Sections
< All Topics
Print

03. AURAT KA APNE GHULAM SE PARDA

AURAT KA APNE GHULAM SE PARDA

 

Isi buniyad par lafz (اَوْ نِسَآئِھِنَّ اَوْمَامَلَکَتْ اَیْمَانُھُنَّ) “Aik musalman aurat dusri musalmaan auraton aur apne zar khareed ghulamon ke samne bhi zeenat ko zahir karsakti hai.” Is se yeh baat sabit hoti hai keh aurat apne ghulam ke saamne apni batini zeenat zahir karsakti hai- Is baare mein ulema ke do qawl hain:

 

  1.  ما ملکت ایمانهن

Se murad laundiyan ya ahl d kitaab laundiyan hain- Sayed bin al Musaib (رحمه الله) ka yehi qawl hai aur Imaam Ahmad bin hambal (رحمه الله) wagherah ne bhi isi ko rajeh qarar diya hai.

  1.  Is se murad mard ghulam hain- Yeh Abdullah bin Abbas (رضى اللہ تعالى عنہما) wagherah ka qawl hai aur yehi Imaam Shafa’i (رحمه الله) wagherah ka mazhab hai, Imaam Ahmad (رحمه الله) se aik dusri riwayat bhi yehi manqool hai- is tafseer ka taqaza hai keh ghulam apni maalika ko dekh sakta hai.
Is baare mein mutadid ahadees hain maslan:

 

Hazrat Anas bin Malik (رضي الله عنه) riwayat karte hain keh: “Allah ke Rasool (ﷺ) Hazrat Fatima (رضی اللہ عنہا) ke paas aik ghulam lekar ae, jise Hazrat Fatima (رضی اللہ عنہا) ki khidmat ke liye habba kiya tha – is waqt hazrat Fatima (رضی اللہ عنہا) ke jism par aik chadar thi jab us se apne sar ko chhupati tou pair khul jaate aur pairon ko chhupaati tou sar nanga reh jaata- Jab Aap(ﷺ) ne unki ye pareshaani dekhi tou farmaaya: ‘koi harj nahi- Tumhara baap hai aur yeh tumhara ghulam hai’.”

[Sunnan Abi Dawood: 4106]

Jis se is baat ka jawaz milta hai keh aurat ka ghulam apni maalika ko dekh sakta hai) aur yeh ijazat sirf zarurat ke paish e nazar hai- kyunkeh aurat ko gawah, mazdoor aur shadi ka paigham dene waale se kaheen ziyada apne ghulam se ham kalam hone ki zarurat parti hai- lehaza jab un ashkhas ka aurat ko ba waqte zarurat dekhna jayez hai, tou ghulam ke liye dekhna ba darja-e-oolaa jayez hoga.

[Ba waqt e zarurat aurat apne ghulam ko mukhatib karsakti hai kyunkeh gawah ba waqt e gawahi aurat ka chehra dekh sakta hai, mangni karne waala bhi apni hone waali biwi ko dekh sakta hai, lehaza jab aisi kabhi kabhar paish aane waali zaruraton ke paish nazar aurat ko shari’at ne yeh ijazat di hai keh wo apne chehre ko kholsakti hai tou hama waqt darpaish zarurat ke liye ba darja e oolaa chehra kholne ki ijazat honi chahye]

Lekin is daleel se is baat ka jawaz kisi taur par durust nahi keh ghulam apni maalika ka mahram bhi ban sakta hai, jis ke saath woh safar wagherah karsakti hai jis tarah burhe ajnabi mard se parda tou zaruri nahi lekin woh aurat ke liye mahram ki haisiyat bhi nahi rakhte keh unke saath safar bhi jayez ho.

Lehaza yeh baat kisi tarah durust nahi keh jiske liye aurat ko dekhna jayez ho , us ke saath safar aur usse khilwat aur tanhai bhi jayez hai, balkeh aurat ka ghulam sirf ba waqt e zarurat apni maalika ko dekh sakta hai- Albattah na tou uske saath safar karsakte hai aur na khilwat aur tanhai mein us se mil sakte hai kyunkeh ghulam ko Rasool Allah(ﷺ) ke darj e zail farmaan ke tahat mahram shumar nahi kiya jasakta:

 

(«لا تسافر المرأة إلا مع زوج أو ذي محرم) 

“Koi Aurat baghair mahram ya shohar ke safar na kare.”

[Sahih Al Bukhari: 1197]

 

Ghulam agar azad hojae tou uski maalika us se nikah karsakti hai jis tarah keh behen ka shohar aik behen ko talaaq de de tou dusri behen se nikah karsakta hai aur mahram tou woh hota hai jispar woh aurat hamesha hamesha ke liye haram ho.

Isliye Hazrat Abdullah bin Umar (رضى اللہ تعالى عنہما) ka farmaan hai keh aurat ka apne ghulam ke saath safar karna halakat hai.

Ayat-e-mazkurah mein izhaar zeenat ki ijazat sirf mahram rishtedaaron aur baaz ghair mahram donon ke liye hai lekin hadeeth mein safar ki ijazat sirf mahram rishtedaaron aur shohar ke saath khaas hai, 

Baari Ta’aala ka irshad hai: 

اَوۡ نِسَآئِہِنَّ اَوۡ مَا مَلَکَتۡ اَیۡمَانُہُنَّ

“Yani aurat apni auraton ya ghulamon ke saamne apni zeenat ka izhaar karsakti hai.”

[Surah Noor: 24:31]

 

Nez farmaaya:

غَیۡرِ اُولِی الۡاِرۡبَۃِ

“Yani musalmaan auraten apni zeenat jinsi khwahish na rakhne waale mardon ke saamne bhi zahir karsakti hain.”

[Surah Noor: 24:31]

 

Lekin apne ghulamon, musalmaan auraton aur jinsi khwahish na rakhne waale mardon ke hamrah safar nahi karsakti.

 

REFERENCE:
BOOK: MASAIYL-E-SATAR-O-HIJAAB
TALEEF: SHAYKH UL ISLAM IBN TAYMIYYAH(رحمه الله)
URDU TARJUMA BY: SHAYKH MAQSOOD AL HASAN FAIZI HAFIZULLAH

 

 

عورت کا اپنے غلام سے پردہ:

اسی بنیاد پر لفظ (اَوْ نِسَآئِھِنَّ اَوْمَامَلَکَتْ اَیْمَانُھُنَّ)ایک مسلمان عورت دوسری مسلمان عورتوں اور اپنے زرخرید غلاموں کے سامنے بھی زینت کو ظاہر کر سکتی ہے۔”اس سے یہ بات ثابت ہوتی ہے کہ عورت اپنے غلام کے سامنے اپنی باطنی زینت ظاہر کرسکتی ہے ۔ اس بارے میں علما کے دوقول ہیں :

(1) ( ما ملکت ایمانهن ) سے مرادلونڈیاں یا اہل کتاب لونڈیاں ہیں ۔سعید بن المسیب رحمہ اللہ کا یہی قول ہے اور امام احمد بن حنبل رحمہ اللہ وغیرہ نے بھی اس کو راجح قرار دیا ہے۔

(2) اس سے مرادمر د غلام ہیں ۔ یہ عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہ وغیرہ کا قول ہے اور یہی امام شافعی رحمۃ اللہ وغیرہ کا مذہب ہے، امام احمدرحمتہ اللہ سے ایک دوسری روایات بھی یہی منقول ہے ۔ اس تفسیر کا تقاضا ہے کہ غلام اپنی مالکہ کو دیکھ سکتا ہے۔

اس بارے میں متعدد حدیثیں بھی موجود ہیں :
مثلا حضرت انس بن مالک ﷺ کی درج ذیل روایت که «أن النبي أتى فاطمة بعبد كان قد وهبه لها،قال: وعلى فاطمة ثوب إذا قنعت به رأسها لم يبلغ رجليها و إذا غطت رجليها لم يبلغ رأسها فلما رأى النبي ﷺ ما تلقى قال: إنه ليس عليك بأس. إنما هو أبوك و غلامك ‘‘ ’’اللہ کے رسول ﷺ حضرت فاطمہ ﷺ کے پاس ایک غلام لے کر آئے ، جسے حضرت فاطمہ کی خدمت کے لیے ہبہ کیا تھا۔ اس وقت حضرت فاطمہ رضی اللہ عنہ کے جسم پر ایک چادر تھی جب اس سے اپنے سر کو چھپا تیں تو پیر کھل جاتے اور پیروں کو چھپا تیں تو آپ کا سر ننگارہ جا تا ۔ جب آپ ﷺ نے ان کی یہ پریشانی دیکھی تو فرمایا کہ کوئی حرج نہیں ۔ تمہارا باپ ہے اور یہ تمہارا غلام ہے۔ سنن أبي داود: كتاب اللباس،باب العبد ينظر الى شعر مولاته: ٤١٠٦

بھی موجود ہیں (جس سے اس بات کا جواز ملتا ہے کہ عورت کا غلام اپنی مالکہ کو دیکھ سکتا ہے اور یہ اجازت صرف ضرورت کے پیش نظر ہے ۔ کیونکہ عورت کو گواہ ،مزدور اور شادی کا پیغام دینے والے سے کہیں زیادہ اپنے غلام سے ہم کلام ہونے کی ضرورت پڑتی ہے ۔لہذا جب ان اشخاص کا عورت کو بوقت ضرورت دیکھنا جائز ہے تو غلام کے لیے دیکھنا بدرجہ اولی جائز ہو گا۔(1)

(1)بوقت ضرورت عورت غلام کو مخاطب کر سکتی ہے کیونکہ گواہ بوقت گواہی عورت کا چہرہ دیکھ سکتا ہے منگنی کے وقت منگنی کرنے والا بھی اپنی ہونے والی بیوی کو دیکھ سکتا ہے لہذا جب ایسی بھی کبھار پیش آنے والی ضرورتوں کے پیش نظر عورت کو شریعت نے یہ اجازت دی ہے کہ وہ اپنے چہرے کو کھول سکتی ہے تو ہمہ وقت در پیش ضرورت کے لیے بدر جدادلی پر رکھولنے کی اجازت ہونی چاہیے۔

لیکن اس وکیل سے اس بات کا جواز کسی طور پر درست نہیں کہ غلام اپنی مالکہ کا محرم بھی بن سکتا ہے جس کے ساتھ وہ وسفر وغیرہ کر سکتی ہے جس طرح بوڑھے اجنبی مرد سے پردہ تو ضروری نہیں لیکن وہ عورت کے لیے محرم کی حیثیت بھی نہیں رکھتے کہ ان کے ساتھ سفر بھی جائز ہو۔

لہذا یہ بات کسی طرح درست نہیں کہ جس کے لیے عورت کو دیکھنا جائز ہو اس کے ساتھ سفر اور اس سے خلوت و تنہائی بھی جائز ہے بلکہ عورت کا غلام صرف بوقت ضرورت اپنی مالکہ کو دیکھ سکتا ہے ۔ البتہ نہ تو اس کے ساتھ سفر کر سکتا ہے اور نہ خلوت و تنہائی میں اس سے مل ہی سکتا ہے کیونکہ غلام کو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے درج ذیل فرمان کے تحت محرم شمار نہیں کیا جاسکتا:

(«لا تسافر المرأة إلا مع زوج أو ذي محرم) 

کوئی عورت بغیر محرم یا شوہر کے سفر نہ کرے ۔”

صحيح البخاری: کتاب فضل الصلاة في مسجد مكة والمدينة، باب مسجد بيت
المقدس نحوه ۱۱۹۷؛ صحیح مسلم کتاب الحج، باب سفر المرأة مع محرم إلى
حج أو غيره ۸۲۷

غلام اگر آزاد ہو جاۓ تو اس کی مالکہ اس سے نکاح کر سکتی ہے جس طرح کہ بہن کا شوہر ایک بہن کو طلاق دے دے تو دوسری بہن سے نکاح کر سکتا ہے اور محرم تو وہ ہوتا ہے جس پر وہ عورت ہمیشہ ہمیشہ کے لے حرام ہو۔

آیت مذکورہ میں اظہار زینت کی اجازت صرف محرم رشتہ داروں اور بعض غیر محرم دونوں کے لیے ہے لیکن حدیث میں سفر کی اجازت صرف محرم رشتہ داروں اور شوہر کے ساتھ خاص ہے ، باری تعالی کا ارشاد ہے:

“نِسَآئِہِنَّ اَوۡ مَا مَلَکَتۡ اَیۡمَانُہُنَّ”

” یعنی عورت اپنی عورتوں یا غلاموں کے سامنے اپنی زینت کا اظہار کر سکتی ہے۔”

[٢٤/النور: ۳۱]

نیز فرمایا:

“غير أولي الإربة “

“یعنی مسلمان عورتیں اپنی زینت جنسی خواہش ندر کھنے والے مردوں کےسامنے بھی ظاہر کرسکتی ہیں ۔”

[٢٤/النور: ۳۱]

لیکن اپنے غلا م ،مسلمان عورتوں اور جنسی خواہش نہ رکھنے والے مردوں کے ہمراہ سفر نہیں کرسکتیں ۔

Table of Contents