Sections
< All Topics
Print

08. Aulaad par walidain ki Naikiyoun kay Asraat.

*AULAAD PAR WALDEN KI NAIKIYON KAY ASRAAT*

Aulaad par walidain kay naikiyon aur un ki duaon kay barray hi Khushgawar asraat muratab hotay hain, agar aulaad bhi walidain kay naqsh qadam par chalti hui namazon ki paband aur deeni Shaer ki alambrdar banti hai to Allah Ta’alaa dunia mein aulaad ko abad o khushaal rakhtay hain.

Jaisa keh Hazrat Moosa aur Khizar (علیہما السلام) kay waqea mein irshad Rabbani hai:

﴿ وَ اَمَّا الْجِدَارُ فَکَانَ لِغُلَامَیْنِ یَتِیْمَیْنِ فِی الْمَدِیْنَۃِ وَکَانَ تَحْتَہُ کَنْزٌ لَہُمَا وَ کَانَ اَبُوْہُمَا صَالِحًا فَاَرَادَ رَبُّکَ اَنْ یَبْلُغَآ اَشُدَّہُمَا وَ یَسْتَخْرِجَا کَنْزَہُمَا رَحْمَۃً مِّنْ رَّبِّکَ وَمَا فَعَلْتُہٗ عَنْ اَمْرِیْ ذٰلِکَ تَاْوِیْلُ مَا لَمْ تَسْطِعْ عَلَیْہِ صَبْرًا ﴾( کہف : 82)

“Aur deewar ka maamla yeh hai keh woh do yateem bachon ki hai jo is shehar mein rehtay hain aur is deewar kay neechay un bachon kay liye aik khazana madfoon hai, aur un ka baap naik aadmi tha, is liye tumahray rab ne chaha keh woh apni jawani ko pohnchain aur apna khazana nikaal lein, yeh tumahray rab ki rehmat ki wajah se ( kiya gaya) hai, main ne apnay ikhtiyar se kuch nahi kiya, yeh un baaton ki haqeeqat hai jin par tum sabar nahi kar sakay.”

Is ijmal ki tafseel yeh hai keh aik martaba Hazrat Moosa (علیہ السلام ) ne apni qoum ko asar angaiz khitaab farmaaya, jis se logon ki aankhein beh parrin, qoum mein se kisi shakhs ne Aap se sawal kiya:

“Is waqt roye zameen par sab se bara Aalim kon hai?”

Hazrat Moosa (علیہ السلام) ne yeh sochtay hue kay waqt ka paighambar sab se bara Aalim hota hai,”

Farmaaya:

“Is waqt daur haazir ka sab se bara Aalim main hun”.

Allah Ta’alaa ko yeh baat nagawaar guzri keh Aap ne aisa kyun kaha?”

“اللّٰہ أعلم”

 

Kyun nahi kaha? phir hukam diya keh jahan do samandar mlitay hain wahan mera aik bandah rehta hai jo aap se ilm ( kay

chand gooshon ) ko ziyada jan-nay wala hai, aap un se ilm sekhen.

 

Hazrat Moosa (علیہ السلام ) apnay aik shagird Hazrat Yooshay Bin Noon kay sath is muqarara maqam par puhanchay jahan Hazrat Khizar (علیہ السلام ) se Aap ki mulaqaat hui.

Hazrat Khizar (علیہ السلام)ne Aap ko is shart par apnay sath rakhna manzoor farmaaya keh Aap Inhen kisi baat par sawal

nahi karen gay jab tak keh woh khud is ki haqeeqat nah bayaan karein.

Jawabn Hazrat Moosa (علیہ السلام ) ne farmaaya:

﴿ قَالَ سَتَجِدُنِیْ اِنْ شَائَ اللّٰہُ صَابِرًا وَلاَ اَعْصِیْ لَکَ اَمْرًا﴾ «

 

“Agar Allah Ta’alaa chahay to Aap mujhe sabir payen gay aur main aap ki hukam aduli nahi karoon ga.”

 

 

Dono aik kashti par sawaar hue aur kashti walon ne Inhen baghair kiraya kay hi sawaar kara liya, beech samandar mein pahonch kar Hazrat Khizar (علیہ السلام ) ne kashti mein sorakh kar diya, is par Hazrat Moosa (علیہ السلام) ne nakeer ki aur farmaaya:

“Kya Aap ne is mein is liye

shagaaf daal diya hai keh is mein sawaar logon ko dubo dein?”

“Is par Hazrat Khizar (علیہ السلام ) ne farmaaya:”

“Main ne to pehlay hi kaha tha keh Aap meray sath sabar nahi kar satkay.

Is par Hazrat Moosa (علیہ السلام ) ne mazrat pesh ki, phir dono chal paray yahan tak keh Dono ki aik larkay se mulaqaat hui to Hazrat Khizar (علیہ السلام) ne usay qatal kar diya, is par Hazrat Moosa (علیہ السلام) ne sakht ehtijaj kartay hue kaha:

“Aap ne aik be gunah ko bilaa qasoor na-haqq qatal kar diya? aap ne nihayat napasandeedah harkat ki”.

Is par Hazrat Khizar (علیہ السلام) ne apni purani baat duhrai, jis par Aap ne is shart par moazrat paish ki keh agar main ne aindah is tarhan ka koi sawal aap se kiya to Aap mujhe apni rafaqat se allag kar dein.

Phir aik bastii mein aaye aur wahan kay bashindon se khana manga, lekin qarya kay basyon ne maizbaani se inkaar kar diya, phir Un dono ko bastii mein aik deewar mili jo girna hi chahti thi, Hazrat Khizar (علیہ السلام ) ne usay seedha kar diya.

Is par Hazrat Moosa (علیہ السلام) ne dartay dartay kaha:

“Agar Aap chahtay to is kaam par mazdoori lay letay ( taa keh khana khareed kar khaya ja sakay)”

Hazrat Khizar ne farmaaya: “Ab meray aur Aap kay darmiyan judai ka yahi waqt hai.”

Phir Aap ne un waqeat ki taweel bayan farmai jis par Hazrat Moosa (علیہ السلام ) sabar nahi kar sakay.

  1. Kashti kay baray mein bayaan farmaaya keh woh kuch ghareeb logon ki thi jo samandar mein mehnaT mazdoori kartay aur aik saahil se doosray saahil tak logon ko pohanchaya kartay thay, main ne is mein is liye sorakh kar diya keh is ilaqay ka badshah aik zalim aadami tha jo har umdah aur sahih salim kashti ko zulman hathya liya karta tha, is liye mein ne usay aib daar banaya taa keh woh usay nah lay, is tarhan main ne un par ahsaan kiya hai zulm nahi.
  1. Jahaan tak larkay kay qatal ka taaluk hai woh yeh keh woh larka paidaishi kafir tha aur us kay waalden sahab imaan thay,mujhe dar laga keh kaheen yeh apnay waalden ko bhi kufar o sarkashi ki Raah par nah daal day.

Allah Ta’alaa is kay waalden ko is kay aiwz mein aik aisa larka ataaNfarmaiye ga jo Salah o naiki aur gunaaho se paki mein is se kahin behtar aur waalden ka matee o farmabardar hoga.

  1. Aur woh deewar jisay main ne seedhi kar di thi shehar kay do yateem bachon ki thi jis kay neechay un ka khazana madfoon tha aur Un ka baap naik aadmi tha, is liye Aap kay Rab ne Un par fazal o Karam kartay hue chaha keh deewar khari rahay taakeh dono barray hokar usay nikalen aur mustafeed hon.

          Yeh kuch main ne kiya hai Allah Ta’alaa kay hukam se kiya hai is mein meri apni raye aur marzi ka koi dakhal nahi.

 

 

Yeh un baton ki taweel hai jin baton ko Aap bardasht nahi kar sakay.

Un ayaat ki tafseer kartay hue Aalam islam kay mashhoor Aalam Deen Dr Luqman Sahib Salafi Hifza Allah farmatay hain:

 

 

  1. “Is se mustafad hota hai keh baap ki naiki aulaad ki jani o maali hifazat ka sabab banti hai, baaz kehtay hain keh un dono yateamon kay baap ne hi woh maal dafan kiya tha.”

 

 

Baaz ka khayaal yeh hai keh Un kay saatven ya daswen par dada ne maal dafan kiya tha aur yeh is baat ki daleel hai keh Allah apnay naik bandon ki aulaad ki kayi pushton tak hifazat farmataa hai Tirmizi aur Ibn Mardoodiyah ne Jabir (رضی اللہ عنہ) se riwayat ki hai keh Rasool Allah (ﷺ) ne farmaaya:

“Allah Ta’alaa Saleh aadmi ki aulaad, is ki aulaad ki aulaad, is kay khandan walon aur is kay ird gird kay khandano ki hifazat farmata hai, woh un kay darmiyan jab tak hota hai kabhi is ki wajah se Allah kay hifz o aman mein hotay hain”.

Qurtubi ne Surah Al-Aaraf ki aayat ( 96 )

 

 

 

Se is maienay par istadlaal kiya hai jis ka tarjuma yeh hai keh beshak mera haami o nasir woh Allah hai jis ne yeh kitaab nazil ki hai, woh naik logon ki madad karta hai,,.

( Taiseer Al Rehman Labiyaan Al Quran. Saad 758-757 )

 

 

  1. Akhirat mein naik aamaal ki kami beshi kay bawajood Allah Ta’alaa aulaad ko walidain kay sath nah sirf jannat mein dakhla ataa farmatay hain balkay Inhen un kay walidain kay sath jannat mein akatha kar detay hain taakeh is se un kay walidain ki aankhein thandhi hon jaisa keh irshad Rabbani hai:

 

Tarjuma:

“Aur woh log jo imaan laaye aur un ki aulaad ne imaan kay muamlay mein un kay naqsh qadam ki itebaa ki, un ki is aulaad ko bhi ( jannat mein) hum un kaysath mila den gay aur un kay aamaal ( kay sawab ) mein hum kuch bhi kami nahi karein gay.

Har shakhs apnay aamaal kay badlay girwi hoga.

 

REFERENCE:
Book: Aulaad ki islami Tarbiyat
Taaleef: “Muhammad Anwar Muhammad Qasim Al Salfi”

اولاد پر والدین کی نیکیوں کے اثرات

 

اولاد پر والدین کے نیکیوں اور ان کی دعاؤں کے بڑے ہی خوشگواراثرات مرتب ہوتے ہیں، اگر اولاد بھی والدین کے نقشِ قدم پر چلتی ہوئی نمازوں کی پابند اور دینی شعائر کی علمبردار بنتی ہے تو اﷲ تعالیٰ دنیا میں اولاد کو آباد وخوشحال رکھتے ہیں۔جیسا کہ حضرت موسیٰ اور خضر علیہما السلام کے واقعہ میں ارشادِ ربّانی ہے :

 

﴿ وَ اَمَّا الْجِدَارُ فَکَانَ لِغُلَامَیْنِ یَتِیْمَیْنِ فِی الْمَدِیْنَۃِ وَکَانَ تَحْتَہُ کَنْزٌ لَہُمَا وَ کَانَ اَبُوْہُمَا صَالِحًا فَاَرَادَ رَبُّکَ اَنْ یَبْلُغَآ اَشُدَّہُمَا وَ یَسْتَخْرِجَا کَنْزَہُمَا رَحْمَۃً مِّنْ رَّبِّکَ وَمَا فَعَلْتُہٗ عَنْ اَمْرِیْ ذٰلِکَ تَاْوِیْلُ مَا لَمْ تَسْطِعْ عَلَیْہِ صَبْرًا ﴾( کہف : 82)

 

ترجمہ : اور دیوار کا معاملہ یہ ہے کہ وہ دو یتیم بچوں کی ہے جو اس شہر میں رہتے ہیں اور اس دیوار کے نیچے ان بچوں کیلئے ایک خزانہ مدفون ہے، اور ان کا باپ نیک آدمی تھا، اس لئے تمہارے رب نے چاہا کہ وہ اپنی جوانی کو پہنچیں اور اپنا خزانہ نکال لیں، یہ تمہارے رب کی رحمت کی وجہ سے (کیا گیا )ہے،میں نے اپنے اختیار سے کچھ نہیں کیا، یہ ان باتوں کی حقیقت ہے جن پر تم صبر نہیں کرسکے۔

اس اجمال کی تفصیل یہ ہے کہ ایک مرتبہ حضرت موسیٰ علیہ السلام نے اپنی قوم کواثر انگیز خطاب فرمایا، جس سے لوگوں کی آنکھیں بہہ پڑیں، قوم میں سے کسی شخص نے آپ سے سوال کیا :” اس وقت روئے زمین پر سب سے بڑا عالم کون ہے ؟ حضرت موسیٰ علیہ السلام نے یہ سوچتے ہوئے کہ وقت کا پیغمبر سب سے بڑا عالم ہوتا ہے، فرمایا : ’’اس وقت دورِ حاضر کا سب سے بڑا عالم میں ہوں”۔. اﷲ تعالیٰ کو یہ بات ناگوار گذری کہ آپ نے ایسا کیوں کہا ؟ “اللّٰہ أعلم” کیوں نہیں کہا ؟ پھر حکم دیا کہ جہاں دو سمندر ملتے ہیں وہاں میرا ایک بندہ رہتا ہے جو آپ سے علم ( کے چند گوشوں ) کو زیادہ جاننے والا ہے، آپ ان سے علم سیکھیں۔حضرت موسیٰ علیہ السلام اپنے ایک شاگرد حضرت یوشع بن نون کے ساتھ اس مقررہ مقام پر پہنچے جہاں حضرت خضر علیہ السلام سے آپ کی ملاقات ہوئی۔ حضرت خضر علیہ السلام نے آپ کو اس شرط پر اپنے ساتھ رکھنا منظور فرمایا کہ آپ انہیں کسی بات پر سوال نہیں کریں گے جب تک کہ وہ خود اس کی حقیقت نہ بیان کریں۔ جوابًاحضرت موسیٰ علیہ السلام نے فرمایا :﴿ قَالَ سَتَجِدُنِیْ اِنْ شَائَ اللّٰہُ صَابِرًا وَلاَ اَعْصِیْ لَکَ اَمْرًا﴾ اگر اﷲ تعالیٰ چاہے تو آپ مجھے صابر پائیں گے اور میں آپ کی حکم عدولی نہیں کروں گا۔

دونوں ایک کشتی پر سوار ہوئے اور کشتی والوں نے انہیں بغیر کرایہ کے ہی سوار کرالیا، بیچ سمندر میں پہنچ کر حضرت خضر علیہ السلام نے کشتی میں سوراخ کردیا،اس پر حضرت موسیٰ علیہ السلام نے نکیر کی اور فرمایا :”کیا آپ نے اس میں اس لئے شگاف ڈال دیا ہے کہ اس میں سوارلوگوں کو ڈبو دیں ؟ اس پر حضرت خضر علیہ السلام نے فرمایا : میں نے تو پہلے ہی کہا تھا کہ آپ میرے ساتھ صبر نہیں کرسکتے۔ اس پر حضرت موسیٰ علیہ السلام نے معذرت پیش کی، پھر دونوں چل پڑے،راستے میں دونوں کی ایک لڑکے سے ملاقات ہوئی تو حضرت خضر علیہ السلام نے اسے قتل کردیا، اس پر حضرت مو سیٰ علیہ السلام نے سخت احتجاج کرتے ہوئے کہا : “آپ نے ایک بے گناہ کو بلا قصور ناحق قتل کردیا؟ آپ نے نہایت ناپسندیدہ حرکت کی” اس پر حضرت خضر علیہ السلام نے اپنی پرانی بات دُہرائی،جس پر آپ نے اس شرط پر معذرت پیش کی کہ اگر میں نے آئندہ اس طرح کا کوئی سوال کیا تو آپ مجھے اپنی رفاقت سے الگ کردیں۔ پھر ایک بستی میں آئے اور وہاں کے باشندوں سے کھانا مانگا، لیکن قریہ کے باسیوں نے میزبانی سے انکار کردیا، پھر دونوں نے بستی میں ایک دیوار دیکھی جو گرنے ہی والی تھی، حضرت خضر علیہ السلام نے اسے درست کردیا. اس پر حضرت موسیٰ علیہ السلام نے ڈرتے ڈرتے کہا : اگر آپ چاہیں توگھروالوںسے مزدوری لے لیں( تاکہ کھانا خرید کر کھا یا جاسکے) حضرت خضر علیہ السلام نے فرمایا : اب میرے اور آپکے درمیان جدائی کا یہی وقت ہے۔ پھر آپ نے ان واقعات کا سبب بیان کیا جس پر حضرت موسیٰ علیہ السلام صبر نہیں کرسکے۔

1) کشتی کے بارے میں بیان فرمایا کہ وہ کچھ غریب لوگوں کی تھی جو سمندر میں محنت مزدوری کرتے اور ایک ساحل سے دوسرے ساحل تک لوگوں کو پہنچایا کرتے تھے، میں نے اس میں اس لئے سوراخ کردیا کہ اس علاقے کا بادشاہ ایک ظالم آدمی تھا جو ہر عمدہ اور صحیح سالم کشتی کو ظلمًا ہتھیالیا کرتا تھا، اس لئے میں نے اسے عیب دار بنایا تاکہ وہ اسے نہ لے، اس طرح میں نے ان پر احسان کیا ہے ظلم نہیں۔

2) جہاں تک لڑکے کے قتل کا تعلق ہے وہ یہ کہ وہ لڑکا پیدائشی کافر تھا اور اس کے والدین صاحب ایمان تھے، مجھے ڈر لگا کہ یہ بالغ ہوکرکہیں اپنے والدین کو بھی کفر وسرکشی کی راہ پر نہ ڈال دے۔ اﷲ تعالیٰ اسکے والدین کو اس کے عوض میں ایک ایسا لڑکا عطا فرمائے گا جو صلاح ونیکی اور گناہوں سے پاکی میں اس سے کہیں بہتر اور والدین کا مطیع وفرمانبردار ہوگا۔اسطرح میں نے اسکے والدین پرظلم نہیں احسان کیا.

3) اور وہ دیوار جسے میں نے سیدھی کردی تھی شہر کے دو یتیم بچوں کی تھی، یتیموں کو دیا جاتا ہے لیکن لیا نہیں جاتا۔ اس گھرکے نیچے ان کا خزانہ مدفون تھا اور ان کا باپ نیک آدمی تھا، اس لئے آپ کے رب نے ان پر فضل وکرم کرتے ہوئے چاہا کہ دیوار کھڑی رہے تاکہ دونوں بڑے ہوکر اسے نکالیں اور مستفید ہوں۔ یہ کچھ میں نے کیا ہے اﷲ تعالیٰ کے حکم سے کیا ہے اس میں میری اپنی رائے اور مرضی کا کوئی دخل نہیں۔ یہ ان باتوں کی تاویل ہے جن باتوں کو آپ برداشت نہیں کرسکے۔

 

ان آیات کی تفسیر کرتے ہوئے عالم اسلام کے مشہور عالمِ دین اور مفسر ڈاکٹر محمد لقمان صاحب سلفی حفظہ اﷲ فرماتے ہیں :

 

1۔ اس سے مستفاد ہوتا ہے کہ باپ کی نیکی اولاد کی جانی ومالی حفاظت کا سبب بنتی ہے، بعض کہتے ہیں کہ ان دونوں یتیموں کے باپ نے ہی وہ مال دفن کیا تھا۔ بعض کا خیال یہ ہے کہ ان کے ساتویں یا دسویں پردادا نے مال دفن کیا تھا اور یہ اس بات کی دلیل ہے کہ اﷲ اپنے نیک بندوں کی اولاد کی کئی پشتوں تک حفاظت فرماتا ہے

ترمذی اور ابن مردویہ نے جابر رضی اللہ عنہ سے روایت کی ہے کہ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :” اﷲ تعالیٰ صالح آدمی کی اولاد، اس کی اولاد کی اولاد، اس کے خاندان والوں اور اس کے ارد گرد کے خاندانوں کی حفاظت فرماتا ہے، وہ ان کے درمیان جب تک ہوتا ہے سبھی اس کی وجہ سے اﷲ کے حفظ وامان میں ہوتے ہیں”۔

قرطبی رحمہ اللہ نے سورۃ الأعراف کی آیت (196)﴿ اِنَّ وَلِیِّ اللّٰہُ الَّذِیْ نَزَّلَ الْکِتَابَ وَہُوَ یَتَوَلَّی الصَّالِحِیْنَ ﴾سے اس معنی پر استدلال کیا ہے جسکا ترجمہ یہ ہے کہ”بے شک میرا حامی وناصروہ اﷲ ہے جس نے یہ کتاب نازل کی ہے، وہ نیک لوگوں کی مدد کرتا ہے”۔( تیسیر الرحمن لبیان القرآن: 757۔758 )

 

2۔ آخرت میں نیک اعمال کی کمی بیشی کے باوجود اﷲ تعالیٰ اولاد کو والدین کے ساتھ نہ صرف جنت میں داخلہ عطا فرماتے ہیں بلکہ انہیںان کے والدین کے ساتھ جنت میں اکٹھا کردیتے ہیں تاکہ اس سے ان کے والدین کی آنکھیں ٹھنڈی ہوں جیسا کہ ارشادِ ربّانی ہے :

 

﴿وَالَّذِیْنَ آمَنُوْا وَاتَّبَعَتْہُمْ ذُرِّیَتُہُمْ بِاِیْمَانٍ اَلْحَقْنَا بِہِمْ ذُرِّیَتَہُمْ وَمَآ اَلَتْنٰہُمْ مِنْ عَمَلِہِمْ مِّنْ شَیْ ئٍ کُلُّ امْرِیء ٍ م بِمَا کَسَبَ رَہِیْنٌ ﴾( طور : 21)

 

ترجمہ :اور وہ لوگ جو ایمان لائے اور ان کی اولاد نے ایمان کے معاملے میں ان کے نقشِ قدم کی اتباع کی، ان کی اس اولاد کو بھی ( جنت میں ) ہم ان کے ساتھ ملادیں گے اور ان کے اعمال( کے ثواب )میں ہم کچھ بھی کمی نہیں کریں گے۔ ہر شخص اپنے اعمال کے بدلے گروی ہوگا۔

حضرت موسٰی اور خضر علیہما السلام کے واقعے کے ضمن میں اکثر لوگ یہ سوال کرتے ہیں کہ : کیا حضرت خضر علیہ السلام نبی تھے یا اﷲ تعالیٰ کے نیک بندے ؟ اس سوال کے متعلق عرض ہے کہ: وہ اﷲ کے پیغمبر تھے،اس لئے کہ یہ بات پیغمبر کی شان کے خلاف ہے کہ وہ کسی عام انسان سے استفادہ کرے یا اسکی شاگردی اختیار کرے۔ جہاں تک انبیاء علیہم السلام کا تعلق ہے انکے درمیان آپس میں افادہ استفادہ ہوتا ہی رہتا ہے اور یہ معیوب نہیں ہے۔

 

حواله جات : 

كتاب :  “اولاد كى اسلامى تربيت”
محمد انور محمدقاسم السّلفی

 

 

Table of Contents