Sections
< All Topics
Print

23. ISLAM KA NEZAM-E-WERASAT GHAIR MUNSIFANAH KYUN ? [Why is a woman’s share of inheritance half that of a man?]

ISLAM KA NEZAM-E-WERASAT GHAIR MUNSIFANAH KYUN ? 

 

Islami qawanin-e-werasat mein aurat ka hissa mard ki nisbat aadha kyun hai ?

 

Qur’an-e-azeem mein bahot si ayaat hain jin mein wirse ki jayez taqsim se mutalliq ahkam bayan kiye gaye hain, maslan : 1 ) surah baqrah ayat : 180 aur 2402 ) surah nisa ayat : 7-9 aur aayat 19 aur 333) surah Mayida ayat : 106 ta 108 rishtedaron ka wirasat mein makhsoos hissa Qur’an majeed mein 3 ayaat hain jo wazeh tor par qareebi rishtedaron ke wirasat mein moqarrerah hisse bayan karti hain, woh darj zel hain :-

 
﴿ يُوصِيكُمُ اللّٰهُ فِي أَوْلَادِكُمْ ۖ لِلذَّكَرِ مِثْلُ حَظِّ الْأُنثَيَيْنِ ۚ فَإِن كُنَّ نِسَاءً فَوْقَ اثْنَتَيْنِ فَلَهُنَّ ثُلُثَا مَا تَرَكَ ۖ وَإِن كَانَتْ وَاحِدَةً فَلَهَا النِّصْفُ ۚ وَلِأَبَوَيْهِ لِكُلِّ وَاحِدٍ مِّنْهُمَا السُّدُسُ مِمَّا تَرَكَ إِن كَانَ لَهُ وَلَدٌ ۚ فَإِن لَّمْ يَكُن لَّهُ وَلَدٌ وَوَرِثَهُ أَبَوَاهُ فَلِأُمِّهِ الثُّلُثُ ۚ فَإِن كَانَ لَهُ إِخْوَةٌ فَلِأُمِّهِ السُّدُسُ ۚ مِن بَعْدِ وَصِيَّةٍ يُوصِي بِهَا أَوْ دَيْنٍ آبَاؤُكُمْ وَأَبْنَاؤُكُمْ لَا تَدْرُونَ أَيُّهُمْ أَقْرَبُ لَكُمْ نَفْعًا ۚ فَرِيضَةً مِّنَ اللّٰهِ ۗ إِنَّ اللّٰهَ كَانَ عَلِيمًا حَكِيمًا وَلَكُمْ نِصْفُ مَا تَرَكَ أَزْوَاجُكُمْ إِن لَّمْ يَكُن لَّهُنَّ وَلَدٌ ۚ فَإِن كَانَ لَهُنَّ وَلَدٌ فَلَكُمُ الرُّبُعُ مِمَّا تَرَكْنَ ۚ مِن بَعْدِ وَصِيَّةٍ يُوصِينَ بِهَا أَوْ دَيْنٍ ۚ وَلَهُنَّ الرُّبُعُ مِمَّا تَرَكْتُمْ إِن لَّمْ يَكُن لَّكُمْ وَلَدٌ ۚ فَإِن كَانَ لَكُمْ وَلَدٌ فَلَهُنَّ الثُّمُنُ مِمَّا تَرَكْتُم ۚ مِّن بَعْدِ وَصِيَّةٍ تُوصُونَ بِهَا أَوْ دَيْنٍ ۗ وَإِن كَانَ رَجُلٌ يُورَثُ كَلَالَةً أَوِ امْرَأَةٌ وَلَهُ أَخٌ أَوْ أُخْتٌ فَلِكُلِّ وَاحِدٍ مِّنْهُمَا السُّدُسُ ۚ فَإِن كَانُوا أَكْثَرَ مِن ذَٰلِكَ فَهُمْ شُرَكَاءُ فِي الثُّلُثِ ۚ مِن بَعْدِ وَصِيَّةٍ يُوصَىٰ بِهَا أَوْ دَيْنٍ غَيْرَ مُضَارٍّ ۚ وَصِيَّةً مِّنَ اللّٰهِ وَاللّٰهُ عَلِيمٌ حَلِيمٌ ٢﴾
 

” Allah tumhen tumhari aulad ke motalliq wasiyat karta hai : mard ka hissa do aurton ke hisse ke brabar hai. Phir agar 2 ya 2 se zyada aurten hi hon to unke liye tarke mein 2 tehai hissa hai, aur agar ek hi beti ho to uske liye aadha hissa, aur us (marne waley) ke waldain mein se har ek ke liye tarke mein chhata hissa hai aur agar uski aulad ho, lekin agar uski aulad nahi aur waldain hi us ke waris hon to uski maan ke liye teesra hissa hai aur agar us ke ( ek se zyada ) bhai bahen hon to uski maan ke liye chhata hissa hai. ( yeh taqseem) uski wasiyat par amal ya qarz ki adaigi ke baad hogi. Tum nahi jante keh tumhare waldain ya aulad mein se kon ba lehaz e nafa tumhare zyada qareeb hai. Yeh ( taqseem ) Allah ki taraf se moqarrar hai, beshak Allah khoob janne wala bari hikmat wala hai, aur jo kuch tumhari biwiyan chhor jayen us mein tumhara nisf hissa hai agar unki koi aulad na ho, lekin agar unki koi aulad ho to unke tarke mein tumhara chotha hissa hai. ( yeh taqseem) unki wasiyat par amal ya qarz ki adaegi  ke baad hogi, aur agar tumhari aulad na ho to tumhare tarke mein tumhari biwiyon ka chotha hissa hai, lekin agar tumhari aulad ho to tumhare tarke mein unka aathwan hissa hai.( yeh taqseem) tumhari wasiyat par amal ya adaegi qarz ke bad hogi, aur agar woh admi jis ka wirsa taqsim kiya ja raha ho, uska beta ho na baap, ya aisi hi aurat ho aur uska ek bhai ya ek behen ho to un dono mein se har ek ke liye chhata hissa hai, lekin agar unki tadad is se zyada ho to woh sab ek tehai hisse mein sharik honge. ( yeh taqseem  ) uski wasiyat par amal ya qarz ada karney ke baad hogi jab keh woh kisi ko nuqsan pahonchane wala na ho. Yeh Allah ki taraf se takid hai aur Allah khoob janne wala bare hilm wala hai. ” 

[Al Nisa : 4-12/ 11]

 

 Mazeed farmaya :- 

 
﴿ يَسْتَفْتُونَكَ قُلِ اللّٰهُ يُفْتِيكُمْ فِي الْكَلَالَةِ ۚ إِنِ امْرُؤٌ هَلَكَ لَيْسَ لَهُ وَلَدٌ وَلَهُ أُخْتٌ فَلَهَا نِصْفُ مَا تَرَكَ ۚ وَهُوَ يَرِثُهَا إِن لَّمْ يَكُن لَّهَا وَلَدٌ ۚ فَإِن كَانَتَا اثْنَتَيْنِ فَلَهُمَا الثُّلُثَانِ مِمَّا تَرَكَ ۚ وَإِن كَانُوا إِخْوَةً رِّجَالًا وَنِسَاءً فَلِلذَّكَرِ مِثْلُ حَظِّ الْأُنثَيَيْنِ ۗ يُبَيِّنُ اللّٰهُ لَكُمْ أَن تَضِلُّوآوَاللّٰهُ بِكُلِّ شَيْءٍ عَلِيمٌ ﴾
 

“(Aey nabi ! ) log aap se fatwa mangte hain, kah dijiye : Allah ” Kalaala ” ke bare mein hukum deta hai, agar koi shakhs mar jaye jis ki aulad na ho aur uski bahen ho to uske liye bhai ke chhore hue maal ka aadha hissa hai, aur agar bahen ki aulad na ho to uska bhai uska waaris hoga. Lekin agar bahnen do (2) (ya ziyada ) hon to bhai ke tarke mein unke liye 2 tehayi hai, aur agar kai bhai bahen, mard aur aurten ( waaris ) hon to mard ka hissa 2 aurton ke hisse ke brabar hoga. Allah tumhare liye bayan karta hai takeh tum gumrah na ho jao, aur Allah khoob janney wala hai – ”

[Al Nisa 4/ 176] 

 

AURAT KA HISSA BRABAR BALKEH ” 2 GUNA ” BHI HO SAKTA HAI 

 

Werasat ki aksar suraton mein aurton ko mardon se nisf milta hai, ta ham yeh hamesha nahi hota, agar marne waale ke maan baap ya koi beta beti na hon lekin ikhyaafi ( maan ki taraf se sage سگے ) bhai aur bahen hon to dono mein se har ek ko chhata hissa milega aur agar marne wale ne bachhe chhore hon to maan aur baap dono mein se har ek ko chhata hissa milega,ba’az surton mein ek aurat ko mard ki nisbat 2 guna hissa bhi mil sakta hai, agar marne waali aurat ho aur uske bachhe aur bhai bahen na hon aur uska shohar aur maan baap waaris hon to shohar ko aadhi jaedad jab keh maan ko teesra hissa aur baap ko baaqi chhata hissa mileyga. 

 

Is mamle mein bhi maan ka hissa baap se 2 guna hai. 

 
MARDON KI NISBAT KHAWAATEEN KA HISSA NISF KAB HAI ? 

 

Yeh theek hai keh aam qaedey ke mutabiq aurten mard ki nisbat wirasat mein aadha hissa leti hain, maslan darj zel surton mein : 

Beti ko wirasat mein bete se nisf milega. 

Aurton ko aathwan hissa milega aur shohar ko chotha, agar marne waale / waali ki aulad ho. 

Aurat ko chotha hissa aur shohar ko aadha milega agar marhoom / marhumah ki aulad na ho. 

Agar marne waale ke maan baap ya aulad na ho to bahen ko bhai ke kul tarke ka nisf mile ga. 

 

MARD KA HISSA 2 GUNA KYUN?

 

Islam mein khandan ki kefalat ki zimmedari mard par hai. Shadi se pahle baap ya bhai ki zimmedari hai keh woh aurat ki rehaish, libaas aur dusri maali zaruriyat puri kare aur shadi ke baad ye zimmedari shohar ya bete ki hai. Islam mard ko paband karta hai keh woh khandan ki maali zaruriyat ka zimmedar hai, is zimmedari ko pura karne ke liye use wirasat mein 2 guna hissa milta hai. Misal ke tor par agar ek shaks derh lakh rupiye chhor kar mar jaye jiski ek beti aur ek beta ho to bete ko ek lakh aur beti ko 50 hazar milenge. Ek lakh rupiye jo bete ko warse mein milenge woh un mein khandan ki kafalat ka zimmedar hai, aur ho sakta hai woh khandan par tamam raqam ya yun kahiye 80 hazar rupiye kharch kar de, yun dar haqiqat use warse mein se bahot kam hissa milega, yani 20 hazar rupiye, dusri taraf beti jis ko 50 hazar milen ge woh kisi par ek rupiyah bhi kharch karne ki paband nahi, woh tamam raqam khud rakh sakti hai. Kya aap woh ek lakh rupiye lene ko tarjih denge jin mein se aapko 80 hazar rupiye ya zayid raqam auron par kharch karni pare ya woh 50 hazar rupiye lenge jo makammal tor par aap hi ke hon ?

Why is a woman’s share of inheritance half that of a man?

 

The Islamic system of property distribution after death is based on rulings ordained by God in the Qur‟an. It abolished the former custom in which the entire estate was taken by the oldest male heir and established the right of children, parents and spouses to inherit a specific share without leaving the matter to human judgement and emotion. When Islam established inheritance for the woman, it was the first time in history that women were able to enjoy this right. The Qur‟an stipulates that a woman automatically inherits from her father, husband, son and her childless brother.

This system of inheritance is perfectly balanced and is based on the closeness of relationship, also taking into account the responsibilities imposed upon various members of a family in different situations. In the absence of close relatives a share is apportioned to more distant ones.

When the male is given a larger share there is a logical reason behind it, which is that in Islam economic responsibility is always upon the man while the woman has no financial obligations even if she should be wealthy or have her own income. Generally, the woman is in charge of running the household and taking care of those within it, so she is justly freed from financial responsibilities. When unmarried it is the legal obligation of her father, brother or guardian to provide her food, clothing, medication, housing and other needs. After marriage it becomes the duty of her husband or adult son. Islam holds men responsible by law for fulfilling all the needs of their families. So the difference in shares does not in any way mean that one sex is preferred over the other. Rather, it represents a just balance consistent with the needs and responsibilities of family members.

When a son and a daughter inherit from either of their parents, the son’s share will be depleted by giving an obligatory dowry to his wife upon marriage and maintaining his family, including his sister until she marries. While the daughter has no required expenses, she still receives a share of the inheritance which is her own property to save, invest or use as she pleases. When she marries she will also receive a dowry from her husband and be maintained by him, having no financial  responsibilities whatsoever. Thus, one might conclude that Islam has favored women over men!

Although in most cases the male inherits a share that is twice that of a female, it is not always so. There are certain circumstances when they inherit equal shares, and in a few instances a female can inherit a larger share than that of the male. In addition, a Muslim can will up to one third of his property by bequest to anyone who would not inherit from him by law. The bequest may be a means of assistance to other relatives and people who are in need, whether men or women. One may also allocate this portion or part of it to charities and good works of his choice.

 

REFERENCE:
BOOK: “CLEAR YOUR DOUBTS ABOUT ISLAM”
COMPILED BY : SAHEEH INTERNATIONAL

اسلام کا نظامِ وراثت غیر منصفانہ کیوں؟

 

’’اسلامی قوانینِ وراثت میں عورت کا حصہ مرد کی نسبت آدھا کیوں ہے؟‘‘

قرآن عظیم میں بہت سی آیات ہیں جن میں ورثے کی جائز تقسیم سے متعلق احکام بیان کیے گئے ہیں، مثلاً:

1) سورۂ بقرۃ آیات: 180 اور 240
2) سورۂ نساء آیات: 9-7 اور آیات 19 اور 33
3) سورۂ مائدۃ آیات: 106 تا 108

رشتہ داروں کا وراثت میں مخصوص حصہ

قرآن مجید میں 3 آیات ہیں جو واضح طور پر قریبی رشتہ داروں کے وراثت میں مقررہ حصے بیان کرتی ہیں، وہ درج ذیل ہیں:

﴿ يُوصِيكُمُ اللّٰهُ فِي أَوْلَادِكُمْ ۖ لِلذَّكَرِ مِثْلُ حَظِّ الْأُنثَيَيْنِ ۚ فَإِن كُنَّ نِسَاءً فَوْقَ اثْنَتَيْنِ فَلَهُنَّ ثُلُثَا مَا تَرَكَ ۖ وَإِن كَانَتْ وَاحِدَةً فَلَهَا النِّصْفُ ۚ وَلِأَبَوَيْهِ لِكُلِّ وَاحِدٍ مِّنْهُمَا السُّدُسُ مِمَّا تَرَكَ إِن كَانَ لَهُ وَلَدٌ ۚ فَإِن لَّمْ يَكُن لَّهُ وَلَدٌ وَوَرِثَهُ أَبَوَاهُ فَلِأُمِّهِ الثُّلُثُ ۚ فَإِن كَانَ لَهُ إِخْوَةٌ فَلِأُمِّهِ السُّدُسُ ۚ مِن بَعْدِ وَصِيَّةٍ يُوصِي بِهَا أَوْ دَيْنٍ آبَاؤُكُمْ وَأَبْنَاؤُكُمْ لَا تَدْرُونَ أَيُّهُمْ أَقْرَبُ لَكُمْ نَفْعًا ۚ فَرِيضَةً مِّنَ اللّٰهِ ۗ إِنَّ اللّٰهَ كَانَ عَلِيمًا حَكِيمًا وَلَكُمْ نِصْفُ مَا تَرَكَ أَزْوَاجُكُمْ إِن لَّمْ يَكُن لَّهُنَّ وَلَدٌ ۚ فَإِن كَانَ لَهُنَّ وَلَدٌ فَلَكُمُ الرُّبُعُ مِمَّا تَرَكْنَ ۚ مِن بَعْدِ وَصِيَّةٍ يُوصِينَ بِهَا أَوْ دَيْنٍ ۚ وَلَهُنَّ الرُّبُعُ مِمَّا تَرَكْتُمْ إِن لَّمْ يَكُن لَّكُمْ وَلَدٌ ۚ فَإِن كَانَ لَكُمْ وَلَدٌ فَلَهُنَّ الثُّمُنُ مِمَّا تَرَكْتُم ۚ مِّن بَعْدِ وَصِيَّةٍ تُوصُونَ بِهَا أَوْ دَيْنٍ ۗ وَإِن كَانَ رَجُلٌ يُورَثُ كَلَالَةً أَوِ امْرَأَةٌ وَلَهُ أَخٌ أَوْ أُخْتٌ فَلِكُلِّ وَاحِدٍ مِّنْهُمَا السُّدُسُ ۚ فَإِن كَانُوا أَكْثَرَ مِن ذَٰلِكَ فَهُمْ شُرَكَاءُ فِي الثُّلُثِ ۚ مِن بَعْدِ وَصِيَّةٍ يُوصَىٰ بِهَا أَوْ دَيْنٍ غَيْرَ مُضَارٍّ ۚ وَصِيَّةً مِّنَ اللّٰهِ وَاللّٰهُ عَلِيمٌ حَلِيمٌ٢﴾

 

’’اللہ تمھیں تمھاری اولاد کے متعلق وصیت کرتا ہے: مرد کا حصہ دو عورتوں کے حصے کے برابر ہے۔ پھر اگر (دو یا ) دو سے زیادہ عورتیں ہی ہوں تو ان کے لیے ترکے میں دو تہائی حصہ ہے۔ اور اگر ایک ہی بیٹی ہو تو اس کے لیے آدھا حصہ، اور اس (مرنے والے) کے والدین میں سے ہر ایک کے لیے ترکے میں چھٹا حصہ ہے اگر اس کی اولاد ہو، لیکن اگر اس کی اولاد نہیں اور والدین ہی اس کے وارث ہوں تو اس کی ماں کے لیے تیسرا حصہ ہے اور اگر اس کے (ایک سے زیادہ) بھائی بہن ہوں تو اس کی ماں کے لیے چھٹا حصہ ہے۔ (یہ تقسیم) اس کی وصیت پر عمل یا قرض کی ادائیگی کے بعد ہو گی۔ تم نہیں جانتے کہ تمھارے والدین یا اولاد میں سے کون بلحاظ نفع تمھارے زیادہ قریب ہے۔ یہ (تقسیم) اللہ کی طرف سے مقرر ہے، بے شک اللہ خوب جاننے والا بڑی حکمت والا ہے۔ اور جو کچھ تمھاری بیویاں چھوڑ جائیں اس میں تمھارا نصف حصہ ہے اگر ان کی کوئی اولاد نہ ہو، لیکن اگر ان کی کوئی اولاد ہو تو ان کے ترکے میں تمھارا چوتھا حصہ ہے۔ (یہ تقسیم) ان کی وصیت پر عمل یا قرض کی ادائیگی کے بعد ہو گی۔ اور اگر تمھاری اولاد نہ ہو تو تمھارے ترکے میں تمھاری بیویوں کا چوتھا حصہ ہے، لیکن اگر تمھاری اولاد ہو تو تمھارے ترکے میں ان کا آٹھواں حصہ ہے۔ (یہ تقسیم) تمھاری وصیت پر عمل یا ادائیگی ٔقرض کے بعد ہو گی۔ اور اگر وہ آدمی جس کا ورثہ تقسیم کیا جا رہا ہو، اُس کا بیٹا ہو نہ باپ، یا ایسی ہی عورت ہو اور اس کا ایک بھائی یا ایک بہن ہو تو ان دونوں میں سے ہر ایک کے لیے چھٹا حصہ ہے۔ لیکن اگر ان کی تعداد اس سے زیادہ ہو تو وہ سب ایک تہائی حصے میں شریک ہوں گے۔ (یہ تقسیم) اس کی وصیت پر عمل یا قرض ادا کرنے کے بعد ہو گی جبکہ وہ کسی کو نقصان پہنچانے والا نہ ہو۔ یہ اللہ کی طرف سے تاکید ہے اور اللہ خوب جاننے والا بڑے حوصلے والا ہے۔‘‘

[النساء : 12-11/4]

 

مزیدفرمایا:

﴿ يَسْتَفْتُونَكَ قُلِ اللّٰهُ يُفْتِيكُمْ فِي الْكَلَالَةِ ۚ إِنِ امْرُؤٌ هَلَكَ لَيْسَ لَهُ وَلَدٌ وَلَهُ أُخْتٌ فَلَهَا نِصْفُ مَا تَرَكَ ۚ وَهُوَ يَرِثُهَا إِن لَّمْ يَكُن لَّهَا وَلَدٌ ۚ فَإِن كَانَتَا اثْنَتَيْنِ فَلَهُمَا الثُّلُثَانِ مِمَّا تَرَكَ ۚ وَإِن كَانُوا إِخْوَةً رِّجَالًا وَنِسَاءً فَلِلذَّكَرِ مِثْلُ حَظِّ الْأُنثَيَيْنِ ۗ يُبَيِّنُ اللّٰهُ لَكُمْ أَن تَضِلُّوآوَاللّٰهُ بِكُلِّ شَيْءٍ عَلِيمٌ ﴾

’’( اے نبی!) لوگ آپ سے فتویٰ مانگتے ہیں، کہہ دیجیے: اللہ ’’کلالہ‘‘ کے بارے میں حکم دیتا ہے، اگر کوئی شخص مر جائے جس کی اولاد نہ ہو اور اس کی ایک بہن ہو تو اس کے لیے بھائی کے چھوڑے ہوئے مال کا آدھا حصہ ہے، اور اگر بہن کی اولاد نہ ہو تو اس کا بھائی اس کا وراث ہو گا۔لیکن اگر بہنیں دو (یا زیادہ) ہوں تو بھائی کے ترکے میں ان کے لیے دو تہائی ہے۔ اور اگر کئی بھائی بہن، مرد اور عورتیں (وارث) ہوں تو مرد کا حصہ دو عورتوں کے حصے کے برابر ہو گا۔ اللہ تمھارے لیے بیان کرتا ہے تاکہ تم گمراہ نہ ہو جاؤ۔ اوراللہ ہر چیز کو خوب جاننے والا ہے۔‘‘

[ النساء : 176/4 ]

 

عورت کاحصہ برابر بلکہ’’ دوگنا‘‘ بھی ہو سکتا ہے

 

وراثت کی اکثر صورتوں میں عورتوں کو مردوں سے نصف ملتا ہے، تا ہم یہ ہمیشہ نہیں ہوتا۔ اگر مرنے والے کے ماں باپ یا کوئی بیٹا بیٹی نہ ہوں لیکن اخیافی (ماں کی طرف سے سگے) بھائی اور بہن ہوں تو دونوں میں سے ہر ایک کو چھٹا حصہ ملے گا۔ اور اگر مرنے والے نے بچے چھوڑے ہوں تو ماں اور باپ دونوں میں سے ہر ایک کو چھٹا حصہ ملے گا۔

بعض صورتوں میں ایک عورت کو مرد کی نسبت دو گنا حصہ بھی مل سکتا ہے۔ اگر مرنے والی عورت ہو اور اس کے بچے اور بھائی بہن نہ ہوں اور اس کا شوہر اور ماں باپ وارث ہوں تو شوہر کو آدھی جائیداد جبکہ ماں کو تیسرا حصہ اور باپ کو باقی چھٹا حصہ ملے گا۔

 

[علمائے وراثت کے نزدیک یہ مسئلہ ’’عمریتین‘‘ کے نام سے معروف ہے اور اس میں متوفیہ کی ماں کو خاوند کا حصہ ادا کرنے کے بعد باقی مال کا ایک تہائی ملتا ہے جبکہ باپ کو باقی مال کا دو تہائی ملتا ہے جو عورت کے حصے سے دو گنا ہی ہے ، ڈاکٹر صاحب موصوف کی رائے درست معلوم نہیں ہوتی۔ دیکھیے: ’’فقہ المواریث ‘‘ و ’’تفہیم المواریث ‘‘استاذ فاروق اصغر صارم]

اس معاملے میں بھی ماں کا حصہ باپ سے دوگنا ہے۔

 

مردوں کی نسبت خواتین کاحصہ نصف کب ہے؟

 

 یہ ٹھیک ہے کہ عام قاعدے کے مطابق عورتیں مرد کی نسبت وراثت میں آدھا حصہ لیتی ہیں، مثلاً درج ذیل صورتوں میں:

بیٹی کو وراثت میں بیٹے سے نصف ملے گا۔

عورت کو آٹھواں حصہ ملے گا اور شوہر کو چوتھا، اگر مرنے والے/والی کی اولادہو۔
عورت کو چوتھا حصہ اور شوہر کو آدھا ملے گا اگر مرحوم/مرحومہ کی اولادنہ ہو۔
اگر مرنے والے کے ماں باپ یا اولاد نہ ہو تو بہن کو بھائی کے کل ترکے کا نصف ملے گا۔

 

مرد کاحصہ دو گناکیوں؟

 

اسلام میں خاندان کی کفالت کی ذمہ داری مرد پر ہے۔ شادی سے پہلے باپ یا بھائی کی ذمہ داری ہے کہ وہ عورت کی رہائش، لباس اور دوسری مالی ضروریات پوری کرے اور شادی کے بعد یہ ذمہ داری شوہر یا بیٹے کی ہے۔ اسلام مرد کو پابند کرتا ہے کہ وہ خاندان کی مالی ضروریات کا ذمہ دار ہے۔ اس ذمہ داری کو پورا کرنے کے لیے اسے وراثت میں دوگنا حصہ ملتا ہے۔ مثال کے طور پر اگر ایک شخص ڈیڑھ لاکھ روپیہ چھوڑ کر مر جائے جس کی ایک بیٹی اور ایک بیٹا ہو تو بیٹے کو ایک لاکھ اور بیٹی کو 50 ہزار ملیں گے۔ ایک لاکھ روپے جو بیٹے کو ورثے میں ملیں گے وہ ان میں خاندان کی کفالت کا ذمہ دار ہے۔ اور ہو سکتا ہے وہ خاندان پر تمام رقم یا یوں کہیے 80 ہزار روپے خرچ کر دے۔ یوں در حقیقت اسے ورثے میں سے بہت کم حصہ ملے گا، یعنی 20 ہزار روپے۔ دوسری طرف بیٹی جس کو 50 ہزار ملیں گے وہ کسی پر ایک روپیہ بھی خرچ کرنے کی پابند نہیں۔ وہ تمام رقم خود رکھ سکتی ہے۔ کیا آپ وہ ایک لاکھ روپے لینے کو ترجیح دیں گے جن میں سے آپ کو 80ہزار روپے یا زائد رقم اوروں پر خرچ کرنی پڑے یا وہ 50 ہزار روپے لیں گے جو مکمل طور پر آپ ہی کے ہوں؟

Table of Contents