Sections
< All Topics
Print

05G.  TALAQ

SAATVA HUKUM  TALAQ

 

Haiza aurat ko halat-e-haiz mein talaq dena khawind par haram hai kyunkeh Allah Ta’aala ka farmaan hai.

 
یٰۤاَیُّہَا  النَّبِیُّ  اِذَا طَلَّقۡتُمُ النِّسَآءَ فَطَلِّقُوۡہُنَّ  لِعِدَّتِہِنَّ

“Ae Nabi(ﷺ) (Apni ummat se kaho keh) jab tum apni biwiyon ko talaaq dena chaho is tarha talaq do keh iddat shuru karsake”

[Sura Talaaq:65: 01]

 

      Yani aisi halat mein talaaq do keh wo talaaq ke waqt maloom iddat ka aagaaz kar rahi ho.

(Is jagah Talaaq dene ka waqt batlaya jaraha hai yani jab aurat haiz se paak hojaey tou usse jima’ kiye baghair talaaq do- Halat-e-tuhur iski iddat ka aagaaz ho- Is tareeqe ko Fuqaha Talaaq-e-sunnat se tabeer karte hain tou maloom hua haiz ki halat mein ya tuhur mein jima’ karne ke ba’ad talaaq dena ghalat tareeqa hai isko fuqaha talaaq-e-bidda kehete hain)
 

Aur ye is waqt hosakta hai jab khawind apni biwi ki hamal ki halat me talaaq den.

(Halat-e-hamal mein di gae talaaq waqeh hojaati hai daleel Hadees Abdullah bin umar(رضي الله عنه) [Sahih Muslim: (1/476)] Tafseel ke liye “Neel Awtaar” (6/221) az Allamah shawkaani mulaheza kare)

Ya baghair jima’ kiye “tuhur” ki halat mein talaaq den kyunkeh jab usse halat-e-haiz mein talaaq di jaegi tou wo iddat ka aagaaz nahi karegi- isiliye wo haiz jisme usse talaaq di gae wo iddat shumar nahi kiya jaegi.

        Aur jab jima’ ke ba’ad halat-e-tuhur mein talaaq di jaegi tou us waqt wo iddat jiska wo aaghaaz karbrahi hai maloom nahi hogi kyunkeh ye maloom nahi hai, aaya keh wo is jima’ se hamelah hui hai tou wo wazaa hamal ki iddat guzare, ya hamelah nahi hui tou haiz ki iddat guzare jab iddat ki noueyat ke baare mein yaqeen hasil nahi horaha tou mu’amila wazeh hojane tak khawind par talaaq dena haraam hai.

     Halat-e-haiz mein haiza ko talaaq dena sabeqa ayat aur is hadees ki wajha se haram hai jo “Bukhari o muslim wa ghairhuma “Mein Abdullah bin umar(رضى اللہ تعالى عنہما) se sabit hai.

      Abdullah bin umar(رضى اللہ تعالى عنہما) ne apni biwi ko talaaq di aur wo halat-e-haiz mein thi, Umar farooq(رضي الله عنه) ne uske mu’taliq Nabi Kareem(ﷺ) ko aagaah kiya tou is par Rasool Allah(ﷺ) naraz hue aur farmaaya:

“( مره فلير اجعها)”

“usse hukum dou keh wo usse rujoo kare phir usse us halat mein roke rakhe yahan tak ke wo paak hojae phir haiza hojae phir paak hojae, phir agar chahe tou uske ba’ad apne paas rakhe ya jima’ se pehle talaaq de den ye wo iddat hai jisko malhuz rakhkar Allah Ta’aala ne aurton ko talaaq dene ka hukum diya hai.”

[Sahih Bukhari: 5332; 9/393; Sahih Muslim: 1471; Musnad Shafa’i: 1630; Abu Dawood: 179-218; Ibn majah: 2019; Musnad Ahmad: (54-2/6)]

      Agar admi ne apni apni biwi ko halat-e-haiz mein talaaq dedi tou wo gunaahgaar hoga aur uspar lazim hai keh Allah Ta’aala se tauba kare aur aurat ko apni Asmat(harm) ki taraf wapis loutaey- Taake wo usko aisi talaaq den jo shar’ee hone ke sath sath Allah aur uske Rasool ke hukum ke bhi muwaqif ho- Asmat ki taraf loutaney ke ba’ad usse chorden yahan tak keh wo is haiz se paak hojae jis mein isko talaaq di gae thi phir dusri martaba haiza ho phir jab wo paak hogi agar khawind apne paas rakhna chahe tou rakhlen aur agar chahe tou jima’ se pehle talaaq de den.

    Teen masaiyl Halat-e-haiz mein talaaq ki tehreem se mustasnaa hain.

1. Pehla masla : Khilwat e nasheeynee ya masais se qabl talaaq:

     Jab talaaq aurat se khilwat nashaiynee ikhtiyar karne ya choone se pehle ho tou us waqt halat-e-haiz mein talaaq dene mein koi harj nahi hai kyunkeh is waqt us khatoon par koi iddat nahi hai, tou uski talaaq Allah Ta’aala ke is farmaan: 

فَطَلِّقُوۡہُنَّ  لِعِدَّتِہِنَّ

Ke mukhalif nahi hogi.

[Surah Talaaq:65: 01]

2. DUSRA MASLA: HALAT-E-HAMAL MEIN HAIZ

     Jab halat-e-hamal mein khatoon ko haiz ho tou us waqt bhi talaaq dene mein koi harj nahi hai iska sabab bayan peche guzarchuka hai- (Keh iddat wazaa hamal hai)

3. TESRA MASLA: TALAAQ IWAZ KE BADLE HO

     Jab talaaq kisi iwaz ke badle ho tou us waqt bhi halat-e-haiz mein talaaq dene mein koi harj nahih, Maslaan miya biwi ke darmiyaan koi naachaak chapkhalash aur bura maiyl jol ho tou us waqt khawind iwaz lekar usse talaaq de den tou ye bhi jayez hai agarchay aurat halat-e-haiz mein hi kyun na ho.

[Yeh “Khu’la” ki surat hogi, Shaykh Uthaymeen(رحمه الله) ka maqsood ye hai keh halat-e-haiz mein “khu’la” jayez hai, “khu’la ka lughvi ma’ana Utaarna aur Shara’i ma’ana ye hai agar aurat apne mard ke sath guzar basar aur nibha na karsakti ho tou iwazana dekar isse alag hojae]

Jaise keh Sayedna Ibn Abbas(رضي الله عنه) ki hadees hai:

keh sabit bin qais bin shumas(رضي الله عنه) ki biwi Nabi Kareem(ﷺ) ke paas ati hai aur keheti hai: Ae Allah ke Rasool(ﷺ) Main iske deen aur akhlaaq par koi hurf nahi rakhti magar mjhe islam mein kufr ka khauf hai”

Aap() ne farmaaya :

“اطرد دینی علیه حديقة”

“Jo bagh tujhe usne diya tha tu wapis kardegi”

     Unho ne arz kiya “haan ji, Phir Aap(ﷺ) ne farmaaya:

“قبل حديقه وطلقها تعاليقطه”

   “Bagh qubool karlo aur usse talaaq dedo”

[Sahih Al Bukhari: 5273; (9/306) maa al fatah]

 

     Tou is hadees mein Aap(ﷺ) ne ye nahi pocha keh wo haiza thi ya paak thi aur dusra isliye bhi keh ye talaaq aurat ki tarf se fidiya dene ki wajha se hai tou zarurat ke waqt jis halat mein bhi ho yeh jayez hai.

 

     Allamah ibn Quddamah(رحمه الله) ne “Al Mughni” mein halat-e-haiz mein khu’la ke jawaz ki illat bayan karte hue farmaaya hai: Kyunkeh haiz mein talaaq se rokna is “zarar” (Takleef) ki bina se hai jo khatoon ko lambi iddat ki wajha se lahiq hota hai aur “khu’la” is “zarar” ko dur karne ke liye hai jo khatoon ko bure miayl jol ki wajhese lahiq hota hai aur jiske sath wo raheti hai usse napasand karti hai aur usse boghz rakhti hai.

       Aur ye lambi iddat se bhi ziyadah muzeer hai tou unme se jo aala hai usko ادنی ☆ sath dur karna jayez hai aur isi liye Nabi Kareem(ﷺ) ne “khu’la” karne waali halat dariyaft nahi ki.

[Ibn Quddamah ki kalam khatam hui]
[Al mughni li ibn quddamah(8/174)]

 

Aur baaqi rahi baat halat-e-haiz mein aurat ke nikah ke aqd ki tou usme koi harj nahi hai, kyunkeh asal mein hillat hai aur Aap(ﷺ) se aqd nikah ke manaa ki koi daleel sabit nahi hai- lekin halat haiz mein khawind ko aurat par dakhil karne ke baare mein dekha jaega agar tu usse wati karne wala mehfooz rahega tou koi harj nahi, wagarnah wo iske paas us waqt tak na jae jab tak wo haiz se paak na hojae yeh keh najayez kaam mein waqeh hone ka andesha hai.

 

REFERENCE:
BOOK: “NISWAANI TIBI KHOON KAY AHEKAAM”
TALEEF: SHAIKH MUHAMMAD BIN SALEH UTHAYMEEN RAHIMAHULLAH
URDU TARJUMA BY: HAFIZ RIYAZ AHMED HAFIDHAHULLAH

Seventh: Menses & Divorce

 

It is prohibited to divorce the wife during her menstruation. Allah (SW) says:

{ إذا طَلَّقتم النِّساءَ فَطَلِّقوهُنَّ لِعِدَّتِهِنَّ } (الطلاق، 1)

 

“When you divorce women, divorce them at their Idda (prescribed periods)” (Qur’an 65: 1)

meaning that at the time of divorce they should be in conditions that, will allow the determination of their coming Idda.

The conditions are such that the woman is either clean (from menses and prior to any sexual intercourse) or she is pregnant (and her prescribed period is until she delivers her burden). If, for example, she is divorced while in menses, her
menses will not be counted as part of her prescribed Idda (see footnote # 21) and therefore she will miss her accurate determination of Idda. Also if she is divorced while in a clean state and following a sexual intercourse with her husband, then she is not sure about her Idda (or may not be pregnant). Due to the lack of uncertainty concerning her type of Idda, it is prohibited for a man to divorce his wife until her state (clean or pregnant) becomes clear.

It is also confirmed that the Prophet (ﷺ) became angry when he heard that Ibn Umar (رضی اللہ عنہ) divorced his wife while she was in her menses. He told Umar Ibn Al-Khataab (رضی اللہ عنہ), to order his son (Ibn Umar) to “turn her back” (see footnote #21). So, if a person divorces his wife while she is menstruating then he had committed a sin and must sincerely repent to Allah, negate his decision, let her stay until she becomes clean, wait for her next menses, and then after she becomes clean again he has the choice to keep her or divorce her before having sexual intercourse with her.

There are three provisions that allow divorce during menses. These are:

 

FIRST: Divorce is made before he is about to have sexual seclusion with her or prior to actually having sexual intercourse with her, because under these circumstances she has no established Idda and her divorce is not in dispute with the saying of Allah (SW):

{ فَطَلِقوهُنَّ لِعِدَتِهِنَّ } الآية (الطلاق، 1)

 

“Divorce them at their Idda (prescribed period))” (Qur’an 65: 1)

 

SECOND: If menses occurs during pregnancy, because as explained earlier, her Idda is not related to her menses but her pregnancy.

 

THIRD: If divorce is made in return for something (Al-Khul’). For example, if there are continuous strong dispute and ill-treatment between a husband and his wife, then the husband can accept something in return for the divorce of his wife.
The evidence is in the Hadeeth narrated by Ibn Abbass (رضی اللہ عنہ) in which the wife of Thabit Bin Qais bin Shamass came to the Prophet (ﷺ) and said: “O Messenger of Allah! I don’t blame Thabit for defects in his character or his religion, but I , being a Muslim, dislike to behave in an un-Islamic manner (If I remain with him)”. On that the Prophet (ﷺ) said to her: “will you give back the garden which your husband has given you (as Mahr[1])?” She said: “Yes”. Then the Prophet (ﷺ) said to Thabit: “O, Thabit, accept your garden, and divorce her once”[2].

The Prophet (ﷺ) did not ask whether she was in her menses or not. Under these circumstances of genuine need, the wife can ask for her divorce regardless of her menstrual conditions. “Divorcing during menses could harm the woman
because it will elongate her Idda. On the other hand, the harm resulting from illtreatment and strong disputes is much greater than the harm inflicted due to the elongation of the Idda, and therefore it is more urgent to remove through the
request for divorce. This is why the Prophet (ﷺ) did not ask about the menstrual conditions of the wife of Thabit bin Qais.”[3]

Case: The establishment of a marriage contract with a menstruating woman is permissible because there is no evidence to indicate otherwise. However, the husband should be cautioned that if he is unable to hold his sexual desires, then he
should not have seclusion with his wife until she becomes clean from her menses.

 

[1] Mahr: dower, bridal money.

[2] Saheeh Al-Bukhari (Arabic-English), V. 7, P.150, Hadeeth # 197.

[3] Cited in Al-Mughnee, V. 7 Ta-Meem, P.52.
REFERENCE:
BOOK: NATURAL BLOOD OF WOMEN
By Shayekh Muhammad bin Salih Al-Utheimeen
Second Edition / Translated & Researched by Saleh-As .Saleh S .Dr

ساتواں حکم :طلاق

 

حائضہ عورت کو حالت حیض میں طلاق دینا خاوند پر حرام ہے کیونکہ کہ اللہ  تعالی کا فرمان ہے.

(يا ايها النبي اذا طلقتم النساء طلقوهن لعدتهن) 

“اے نبی( اپنی امت سے کہو کہ) جب تم اپنی بیوی کو طلاق دینا چاہواس طرح طلاق دو کے عدت شروع کرسکیں ۔”

[دیکھو سورہ طلاق آیت نمبر 4]

 

یعنی ایسی حالت میں طلاق دو کہ وہ طلاق کے وقت معلوم ہے عدت کا آغاز کر رہی ہو

اس جگہ طلاق دینے کا وقت بتلایا جارہا ہے یعنی جب عورت حیض سے پاک ہوجائے تو اس سے جمع کیے بغیر طلاق دو اور طہر کی مدت سے آغاز ہو اس طریقے کو کو حق طلاق سنت سے تعبیر کرتے ہیں حیض کی حالت میں یا طہر کی حالت میں جماع کرنے کے بعد طلاق دینا غلط ہے اسکو فقھاء طلاق بد عی کہتے ہیں۔

اور یہ اس وقت ہوسکتا ہے جب خاوند اپنی بیوی کو حمل کی حالت میں طلاق دے.

حالت حمل میں دی گئی طلاق  واقع ہو جاتی ہے۔( دلیل حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ تعالی عنہ صحیح مسلم (476/1) ” نیل الإطا ” (6/122) ازعلامہ شوکانی ملا خطہ کریں

یا بغیر جماع کیے یے “طہر” کی حالت میں طلاق دے کیونکہ جب اسے حالت حیض میں طلاق دی جائے گی تو وہ عدت کا آغاز نہیں کرے گی۔ اس لیے وہ ہے حیض جس میں اسے طلاق دی گئی وہ عدت شمار نہیں کیا جائے گی اور جب جماع کے بعد حالت طہر میں طلاق دی جائے گی تو اس وقت وہ عدت جس کا وہ آغاز کر رہی ہے معلوم نہیں ہوگی کیونکہ یہ معلوم نہیں ہے کہ آیا وہ اس جما ع سے حاملہ ہوئی ہے تو وہ وضع حمل کی عدت گزارے ہے یا حاملہ نہیں ہوئی توحیض کی عدت گزارے، جب عدت کی نوعیت کے بارے میں یقین حاصل نہیں ہو رہا تو معاملہ واضح ہو جانے تک خاوند پر طلاق دینا حرام ہے۔ حالت حیض میں حائضہ کو طلاق دینا سابقہ آیت اور اس حدیث کی وجہ سے حرام ہے جو” بخاری اور مسلم” وغیرہ میں عبداللہ بن عمر سے ثابت ہے۔

عبداللہ بن عمر رضی اللہ تعالی عنہ نے اپنی بیوی کو طلاق دی اور وہ حالت حیض میں تھیں عمر فاروق رضی اللہ عنہ نے اس کے متعلق نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو آگاہ کیا تو اس پر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ناراض ہوئے اور فرمایا: 

“( مره فلير اجعها)”

“اسے حکم دو کہ وہ اس سے رجوع کریں پھر اسے اس حالت میں روکے رکھے یہاں تک کہ وہ پاک ہوجائے، پھر حائضہ ہوجائے پھر پاک ہوجائے اگر چاہے تو اس کے بعد اپنے پاس رکھے یا جماع سے پہلے طلاق دے یہ وہ عدت ہے جس کو ملحوظ رکھ کر اللہ تعالی نے عورتوں کو طلاق دینے کا حکم دیا ہے۔” 

[دیکھو صحیح بخاری(5332)(383/9) صحیح مسلم (471) مسند شافعی (1830) ابن داود (179-218) ابن ماجہ(2019) (مسند احمد(2/6_54)ابن الجارود(734)مسند طبالسی (1853)بیہقی (323324/7)]

اگر آدمی نے اپنی بیوی کو حالت حیض میں طلاق دے دی تو وہ گناہگار ہو گا اور اس پر لازم ہے کہ اللہ تعالی سے توبہ کرے اور عورت کو اپنی عصمت (حرم) کی طرف واپس لو ٹائے۔ تاکہ وہ اس کو ایسی طلاق دے جو شرعی ہونے کے ساتھ ساتھ اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے حکم کے بھی موافق ہو۔ عصمت کی طرف لوٹانے کے بعد اسے چھوڑ دے یہاں تک کہ وہ اس حیض سے پاک ہوجائے جائے جس میں اس کو طلاق دی گئی تھی پھر دوسری مرتبہ حائضہ ہو پھر جب وہ پاک ہو گی اگر خاوند اپنے پاس رکھنا چاہے تو رکھ لے اور اگر چاہے تو جماع سے پہلے طلاق دے دے۔

تین مسائل میں حالت حیض میں طلاق کی تحریم سے مستثنیٰ ہیں۔

: پہلا مسئلہ؛ خلوت نشینی یا مسیس سے قبل طلاق

جب طلاق عورت سے خلوت نشینی اختیار کرنے یا چھوڑنے سے پہلے ہو تو اس وقت حالت حیض میں طلاق دینے میں کوئی حرج نہیں ہے کیونکہ اس وقت اس خاتون پر کوئی عدت نہیں ہے تو اس کی طلاق اللہ تعالی کے اس حکم کے ( فطلقو ھن لعدتھن) کے مخالف نہیں ہوگی۔

[دیکھو سورہ الطلاق آیت نمبر:4]

دوسرا مسئلہ: حالت حمل میں حیض :

جب حالت حمل میں خاتون کو حیض ہو تو اس وقت بھی طلاق دینے میں کوئی حرج نہیں ہے اس کا سبب بیان پیچھے گزر چکا ہے.

( کہ عدت وضع حمل ہے)

تیسرا مسئلہ: طلاق عوض کے بدلے ہو.

“*جب طلاق کسی عوض کے بدلے ہو تو اس وقت بھی حالت حیض میں طلاق دینے میں کوئی حرج نہیں ہے مثلا میاں بیوی کے درمیان کوئی نا چاکی؛ چپقلش اور برا میل جول ہو تو اس وقت خاوند عوض لے کراسے طلاق دے تو یہ بھی جائز ہے ہے کہ اگرچہ عورت حالت حیض میں ہی کیوں نہ ہو۔

یہ خلع کی صورت ہوگی شیخ عثیمین کا مقصود یہ ہے کہ حالت حیض میں “خلع” جائز ہے” خلع” کے لغوی معنی اتارنا اور شرعی معنی یہ ہے کہ اگر عورت اپنے مرد کے ساتھ گزر بسر نباہ نہ کر سکتی ہو تو یہ عو ضانہ دے کر اس سے الگ ہو جائے۔

:جیسا کہ سیدنا ابن عباس کی حدیث ہے

کہ ثابت بن قیس بن شماس کی بیوی نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آتی ہے اور کہتی ہے اے اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم میں اس کے دین اور اخلاق پر کوئی حرف نہیں رکھتی مگر مجھے اسلام میں کفر کا خوف ہے.”

آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا( اطرد دینی علیه حديقة)”جو باغ تجھے اس نے دیا تھا تو واپس کر دے گی”

انہوں نے عرض کی” جی ہاں”

پھر پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا

( قبل حديقه وطلقها تعاليقطه)

 

“باغ قبول کر لو اور اسے طلاق دے دو”  اسے امام بخاری نے روایت کیا ہے.

2:تو اس حدیث میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے یہ نہیں پوچھا کہ وہ حائضہ تھی یا پاک تھی اور دوسرا اس لئے بھی کہ یہ طلاق عورت کی طرف سے فدیہ دینے کی وجہ سے ہے تو ضرورت کے وقت جس حالت میں ہو جائز ہے۔

[؛دیکھو صحیح بخاری بڑی کتاب الطلاق باب خلع و کیف طلا ق فیہ (رقم 5273(306/9) مع الفتح۔]

 

علامہ ابن قدامہ نے “المعنی” میں حالت حیض میں خلع کے جواز کی علت بیان کرتے ہوئے فرمایا ہے.  کیونکہ اس” ضرر” (تکلیف)کی بنا پر ہے جو خاتون کو لمبی عدت کی وجہ سے لاحق ہوتا ہے  اور” خلع” اس “ضرر” کو دور کرنے کے لیے ہے جو خاتون کو برے میل جول کی وجہ سے لاحق ہوتا ہے اور جس کے ساتھ وہ رہتی ہے اسے ناپسند کرتی ہے اور اس سے بغض رکھتی ہے۔

اور یہ لمبی عدت سے بھی زیادہ مضر ہے تو ان میں سے جو اعلی ہے اس کو ادنی کے ساتھ دور کرنا جائز ہے اور اسی لیے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے” خلع” کرنے والے کی حالت دریافت نہیں کی’ کی( ابن قدامۃ کی کلام ختم ہوئی)۔،

[محو المعنى لا بن قدامة (174/80 ) كتاب الخلع فصل ولا بأس بالخلع في الحيض)]

 

اور باقی رہی بات حالت حیض میں عورت کے نکاح کے وقت کی تو اس میں کوئی حرج نہیں ہے کیونکہ اصل میں حلت ہے اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے عقد نکاح کے منع کی کوئی دلیل ثابت نہیں ہے۔ لیکن حالت حیض میں خاوند کو عورت پرداخل کرنے کے بارے میں دیکھا جائے گا اگر تو اس سے وطی کرنے والا محفوظ رہے گا تو کوئی حرج نہیں وگرنہ وہ اس کے پاس اس وقت تک نہ جائے جب تک وہ حیض سے پاک نہ ہو جائے یہ کہ اس کے ناجائز کام میں واقع ہونے کا اندیشہ ہے۔

 

حوالہ جات:
کتاب:  “نسوانی طبی خون کے احکام۔”
تالیف:  شیخ محمد بن صالح العثیمین (رحمة الله)۔
اردو ترجمہ:  حافظ ریاض احمد حفظ اللہ۔
Table of Contents