Sections
< All Topics
Print

30. KYA ISLAM BAZOR-E-SHAMSHEER PHELA? [Wasn’t Islam spread by the sword?]

KYA ISLAM BAZOR-E-SHAMSHEER PHAILA? 

 
“Islaam ko amn-o-salamti ka mazhab kaise kaha ja sakta hai Jabkeh ye talwaar ke zor se phaila ? ” 

Kuch gair muslim aam taur par aitraaz uthate hain keh Islaam ke manne wale itni ziyada tadad mein na hote Agar islam talwaar ke zariye se na phaila hota. Mandarja zel nukat yeh haqiqat wazeh karenge keh Islaam Bazor- e- taqat hargiz nahi phaila, balkey apni Aalam geer sadaqat, aqal par mabni tasawuraat aur sachhai par mabni dalael ki badolat islaam ko farog mila hai. 

ISLAAM KA MATLAB 

Islaam lafz ” salam ” se nikla hai jis ka matlb hai Salamati Aur Aman – Is ka matlab yeh bhi hai keh apne aap ko Allah ki raza ke aage jhuka diya jaaye, Pas islam salamati aur aman ka mazhab hai jo apne aap ko Allah ki marzi ke aage jhuka dene ki badolat naseeb hota hai. 

TAQAT KA ISTEMAL

Duniya mein har Insaan aman aur ham ahangi qaem rakhne ke haq mein nahi hota ya bahot se log hote hain jo apne mafadaat ke liye aman-o-amaan ko kharab karte hain, lehaza ba’z auqaat aman Qayem rakhne ke liye Taaqat ka istemal karna parta hai. Yehi wajah hai ke jaraem ke sadd-e-baab ke liye police ka nizaam Qayem kiya gaya hai jo mujrimon aur samaaj dushman anasir ke khilaf taaqat istemal karti hai taake mulk mein aman-o-amaan qayem rahe. Islaam aman ka khuahan hai lekin us ke saath hi apne manne walon ko zulm aur istehsal ke khilaf larne ka hukum deta hai. Ba’z auqat zulm se larne aur usey khatam karne ke liye taqat ki zarurat hoti hai. Islam mein taqat ka istemal sirf zulm ke khaatme, aman ke farog aur adal ke qayaam ke liye hai aur islam ka yeh pahlu Siratun Nabi Sallallahu Alaihi Wasallam, Khulafa-e-Rashedeen Razi allahu Anhum ke ahed ke Adwaar se bakhubi ashkaar hota hai. 

MOARRIKH DE LESI ULEARI KI RAAYE

Is galat nazarye ka jawab  keh Islam bazoar-e-shamshir phaila, ek angrez moarrikh dee lesi uleari ne apni kitaab “Islaam at the Cross Road” (safha 8) mein behtrin andaz mein diya hai : 

” Taarikh Bahre haal yeh haqiqat wazeh kar deti hai keh musalmanon ke motalliq rawayati ta’ssub par mabni kahaniyan keh Islaam talwaar ke zor per phaila aur us ke zariye se Junooni musalman duniya par chhah gaye, sab nama’qool aur fuzool afsane hain jinhen moarrikhin ne bar bar dohraya hai,” 

SPAIN MEIN  MUSALMANON KE 800 Baras 

Musalmanon ne spain mein taqriban 800 saal hukumat ki aur wahan logon ko musalman karne ke liye kabhi talwar nahi uthayi, baad me salibi isayi barsar-e-iqtedaar aayi to unhon ne wahan se isi tarah islam bahot tezi se barre-aazam Africa ke mashriqi saahil par phaila. Mushriqin se puchha ja sakta hai keh agar islam talwar ke zariye se phaila to konsi islami fauj Africa ke mashriqi saahil par gayi thi. 

THAAMIS KAARLAYEL KI DALEEL 

Mashhoor moarrikh thaamis kaarlayel apni kitab ” heero and heero worship” mein islam ke phailao ke bare mein magribi tasawuraat ki tardid karte hue kahta hai, “islam ke farog mein talwaar istemal hui lekin yeh talwaar kaisi thi ? ek nazariya tha. 

har naya nazariya shuru mein fard-e-waahid ke nehan khana-e-dimaag mein janam leta hai, wahan woh nashonuma pata rahta hai. Is par duniya bhar ka sirf ek hi aadmi yaqeen rakhta hai, goya ek shaks fikri lehaz se tamam insanon se mukhtalif hota hai, agr woh hath mein talwaar le aur us ke zariye se apna nazriya phailane ki koshish kare to yeh koshish besud rahegi, lekin agar aap apne nazariye ke saath talwaar se sargarm amal rahen to woh nazariya duniya mein apni quwat se khud ba khud phailta chala jayega. ” 

DEEN MEIN KOI JABAR NAHI 

Yeh durust nahi keh islam talwaar ke zor se phaila. Musalman farog-e-islaam ke liye talwar istemal karna chahte bhi to istemal nahi kar sakte the, kiyun keh Qur’an majeed mandarjah zel  aayat mein kehta hai : 

 ﴿ لَا إِكْرَاهَ فِي الدِّينِ ۖ قَد تَّبَيَّنَ الرُّشْدُ مِنَ الْغَيِّ ۚ)

“Deen mein koi jabar nahi, hidayat gumrahi se wazeh ho chuki hai.

[Albaqarah : 2/256]

*HIKMAT KI TALWAAR* 

Farog-e-Islam ka bais darasal hikmat ki talwar hai. Yeh aisi talwar hai jo dil aur dimag fatah kar leti hai. 

Quran kahta hai :-

﴿ ادْعُ إِلَىٰ سَبِيلِ رَبِّكَ بِالْحِكْمَةِ وَالْمَوْعِظَةِ الْحَسَنَةِ ۖ وَجَادِلْهُم بِالَّتِي هِيَ أَحْسَنُ ﴾

logon ko apne Rab ke raste ki taraf hikmat aur behtrin wa’z ke saath bulaen aur un se behtrin tariqe se bahes karen.

[ Al Nahl: 16/125]

NISF SADI MEIN AALAMI MAZAHIB KE PEROKARON MEIN IZAFA

1986 iswi mein readar’s digest ke ek mazmoon mein 1934 iswi se 1984 iswi tak nisf sadi mein duniya ke bare bare mazahib ke perokaron ki tadad mein fisad izafe ke adaad-o-shumar diye gaye the. Ye mazmoon “saaf sach” ( The Plain Truth) naami jaride mein bhi chhapa. Un mein sar-e-fehrist Islam tha jis ke perokaroon ki tadad mein 235 fisad izafa hua aur Esaiat men izafa sirf 47 fisad raha. Puchha ja sakta hai keh is sadi mein konsi  mazhabi jang lari gayi jis ne lakhon logon ko musalman kar diya. 

 
AMERICA AUR EUROPE MEIN ROZAFZON MAZHAB ISLAM HAI

Aaj Europe aur America mein sab se ziyada badhne wala mazhab Islam hai. Wo konsi talwaar hai jo logon ko itni bari tadad mein musalman hone par majboor kar rahi hai ? Ye talwaar Islam ka sachha aqida hai. 

 
DOCTOR JOZAF ADAM PETER SIN SHIH KAHTE HAIN: 

” Jo log fikrmand hain keh aetmi (atomic ) hathyar ek din arab logon ke hath lag jayenge, woh is haqiqat ko samajhne mein nakaam rahte hain keh islami bomb to pahle hi giraya ja chuka hai, yeh us din gira tha jab Mohammad ( Salallahu Alaihi Wasallam) paida hue the – “

Wasn’t Islam spread by the sword?

Some people claim that Islam would not have millions of adherents all over the world if it had not been spread by military force. Many school textbooks contain the picture of an Arab on horseback with the Qur’an in one hand and a sword in the other, symbolizing forcible conversion to the religion.

It has never been permitted to compel people to enter Islam by the use of weapons or any other means. If Islam was spread by the sword, then it was the sword of intellect and convincing arguments, the inherent force of truth, reason and logic – something which conquers the hearts and minds of people everywhere. Far from being spread by the sword, Islam has always accorded respect and freedom of choice to people of all faiths. The Qur’an instructs:

“There shall be no compulsion in [acceptance of] the religion. The right course has become clear from the wrong.” [2: 256]

“Invite to the way of your Lord with wisdom and good instruction, and argue with them in a way that is best.” [16:125]

The facts speak for themselves:

• Indonesia has the largest number of Muslims in the world, and the majority of people in Malaysia are Muslims. But no Muslim army ever went into Indonesia or Malaysia. Muslim traders and educators carried the message of God to those regions and impressed people as outstanding models of honesty and morality.

• Similarly, Islam spread rapidly on the East Coast of Africa although no Muslim army was ever dispatched to East Africa.

• Despite the disappearance of Islamic rule from many regions of Asia and Africa, their people have remained Muslims. This shows that the effect of Islam is one of approval and moral conviction, quite in contrast to that of western colonial occupation which left its formerly subjugated peoples with painful memories of exploitation, affliction and oppression.

• Muslims ruled Spain for over 800 years. It is a documented historical fact that during this period Christians and Jews enjoyed freedom to practice their respective religions. But thereafter, under Christian Spain, Muslims and Jews were subjected to tribunals of inquisition and torture.

• There was no “sword of Islam” held over non-Muslim minorities in Muslim countries. Until fairly recently Christian and Jewish minorities have lived peacefully with their Muslim neighbors in the Middle East[76] If Muslims had made use of the sword there would no longer be Arabs of other religions.

• Because Islamic law protects the status of minorities, places of worship belonging to other faiths are found throughout the Muslim world. Islamic law also allows nonMuslim minorities to set up their own courts to implement family laws drawn up by the minorities themselves. The lives and properties of all citizens, whatever their religion, must be safeguarded by an Islamic government.

• Muslims ruled India for 800 years, during which they possessed enough power and authority to force all the people to convert to Islam. But they did not do so, and thus, more than 80% of the population remains non-Muslim.

• Worldwide statistics for the period from 1934 to 1984 show that adherents to Islam had increased by 235%, while adherents to Christianity had increased by 47%. There was obviously no Islamic conquest during that fifty-year period.

• The fastest growing religion in America and Europe today is Islam in spite of the fact that Muslims in these lands are still small minorities. The only sword they have in their possession is the sword of truth. It is this sword which is converting people to Islam.

[76] The sectarian animosity of recent times has been stirred up largely by political injustices rather than matters of religion
 
REFERENCE:
BOOK: “CLEAR YOUR DOUBTS ABOUT ISLAM”
COMPILED BY : SAHEEH INTERNATIONAL

کیا اسلام بزورِ شمشیر پھیلا؟

 

 

’’اسلام کو امن و سلامتی کا مذہب کیسے کہا جا سکتا ہے جبکہ یہ تلوار کے زور سے پھیلا؟‘‘

 

کچھ غیر مسلم عام طور پر اعتراض اٹھاتے ہیں کہ اسلام کے ماننے والے اتنی زیادہ تعداد میں نہ ہوتے اگر اسلام تلوار کے ذریعے سے نہ پھیلا ہوتا۔ مندرجہ ذیل نکات یہ حقیقت واضح کریں گے کہ اسلام بزورِ طاقت ہر گز نہیں پھیلا بلکہ اپنی عالمگیر صداقت، عقل پر مبنی تصورات اور سچائی پر مبنی دلائل کی بدولت اسلام کو فروغ ملا ہے۔

 

اسلام کا مطلب

اسلام لفظ ’’سلام‘‘ سے نکلا ہے جس کا مطلب ہے سلامتی اور امن۔ اس کا مطلب یہ بھی ہے کہ اپنے آپ کواللہ کی رضا کے آگے جھکا دیا جائے، پس اسلام سلامتی اور امن کا مذہب ہے جو اپنے آپ کو اللہ کی مرضی کے آگے جھکا دینے کی بدولت نصیب ہوتا ہے۔

 

طاقت کا استعمال

دنیا میں ہر انسان امن اور ہم آہنگی قائم رکھنے کے حق میں نہیں ہوتا یا بہت سے لوگ ہوتے ہیں جو اپنے مفادات کے لیے امن و امان کو خراب کرتے ہیں، لہٰذا بعض اوقات امن قائم رکھنے کے لیے طاقت کا استعمال کرنا پڑتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ جرائم کے سد باب کے لیے پولیس کا نظام قائم کیا گیا ہے جو مجرموں اور سماج دشمن عناصر کے خلاف طاقت استعمال کرتی ہے تا کہ ملک میں امن و امان قائم رہے۔ اسلام امن کا خواہاں ہے لیکن اس کے ساتھ ہی اپنے ماننے والوں کو ظلم اور استحصال کے خلاف لڑنے کا حکم دیتا ہے۔ بعض اوقات ظلم سے لڑنے اور اسے ختم کرنے کے لیے طاقت کی ضرورت ہوتی ہے۔ اسلام میں طاقت کا استعمال صرف ظلم کے خاتمے، امن کے فروغ اور عدل کے قیام کے لیے ہے اور اسلام کا یہ پہلو سیرت النبی صلی اللہ علیہ وسلم ، خلفائے راشدین رضی اللہ عنہم کے عہد کے ادوار سے بخوبی آشکار ہوتا ہے۔

 

مؤرخ ڈی لیسی اولیری کی رائے

اس غلط نظریے کا جواب کہ اسلام بزورِ شمشیر پھیلا، ایک انگریز مؤرخ ڈی لیسی اولیری نے اپنی کتاب “Islam at the Cross Road” (صفحہ8) میں بہترین انداز میں دیا ہے:
’’ تاریخ بہر حال یہ حقیقت واضح کر دیتی ہے کہ مسلمانوں کے متعلق روایتی تعصب پر مبنی کہانیاں کہ اسلام تلوار کے زور پر پھیلا اور اس کے ذریعے سے جنونی مسلمان دنیا پر چھا گئے، سب نا معقول اور فضول افسانے ہیں جنھیں مؤرخین نے بار بار دُہرایا ہے۔‘‘

 

سپین میں مسلمانوں کے 800 برس

مسلمانوں نے سپین میں تقریباً 800 سال حکومت کی اور وہاں لوگوں کو مسلمان کرنے کے لیے کبھی تلوار نہیں اٹھائی۔ بعد میں صلیبی عیسائی برسراقتدار آئے تو انھوں نے وہاں سےمسلمانوں کا صفایا کر دیا اور پھر سپین میں ایک بھی مسلمان ایسا نہ تھا جو آزادی سے ’’اذان‘‘ دے سکے۔

 

تقریبا ڈیڑھ کروڑ عرب نسلی عیسائی ہیں

مسلمان دنیائے عرب پر 1400 سال سے حکمران ہیں۔ اس کے باوجود ابھی تک 14 ملین، یعنی ایک کروڑ چالیس لاکھ عرب ایسے ہیں جو نسلوں سے عیسائی ہیں، جیسے مصر کے قبطی عیسائی۔ اگر اسلام تلوار یا طاقت کے زور پر پھیلا ہوتا تو عرب میں ایک بھی عیسائی نہ ہوتا۔

 

بھارت میں غیر مسلم

ہندوستان میں مسلمانوں نے تقریباً ایک ہزار سال حکومت کی۔ اگر وہ چاہتے تو بذریعہ طاقت ہندوستان کے ہر غیر مسلم کو مسلمان کر لیتے۔ آج بھارت کی 80 فیصد آبادی غیر مسلموں کی ہے۔ یہ تمام غیر مسلم کیا اس بات کی زندہ شہادت نہیں ہیں کہ اسلام تلوار سے نہیں پھیلا۔

 

انڈونیشیا اور ملائشیامیں اسلام

دُنیا بھر کے ممالک میں سے انڈونیشیا میں مسلمانوں کی تعداد سب سے زیادہ ہے، اسی طرح ملائشیا میں بھی اکثریت مسلمانوں کی ہے۔ اب کوئی ان سے پوچھے کہ کون سی اسلامی فوج انڈونیشیا اور ملائشیا گئی تھی؟

 

افریقہ کا مشرقی ساحل

اسی طرح اسلام بہت تیزی سے بر اعظم افریقہ کے مشرقی ساحل پر پھیلا۔ مستشرقین سے اسی طرح اسلام بہت تیزی سے بر اعظم افریقہ کے مشرقی ساحل پر پھیلا۔ مستشرقین سے پوچھا جا سکتا ہے کہ اگر اسلام تلوار کے ذریعے سے پھیلا تو کونسی اسلامی فوج افریقہ کے مشرقی ساحل پر گئی تھی۔

 

تھامس کارلائل کی دلیل

مشہور مؤرخ تھامس کارلائل اپنی کتاب ’’ہیرو اینڈ ہیرو ورشپ‘‘ میں اسلام کے پھیلاؤ کے بارے میں مغربی تصورات کی تردید کرتے ہوئے کہتا ہے:

’’ اسلام کے فروغ میں تلوار استعمال ہوئی لیکن یہ تلوار کیسی تھی؟ ایک نظریہ تھا۔ ہر نیا نظریہ شروع میں فردِ واحد کے نہاں خانۂ دماغ میں جنم لیتا ہے۔ وہاں وہ نشوونما پاتا رہتا ہے۔ اس پر دُنیا بھر کا صرف ایک ہی آدمی یقین رکھتا ہے، گویا ایک شخص فکری لحاظ سے تمام انسانوں سے مختلف ہوتا ہے۔ اگر وہ ہاتھ میں تلوار لے اور اس کے ذریعے سے اپنا نظریہ پھیلانے کی کوشش کرے تو یہ کوشش بے سود رہے گی۔ لیکن اگر آپ اپنے نظریے کی تلوار سے سرگرمِ عمل رہیں تو وہ نظریہ دُنیا میں اپنی قوت سے خود بخود پھیلتا چلا جائے گا۔‘‘

 

دین میں کوئی جبر نہیں

یہ درست نہیں کہ اسلام تلوار کے زور سے پھیلا۔ مسلمان فروغ اسلام کے لیے تلوار استعمال کرنا چاہتے بھی تو استعمال نہیں کر سکتے تھے کیونکہ قرآن مجید مندرجہ ذیل آیت میں کہتا ہے:

﴿ لَا إِكْرَاهَ فِي الدِّينِ ۖ قَد تَّبَيَّنَ الرُّشْدُ مِنَ الْغَيِّ ۚ﴾

’’ دین میں کوئی جبر نہیں۔ہدایت گمراہی سے واضح ہو چکی ہے۔‘‘

[ البقرۃ : 256/2]

 

حکمت کی تلوار

فروغِ اسلام کا باعث دراصل حکمت کی تلوار ہے۔ یہ ایسی تلوار ہے جو دِل اور دماغ فتح کر لیتی ہے۔ قرآن کہتا ہے:

 

﴿ ادْعُ إِلَىٰ سَبِيلِ رَبِّكَ بِالْحِكْمَةِ وَالْمَوْعِظَةِ الْحَسَنَةِ ۖ وَجَادِلْهُم بِالَّتِي هِيَ أَحْسَنُ ﴾

 

’’ لوگوں کو اپنے رب کے راستے کی طرف حکمت اور بہترین وعظ کے ساتھ بلائیں اور ان سے بہترین طریقے سے بحث کریں۔‘‘[1]

[النحل : 125/16]

 

نصف صدی میں عالمی مذاہب کے پیروکاروں میں اضافہ

1986ء میں ریڈرز ڈائجسٹ کے ایک مضمون میں 1934ء سے 1984ء تک نصف صدی میں دنیا کے بڑے بڑے مذاہب کے پیروکاروں کی تعداد میں فیصد اضافے کے اعداد و شمار دیے گئے تھے۔ یہ مضمون ’’صاف سچ‘‘ (The Plain Truth) نامی جریدے میں بھی چھپا۔ ان میں سرفہرست اسلام تھا جس کے پیروکاروں کی تعدادمیں 235 فیصد اضافہ ہوا اور عیسائیت میں اضافہ صرف 47فیصد رہا۔ پوچھا جا سکتا ہے کہ اس صدی میں کون سی مذہبی جنگ لڑی گئی جس نے لاکھوں لوگوں کو مسلمان کر دیا۔

 

امریکہ اور یورپ میں روز افزوں مذہب اسلام ہے

آج یورپ اور امریکہ میں سب سے زیادہ بڑھنے والا مذہب اسلام ہے۔ وہ کون سی تلوارہے جو لوگوں کو اتنی بڑی تعداد میں مسلمان ہونے پر مجبور کر رہی ہے؟ یہ تلوار اسلام کا سچا عقیدہ ہے۔

 

ڈاکٹر جوزف آدم پیٹرسن کا اعلانِ حقیقت

ڈاکٹر جوزف آدم پیٹرسن صحیح کہتے ہیں:

’’جو لوگ فکر مند ہیں کہ ایٹمی ہتھیار ایک دن عرب لوگوں کے ہاتھ لگ جائیں گے، وہ اس حقیقت کو سمجھنے میں ناکام رہے ہیں کہ اسلامی بم تو پہلے ہی گرایا جا چکا ہے، یہ اُس دِن گرا تھا جب محمد(صلی اللہ علیہ وسلم ) پیدا ہوئے تھے۔‘‘

 

 

Table of Contents