Sections
< All Topics
Print

24. MARD AUR AURAT KI GAWAAHI MAIN MASAWAAT KIYUN NAHI? [Why is the testimony of two women required in place of one man?]

MARD AUR AURAT KI GAWAHI MEIN MASAWAT KYUN NAHI ? 

“Do (2) aurton ki gawahi ek mard ki gawahi ke brabar kyun nahi? 

“Do (2) aurton ki gawahi hamesha ek mard ki gawahi ke brabar nahi. Qur’an Majeed mein teen ayaat hain jin mein mard aur aurat ki tafriq ke baghair gawahi ke ahkaam aaye hain : 

Werasat ke motalliq wasiyat karte waqt do (2) aadil ashkhas ki gawahi ki zarurat hoti hai. 

Surah Maidah mein Qur’an-e-azeem kahta hai :- 

” يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا شَهَادَةُ بَيْنِكُمْ إِذَا حَضَرَ أَحَدَكُمُ الْمَوْتُ حِينَ الْوَصِيَّةِ اثْنَانِ ذَوَا عَدْلٍ مِّنكُمْ أَوْ آخَرَانِ مِنْ غَيْرِكُمْ إِنْ أَنتُمْ ضَرَبْتُمْ فِي الْأَرْضِ فَأَصَابَتْكُم مُّصِيبَةُ الْمَوْتِ ۚ﴾

“Ae Iman walo! jab tum mein se kisi ko maut aane lage to tumhare darmiyan gawahi honi chahiye,  tarke ki wasiyat ke waqt do (2) insaaf wale apne (musalmano) mein se gawah bana lo ya agar tum zameen mein safar par niklo aur ( raaste mein ) maut ki wasiyat pesh ajaye to ghair qaom ke do (2) ( gawah bhi kaafi honge.)

Talaaq ke mamle mein do aadil ashkhas ko gawah banane ka hukum hai-

” وَأَشْهِدُوا ذَوَيْ عَدْلٍ مِّنكُمْ وَأَقِيمُوا الشَّهَادَةَ لِلّٰهِ”

” Aur tum apne mein se do ashkhas ko gawah bana lo jo aadil hon aur Allah ke liye gawahi do.

[Al Talaq : 65/ 2]

Pakbaaz aurat ke khilaf gawahi ke liye chaar shahadaten darkaar hain : 

 
” وَالَّذِينَ يَرْمُونَ الْمُحْصَنَاتِ ثُمَّ لَمْ يَأْتُوا بِأَرْبَعَةِ شُهَدَاءَ فَاجْلِدُوهُمْ ثَمَانِينَ جَلْدَةً وَلَا تَقْبَلُوا لَهُمْ شَهَادَةً أَبَدًا ۚ وَأُولَـٰئِكَ هُمُ الْفَاسِقُونَ “

” Aur jo log pakbaaz aurton par tohmat lagayen, phir woh chaar gawah pesh na kar saken ( apne ilzam ki tasdik mein ) to unko 80 kore maaro aur unki gawahi kabhi qabool na karo, aur yahi log nafarman hain. 

[Al Noor 24/ 4]

MAALI LEN DEN MEIN AURAT KI GAWAHI 

Yeh sahih nahi keh hamesha do (2)aurton ki gawaahi ek mard ke barabar hogi, yeh sirf chand mamlat ke liye hai. Qur’an mein 5 ayaat hain jin mein gawahi ke bare mein mard aur aurat ki takhsis ke baghair hukum diya gaya hai, aur sirf ek ayat hai jis mein kaha gaya hai keh 2 aurton ki gawahi ek mard ke brabar hai. Yeh surah-e-Baqra ki ayat 282 hai. Maali mamlat ke motalliq yeh Qur’an ki sab se lambi aayat hai. 

Irshaad Baari Ta’la hai :

 
﴿يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا إِذَا تَدَايَنتُم بِدَيْنٍ إِلَىٰ أَجَلٍ مُّسَمًّى فَاكْتُبُوهُ ۚ وَلْيَكْتُب بَّيْنَكُمْ كَاتِبٌ بِالْعَدْلِ ۚ وَلَا يَأْبَ كَاتِبٌ أَن يَكْتُبَ كَمَا عَلَّمَهُ اللّٰهُ ۚ فَلْيَكْتُبْ وَلْيُمْلِلِ الَّذِي عَلَيْهِ الْحَقُّ وَلْيَتَّقِ اللّٰهَ رَبَّهُ وَلَا يَبْخَسْ منه
شَيْئًا ۚ فَإِن كَانَ الَّذِي عَلَيْهِ الْحَقُّ سَفِيهًا أَوْ ضَعِيفًا أَوْ لَا يَسْتَطِيعُ أَن يُمِلَّ هُوَ فَلْيُمْلِلْ وَلِيُّهُ بِالْعَدْلِ ۚ وَاسْتَشْهِدُوا شَهِيدَيْنِ مِن رِّجَالِكُمْ ۖ فَإِن لَّمْ يَكُونَا رَجُلَيْنِ فَرَجُلٌ وَامْرَأَتَانِ مِمَّن تَرْضَوْنَ مِنَ الشُّهَدَاءِ أَن تَضِلَّ إِحْدَاهُمَا فَتُذَكِّرَ إِحْدَاهُمَا الْأُخْرَىٰ ۚ ﴾

“Ae iman walo ! jab tum ek mokarerah muddat ke liye ek dusre se udhaar ka len den karo to use likh lo aur likhne waale ko chahiye keh tumhare darmiyan insaaf se likhe aur likhne wala likhne se inkaar na kare, aur woh shaks likhwaye jis ke zimme qarz ho aur use apne rab, Allah se darna chahiye aur ( likhwate waqt) woh ( maqrooz ) is mein se koi cheez km na karey. Lekin agar woh fard jis ke zimme qarz ho, nadaan ya zaeef ho ya likhwa na sakta ho to uska wali insaaf ke saath likhwaye, aur tum apne musalman mardon mein se do gawah bana lo, phir agar do mard muyassar na hon to ek mard aur do aurten jinhen tum gawahon ke tor par pasand karo ( yeh is liye) keh ek aurat bhul jaaye to un mein se dusri use yaad dila de. 

 [Al Baqara : 2/ 282]

Qur’an ki is aayat mein sirf maali mamlat mein yeh nasihat ki gayi hai keh moahide ko dono fariqon ke mabain likha jaye aur do gawah banaye jayen aur yeh koshish ki jaye keh woh sirf mard hon. Agar do mard na mil saken to phir ek mard aur do aurten kafi hain. 

Islami shariyat mein maali mamlat mein do mardon ko tarjeeh di jaati hai. Islam mard se khandan ki kifalat ki twaqqu karta hai. Chunkeh iqtesadi zimmedari mardon par hai, is liye yeh tawaqqo ki jati hai keh wo len den mein aurton ki nisbat ziyada ilm-o-agahi rakhte hain, dusri surat mein ek mard aur do aurten gawah hongi keh agar ek ghalti par ho to dusri use yaad dila de. Qur’an mein arabi lafz   {تضل} ka matlab hai ” ghalti par hona” ya ” bhool jana”, yun sirf maali mamlat mein do aurton ki gawahi ek mard ki gawahi ke brabar rakhi gayi hai. 

QATAL KE MOQADMAT MEIN NISWANI GAWAHI  

Uske bar’aks kuch logon ki raye hai keh aurton ki shahadat qatal ke mamle mein bhi dohri hai, yani do aurton ki gawahi ek mard ki gawahi ke brabar hai. Is qism ke mamlat mein aurat, mard ki nisbat ziyada khof zadah hoti hai, woh apni jazbati halat ki wajah se pareshan ho sakti hai, isi liye kuch logon ke nazdik qatal ke moqadmat mein bhi do aurton ki gawahi ek mard ki gawahi ke brabar hai – 

Kuch ulema ke nazdik do aurton aur ek mard ki gawahi ki brabri tamam mamlat ke liye hai, is se ittefaq nahi kiya ja sakta. 

Kiyun keh surah-e-noor mein ek mard aur ek aurat ki gawahi ke bare mein wazeh tor par bataya gaya hai : –

 
﴿وَالَّذِينَ يَرْمُونَ أَزْوَاجَهُمْ وَلَمْ يَكُن لَّهُمْ شُهَدَاءُ إِلَّا أَنفُسُهُمْ فَشَهَادَةُ أَحَدِهِمْ أَرْبَعُ شَهَادَاتٍ بِاللّٰهِ ۙ إِنَّهُ لَمِنَ الصَّادِقِينَ وَالْخَامِسَةُ أَنَّ لَعْنَتَ اللّٰهِ عَلَيْهِ إِن كَانَ مِنَ الْكَاذِبِينَ وَيَدْرَأُ عَنْهَا الْعَذَابَ أَن تَشْهَدَ أَرْبَعَ شَهَادَاتٍ بِاللّٰهِ ۙ إِنَّهُ لَمِنَ الْكَاذِبِينَ  وَالْخَامِسَةَ أَنَّ غَضَبَ اللّٰهِ عَلَيْهَا إِن كَانَ مِنَ الصَّادِقِينَ﴾

” Aur jo log apni biwiyon par ilzam lagaen aur unke paas koi gawah na ho siwaye unki apni zaat ke, to in mein se har ek ki shahadat is tarah hogi keh chaar baar Allah ki qasam kha kar kahe keh beshak woh sachon mein se hai, aur panchwi bar yeh kahe : agar woh jhuton mein se ho to us par Allah ki laanat ho, aur us aurat se saza tab talti hai keh woh chaar baar Allah ki qasam kha kar kahe keh bila shuba woh ( iska shohar ) jhuton mein se hai aur panchwi bar yeh kahe keh agar woh (shohar) sachon mein se ho to is ( aurat) par Allah ka ghazab ho. 

 [Al Noor : 24-9/6]
 
HAZRAT AYESHA RAZI ALLAHU ANHA KI GAWAHI 

Hazrat Ayesha raziallahu anha se, jo hamare nabi sallallahu alaihi wasallam ki biwi thIn, kam-o-besh 2220 ke qarib ahadith marwi hain jo sirf unki wahid shahadat ki badolat mustanad hain. Yeh is amar ka waazeh suboot hai keh sirf ek aurat ki gawahi bhi qabool ki jasakti hai. 

Bahot se ulama is baat par muttafiq hain keh ek aurat ki gawahi pehli raat ka chand dekhne ke liye bhi kaafi hai. Andaza karen keh roza rakhne ke liye jo Islam ke arkaan mein se ek ahem rukn hai, ek aurat ki gawahi kaafi hai aur uski gawahi par tamam musalman mard aur aurten roza rakhte hain, kuch fuqaha ke nazdeek aghaz-e-ramadan ke silsile mein ek gawahi darkar hai jab keh uske khatam hone ke liye do (2) gawahiyan zaruri hongi. Is se koi farq nahi parta keh gawahi dene waale mard hon ya aurten. 

BA’Z MAMLAT MEIN AURTON HI KI GAWAHI KO TARJEEH HAASIL HAI

Ba’z mamlat mein sirf khatoon gawah darkaar hoti hai, misal ke tor par aurton ke masail, aurat ki tadfeen ke waqt ghusul ke mamlat mein sirf aurat hi ki gawahi mustanad hogi. Aise mamlat mein mard ki gawahi qubool nahi ki ja sakti. 

Maali mamlat mein mard aur aurat ki gawahiyon mein nazar aane wali adam masawat Islam ke nazdik kisi sinfi adam musawat ki bunyad par nahi balkeh yeh sirf mo’ashre mein aurton aur mardon ke mukhtalif kirdaron ki bina par hai jo Islam ne un ke liye motayyen kiye hain.

Why is the testimony of two women required in place of one man?

What is meant by testimony is: giving information by which something is known to be true and correct. With regard to the witness of two women being equal to the testimony of one man, it is not always the case, but the Qur‟anic verse that specifies this is related only to financial dealings, where two men are preferred and the alternative is one man and two women. Financial transactions constitute the sole case in which two female witnesses are required in place of one male witness. It is in view of the fact that financial responsibility is usually shouldered by men so they are expected to be better versed in financial transactions than women. It also takes into account the more emotional nature of women generally as well as the roles of men and women in society as envisaged by Islam.

This does not reflect inferiority on the woman’s part. Some women surpass most men in many aspects, including religious commitment, reasoning and memory. They may have  a great deal of interest in certain matters and thus able to give proper testimony better than that of a man regarding the issues in which they have knowledge and insight. They can even become references regarding them as did some women at the time of the Prophet. A judge may accept the testimony of any person of exceptional qualifications.

Two female witnesses are not always considered equal to one male witness. There are other verses in the Qur‟an which speak about witnesses without specifying male or female. In those cases, a female witness is equivalent to a male witness. It is well known that Aisha, the Prophet’s wife, related no less than 2220 narrations which are considered authentic only on her solitary evidence. Other women have also been recognized as reliable narrators of prophetic traditions. This is sufficient proof that the witness of one women can be
accepted.

In fact, female witnesses are preferred in certain cases. There are incidents which require only female witnesses and the testimony of a male is not accepted. Issues pertaining to women alone such as childbirth or menstruation as related to divorce disputes and private matters where no men were present obviously necessitate the witness of a woman.

REFERENCE:
BOOK: “CLEAR YOUR DOUBTS ABOUT ISLAM”
COMPILED BY : SAHEEH INTERNATIONAL

مرد ا ور عورت کی گواہی میں مساوات کیوں نہیں؟

 

 

 

’’دو عورتوں کی گواہی ایک مرد کی گواہی کے برابر کیوں ہے؟‘‘

 

دو عورتوں کی گواہی ہمیشہ ایک مرد کی گواہی کے برابر نہیں۔ قرآن مجید میں تین آیات ہیں جن میں مرد اور عورت کی تفریق کے بغیر گواہی کے احکام آئے ہیں:

وراثت کے متعلق وصیت کرتے وقت دو عادل اشخاص کی گواہی کی ضرورت ہوتی ہے۔ سورۂ مائدۃ میں قرآنِ عظیم کہتا ہے:

 

﴿يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا شَهَادَةُ بَيْنِكُمْ إِذَا حَضَرَ أَحَدَكُمُ الْمَوْتُ حِينَ الْوَصِيَّةِ اثْنَانِ ذَوَا عَدْلٍ مِّنكُمْ أَوْ آخَرَانِ مِنْ غَيْرِكُمْ إِنْ أَنتُمْ ضَرَبْتُمْ فِي الْأَرْضِ فَأَصَابَتْكُم مُّصِيبَةُ الْمَوْتِ ۚ﴾

 

’’ اے ایمان والو! جب تم میں سے کسی کو موت آنے لگے تو تمھارے درمیان گواہی ہونی چاہیے، ترکے کی وصیت کے وقت دو انصاف والے اپنے (مسلمانوں) میں سے گواہ بنا لو یا اگر تم زمین میں سفر پر نکلو اور (راستے میں) موت کی مصیبت پیش آ جائے تو غیر قوم کے دو (گواہ بھی کافی ہوں گے)۔[1]

[المائدۃ : 106/5]

 

طلاق کے معاملے میں دو عادل اشخاص کو گواہ بنانے کا حکم ہے۔

 

وَأَشْهِدُوا ذَوَيْ عَدْلٍ مِّنكُمْ وَأَقِيمُوا الشَّهَادَةَ لِلّٰهِ

 

’’ اورتم اپنے میں سے دو اشخاص کو گواہ بنا لو جو عادل ہوں اور اللہ کے لیے گواہی دو۔‘‘

[الطلاق : 2/65]

 

پاکباز عورت کے خلاف گواہی کے لیے چار شہادتیں درکار ہیں:

 

وَالَّذِينَ يَرْمُونَ الْمُحْصَنَاتِ ثُمَّ لَمْ يَأْتُوا بِأَرْبَعَةِ شُهَدَاءَ فَاجْلِدُوهُمْ ثَمَانِينَ جَلْدَةً وَلَا تَقْبَلُوا لَهُمْ شَهَادَةً أَبَدًا ۚ وَأُولَـٰئِكَ هُمُ الْفَاسِقُونَ

 

’’ اور جو لوگ پاکباز عورتوں پر تہمت لگائیں ،پھر وہ چار گواہ پیش نہ کر سکیں (اپنے الزام کی تصدیق میں) تو ان کو 80کوڑے مارو اور ان کی گواہی کبھی قبول نہ کرو۔ اور یہی لوگ نافرمان ہیں۔‘‘

[ النور : 4/24]

 

مالی لین دین میں عورت کی گواہی

 

یہ صحیح نہیں کہ ہمیشہ دو عورتوں کی گواہی ایک مرد کے برابر ہو گی۔ یہ صرف چند معاملات کے لیے ہے۔ قرآن میں 5 آیات ہیں جن میں گواہی کے بارے میں مرد اور عورت کی تخصیص کے بغیر حکم دیا گیا ہے۔ اور صرف ایک آیت ہے جس میں کہا گیا ہے کہ دو عورتوں کی گواہی ایک مرد کے برابر ہے۔ یہ سورۂ بقرۃ کی آیت 282 ہے۔ مالی معاملات کے متعلق یہ قرآن کی سب سے لمبی آیت ہے۔

ارشادِ باری تعالیٰ ہے:

 

﴿يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا إِذَا تَدَايَنتُم بِدَيْنٍ إِلَىٰ أَجَلٍ مُّسَمًّى فَاكْتُبُوهُ ۚ وَلْيَكْتُب بَّيْنَكُمْ كَاتِبٌ بِالْعَدْلِ ۚ وَلَا يَأْبَ كَاتِبٌ أَن يَكْتُبَ كَمَا عَلَّمَهُ اللّٰهُ ۚ فَلْيَكْتُبْ وَلْيُمْلِلِ الَّذِي عَلَيْهِ الْحَقُّ وَلْيَتَّقِ اللّٰهَ رَبَّهُ وَلَا يَبْخَسْ مِنْهُ شَيْئًا ۚ فَإِن كَانَ الَّذِي عَلَيْهِ الْحَقُّ سَفِيهًا أَوْ ضَعِيفًا أَوْ لَا يَسْتَطِيعُ أَن يُمِلَّ هُوَ فَلْيُمْلِلْ وَلِيُّهُ بِالْعَدْلِ ۚ وَاسْتَشْهِدُوا شَهِيدَيْنِ مِن رِّجَالِكُمْ ۖ فَإِن لَّمْ يَكُونَا رَجُلَيْنِ فَرَجُلٌ وَامْرَأَتَانِ مِمَّن تَرْضَوْنَ مِنَ الشُّهَدَاءِ أَن تَضِلَّ إِحْدَاهُمَا فَتُذَكِّرَ إِحْدَاهُمَا الْأُخْرَىٰ ۚ ﴾

 

’’ اے ایمان والو! جب تم ایک مقررہ مدت کے لیے ایک دوسرے سے ادھار کا لین دین کرو تو اسے لکھ لو اور لکھنے والے کو چاہیے کہ تمھارے درمیان انصاف سے لکھے اور لکھنے والا لکھنے سے انکار نہ کرے، جیسے اللہ نے اسے سکھایا ہے اسے لکھنا چاہیے، اور وہ شخص لکھوائے جس کے ذمے قرض ہو اور اسے اپنے رب، اللہ سے ڈرنا چاہیے اور (لکھواتے وقت ) وہ (مقروض) اس میں سے کوئی چیز کم نہ کرے۔ لیکن اگر وہ فرد جس کے ذمے قرض ہو، نادان یا ضعیف ہو یا لکھوا نہ سکتا ہو تو اس کا ولی انصاف کے ساتھ لکھوائے۔ اور تم اپنے مسلمان مردوں میں سے دو گواہ بنا لو، پھراگر دو مرد میسر نہ ہوں تو ایک مرد اور دو عورتیں جنھیں تم گواہوں کے طور پر پسند کرو (یہ اس لیے) کہ ایک عورت بھول جائے تو ان میں سے دوسری اُسے یاد دِلا دے۔‘‘

[ البقرۃ : 282/2]

 

قرآن کی یہ آیت صرف مالی معاملات اور لین دین کے لیے ہے۔ اس قسم کے معاملات میں یہ نصیحت کی گئی ہے کہ معاہدے کو دونوں فریقوں کے مابین لکھا جائے اور دو گواہ بنائے جائیں اور یہ کوشش کی جائے کہ وہ صرف مرد ہوں۔ اگر دو مرد نہ مل سکیں تو پھر ایک مرد اور دو عورتیں کافی ہیں۔

اسلامی شریعت میں مالی معاملات میں دو مردوں کو ترجیح دی جاتی ہے۔ اسلام مرد سے خاندان کی کفالت کی توقع کرتا ہے۔ چونکہ اقتصادی ذمہ داری مردوں پر ہے، اس لیے یہ توقع کی جاتی ہے کہ وہ لین دین میں عورتوں کی نسبت زیادہ علم و آگہی رکھتے ہیں۔ دوسری صورت میں ایک مرد اور دو عورتیں گواہ ہوں گی کہ اگر ایک غلطی پر ہو تو دوسری اُسے یاد دِلا دے۔ قرآن میں عربی لفظ{تَضِلَّ}کا مطلب ہے ’’غلطی پر ہونا‘‘ یا ’’بھول جانا‘‘ ۔یوں صرف مالی معاملات میں دو عورتوں کی گواہی ایک مرد کی گواہی کے برابر رکھی گئی ہے۔

 

قتل کے مقدمات میں نسوانی گواہی

 

اس کے برعکس کچھ لوگوں کی رائے ہے کہ عورتوں کی شہادت قتل کے معاملے میں بھی دوہری ہے، یعنی دو عورتوں کی گواہی ایک مرد کی گواہی کے برابر ہے۔ اس قسم کے معاملات میں عورت، مرد کی نسبت زیادہ خوفزدہ ہوتی ہے۔ وہ اپنی جذباتی حالت کی و جہ سے پریشان ہو سکتی ہے، اسی لیے کچھ لوگوں کے نزدیک قتل کے مقدمات میں بھی دو عورتوں کی گواہی ایک مرد کی گواہی کے برابر ہے۔
کچھ علماء کے نزدیک دو عورتوں اور ایک مرد کی گواہی کی برابری تمام معاملات کے لیے ہے، اس سے اتفاق نہیں کیا جا سکتا کیونکہ سورۂ نور میں ایک مرد اور ایک عورت کی گواہی کے بارے میں واضح طور پر بتایا گیا ہے:

 

﴿وَالَّذِينَ يَرْمُونَ أَزْوَاجَهُمْ وَلَمْ يَكُن لَّهُمْ شُهَدَاءُ إِلَّا أَنفُسُهُمْ فَشَهَادَةُ أَحَدِهِمْ أَرْبَعُ شَهَادَاتٍ بِاللّٰهِ ۙ إِنَّهُ لَمِنَ الصَّادِقِينَ وَالْخَامِسَةُ أَنَّ لَعْنَتَ اللّٰهِ عَلَيْهِ إِن كَانَ مِنَ الْكَاذِبِينَ وَيَدْرَأُ عَنْهَا الْعَذَابَ أَن تَشْهَدَ أَرْبَعَ شَهَادَاتٍ بِاللّٰهِ ۙ إِنَّهُ لَمِنَ الْكَاذِبِينَ وَالْخَامِسَةَ أَنَّ غَضَبَ اللّٰهِ عَلَيْهَا إِن كَانَ مِنَ الصَّادِقِينَ﴾

 

’’ اور جو لوگ اپنی بیویوں پر الزام لگائیں اور ان کے پاس کوئی گواہ نہ ہو سوائے ان کی اپنی ذات کے، تو ان میں سے ہر ایک کی شہادت اس طرح ہو گی کہ چار بار اللہ کی قسم کھا کر کہے کہ بے شک وہ سچوں میں سے ہے۔ اور پانچویں بار یہ کہے: اگر وہ جھوٹوں میں سے ہو تو اس پر اللہ کی لعنت ہو۔ اور اس عورت سے سزا تب ٹلتی ہے کہ وہ چار بار اللہ کی قسم کھا کر کہے کہ بلاشبہ وہ (اس کا شوہر) جھوٹوں میں سے ہے اور پانچویں بار یہ کہے کہ اگر وہ (شوہر) سچوں میں سے ہو تو اس (عورت) پر اللہ کا غضب ہو۔‘‘ 

[النور : 9-6/24]

 

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا کی گواہی

 

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے،جو ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی بیوی تھیں، کم و بیش 2220 کے قریب احادیث مروی ہیں جو صرف ان کی واحد شہادت کی بدولت مستند ہیں۔ یہ اس امر کا واضح ثبوت ہے کہ صرف ایک عورت کی گواہی بھی قبول کی جا سکتی ہے۔

بہت سے علماء اس بات پر متفق ہیں کہ ایک عورت کی گواہی پہلی رات کا چاند دیکھنے کے لیے بھی کافی ہے۔ اندازہ کریں کہ روزہ رکھنے کے لیے جو اسلام کے ارکان میں سے ایک اہم رکن ہے ،ایک عورت کی گواہی کافی ہے اور اس کی گواہی پر تمام مسلمان مرد اور عورتیں روزہ رکھتے ہیں۔ کچھ فقہاء کے نزدیک آغازِ رمضان کے سلسلے میں ایک گواہی درکار ہے جبکہ اس کے ختم ہونے کے لیے دو گواہیاں ضروری ہوں گی۔ اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا کہ گواہی دینے والے مرد ہوں یا عورتیں۔

 

بعض معاملات میں عورتوں ہی کی گواہی کو ترجیح حاصل ہے

 

بعض معاملات میں صرف خاتون گواہ درکار ہوتی ہے، مثال کے طور پر عورتوں کے مسائل۔ عورت کی تدفین کے وقت غسل کے معاملات میں صرف عورت ہی کی گواہی مستند ہو گی۔ایسے معاملات میں مرد کی گواہی قبول نہیں کی جاسکتی۔

 

معاملات میں مرد کی گواہی قبول نہیں کی جاسکتی۔

 

مالی معاملات میں مرد اور عورت کی گواہیوں میں نظر آنے والی عدم مساوات اسلام کے نزدیک کسی صنفی عدم مساوات کی بنیاد پر نہیں بلکہ یہ صرف معاشرے میں عورتوں اور مردوں کی مختلف نوعیت اور مختلف کرداروں کی بنا پر ہے جو اسلام نے اُن کے لیے متعین کیے ہیں۔

 

 

Table of Contents