Sections
< All Topics
Print

06C. ISTEHADHA KE AHKAAM

ISTEHADHA KE AHKAAM

 

Bahes pehle guzarchuki hai isse hamne pehchan liya hai keh kab khoon haiz hota hai aur kab istehada hota hai aur jab haiz ka khoon hoga tou uske liye haiz ke ahkaam sabit honge aur jab istehadha ka khoon hoga tou uske liye istehadha ke ahkaam sabit honge haiz ke ahem ahkaam ka tazkerah peeche ho chuka hai aur baaqi raha istehadha ke ahkaam tou istehadha ke ahkaam “Tuhur” ke ahkaam ke manind hain- Mustehadha aurat aur taahira aurat ke darmiyaan maa sivae mandarja zaiyl ahkaam ke koi farq nahi hai.

 

Pehla hukum: Har namaz keliye wudu karna.

 

      Mustehadha ke liye har namaz ke waqt wudu karna wajib hai jaise Nabi kareem(ﷺ) ne Sayeda fatima binte abi hubaish(رضی اللہ عنہا) se farmaaya tha:

(Phir har namaz ke liye wudu karo)

     Isse Imaam bukhari(رحمه الله) ne baab “Ghusl ad dam(Khoon) mein riwayat kiya hai, iska matlab ye hai keh aurat aisi namaz jiska waqt muqarrar hai jab uska waqt hoga tou us waqt hi wudu karegi- aur jis namaz ka waqt muqarrar nahi hai tou jab wo namaz parhne ka iradah karegi tou wo wudu karegi.

[Yani jab farzi namaz ka waqt hoga tou us waqt hi wudu karegi lekin jab nafli namaz parhne ka irada karegi tou wudu karke parhlegi]

 

DUSRA HUKUM: KHOON KA NISHAAN DHONA

 

    Aurat jab wudu ka iradah karegi tou wo khoon ke asraat dhoegi aur sharmgaah par cotton ki patti bandhegi taake khoon ruk jae jaise keh Nabi Kareem(ﷺ) Sayeda Hamna binte hubaish(رضی اللہ عنہا) se farmaaya tha:

[Musnad Ahmad: (6/439); Abu Dawood: (287)
Tirmidhi: (128); Ibn majah: (628) Hadees sahih hai tafseel keliye Al Arwaa(202/1) mulaahiza karen.

 

(Main apko roee rakhne ka tareeqa batata hoon, usse khoon jaata rahega”

  Unho ne kaha wo tou usse bhi ziyada hai- tou Aap(ﷺ) farmaay “kapra rakhlo”

Tou unho ne arz kiya : ye isse kahin ziyada hai tou Aap(ﷺ) farmaaye: “Tou Aap langot kaslo”

    Langot bandhne ke ba’ad jo bhi uski sharmgaah se khoon jaari hoga wo muzir nahi hoga jis tarha Aap(ﷺ) ne fatima binte hubaish(رضی اللہ عنہا) se farmaaya tha:

   “Apne haiz ke ayyaam mein namaz se ijtenab karo phir ghusl karo aur har namaz ke liye wudu karo phir namaz parho agarchay khoon ke qatre chataee par hi kyun na gire.”

[Musnad Ahmad: 2626-204-42/6); Ibn majah: (624) (1/345); Abi Dawood: (2/100) raqm (315)]

 

 TEESRA HUKUM: JIMA’

             Jab admi ko Tark-e-jima’ se zina ka dar ho tou is jima’ ke jawaz ke baare mein ulema akraam ne ikhtilaaf kiya hai- Sahih baat ye hai keh jima’ karna mutlaq taur par jayez hai kyunkeh Aap(ﷺ) ke zamane mein bohat saari khawateen taqreeban dus ya usse ziyada istehada ke marz mein mubtelah hoey magar Allah aur Unke Rasool(ﷺ) ne unke sath jima’ karne se ma’ana nahi kiya.

 

Allah Ta’aala ka farmaan hai:

ۙ فَاعۡتَزِلُوا النِّسَآءَ فِی الۡمَحِیۡضِ

“Halat-e-haiz mein aurat se alag raho.”

[Surah Baqarah:02: 222]

 

    Is baat par daleel hai keh Ayyaam-e-haiz ke siva khawateen se alag hona wajib nahi hai- aur dusri baat jab istehada ki halat mein namaz ada karna jayez hai tou jima’ isse bhi ziyada asaan hai aur mustehadha ke jima’ ka qayas haiza ke jima’ par karna sahih nahi hai kyunkeh (Mustehadha aur haiza) barabar nahi hain, hattah keh jo hurmat ke qayel hain, unke yahan bhi ye bura nahi hain aur ye qiyas Ma’a al faariq hai jo keh sahih nahi hai.

 

[Hurmat ke qayel se murad jo kehete hain halat-e-istehadha mein jima’ haram hai unke nazdik bhi istehadha aur haiza mein farq hai aur ye dono masawi nahi hain]

[Qiyas al faariq se murad ye hai keh Muqees alaih(haiza) jispar qayas kiya jaaraha hai uska mafhoom kuch hai aur maqees (mustehadha) jisko qiyas kiya jaraha hai uska mafhoom kuch aur hai aur unke darmiyaan illat bhi muttahida nahi hai lehaza dono mein farq hai, isliye mustehadha ke jima’ ka qiyas haiza ke jima’ ke sath karna durust nahi hai]
 
REFERENCE:
BOOK: “NISWAANI TIBI KHOON KAY AHEKAAM”
TALEEF: SHAIKH MUHAMMAD BIN SALEH UTHAYMEEN RAHIMAHULLAH
URDU TARJUMA BY: HAFIZ RIYAZ AHMED HAFIDHAHULLAH

Rulings About The Mustahadah

 

Earlier it was explained when the blood is considered a menses (Haid) blood or Istihadah blood. The rulings applicable for menses and Istihadah depend upon the type of the flowing blood. Rulings about menses were discussed earlier. The rulings about Istihadah are the same as those applicable to a clean woman except for the following:

1) It is obligatory upon the Mustahadah to perform Ablution for each prayer, because of the order of the Prophet (ﷺ) to Fatimah bint Abi Hubaish: “Then make Ablution for every Salat”[1], meaning that she should make ablution only when the prescribed time of Salat begins and not before it.

[1] Saheeh Al-Bukhari (Arabic-English) V.1, P. 149, Hadeeth # 228.

 

(2) Prior to ablution she should wash the traces of blood and covers her private part with a pad of cotton to absorb the blood. The Prophet (ﷺ) told Humnah bint Jahsh: “I recommend that you should use cotton, for it absorbs blood.” She said: “it is too copious for that”. He (ﷺ) said; “then take a cloth.” She replied, “it is too copious for that.” He said: “then Talaj’jami” i.e., to prepare a holding around the waist that will maintain the cotton pad tightly attached to her private part. Nothing that comes out should then harm her because the Prophet (ﷺ) told Fatimah bint Hubaish: “Refrain from Salat during the days of your normal menses then wash and make ablution for every Salat and then pray “even if blood drops onto the mat!” (Related by Imam Ahmad and Ibn Majah).

(3) Sexual Intercourse: Scholars disagreed about its permissibility. The correct opinion is that it is permissible because many women (ten or more) had their Istihadah at the time of the Prophet (ﷺ). Allah and His Messenger did not prevent spouses from engaging in sexual intercourse. In fact, the saying of Allah (SW) :

 

{ فاعتَزِلُوا النِّساء في المَحيض } الأية (البقرة، 222)


“Keep away from women during menses”


(Qur’an 2: 222),

 

is an evidence that it is only obligatory to keep away from sexual intercourse with women only during menses. And since offering prayers is allowed while in Istihadah, then there should be no difficulty in having sexual intercourse. To prevent sexual intercourse based upon Qiyass (analogy) with the state of Haid is incorrect, because the two situations are not the same. Deduction of rulings by Qiyass is invalid whenever there are existing variations.

 

REFERENCE:
BOOK: NATURAL BLOOD OF WOMEN
By Shayekh Muhammad bin Salih Al-Utheimeen
Second Edition / Translated & Researched by Saleh-As .Saleh S .Dr

 

استحاضہ کے احکام

 

جو بحث پہلے گزر چکی ہے اس سے ہم نے پہچان لیا ہے کہ کب خون حیض ہوتا ہے اور کب استحاضہ ہوتا ہے جب حیض کا خون ہوگا تو اسکے لیے حیض کے احکام ثابت ہونگے اور جب استحاضہ کا خون ہوگا تو اس کیلئے استحاضہ کے احکام ثابت ہونگے حیض کے اہم احکام کا تذکرہ پیچھے ہو چکا ہے اور باقی رہے استحاضہ کے احکام “طهر”  کے احکام کے مانند  ہیں_ مستحاضہ عورت اور طاہرہ عورت کے درمیان ما سوائے مندرجہ ذیل احکام کے کوئی فرق نہیں ہے.

 

پہلا حکم: ہر نماز کیلئے وضوکرنا

 

 مستحاضہ کیلئے ہر نماز کے وقت وضو کرنا واجب ہے جیسا کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے سیّدہ فاطمہ بنتِ حبیش سے فرمایا تھا:

“ثم  توضنى لكل صلاة”

(پھر ہر نماز کیلئے وضو کرو)

[ ديكهو صحيح البخاري كتاب الوضوء باب غسل الدم(٣٣٨)(١/٣٩٦)]

 

اسے امام بُخاری نے ” باب غسل الدم”  میں روایت کیا ہےاس کا  مطلب یہ ہے کہ عورت ایسی نماز جس کا وقت مقرر ہے جب اس کا وقت ہوگا تو اس وقت ہی وضو کریگی اور جس نماز کا وقت مقرر نہیں ہے تو جب وہ نماز پڑھنے کا ارادہ کریگی وہ وضو کریگی .

(یعنی جب فرض نماز کا وقت ہوگا تو اسی وقت وضو کریگی لیکن جب نفل نماز پڑھنے کا ارادہ کرے تو وضو کر کے پڑھ لے گی)
 
 

  دوسرا حکم:  خون کے نشان دھونا

 

 عورت جب وضو کریگی تو وہ خون کے اثرات دھوئیگی اور شرمگاہ پر کاٹن کی پٹی باندھے گی تاکہ خون رک جائے جیسا کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم سیّدہ حمنہ بنتِ حبیش سے فرمایا تھا:

“انعت لك الكرسسف فانه يذهب الدم “

 

[ دیکھو مسند احمد (۶/۴۳۹)ابو داود (٢٨٧)ترمزىى (١٢٨)ابن ماجة (٦٢٨) صحيح تفصيل  کے لئے الارواء (١/٢٠٢) ملاحظہ کریں}

 

{ میں آپکو روئ رکھنے کا طریقہ  بتاتا ہوں  اس سے خون جاتا رہیگا}

اُنہونے کہا ہو وہ اس سے بھی زیادہ ہے.

تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : “کپڑا رکھ لو “

تو اُنہوں نے عرض کیا  یہ اس سے کہیں زیادہ ہے تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا تو آپ لنگوٹ کس لو؛(الحدیث)

لنگوٹ باندھنے کے بعد جو بھی اس کی شرمگاہ سے خون جاری رہیگا وہ مضر نہیں ہوگا جس طرح آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فاطمہ بنت حبیش سے فرمایا تھا:

“اپنے حیض کے ایام میں نماز سے اجتناب کرو پھر غسل کرو اور ہر نماز کیلئے وضو کرو پھر نماز پڑھو اگرچہ خون کے قطرے چٹائی پر ہی کیوں نہ گرے.” 

   [دیکھیں مسند احمد(٦/٤٢-٢٠٤-٦٢٦٢) ابن ماجہ رقم(٦٢٤)(١/٣٤٥) آخری جملہ(و ان قطر الدم على االحصير )    کے علاوہ باقی حدیث صحیح ہے  تفصیل کیلئے دیکھے نصب الرایہ(۱/۲۰۰۱) ارواء الغلیل (١/١٤٦)(١٠٩) اور مفصّل  سنن ابی داود(۱/۱۰۰)رقم (۳۱۵)]

 

          تیسرا حکم جماع

 

جب آدمی کو ترک جماع سے زنا کا خوفِ نہ ہو  تو اس جماع کے جواز میں علماء نے اختلاف کیا ہے  صحیح بات یہ ہےکہ جماع کرنا مطلق طور پر جائز ہے کیونکہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانے میں بہت ساری خواتین تقریباً دس یا اس سے زیادہ استحاضہ کی مرض میں مبتلا ہوئی مگر اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے ان کے ساتھ جماع کرنے سے منع نہیں کیا .

اللہ تعالیٰ کا فرمان ہے:

(فَاعُتَزِلُوُالنِسَاءَفِىْ الْمَحِىْض)

“حالتِ حیض میں عورتوں سے الگ رہو ؛

[دیکھو سورۃ البقر ہ آیت نمبر ۲۲۲]

 

اس بات پر دلیل ہے کے ایّام حیض کے سوا خواتین سے الگ ہونا واجب نہیں ہے اور دوسری بات جب استحاضہ کی حالت میں نماز پڑھنا جائز ہے تو جماع اس سے زیادہ آسان ہے اور مستحاضه کے جماع کا قیاس حائضہ کے جماع  پر کرنا صحیح نہیں ہے کیونکہ ( مستحاضه اور حائضہ) برابر نہیں ہے حتٰی کہ جو حرمت کے قائل ہیں (۲) اُنکے یہاں بھی یے برابر نہیں ہے اور یہ قیاس مع الفارق ہے جو کہ صحیح نہیں ہے (۳)

#۲ حرمت کے قائل سے مراد جو کہتے ہیں حالتِ استحاضہ میں جماع حرام ہے اُنکے نزدیک بھی استحاضہ اور حائضہ میں فرق ہے اور یہ دونوں مساوی نہیں ہیں}
#۳ قیاس مع الفارق سے مراد یہ ہے کہ مقیس علیہ (حائضہ) جس پر قیاس کیا جا رہا ہے جسکا مفہوم کچھ ہے اور مقيس (مستحاضه) جسکو قیاس کیا جا رہا اسکا مفہوم کچھ اور ہے اور  ان کے درمیان علّت بھی متحدہ نہیں ہے  لہٰذا دونوں میں فرق ہے اسلئے مستحاضہ کے جماع کا قیاس حائضہ کے جماع کے ساتھ کرنا درست نہیں ہے}

 

 

حوالہ جات:
کتاب:  “نسوانی طبی خون کے احکام۔”
تالیف:  شیخ محمد بن صالح العثیمین (رحمة الله)۔
اردو ترجمہ:  حافظ ریاض احمد حفظ اللہ۔

 

Table of Contents