Sections
< All Topics
Print

44. JAB AML MEIN RIYAKAARI KI MILAWAT HO:

JAB AML MEIN RIYAKAARI KI MILAWAT HO?

 

Yeh (3) teen ahwaal se khali nahi hosakta: 

 

1. Kaam shuru hi logon ko dikhane ke liye kiya gaya ho.

 

Aisa karna shirk hai aur is se ibadat tabah ho jati hai.

Muhammad Rasool Allah (صلی اللّٰہ علیہ وسلم) ne bayan farmaaya keh:

“Qiyamat ke din Allah Ta’aala Arsh-e-Azeem se utar kar Apne bandon ke paas ae ga taake unka faisla kardiya jae- us waqt har ummat ghutnon ke bal giri hui hogi- Sab se pehle in (3) teen ashkhaas ko  bulaya jaega- Qaari Quran ko, Shaheed fi sabeelillah ko aur maaldaar ko- sabse pehle Qaari Qur’an se sawal hoga keh: ‘Mein ne jo Qur’an Apne Rasool par utara tha kiya tujhe uska ilm nahi sikhaya?’ Qaari kahega keh: ‘haan theek hai’- Allah Ta’aala sawal karega: ‘ilm ke mutabiq aml kiya?’. Qaari jawab dega: ‘Ae Rab kareem mein tamam din aur raat tilawat karta rehta tha’- Allah Ta’aala kahega: ‘tu jhoot bolta hai’- Farishte bhi yehi kahenge: ‘tu jhoot bolta hai’- Allah Ta’aala kahega: ‘tu isliye tilawat karta tha keh log tujhe Qaari kahen, wo duniya mein kaha jachuka’-Maaldar shakhs ko pesh kiya jaega aur sawal hoga, ‘Kiya tumko itni wus’at maal na di gae keh tu kisi ka mohtaj na raha?’. Wo jawab dega: ‘Ae Allah tu bilkul theek aur sahih kehta hai!’. Allah Ta’aala poochhe ga: ‘jo kuch tumko mila uske mutabiq aml kese kiya?’. Banda jawab dega keh: ‘Ae Rabb-e-Kareem! Mein sila rehmi karta raha aur sadaqah deta raha’, Allah Ta’aala farmaae ga: ‘tum jhoot kehte ho’- farishte bhi kahenge keh: ‘tu jhoot bolta hai’- Allah Ta’aala kahega: ‘Tumhara irada ye tha keh tumhen sakhi kaha jae, chunacheh ye duniya mein kaha jachuka’- ab is shakhs ko pesh kiya jae ga jo Allah ki raah mein shaheed hogaya- Allah Kareem poochhe ga:  ‘tum kyun qatl hue?’. Banda jawab dega: ‘Ae Rabb-e-kareem! Tu ne jihaad ka hukm diya aur main Tere raaste mein deen ke dushmanon se larkar shaheed hogaya’- Allah Ta’aala farmaae ga: ‘tu jhoot bolta hai’- farishte bhi kahen ge: ‘tu jhoot bolta hai’- Allah Ta’aala farmaae ga: ‘tera irada yeh tha keh log tujhe bahadur kahen aur wo kaha jachuka’.”

Ye waqiah bayan farma kar Rasool Allah (صلی اللّٰہ علیہ وسلم) ne mere ghutne par haath maar kar farmaaya:

“Ae Abu Hurairah (رضی اللّٰہ عنہ) yehi wo teen qism ke afraad hai jinko qiyamat ke din sabse pehle jahannum ki aag jalae gi.”

 

2. Yeh keh niyyat tou Allah Ta’aala ke liye thi, ba’ad mein riyakaari peda hogae.

 

Iski (2) do halaten hain:

 

(i) Insaan apne nafs ke saath mujahedah kare, aur uspar tawajjah na den; is surat mein ye riyakaari kuch nuqsaan nahi degi.

(ii) Yeh keh wo is dikhlaway par mutmaeen ho aur use khatm karne ki koshish na kare. 

Is surat mein ibadat ka hukm: 

 

A) Agar Ibadat ka akhir iske awwal par mabni nahi hai tou awwal sahih hai, aur akhir ka wo hissa jis mein riya dakhil hua wo batil hai.

 

Iski misaal: Aik insaan ne ikhlaas ke sath 100 riyal sadaqah kiya, phir use kisi admi ne dekh liya tou usne aur 100 riyal sadaqah kardiya, tou is surat mein pehla sadaqah theek hai dusra sadaqah batil hai.

 

B) Agar ibadat ka akhir iske awwal par mabni hai, tou tamam ibadat tabah hojae gi.

 

Iski misaal: Koi insaan Allah Ta’aala ke liye (2) rakat namaz parhne ke liye khara hua – phir dusri rakat mein ispar riyakaari chha gae; magar usne us waswase ko khatm karne ki koshish nahi ki; aur us riyakaari mein hi laga raha; tou is surat mein iski tamam namaz tabah ho jati hai.

 

3. Ibadat poori hone ke ba’ad riyakaari peda hogae- is se kuch bhi nuqsaan nahi hoga.

 

“Jo koi logon se apni tareef sune, aur uspar khush hua, tou us par koi harj waali baat nahi, balkeh: “ye wo basharat hai jo use jaldi hi milgae.”

 

[Muslim]

 

Jo koi logon ki wajah se koi aml tark karden: logon ki wajah se kisi aml ko tark karna bhi riyakaari ke zumrah mein aata hai.

 

RIYA AUR SAM’AH [Sunaane] MEIN FARQ: 

 

Riya ka ta’alluq hawas e khamsah mein se ankh ke saath hota hai-

[Yani koi aml isliye kiya jaata hai taake log use dekhen aur uski tareef karen].

 

SAM’AH ka ta’alluq hawas e khamsah mein se kaanon ke saath hota hai,

[yani koi aml isliye kiya jaata hai keh log uske muta’alliq sunen tou uski tareef karen].

 

RIYAKAARI KA ILAJ: 

 

1. Ikhlaas ki fazeelat ko yaad kiya jae.

2. Riyakaari ke khatre ko pesh e nazar rakha jae keh is see insan ke saare aml tabah o barbad ho jate hain.

3. Akhirat ko yaad kiya jae.

4. Yeh jaan lena chahye keh log kisi bhi naf’a o nuqsaan ke malik nahi hain.

5. Dua: [Shirk aur Riyakaari se bache rehne ke liye Allah ki bargaah mein dua ki jae] Hadees mein is tarah ki aik dua ae hai:

 
(اَللّٰہُمَّ اِنِّیْ اَعُوْذُبِکَ اَنْ اُشْرِکَ بِکَ شَیْئًا وَأَنَا اَعْلَمُ وَ اَسْتَغْفِرُکَ لِمَا لَا اَعْلَمُ بِہِ۔)

 

“Ae Allah! Mein Teri panha maangta hoon keh main Tere saath Janbujkar kuch shareek thehraon- aur jis cheez ko mein nahi janta uspar Teri maghfirat ka talab gaar hoon.”

 

JAB AML KE SATH RIYAKAARI KI MILAWAT HOJAEY? 

 

Aml ki asl buniyad niyyat khaalis lilllah thi. Aml ke ba’ad mein riyakaari peda hogae .

Mujaheda-e-nafs karta rahe aur riyakaari par mutmaeen na ho, riya koi nuqsan na dega.

Agar ibadat ka akhir awwal par mabni na ho tou pehli ibadat sahih aur akhri batil hogi.

Agar ibadat ka akhir awwal par mabni tha tou saari ibadat tabah hogae.

 

 

REFERENCE:
KITAAB “TAWHEED MUYASSAR” / ASAAN TAWHEED
BY: “ABDULLAH BIN AHMAD AL HAWAIL”
41 / 50 Sharah Kitaab Al Tawheed Class 13 Part 01

جب عمل میں ریاکاری کی ملاوٹ ہو؟

یہ تین احوال سے خالی نہیں ہوسکتا :

اول:  کام شروع ہی لوگوں کو دکھانے کے لیے کیا گیا ہو۔  

ایسا کرنا شرک ہے اور اس سے عبادت تباہ ہوجاتی ہے۔

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بیان فرمایا کہ :

قیامت کے دن اللہ تعالیٰ عرشِ عظیم سے اُتر کر اپنے بندوں کے پاس آئے گا تاکہ ان کا فیصلہ کر دیا جائے۔ اس وقت ہر اُمت گھٹنوں کے بل گری ہو گی۔ سب سے پہلے ان تین اشخاص کو بلایا جائے گا۔ قاری قرآن کو، شہید فی سبیل اللہ کو اور مالدار کو۔ سب سے پہلے قاری قرآن سے سوال ہو گا کہ میں نے جو قرآن اپنے رسول پر اتارا تھا کیا تجھے اس کا علم نہیں سکھایا؟ قاری کہے گا کہ ہاں ٹھیک ہے۔ اللہ تعالیٰ سوال کرے گا، علم کے مطابق عمل کیا؟ قاری جواب دے گا: اے رب کریم میں نے تمام دن اور رات تلاوت کرتا رہتا تھا۔ اللہ تعالیٰ کے گا، تو جھوٹ بولتا ہے۔ فرشتے بھی یہی کہیں گے: تو جھوٹ بولتا ہے۔ اللہ تعالیٰ کہے گا: تو اس لئے تلاوت کرتا تھا کہ لوگ تجھے قاری کہیں وہ دُنیا میں کہا جا چکا۔ مالدار شخص کو پیش کیا جائے گا اور سوال ہو گا، کیا تم کو اتنی وسعت مال نہ دی گئی کہ تو کسی کا محتاج نہ رہا؟ وہ جواب دے گا: اے اللہ تو بالکل ٹھیک اور صحیح کہتا ہے! اللہ تعالیٰ پوچھے گا:جو کچھ تم کو ملا اُس کے مطابق عمل کیسا کیا؟ بندہ جواب دے گا کہ اے رب کریم! میں صلہ رحمی کرتا اور صدقہ دیتا رہا، اللہ تعالیٰ فرمائے گا، تم جھوٹ کہتے ہو۔ فرشتے بھی کہیں گے کہ تو جھوٹ بولتا ہے۔ اللہ تعالیٰ کہے گا تمہارا ارادہ یہ تھا کہ تمہیں سخی کہا جائے، چنانچہ یہ دنیا میں کہا جا چکا۔ اب اس شخص کوپیش کیا جائے گا جو اللہ کی راہ میں شہید ہو گیا۔ اللہ کریم پوچھے گا، تم کیوں قتل ہوئے؟ بندہ جواب دے گا، اے رب کریم! تو نے جہاد کا حکم دیا اور میں تیرے راستہ میں دین کے دُشمنوں سے لڑ کر شہید ہو گیا۔ اللہ تعالیٰ فرمائے گا، تو جھوٹ بولتا ہے۔ فرشتے بھی کہیں گے تو جھوٹ بولتا ہے۔ اللہ تعالیٰ فرمائے گا تیرا ارادہ یہ تھاکہ لوگ تجھے بہادر کہیں اور وہ کہا جا چکا۔ یہ واقعہ بیان فرما کر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے میرے گھٹنے پر ہاتھ مار کر فرمایا: اے ابوہریرہ(رضی اللہ عنہ) یہی وہ تین قسم کے افراد ہیں جن کو قیامت کے دِن سب سے پہلے جہنم کی آگ جلائے گی۔

دوم: یہ کہ نیت تو اللہ کے لیے تھی، بعد میں ریاکاری پیدا ہوگئی۔

اس کی دو حالتیں ہیں :

الف: انسان اپنے نفس کے ساتھ مجاہدہ کرے، اوراس پر توجہ نہ دے ؛ اس صورت میں یہ ریاکاری کچھ نقصان نہیں دے گی۔

ب: یہ کہ وہ اس دکھلاوے پر مطمئن ہواور اسے ختم کرنے کی کوشش نہ کرے۔

اس صورت میں عبادت کا حکم :

الف: اگرعبادت کا آخر اس کے اول پر مبنی نہیں ہے تو اول صحیح ہے، اور آخر کا وہ حصہ جس میں ریا داخل ہوا وہ باطل ہے۔

اس کی مثال: ایک انسان نے اخلاص کے ساتھ سو ریال صدقہ کیا، پھر اسے کسی آدمی نے دیکھ لیا تو اس نے ایک سو ریال اور صدقہ کردیا،تو اس صورت میں پہلا صدقہ ٹھیک ہے دوسرا صدقہ باطل ہے۔

ب: اگر عبادت کا آخر اس کے اول پر مبنی ہے، تو تمام عبادت تباہ ہوجائے گی۔

اس کی مثال: کوئی انسان اللہ تعالیٰ کے لیے دو رکعت نماز پڑھنے کے لیے کھڑا ہوا۔ پھر دوسری رکعت میں اس پر ریاکاری چھا گئی؛ مگر اس نے اس وسوسہ کو ختم کرنے کی کوشش نہیں کی؛اور اس ریاکاری میں ہی لگا رہا ؛ تو اس صورت میں اس کی تمام نماز تباہ ہوجاتی ہے۔

۔  سوم:عبادت پوری ہونے کے بعد ریاکاری پیدا ہوگئی۔

اس سے کچھ بھی نقصان نہیں ہوگا۔

 مسئلہ :

جو کوئی لوگوں سے اپنی تعریف سنے، اور اس پر خوش ہو، تو اس پر کوئی حرج والی بات نہیں،بلکہ:یہ وہ بشارت ہے جو اسے جلدی ہی مل گئی۔

[مسلم]

 مسئلہ :

جو کوئی لوگوں کی وجہ سے کوئی عمل ترک کردے لوگوں کی وجہ سے کسی عمل کو ترک کرنا بھی ریاکاری کے زمرہ میں آتا ہے۔

ریاء اور سمعہ[سنانے]میں فرق :

ریا کا تعلق حواس خمسہ میں سے آنکھ کے ساتھ ہوتا ہے۔

[یعنی کوئی عمل اس لیے کیا جاتا ہے تاکہ لوگ اسے دیکھیں اور اس کی تعریف کریں۔]

سمعہ کا تعلق حواس خمسہ میں سے کانوں کے ساتھ ہوتا ہے

[یعنی کوئی عمل اس لیے کیا جاتا ہے تاکہ لوگ اس کے متعلق سنیں تو اس کی تعریف کریں]

ریاکاری کا علاج :

* اخلاص کی فضیلت کو یاد کیا جائے۔

* ریاکاری کے خطرہ کو پیش نظر رکھا جائے کہ اس سے انسان کے سارے اعمال تباہ و برباد ہوجاتے ہیں۔

*آخرت کو یاد کیا جائے۔

* یہ جان لینا چاہیے کہ لوگ کسی بھی نفع و نقصان کے مالک نہیں ہیں۔

*  دعا: [شرک اور ریاکاری سے بچے رہنے کے لیے اللہ کی بارگاہ میں دعا کی جائے]حدیث میں اس طرح کی ایک دعا آئی ہے .

((اَللّٰہُمَّ اِنِّیْ اَعُوْذُبِکَ اَنْ اُشْرِکَ بِکَ شَیْئًا وَأَنَا اَعْلَمُ وَ اَسْتَغْفِرُکَ لِمَا لَا اَعْلَمُ بِہِ۔))

’’اے اللہ! میں تیری پناہ مانگتا ہوں کہ میں تیرے ساتھ جان بوجھ کر کچھ شریک ٹھہراؤں۔ اورجس چیز کو میں نہیں جانتا اس پر تیری مغفرت کا طلب گار ہوں۔‘‘

REFERENCE:
KITAAB “TAWHEED MUYASSAR” / ASAAN TAWHEED
BY: “ABDULLAH BIN AHMAD AL HAWAIL”
Table of Contents