ہوا جس میں ابو احمد بن جحش جو بینائی سے محروم تھے لیکن قادر الکلام شاعر تھے ، محمد بن عبد اللہ بن جحش رضی اللہ عنہ ، زینب بنت جحش رضی اللہ عنہما مبلغ اسلام حضرت معصب بن عمیر رضی اللہ عنہ کی بیوی حمنہ بنت جحش رضی اللہ عنہما اور حضرت عبد الرحمن بن عوف رضی اللہ عنہ کی بیوی امّ حبیب بنتِ جحش بھی شامل تھیں ۔کچھ عرصے بعد سید المرسلین ﷺمکہ چھوڑ کر مدینہ منورہ تشریف لے آئے ۔ چونکہ بنو جحش کا پورا کنبہ بیک وقت سفر ہجرت پر روانہ ہوا اس لیے ان کا عالیشان گھر خالی ہو گیا۔ جس پر قریش کے سردار ابوسفیان نے قبضہ کر لیا ۔جب پتہ چلا کہ جس گھر میں اللہ تعالیٰ کی عبادت ہوا کرتی تھی ، قرآن حکیم کی تلاوت ہوا کرتی تھی , وہ آج ابوسفیان کے زیر استعمال ہے تو حضرت عبداللہ بن جحش رضی اللہ عنہ رنجیدہ خاطر ہوئے ۔
رسولِ اقدسﷺ کی خدمت میں حاضر ہو کر عرض کی یارسول اللہ میرے گھر پر ابوسفیان قابض ہو گیا ہے ۔ آپ ﷺنے اپنے جاں نثار کو پریشانی میں مبتلا دیکھ کر ارشاد فرمایا:
” *اَلاَ تَرْضَى يَا عَبْدُا لله اَنْ يُعْطِيَكَ اللهُ بِهَا دَارً فِى الْجَنَّةِ خَيْرًا مِّنْهَا* “
“اے عبداللہ کیا تجھے یہ پسند نہیں کہ اللّٰہ تعالیٰ تجھے جنت میں اس سے بہتر گھر عطا کر دے”
حضرت عبداللہ رضی اللہ عنہ نے کہا یا رسول اللّٰہ ﷺمجھے بخوشی منظور ہے ۔
فرمایا: یقین رکھو جنت میں تجھے اس سے بہتر گھر ملے گا۔
ہجرت کے موقع پر شاعر اسلام ابو احمد بن جحش رضی اللہ عنہ نے ایک قصیدہ کہا جس میں ہجرت کے اسباب ، قریش کے ظلم وستم اور فرزندانِ اسلام کی ایمان افروز داستان تفصیل سے بیان کی جسے عربی ادب کا شاہکار تصور کیا گیا ۔


خاندان بنو جحش مدینہ میں آباد ہو گیا ، شب و روز تیزی سے گزرنے لگے۔انصار و مہاجرین میں قابلِ رشک باہمی اخوت کی فضا قائم ہوئی ۔ شاہِ امم سلطانِ مدینہ ﷺنے اسلامی مساوات کی بنیاد پر معاشرتی نظام قائم کر دیا۔ غلام و آزاد کے طبقاتی امتیازات کو ختم کرتے ہوئے تقوے کو وجہ امتیاز قرار دے دیا گیا ۔

یہ تقریباً 5 ہجری کا واقعہ ہے کہ ایک روز رسولِ اقدس ﷺنے اپنی قریبی رشتہ دار زینب سے کہا کہ میں نے زید بن حارثہ کے ساتھ تیری نسبت طے کر دی ہے ۔اس وقت ان کی عمر 35 برس تھی ۔ اچانک یہ بات سن کر حضرت زینب رضی اللہ عنہما سکتے میں آ گئیں ۔پریشانی اور غم واندوہ کی حالت میں عرض کی یارسول اللہ ﷺ میں خاندانِ قریش کی چشم و چراغ ہوں اور زید ایک آزاد کردہ غلام ہے۔میرے دل میں تو اس رشتے کی کوئی چاہت نہیں ،مجھے تو پسند نہیں ، نباہ کیسے گا ؟ زندگی خوش گوار کیسے گزرے گی۔؟
آپ ﷺنے یہ بات سن کر ارشاد فرمایا:
“میں تیرے لیے زید کو پسند کیا اسے قبول کر لو۔”
اس سے پہلے کہ حضرت زینب رضی اللہ عنہما کوئی دوسری بات کرتیں اللّٰہ سبحانہ وتعالی نے یہ آیت نازل کر دی

“القرآن – سورۃ نمبر الأحزاب
آیت نمبر 36

وَمَا كَانَ لِمُؤۡمِنٍ وَّلَا مُؤۡمِنَةٍ اِذَا قَضَى اللّٰهُ وَرَسُوۡلُهٗۤ اَمۡرًا اَنۡ يَّكُوۡنَ لَهُمُ الۡخِيَرَةُ مِنۡ اَمۡرِهِمۡ ؕ وَمَنۡ يَّعۡصِ اللّٰهَ وَرَسُوۡلَهٗ فَقَدۡ ضَلَّ ضَلٰلًا مُّبِيۡنًا ۞

ترجمہ: کسی مومن مرد اور کسی مومن عورت کو یہ حق نہیں کہ جب اللہ اور اس کا رسول کسی معاملے میں فیصلہ کردے تو پھر اسے اپنے معاملے میں خود فیصلہ کرنے کا اختیار حاصل رہے اور جو کوئی اللہ اور اس کے رسول کی نافرمانی کرے تو وہ صریح گمراہی میں پڑگیا.”

اللّٰہ تعالٰی کا یہ حکم سن کر حضرت زینب رضی اللہ عنہا نے سرِ تسلیم خم کر لیا ۔ زینب بنت جحش اور زید بن حارثہ رضی اللہ عنہما رشتہِ ازدواج میں منسلک ہو گئے ۔ لیکن ازدواجی زندگی پرسکون گزرنے کی بجائے دن بدن تلخ در تلخ ہوتی چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔
       



رسولِ اقدس ﷺنے حضرت زید رضی اللہ عنہ کو اپنا بیٹا بنا رکھا تھا ۔ اور یہ زید بن محمد ﷺکے نام سے پکارے جاتےتھے ۔ ظاہری شکل و صورت کے اعتبار سے کوئی زیادہ جاذب نظر نہ تھے ۔ رنگ بھی سانولا تھا ۔ حضرت زینب رضی اللہ عنہا کے دل میں ایک گرہ پڑ چکی تھی ۔

جس کی وجہ سے گھریلو ماحول میں تلخی دن بدن بڑھتی چلی جا رہی تھی ۔ جو عزت ، وقار ، اہمیت اور پزیرائی ہر خاوند اپنی رفیقہ حیات سے چاہتا ہے , وہ زید بن حارثہ کو گھر میں میسر نہ تھی۔ اس صورتحال سے دل برداشتہ ہو کر ایک روز انہوں نے رسولِ اقدس ﷺکی خدمت میں عرض کیا یا رسول اللّٰہ ﷺمیں گھریلو حالات سے پریشان ہوں،ہمارا نباہ بہت مشکل نظر آتا ہے ۔ میرا دل چاہتا ہے کہ زینب رضی اللہ عنہا کو طلاق دے دوں ۔
آپ ﷺ نے زید رضی اللہ عنہ کو جو مشورہ دیا اللّٰہ تعالیٰ نے اسے قرآن حکیم میں شامل کر دیا ۔
آپ نے فرمایا:
القرآن – سورۃ الأحزاب
آیت نمبر 37

 *اَمۡسِكۡ عَلَيۡكَ زَوۡجَكَ وَاتَّقِ اللّٰهَ*
” اپنی بیوی اپنے پاس رکھو اور اللہ سے ڈرو. “
لیکن یہ سلسلہ زیادہ دیر نہ چل سکا ۔ آخر کار گھریلو حالات کو پیش نظر رکھتے ہوئے اپنی بیوی زینب بنت جحش رضی اللہ عنہا کو طلاق دے دی ۔


عرب قبائل میں یہ رواج تھا کہ لے پالک بیٹے کی بیوی یا مطلقہ کے ساتھ منہ بولے باپ کا نکاح معیوب سمجھا جاتا تھا لیکن اللّٰہ سبحانہ وتعالیٰ کو دورِ جاہلیت کی اس رسم کو مٹانا مقصود تھا ۔ ایک روز حضرت جبریل علیہ السلام نے رسولِ اقدس ﷺکو رازدارانہ انداز میں پیغام دیا کہ زینب رضی اللہ عنہا آپ کی بیوی بنے گی۔
آپ نے اس خبر کو شدت سے محسوس کیا کہ لوگ کیا کہیں گے کہ لے پالک کی مطلقہ سے نکاح کر لیا ۔ آپ اپنے دل میں بہت زیادہ شرم محسوس کر رہے تھے ۔ چونکہ آسمانوں پر یہ فیصلہ ہو چکا تھا۔ لہزا تھوڑے ہی عرصے بعد اللّٰہ تعالیٰ نے یہ وحی نازل کر دی۔
القرآن – سورۃ الأحزاب
آیت نمبر 37

وَاِذۡ تَقُوۡلُ لِلَّذِىۡۤ اَنۡعَمَ اللّٰهُ عَلَيۡهِ وَاَنۡعَمۡتَ عَلَيۡهِ اَمۡسِكۡ عَلَيۡكَ زَوۡجَكَ وَاتَّقِ اللّٰهَ وَتُخۡفِىۡ فِىۡ نَفۡسِكَ مَا اللّٰهُ مُبۡدِيۡهِ وَتَخۡشَى النَّاسَ ‌ۚ وَاللّٰهُ اَحَقُّ اَنۡ تَخۡشٰٮهُ ؕ فَلَمَّا قَضٰى زَيۡدٌ مِّنۡهَا وَطَرًا زَوَّجۡنٰكَهَا لِكَىۡ لَا يَكُوۡنَ عَلَى الۡمُؤۡمِنِيۡنَ حَرَجٌ فِىۡۤ اَزۡوَاجِ اَدۡعِيَآئِهِمۡ اِذَا قَضَوۡا مِنۡهُنَّ

 

وَطَرًا ؕ وَكَانَ اَمۡرُ اللّٰهِ مَفۡعُوۡلًا ۞

ترجمہ:
“اور جب تو اس شخص سے جس پر اللہ نے انعام کیا اور جس پر تو نے انعام کیا کہہ رہا تھا کہ اپنی بیوی اپنے پاس روکے رکھ اور اللہ سے ڈر اور تو اپنے دل میں وہ بات چھپاتا تھا جسے اللہ ظاہر کرنے والا تھا اور تو لوگوں سے ڈرتا تھا، حالانکہ اللہ زیادہ حقدار ہے کہ تو اس سے ڈرے، پھر جب زید نے اس سے اپنی حاجت پوری کرلی تو ہم نے تجھ سے اس کا نکاح کردیا، تاکہ مومنوں پر اپنے منہ بولے بیٹوں کی بیویوں کے بارے میں کوئی تنگی نہ ہو، جب وہ ان سے حاجت پوری کر چکیں اور اللہ کا حکم ہمیشہ سے (پورا) کیا ہوا ہے۔ “
صحیح مسلم اور مسند امام احمد میں حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ جب حضرت زینب رضی اللہ عنہا کی طلاق کے بعد عدت پوری ہو گئی تو نبی کرکریم نے زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ کے ذریعے اپنے لیے نکاح کا پیغام بھیجا ۔ وہ تعمیلِ حکم کے لیے حضرت زینب رضی اللہ عنہا کے گھر تشریف لے گئے ۔
فرماتے ہیں کہ جب میں وہاں پہنچا تو دیکھا کہ زینب رضی اللہ عنہا آٹا گوندھ رہی ہے ۔ میں نے شرماتے ہوئے اپنا رخ دوسری طرف کرتے ہوئے کہا زینب رضی اللہ عنہا میں تمہارے لیے ایک خوشخبری لے کر آیا ہوں ۔ رسولِ اقدس ﷺنے مجھے یہ پیغام دے کر بھیجا ہے کہ تمہیں اپنے حبالۂ عقد میں لے کر ازواجِ مطہرات کی فہرست میں شامل کر لیا جائے ،تمہاری کیا رائے ہے ۔؟
حضرت زینب رضی اللہ عنہا نے بغیر نظریں اٹھائے آٹا گوندھتے ہوئے ارشاد فرمایا:
“میں اپنے اللّٰہ سے مشورہ کرنے کے بعد ہی اس معاملے میں کچھ کہہ سکتی ہوں”
اس کے بعد استخارہ کرنے کے لیے مصلے پر کھڑی ہو گئیں۔ وہ ابھی حالت نماز میں تھیں کہ اللّٰہ تعالیٰ نے وحی نازل کر دی اور رسولِ اقدسﷺ کو پیغام دے دیا کہ ہم نے تمہاری شادی زینب رضی اللہ عنہا کے ساتھ آسمانوں پر کر دی ہے۔ یہ آسمانی حکم نازل ہونے کے بعد رسولِ اقدس ﷺ بغیر اجازت طلب کیے اور بغیر اطلاع دیئے حضرت زینب رضی اللہ عنہا کے گھر تشریف لے گئے ۔

❇️ اس شادی میں ولی اور گواہوں کی بجائے قرآنی حکم کو بنیاد بنایا گیا ۔
❇️ اس شادی سے جاہلیت کی اس قدیم رسم کو توڑ دیا گیا کہ لے پالک کی مطلقہ بیوی سے منہ بولے باپ کا شادی کرنا معیوب تصور کیا جاتا تھا ۔
❇️ اس شادی کا تذکرہ حضرت زینب رضی اللہ عنہا ازواجِ مطہرات کے سامنے بڑے فخر سے کرتے ہوئے کہا کرتی تھیں تمہاری شادی تمہارے گھر والوں نے کی اور میری شادی اللّٰہ سبحانہ وتعالیٰ نے سات آسمانوں پر اپنے محبوب پیغمبر حضرت محمد ﷺسے کی۔ میں اپنی اس خوش نصیبی پر شاداں و فرحان ہوں ۔
❇️اس شادی کے بعد منافقین نے حیرت کا انداز اپناتے ہوئے جگہ جگہ یہ ہوائیاں اڑانی شروع کر دیں کہ دیکھو غضب خدا کا ہمیں تو منع کیا جاتا ہے کہ اپنے بیٹوں کی طلاق یافتہ بیویوں سے نکاح نہ کرنا اور خود اپنے بیٹے زید کی مطلقہ بیوی سے نکاح کر لیا ۔ اس کے جواب میں اللّٰہ تعالٰی نے یہ آیت نازل کی:
القرآن – سورۃ الأحزاب
آیت نمبر 38 ،39

 مَا كَانَ عَلَى النَّبِىِّ مِنۡ حَرَجٍ فِيۡمَا فَرَضَ اللّٰهُ لهٗ ؕ سُنَّةَ اللّٰهِ فِى الَّذِيۡنَ خَلَوۡا مِنۡ قَبۡلُ ؕ وَكَانَ اَمۡرُ اللّٰهِ قَدَرًا مَّقۡدُوۡرَا ۞
اۨلَّذِيۡنَ يُبَـلِّـغُوۡنَ رِسٰلٰتِ اللّٰهِ وَيَخۡشَوۡنَهٗ وَلَا يَخۡشَوۡنَ اَحَدًا اِلَّا اللّٰهَ ؕ وَكَفٰى بِاللّٰهِ حَسِيۡبًا‏ ۞

ترجمہ:
“نبی کے لئے کسی ایسے کام میں کوئ رکاوٹ نہیں ہے جو اللہ نے اس کے لئے مقرر کردیا ہو. یہی اللہ کی سنت ان سب انبیاء کے معاملے میں رہی ہے جو پہلے گذر چکے ہیں اور اللہ کا حکم ایک قطعی طے شدہ فیصلہ ہوتاہے ۔
 جو اللہ کے پیغامات پہنچاتے ہیں اور اس سے ڈرتے ہیں اور اللہ کے سوا کسی سے نہیں ڈرتے ہیں اور اللہ کے سوا کسی سے نہیں ڈرتے اور محاصبے کے لئے صرف اللہ کافی ہے.”
پھر اس مسٔلے کو مزید نکھارنے کے لئے اللّٰہ تعالٰی نے ارشاد فرمایا:
القرآن – سورۃ الأحزاب
آیت نمبر 40

 *مَا كَانَ مُحَمَّدٌ اَبَآ اَحَدٍ مِّنۡ رِّجَالِكُمۡ وَلٰـكِنۡ رَّسُوۡلَ اللّٰهِ وَخَاتَمَ*

النَّبِيّٖنَ ؕ وَكَانَ اللّٰهُ بِكُلِّ شَىۡءٍ عَلِيۡمًا
القرآن – سورۃ نمبر 33 الأحزاب
آیت نمبر 40


ترجمہ:
“محمد تمہارے مردوں میں سے کسی کا باپ نہیں اور لیکن وہ اللہ کا رسول اور تمام نبیوں کا ختم کرنے والا ہے اور اللہ ہمیشہ سے ہر چیز کو خوب جاننے والا ہے۔ “
اللّٰہ تعالٰی نے لے پالک بیٹوں کے بارے میں بھی وضاحتی حکم بھی اسی شادی کے موقع پر نازل فرمایا ۔ ارشاد باری تعالٰی ہے:
القرآن – سورۃ الأحزاب


آیت نمبر 4۔5

وَمَا جَعَلَ اَدۡعِيَآءَكُمۡ اَبۡنَآءَكُمۡ‌ ؕ ذٰ لِكُمۡ قَوۡلُـكُمۡ بِاَ فۡوَاهِكُمۡ‌ ؕ وَاللّٰهُ يَقُوۡلُ الۡحَقَّ وَهُوَ يَهۡدِى السَّبِيۡلَ ۞
اُدۡعُوۡهُمۡ لِاٰبَآئِهِمۡ هُوَ اَقۡسَطُ عِنۡدَ اللّٰهِ‌ ۚ ۞


ترجمہ:


” اور نہ تمہارے منہ بولے بیٹوں کو تمہارے حقیقی بیٹے بنایا ہے، یہ تمہارا اپنے مونہوں سے کہنا ہے اور اللہ سچ کہتا ہے اور وہی (سیدھا) راستہ دکھاتا ہے۔
انھیں ان کے باپوں کی نسبت سے پکارو، یہ اللہ کے ہاں زیادہ انصاف کی بات ہے۔”
اس شادی کے موقع پر اللّٰہ تعالیٰ نے عورتوں کے لئے پردے کا حکم نازل کیا اور امتِ مسلمہ کے لیے یہ وضاحت بھی نازل کر دی کہ ازواجِ مطہرات میں سے کسی کے ساتھ کوئی امتی قطعی طور پر شادی نہیں کر سکتا ۔ یہ دونوں حکم درج ذیل آیات مبارکہ میں نازل کیئے گئے ۔
القرآن – سورۃ نمبر الأحزاب
آیت نمبر 53

يٰۤاَيُّهَا الَّذِيۡنَ اٰمَنُوۡا لَا تَدۡخُلُوۡا بُيُوۡتَ النَّبِىِّ اِلَّاۤ اَنۡ يُّؤۡذَنَ لَـكُمۡ اِلٰى طَعَامٍ غَيۡرَ نٰظِرِيۡنَ اِنٰٮهُ وَلٰـكِنۡ اِذَا دُعِيۡتُمۡ فَادۡخُلُوۡا فَاِذَا طَعِمۡتُمۡ فَانْتَشِرُوۡا وَلَا مُسۡتَاۡنِسِيۡنَ لِحَـدِيۡثٍ ؕ اِنَّ ذٰلِكُمۡ كَانَ يُؤۡذِى النَّبِىَّ فَيَسۡتَحۡىٖ مِنۡكُمۡ وَاللّٰهُ لَا يَسۡتَحۡىٖ مِنَ الۡحَـقِّ ؕ وَاِذَا سَاَ لۡتُمُوۡهُنَّ مَتَاعًا فَسۡئَـــلُوۡهُنَّ مِنۡ وَّرَآءِ حِجَابٍ ؕ ذٰ لِكُمۡ اَطۡهَرُ لِقُلُوۡبِكُمۡ وَقُلُوۡبِهِنَّ ؕ وَمَا كَانَ لَـكُمۡ اَنۡ تُؤۡذُوۡا رَسُوۡلَ اللّٰهِ وَلَاۤ اَنۡ تَـنۡكِحُوۡۤا اَزۡوَاجَهٗ مِنۡۢ بَعۡدِهٖۤ اَبَدًا ؕ اِنَّ ذٰ لِكُمۡ كَانَ عِنۡدَ اللّٰهِ عَظِيۡمًا ۞

 

القرآن – سورۃ الأحزاب
آیت نمبر 53

ترجمہ:
“اے لوگو جو ایمان لائے ہو ! نبی کے گھروں میں مت داخل ہو مگر یہ کہ تمہیں کھانے کی طرف اجازت دی جائے، اس حال میں کہ اس کے پکنے کا انتظار کرنے والے نہ ہو اور لیکن جب تمہیں بلایا جائے تو داخل ہوجاؤ، پھر جب کھا چکو تو منتشر ہوجاؤ اور نہ (بیٹھے رہو) اس حال میں کہ بات میں دل لگانے والے ہو۔ بیشک یہ بات ہمیشہ سے نبی کو تکلیف دیتی ہے، تو وہ تم سے شرم کرتا ہے اور اللہ حق سے شرم نہیں کرتا اور جب تم ان سے کوئی سامان مانگو تو ان سے پردے کے پیچھے سے مانگو، یہ تمہارے دلوں اور ان کے دلوں کے لیے زیادہ پاکیزہ ہے اور تمہارا کبھی بھی حق نہیں کہ تم اللہ کے رسول کو تکلیف دو اور نہ یہ کہ اس کے بعد کبھی اس کی بیویوں سے نکاح کرو۔ بیشک یہ بات ہمیشہ سے اللہ کے نزدیک بہت بڑا گناہ ہے۔”
           



حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا فرماتی ہیں کہ قدرو منزلت کے اعتبار سے زینب رضی اللہ عنہا میرے ساتھ مقابلہ کیا کرتی تھی ۔میں نے اپنی زندگی میں اس سے بڑھ کر کوئی دوسری صدقہ کرنے والی ، صلہ رحمی سے پیش آنے والی اور اللّٰہ کا تقرب حاصل کرنے والی نہیں دیکھی* “
فرماتی ہیں کہ جس دن مجھ پر جھوٹا الزام عائد کیا گیا میرے خلاف مدینے میں طوفان بدتمیزی بپا کیا گیا ،منافقین کی ریشہ دوانیوں سے فضا مکدر ہو چکی تھی۔ جس سے رسولِ اقدس ﷺبھی پریشان ہو گئے اور شکوک وشبہات میں مبتلا ہو گئے ۔ ایک روز زینب رضی اللہ عنہا سے میرے بارے میں پوچھا کہ عائشہ تیری نظر میں کیسی ہے ۔؟؟؟
تو اس نے برجستہ یہ کہا یا رسول اللہ ﷺمیں اس بہتانِ عظیم سے اپنے کانوں ، آنکھوں اور زبان کو محفوظ رکھنا چاہتی ہوں ۔ بخدا میں عائشہ رضی اللہ عنہا کو ایک عظیم اور بلند کردار خاتون دیکھتی ہوں ۔ واللہ خیر و بھلائی صداقت و امانت اور تقویٰ و طہارت سے متصف ہے۔
فرمایا ( مَا عَلِمْتُ فِیْھَا اِلَّا خَیْرًا) خوبی کے سوا اور کچھ میں نے اس میں نہیں جانا۔ اگر وہ چاہتیں تو اس موقعہ سے فائدہ اٹھاتے ہوئے دربارِ رسالت میں اپنی

حریف کو پچھاڑ سکتی تھیں ۔لیکن صحبتِ رسول ﷺ نے ان کمزوریوں سے انکو بالا بنا دیا تھا۔ حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا نے ان کے اس احسان کو زندگی بھر یاد رکھا۔
ایک دفعہ حضرت زینب رضی اللہ عنہا نے حضرت صفیہ رضی اللہ عنہا کو یہودیہ کہہ دیا۔ اس بات کا علم جب سید المرسلین ﷺ کو ہوا تو آپ بہت رنجیدہ خاطر ہوئے ۔ اتنے ناراض ہوئے کہہ حضرت زینب رضی اللہ عنہا سے قطع کلامی کر دی۔ حضرت زینب رضی اللہ عنہا یہ صورتِ حال دیکھ کر پریشان ہو گئیں ۔ ایک روز حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے کہا کہ برائے مہربانی میرا قصور معاف کر دو۔ آپ میرا یہ کام بڑی آسانی سے کرا سکتی ہیں ۔ جب رسولِ اقدس ﷺ حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا کے ہاں تشریف لائے تو انہوں نے بڑے سلیقے سے خوش گوار ماحول میں یہ ںات آپ کی خدمت میں عرض کی ۔ آپ نے حضرت زینب رضی اللہ عنہا کو معاف کر دیا اور معاملہ رفت گزشت ہو گیا ۔
دنیا سے رخصت ہو جانے کے بعد کسی کی خوبیوں کا تذکرہ اسے زندۂ جاوید بنا دیتا ہے۔ جب حضرت زینب رضی اللہ عنہا قضاے الہی سے اللّٰہ کو پیاری ہو گئیں تو حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا نے اپنی خوش اخلاقی کا اظہار کرتے ہوئے ارشاد فرمایا .بیان کرتی ہیں کہ ایک دفعہ رسولِ اقدس ﷺنے اپنی تمام بیویوں کو مخاطب کر لے ارشاد فرمایا:
” تم میں سب سے پہلے مجھ سے وہ آ کر ملے گی جس کے ہاتھ سب سے لمبے ہوں گے* ۔”
حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا کہتی ہیں کہ ہ
 اپنے اپنے ہاتھوں کو ناپا کرتی تھیں ۔ تمام ازواجِ مطہرات میں سب سے پہلے جب حضرت زینب رضی اللہ عنہا کا انتقال ہوا تو ہمیں یہ نکتہ معلوم ہوا کہ ہاتھوں کی لمبائی سے آپ ﷺکی مراد فیاضی اور سخاوت تھی۔

حضرت زینب رضی اللہ عنہا اپنے ہاتھ سے کام کیا کرتی تھیں ۔اس سے جو آمدنی ہوتی تھی اسے اللّٰہ کی راہ میں خرچ کر دیا کرتی تھیں ۔
نیز فرماتی ہیں کہ میں نے کوئی عورت زینب رضی اللہ عنہا سے بڑھ کر زیادہ دیندار ، پرہیزگار ، راست گفتار ،فیاض ، سخی ، مخیر اور اللّٰہ تعالیٰ کی تقرب جوئی میں زیادہ سر گرم نہیں دیکھی۔ فقط مزاج میں قدرےِ تیزی تھی ، جس پر اسے بہت جلد ندامت بھی ہو جاتی تھی ۔

ازواجِ مطہرات کے دو گروپ تھے۔ ایک میں حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا، حضرت سودہ رضی اللہ عنہا اور حضرت صفیہ رضی اللہ عنہا تھیں اور دوسرے میں حضرت زینب رضی اللہ عنہا اور دوسری بیویاں تھیں۔ آپﷺ کا روزانہ یہ معمول تھا کہ نمازِ عصر کے بعد تمام بیویوں کے پاس جاتے ، تھوڑی دیر بیٹھتے ، حال واحوال پوچھتے ، عدل و انصاف کے تقاضے ملحوظ خاطر رکھتے ہوئے ہر ایک کے پاس ایک جیسا وقت گزارتے۔ لیکن ایک مرتبہ چند روز حضرت زینب رضی اللہ عنہا کے گھر قدرے زیادہ وقت گزارا جو دوسری ازواجِ مطہرات کو ناگوار گزرا۔ حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا نے ادب و احترام سے دریافت کیا تو معلوم ہوا کہ کہ حضرت زینب رضی اللہ عنہا کے گھر کسی عزیز نے شہد بھیجا ہے چونکہ شہد رسول اللہﷺ کی مرغوب غذا تھی، اسے نوش کرنے میں قدرے دیر لگ جاتی۔ حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا ، حضرت حفصہ رضی اللہ عنہا اور حضرت سودہ رضی اللہ عنہا نے باہمی مشورے سے طے کیا کہ جب رسولِ اقدس ﷺہم میں سے کسی کے پاس آئیں تو دریافت کریں یا رسول اللّٰہ ﷺآپ کے دہن مبارک سے خوشبو کی بجائے کچھ بو سے محسوس ہو رہی ہے ۔ جب ایک جیسی بات یکے بعد دیگرے تین بیویوں سے سنی تو آپ نے فرمایا میں نے تو شہد کے علاوہ تو کچھ کھایا پیا نہیں ۔ چونکہ آپ بہت زیادہ نفاست پسند تھے لہٰذا شہد سے کراہت پیدا ہو گئی اور آئندہ کے لیے شہد نہ پینے کا اعلان کر دیا ۔ ازواجِ مطہرات کی جانب سے یہ اسکیم آپ کی عظمت ،محبت اور قدرو منزلت کی بنا پر تھی۔ ہر بیوی کی یہ خواہش تھی کہ حضور ﷺ اس کے ہاں قدم رنجہ فرمائیں ۔ تاخیر سے آمد ان کے لیے نا قابلِ برداشت تھی لیکن جب آپ نے ایک حلال چیز کو اپنے لیے حرام قرار دے دیا تو اللّٰہ تعالٰی نے فوراً یہ حکم نازل کیا:
القرآن – سورۃ التحريم
آیت نمبر 1

يٰۤاَيُّهَا النَّبِىُّ لِمَ تُحَرِّمُ مَاۤ اَحَلَّ اللّٰهُ لَـكَ‌ۚ تَبۡتَغِىۡ مَرۡضَاتَ اَزۡوَاجِكَ‌ؕ وَاللّٰهُ غَفُوۡرٌ رَّحِيۡمٌ ۞

ترجمہ:
اے نبی ! تو کیوں حرام کرتا ہے جو اللہ نے تیرے لیے حلال کیا ہے ؟ تو اپنی بیویوں کی خوشی چاہتا ہے، اور اللہ بہت بخشنے والا، نہایت رحم والا ہے۔

 

حضرت زینب رضی اللہ عنہا کی دلی خواہش بھی یہی تھی کہ حضور ﷺ قدرے زیادہ دیر ان کے گھر تشریف فرما رہیں ۔ کیونکہ سید المرسلین ، شاہِ امم ، سلطانِ مدینہ ﷺ کائنات کی وہ عظیم ہستی ہیں جن کی ہر ادا شرعی قانون کی بنیاد بن جاتی ہے ۔ اس لئے اللّٰہ تعالٰی نے مندرجہ بالا آیت وحی کے ذریعے فوراً نازل فرما دی ورنہ دل تو تمام ازواجِ مطہرات کے صاف شفاف تھے۔ ان پاکیزہ خواتین کی عظمت کا تذکرہ تو اللّٰہ سبحانہ وتعالیٰ نے قرآن حکیم میں کیا ہے ۔ جیسا کہ فرمانِ باری تعالٰی ہے
القرآن – سورۃ نمبر 33 الأحزاب
آیت نمبر 32

يٰنِسَآءَ النَّبِىِّ لَسۡتُنَّ كَاَحَدٍ مِّنَ النِّسَآءِ
“اے نبی کی بیویو! تم عام عورتوں جیسی نہیں ہو۔ “
           



ام المومنین حضرت زینب رضی اللہ عنہا نے اپنے گھر کے ایک کونے میں چھوٹی سی ایک مسجد بنا رکھی تھی جس میں وہ اکثر اوقات عبادت میں مصروف رہتیں۔ گاہے بگاہے رسولِ اقدس ﷺبھی اس مسجد میں نماز ادا کیا کرتے تھے ۔ حضرت زینب رضی اللہ عنہا کا معمول تھا کہ کوئی بھی کام کرنے سے پہلے استخارہ ضرور کیا کرتی تھیں ۔
حضرت زینب رضی اللہ عنہا وہ خوش نصیب خاتون ہیں جنہیں رسولِ اقدس ﷺنے جنت کی بشارت اس اندز میں دی کہ ایک روز تمام ازواجِ مطہرات کو مخاطب کرتے ہوئے فرمایا (( أَ سْرَعُکُنَّ لِحَاقًا بِیْ اَطْوَلُکُنَّ یَدًا))
“تم میں سب سے پہلے مجھے وہ ملے گی جس کے ہاتھ سب سے زیادہ لمبے ہوں گے “
اس پیغام میں جنت کی بشارت دی گئی ۔ حضرت زینب رضی اللہ عنہا زینب رضی اللہ عنہا کا قد دوسری ازواجِ مطہرات کی نسبت چھوٹا تھا اور ہاتھ بھی ان کی نسبت چھوٹے تھے لیکن جب سب بیویوں سے پہلے ان کا انتقال ہوا تو پتا چلا کہ لمبے ہاتھوں سے مراد فیاضی اور سخاوت ہے جو حضرت زینب رضی اللہ عنہا میں دوسروں کی نسبت زیادہ تھی۔
امّ المؤمنین حضرت زینب رضی اللہ عنہا کا انتقال حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ کے دورِ خلافت میں

ہوا۔ اس وقت ان کی عمر 53 سال تھی۔ جب انہوں نے موت کے آثار دیکھے تو لواحقین سے کہا میرا آخری وقت آ چکا ہے۔ میں نے اپنا کفن خود تیار کر رکھا ہے ۔ اگر حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ میرے لیے کفن بھیجیں تو ان دونوں میں سے ایک کو اللّٰہ کی راہ میں دے دیں۔ ان کی میت پر پردہ تانا گیا ۔ حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ نے نماز جنازہ پڑھائی ۔ مدینے کے قبرستان جنت البقیع میں دفن کیا گیا ۔ میت کو لحد میں اتارنے کے لیے اسامہ بن زید رضی اللہ عنہ ،محمد بن عبداللہ بن جحش رضی اللہ عنہ ، عبداللہ بن ابی احمد بن جحش رضی اللہ عنہ ، محمد بن طلحہ بن عبداللہ رضی اللہ عنہ قبر میں اترے اور یہ تمام آپ کے قریبی رشتے دار تھے۔ اس طرح خاتونِ جنت کو سپرد خاک کر دیا گیا ۔
اللّٰہ ان سے راضی اور وہ اپنے اللّٰہ سے راضی ۔



ام المومنین حضرت زینب بنت جحش رضی اللہ عنہا کے مفصل حالاتِ زندگی معلوم کرنے کے لیے درج ذیل کتابوں کا مطالعہ کریں ۔


1۔طبقات ابن سعد۔ 8 /101– 110
2۔ مسند امام احمد۔ 324/6
 3۔ مستدرک حاکم۔ 4 / 23-25
4۔ المعرفة والتاریخ۔ 722/2
5۔ اسد الغابۃ۔ 6 /125  -127
6۔ الاستیعاب۔ 4 / 306- 310
7۔ الاصابۃ۔ 4 /307-308
8۔ العبر 5/1
9۔ مجمع الزوائد۔ 246/9
10۔تھذیب التھذیب۔ 420/12
11۔شزرات الذھب۔ 171/1

12۔ کنز العمال۔ 700/13
13۔ صفۃ الصفوۃ۔ 46/2
14۔ تلقیح فھوم الاثٔر۔ 22
15 ۔ سیر اعلام النبلاء 218_211/2
16۔تفسیر قرطبی۔ 187/14
17۔ عیون الاثٔر 382/2
18۔ المحبر۔ 85
19۔ زاد المعاد۔ 108/1
20۔ حلیۃ الاولیاء۔ 51/2
21۔ تھذیب الاسماء واللغات۔ 344/2
22۔ السیرۃ الحلیۃ 411/3
23۔ فتوح البلدان۔ 555
24۔ دلائل النبوۃ۔ 460/3
25۔ تاریخ السلام للذھبی۔ 214-211

حواله:
“صحا بيات مبشرات”
محمود احمد غضنفر

Table of Contents