Sections
< All Topics
Print

13. Tv ki Tabaah kaariyan.

*TV KI TABAH KARIAN*

Science aur tecnaloji ne daur haazir mein apni taraqqi ki intahaa ko choo lia hai, is taraqqi se jahan insanon ke liye lakhoon saholaten paida hui hain wahein karorron ki tadaad mein is ke nuqsanaat aur mazarrat rasan pehlu samnay aa rahay hain, unhi mein se aik TV aur internet ki waba hai jis ne saari duniya ko apnay ghairay mein lay rakha hai, duniya mein shayad chand hi aisay ghar hon gay jo tally vision ki waba se mehfooz hon, hatta keh deendar hazraat ne bhi is ke samnay yeh kehtay hue super daal di hai ke T.V ki waba se bachna ab namumkin ho gaya hai, agar hum ne T.V nahi rakhi to bachay qaboo mein nahi rahein gay, jin ke gharon mein hai un ke gharon mein jana shuru kar dein gay aur larkiyon ke doosron ke gharon mein janay anay ke jo bhayanak nataij hain is se kon be khabar hai? un ki baat aik had tak durust bhi hai, lekin is shaytani aala ko ghar mein rakhnay ke jo nuqsanaat hain aur is se sharam o hayaa, izzat o ghairat ka jo janaza nikalta hai afsos ke bahuton ko is ka nihayat hi kam ehsas hai senkaron Chayanelon ne ab har ghar ko Cinema ghar bana diya hai, kayi logon ka aalam yeh hai keh khanay ke baghair to chand din guzara kar lein gay lekin T.V ke baghair nahi, un chayanelon ki madad se duniya ke har Mulk ki be hayai ko apnay ghar mein baith kar sirf button dabanay ki aik halki si zahmat se dekha ja sakta hai, un channelon mein kuch aisay hain jo raat din nangi Filmein dikhatay hain, muslim mumalik ke nojawanon ko gumraah karnay aur inhen fahaashi aur badkaari mein mubtala karnay ke liye yahood o nasari ne aisay channel khol rakhay hain jo chobees ghantay fehash Filmein paish kartay hain, Arab mumalik ke bigray hue nojawanon mein Israeli chaanel bara maqbool hai, nojawan larkay aur larkiyan apnay apnay kamron mein maqfil ho kar barri be baki se is ka nzarah kartay hain, is ke asar se muslim muashray mein jo be hayai ka tufaan araha hai aisa lagta hai keh woh hamari nojawan naslon ko baha lay jaye ga, Akhbarat mein jinsi juraim ki jo khabrain aa rahi hain woh anay walay tufaan ki khabar day rahi hain ke jis tarhan Urap aur America mein behan aur bhai, baap aur beti ke rishton ka koi taqaddus baqi nahi bilkul muslim muashra bhi isi be hayai ki taraf nihayat taizi se rawan dawaan hai.

Koyat mein abhi chand mah pehlay honay walay waqeat, jin mein paanch aur aath sala bachiyon ke sath jinsi zayad-ti ke baad be dardi se inhen qatal kar ke tukray tukray kar diya gaya, un waqeat ne koyat ki pur sukoon zindagi mein aik Heejan bapaa kar diya aur awam mein gham aur gussa ki shadeed lehar dora di, lekin bhala ho yahan ki mustaed police ka jinhon ne chand dinon mein un insani hewanon ko girftar kar ke inhen un ke kefar kirdaar tak pohancha diya.

Chand saal pehlay Hindustani channel Zee T. V ne kirala ke aik baap aur beti ka interview paish kya jo shohar aur biwi ki hesiyat se zindagi basar kar rahay thay, is khabees baap se yeh sawal kya ja raha tha keh woh apni beti se lutaf andoz…….kaisi nishat mehsoos kar raha hai? aur yahi sawal is ” beti” se kya gaya, is darendey “baap” aur be haya “beti” ne jo jawab diya woh insaaniyat ke maathey par kalank hai aur sharam o haya qassir hai keh usay naqal kya jaye.

Yeh hain hamaray T. V channel jo is be hayai ko apnay channel ki madad se saari duniya mein phela rahay hain aur is tarhan is khabees amal ki hosla afzai kar rahay hain keh goya yeh aik bohat bara karnaama hai jo unhon ne anjaam diya.

Halaankeh hona to yeh chahiye tha keh inhen Ibrat naak saza di jati lekin aisa lagta hai keh Hindustani hukoomat bhi yahi chahti hai keh is tarhan ki be hayai aam ho aur insaan apni insaaniyat ko faramosh kar ke mehez aik hewan ban jaye. Free style kushti aur maar dhaar ki filman bachon ko baaghi, sarkash, ghunda aur badmaash banati hain, jasoosi filmein bachon ko juraim sikhati hain, aisay be shumaar waqeat hain jin mein mujrim ne aik anokha jurm kya, jab woh pakra gaya to is ne iqraar kar liya keh is ne jurm karnay ka yeh fun falan film se seekha hai, romantic filmein bachon mein jinsi ehsas ko barhhawa deti hain aur inhen aik pakeeza fitri mahol mein fahashat aur badkaari ke beej bonay ka gur sikhati hain, jo log khabrain waghairah dekhnay ke liye T. V rakhnay ke qaail hain, un ki khidmat mein yeh arz hai keh fi al-waqt Hindustani T. v channel ki had tak yeh baat wusooq se kahi ja sakti hai keh khabrain bhi aik baghirat baap apnay bachon Aur bachiyon ke sath baith kar nahi dekh sakta, kyunkay Aydortayzmnt aur ishtiharaat ( Advertisement ) ke naam par un mein jo be hayai ka tufaan barpaa kya gaya hai woh bayan se bahar hai, company ki shohrat aur nangi larkiyan lazim o malzoom hogayi hain, bakol Iqbal :

“Hind ke shayar o buut guru afsana nawees aah bichroon ke asaab par aurat hai sawaar”

Baat sirf Hindostan tak ki hi nahi ab yeh aik aalmi almiya ban gaya hai, shayad hi koi aisa Aydortayzmnt ( Advertisement ) ho jis mein aik ya kayi larkiyan neem burhenaa aur un ke sath bilkul isi tarhan ke no jawan larkoon se bosa baazi kartay hue nah dikhayi deti hon aur channelon ki madad se is chhootey se parda Simin par paish ki janay wali filmein, bachon aur bachiyon ke islami ikhlaq ke liye zeher hilahal hain, kapron se aari tharaktay hue jism, ishqia gazleen, taiz dhunon par bajnay wali moseeqi, phir ishhq o mohabbat ke haya soaz manazair kisi bhi musalman gharanay se islami ghairat ko khatam karnay ke liye kaafi hain, mashhoor maqola hai:

” إذا کثر المساس قل الإحساس”

“Baar baar in manazair ko dekhnay se ghairat ka ehsas kam ya khatam ho jata hai”.

REFERENCE:
Book: Aulaad ki islami Tarbiyat
Taaleef: “Muhammad Anwar Muhammad Qasim Al Salfi”

ٹی وی کی تباہ کاریاں

 

سائنس اور ٹکنالوجی نے دور حاضر میں اپنی ترقی کی انتہا کو چھولیا ہے، اس ترقی سے جہاں انسانوں کے لئے لاکھوں سہولتیں پیدا ہوئی ہیں وہیں کروڑوں کی تعداد میں اس کے نقصانات اور مضرت رساں پہلو سامنے آرہے ہیں، انہی میں سے ایک ٹی وی اور انٹرنیٹ کی وباہے جس نے ساری دنیا کو اپنے گھیرے میں لے رکھا ہے ٗ دنیا میں شاید چند ہی ایسے گھر ہوں گے جو ٹیلی ویژن کی وبا سے محفوظ ہوں، حتّی کہ دیندار حضرات نے بھی اس کے سامنے یہ کہتے ہوئے سپر ڈال دی ہے کہT.V کی وبا سے بچنا اب نا ممکن ہوگیا ہے، اگر ہم نے T.V نہیں رکھی تو بچے قابو میں نہیں رہیں گے، جن کے گھروں میں ہے ان کے گھروں میں جانا شروع کردیں گے اور لڑکیوں کے دوسروں کے گھروں میں جانے آنے کے جو بھیانک نتائج ہیں اس سے کون بے خبر ہے ؟ ان کی بات ایک حد تک درست بھی ہے، لیکن اس شیطانی آلہ کو گھر میں رکھنے کے جو نقصانات ہیں اور اس سے شرم وحیا، عزّت وغیرت کا جو جنازہ نکلتا ہے افسوس کہ بہتوں کو اس کا نہایت ہی کم احساس ہے۔سینکڑوں چیانلوں نے اب ہر گھر کو سنیما گھر بنا دیا ہے، کئی لوگوں کا عالم یہ ہے کہ کھانے کے بغیر تو چند دن گذارہ کر لیں گے لیکن T.V کے بغیر نہیں، ان چینلوں کی مدد سے دنیا کے ہر ملک کی بے حیائی کو اپنے گھر میں بیٹھ کر صرف بٹن دبانے کی ایک ہلکی سی زحمت سے دیکھا جاسکتا ہے، ان چینلوں میں کچھ ایسے ہیں جو رات دن ننگی فلمیں دکھاتے ہیں، مسلم ممالک کے نوجوانوں کو گمراہ کرنے اور انہیں فحاشی اور بد کاری میں مبتلا کرنے کے لئے یہود ونصاری نے ایسے چیانل کھول رکھے ہیں جو چوبیس گھنٹے فحش فلمیں پیش کرتے ہیں، عرب ممالک کے بگڑے ہوئے نوجوانوں میں اسرائیلی چینل بڑا مقبول ہے، نوجوان لڑکے اور لڑکیاں اپنے اپنے کمروں میں مقفل ہوکر بڑی بے باکی سے اس کا نظارہ کرتے ہیں، اس کے اثر سے مسلم معاشرے میں جو بے حیائی کا طوفان آرہا ہے ایسا لگتا ہے کہ وہ ہماری نوجوان نسلوں کو بہا لے جائے گا، اخبارات میں جنسی جرائم کی جو خبریں آرہی ہیں وہ آنے والے طوفان کی خبر دے رہی ہیں کہ جس طرح یورپ اور امریکہ میں بہن اور بھائی، باپ اور بیٹی کے رشتوں کا کوئی تقدس باقی نہیں بالکل مسلم معاشرہ بھی اسی بے حیائی کی طرف نہایت تیزی سے رواں دواں ہے۔ کویت میں ابھی چند ما ہ پہلے ہونے والے واقعات، جن میں پانچ اور آٹھ سالہ بچیوں کے ساتھ جنسی زیادتی کے بعد بے دردی سے انہیں قتل کرکے ٹکڑے ٹکڑے کردیا گیا، ان واقعات نے کویت کی پُر سکون زندگی میں ایک ہیجان بپا کردیا اور عوام میں غم اور غصّہ کی شدید لہر دوڑادی، لیکن بھلا ہو یہاں کی مستعد پولیس کا جنہوں نے چند دنوں میں ان انسانی حیوانوں کو گرفتار کرکے انہیں ان کے کیفرِ کردار تک پہنچادیا۔

چند سال پہلے ہندوستانی چینل Zee T.V نے کیرالا کے ایک باپ اور بیٹی کا انٹرویو پیش کیا جو شوہر اور بیوی کی حیثیت سے زندگی بسر کر رہے تھے، اس خبیث باپ سے یہ سوال کیا جارہا تھا کہ وہ اپنی بیٹی سے لطف اندوز ………کیسی نشاط محسوس کر رہا ہے ؟ اور یہی سوال اس “بیٹی “سے کیا گیا، اس درندے”باپ ” اور بے حیا “بیٹی “نے جو جواب دیا وہ انسانیت کے ماتھے پر کلنک ہے اور شرم وحیا قاصر ہے کہ اسے نقل کیا جائے۔ یہ ہیں ہمارے T.V چینل جو اس بے حیائی کو اپنے چینل کی مدد سے ساری دنیا میں پھیلا رہے ہیں اور اس طرح اس خبیث عمل کی حوصلہ افزائی کررہے ہیں کہ گویا یہ ایک بہت بڑا کارنامہ ہے جو انہوں نے انجام دیا حالانکہ ہونا تو یہ چاہیئے تھا کہ انہیں عبرت ناک سزا دی جاتی لیکن ایسا لگتا ہے کہ ہندوستانی حکومت بھی یہی چاہتی ہے کہ اس طرح کی بے حیائی عام ہو اور انسان اپنی انسانیت کو فراموش کرکے محض ایک حیوان بن جائے.

فری سٹائل کُشتی اور مار دھاڑ کی فلمیں بچوں کو باغی، سرکش، غنڈہ اور بد معاش بناتی ہیں، جاسوسی فلمیں بچوں کو جرائم سکھاتی ہیں، ایسے بے شمار واقعات ہیں جن میں مجرم نے ایک انوکھاجرم کیا،جب وہ پکڑا گیا تو اس نے اقرار کرلیا کہ اس نے جرم کرنے کا یہ فن فلاں فلم سے سیکھا ہے، رومانٹک فلمیں بچوں میں جنسی احساس کو بڑھاوا دیتی ہیں اور انہیں ایک پاکیزہ فطری ماحول میں فحاشت اور بدکاری کے بیج بونے کا گُر سکھاتی ہیں،جو لوگ خبریں وغیرہ دیکھنے کے لئے T.V رکھنے کے قائل ہیں،ان کی خدمت میں یہ عرض ہے کہ فی الوقت ہندوستانی T.V چینلوں کی حد تک یہ بات وثوق سے کہی جاسکتی ہے کہ خبریں بھی ایک باغیرت باپ اپنے بچوں اور بچیوں کے ساتھ بیٹھ کر نہیں دیکھ سکتا کیونکہ ایڈورٹائزمنٹ اور اشتہارات (Advertisement)کے نام پر ان میں جو بے حیائی کا طوفان برپا کیا گیا ہے وہ بیان سے باہر ہے، کمپنی کی شہرت اور ننگی لڑکیاں لازم وملزوم ہوگئی ہیں،بقول اقبالؔ:

ہند کے شاعر و بت گر و افسانہ نویس
آہ بیچاروں کے اعصاب پہ عورت ہے سوار

 

بات صرف ہندوستان تک کی ہی نہیں اب یہ ایک عالمی المیہ بن گیا ہے، شاید ہی کوئی ایسا ایڈورٹائزمنٹ (Advertisement) ہو جس میں ایک یا کئی لڑکیاں نیم برہنہ اور ان کے ساتھ بالکل اسی طرح کے نوجوان لڑکوں سے بوسہ بازی کرتے ہوئے نہ دکھائی دیتی ہوںاور چینلوں کی مدد سے اس چھوٹے سے پردۂ سیمیں پر پیش کی جانے والی فلمیں، بچوں اور بچیوں کے اسلامی اخلاق کے لئے زہرِ ہلاہل ہیں، کپڑوں سے عاری تھرکتے ہوئے جسم، عشقیہ غزلیں، تیز دُھنوں پر بجنے والی موسیقی، پھر عشق ومحبت کے حیا سوز مناظر کسی بھی مسلمان گھرانے سے اسلامی غیرت کو ختم کرنے کے لئے کافی ہیں،مشہور مقولہ ہے : “إِذَا کَثُرَ الْمَسَاسُ قَلَّ الْإِحْسَاسُ”باربار ان مناظر کو دیکھنے سے غیرت کا احساس کم یا ختم ہوجاتا ہے۔

 

حواله جات : 

كتاب :  “اولاد كى اسلامى تربيت”
محمد انور محمدقاسم السّلفی

 

 

 

Table of Contents