Sections
< All Topics
Print

03. RABI Al AWWAl

03. Rabi-Ul-Awwal

Fazail-O-A’amaal Aur Rasoomaat

Rabi-Ul-Awwal


Waja-e-Tasmiya


Arabon ke han ye maheena Mosam-e-Bahaar ka pehla maheena qarar paya tha, Is liye isay Rabi-ul-Awwal kehte hein.[1]

 


Faza’il:


 

Rabi-ul-Awwal islami sal ka teesara maheena hai. Yeh maheena is aitbar se nihayat mumtaz hai keh is maheene ki 9 tareekh hi ko hmare Paighembar Nabi-e-Arabi Sayyad-ul-Awwaleen Wal Aakhireen Hazrat Muhammad ﷺ ki Wiladat-e-Ba sa’adat hui aur isi maheene ki 12 tareekh ko Ap ﷺ  is duniya se rehlat farma gay.


Masnoon A’amaal:


Is maheene se makhsoos kisi naik amal ki fazilat ke bare mein koi nass Quran-o-Hadith mein nahin hai na is ki koi fazilat hi kisi Hadith mein bayan ki gai hai, Lihaza jo masnoon a’amaal aam dinon mein kiye jate hein , Woh is maheene bhi kiye jaen.


Rusoom-o-Bid’aat:


 

Rabi-ul-Awwal ka chand dekh kar logon ko “Eid Mubarak” kehna ya Aamad-e-Eid ka ailan karna. Maheena bhar Mahafil-e-Milad ka in’aqad karte rehna aur mahafil mein Aamad-e-Mustfa ﷺ ka intazar karte huwe ta’azeeman khade ho jana. Ya 12 Rabi-ul-Awwal ko “Teesari eid” qarar dena aur us ko Allah aur Rasool ﷺ ki muqarar karda donon Eidon se ziyada aham samajhna, Neez Jashan-e-Meelad manana aur Bason, Karon, Tiraliyon aur bail gadiyon ki soorat mein  juloos nikalna ya us mein shirkat karna. Mukhtalif muqamaat par jhandiyan lagana aur mubalagha aamez na’atein padhna, Khana Ka’aba, Roza-e-Mubarka, Masjid-e-Nabvi aur deegar Muqamaat-e-Muqaddasa ke model bana kar un ka tawaf karna, Aatish bazi, Hullad bazi, Raqas-o-Suroor ki makhloot aur ghair makhloot mehfilein jamana, Waghera waghera hein.

 


Eid-e-Milad Aur Chand  Qabil-e-Ghor Pehloo!


 

1: Salha sal se mazkoora bid’aat dekhane mein aa rahi hein, Bil-khasoos 12 Rabi-ul-Awwal ko badi dhoom dham se Nabi-e-Akram ﷺ ka Yoam-e-Wiladat manaya jata hai. Jaga jaga juloos nikalte hein. Gali gali charaghan hota hai. Khane pakane ka bhi khoob khoob ahtamam aur aik ajib jashan ka sa saman hota hai. Isay kehne ko bhi “Jashan-e-Milad” ya “Eid Milad” kaha jata hai, Halankeh islam mein Eidein siraf 2 hi hein.

Bila shubah yeh sab manazir awam ki Nabi Akram ﷺ ke sath walihana Aqeedat-o-Muhabbat ka mazhar hain. Lekin Qabil-e-Ghor bat yeh hai keh humein Nabi ﷺ ke sath kis qisam ki muhabbat ka hukam diya geya hai. Aaya mhabbat ka matlab yeh hai keh hum sal mein siraf aik roz Ap ﷺ ki wiladat ka jashan mana lein? Ya muhabbat ka taqaza yeh hai keh hum Ap ﷺ ke laye huye Deen-e-Islam ko apni zindagi mein bhi nafiz karein aur apne Girad-o-Paish ke mahol ko bhi us ke mutabiq banane ki Hatt-ul-Maqdoor sa’i karein.

Agar Awwal-ul-Zikar bat hai to zahir hai keh is khud saakhta Mayar-e-Muhabbat ki roo se to Sahaba-e-Kiraam رضی اللہ عنہم Taabi’een-e-Izzam aur Aaima-e-Deen bhi Nabi Kareem ﷺ ki muhabbat se begana qarar paen gay kiyounkeh “Jashan-e-Milad” ka yeh ahtamaam Sahaba-e-Kiraam, Tabi’een aur Aaima-e-Deen mein se kisi ne bhi nahin kiya. Na kisi ne is ka hukam diya.

Agar muhabbat ka mafhoom woh hai jo Sahaba-e-Kiraam ne samjha Tabi’een-o-Taba-e-Taabi’een ne samjha aur Imaman-e-Deen ne samjha keh Ap ﷺ ke laaye huye deen ko apnaya jaye, Apne kirdar ko deen ke sanche mein dhala jaye aur deeni Iqdaar-o-Riwayaat ko farogh diya jaye jesa keh Sahaba-o-Tabi’een aur Aaima-e-Deen ne kiya to phir sochane wali bat yeh hai keh keya hamara ye “Jashan-e-Milad” is se kisi qisam ki koi munasibat rakhta hai ?

 

2: Nabi-e-Akram ﷺ ke farman ki roo se deen mein apni taraf se izafa mardood aur na Qabil-e-Qabool hai :

 

من احدث فی امرنا ھذا ما لیس منہ فھو رد [2]

 

Neez Ap ﷺ ka farman hai keh deen mein izafa shuda kam (bid’at) mardood hi nahin balkeh gumrahi hai jo jahannum mein le jane wali hai.

((کل بدعۃ ضلالۃ وکل ضلالۃ فی النار))

 

“Har bid’at gumrahi hai aur har gumrahi jahannum mein le jane wali hai.”[3]

 

Jab yeh wazih ho geya keh “Eid-e-Milad” ka koi shara’i saboot nahin na Sahaba-o-Tabi’een aur Aaima-e-deen (Imam Malik, Imam Shafai, Imam Ahmad Bin Hanbal aur Imam Abu Hanifa  رحمۃ اللہ علیہم aur deegar aaima ne isay manaya. Balkeh Khair-ul-Qaroon ke kai so sal ke bad is ki eijad hui to yeh kam Nabi ﷺ ke farman ke mutabiq “bid’at” hi qarar paye ga. Ab ap khud soch lein keh bid’at ka irtakab kar ke ap “Sawab” kama rahe hein ya apni tamam nekiyan hi barbad kar rahe hein?

 

3: Nabi-e-Akram ﷺ ki wafat ke bare mein aksar Ahl-e-Ilam-o-Ahl-e-Tareekh ka qoal hai keh 12 Rabi-ul-Awwal ko hui hai. Isi liye 12 Rabi-ul-Awwal ka din “Barah wafat” ke nam se mashhoor chala aa raha hai, Neez Ap ﷺ ki Tareekh-e-Wiladat ke bare mein ikhtilaf hai. Ulma-e-Muhaqqiqeen ne to 8 ya 9 Rabi-ul-Awwal hi ko Ap ﷺ ka Yom-e-Wiladat sahih batlaya hai. [4] Taham 12 Rabi-ul-Awwal hi ko Ap ﷺ ka Yoam-e-Wiladat bhi tasleem kar liya jaye ( jesa keh us roz Jashan-e-Wiladat manaya jata hai) to zahir hai keh yehi roz Ap ﷺ ki wafat ka bhi hai.

Is aitbar se zara sochiye! Ke kaya Nabi-e-Akram ﷺ ki wafat wale din “Jashan” manana sahih hai? Agar koi gher muslim ap se pooch bethe keh bhai! Yeh tum apne Nabi ﷺ ki wafat ka Jashan mana rahe ho ya wiladat ka? Kiyounkeh yeh tareekh to Ap ﷺ ki wafat ki bhi hai to is ka kaya ma’aqool jawab hamare pas hai?

 

4: Phir khushi ya “Jashan” manane ka yeh andaz, Jis ka muzahara 12 Rabi-ul-Awwal ko kiya jata hai. Islam mein is ki koi gunjaish bhi hai? Khushi ke moqa’a par juloos nikalna, Charaghan karna, Luddiyan, Bhangde aur dhamalein dalna, Deen-e-Islam se in ka koi ta’aluq bhi hai? Jawab yaqinan nafi mein hoga. Islam ne hamare liye 2 Eidein muqarrar farmai hein lekin un mein namaz padhne aur Takbeer-o-Tahleel ka hi hukam hai. Is ke ilawa kisi bat ka hukam nahin. Lekin teesari “Eid-e-Milad” is mein Takbeer-o-Tahleel ke ilawa sab kuch kiya jata hai balke bade ahtamam se kiya jata hai, Halankeh yeh sara andaz gher islami hai jis ka deen se koi ta’aluq hi nahin hai. Jis tarah apne Akaabir ka “Yoam” manana aik gher islami fe’al hai. Isi tarah Zer-e-Behas “Jashan-e-Milad” manane ka andaz bhi az awwal ta aakhir gher islami hai. Balkeh kuffar ki naqqali aur mushabahat hai, Halankeh humein kuffar ki mushabahat ikhtiyar karne se roka geya hai aur Nabi ﷺ ne to yahan tak farmaya hai:

 

((من تشبہ بقوم فھو منہم))

 

” Jo kisi qoam ki mushabihat ikhtiyar kare ga, Woh unhi mein se samjha jaye ga.”[5]

 

Behar hal jis aitbar se bhi dekha jaye “Jashan-e-Milad” ki koi Shara’i-o-Deeni hasiyat samajh mein nahin aaye gi. Yeh Muhabbat-e-Rasool ﷺ ke unwan par aisa khokhala Muzahra-e-Aqeedat hai jis ki taaeed na Quran se hoti hai na Hadith se, Na Sahaba-o-Tabi’een ke kirdar se na Aaima-e-Deen ke Aqwal-o-Af’aal se.

 

5: Phir sab se ziyada Qabil-e-Ghor bat to yeh hai keh musalmanon ke liye sab se ziyada aham cheez to Ap ﷺ ki wiladat nahin risaalat hai. Yoam-e-Risaalat hi se musalmanon ko woh tuheed mili jis se Gumgushatan-e-Badiya-e-Zalaalat mahroom thay. Yeh Da’awat-e-Tuheed hi Kuffar-o-Mushrikeen-e-Makkah ke liye achunbhay ki cheez thi aur unhon ne kaha:

 

اَجَعَلَ الْاٰلِـهَةَ اِلٰــهًا وَّاحِدًا   ښ اِنَّ ھٰذَا لَشَيْءٌ عُجَابٌ 

 

” Yeh to sab ma’aboodon ko (khatam kar ke) aik  ma,abood thehrata hai yeh to badi hi ta’ajub wali bat hai.”[6]

 

Is Yoam-e-Risaalat hi se Ap ﷺ ki zat musalmanon ke liye Wajib-ul-Ita’at thehri aur Ap ﷺ ki ita’at aur Ap ﷺ ki tabe’adari Allah ki ita’at aur Us ki mhabbat ka ma’ayar qarar paai. irshad-e-Bari Taala hai:

 

مَنْ يُّطِعِ الرَّسُوْلَ فَقَدْ اَطَاعَ اللّٰهَ

“Jis ne Rasool ﷺ ki ata’at ki us ne Allah ki ata’at ki.”[7]

 

Aura

 

قُلْ اِنْ كُنْتُمْ تُحِبُّوْنَ اللّٰهَ فَاتَّبِعُوْنِيْ يُحْبِبْكُمُ اللّٰهُ وَيَغْفِرْ لَكُمْ ذُنُوْبَكُمْ

 

“Keh dijiye! Agar tum Allah se muhabbat karna chahte ho to meri perwi karo tum Allah ke mahboob ban jao gay aur woh tumhare gunah bhi ma`af farma de ga.”[8]

 

Is Yoam-e-Risalat hi se musalmanon ko Iman-o-Akhlaq ki woh Dolat-e-Lazawal hasil hui jis ki barkat se musalman Arab-o-Ajam par cha gay. Iran-o-Rooma jesi Azeem-ul-Shan hukoomaton ko rond dala aur duniya ke khazane un ke qadmon mein dher ho gay.

Yeh barkat aur shan, Yeh aijaz aur taseer kis ki thi? Muhammad Bin Abdullah ki nahin. Muhammad Rasool Allah ﷺ ki thi. Muhammad Bin Abdullah ﷺ ko to Kuffar-e-Makkah bhi mante thay, Un ke akhlaq ke mu’atraf aur rasat bazi ke bhi qa’il thay. Lekin 40 sala Muhammad Bin Abdullah jab Muhammad Rasool Allah ﷺ bane aur Da’awat-e-Tuheed di to Mushrikeen-e-Makkah jo pehle in ki rahon mein Deeda-o-Dil bichhaya karte thay, Unhon ne kante bichhane shuru kar diye, Un ko lahoo luhan kiya aur qadam qadam par muzahmat ki aur mukhalifat ka aik toofan khada kar diya. Un ki muhabbat, Mukhalifat mein aur ta’aluq, Dushmani mein kiyoun badla? Keya unhein rasat bazi se kad thi? Akhlaqiyat-e-Islam se inkar tha? Yaqinan nahin, Yeh qadrein to un ke han bhi ma’aroof thien aur woh Rasool Allah ﷺ ki izzat bhi isi liye karte thay keh Ap ﷺ in insani qadron ke hamil thay.

Unhein ikhtilaf huwa to usi Da’awat-e-Tuheed se, Da’awat-e-Musawat-e-Qanoon se aur Muhammad ﷺ ko ba-Hasiyat-e-Rasool tasleem karne se. Aj bhi agar hum siraf apne peghambar ke Husan-e-Akhlaq ki ta’areef karein. Un ke Husan-e-Sarapa ka naqsha kheenchein aur Muhammad Bin Abdullah ka Yoam-e-Wiladat dhoom dham se manaein. Lekin un ki Da’awat-e-Tuheed se Ai’raz-o-Taghaful ho. Aur qabron par Kufar-o-Shirak ki garam bazari aur Muhammad Rasool Allah  ﷺ ki hasiyat se to hum un ko tasleem karne mein mataammil hon aur Un ki is masnad par Aima ko bitha dein. Un ke ilawa doosaron ke Aqwal-o-Ijtihad ko Wajib-ul-Ita’at samjhein to zara ghor kijiye keh hum mein aur Mushrikeen-e-Makkah mein phir keya faraq hai?

Is liye mohtaram! Asal cheez Yoam-e-Wiladat dhoom dham se manana nahin, Ap ﷺ ke Paigham-e-Tuheed par iman lana hai, Kufar-o-Shirak ko mitana hai, Ap ﷺ ki un ta’alimaat ko apnana hai, Jin ke apnane se musalmanon ko urooj hasil huwa, Qabron ke Laat-o-Manaat aur Uzza-o- Hubal ko todna hai aur aqeedat aur ita’at ke un mehwaron ko tabdeel karna hai jis ne musalmanon ko aik Markaz-e-Risaalat se hata kar beesiyon firqon mein tabdeel kar diya hai. Agar yeh nahin. Ya’ani Muhammad Rasool Allah ﷺ ki risaalat aur Iman-o-Tuheed ke taqazon ko nahin man’na to phir Muhammad Bin Abdullah ki “Wilaadat” ka “Jashan” aik Fareb-e-Nafas se ziyada koi hasiyat nahin rakhta.

بہ مصطفے برساں خویش را کہ دیں ہمہ اوست
اگر   بہ    او   نہ   رسیدی تمام بولہی  است

“Seerat Goi” se ziyada “Seerat Saazi” ki zaroorat:


 

markazi Wizaarat-e-Mazhabi Umoor ke tahat Islamabad mein aur Mahkamaa-e-Uqaaf ke tahat soobon mein kai sal se Rabi-ul-Awwal ke maheene mein salaana seerat conferensein bade Tazak-o-Ahtisham se ho rahi hein, in conferenson mein mulak ke mumtaz rehnuma, Ulma-o-Fuzla, Aur Mufakkreen-o-Ahal-e-Qalam shirkat karte hein. Jin ki Aamad-o-Rafat aur mehman nawazi par lakhon rupiya kharach hota hai.

Bila shubah Rasool Allah ﷺ ki Seerat-e-Muqadassa poori duniya ke liye aik behtareen aur be misal namoona hai. لَقَدْ كَانَ لَكُمْ فِيْ رَسُوْلِ اللّٰهِ اُسْوَةٌ حَسَنَةٌ  [9]

Nabi ﷺ ne aa kar fil-waq’e sanam Kuda-e-Arab mein tuheed ka alam buland farmaya. Shirak-o-Kufar ke zulmaat nikal kar logon ke dilon ko Tuheed-o-Hidayat-e-Rabbani ke noor se munawwar kiya. Akhlaq bakhta logon ko ba akhlaq balkeh Muallam-e-Akhlaq banaya, Apas ke Bughaz-o-Innad ko door kar ke un mein Muhabbat-o-Ulfat paida ki. Buttan-e-Rang-o-Nasal ko tod kar pori Ummat-e-Muslima ko yak qalib banaya aur Tamayyuz-e-ma wa to ko mitaya, Gharaz Muhammad Arbi Nabi ﷺ ne sisakti hui insaniyat ko sahara diya aur usay mushrikana Aqa’id-o-Tawahhumat aur Akhlaq-e-Razeela ki daldal se nikal kar tuheed aur Akhlaq-e-Aaliya ki Sirat-e-Mustaqeem par gaamzan farmaya.

Musalmanon ke liye apne Azeem-ul-Shan paighamber ﷺ ka yeh be misal karnama jis ki nazeer Tareekh-e-Insaniyat mein nahin milti, Intihai Qabil-e-Fakhar (lekin Qata-e-Nazar baaz doosari aham baton ke) is silsile mein asal sawal yeh hai keh Nabi Kareem ﷺ ka yeh insaniyat saz kirdar is la’iq hai keh sab musalman is ko apnain aur is ko ikhtiyar karein? Ya is ki hasiyat siraf yeh hai keh sal ba sal Ap ﷺ ki wiladat ke moqa’a par Ap ﷺ ke Mahasin-o-Taaleemat ka zubani izhar kar ke Aqeedat-o-Tahseen ke chand phool Ap ﷺ ki Zaat-e-Girami ko paish kar diye jaen aur bas……. Agar Ap ﷺ ki seerat Mozoo-e-Guftar hi hai to phir hum mein aur ghair muslimon mein keya faraq raha? Guftar ki had tak to ghair muslim bhi Ap ﷺ ki khidmat mein Khiraj-e-Tahseen paish karte hein aur in karnamon ko woh bhi tasleem karte hein jo jalsa haye seerat mein bayan kiye jate hein.

Aur agar Ap ﷺ ki seerat is laa’iq hai keh is se siraf Zuban-o-Bayan ki mehfilon ko hi sajane ka kam na liya jaye balkeh us ke sath sath amlan woh Seerat-o-Kirdar bhi apnaya jaye jin se Ap ne Duniya-e-Insaniyat ko rooshanas kiya to humein batlaya jaye keh phir aakhir hamari sargarmiyan Jalsa-o-Juloos tak hi mahdood ho kar kiyoun reh gai hein! Hum Nabi Akram ﷺ ki ta’aleemaat ko apnane ke liye kiyoun tayyar nahin hote? Aur jis hisab se zubani aqeedat ka Josh-o-Kharosh zahir kiya ja raha hai isi hisab se hamara Amal-o-Kirdar past tar kiyon hota ja raha hai? Isi hisab se hamare dilon ki duniya kiyoun tareek tar hoti ja rahi hai? Ap ﷺ ke Mahasin-o-Faza’il ki goonj se hamare apne hi kan kiyoun be-behra hein? Aur Ap ﷺ ki Seerat-o-Kirdar ki is roshani se jis se sara aalam Buqa’a-e-Noor bana, Hamari apni hi ankhein kiyoun mahroom hein? Behar hal hamara maqsad is haqiqat ka izhar hai keh asal cheez amal hai, Us ke bagher mahaz zubani Aqeedat-o-Muhabbat ka izhar koi cheez nahin.

                            تعصی الالہ وانت تزعم حبہ                              ھذا محال ، فی القیاس بدیع
                            لو کان    حبک    لاطعتہ                                           ان المحب   لمن  یحب مطیع [10]

Kaya Mahaz Seerat Conferenson Ka In’aqaad Aur Murawwja Rusoomaat Ka ahtamam Hi Kafi Hai?


Rabi-ul-Awwal main “Aqeedat-o-Muhabbat ” ke unwan se jo kuch kiya jata hai, Jese Juloos nikala jata hai jis mein duniya bhar ki behoodgiyan rawa rakhi jati hein, Chimte bajaye jate hein, Filmi dhunon par na’atein padhi jati hein, Bhangsa dala jata hai aur dhol ki thaap par raqas kya jata hai, Bhala in cheezon ka islam se kaya t’aluq? Islam ne to in sab cheezon ko mitaya tha. Ab phir Paighembar-e-Islam ﷺ ke nam par hi in khurafaat ka ahya kis qadar Shokh-e-Chashmana jasaarat hai. Zaroorat to is bat ki thi keh hukoomat jis ka da’awa hai islam us ka deen hai, In Ijad-e-Banda rusoomaat ka Sadd-e-Bab karti, Is liye keh islam ki ibtidaai 6 sadiyon mein Yoam-e-Milad-ul-Nabi ﷺ ko koi hasiyat nahin di gai na koi molood ko janta tha, Na koi is ko padhta tha, Na koi “Manata” tha, Ehad-e-Nabvi, Ehad-e-Sahaba-o-Tabi’een hatta keh charon mazhabon ke imam aur un ke talamiza se koi is ki asal nahin milti aur deen ke nam par kiye gaye aise naye kam bid’at kehlate hein. Har islami hukoomat ka faraz hai keh aisi bid’aat ka qala’a qama’a kare lekin afsos keh hamari hukoomaton ke Taraz-e-Amal se in rusoomaat ki hosala afzaai ho rahi hai.

Wizaarat-e-Mazhabi umoor aur Mahkama-e-Uqaaf ki taraf se jo Seerat Conferensein musalsal kai Sal se hamare mulak mein ho rahi hein. Bayan-e-Seerat ki had tak to yeh theek hai aur maqsad aur jazba agar sahih hai to is ke Kar-e-Khair hone mein bhi koi shubah nahin. Lekin Molood-e-Murawwaj ke moqa’a par in ka in’aqaad Mahall-e-Nazar hai kiyounkeh is tarah un ka ta’aluq un hi bid’aat se jud jata hai jin ka hum ne guzishta satoor mein kiya hai. Yeh kisi aur maheene mein rakhi jaein to behtar hai takeh barkhud ghalat logon ne “Jashan-e-Wilaadat” ke unwan se jo ghair shara’i rasmein ijad kar li hein in seerat conferenson se un ki hosala afzaai na ho.

Dosare, Hukoomat ke pas har tarah ke wasa’il mojood hein aur woh Nabi ﷺ ki seerat ke pehloo’on ko amlan ujaagar karne ki salahiyat se behrawar hai. Woh siraf seerat conferenson ke ina’aqaad se apne mansabi faraaiz ki adaa’igi se uhda bar’aa nahin ho sakti ta aankeh woh amali iqdamaat bhi Baroo-e-Kar na laaye.

Is liye hum Wizaarat-e-Mazhabi umoor, Mahkama-e-Uqaaf aur hukoomat ke deegar aham zimmedaron se araz karein gay keh Nabi ﷺ se jazbati wabistagi ke muzahre se kuch buland ho kar Seerat-e-Nabwi ko amlan apnane ki shadeed zaroorat hai. Hamara mulak akhlaqi zawal ki intiha ko pohanch chuka hai, Qabar parasti ki soorat mein Karobar-e-Laat-o-Manaat urooj par hai, Rang-o-Nasal aur zuban ke woh but, Jin ko Paighembar-e-Islam ﷺ ne pash pash kar diya tha, Hum ne na sirf apne hareem dil ke taqon mein saja liye hein balkeh un ki parastish bhi kar rahe hein, Jis ka muzahara Sindh ke ilaqon aur Karachi waghera mein saalha saal se ho raha hai aur jis ka silsila waqfe waqfe se ta haal jari hai.

In halaat mein ba Bang-e-Dehal majma’a laga kar logon ko yeh sunana keh hamare paighembar ﷺ ne yeh yeh karname anjam diye, Jabkeh khud hamari apni zindagi ka aik aik amal, Aik aik ada aura aik aik harkat Paighembar-e-Islam ke karnamon par Khat-e-Nasakh pher rahi ho, Kon sa danishmandana fe’al hai? Aur yeh Aqal-o-Faham ka kon sa sahih ista’amaal hai keh Nushkha-e-Kemiya bhi mojood ho aur mareez bhi jan ba-lab bhi samne pada karrah raha ho lekin hum is Nuskha-e-Kemiya se jan ba-lab mareez ka ilaj karne ki bajaye is amar ka ahtamaam karein keh ziyada se ziyada logon ka ijtima’a kar ke hum un ke samne Nuskha-e-Kemiya ke woh Asraat-o-Nataa’ij aur fawaid bayan karein jo aj se 1400 sal pehle jan ba-lab qom ko us ke istimal se hasil hue thay.

Hamari is harkat se duniya ya to humein hi ahmaq tasawwur kare gi ya phir in karnamon ko hi Dastaan-e-Taraazi samjhe gi jo hum Nabi ﷺ ki seerat ke ziman mein bayan karte hein aur jo seerat conferenson ka khas mozoo’a hote hein. Behar hal akhlaqi inhitat se do char qom ko seerat goi ki nahin, Seerat sazi ki zaroorat hai. Is silsile mein agar kuch kar sakte ya  karne ka azam rakhte hein to seerat sazi ka yeh kam kariye!

 

Agar yeh nahin to phir kuch nahin baba

قُلْ اِنْ كُنْتُمْ تُحِبُّوْنَ اللّٰهَ فَاتَّبِعُوْنِيْ يُحْبِبْكُمُ اللّٰهُ وَيَغْفِرْ لَكُمْ ذُنُوْبَكُمْ

 

“( Aye paigember !) Ap keh dijiye: Agar tum Allah se muhabbat karte ho to meri pairwi karo, Allah tum se muhabbat kare ga aur tumhare gunah ma`af kar de ga.”[11]

 


Milad-Ul-Nabi Shubhaat Ka Azaala:


Yeh bat tasleem shuda hai keh Nabi-e-Kareem ﷺ, Sahaba, Taabi’een, Mash’hoor Aaima ke ahad mein Milad-ul-Nabi ki mahfilein muna’aqid karne ka koi tasawwur nahin tha lekin un ke jawaz ke liye Nabi-e-Kareem ﷺ aur Sahaba ke ba’az aqwaal aur af’aal se istadlal karne ki koshish ki jati hai. Yahan un shubhaat ka izala daraj zail hai:

1: Jab Nabi-e-Kareem ﷺ Madinah tashreef laaye to yahoodi aashoora ka roza rakha karte thay. Ap ﷺ ne un se poocha to woh kehne lage: Is din Allah Taala ne Fiaon ko gharaq kiya aur Moosa علیہ السلام ko nijat di thi. Hum shukrane ke tor par roza rakhte hein. Ap  ﷺ ne farmaya:

 

)) فانا احق بموسی منکم، فصامہ وامر بصیامہ ((

 

” Main tumhari nisbat Moosa علیہ السلام ka zayada haqdar hon. Ap ﷺ ne khud bhi roza rakha aur doosaron ko rakhane ka hukam diya.”[12]


Izaala:

Nabi-e-Kareem ﷺ ne sirf yahoodiyon ko dekh kar yeh roza shuru nahin kiya tha balkeh Makkah mein bhi Ap ﷺ aashoora ka roza rakhte thay aur doosaron ko rakhane ka hukam dete thay. Jab Ramzan ke roze faraz ho gay to Ap ﷺ ne isay logon ki sawabdeed par chod diya. Sayyidah Ayesha Siddiqa رضی اللہ عنہا farmati hein:

)) کان یوم عاشوراء تصومہ قریش فی الجاھلیۃ، فلما قدم المدینۃ صامہ وامر بصیامہ، فلما فرض رمضان ترک یوم عاشوراء، فمن شاء صامہ ومن شاء ترکہ ((

” Aashoora ke din quraish roza rakha karte thay. Rasool Allah ﷺ bhi ba’asat se pehle hi se us din roza rakha karte thay. Jab Ap ﷺ Madinah aaye. Ap ﷺ ne khud bhi roza rakha aur doosaron ko bhi roza rakhne ka hukam diya. Jab Ramzan ke roze faraz ho gay to Ap ﷺ ne aashoora ka roza tarak kar diya. Jo chahe roza rakhe jo chahe na rakhe.”[13]

 

Sayyiduna Moa’awiya رضی اللہ عنہ bayan karte hein keh main ne Rasool Allah ﷺ ko farmate huwe suna:

 

)) ھذا یوم عاشوراء ولم یکتب اللہ علیکم صیامہ وانا صائم، فمن  شاء   فلیصم  و من شاء فلیفطر ((

 

“Yoam-e-Aashoora ka roza Allah ne tum par faraz nahin kiya, Main ne roza rakha huwa hai. Tum mein se jo chahe roza rakhe aur jo chahe na rakhe.” [14]

 

Aashoora ka roza Nabi-e-Kareem ﷺ ne khud bhi rakha hai aur doosaron ko bhi rakhane ki targheeb di hai. Is ke bar-akas Eid-e-Milad na Rasool Allah ﷺ ne manaai, Na Sahabah ne manaai na Tabi’een se is ka suboot milta hai na Aaima-e-Izzam hi ne is ka ahtamam kiya, Isay aik masnoon amal par kese qiyas kiya ja sakta hai? Rasool Allah ﷺ ne wazih tor par deen mein naye umoor ijad karne se mana’a farmaya hai: Sayyiduna Irbaz Bin Sariya رضی اللہ عنہ bayan karte hein keh Rasool Allah ﷺ ne farmaya:

 

)) ایاکم والامور المحدثات، فان کل بدعۃ ضلالۃ((

 

” Nay nay kam ijad karne se bachna, Kiyounkeh har bid’at gumrahi hai.”  [15]

 

Aur bahut si doosari Ahadith hein jin ka zikar muqaddama mein guzar chuka hai.

 

2: Eid Milad-ul-Nabi ke liye is Hadith se bhi istidlal kiya jata hai, Rasool Allah ﷺ se peer ke roze ke mut’aliq pocha geya to Ap ﷺ ne farmaya:

 

)) ذاک یوم ولدت فیہ، ویوم بعثت فیہ ((

 

” Is din meri pedaish hui aur isi din mujhe Nubuwwat ata ki gai. “[16]

 

Ap ﷺ apne Yoam-e-Pedaish ki ta’azeem kiya karte thay aur apni pedaish ki khushi mein roza rakha karte thay.

 

Izalah:

 

Rasool Allah ﷺ sirf peer ko roza nahin rakha karte thay balkeh pee aur jumerat ka roza rakha karte thay aur us ki wajah Ap ﷺ ne yeh batai:

 

))تعرض الاعمال یوم الاثنین والخمیس، فاحب ان یعرض عملی وانا صائم ((

 

“Peer aur jumerat ko a’amaal paish kiye jate hein. Mujhe yeh bat pasand hai, Jab mere a’amaal paish hon to main roze ki haalat mein hon.”[17]

 

Rasool Allah ﷺ har peer ko roza rakha karte thay na keh siraf 12 Rabi-ul-Awwal ko.

 

Is Hadith se to mahaz is qadar hi istadlal kiya ho sakta hai keh us din roza rakha jaye, Baqi sargarmiyon ka jawaz kahan se nikal sakta hai? Jabkeh Allah Taala wazih tor par irshad farmata hai:

 

يٰٓاَيُّهَا الَّذِيْنَ اٰمَنُوْا لَا تُـقَدِّمُوْا بَيْنَ يَدَيِ اللّٰهِ وَرَسُوْلِهٖ وَاتَّقُوا اللّٰهَ ۭ اِنَّ اللّٰهَ سَمِيْعٌ عَلِيْمٌ        Ǻ۝

 

“Aye Iman walo! Tum Allah aur us ke rasool se aagay na badho aur tum Allah se daro, Bila shubah Allah khoob sunane wala, Khoob janne wala hai.”[18]

 

Mazeed irshad farmaya:

 

وَمَآ اٰتٰىكُمُ الرَّسُوْلُ فَخُذُوْهُ    ۤ وَمَا نَهٰىكُمْ عَنْهُ فَانْتَهُوْا 

 

“Aur Allah ka Rasool tumhein jo kuch de woh le lo aur jis se mana’a kare usay chod do.”[19]

 

Dilchasap bat yeh hai keh istidlal to Nabi-e-Kareem ﷺ ke roza rakhne se kiya jata hai, Lekin us din roza bilkul nahin rakha jata, Balkeh bahut se afrad ne likha hai keh us din roza rakhna makrooh hai.

Iban-e-Ibad aur Iban-e-Aashir ne is din roza rakhne se mana’a kiya hai. Shaikh Abu Abdullah Muhammad Bin Muhammad Bin Abd ul Rahman Tarabilsi apni kitab “Mawahib-ul-Jalil Sharah Mukhatasir Khalil” mein likhte hein, Shaik Zarooq “SharahAl-Qurtabiyah” mein bayan farmate hein:

 

)) انہ من اعیاد المسلمین فینبغی ان لایصام فیہ((

 

” Yeh din musalmanon ki Eidon mein se hai, Is din roza rakhna munasib nahin hai.”[20]

 

Shaikh Ahmad Bin Khalid Al Nasiri apni kitab “Al-Istiqsa’a Li-Akhbaar Doal-ul-Maghrib Al-Aqsa” (ki jilad doam, safha :144 ) mein likhte hein keh main Sahil-e-Samundar ki taraf geya. Mujhe Ibn-e-Aashir aur un ke mureed milay jo khane peene mein mashghool thay. Unhon ne mujhe bhi khane mein shareek hone ki da’awat di. Main ne bataya ke main ne roza rakha huwa hai, Unhon ne na-pasandeeda nazron se mujhe dekha aur kaha:

 

)) ھذا یوم فرح وسرور یستقبح فی مثلہ الصوم کالعید  ((

 

“Yeh khushi aur lutaf andoz hone ka din hai. Eid ki tarah is din bhi roza rakhna intihaai buri bat hai.” [21]

Rasool Allah ﷺ ne to 7 dinon ko Eid qarar diya hai

 

  • Anas رضی اللہ عنہ bayan karte hain keh Rasool Allah ﷺ Madina tashree laaye, Aur un logon ke haan 2 din muqarar thay, Un mein woh khel kood kiya karte thay, Ap ﷺ ne pocha ye 2 din keya hein? Unhon ne kaha keh hum Daur-e-Jahiliyyat mein in dinon mein khelte koodate thay to Rasool Allah ﷺ na farmaya:
)) ان اللہ قد ابدلکم بھما خیرا  منھما :  یوم الاضحی،  ویوم الفطر  ((

 

“Beshak Allah Taala ne tumhein in ke badle in se achay din diye hein. Azha (qurbani) aur Fitar ka din.” [22]

 

  • Uqba Bin Amir رضی اللہ عنہ bayan karte hein, Rasool Allah ﷺ ne farmaya:
)) یوم العرفۃ ویوم النحر وایام التشریق عیدنا، اھل الاسلام، وھی ایام اکل وشرب ((

 

Arfa (9 Zil-Hajjah), Nahar (Al-Azha) aur Ayyam-e-Tashreeq (Eid-Ul-Azha ke baad wale 3 din) hum Ahal-e-Islam ke liye Eid ke din hein.[23]

 

  • Isi tarah Jumma ke mut’alliq Ap ﷺ ne irshad farmaya:
)) ان یوم الجمعۃ   یوم عید، فلاتجعلوا یوم عیدکم یوم صیامکم الا ان تصوموا قبلہ او بعدہ ((

 

“Beshak Jumme ka din Wid ka din hai, Apne is Eid ke din roza na rakho magar yeh keh is se aik din pehle ya baad mein roza rakho.” [24]

 

Rasool Allah ﷺ ne to inhi saat dinon ko Eid qarar diya hai. Ab Eid ka aathawan din kahan se aa geya?  Allah Taala to wazih andaz mein ailan farmata hai:

 

اَلْيَوْمَ اَ كْمَلْتُ لَكُمْ دِيْنَكُمْ وَاَتْمَمْتُ عَلَيْكُمْ نِعْمَتِيْ وَرَضِيْتُ لَكُمُ الْاِسْلَامَ دِيْنًا

 

” Aj main ne tumhare liye tumhara deen mukammal kar diya aur tum par apni ne’amat poori kar di aur tumhare liye islam ko deen ke tor par pasand kar liya.” [25]

 

Deen ki takmeel ke baad us mein apni taraf se izafa bid’at hi hai chahe is par kesi mulamma’a sazi ki gai ho.

 

3: Yeh daleel bhi di jati hai keh Nabi-e-Kareem ﷺ ki paidaaish par khushi manana to Quraan ki roo se matloob hai. Allah Taala farmata hai:

 

((قُلْ بِفَضْلِ اللّٰهِ وَبِرَحْمَتِهٖ فَبِذٰلِكَ فَلْيَفْرَحُوْا))

 

Keh dijiye! Keh Allah ke fazal aur us ki rahmat se khush ho jao.” [26]

 

Allah Taala ne rahmat se khush hone ka hukam diya hai, Nabi-e-Kareem ﷺ sab se badi rahmat hein to hum kiyoun is par khush na hon. Allah Taala farmata hai:

 

((وَمَآ اَرْسَلْنٰكَ اِلَّا رَحْمَةً لِّلْعٰلَمِيْنَ))

 

“Aur hum ne Ap ﷺ ko sab jahanon ke liye rahmat bana kar bheja hai.” [27]

 

Izala:

Soorah Younas ki aayat ko pichay wali aayat ke sath mila kar padha jaye to wazih ho jata hai keh yahan rahmat se keya murad hai. Irshad-e-Bari Taala hai:

 

يٰٓاَيُّھَا النَّاسُ قَدْ جَاۗءَتْكُمْ مَّوْعِظَةٌ مِّنْ رَّبِّكُمْ وَشِفَاۗءٌ لِّمَا فِي الصُّدُوْرِ ڏ وَهُدًى وَّرَحْمَةٌ لِّلْمُؤْمِنِيْنَ     57؀ قُلْ بِفَضْلِ اللّٰهِ وَبِرَحْمَتِهٖ فَبِذٰلِكَ فَلْيَفْرَحُوْا  ۭ ھُوَ خَيْرٌ مِّمَّا يَجْمَعُوْنَ     58؀

 

“Aye logo! Yaqinan tumhare pas tumhare Rab ki taraf se (Quraan ki) nasehat aa gai hai aur (yeh) shifa hai in (bimariyon) ke liye jo seenon mein hein aur mominon ke liye hidayat aur rahmat hai. (Aye Nabi!) Keh dijiye! (Yeh) Allah ke fazal aur us ki rahmat se (nazil huwa) hai lihaza (logon ko) chahiye keh woh isi ke sath khush hon, Yeh un cheezon se bahut behtar hai jo woh jama’a karte hein .” [28]

 

In aayaat se wazih tor par maaloom hota hai keh yahan rahmat se murad Quraan-e-Majeed hai. Sahaba-e-Kiraam is se Quraan aur Islam hi murad lete thay.

 

Imam Qurtibi رحمہ اللہ ((قُلْ بِفَضْلِ اللّٰهِ وَبِرَحْمَتِهٖ فَبِذٰلِكَ فَلْيَفْرَحُوْا)) Ki tafseer bayan karte hue likhte hein, Abu Saeed Khudri aur Ibn-e-Abbas رضی اللہ عنہمbayan karte hein:

 

(( فضل اللہ:  القران، ورحمتہ:  الاسلام ))

 

“Allah ka fazal Quraan aur us ki rahmat islam hai.”

 

Isi tarah Hasan Basari, Zahhak, Qatadah رحمہم اللہ  kehte hein :

 

))   فضل اللہ: الایمان، ورحمتہ:  القران ((

 

“Allah ka fazal iman aur us ki rahmat Quraan hai.”[29]

 

Isi tarah Imam Ibn-e-Kaseer رحمہ اللہ ne bhi is aayat ki tafseer karte hue Quran Majeed hi ki doosari aayaat se sabit kiya hai keh Quran hi ko Allah ne logon ke liye apni rahmat qarar diya hai. [30]

 

4: Isi tarah mandarja zail Hadith se istadlal kiya jata hai: Anas رضی اللہ عنہbayan karte hein:

 

)) ان النبی ﷺ عق عن نفسہ بعد النبوۃ ((

 

“Nabi ﷺ ne nubuwwat ke baad apna aqeeqa kiya.”[31]

 

Nabi-e-Kareem ﷺ ka aqeeqa Ap ﷺ ke dada Abdul-Mutlib ne saatwein din kiya tha. Aqeeqa doosari martaba nahin kiya ja sakta. Nabi-e-Kareem ﷺ ne apni wilaadat ki khushi manane aur ummat ko ta’aleem dene ke liye aisa kiya. Humein is Sunnat par amal karte hue is azeem ne’amat ke shukrane ke tor par ijtima’aat mun’aqad karne aur Anwa’a-o-Aqsaam ke khanon ka ahtamaam karna chahiye.

 

Izala:

 

Yeh Hadith sabit hi nahin hai.

 

)) قال عبد الرزاق فی مصنفہ…..  انبانا عبداللہ بن محرر عن قتادۃ عن انس ان النبی ﷺ عق عن نفسہ بعد النبوۃ ((

Imam Ibn-e-Qayyam is Hadith ko Abd ul-Razzaq ke hawale se bayan karne ke baad Abd ul-Razzaq ka yeh qaol bayan karte hein:

 

((انما ترکوا ابن محرر بھذا الحدیث ))

 

” Unhon (Muhaddiseen) ne Ibn-e-Muharrar ko is Hadith ki wajah se chod diya hai.” [32]

 

Hafiz Ibn-e-Hijar رحمہ اللہ kehte hein: “Yeh Hadith sabit nahin.”

 

Bazzar kehte hein: Is Hadith ko bayan karne wala akela Abdullah Bin Muharrar hai aur woh Zaeef hai.” [33]

 

Imam Nawawi رحمہ اللہ likhate hein:

 

واما الحدیث الذی ذکرہ فی عق النبی ﷺ عن نفسہ فرواہ البیہقی باسنادہ عن عبداللہ بن محرر عن قتادہ عن انس ……الخ. ھذا حدیث باطل و عبدللہ بن محرر ضعیف، متفق علی ضعفہ، قال الحفاظ:  ھومتروک.

 

Aqeeqa wali Hadith ko Imam Baihaqi Abdullah Bin Muharrar An Qatada An Anas se bayan karte hein. Yeh Hadith batil hai. Abdullah Bin Muharrar Zaeef hai aur us ke zo’af par sab ka itfaq hai. Huffaz-e-Hadith kehte hein: “Yeh matrook hai.”[34]

 

Imam Zahabi kehate hein: “Yeh matrook hai aur siqa nahin hai.”[35]

 

Imam Ahmad kehte hein: “Logon ne is Hadith ko tarak kar diya hai.”

Imam Dar-e-Qutani kehte hein: “Yeh matrook hai.”

Imam Ibn-e-Hibban kehte hein: “Yeh bagher ilam ke jhoot bolta hai aur akhbaar ko bagher samjhe ulat palat kar deta hai.”

Imam Ibn-e-Moeen kehte hein: “Yeh siqa nahin hai.”

Imam Bukhari kehte hein:”Munkar-ul-Hadith hai.”[36]

 

5: Aik ishkaal yeh paish kiya jata hai, Maan lete hein Eid Milad-ul-Nabi bid’at hai Nabi-e-Kareem ﷺ aur Sahaba se is ka koi suboot nahin milta lekin yeh Bid’at-e-Hasnah hai jesa keh Sayyiduna Umar Bin Khattab رضی اللہ عنہ ne taraweeh ki jama’at shuru karwai to logon ko ba-jama’at Namaz-e-Taraweeh ada karte hue dekha to farmaya:  ((نعمت البدعۃ ھذہ))  ” Ye achi bid’at hai” Yahi misal eid Milad-ul-Nabi ki hai.

 

Izala:

 

is ka mufassal jawab kitab ke muqadma mein guzar chuka hai, Mulahaza farmaein.

 

6: Isi tarah aik ishkaal yeh paish kiya jata hai keh musalmanon ki aik bahut badi ta’adaad is ke jawaz par muttafiq  aur is ke manane ka ahtamaam karti hai aur Hadith mein aata hai:

 

((ما راہ المسلمون حسنا فھو عند اللہ حسن))

“Jise musalman acha samjhein woh Allah ke han bhi acha hi hota hai.”[37]

 

Izala:

 

is ka mufassal jawab kitab ke muqadima mein, Page: 95.103 mein guzar chuka hai. Mulahaza farmaein:

 

7: Isi tarah aik ishkaal yeh paish kiya jata hai keh islam mein jo acha kam raa’ij karta hai usay us ke karne walon ke barabar sawab mita rehta hai. Hadith mein hai:

 

))من سن فی الاسلام سنۃ حسنۃ……الخ((

 

“Jis ne islam mein koi acha tareeqa ijaad kiya…… Alakh”[38]

 

To Milad-ul-Nabi bhi acha tareeqa hai lihaza humein isay manana chahiye.

 

Izala:

 

Is ka mufassal jawab bhi kitab ke muqadima mein guzar chuka hai, Mulahaza farmaein.


Khud Saakhta Saqafat Ke Hawale Se Jawaz? Kaya “Saqafat” Deen-o-Mazhab se Alag Cheez Hai?  ♦



Milad ko dhoom dham se manane ki aik “Daleel” yeh bhi paish ki ja rahi hai keh is ka ta’aluq Deen-o-Mazhab se nahin balkeh saqafat se hai. Pehle logon ka rehan sehan, moaashrat sadah thi, Logon ke makaan tang aur chote hote thay, Libas aur Bood-o-Bash aur khorak waghera sab sadah thi. Is ke bar-akas aalishan rihaishein hein, Poshakein aur khorakein bhi pur-takalluf hein hatta keh masaajid bhi pukhta hi nahin, Aalishan aur Zarr-Nigar hein. Isi tarah milad ke jashan mein yeh jo dhoom dham aur Israaf-e-Be-ja ki sooratein hein ya juloos aur is qisam ke deegar mazaahir hein, In ka taalluq bhi saqafat se hai. Is liye jis tarah saqafat ke deegar mazaahir ko “Bid’at” nahin kaha jata, Milad ke in Khud-Saakhta muzahiron ko bhi “Bid’at” qarar nahin diya ja sakta.

 

Subhan Allah! Yeh “daleel” bhi khoob hai. Goya Ilaqaa’i tor atwaar bhi, Jis ko saqafat ka nam diya gaya hai, Ab “shara’i daleel” ban gaye hein. Is aitbar se baaz ilaqon mein jo “Wani” ya karokari ki rasmein hein jin ko khatam karne ka mutalaba kiya jata rehta hai, Woh bhi ilaqa’i saqafat ke nam par jaa’iz hi honi chahiyen? Mukhtalif ilaqon mein jo apne apne ilaqon ke hisab se mukhtalif qisam ke “Dance” raa’ij hein, Jese “Khatak dance” “Luddi” “Bhangda” waghera yeh bhi saqafati mazaahir hein, In ko bhi Deen-o-Sharee’at ke Nuqta-e-Nazar se dekhne ki zaroorat nahin hai. Bas ilaqaa’i saqafat ki wajah se in ka jawaz tasleem kar lena chahiye. Isi tarah hamari shadi biyah ki bahut si rusoomaat hinduon ki naqqali ya islami tahzeeb se Nafrat-o-Begangi par mabni hein, Jese mehandi ki rasam hai, Band baje ka riwaj hai, Aatish bazi ka silsila hai, Mardon aur auraton ka by-bakana ikhtalaat aur un ki video film sazi hai, Auraton ka parde se yaksar beniyaz ho kar Barsar-e-Aam apne Husan-o-Jamal, Apni Aaraaish-o-Zebaaish aur apne libas aur zewraat ki numaish karna hai. Anwa-o-Aqsaam ke khanon ki soorat mein  Israf-o-Tabzeer ka shetani silsila hai, Waghera waghera. Yeh sab goya saqafati mazaahir hein jo Qabil-e-Nakeer nahin balkeh mazkoora daleel ki roo se jaa’iz qarar paaein gay. Sach hai:

 

Gar hameein maktab hameein mullan

Kaar-e-Tiflan tamaam khawahid shud

 

Is liye hum araz karein gay keh kisi mulak ya qoam ki saqafat koi cheez nahin, Asal cheez us qoam ka mazhab aur nazriya hai, Har cheez us ke mazhabi nazriyat ke tabe’a hoti hai.

Hindumat aik mazhab hai, Us ke maanane walon ki har cheez us ke tab’e hai, Woh apne murdon ko dafnate nahin, Jalate hein, Woh apni ladkiyon ko wiraasat mein se hissa nahin dete balkeh shadi ke moqa’a par daan (jahez) dete hein. وعلی ھذا القیاس un ki saqafat ke aur mazaahir hein, Woh mahaz saqafat nahin. Un ke mazhab aur Nazriya-e-Hayat ka hissa hein.

Haya bakhatgi maghrabi saqafat hai jis ke bahut se mazaahir hein, Jese Bepardagi-o-Uryani, Marad-o-Zan ka be-bakana aur be-hijabana ikhtalaat balkeh bar Sar-e-Aam chokon aur sadkon par Bos-o-Kinar, Sharab noshi, Jodon ka baaham Raqas-o-Surood, Nikah ke bagher Marad-o-Zan ka baham jinsi ta’aluq waghera, Yeh un ki saqafat ka hissa hein jo unhon ne mazhab se aazad ho kar ikhtiyar ki hai. Ab yehi unka mazhab aur Nazriya-e-Hayat hai yahi un ki saqafat aur culture hai.

Is se yeh bat wazih hui keh aj kal jis ko saqafat aur culture kaha jata hai, Woh kisi qoam ke mazhabi tasawwurat aur Nazriya-e-Hayat se alag nahin hota balkeh us ke Nazriya-e-Hayat hi ke Ajzaa-e-Tarkeebi se tashkeel pata hai. Is aitbar se musalmanon ki saqafat hargiz woh nahin ho sakti jis ke Ajzaa-e-Tarkeebi us ke islami tasawwuraat ke bajaye ghairon ke tasawwuraat, Ya ghairon ki Naqqali-o-Mushabihat par mabni ya islam ke bayan kardah usoolon se mutsadim hon.

“Milaad” ke Ajzaa-e-Tarkeebi ka islam ke tasawwuraat se koi ta’aluq nahin. Is ke sab ajzaa’a ghairon ki naqqali aur mushabahat par mabni hein jin se musalmanon ko roka geya hai, jese:

  • Yoam manaana.
  • Juloos nikaalna.
  • Charaghan karna.
  • Bhangde, Luddiyan daalna.
  • Israaf-o-Tabzir aur
  • Ifraat-o-Ghaloo ka muzahara
  • Tayyun key saath Sadqa-o-Khairaat karna.

 

In mein sey koi juz bhi Islami nahin hai, Phir isko Islami saqafat ya musalmaanon ki saqafat kis tarah tasleem kiya ja sakta hai? Ya saqafat key naam par ghairon ki is naqqali ko kyun kar jaayiz ya Ajar-o-Sawab ka baa’as samjha ja sakta hai?

Jahan tak is baat ka taluq hai key pehley mu’asharat saada thi, Ab aasaishon aur sahoolaton ki farawani hai. Lekin unka talluq to Maadi Asbaab-o-Wasaa’il sey hai, Pehley yeh Wasaa’il kam they, Ab Wasaa’il ki farawani hai jiski wajah sey mu’asharat mein saadgi ki bajaye aasaishon key istemaal mein ziyadti aagayi hai aur aisey halaat mein jab Allah Ta’ala Asbaab-o-Wasaa’il sey nawazey, Shar’iyat-e-Islamia mein in sey fayiz yaab honey ki ijazat di gayi hai. Nabi (ﷺ) ka farmaan-e-Giraami hai key Allah Ta’ala agar kisi par Inaam-o-Ikram farmaye to woh is baat ko pasand farmata hai key iskey asraat bhi us shakhs mein nazar aayein.

Is a’itbaar sey agar koi shakhs Allah key diye huwey Wasaa’il sey acha makaan bana leta hai, Achi Bood-o-Baash ikhtiyar karta hai, Achi khuraak istemaal karta hai basharteeka woh israaf aur takkabur sey bachta hai to yeh na sirf jaayiz balkey mustahsan hai. Lekin in Maadi Asbaab-o-Wasaa’il ko istemaal karney wala koi bhi yeh nahin samajhta key saada makaan ki bajaye acha makaan bana kar rehney mein Ajar-o-Sawab zayada hai, Saada khuraak ki bajaye achi khuraak ki fazeelat ziyada hai, Saada libaas ki bajaye besh qeemat libaas pehnney ka ajar mujhey ziyada milega. waghaira.

Jab keh ” Jashan-e-Milad” mein kadodon ke hisab se jo be-masraf paisa barbad kiya jata hai, Woh aik to sarasar Israf-o-Tabzeer hai jo Quran ki roo se Ikhwan-e-Shayateen ka kam hai lekin jawaz ka falsafa tarashane wale “Mufakireen-e-Islam” ki taraf se is shetani kam ko Ajar-o-Sawab aur nihayat fazilat wala kam bawar karaya jata hai. Dosara, Yeh ghair muslimon ki naqqali hai jo Farman-e-Rasool ki roo se sakhat na-jaaiz aur haram hai. Isi tarah is rasam ke doosare mazaahir hein, In mein se kisi ka bhi islami Nuqta-e-Nazar se jawaz nahin hai.

Ilawa azeen Masjid, Makaan, Khorak waghera yeh sab cheezein to aisi hein jo Ehad-e-Risaalat-o-Ehad-e-Sahaba mein sadgi ke sath mojood thien, Wasaa’il ki farawani se yehi huwa hai keh un mein kuch taraqqi ho gai hai. Agarche is taraqqi ko koi Ajar-o-Sawab ka ba’is qarar nahin deta. Lekin “Milad” ki rasam to aisi hai keh Ehad-e-Risaalat-o-Adwar-e-Khair-ul-Quroon mein is ka sire se koi Nam-o-Nishan hi nahin milta. Is ki dhoom dham ko moaasharti taraqqi se kis tarah joda ja sakta hai? Behar hal jis aitbar se bhi is rasam ka jaa’iza liya jaye, Is ko jawaz ya istehsan ka darja nahin diya ja sakta. Yeh sarasar apne Ajzaa-e-Tarkeebi ke aitbar se na-jaaiz aur Bid’at-o-Munkir hai. اعاذنا اللہ منھا.


Malhooza:


Yeh saqafat wali “daleel” doctor Tahir-ul-Qadiri ki zehni upaj hai jo Quran-e-Kareem ki bayan karda haqiqat ((………وَاِنَّ الشَّيٰطِيْنَ لَيُوْحُوْنَ اِلٰٓي اَوْلِيٰۗـــِٕــهِمْ لِيُجَادِلُوْكُمْ)) Al-Ana’am:6:121 ) ki misdaq hai.

“Jashan-e-Milad” ke jawaz mein paish kiye jane wale deegar “dalaa’il” ki haqiqat janne ke liye mulahaza ho hamari kitab “Jashan-e-Milad” ki haqiqat aur mujawwizeen ke dalaa’il ka jaaiza.”

 

♦ Chiraghan Air Aatishbazi Ka Rawaj Aur Us Ki Haqiqat ♦

Chiraghan ka silsila bhi aj kal aam aur roz-afzoon hai. Pehle pehal Hindustan mein ye Shab-e-Barat ke moqa’a par hota tha aur log aam tor par apne gharon ki munderon par mom batiyan ya tail ke chote chote diye jala kar chiraghan karte thay, Phir Shab-e-Meraj mein bhi ye kam kiya jane laga aur phir badhte badhte ye silsila “Eid-e-Milad” tak daraz ho geya, Ilawa azeen yeh silsils mom batiyon aur tail ke deewohn se badh kar bijli ke balbon, Tiyobon aur Qumqumon tak pohanch geya, Neez munderon se nikal kar sadkon, Gali koochon, Chorahon aur bazaron aur poori poori imarton hatta keh masjidon tak wasee’a ho geya.

Aur sitam zareefi ki intiha hai keh bijli ke balbon aur qumqamon ke zariye se jo zabardast chiraghan kiya jata hai, Woh beshtar chori ki bjli hoti hai, Ya’ani Barah-e-Raasat wapda ke bijli ke taron se kunda laga kar hasil ki jati hai. Un se poochha ja sakta hai keh hukoomat ne is chori ki un ko ijazat du hui hai? Aur agar yeh ijazat nahin hai aur hamare khayal mein nahin hai to kaya is chori ki bijli se chiraghan kar ke jashan manane ka koi shara’i jawaz hai?

Ab “Milad” ke moqa’a par to Rang-o-Noor ka yeh selab kai dinon tak jari rehta hai balkeh in’aami muqabile mun’aqad hote hein aur jis ilaqe ke gali koochon ya bazar aur chorahe ko ya numayan badi badi imaarton ko zayada sajaya ya barqaya (bijli ke qumqamon se aarasta kiya) geya hota hai, Usay in’aam se nawaza jata hai, Is tarah Aara’ish-o-Zebaa’ish aur “chiraghan” par bila mubalagha lakhon nahin kadodon rupe chand dinon mein kharach kar diye jate hein aur agar deegar islami mulkon ko bhi, Jahan ye Rusoomat-e-Bid’iyya isi andaz se ada ki jati hein, Shamil kar liye jaye to yeh raqam kadodon se tajaawaz kar ke arbon tak pohanch jati hai.

Isay awam ki nazron mein aik Kar-e-Khair aur Baa’is-e-Ajar-o-Sawab kam bawar kara diya geya hai, Tab hi to awam apne khoon paseene ki kamaai is tarah is par saraf karne ke liye tayyar ho jate hein, Woh apne Paighembar ka Uswa-e-Hasna to apnane aur apni zindagi ko is sanche mein dhalne ke liye tayyar nahin hein lekin jab Warsaan-e-Minber-e-Rasool ki taraf se un ke zehnon mein yeh rasikh kar diya jaye keh Muhabbat-e-Rasool ka yeh tareeqa hi nijat ke liye kafi hai. To phir un ke liye keya zaroori hai ke woh Uswa-e-Hasna ko apna kar apne karobar ko sahih karein? Apne Akhlaq-o-Kirdar ki islah karein? Apne moamlaat aur ma’amoolat ko durusat karein. Apni zindagi ke rehan sehan aur tor atwar ko sahih karein? Kaya un ke liye yeh “Ne’m-ul-Badal” sahih nahin keh woh in sari “Khikheedon” ki bajaye “Milad” ke moqa’a par chiraghan kar lein ya Juloos-e-Milad mein shirkat kar lein ya kadodon aur arbon ke is israaf mein apna hissa dal dein aur phir sara sal Uswa-e-Hasna se be-neyaz reh kar man maniyan karte rahein.

Chunanche awam ne apne mazhabi rahnumaon ki sheh par yehi Ne’m-ul-Badal mustaqil tor par ikhtiyar kar liya hai aur woh “Milad” ke moqa’a par nihayat Zoq-o-Shoq se aur badi wariftagi se chiraghan karte hein aur is be-faida kam par kadodon aur arbon rupe har sal barbad kar dete hein.

Lekn aaiye! Zara dekhiye! Keh “Chiraghan” ka badahta huwa yeh silsila “Kar-e-Khair” hai ya “Kar-e-Ghair” hai? Yeh Farzandaan-e-Tuheed ka kam hai ya Ahl-e-Shirak ka imtiyaz hai?

Is silsile mein hum apni taraf se kuch kehne ki bajaye Shaikh Abdul-Haq Muhaddas Dehalwi رحمہ اللہ ka iqtibas  paish karna behtar samakhte hein, Chunancheh woh likhte hein:

“Bid’atein” Hindustan ke aksar shehron mein logon ne yeh rawaj kar liya hai keh pandarhwien Sha’abaan ki rat ko apne ghar ki deewaron par chiragh jalate aur fakhriya roshani karte hein keh hum ne aisi achi roshani ki hai jo doosaron se achi hai aur hum itne bade aadmi hein jo roshani karte hein. Fardan fardan aur ijtimaai hasiyat se is rat mein aatish bazi chodte aur deegar khel kood karte hein. Yeh woh umoor hein jin ki asliyyat Ahaadith ki moatber kitabon mein mojood nahin hai, Is ke ilawa kisi ghair moatber kitab mein bhi in umoor ke Masnoon-o-Sunnat hone ki koi zaeef ya mozoo’a Hadith paai nahin jati.

Mamalik-e-Arbiya mein se Harmain Shareefain aur ghair arabi mamalik ke kai doosare shehron mein (Hindustan ke siwa) in umoor ka koi rawaj nain hai. Is se sabit hota hai, Ain mumkin yeh hai balkeh Yaqeen-e-Wasiq hai keh Hindustan ke hindu’on ke deegar rusoom anjam dene ki tarah hindi musalmanon ne is rasam ki pairwi ki, Jese hindu “Deewali” ke tehwar par apne gharon ki deewaron aur taaqon mein diye jalate hein aur Hindustan ke hindu’on mein kufar ki wajah se bid’ati umoor ba-kasrat raa’ij hein. Chonkeh musalmanon ke hindu’on se bade ikhtilaat rahe hein, Hindu’on ne apni auraton ke sath musalmanon ki shadiyan kien, isi Ikhtilaat-e-Aam aur rehan sehan ke tareeqe ikhtiyar karne ke sabab se musalmanon ne bhi roshani karne ki rasam dal li hai. Baaz kehte hein keh hum bhi kisi saith sahookar se kum nahin, Jis tarah woh roshani karte hein wesi hi balkeh us se achi hum karte hein.

Baaz muta’akhireen Ulma’a ka bayan hai keh makhsoos raton mein ba-kasrat roshani karna, Bid’at-e-Shaniaah (Nikammi bid-at) hai, Is liye keh zaroorat se ziyada roshani karne ke mustahab hone ka shari’at mein koi hukam nahin hai.

Ali Bin Ibrahim ka bayan hai keh chiraghan aur roshani karne ki ibtida Barmakiyon ne ki hai jo Naslan-o-Aitqaadan aatish parasat thay aur zahiri islam lane ke baad bhi unhon ne apne Wahmi-o-Khayali umoor ko islam mein jari rakhne k Hatt-ul-Imkan koshishein kien kiyounkeh aitiqadi tor par un ko qadeem rawaj ke darusat hone ka yaqeen tha, Neez islam mein qadeem Rawaj-o-Rusoom ko baqi rakhne mein un ki maslahat yeh thi keh islam ke parde mein chiragh jala kar us ko sajde karte huay aatish parasti ki rooh ko baqi rakhein. Aur turrah yeh hai keh jahil Aa’ima-e-Masaajid ne Chiragh-o-Roshani aur Namaz-e-Ragha’ib ki aad mein logon ko jama’a karne ka tareeqa bana liya hai ta keh apni Qiyadat-o-Sardari jata kar dolat samet saken, Sath hi qissa khawan majaalis mein khoob qisse bayan kar saken aur ghareebon se rupe lete rahen. Haqiqat-e-Amar yeh hai keh in tamaam munkaraat ke Butlaan-o-Ibtaal ke liye Allah ne Aaima-e-Huda paida kiye keh munkiraat na-paid ho jaein. In Aaima-e-Huda mein se baaz woh hein jinhon ne doosri sadi hijari mein Mamaalik-e-Arab-o-Sham ke andar munkiraat ko achi tarah khatam karne ki koshish ki thi.

 

“Tazkira” mein Allama Tartoosi ne likha hai keh Khatam-e-Quraan ki shab mein Ijtama’a, Minbaron ka qiyam, Auraton aur mardon ka mael jol aur khel kood waghera mein bahimi ikhtilaat aur Zamana-e-Hal ke A’amal-o-Kirdar-e-Na-Guftah beh, Yeh sab ke sab kam koi asliyat nahin rakhte aur un ke jawaz ki koi soorat nahin.” [39]

 

Taqriban yehi bat Mulla Ali Qari Hanfi  رحمہ اللہ ( Mutawaffa 1014 hiri ) ne bhi likhi hai. Chunanche woh tahreer farmate hein: 

 

)) و اول حدوث الوقید من البرامکۃ وکانوا عبدۃ النار، فلما اسلموا ادخلوا فی الاسلام، ما یموھون انہ من سنن الدین ومقصودھم عبادۃ النیران، و لم یات فی الشرع استحباب زیادۃ الوقید علی الحاجۃ فی موضع ((

 

“Sab se pehle jinhon ne chiraghan kiya, Woh Baramikah thay, Yeh aag ke pujari thay, Jab yeh musalman ho gay to unhon ne aatish parasti ki kai cheezon ko islam mein dakhil kar ke yeh bawar karaya keh yeh bhi Deen-e-Islam ke tareeqe hein aur maqsad un ka aag ki pooja tha kiyounkeh woh musalmanon ke sath in chiraghon ki taraf Rukoo-o-Sujood karte thay. Aur shari’at mein kisi bhi jagah, Zaroorat se zayada roshani karne ka istihbab warid nahin hai…..,” [40]

Baramikah, Yeh aik majoosi khandaan tha, Yeh khandaan padha likha aur Ilam-o-Fazal ka malik tha, Jis ki wajah se is khandaan ke bhut se logon ko Abbasi Khulfa’a, (Haroon-Al-Rasheed, aur Mamoon-o-Mo’atsim waghera) ke darbaron mein khas muqam hasil tha balkeh ba’az to in khulfa’a ke Wazir-o-Musheer bhi rahe. Mazkoora taareekhi hawalon se to yehi sabit hota hai keh Qubool-e-Islam ke bawjood aatish parasti ke jaraseem un ke andar mojood rahe aur Zill-e-Ilaahi ke Saya-e-Aatifat mein rehne ki wajah se un ko musalmanon ke andar apne mushrikana khayalaat phelane ke mawaq’e bhi muyassar aa gay, Jin mein aik mushrikana aur aatish paristana rasam chiraghan aur aatish bazi hai.

Pehle pehal Shab-e-Barat ke moqa’a par hi chiraghan bhi hota tha aur aatish bazi bhi, Phir chiraghan ka daairah to bahut phel geya aur har aham moqa’a par chiraghan ka ahtamam nihayat zaroori qarar paya hattah keh ab ye shadiyon ka bhi aik lazmi hissa ban geya hai. Lekin aatish bazi abhi tak Shab-e-Barat hi ke sath khas hai. Is rat ko jis shiddat aur tasalsul ke sath aatish bazi ki jati hai, Woh Al-amaan wal-Hafeez ki misdaq hai, Phir shadiyon par hukoomat ki taraf se pabandi se pehle shadi ke moqa’a par bhi is shaitani rasam ka silsila bada aam ho geya tha. Jis mein pabandi ke bawjood koi kami nahin hui. ھداھم اللہ تعالی.

Behar hal mazkoora tafseel se wazih hai keh khushi aur musarrat ke moqa’a par kisi bhi andaz se chiraghan ya aatish bazi ka ahtamam karna saraasar haram aur na-jaaiz hai. Woh “Eid-e-Milad” ka moqa’a ho ya shadi biyah ka ya kisi aur Taqreeb-e-Musarrat ka, Kisi bhi moqa’a par chiraghan ya aatish baz ka jawaz nahin hai.


[1] Urdu daira muaarif-e-islamiya

[2] Sahih Al Bukhari, Al-Sulah, Baab-o-Iza istalaho alaa Joarin, Hadith: 2697, Wa Sahih Muslim, Al Aqziyah, Baab-o- Naqz-e-Al Ahkam-e-Al Batilah…., Hadith: 1817.

[3] Sunan Al Nasai, Salat-ul-Eidain, Baab-o- Kaif-al-Khutbati: Hadith: 1579

[4] Mulahاza ho maqalah: السیرۃ النبویۃ توقیتی مطالعہ (Az Professer Zafar Ahmad Sabiq sadar Shoaba-e-Uloom-e-Islamiya, government S E College, Bahawalpur. Punjab.) Page: 219-233, Shai’a shuda dar rasal shash mahi “Al-seerah, Aalmi” Karachi (Shumara 14, October 2005.) Is maqale mein nihayat tafseel se toqiyati hisab se 12 rabi-ul-awwal hi ko Yoam-e-Wafat aur 8 Rabi-ul-Awwal ko Yoam-e-Wiladat sabit kiya geya hai.

[5] Sunan Abi Daood, Al-Libas,Baab-o- Fi Lubs-al-Suhrati, Hadith: 4031.

[6] Saad: 5:38

[7] Al Nisa’a: 4:80

[8] Aal-e-Imran: 3:13.

[9] Al Ahzab: 21:33

[10] Zad-ul-Me’aad: 4/194

[11] Aal-e-Imran 3/31

[12] Sahih Al Bukhari, Al-Soam, Baab-o-Soam-e-Aashoora, Hadith: 2004, Wa Sahi Muslim, Al siyam, Baab-o-Soam-e-Aashoora, Hadith: 1130

[13] Sahih Al Bukhari, Al-Soam, Baab-o-Soam-e-Aashoora, Hadith: 2002, Wa Sahi Muslim, Al siyam, Baab-o-Soam-e-Aashoora, Hadith: 1125

[14] Sahih Al Bukhari, Al-Soam, Baab-o-Soam-e-Aashoora, Hadith: 2003, Wa Sahi Muslim, Al siyam, Baab-o-Soam-e-Aashoora, Hadith: 1129

[15] Sunan Iban-e-Majah،Al-Muqaddmah, Baab-o- Ittiba-e-Sunnat-e-Al Khulafa-e-Al Rashidin Al Mahdiyyen, Hadith: 42.

[16] Sahih Muslim, Al-Siyam, Baab-o- Istihbab-e-Siyam-e-Salasatin……, Hadith: 1126

[17] Jame’a Al Tirmazi, Al Soam,Baab-o- Maa Jaa Fi Soam-e-Yoam-e-Al Isnaini Wal Khamis, Hadith: 747.

[18] Al Hujrat: 49:1

[19] Al Hashar: 59:7

[20] Al Qaol-al-Fasal Fi Hukm-e-al-Ahtifal Bimaolid-e-Khair-e-Al-Rusul, Page: 631.

[21] Al Qaol-al-Fasal Fi Hukm-e-al-Ahtifal Bimaolid-e-Khair-e-Al-Rusul, Page: 633.

[22] Sunan Abi Daood, Al Salah, Baab-o-Salat-e-Al-Eidain, Hadith: 1134.

[23] Jame’a Al Tirmazi, Al-Soam, Baab-o-Maa Jaa Fi Karahiat-e-Saomin ……, Hadith: 773

[24] Musnad-e-Ahmad: 2/303.

[25] Al Maa’ida: 5/3.

[26] Younus: 10/58.

[27] Al-Anbiya: 21/107

[28] Younus: 10/57-58.

[29] Al Jame’a Li Ahkam-al-Quraan: 11/10-11.

[30] Tafseer Iban-e-Kaseer: 2/553.

[31] Al Sunan-Al-Kubra Lil-Baihaqi, Hadith: 19813, wa Majma’a-ul-Zawaid, Hadith: 6203.

[32] Tuhfat-ul-Maodood, Page: 93.

[33] Fatah-ul-Bari: 9/736,737.

[34] Al Majmoo’a Sharah Al Muhazzab:  8/12.

[35] Meezan-ul-Aitidaal: 2/500.

[36] Al Zuafa-ul-Kabeer:  2/309, wa Meezan-ul-Aitidaal: 2/500.

[37] Musnad-e-Ahmad: 1/379.

[38] Sahih Muslim, Al-Ilm, Baab-o-Man Sanna……, Hadith: 1017, Baad-Al-Hadith: 2673.

[39] “Ma sabat bil Sannati fi Ayyami-al-Santi” ka urdu tarjuma “Momin ke Maah-o-Saal” Page: 176-177, Matboo’aa Darul-Isha’at, Karachi, 1966.

[40] Mirqat-ul-Mafateeh sharah Mishkaat-ul-Masabeeh, Baab-o-Qiaam-e-Shar-e-Ramazan: 3/198, Taba’a Maktabah imdadiyah, Multan.

REFERENCE:
Book: Masla Rooet-e-Hilal aur 12 Islami mahene.
 By Hafiz Salah uddin yusuf.

Rabi` al-Awwal

 


Ruling on celebrating the birthday of the Messenger (blessings and peace of Allah be upon him) without any singing or other haram things


Praise be to Allah.

Firstly: 

The biographers differed concerning the date of the birth of the Prophet (blessings and peace of Allah be upon him), but they are agreed that he died on the twelfth of Rabee‘ al-Awwal, 11 AH. This is the day that is celebrated by the common folk, who call it Mawlid or the birthday of the Prophet (blessings and peace of Allah be upon him). 

For more information on this matter, please see the answer to question no. 125690 

Secondly: 

There is no such thing in Islam as the so-called “Prophet’s birthday”. Neither the Sahaabah nor the Taabi‘een nor the imams or leading scholars of Islam who came after them acknowledged any such day, let alone celebrated it. Rather this festival was introduced by some innovators among the ignorant baatinis (followers of esoteric sects), then the common folk in many regions followed this innovation. 

We have previously explained in detail that celebrating this occasion is a kind of innovation. Please see the answers to questions no. 10070, 13810 and 70317

Thirdly: 

Some of those who love the Sunnah, who have been influenced by what they see of celebrations in their countries, think that they can be safe from falling into innovation by getting together with their families and making special food for this occasion, which they eat together. Some of them gather with their friends and relatives for the same purpose, and others gather with the people to read the biography of the Prophet (blessings and peace of Allah be upon him) or to listen to religious lectures. 

Similar to that is your good intention of getting together and instilling a spirit of pride in Islam in western, non-Muslim countries. 

But in fact all of these intentions do not make those gatherings of theirs Islamically acceptable; rather they are reprehensible innovations. Indeed, if you are looking for a festival to celebrate, then the two Eids of al-Fitr and al-Adha are the only Eids of the Muslims; if you want any eid apart from that, then in our view Friday is the eid of the week, so gather on that day to offer Jumu‘ah prayer and to instil pride in Islam. 

If it is not possible for you to do that, then there are many days in the year, and you can gather on some other occasion, that is not an innovated festival; rather it should be on some permissible occasion, such as a wedding or a gathering for a meal, or an ‘aqeeqah, or to offer congratulations. Any of these may be occasions for doing the things you mention, such as strengthening bonds, getting together and encouraging one another to adhere to Islam. 

There follow some fatwas by the scholars concerning the ruling on those who gather with such intentions on that occasion. 

  1. Imam Abu Hafs Taaj ad-Deen al-Faakihaani (may Allah have mercy on him) said, discussing different types of Mawlids:

(i) When a man organises it at his on expense for his family, friends and children, and in that gathering they do not do any more than eat food; they do not commit any sins. This is what we have described as an abhorrent and reprehensible innovation, because it was not done by any of the early righteous people, who are the fuqaha’ and leading scholars of Islam.”(Al-Mawrid fi ‘Aml al-Mawlid, p. 5)

  1. Ibn al-Haaj al-Maaliki (may Allah have mercy on him) said concerning the ruling on celebrating the Prophet’s birthday without the evils of music, singing and free mixing between men and women:

If it is free of (those evils) and he only makes food and intends it to be for the Mawlid, and he invites others to come and eat, and he avoids everything mentioned above, it is still an innovation just because of the intention, because it is adding something to the religion, and it was not the practice of the earliest generations (the Sahaabah and Taabi‘een), and following the practice of the earliest generations is more appropriate. Rather doing so is a must and nothing should be added that is contrary to their way, because they were the most eager of people to follow the Sunnah of the Messenger of Allah (blessings and peace of Allah be upon him) and to venerate him and his Sunnah, and they were pioneers in doing so. But there is no report that any of them ever intended to celebrate the Prophet’s birthday. We are their followers, so we should be content with what they were content with. It is known that we should follow them in terms of knowledge and practice, as Shaykh Imam Abu Taalib al-Makki (may Allah have mercy on him) said in his book.”(Al-Madkhil, 2/10 )

  1. And he (may Allah have mercy on him) said:

And some of them are cautious to avoid that – i.e., listening to haram things – and they do the Mawlid by reading al-Bukhari and so on instead of that. Even though reading hadith in and of itself is one of the greatest acts of worship that bring one closer to Allah, and there is great blessing and much good in it, that only applies on condition that it be done in an appropriate, Islamically acceptable manner, not with the intention of the Mawlid. Do you not see that prayer is one of the greatest means of drawing closer to Allah, may He be exalted, but nevertheless if a person does it at a time other than the time prescribed for it, it is blameworthy and contrary to Islam. If this applies to the prayer, then what you think about other deeds? 

Al-Madkhil, 2/25 

See also the answer to question no. 117651

To sum up: 

It is not permissible for you to gather on that innovatied occasion for the purpose of what you mention of getting together and offering sincere advice. You can achieve these noble aims on some occasions other than this; you have the whole year to organise gatherings on any day. We hope that Allah, may He be exalted, will guide and help you to do good deeds and increase you in guidance.

 

https://islamqa.info/en/answers/148053/ruling-on-celebrating-the-birthday-of-the-messenger-blessings-and-peace-of-allah-be-upon-him-without-any-singing-or-other-haram-things

 


 

Rabi` al-Awwal: Should We Congratulate Each Other When It Starts?


 

Praise be to Allah.

Fabricated hadith about the month of Rabi` al-Awwal

We do not know of any source for the hadith which reads: “Whoever offers congratulations to people for this blessed month, the Fire will be forbidden for him”, and it is clearly fabricated. 

Hence it is not permissible to attribute it to the Prophet (blessings and peace of Allah be upon him), because that comes under the heading of telling lies against him , and telling lies against him is haraam and is a major sin. 

Warning against attributing false hadiths to the Prophet

The Messenger of Allah (blessings and peace of Allah be upon him) said: “Whoever narrates a hadith from me knowing that it is false is one of the liars.” (Narrated by Muslim in the Introduction to as-Sahih, 1/7).

An-Nawawi (may Allah have mercy on him) said:

“This is a stern warning against lying, which indicates that whoever thinks it most likely that what he is narrating is false but still narrates it is a liar. How can he not be a liar, when he is narrating something that did not happen?” (Sharh Sahih Muslim, 1/65)

What is mentioned in this (so-called) hadith about the Fire being prohibited to a person for simply uttering this greeting comes under the heading of reckless talk and exaggeration which indicate that a hadith is fabricated and false. 

Ibn al-Qayyim (may Allah have mercy on him) said: “Fabricated hadiths sound strange , are poorly-worded and contain exaggeration, which clearly indicates that they are fabricated and are lies told against the Messenger of Allah (blessings and peace of Allah be upon him).” (Al-Manar al-Muneef, p. 50)

For more information, please see the answers to questions no. 70317 and 128530 .

And Allah knows best.

 

https://islamqa.info/en/answers/215135/rabi-al-awwal-should-we-congratulate-each-other-when-it-starts

https://islamqa.info/en/answers/215135/rabi-al-awwal-should-we-congratulate-each-other-when-it-starts


https://islamqa.info/en/answers/215135/rabi-al-awwal-should-we-congratulate-each-other-when-it-starts

ربیع الاول

 


وجۂ تسمیہ


 

عربوں کے ہاں یہ مہینہ موسم بہار کا پہلا مہینہ قرار پایا تھا، اس لیے اسے ربیع الاول کہتے تھے۔[1]

 


فضائل


 

ربیع الاول، اسلامی سال کا تیسرا مہینہ ہے۔ یہ مہینہ اس اعتبار سے نہایت ممتاز ہے کہ اس مہینے کی 9 تاریخ ہی کو ہمارے پیغمبر نبیٔ عربی، سید الاولین والآخِرین حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی ولادت باسعادت ہوئی اوراسی مہینے کی بارہ تاریخ کو آپ دنیا سے رحلت بھی فرما گئے۔ صلی اللہ علیہ وسلم ۔

 


مسنون اعمال


اس مہینے سے مخصوص کسی نیک عمل کی فضیلت کے بارے میں کوئی نص قرآن و حدیث میں نہیں ہے نہ اس کی کوئی فضیلت ہی کسی حدیث میں بیان کی گئی ہے، لہٰذا جو مسنون اعمال عام دنوں میں کیے جاتے ہیں، وہ اس مہینے میں بھی کیے جائیں۔

[1] اردو دائرہ معارف اسلامیہ۔

 


رسوم و بدعات


 

ربیع الاول کا چاند دیکھ کر لوگوں کو ’’عید مبارک‘‘ کہنا یا آمدِعید کا اعلان کرنا۔ مہینہ بھر محافل میلاد کا انعقاد کرتے رہنا اور محافل میں آمد مصطفیٰ صلی اللہ علیہ وسلم کا انتظار کرتے ہوئے تعظیماً کھڑے ہو جانا۔ بارہ ربیع الاول کو ’’تیسری عید‘‘ قرار دینا اور اس کو اللہ اور رسول کی مقرر کردہ دونوں عیدوں سے زیادہ اہم سمجھنا، نیز جشن میلاد منانا اور بسوں، کاروں، ٹرالیوں اور بیل گاڑیوں کی صورت میں جلوس نکالنا یا اس میں شرکت کرنا۔ مختلف مقامات پر جھنڈیاں لگانا اور مبالغہ آمیز نعتیں پڑھنا، خانہ کعبہ، روضۂ مبارکہ، مسجد نبوی اور دیگر مقامات مقدسہ کے ماڈل بنا کر ان کا طواف کرنا اور آتش بازی، ہلڑ بازی اور رقص و سرود کی مخلوط اور غیر مخلوط محفلیں جمانا۔ وغیرہ وغیرہ ہیں۔

 


’’عید میلاد‘‘ چند قابل غور پہلو!


 

(1) سالہا سال سے مذکورہ بدعات دیکھنے میں آرہی ہیں، بالخصوص 12ربیع الاول کو بڑی دھوم دھام سے نبیٔ اکرم صلی اللہ علیہ وسلم  کا یوم ولادت منایا جاتا ہے۔ جگہ جگہ جلوس نکلتے ہیں۔ گلی گلی چراغاں ہوتا ہے۔ کھانے پکانے کا بھی خوب خوب اہتمام اورایک عجیب جشن کا ساسماں ہوتا ہے۔ اسے کہنے کو بھی ’’جشن میلاد‘‘ یا ’’عید میلاد‘‘ کہا جاتا ہے، حالانکہ اسلام میں عیدیں صرف دو ہی ہیں۔

بلاشبہ یہ سب مناظر عوام کی نبیٔ اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ والہانہ عقیدت و محبت کا مظہر ہیں۔ لیکن قابل غور بات یہ ہے کہ ہمیں نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ کس قسم کی محبت کا حکم دیا گیا ہے۔ آیا محبت کا مطلب یہ ہے کہ ہم سال میں صرف ایک روز آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی ولادت

کا جشن منالیں؟ یا محبت کا تقاضا یہ ہے کہ ہم آپ کے لائے ہوئے دین اسلام کو اپنی زندگی میں بھی نافذ کریں اوراپنے گردوپیش کے ماحول کوبھی اس کے مطابق بنانے کی حتی المقدور سعی کریں۔

اگر اول الذکر بات ہے تو ظاہر ہے کہ اس خود ساختہ معیار محبت کی رو سے تو صحابۂ کرام رضی اللہ عنہم ، تابعین عظام اور ائمۂ دین بھی نبیٔ کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی محبت سے بے گانہ قرار پائیں گے کیونکہ ’’جشن میلاد‘‘ کا یہ اہتمام صحابۂ کرام، تابعین اورائمۂ دین میں سے کسی نے بھی نہیں کیا۔ نہ کسی نے اس کا حکم دیا۔

اور اگر محبت کا مفہوم وہ ہے جو صحابۂ کرام نے سمجھا، تابعین و تبع تابعین نے سمجھا اور امامانِ دین نے سمجھا کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے لائے ہوئے دین کو اپنایا جائے، اپنے کردار کو دین کے سانچے میں ڈھالا جائے اور دینی اقدار و روایات کو فروغ دیا جائے جیسا کہ صحابہ و تابعین اور ائمۂ دین نے کیا تو پھر سوچنے والی بات یہ ہے کہ کیا ہمارا یہ ’’جشن میلاد‘‘ اس سے کسی قسم کی کوئی مناسبت رکھتا ہے؟

 

(2) نبی ٔاکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے فرمان کی رو سے دین میں اپنی طرف سے اضافہ مردود اور ناقابل قبول ہے:

 
’مَنْ أَحْدَثَ فِي أَمْرِنَا ہٰذَا مَا لَیْسَ فِیہِ فَہُوَ رَدٌّ‘(1)

 

نیز آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان ہے کہ دین میں اضافہ شدہ کام(بدعت) مردود ہی نہیں بلکہ گمراہی ہے جو جہنم میں لے جانے والی ہے۔

 

’کُلُّ بِدْعَۃٍ ضَلَالَۃٌ وَ کُلُّ ضَلَالَۃٍ فِي النَّارِ‘

 

1۔ صحیح البخاري، الصلح، باب: إذا اصطلحوا علی صلح جور…، حدیث: 2697، و صحیح مسلم، الأقضیۃ، باب نقض الأحکام الباطلۃ…، حدیث: 1718۔

 

’’ہر بدعت گمراہی ہے اور ہر گمراہی جہنم میں لے جانے والی ہے۔‘‘[1]

 

[1] سنن النسائي، صلاۃ العیدین، باب کیف الخطبۃ، حدیث: 1579۔ [2] ملاحظہ ہو مقالہ ’’السیرۃ النبویۃ، توقیتي مطالعہ‘‘ (از پروفیسر ظفر احمد سابق صدر شعبۂ علوم اسلامیہ، گورنمنٹ ایس ای کالج، بہاول پور۔ پنجاب۔) ص 223-219، شائع شدہ در رسالہ شش ماہی ’’السیرۃ، عالمی‘‘ کراچی (شمارہ 14، اکتوبر 2005۔) اس مقالے میں نہایت تفصیل سے توقیتی حساب سے 12 ربیع الاول ہی کو یومِ وفات اور 8 ربیع الاول کو یوم ولادت ثابت کیا گیا ہے۔

 

جب یہ واضح ہوگیا کہ ’’عید میلاد‘‘ کا کوئی شرعی ثبوت نہیں نہ صحابہ و تابعین اور ائمۂ دین (امام مالک، امام شافعی، امام احمد بن حنبل اور امام ابو حنیفہ رحمۃ اللہ علیہم ) اور دیگر ائمہ نے اسے منایا۔ بلکہ خیرالقرون کے کئی سو سال کے بعد اس کی ایجاد ہوئی تو یہ کام نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے فرمان کے مطابق ’’بدعت‘‘ ہی قرار پائے گا۔ اب آپ خود سوچ لیں کہ بدعت کا ارتکاب کرکے آپ ’’ثواب‘‘ کمارہے ہیں یا اپنی تمام نیکیاں ہی برباد کررہے ہیں؟

 

(3) نبیٔ اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی وفات کے بارے میں اکثر اہل علم و اہل تاریخ کا قول ہے کہ 12ربیع الاول کو ہوئی ہے۔ اسی لیے 12ربیع الاول کا دن ’’بارہ وفات‘‘ کے نام سے مشہور چلا آرہا ہے، نیز آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی تاریخ ولادت کے بارے میں اختلاف ہے۔ علمائے محققین نے تو 8 یا 9ربیع الاول ہی کو آپ کا یوم ولادت صحیح بتلایا ہے۔[2] تاہم بارہ ربیع الاول ہی کو آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا یوم ولادت بھی تسلیم کر لیا جائے (جیسا کہ اس روز جشن ولادت منایا جاتا ہے) تو ظاہر ہے کہ یہی روز آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی وفات کا بھی ہے۔ اس اعتبار سے ذرا سوچیے! کہ کیا نبیٔ اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی وفات والے دن ’’جشن‘‘ منانا صحیح ہے؟ اگر کوئی غیر مسلم آپ سے پوچھ بیٹھے کہ بھئی! یہ تم اپنے نبی کی وفات کا ’’جشن‘‘ منا رہے ہو یا ولادت کا؟ کیونکہ یہ تاریخ توآپ کی وفات کی بھی ہے تو اس کا کیا معقول جواب ہمارے پاس ہے؟

 

(4) پھر خوشی یا ’’جشن‘‘ منانے کا یہ انداز، جس کا مظاہرہ 12ربیع الاول کو کیا جاتا ہے، اسلام میں اس کی کوئی گنجائش بھی ہے؟ خوشی کے موقع پر جلوس نکالنا، چراغاں کرنا، لڈیاں، بھنگڑے اور دھمالیں ڈالنا، دین اسلام سے ان کا کوئی تعلق بھی ہے؟ جواب یقینا نفی میں ہوگا۔ اسلام نے ہمارے لیے دو عیدیں مقرر فرمائی ہیں۔ لیکن ان میں نماز پڑھنے اور تکبیر و تہلیل ہی کا حکم ہے۔ اس کے علاوہ کسی بات کا حکم نہیں۔ لیکن تیسری ’’عید میلاد‘‘ جو بنالی گئی ہے۔ اس میں تکبیر و تہلیل کے علاوہ سب کچھ کیا جاتا ہے بلکہ بڑے اہتمام سے کیا جاتا ہے، حالانکہ یہ سارا انداز غیر اسلامی ہے جس کا دین اسلام سے کوئی تعلق ہی نہیں ہے۔ جس طرح اپنے اکابر کا ’’یوم‘‘ منانا ایک غیر اسلامی فعل ہے۔ اسی طرح زیر بحث ’’جشن میلاد‘‘ منانے کا انداز بھی از اول تا آخر غیر اسلامی ہے۔ بلکہ کفار کی نقالی اوران کی مشابہت ہے، حالانکہ ہمیں کفار کی مشابہت اختیار کرنے سے روکا گیا ہے۔ اور نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے تو یہاں تک فرمایا ہے:

’مَنْ تَشَبَّہَ بِقَوْمٍ فَہُوَ مِنْہُمْ‘

 

’’جو کسی قوم کی مشابہت اختیار کرے گا، وہ انھی میں سے سمجھا جائے گا۔‘‘

 

[سنن أبي داود، اللباس، باب في لبس الشھرۃ، حدیث: 4031]

 

بہرحال جس اعتبار سے بھی دیکھا جائے ’’جشن میلاد‘‘ کی کوئی شرعی و دینی حیثیت سمجھ میں نہیں آئے گی۔ یہ محبت رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے عنوان پر ایسا کھوکھلا مظاہرۂ عقیدت ہے جس کی تائید نہ قرآن سے ہوتی ہے نہ حدیث سے، نہ صحابہ و تابعین کے کردار سے اور نہ ائمۂ دین کے اقوال و افعال سے۔

 

(5) پھر سب سے زیادہ قابل غور بات تو یہ ہے کہ مسلمانوں کے لیے سب سے زیادہ اہم چیز تو آپ کی ولادت نہیں رسالت ہے۔ یوم رسالت ہی سے مسلمانوں کو وہ توحید ملی جس سے گم گشتگانِ بادیۂ ضلالت محروم تھے۔ یہ دعوت توحید ہی کفار و مشرکین مکہ کے لیے سب سے زیادہ اچنبھے کی چیز تھی اور انھوں نے کہا:

 

(أَجَعَلَ الْآلِهَةَ إِلَـٰهًا وَاحِدًا ۖ إِنَّ هَـٰذَا لَشَيْءٌ عُجَابٌ ﴿٥﴾)

 

’’یہ تو سب معبودوں کو (ختم کرکے) ایک معبود ٹھہراتا ہے یہ تو بڑی ہی تعجب والی بات ہے۔‘‘[ صٓ 5:38]

 

اس یوم رسالت ہی سے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی ذات مسلمانوں کے لیے واجب الاطاعت ٹھہری اور آپ کی اطاعت اورآپ کی تابعداری اللہ کی اطاعت اوراس کی محبت کا معیار قرار پائی۔ ارشاد باری تعالیٰ ہے:

 

(مَّن يُطِعِ الرَّسُولَ فَقَدْ أَطَاعَ اللّٰهَ  ۖ)

 

’’جس نے رسول کی اطاعت کی اس نے اللہ کی اطاعت کی۔‘‘[النسآء 80:4] اور

 

(قُلْ إِن كُنتُمْ تُحِبُّونَ اللّٰهَ  فَاتَّبِعُونِي يُحْبِبْكُمُ اللّٰهُ وَيَغْفِرْ لَكُمْ ذُنُوبَكُمْ)

 

’’کہہ دیجیے: اگر تم اللہ سے محبت کرنا چاہتے ہو تو میری پیروی کرو تم اللہ کے محبوب بن جاؤ گے اور وہ تمھارے گناہ بھی معاف فرمادے گا۔‘‘[آل عمران: 3/31]

 

اس یوم رسالت ہی سے مسلمانوں کو ایمان و اخلاق کی وہ دولت لازوال حاصل ہوئی جس کی برکت سے مسلمان عرب و عجم پر چھا گئے۔ ایران و روما جیسی عظیم الشان حکومتوں کو روند ڈالا اور دنیا کے خزانے ان کے قدموں میں ڈھیر ہوگئے۔

یہ برکت اور شان، یہ اعجاز اور تاثیر کس کی تھی؟ محمد بن عبداللہ کی نہیں۔ محمد رسول اللہ کی تھی۔ صلی اللہ علیہ وسلم ۔ محمد بن عبداللہ کو تو کفار مکہ بھی مانتے تھے، ان کے اخلاق کے معترف اور راست بازی کے بھی قائل تھے۔ لیکن 40سالہ محمد بن عبداللہ جب محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم بنے اور دعوت توحید دی تو مشرکین مکہ جو پہلے ان کی راہوں میں دیدہ و دل بچھایا کرتے تھے، انھوں نے کانٹے بچھانے شروع کردیے، ان کو لہولہان کیا اور قدم قدم پر مزاحمت کی اور مخالفت کا ایک طوفان کھڑا کردیا۔ ان کی محبت، مخالفت میں اور تعلق، دشمنی میں کیوں بدلا؟ کیا انھیں راست بازی سے کد تھی؟ اخلاقیات اسلام سے انکار تھا؟ یقینا نہیں، یہ قدریں تو ان کے ہاں بھی معروف تھیں اور وہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی عزت بھی اسی لیے کرتے تھے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم ان انسانی قدروں کے حامل تھے۔

انھیں اختلاف ہوا تو اسی دعوت توحید سے، دعوت مساوات قانون سے اور محمد صلی اللہ علیہ وسلم کو بحیثیت رسول اللہ تسلیم کرنے سے۔ آج بھی اگر ہم صرف اپنے پیغمبر کے حسن اخلاق کی تعریف کریں۔ ان کے حسن سراپا کا نقشہ کھینچیں اور محمد بن عبداللہ کا یوم ولادت دھوم دھام سے منائیں۔ لیکن ان کی دعوت توحید سے اعراض و تغافل ہو۔ اور قبروں پر کفروشرک کی گرم بازاری ہو اور محمد رسول اللہ کی حیثیت سے تو ہم ان کو تسلیم کرنے میں متأمل ہوں اوران کی اس مسند پرائمہ کو بٹھا دیں۔ ان کے علاوہ دوسروں کے اقوال و اجتہادات کو واجب الاطاعت سمجھیں تو ذرا غور کیجیے کہ ہم میں اور مشرکین مکہ میں پھر فرق کیا ہوا؟

اس لیے محترم! اصل چیز یوم ولادت دھوم دھام سے منانا نہیں، آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے پیغام توحید پر ایمان لانا ہے، کفر و شرک کو مٹانا ہے، آپ کی ان تعلیمات کو اپنانا ہے، جن کے اپنانے سے مسلمانوں کو عروج حاصل ہوا، قبروں کے لات و منات اور عزیٰ و ہبل کو توڑنا ہے اور عقیدت اور اطاعت کے ان محوروں کو تبدیل کرنا ہے جس نے مسلمانوں کو ایک مرکز رسالت سے ہٹا کر بیسیوں فرقوں میں تبدیل کردیا ہے۔ اگر یہ نہیں، یعنی محمدرسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی رسالت اور ایمان و توحیدکے تقاضوں کونہیں ماننا تو پھر محمد بن عبداللہ کی ’’ولادت‘‘ کا ’’جشن‘‘ ایک فریب نفس سے زیادہ کوئی حیثیت نہیں رکھتا۔

بہ مصطفے برساں خویش را کہ دیں ہمہ اوست

اگر بہ او نہ رسیدی تمام بولہی است

’’سیرت گوئی‘‘ سے زیادہ ’’سیرت سازی‘‘ کی ضرورت

مرکزی وزارت مذہبی امور کے تحت اسلام آباد میں اور محکمۂ اوقاف کے تحت صوبوں میں کئی سال سے ربیع الاول کے مہینے میں سالانہ سیرت کانفرنسیں بڑے تزک و احتشام سے ہورہی ہیں، ان کانفرنسوں میں ملک کے ممتاز رہنما، علماء و فضلاء اور مفکرین و اہل قلم شرکت کرتے ہیں۔ جن کی آمدورفت اور مہمان نوازی پر لاکھوں روپیہ خرچ ہوتا ہے۔

بلاشبہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی سیرت مقدسہ پوری دنیا کے لیے ایک بہترین اور بے مثال نمونہ ہے۔

( لَّقَدْ كَانَ لَكُمْ فِي رَسُولِ اللّٰهِ أُسْوَةٌ حَسَنَةٌ)[الأحزاب 21:33]

 

نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے آکر فی الواقع صنم کدۂ عرب میں توحید کا علم بلند فرمایا۔شرک و کفر کے ظلمات سے نکال کر لوگوں کے دلوں کو توحید و ہدایت ربانی کے نور سے منور کیا۔ اخلاق باختہ لوگوں کو بااخلاق بلکہ معلم اخلاق بنایا، آپس کے بغض و عناد کو دور کرکے ان میں محبت و الفت پیدا کی۔ بتان رنگ و نسل کو توڑ کر پوری امت مسلمہ کو یک قالب بنایا اور تمیز ما و تو کو مٹایا، غرض محمد عربی نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے سسکتی ہوئی انسانیت کو سہارا دیا اوراسے مشرکانہ عقائد و توہمات اور اخلاق رزیلہ کی دلدل سے نکال کر توحید اور اخلاق عالیہ کی صراط مستقیم پر گامزن فرمایا۔

مسلمانوں کے لیے اپنے عظیم الشان پیغمبر صلی اللہ علیہ وسلم کا یہ بے مثال کارنامہ جس کی نظیر تاریخ انسانیت میں نہیں ملتی، انتہائی قابل فخر ہے۔ لیکن (قطع نظر بعض دوسری اہم باتوں کے) اس سلسلے میں اصل سوال یہ ہے نبیٔ کریم صلی اللہ علیہ وسلم کا یہ انسانیت ساز کردار اس لائق ہے کہ سب مسلمان اس کو اپنائیں اوراس کو اختیارکریں؟ یا اس کی حیثیت صرف یہ ہے کہ سال بہ سال آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی ولادت کے موقع پر آپ کے ان محاسن و تعلیمات کا زبانی اظہار کرکے عقیدت و تحسین کے چند پھول آپ کی ذات گرامی کو پیش کردیے جائیں اور بس…۔ اگر آپ کی سیرت صرف موضوعِ گفتار ہی ہے تو پھر ہم میں اور غیر مسلموں میں کیا فرق رہا؟ گفتار کی حد تک تو غیر مسلم بھی آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں خراج تحسین پیش کرتے ہیں اوران کارناموں کو وہ بھی تسلیم کرتے ہیں جو جلسہ ہائے سیرت میں بیان کیے جاتے ہیں۔

اور اگر آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی سیرت اس لائق ہے کہ اس سے صرف زبان و بیان کی محفلوں کو ہی سجانے کا کام نہ لیا جائے بلکہ اس کے ساتھ ساتھ عملاً وہ سیرت و کردار بھی اپنایا جائے جن سے آپ نے دنیائے انسانیت کو روشناس کیا تو ہمیں بتلایا جائے کہ پھر آخر ہماری سرگرمیاں جلسہ و جلوس تک ہی محدود ہوکر کیوں رہ گئی ہیں! ہم نبیٔ اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی تعلیمات کو اپنانے کے لیے کیوں تیار نہیں ہوتے؟ اور جس حساب سے زبانی عقیدت کا جوش و خروش ظاہر کیا جارہا ہے اسی حساب سے ہمارا عمل و کردار پست تر کیوں ہوتا جا رہا ہے، اسی حساب سے ہمارے دلوں کی دنیا کیوں تاریک تر ہوتی جارہی ہے؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے محاسن و فضائل کی گونج سے ہمارے اپنے ہی کان کیوں بے بہرہ ہیں؟ اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی سیرت و کردار کی اس روشنی سے جس سے سارا عالم بقعۂ نور بنا، ہماری اپنی ہی آنکھیں کیوں محروم ہیں؟ بہرحال ہمارا مقصد اس حقیقت کا اظہار ہے کہ اصل

چیز عمل ہے، اس کے بغیر محض زبانی عقیدت و محبت کا اظہار کوئی چیز نہیں۔

 

تَعْصِي الإِْلٰہَ وَأَنْتَ تَزْعُمُ حُبَّہٗ ھٰذَا مَحَالٌ، فِي الْقِیَاسِ بَدِیعُ لَوْ کَانَ حُبُّکَ صَادِقًا لَأَطَعْتَہٗ إِنَّ الْمُحِبَّ لِمَنْ یُّحِبُّ مُطِیعُ[ زاد المعاد: 194/4۔]

 

کیا محض سیرت کانفرنسوں کا انعقاد اور مروجہ رسومات کا اہتمام ہی کافی ہے؟

ربیع الاول میں ’’عقیدت و محبت‘‘ کے عنوان سے جو کچھ کیا جاتا ہے، جیسے جلوس نکالاجاتا ہے جس میں دنیا بھر کی بے ہودگیاں روا رکھی جاتی ہیں، چمٹے بجائے جاتے ہیں، فلمی دھنوں پر نعتیں پڑھی جاتی ہیں، بھنگڑا ڈالا جاتا ہے اور ڈھولک کی تھاپ پر رقص کیا جاتا ہے، بھلا ان چیزوں کا اسلام سے کیا تعلق؟ اسلام نے تو ان سب چیزوں کو مٹایا تھا۔ اب پھر پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وسلم کے نام پر ہی ان خرافات کا احیا کس قدر شوخ چشمانہ جسارت ہے۔ ضرورت تو اس بات کی تھی کہ حکومت جس کا دعویٰ ہے کہ اسلام اس کا دین ہے، ان ایجاد بندہ رسومات کا سد باب کرتی، اس لیے کہ اسلام کی ابتدائی چھ صدیوں میں یوم میلاد النبی صلی اللہ علیہ وسلم کو کوئی حیثیت نہیں دی گئی نہ کوئی مولود کو جانتا تھا، نہ کوئی اس کو پڑھتا تھا نہ ’’مناتا‘‘ تھا۔ عہد نبوی، عہد صحابہ و تابعین حتی کہ چاروں مذہبوں کے امام اور ان کے تلامذہ سے کوئی اس کی اصل نہیں ملتی اور دین کے نام پر کیے گئے ایسے نئے کام اسلام میں بدعت کہلاتے ہیں۔ ہر اسلامی حکومت کا فرض ہے کہ ایسی بدعات کا قلع قمع کرے لیکن افسوس کہ ہماری حکومتوں کے طرز عمل سے ان ’’رسومات‘‘ کی حوصلہ افزائی ہورہی ہے۔

وزارت مذہبی امور اور محکمۂ اوقاف کی طرف سے جو سیرت کانفرنسیں مسلسل کئی سال سے ہمارے ملک میں ہورہی ہیں۔ بیان سیرت کی حد تک تو یہ ٹھیک ہے اور مقصد اور جذبہ اگر صحیح ہے تو اس کے کار خیر ہونے میں بھی کوئی شبہ نہیں۔ لیکن ایک تو مولود مروج کے موقع پر ان کا انعقاد محل نظر ہے کیونکہ اس طرح ان کا تعلق ان ہی بدعات سے جڑ جاتا ہے جن کاذکر ہم نے گزشتہ سطور میں کیا ہے۔ یہ کسی اور مہینے میں رکھی جائیں تو بہتر ہے تاکہ برخود غلط لوگوں نے ’’جشن ولادت‘‘ کے عنوان سے جو غیرشرعی رسمیں ایجاد کرلی ہیں، ان سیرت کانفرنسوں سے ان کی حوصلہ افزائی نہ ہو۔

دوسرے، حکومت کے پاس ہر طرح کے وسائل موجود ہیں اور وہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی سیرت کے پہلوؤں کو عملاً اجاگر کرنے کی صلاحیت سے بہرہ ور ہے۔ وہ صرف سیرت کانفرنسوں کے انعقاد سے اپنے منصبی فرائض کی ادائیگی سے عہدہ بر آ نہیں ہوسکتی تاآنکہ وہ عملی اقدامات بھی بروئے کار نہ لائے۔

اس لیے ہم وزارت مذہبی امور، محکمۂ اوقاف اور حکومت کے دیگر اہم ذمے داروں سے عرض کریں گے کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم سے جذباتی وابستگی کے مظاہرے سے کچھ بلند ہوکر سیرت نبوی کو عملاً اپنانے کی شدید ضرورت ہے۔ ہمارا ملک اخلاقی زوال کی انتہا کو پہنچ چکا ہے، قبر پرستی کی صورت میں کاروبارِ لات و منات عروج پر ہے، رنگ و نسل اور زبان کے وہ بت، جن کو پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وسلم نے پاش پاش کردیا تھا، ہم نے نہ صرف اپنے حریم دل کے طاقوں میں سجا لیے ہیں بلکہ ان کی پرستش بھی کررہے ہیں، جس کا مظاہرہ سندھ کے علاقوں اور کراچی وغیرہ میں سالہاسال سے ہورہا ہے اورجس کا سلسلہ وقفے وقفے سے تاحال جاری ہے۔

ان حالات میں بہ بانگ دہل مجمع لگا کر لوگوں کو یہ سنانا کہ ہمارے پیغمبر صلی اللہ علیہ وسلم نے یہ یہ کارنامے انجام دیے۔ جبکہ خود ہماری اپنی زندگی کا ایک ایک عمل، ایک ایک ادا اور

ایک ایک حرکت پیغمبر اسلام کے کارناموں پر خط نسخ پھیر رہی ہو، کون سا دانش مندانہ فعل ہے؟ اور یہ عقل و فہم کا کون سا صحیح استعمال ہے کہ نسخۂ کیمیا بھی موجود ہو اور مریض جاں بلب بھی سامنے پڑا کراہ رہا ہو لیکن ہم اس نسخۂ کیمیا سے جاں بلب مریض کا علاج کرنے کی بجائے اس امر کا اہتمام کریں کہ زیادہ سے زیادہ لوگوں کا اجتماع کرکے ہم ان کے سامنے اس نسخۂ کیمیا کے وہ اثرات و نتائج اور فوائد بیان کریں جو آج سے چودہ سو سال پہلے جاں بلب قوم کو اس کے استعمال سے حاصل ہوئے تھے۔

ہماری اس حرکت سے دنیا یا تو ہمیں ہی احمق تصور کرے گی یا پھر ان کارناموں کو ہی داستان طرازی سمجھے گی جو ہم نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی سیرت کے ضمن میں بیان کرتے ہیں اور جو سیرت کانفرنسوں کا خاص موضوع ہوتے ہیں۔ بہرحال اخلاقی انحطاط سے دو چار قوم کو سیرت گوئی کی نہیں، سیرت سازی کی ضرورت ہے۔ اس سلسلے میں اگر کچھ کرسکتے یا کرنے کا عزم رکھتے ہیں تو سیرت سازی کا یہ کام کرئیے!

 

اگر یہ نہیں تو پھر کچھ نہیں بابا

 

(قُلْ إِن كُنتُمْ تُحِبُّونَ اللّٰهَ  فَاتَّبِعُونِي يُحْبِبْكُمُ اللّٰهُ وَيَغْفِرْ لَكُمْ ذُنُوبَكُمْ)

 

’’(اے پیغمبر!) آپ کہہ دیجیے: اگر تم اللہ سے محبت کرتے ہو تو میری پیروی کرو، اللہ تعالیٰ تم سے محبت کرے گا اور تمھارے گناہ معاف کردے گا۔‘‘[آل عمران: 3/31]

 

 


میلاد النبی۔ شبہات کا ازالہ


 

یہ بات تسلیم شدہ ہے کہ نبیٔ کریم صلی اللہ علیہ وسلم ، صحابہ، تابعین اور مشہور ائمہ کے عہد میں میلاد النبی کی محفلیں منعقد کرنے کا کوئی تصور نہیں تھا لیکن ان کے جواز کے لیے نبیٔ کریم صلی اللہ علیہ وسلم اور صحابہ کے بعض اقوال اور افعال سے استدلال کرنے کی کوشش کی جاتی ہے۔ یہاں ان شبہات کا ازالہ درج ذیل ہے:

(1) جب نبیٔ کریم صلی اللہ علیہ وسلم مدینہ تشریف لائے تو یہودی عاشورا کا روزہ رکھا کرتے تھے۔ آپ نے ان سے پوچھا تو وہ کہنے لگے: اس دن اللہ تعالیٰ نے فرعون کو غرق کیا اور موسیٰ علیہ السلام کو نجات دی تھی۔ ہم شکرانے کے طور پر روزہ رکھتے ہیں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:

’فَأَنَا أَحَقُّ بِمُوسٰی مِنْکُمْ، فَصَامَہٗ وَأَمَرَ بِصِیَامِہٖ‘

 

’’میں تمھاری نسبت موسیٰ علیہ السلام کا زیادہ حق دار ہوں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے خود بھی روزہ رکھا اور دوسروں کو رکھنے کا حکم دیا۔‘‘

 

[صحیح البخاري، الصوم، باب صوم یوم عاشورائ، حدیث: 2004، وصحیح مسلم، الصیام، باب صوم یوم عاشورائ، حدیث: 1130]

 

 

ازالہ:نبیٔ کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے صرف یہودیوں کو دیکھ کر یہ روزہ شروع نہیں کیا تھا بلکہ مکہ میں بھی آپ عاشورا کا روزہ رکھتے تھے اور دوسروں کو رکھنے کا حکم دیتے تھے۔ جب رمضان کے روزے فرض ہو گئے تو آپ نے اسے لوگوں کی صوابدید پر چھوڑ دیا۔ سیدہ عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا فرماتی ہیں:

’کَانَ یَوْمُ عَاشُورَائَ تَصُومُہٗ قُرَیْشٌ فِي الْجَاہِلِیَّۃِ، وَکَانَ رَسُولُ اللّٰہِ صلي اللّٰه عليه وسلم یَصُومُہٗ فِي الْجَاہِلِیَّۃِ، فَلَمَّا قَدِمَ الْمَدِینَۃَ صَامَہٗ وَأَمَرَ بِصِیَامِہٖ، فَلَمَّا فُرِضَ رَمَضَانُ تَرَکَ یَوْمَ عَاشُورَائَ، فَمَنْ شَآئَ صَامَہٗ وَمَنْ شَآئَ تَرَکَہٗ‘

’’عاشورا کے دن قریش روزہ رکھا کرتے تھے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم بھی بعثت سے پہلے ہی سے اس دن روزہ رکھا کرتے تھے۔ جب آپ مدینہ آئے۔ آپ نے خود بھی روزہ رکھا اور دوسروں کو بھی روزہ رکھنے کا حکم دیا۔ جب رمضان کے روزے فرض ہو گئے تو آپ نے عاشورا کا روزہ ترک کر دیا۔ جو چاہے روزہ رکھے جو چاہے نہ رکھے۔‘‘

 

[صحیح البخاري، الصوم،باب صوم یوم عاشورائ، حدیث: 2002، وصحیح مسلم، الصیام، باب صوم یوم عاشورائ، حدیث: 1125]

 

سیدنا معاویہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا:

 

’ھٰذَا یَوْمُ عَاشُورَائَ وَلَمْ یَکْتُبِ اللّٰہُ عَلَیْکُمْ صِیَامَہٗ وَأَنَا صَائِمٌ، فَمَنْ شَائَ فَلْیَصُمْ وَمَنْ شَائَ فَلْیُفْطِرْ‘

 

’’یوم عاشورا کا روزہ اللہ نے تم پر فرض نہیں کیا۔ میں نے روزہ رکھا ہوا ہے۔ تم میں سے جو چاہے روزہ رکھے اور جو چاہے نہ رکھے۔‘‘

 

[صحیح البخاري، الصوم،باب صوم یوم عاشورائ، حدیث: 2003، وصحیح مسلم، الصیام، باب صوم یوم عاشورائ، حدیث: 1129]

 

عاشورا کاروزہ نبی ٔ کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے خود بھی رکھا ہے اور دوسروں کو بھی رکھنے کی ترغیب دی ہے۔ اس کے برعکس عید میلاد نہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے منائی، نہ صحابہ نے منائی، نہ تابعین سے اس کا ثبوت ملتاہے اور نہ ائمۂ عظام ہی نے اس کا اہتمام کیا۔ اسے ایک مسنون عمل پر کیسے قیاس کیا جا سکتا ہے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے واضح طور پر دین میں نئے امور ایجاد کرنے سے منع فرمایا ہے، سیدنا عرباض بن ساریہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:

 

’إِیَّاکُمْ وَالْأُمُورَ الْمُحْدَثَاتِ، فَإِنَّ کُلَّ بِدْعَۃٍ ضَلَالَۃٌ‘

 

’’نئے نئے کام ایجاد کرنے سے بچنا کیونکہ ہر بدعت گمراہی ہے۔‘‘

 

[ سنن ابن ماجہ، المقدمۃ، باب اتباع سنۃ الخلفاء الراشدین المہدیین، حدیث: 42]

 

اور بہت سی دوسری احادیث ہیں جن کا ذکر مقدمہ میں گزر چکا ہے۔

 

(2) عید میلاد النبی کے لیے اس حدیث سے بھی استدلال کیا جاتا ہے، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے پیر کے روزے کے متعلق پوچھا گیا تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:

 

’ذَاکَ یَوْمٌ وُلِدْتُّ فِیہِ، وَیَوْمٌ بُعِثْتُ فِیہِ‘

 

’’اس دن میری پیدائش ہوئی اور اسی دن مجھے نبوت عطا کی گئی۔‘‘

 

[صحیح مسلم، الصیام، باب استحباب صیام ثلاثۃ…، حدیث: 1162]

 

آپ اپنے یوم پیدائش کی تعظیم کیا کرتے تھے اور اپنی پیدائش کی خوشی میں روزہ رکھا کرتے تھے۔

ازالہ: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم صرف پیر کو روزہ نہیں رکھا کرتے تھے بلکہ پیر اور جمعرات کا روزہ رکھا کرتے تھے اور اس کی وجہ آپ نے یہ بتائی:

’تُعْرَضُ الْأَعْمَالُ یَوْمَ الْاِثْنَیْنِ وَالْخَمِیسِ، فَأُحِبُّ أَنْ یُّعْرَضَ عَمَلِِي وَأَنَا صَائِمٌ‘

 

’’پیر اورجمعرات کو اعمال پیش کیے جاتے ہیں۔ مجھے یہ بات پسند ہے، جب میرے اعمال پیش ہوں تو میں روزے کی حالت میں ہوں۔‘‘

 

[جامع الترمذي،الصوم، باب ماجاء في صوم یوم الاثنین والخمیس، حدیث: 747]

 

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ہر پیر کو روزہ رکھا کرتے تھے نہ کہ صرف بارہ ربیع الاول کو۔

 

اس حدیث سے تو محض اس قدر ہی استدلال ہوسکتاہے کہ اس دن روزہ رکھا جائے، باقی سرگرمیوں کا جواز کہاں سے نکل سکتا ہے؟ جبکہ اللہ تعالیٰ واضح طور پر ارشاد فرماتا ہے:

 

(يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا لَا تُقَدِّمُوا بَيْنَ يَدَيِ اللّٰهِ وَرَسُولِهِ ۖ وَاتَّقُوا اللّٰهَ  ۚ إِنَّ اللّٰهَ  سَمِيعٌ عَلِيمٌ ﴿١﴾)

 

’’اے ایمان والو! تم اللہ اور اس کے رسول سے آگے نہ بڑھو اور تم اللہ سے ڈرو، بلاشبہ اللہ خوب سننے والا، خوب جاننے والا ہے۔‘‘[ الحجرات 1:49]

 

مزید ارشاد فرمایا:

 

(وَمَا آتَاكُمُ الرَّسُولُ فَخُذُوهُ وَمَا نَهَاكُمْ عَنْهُ فَانتَهُوا ۚ)

 

’’اور اللہ کا رسول تمھیں جو کچھ دے وہ لے لو اور جس سے منع کرے اسے چھوڑ دو۔‘‘[الحشر 7:59]

 

دلچسپ بات یہ ہے کہ استدلال تو نبیٔ کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے روزہ رکھنے سے کیا جاتا ہے، لیکن اس دن روزہ بالکل نہیں رکھا جاتا، بلکہ بہت سے افراد نے لکھاہے کہ اس دن روزہ رکھنا مکروہ ہے۔

ابن عباد اور ابن عاشر نے اس دن روزہ رکھنے سے منع کیا ہے۔ شیخ ابو عبداللہ محمد بن محمد بن عبدالرحمن طرابلسی اپنی کتاب ’’مواہب الجلیل شرح مختصر خلیل‘‘ میں لکھتے ہیں، شیخ زروق ’’شرح القرطبیہ‘‘ میں بیان کرتے ہیں:

 

’إِنَّہٗ مِنْ أَعْیَادِ الْمُسْلِمِینَ فَیَنْبَغِي أَنْ لاَّ یُصَامَ فِیہِ‘

 

’’یہ دن مسلمانوں کی عیدوں میں سے ہے، اس دن روزہ رکھنا مناسب نہیں ہے۔‘‘[ القول الفصل في حکم الاحتفال بمولد خیر الرسل، ص: 631]

 

شیخ احمد بن خالد الناصری اپنی کتاب ’’الاستقصاء لأخبار دول المغرب الأقصی‘‘ (کی جلد دوم صفحہ: 144) میں لکھتے ہیں کہ میں ساحل سمندر کی طرف گیا۔ مجھے ابن عاشر اور ان کے مرید ملے جو کھانے پینے میں مشغول تھے۔ انھوں نے مجھے بھی کھانے

 

میں شریک ہونے کی دعوت دی۔ میں نے بتایا کہ میں نے روزہ رکھا ہوا ہے، انھوں نے ناپسندیدہ نظروں سے میری طرف دیکھا اور کہا:

 

’ھٰذَا یَوْمُ فَرَحٍ وَّ سُرُورٍ یُسْتَقْبَحُ فِي مِثْلِہِ الصَّوْمُ کَالْعِیدِ‘

 

’’یہ خوشی اور لطف اندوز ہونے کا دن ہے۔ عید کی طرح اس دن بھی روزہ رکھنا انتہائی بری بات ہے۔‘‘

[ القول الفصل في حکم الاحتفال بمولد الرسل، ص: 633]

 

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے تو سات دنوں کو مسلمانوں کے لیے عید قرار دیا ہے:

 

٭ انس رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم مدینہ تشریف لائے اور ان لوگوں کے ہاں دو دن مقرر تھے، ان میں وہ کھیل کود کیا کرتے تھے۔ آپ نے پوچھا: ’’یہ دو دن کیا ہیں؟‘‘ انھوں نے کہا: ہم دورِ جاہلیت میں ان دنوں میں کھیلتے کودتے تھے، تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:

 

’إِنَّ اللّٰہَ قَدْ أَبْدَلَکُمْ بِھِمَا خَیْرًا مِنْھُمَا: یَوْمَ الْأَضْحٰی، وَیَوْمَ الْفِطْرِ‘

 

’’بے شک اللہ تعالیٰ نے تمھیں ان کے بدلے ان سے اچھے دن دیے ہیں۔ أضحٰی (قربانی) اور فطر کا دن۔‘‘

 

[سنن أبي داود، الصلاۃ، باب صلاۃ العیدین، حدیث: 1134]

 

 

٭ عقبہ بن عامر رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:

 

’یَوْمُ عَرَفَۃَ وَیَوْمُ النَّحْرِ وَأَیَّامُ التَّشْرِیقِ عِیدُنَا، أَھْلَ الإِْسْلَامِ، وَھِيَ أَیَّامُ أَکْلٍ وَشُرْبٍ‘

 

’’عرفہ (9ذوالحجہ)، نحر (الاضحی) اور ایام تشریق (عید الاضحی کے بعد والے تین دن) ہم اہل اسلام کے لیے عید کے دن ہیں۔‘‘

 

[جامع الترمذي، الصوم، باب ما جاء في کراہیۃ صوم…، حدیث: 773]

 

٭ اسی طرح جمعہ کے متعلق آپ نے ارشاد فرمایا:

 

’إِنَّ یَوْمَ الْجُمُعَۃِ یَوْمُ عِیدٍ، فَلَا تَجْعَلُوا یَوْمَ عِیدِکُمْ یَوْمَ صِیَامِکُمْ إِلاَّ أَنْ تَصُومُوا قَبْلَہٗ أَوْ بَعْدَہٗ‘

 

’’بے شک جمعے کا دن عید کا دن ہے، اپنے اس عید کے دن روزہ نہ رکھو مگر یہ کہ اس سے ایک دن پہلے یا بعد میں روزہ رکھو۔‘‘

[مسند أحمد: 303/2]

 

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے تو انھی سات دنوں کو عید قرار دیا ہے۔ اب عید کا آٹھواں دن کہاں سے آگیا؟ اللہ تعالیٰ تو واضح انداز میں اعلان فرماتا ہے:

 

(الْيَوْمَ أَكْمَلْتُ لَكُمْ دِينَكُمْ وَأَتْمَمْتُ عَلَيْكُمْ نِعْمَتِي وَرَضِيتُ لَكُمُ الْإِسْلَامَ دِينًا ۚ)

 

’’آج میں نے تمھارے لیے تمھارا دین مکمل کردیا اور تم پر اپنی نعمت پوری کردی اور تمھارے لیے اسلام کو دین کے طور پر پسند کر لیا۔‘‘

[المآئدۃ 3:5]

 

دین کی تکمیل کے بعد اس میں اپنی طرف سے اضافہ بدعت ہی ہے چاہے اس پر کیسی ہی ملمع سازی کی گئی ہو۔

 

(3) یہ دلیل بھی دی جاتی ہے کہ نبیٔ کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی پیدائش پر خوشی منانا تو قرآن کی رو سے مطلوب ہے۔ اللہ تعالیٰ فرما تا ہے:

 

(قُلْ بِفَضْلِ اللّٰهِ وَبِرَحْمَتِهِ فَبِذَٰلِكَ فَلْيَفْرَحُوا)

 

’’کہہ دیجیے! کہ اللہ کے فضل اور اس کی رحمت سے خوش ہو جاؤ۔‘[ یونس 58:10]

 

اللہ تعالیٰ نے رحمت سے خوش ہونے کا حکم دیا ہے، نبیٔ کریم صلی اللہ علیہ وسلم سب سے بڑی رحمت ہیں تو ہم کیوں اس پر خوش نہ ہوں۔ اللہ تعالیٰ فرماتا ہے:

 

(وَمَا أَرْسَلْنَاكَ إِلَّا رَحْمَةً لِّلْعَالَمِينَ ﴿١٠٧﴾)

 

’’اور ہم نے آپ کو سب جہانوں کے لیے رحمت بنا کر بھیجا ہے۔‘‘ [ الأنبیآء 107:21]

 

ازالہ: سورۂ یونس کی آیت کو پیچھے والی آیت کے ساتھ ملا کر پڑھا جائے تو واضح ہوجاتا ہے کہ یہاں رحمت سے کیا مراد ہے۔ ارشاد باری تعالیٰ ہے:

 

(يَا أَيُّهَا النَّاسُ قَدْ جَاءَتْكُم مَّوْعِظَةٌ مِّن رَّبِّكُمْ وَشِفَاءٌ لِّمَا فِي الصُّدُورِ وَهُدًى وَرَحْمَةٌ لِّلْمُؤْمِنِينَ ﴿٥٧﴾ قُلْ بِفَضْلِ اللّٰهِ وَبِرَحْمَتِهِ فَبِذَٰلِكَ فَلْيَفْرَحُوا هُوَ خَيْرٌ مِّمَّا يَجْمَعُونَ ﴿٥٨﴾)

 

’’اے لوگو! یقینا تمھارے پاس تمھارے رب کی طرف سے (قران کی) نصیحت آگئی ہے اور (یہ) شفا ہے ان (بیماریوں) کے لیے جو سینوں میں ہیں اور مومنوں کے لیے ہدایت اور رحمت ہے۔ (اے نبی!) کہہ دیجیے !(یہ) اللہ کے فضل اور اس کی رحمت سے (نازل ہوا) ہے، لہٰذا (لوگوں کو) چاہیے کہ وہ اسی کے ساتھ خوش ہوں، یہ ان چیزوں سے بہت بہتر ہے جو وہ جمع کرتے ہیں۔‘‘[یونس 58,57:10]

 

ان آیات سے واضح طور پر معلوم ہوتا ہے کہ یہاں رحمت سے مراد قرآن مجید ہے۔ صحابۂ کرام بھی اس سے قرآن اور اسلام ہی مراد لیتے تھے۔

امام قرطبی رحمۃ اللہ علیہ (قُلْ بِفَضْلِ اللّٰهِ وَبِرَحْمَتِهِ فَبِذَٰلِكَ فَلْيَفْرَحُوا)کی تفسیر بیان کرتے ہوئے لکھتے ہیں، ابو سعید خدری اور ابن عباس رضی اللہ عنہم  بیان کرتے ہیں:

 

’فَضْلُ اللّٰہِ: الْقُرْآنُ، وَرَحْمَتُہُ: الإِْسْلاَمُ‘

 

’’اللہ کا فضل قرآن اور اس کی رحمت اسلام ہے۔‘‘

 

اسی طرح حسن بصری، ضحاک، مجاہد اور قتادہ رحمۃ اللہ علیہم کہتے ہیں:

 

’فَضْلُ اللّٰہِ: الإِْیمَانُ، وَرَحْمَتُہُ: الْقُرْآنُ‘

 

’’اللہ کا فضل ایمان اور اس کی رحمت قرآن ہے۔‘‘

 

[الجامع لأحکام القرآن: 11,10/11]

 

اسی طرح امام ابن کثیر رحمۃ اللہ علیہ نے بھی اس آیت کی تفسیر کرتے ہوئے قرآن مجید ہی کی دوسری آیات سے ثابت کیا ہے کہ قرآن ہی کو اللہ نے لوگوں کے لیے اپنی رحمت قرار دیا ہے۔

 

[تفسیر ابن کثیر: 553/2]

 

(4) اسی طرح مندرجہ ذیل حدیث سے بھی استدلال کیا جاتا ہے۔ انس رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں:

 

’أَنَّ النَّبِيَّ صلي اللّٰه عليه وسلم عَقَّ عَنْ نَّفْسِہٖ بَعْدَ النُّبُوَّۃِ‘

 

’’نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے نبوت کے بعد اپنا عقیقہ کیا۔‘‘

 

[السنن الکبریٰ للبیہقي، حدیث: 19813، و مجمع الزوائد، حدیث: 6203]

 

نبی ٔ کریم صلی اللہ علیہ وسلم کا عقیقہ آپ کے دادا عبدالمطلب نے ساتویں دن کیا تھا۔ عقیقہ دوسری مرتبہ نہیں کیا جا سکتا۔ نبیٔ کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنی ولادت کی خوشی منانے اور امت کو تعلیم دینے کے لیے ایسا کیا۔ ہمیں بھی اس سنت پر عمل کرتے ہوئے اس عظیم نعمت کے شکرانے کے طور پر اجتماعات منعقد کرنے اور انواع و اقسام کے کھانوں کا اہتمام کرنا چاہیے۔

ازالہ: یہ حدیث ثابت ہی نہیں ہے۔

 

’قَالَ عَبْدُ الرَّزَّاقِ فِي مُصَنَّفِہٖ… أَنْبَأَنَا عَبْدُ اللّٰہِ بْنُ مُحَرَّرٍ عَنْ قَتَادَۃَ عَنْ أَنَسٍ أَنَّ النَّبِيَّ صلي اللّٰه عليه وسلم عَقَّ عَنْ نَّفْسِہٖ بَعْدَ النُّبُوَّۃِ‘

 

امام ابن قیم اس حدیث کو عبدالرزاق کے حوالے سے بیان کرنے کے بعد عبدالرزاق کا یہ قول بیان کرتے ہیں:

 

’إِنَّمَا تَرَکُوا ابْنَ مُحَرَّرٍ بِھٰذَا الْحَدِیثِ‘

 

’’انھوں (محدثین) نے ابن محرر کو اس حدیث کی وجہ سے چھوڑ دیا ہے۔‘‘[تحفۃ المودود، ص: 93]

 

حافظ ابن حجر رحمۃ اللہ علیہ کہتے ہیں: ’’یہ حدیث ثابت نہیں۔‘‘

 

بزار کہتے ہیں: اس حدیث کو بیان کرنے والا اکیلا عبداللہ بن محرر ہے اور وہ ضعیف ہے۔[ فتح الباري: 737,736/9]

 

امام نووی رحمۃ اللہ علیہ لکھتے ہیں:

 

وَأَمَّا الْحَدِیثُ الَّذِي ذَکَرَہٗ فِي عَقِّ النَّبِيِّ صلي اللّٰه عليه وسلم عَنْ نَّفْسِہٖ فَرَوَاہُ الْبَیْہَقِيُّ بِإِسْنَادِہٖ عَنْ عَبْدِ اللّٰہِ بْنِ مُحَرَّرٍ عَنْ قَتَادَۃَ عَنْ أَنَسٍ…الخ۔ ھٰذَا حَدِیثٌ بَاطِلٌ وَ عَبْدُ اللّٰہِ بْنُ مُحَرَّرٍ ضَعِیفٌ، مُتَّفَقٌ عَلٰی ضُعْفِہٖ، قَالَ الْحُفَّاظُ: ھُوَ مَتْرُوکٌ۔

 

عقیقہ والی حدیث کو امام بیہقی عبداللہ بن محرر عن قتادہ عن انس سے بیان کرتے ہیں۔

 

یہ حدیث باطل ہے۔ عبداللہ بن محرر ضعیف ہے اور اس کے ضعف پر سب کا اتفاق ہے۔ حفاظ حدیث کہتے ہیں: ’’یہ متروک ہے۔‘‘

 

[المجموع شرح المہذب: 12/8]

 

امام ذہبی کہتے ہیں: ’’یہ متروک ہے اور ثقہ نہیں ہے۔‘[ میزان الاعتدال: 500/2]

امام احمد کہتے ہیں: ’’لوگوں نے اس کی حدیث کو ترک کر دیا ہے۔‘‘

امام دارقطنی کہتے ہیں: ’’یہ متروک ہے۔‘‘

امام ابن حبان کہتے ہیں: ’’یہ بغیر علم کے جھوٹ بولتا ہے اور اخبار کو بغیر سمجھے الٹ پلٹ کر دیتا ہے۔‘‘

امام ابن معین کہتے ہیں: ’’یہ ثقہ نہیں ہے۔‘‘

امام بخاری کہتے ہیں: ’’منکر الحدیث ہے۔‘‘[ الضعفاء الکبیر: 309/2، ومیزان الاعتدال: 500/2]

 

(5) ایک اشکال یہ پیش کیا جاتا ہے، مان لیتے ہیں عید میلاد النبی بدعت ہے نبیٔ کریم صلی اللہ علیہ وسلم اور صحابہ سے اس کا کوئی ثبوت نہیں ملتا لیکن یہ بدعت حسنہ ہے جیسا کہ سیدنا عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ نے تراویح کی جماعت شروع کروائی تو لوگوں کو باجماعت نماز تراویح ادا کرتے ہوئے دیکھا تو فرمایا: ’نِعْمَۃِ الْبِدْعَۃُ ھٰذِہٖ‘ ’’یہ اچھی بدعت ہے۔‘‘ یہی مثال عید میلاد النبی کی ہے۔

ازالہ: اس کا مفصل جواب کتاب کے مقدمہ میں گزر چکا ہے، ملاحظہ فرمائیں۔

 

(6) اسی طرح ایک اشکال یہ پیش کیا جاتا ہے کہ مسلمانوں کی ایک بہت بڑی تعداد اس کے جواز پر متفق اور اس کے منانے کا اہتمام کرتی ہے اور حدیث میں آتا ہے:

’مَا رَاٰہُ الْمُسْلِمُونَ حَسَنًا فَھُوَ عِنْدَ اللّٰہِ حَسَنٌ‘

’’جسے مسلمان اچھا سمجھیں وہ اللہ کے ہاں بھی اچھا ہی ہوتاہے۔‘‘[مسند أحمد: 379/1]

ازالہ: اس کا مفصل جواب کتاب کے مقدمہ میں، ص: 103-95 میں گزر چکا ہے، ملاحظہ فرمائیں۔

 

(7) اسی طرح ایک اشکال یہ پیش کیا جاتا ہے کہ اسلام میں جو اچھا کام رائج کرتا ہے اسے اس پر عمل کرنے والوں کے برابر ثواب ملتا رہتا ہے۔ حدیث میں ہے:

 

’مَنْ سَنَّ فِي الإِْسْلاَمِ سُنَّۃً حَسَنَۃً…الخ‘

 

’’جس نے اسلام میں کوئی اچھا طریقہ ایجاد کیا… الخ‘‘

 

[صحیح مسلم، العلم، باب من سن …، حدیث: 1017، بعد الحدیث، 2673]

 

تو میلاد النبی بھی اچھا طریقہ ہے لہٰذا ہمیں اسے منانا چاہیے۔

ازالہ: اس کا مفصل جواب بھی کتاب کے مقدمہ میں گزر چکا ہے، ملاحظہ فرمائیں۔

خود ساختہ ثقافت کے حوالے سے جواز؟ کیا’’ثقافت‘‘ دین و مذہب سے الگ چیز ہے؟

’’میلاد‘‘ کو دھوم دھام سے منانے کی ایک ’’دلیل‘‘ اب یہ بھی پیش کی جارہی ہے کہ اس کا تعلق دین ومذہب سے نہیں بلکہ ثقافت سے ہے۔ پہلے لوگوں کا رہن سہن، معاشرت سادہ تھی، لوگوں کے مکان تنگ اور چھوٹے ہوتے تھے، لباس اور بودوباش اور خوراک وغیرہ سب سادہ تھی۔ اب اس کے برعکس عالیشان رہائشیں ہیں، پوشاکیں اور خوراکیں بھی پرتکلف ہیں حتی کہ مساجد بھی پختہ ہی نہیں، نہایت عالی شان اور زرنگار ہیں۔ اسی طرح میلاد کے جشن میں جو یہ دھوم دھام اور اسرافِ بے جا کی صورتیں ہیں یا جلوس اوراس قسم کے دیگر مظاہر ہیں، ان کا تعلق بھی ثقافت سے ہے، اس لیے جس طرح ثقافت کے دیگر مظاہر کو ’’بدعت‘‘ نہیں کہا جاتا، میلاد کے ان خود ساختہ مظاہروں کو بھی ’’بدعت‘‘ قرار نہیں دیا جاسکتا۔

سبحان اللہ! یہ ’’دلیل‘‘ بھی خوب ہے۔ گویا علاقائی طور اطوار بھی، جس کو ثقافت کا نام دیا گیا ہے، اب ’’شرعی دلیل‘‘ بن گئے ہیں۔ اس اعتبار سے بعض علاقوں میں جو ’’ونی‘‘ یا کاروکاری کی رسمیں ہیں جن کو ختم کرنے کا مطالبہ کیاجاتا رہتا ہے، وہ بھی علاقائی ثقافت کے نام پر جائز ہی ہونی چاہئیں؟مختلف علاقوں میں جو اپنے اپنے علاقوں کے حساب سے مختلف قسم کے ’’ڈانس‘‘ رائج ہیں، جیسے ’’خٹک ڈانس‘‘ ’’لُڈی‘‘ ’’بھنگڑا‘‘ وغیرہ یہ بھی ثقافتی مظاہر ہیں، ان کو بھی دین و شریعت کے نقطۂ نظر سے دیکھنے کی ضرورت نہیں ہے، بس علاقائی ثقافت کی وجہ سے ان کا جواز تسلیم کر لینا چاہیے۔ اسی طرح ہماری شادی بیاہ کی بہت سی رسومات ہندوئوں کی نقالی یا اسلامی تہذیب سے نفرت و بیگانگی پر مبنی ہیں، جیسے مہندی کی رسم ہے، بینڈ باجوں کا رواج ہے، آتش بازی کا سلسلہ ہے، مردوں اور عورتوں کا بے باکانہ اختلاط اوران کی ویڈیو فلم سازی ہے، عورتوں کا پردے سے یکسر بے نیاز ہوکر برسرِ عام اپنے حسن و جمال، اپنی آرائش و زیبائش اوراپنے لباس اور زیورات کی نمائش کرنا ہے، انواع و اقسام کے کھانوں کی صورت میں اسراف و تبذیر کا شیطانی سلسلہ ہے، وغیرہ وغیرہ۔ یہ سب گویا ثقافتی مظاہر ہیں جو قابل نکیر نہیں بلکہ مذکورہ دلیل کی رو سے جائز قرار پائیں گے۔ سچ ہے:

گر ہمیں مکتب و ہمیں ملاں

کار طفلاں تمام خواہد شد

اس لیے ہم عرض کریں گے کہ کسی ملک یا قوم کی ثقافت کوئی چیز نہیں، اصل چیز اس قوم کا مذہب اور نظریہ ہے، ہر چیز اس کے مذہبی نظریات کے تابع ہوتی ہے۔

ہندومت ایک مذہب ہے، اس کے ماننے والوں کی ہر چیز اس کے تابع ہے، وہ اپنے مردوں کو دفناتے نہیں، جلاتے ہیں، وہ اپنی لڑکیوں کو وراثت میں سے حصہ نہیں دیتے، بلکہ شادی کے موقع پر دان (جہیز) دیتے ہیں۔ وعلیٰ ھذا القیاس ان کی ثقافت کے اور مظاہر ہیں، وہ محض ثقافت نہیں، ان کے مذہب اور نظریۂ حیات کا حصہ ہیں۔

حیا باختگی مغربی ثقافت ہے جس کے بہت سے مظاہر ہیں، جیسے بے پردگی و عریانی، مردو زن کا بے باکانہ و بے حجابانہ اختلاط بلکہ برسرعام چوکوں اور سڑکوں پر بوس و کنار، شراب نوشی، جوڑوں کا باہم رقص و سرود، نکاح کے بغیر مردوزن کا باہم جنسی تعلق وغیرہ یہ ان کی اس ثقافت کا حصہ ہیں جو انھوں نے مذہب سے آزاد ہوکر اختیار کی ہے۔ اب یہی ان کا مذہب اور نظریۂ حیات ہے اور یہی ان کی ثقافت اور کلچر ہے۔

اس سے یہ بات واضح ہوئی کہ آج کل جس کو ثقافت یا کلچرکہا جاتا ہے، وہ کسی قوم کے مذہبی تصورات اورنظریۂ حیات سے الگ نہیں ہوتا بلکہ اس کے نظریۂ حیات ہی کے اجزائے ترکیبی سے تشکیل پاتا ہے۔ اس اعتبار سے مسلمانوں کی ثقافت ہرگز وہ نہیں ہوسکتی جس کے اجزائے ترکیبی اس کے اسلامی تصورات کے بجائے غیروں کے تصورات، یا غیروں کی نقالی و مشابہت پر مبنی یا اسلام کے بیان کردہ اصولوں سے متصادم ہوں۔

’’میلاد‘‘ کے اجزائے ترکیبی کا اسلام کے تصورات سے کوئی تعلق نہیں۔ اس کے سب اجزاء غیروں کی نقالی اور مشابہت پر مبنی ہیں جن سے مسلمانوں کو روکا گیا ہے، جیسے:

٭’’یوم‘‘ منانا ٭چراغاں کرنا

٭ جلوس نکالنا ٭بھنگڑے، لڈیاں ڈالنا

٭اسراف و تبذیر اور ٭افراط و غلو کا مظاہرہ

٭تعین کے ساتھ صدقہ و خیرات کرنا۔

ان میں سے کوئی جز بھی اسلامی نہیں ہے، پھر اس کو اسلامی ثقافت یا مسلمانوں کی ثقافت کس طرح تسلیم کیا جاسکتا ہے؟ یا ثقافت کے نام پر غیروں کی اس نقالی کو کیوں کر جائز یا اجرو ثواب کا باعث سمجھا جاسکتا ہے؟

جہاں تک اس بات کا تعلق ہے کہ پہلے معاشرت سادہ تھی، اب آسائشوں اور سہولتوں کی فراوانی ہے۔ لیکن ان کا تعلق تو مادی اسباب و وسائل سے ہے، پہلے یہ وسائل کم تھے، اب وسائل کی فراوانی ہے جس کی وجہ سے معاشرت میں سادگی کی بجائے آسائشوں کے استعمال میں زیادتی آگئی ہے اور ایسے حالات میں جب اللہ تعالیٰ اسباب و وسائل سے نوازے، شریعت اسلامیہ میں ان سے فیض یاب ہونے کی اجازت دی گئی ہے۔ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان گرامی ہے کہ اللہ تعالیٰ اگر کسی پر انعام و اکرام فرمائے تو وہ اس بات کو پسند فرماتاہے کہ اس کے اثرات بھی اس شخص میں نظر آئیں۔[1]

اس اعتبار سے اگر کوئی شخص اللہ کے دیے ہوئے وسائل سے اچھا مکان بنا لیتا ہے، اچھی بودوباش اختیار کرتا ہے، اچھی خوراک استعمال کرتا ہے بشرطیکہ وہ اسراف اور تکبر سے بچتا ہے تو یہ نہ صرف جائز بلکہ مستحسن ہے۔ لیکن ان مادی اسباب و وسائل کو استعمال کرنے والا کوئی بھی یہ نہیں سمجھتا کہ سادہ مکان کی بجائے اچھا مکان بنا کر رہنے میں اجروثواب زیادہ ہے، سادہ خوراک کی بجائے اچھی خوراک کی فضیلت زیادہ ہے، سادہ لباس کی بجائے بیش قیمت لباس پہننے کا اجر مجھے زیادہ ملے گا۔ وغیرہ۔

جب کہ ’’جشن میلاد‘‘ میں کروڑوں کے حساب سے جو بے مصرف پیسہ برباد کیا جاتا ہے، وہ ایک تو سراسر اسراف و تبذیر ہے جو قرآن کی رو سے اخوانِ شیاطین کا کام ہے، لیکن جواز کا فلسفہ تراشنے والے ’’مفکرینِ اسلام‘‘ کی طرف سے اس شیطانی کام کو اجرو ثواب اور نہایت فضیلت والا کام باور کرایا جاتا ہے۔ دوسرا، یہ غیر مسلموں کی نقالی ہے جو فرمانِ رسول کی رو سے سخت ناجائزاور حرام ہے۔ اسی طرح اس رسم کے دوسرے مظاہر ہیں، ان میں سے کسی کا بھی اسلامی نقطۂ نظر سے جواز نہیں ہے۔

علاوہ ازیں مسجد، مکان، خوراک وغیرہ یہ سب چیزیں تو ایسی ہیں جو عہد رسالت و عہد صحابہ میں سادگی کے ساتھ موجود تھیں، وسائل کی فراوانی سے یہی ہوا ہے کہ ان میں کچھ ترقی ہوگئی ہے۔ اگرچہ اس ترقی کو کوئی اجروثواب کا باعث قرار نہیں دیتا۔ لیکن ’’میلاد‘‘ کی رسم تو ایسی ہے کہ عہد رسالت و ادوارِ خیر القرون میں اس کا سرے سے کوئی نام و نشان ہی نہیں ملتا، اس کی دھوم دھام کو معاشرتی ترقی سے کس طرح جوڑا جاسکتا ہے؟ بہرحال جس اعتبار سے بھی اس رسم کاجائزہ لیا جائے، اس کوجواز یا استحسان کا درجہ نہیں دیا جاسکتا۔ یہ سراسر اپنے اجزائے ترکیبی کے اعتبار سے ناجائز اور بدعت و منکر ہے۔ أعاذنا اللّٰہ منھا۔

ملحوظہ: یہ ثقافت والی ’’دلیل‘‘ ڈاکٹر طاہر القادری کی ذہنی اُپج ہے جو قرآن کریم کی بیان کردہ حقیقت (وَإِنَّ الشَّيَاطِينَ لَيُوحُونَ إِلَىٰ أَوْلِيَائِهِمْ لِيُجَادِلُوكُمْ ۖ) (الأنعام: 121:6) کی مصداق ہے۔

’’جشن میلاد‘‘ کے جواز میں پیش کیے جانے والے دیگر ’’دلائل‘‘ کی حقیقت جاننے کے لیے ملاحظہ ہو، ہماری کتاب ’’جشن ِمیلاد‘‘ کی حقیقت اور مجوزین کے دلائل کا جائزہ۔‘‘

 


چراغاں اورآتش بازی کا رواج اوراس کی حقیقت


 

چراغاں کا سلسلہ بھی آج کل عام اور روز افزوں ہے۔ پہلے پہل ہندوستان میں یہ شب برات کے موقع پر ہوتا تھا اور لوگ عام طورپر اپنے گھروں کی منڈیروں پر موم بتیاں یا تیل کے چھوٹے چھوٹے دیے جلا کر چراغاں کرتے تھے، پھر شبِ معراج میں بھی یہ کام کیاجانے لگا اور پھر بڑھتے بڑھتے یہ سلسلہ ’’عید میلاد‘‘ تک دراز ہوگیا، علاوہ ازیں یہ سلسلہ موم بتیوں اور تیل کے دیووں سے بڑھ کر بجلی کے بلبوں، ٹیوبوں اور قمقموں تک پہنچ گیا، نیز منڈیروں سے نکل کر سڑکوں، گلی کوچوں، چوراہوں اور بازاروں اور پوری پوری عمارتوں حتی کہ مسجدوں تک وسیع ہوگیا۔

اور ستم ظریفی کی انتہا ہے کہ بجلی کے بلبوں اور قمقموں کے ذریعے سے جو زبردست چراغاں کیا جاتا ہے، وہ بیشتر چوری کی بجلی ہوتی ہے، یعنی براہ راست واپڈا کے بجلی کے تاروں سے کُنڈا لگاکر حاصل کی جاتی ہے۔ ان سے پوچھا جاسکتا ہے کہ حکومت نے اس چوری کی ان کو اجازت دی ہوئی ہے؟ اور اگر یہ اجازت نہیں ہے اور ہمارے خیال میں نہیں ہے تو کیا اس چوری کی بجلی سے چراغاں کرکے جشن منانے کا کوئی شرعی جواز ہے؟

اب ’’میلاد‘‘ کے موقع پر تو رنگ ونور کا یہ سیلاب کئی دنوں تک جاری رہتا ہے بلکہ انعامی مقابلے منعقد ہوتے ہیں اور جس علاقے کے گلی کوچوں یا بازار اور چوراہے کو یا نمایاں بڑی بڑی عمارتوں کو زیادہ سجایا یا برقایا (بجلی کے قمقموں سے آراستہ کیا) گیا ہوتا ہے، اسے انعام سے نوازا جاتاہے، اس طرح آرائش و زیبائش اور ’’چراغاں‘‘ پر بلامبالغہ

لاکھوں نہیں کروڑوں روپے چند دنوں میں خرچ کردیے جاتے ہیں اور اگر دیگر اسلامی ملکوں کو بھی، جہاں یہ رسوماتِ بدعیہ اسی انداز سے ادا کی جاتی ہیں، شامل کر لیا جائے تو یہ رقم کروڑوں سے تجاوز کرکے اربوں تک پہنچ جاتی ہے۔

اسے عوام کی نظروں میں ایک کارِخیر اور باعثِ اجروثواب کام باور کرادیا گیا ہے، تب ہی تو عوام اپنے خون پسینے کی کمائی اس طرح اس پر صرف کرنے کے لیے تیار ہوجاتے ہیں، وہ اپنے پیغمبر کا اسوۂ حسنہ تو اپنانے اور اپنی زندگی کو اس سانچے میں ڈھالنے کے لیے تیار نہیں ہیں لیکن جب وارثانِ منبرِ رسول کی طرف سے ان کے ذہنوں میں یہ راسخ کردیا جائے کہ محبتِ رسول کا یہ طریقہ ہی نجات کے لیے کافی ہے تو پھر ان کے لیے کیا ضروری ہے کہ وہ اسوۂ حسنہ کو اپنا کر اپنے کاروبار کو صحیح کریں؟ اپنے اخلاق و کردار کی اصلاح کریں؟ اپنے معاملات اور معمولات کو درست کریں، اپنی زندگی کے رہن سہن اور طور اطوار کو صحیح کریں؟ کیا ان کے لیے یہ ’’نعم البدل‘‘ صحیح نہیں کہ وہ ان ساری ’’کھکھیڑوں‘‘ کی بجائے ’’میلاد‘‘ کے موقع پرچراغاں کرلیں یا جلوسِ میلاد میں شرکت کرلیں یا کروڑوں اوراربوں کے اس اسراف میں اپنا حصہ ڈال دیں اور پھر سارا سال اسوۂ حسنہ سے بے نیاز رہ کر من مانیاں کرتے رہیں۔

چنانچہ عوام نے اپنے مذہبی رہنماؤں کی شہ پر یہی ’’نعم البدل‘‘ مستقل طورپر اختیار کرلیا ہے اور وہ ’’میلاد‘‘ کے موقع پر نہایت ذوق و شوق سے اور بڑی وارفتگی سے چراغاں کرتے ہیں اوراس بے فائدہ کام پر کروڑوں اور اربوں روپے ہر سال برباد کردیتے ہیں۔

لیکن آئیے! ذرا دیکھیے! کہ ’’چراغاں‘‘ کا بڑھتا ہوا یہ سلسلہ ’’کارِ خیر‘‘ ہے یا ’’کارِغیر‘‘ ہے؟ یہ فرزندانِ توحید کا کام ہے یا اہل شرک کا امتیاز ہے؟

اس سلسلے میں ہم اپنی طرف سے کچھ کہنے کی بجائے شیخ عبدالحق محدث دہلوی رحمۃ اللہ علیہ کا اقتباس پیش کرنا بہتر سمجھتے ہیں، چنانچہ وہ لکھتے ہیں:

’’بدعتیں: ہندوستان کے اکثر شہروں میں لوگوں نے یہ رواج کرلیا ہے کہ پندرھویں شعبان کی رات کو اپنے گھر کی دیواروں پر چراغ جلاتے اور فخریہ روشنی کرتے ہیں کہ ہم نے ایسی اچھی روشنی کی ہے جو دوسروں سے اچھی ہے اور ہم اتنے بڑے آدمی ہیں جو روشنی کرتے ہیں۔ فردًا فردًا اور اجتماعی حیثیت سے اس رات میں آتش بازی چھوڑتے اور دیگر کھیل کود کرتے ہیں۔ یہ وہ امور ہیں جن کی اصلیت احادیث کی معتبر کتابوں میں موجود نہیں ہے، اس کے علاوہ کسی غیر معتبر کتاب میں بھی ان امور کے مسنون و سنت ہونے کی کوئی ضعیف یا موضوع حدیث پائی نہیں جاتی۔

ممالکِ عربیہ میں سے حرمین شریفین اور غیر عربی ممالک کے کئی دوسرے شہروں میں (ہندوستان کے سوا) ان امور کا کوئی رواج نہیں ہے۔ اس سے ثابت ہوتا ہے، عین ممکن یہ ہے بلکہ یقین واثق ہے کہ ہندوستان کے ہندوؤں کے دیگر رسوم انجام دینے کی طرح ہندی مسلمانوں نے اس رسم کی پیروی کی، جیسے ہندو، دیوالی کے تہوار پر اپنے گھروں کی دیواروں اور طاقوں میں دیے جلاتے ہیں اور ہندوستان کے ہندوئوں میں کفر کی وجہ سے بدعتی امور بکثرت رائج ہیں۔ چونکہ مسلمانوں کے ہندوئوں سے بڑے اختلاط رہے ہیں، ہندوئوں نے اپنی عورتوں کے ساتھ مسلمانوں کی شادیاں کیں، اسی اختلاطِ عام اور رہن سہن کے طریقے اختیار کرنے کے سبب سے مسلمانوں نے بھی روشنی

کرنے کی رسم ڈال لی ہے۔ بعض کہتے ہیں کہ ہم بھی کسی سیٹھ ساہوکار سے کم نہیں، جس طرح وہ روشنی کرتے ہیں ویسی ہی بلکہ اس سے اچھی ہم کرتے ہیں۔

بعض متأخرین علماء کا بیان ہے کہ مخصوص راتوں میں بکثرت روشنی کرنا، بدعتِ شنیعہ (نکمی بدعت) ہے، اس لیے کہ ضرورت سے زیادہ روشنی کرنے کے مستحب ہونے کا شریعت میں کوئی حکم نہیں ہے۔

علی بن ابراہیم کا بیان ہے کہ چراغاں اور روشنی کرنے کی ابتدا برمکیوں نے کی ہے جو نسلاً و اعتقادًاآتش پرست تھے اور ظاہری اسلام لانے کے بعد بھی انھوں نے اپنے وہمی و خیالی امور کو اسلام میں جاری رکھنے کی حتی الامکان کوششیں کیں کیونکہ اعتقادی طورپر ان کو قدیم رواج کے درست ہونے کا یقین تھا، نیز اسلام میں قدیم رواج و رسوم کو باقی رکھنے میں ان کی مصلحت یہ تھی کہ اسلام کے پردے میں چراغ جلا کر اس کو سجدہ کرتے ہوئے آتش پرستی کی روح کو باقی رکھیں۔ اور طرہ یہ ہے کہ جاہل ائمۂ مساجد نے چراغ و روشنی اور نمازِ رغائب کی آڑ میں لوگوں کو جمع کرنے کا طریقہ بنالیا ہے تاکہ اپنی قیادت و سرداری جتا کر دولت سمیٹ سکیں، ساتھ ہی قصہ خوان مجالس میں خوب قصے بیان کرسکیں اور غریبوں سے روپے لیتے رہیں۔ اور حقیقت امر یہ ہے کہ ان تمام منکرات کے بُطلان و اِبطال کے لیے اللہ نے ائمۂ ہدیٰ پیدا کیے کہ منکرات ناپید ہوجائیں۔ ان ائمۂ ہدیٰ میں سے بعض وہ ہیں جنھوں نے دوسری صدی ہجری میں ممالک عرب و شام کے اندر منکرات کو اچھی طرح ختم کرنے کی کوشش کی تھی۔

’’تذکرہ‘‘میں علامہ طرطوسی نے لکھا ہے کہ ختم قرآن کی شب میں اجتماع، منبروں کا قیام، عورتوں اور مردوں کا میل جول اورکھیل کود وغیرہ میں باہمی اختلاط اور زمانۂ حال کے اعمال و کردارِ ناگفتہ بہ، یہ سب کے سب کام کوئی اصلیت نہیں رکھتے اور ان کے

جواز کی کوئی صورت نہیں۔‘‘[ ماثبت بالسنۃ في أیام السنۃ کا اردو ترجمہ ’’مومن کے ماہ و سال‘‘ صفحہ: 177,176، مطبوعہ دارالاشاعت، کراچی، 1966ء۔]

تقریباً یہی بات ملا علی قاری حنفی رحمۃ اللہ علیہ (المتوفّٰی1014ھ) نے بھی لکھی ہے، چنانچہ وہ تحریر فرماتے ہیں:

 

’وَأَوَّلُ حُدُوثِ الْوَقِیدِ مِنَ الْبَرَامَکَۃِ وَکَانُوا عَبَدَۃَ النَّارِ، فَلَمَّا أَسْلَمُوا أَدْخَلُوا فِي الإِْسْلَامِ، مَا یُمَوِّھُونَ أَنَّہٗ مِنْ سُنَنِ الدِّینِ وَمَقْصُودُھُمْ عِبَادَۃُ النِّیرَانِ حَیْثُ رَکَعُوا وَسَجَدُوا مَعَ الْمُسْلِمِینَ إِلٰی تِلْکَ النِّیرَانِ، وَلَمْ یَأْتِ فِي الشَّرْعِ اسْتِحْبَابُ زِیَادَۃِ الْوَقِیدِ عَلَی الْحَاجَۃِ فِي مَوْضِعٍ‘

 

’’سب سے پہلے جنھوں نے چراغاں کیا، وہ برامکہ تھے، یہ آگ کے پجاری تھے، جب یہ مسلمان ہوگئے تو انھوں نے آتش پرستی کی کئی چیزوں کو اسلام میں داخل کرکے یہ باور کرایا کہ یہ بھی دین اسلام کے طریقے ہیں اور مقصدان کا آگ کی پوجا تھا کیونکہ وہ مسلمانوں کے ساتھ ان چراغوں کی طرف رکوع وسجود کرتے تھے۔ اور شریعت میں کسی بھی جگہ، ضرورت سے زیادہ روشنی کرنے کا استحباب وارد نہیں ہے…۔‘‘[مرقاۃ المفاتیح شرح مشکاۃ المصابیح ، باب قیام شہر رمضان: 198/3،طبع مکتبہ امدادیہ، ملتان]

 

برامکہ، یہ ایک مجوسی خاندان تھا، یہ خاندان پڑھا لکھا اور علم و فضل کا مالک تھا، جس کی وجہ سے اس خاندان کے بہت سے لوگوں کو عباسی خلفاء، (ہارون الرشید اور مامون و معتصم وغیرہ) کے درباروں میں خاص مقام حاصل تھا بلکہ بعض تو ان خلفاء کے وزیرو مشیر بھی رہے۔ مذکورہ تاریخی حوالوں سے تو یہی ثابت ہوتا ہے کہ قبولِ اسلام کے باوجود آتش پرستی کے جراثیم ان کے اندر موجود رہے اور ظلِّ الٰہی کے سایۂ عاطفت میں رہنے کی وجہ سے ان کو مسلمانوں کے اندر اپنے مشرکانہ خیالات پھیلانے کے مواقع بھی میسر آگئے، جن میں ایک مشرکانہ اور آتش پرستانہ رسم چراغاں اور آتش بازی ہے۔

پہلے پہل شبِ برات کے موقع پر ہی چراغاں بھی ہوتا تھا اور آتش بازی بھی، پھر چراغاں کادائرہ تو بہت پھیل گیا اور ہر اہم موقع پر چراغاں کا اہتمام نہایت ضروری قرار پایا حتی کہ اب یہ شادیوں کا بھی ایک لازمی حصہ بن گیا ہے۔ لیکن آتش بازی ابھی تک زیادہ تر شبِ برا ت ہی کے ساتھ خاص ہے۔ اس رات کو جس شدت اور تسلسل کے ساتھ آتش بازی کی جاتی ہے، وہ الامان والحفیظ کی مصداق ہے، پھر شادیوں پر حکومت کی طرف سے پابندی سے پہلے شادی کے موقع پر بھی اس شیطانی رسم کا سلسلہ بڑا عام ہوگیا تھا۔جس میں پابندی کے باوجود کوئی کمی نہیں ہوئی۔ ھَدَاھُمُ اللّٰہُ تعالٰی۔

بہرحال مذکورہ تفصیل سے واضح ہے کہ خوشی اور مسرت کے موقع پر کسی بھی انداز سے چراغاں یا آتش بازی کا اہتمام کرنا، آتش پرستی کا ایک حصہ ہے، اس لیے کسی بھی موقع پر ان چیزوں کا اہتمام کرنا سراسر حرام اور ناجائز ہے، وہ ’’عیدِ میلاد‘‘ کا موقع ہو یا شادی بیاہ کا یا کسی اور تقریبِ مسرت کا، کسی بھی موقع پر چراغاں یا آتش بازی کا جواز نہیں ہے۔

 

حواله جات : 

كتاب : ” مسئله  رؤیتِ ہلال اور اسلامى ١٢ مہینہے “
 قلم کار حافظ صلاح الدین یوسف حفظہ اللہ 

 

 

Table of Contents