Sections
< All Topics
Print

(ii) QABRON KO OUNCHI KARNA [Elevating Graves]

QABRON KO OUNCHI KARNA, UN PAR EMARAT TAMEER KARNA, UNHE SAJDAH GAAH BANANA AUR MUJASSIMAY AUR TASWEEREN NASB KARNA:

 

    In umoor ka zikar bohat saari ahadees mein aaya hai, un mein se main mukhtasar zail mey zikar karta hoon:

   Sahih Muslim wagerah mein Ali(رضي الله عنه) se marwi hai: Unho me kaha: 

Rasool Allah(ﷺ) ne mjhe hukm diya k mein koi unchi qabr na choruun magar usey zameen se barabar kar duun aur koi mujassimah na choruun magar usey mita duun.

 

   Sahih Muslim wagerah mein Ali(رضي الله عنه) se marwi hai: Unho me kaha:

ان لا ادع قبرا مشرفاالا سويته ولا تمثالا الاطمسته

Rasool Allah(ﷺ) ne mjhe hukm diya k mein koi unchi qabr na choruun magar usey zameen se barabar kar duun aur koi mujassimah na choruun magar usey mita duun.

[Sahih Muslim: 969]

 

Ibn e Abi Asim ne sahih sanad ke sath riwayat kiya hey k Muawiya(رضي الله عنه) ne kaha:

ان تسوية القبور من السنن وقد رفعت اليهود النصاري فلا تتشبهوا بهم

Qabron ko zameen se barabar rakhna sunnat hai, Yahud-o-Nasara ne qabron ko unchi kiya, lehaza tum unki mushabihat ikhtiyaar na karo.

[Iqtizaa Al Seeratal mustaqeem 1/342]

 

     Qabron par emarat tameer karna ya qabron hi ko unchi karna is daur ki aik bohat bari musibat hai jis mey duniya ke mukhtalif khitton mein musalmaan mubtelah hain, Jisey Nabi Kareem(ﷺ) k is farmaan ki tasdeeq hoti hai:

لتركبُنَّ سَنَنَ من كان قبلَكم

“Tum log zarur ba zarur apne se pehle logon k raston par chalogay.”

 

     Anbiya ki qabron ko sajdah gaah banana yani un pr emarat tameer karna, masjiden banana aur un mein namazen parhna usi hukm mein dakhil hai,  isi tarha naik logon ki qabron par emarat tameer karna ya masjidon mein naik logon ko dafan karna khah wo dafan masjid ki tameer ke baad hi ho, mumaniyat in tamam umoor ko shamil hai.

      Nez qabron ke paas dua karne ke liye bar bar aana jana ya Allah k sivae qabr walon ko pukarna ya naiki k kamon ke zariye unka taqarrub chahna, ye sab kuch yahud-o-Nasara ke aafa’al mein se hai aur Nabi kareem(ﷺ) ne un sey bachney ki intehaee sakhti k sath takeed hai.

     Sahih Muslim mein hai k Nabi Kareem(ﷺ) ne apne inteqal se panch roz pehle faramaaya:

إنِّي أبْرَأُ إلى اللهِ أنْ يَكونَ لي مِنكُم خَلِيلٌ، فإنَّ اللهِ تَعَالَى قَدِ اتَّخَذَنِي خَلِيلًا، كما اتَّخَذَ إبْرَاهِيمَ خَلِيلًا، ولو كُنْتُ مُتَّخِذًا مِن أُمَّتي خَلِيلًا لَاتَّخَذْتُ أبَا بَكْرٍ خَلِيلًا، ألَا وإنَّ مَن كانَ قَبْلَكُمْ كَانُوا يَتَّخِذُونَ قُبُورَ أنْبِيَائِهِمْ وصَالِحِيهِمْ مَسَاجِدَ، ألَا فلا تَتَّخِذُوا القُبُورَ مَسَاجِدَ، إنِّي أنْهَاكُمْ عن ذلكَ.

 

“Main Allah ke huzoor main is baat se elaan baraàt karta hoon keh tum mein se koi mera khaleel ho, isliye ke Allah ne mjhe apna khaleel bana liya hai aur agar main apni ummat mein se kisi ko apna khaleel banata tou Abu Bakr ko banata, Agaah raho ke tum se pehle jo qaumain guzri hain wo apne anbiya ki qabron ko sajdah gaah bana leti theen, Khabardaar! Tum qabron ko sajdah ki jagah na banana, main tumhe aisa karne se rokta hoon.

[Sahih Muslim: 532]

 

قاتلالله اليهود اتخذواقبور انبياءهم مساجد

  Unho ne apne anbiya ki qabron ko sajdah gaah banaliya.

[Bukhari Maa Fattah Al Baari Hadees: 437]

 

Aur Sahih Muslim ke alfaz yun hain:

لعن اللهُ اليهودَ النصاري اتَّخذوا قبورَ أنبيائِهم مساجدَ

“Yahud aur Nasara par Allah ki lanat ho k unho ne apne anbiyaou ki qabron ko sajdah gaah banaliya.”

[Sahih Muslim: 530]

 

Ayesha aur Abdullah bin Abbas(رضى اللہ تعالى عنہما) bayan karte hain:

لما نُزِلَ برسول الله -صلى الله عليه وسلم-، طَفِقَ يَطْرَحُ خَمِيصَةً له على وجهه، فإذا اغْتَمَّ بها كشفها فقال -وهو كذلك-: “لَعْنَةُ الله على اليهود والنصارى، اتخذوا قبور أنبيائهم مساجد -يُحَذِّرُ ما صنعوا“.

Nabi Kareem(ﷺ) jab marz ul maut ke aalam mein they to Chadar barabar apne chehre par dalte aur jab us sey sans ghutne lagta tou usey hata detey, Aap(ﷺ) ne usi haal mein farmaaya: “Yahud aur Nasara par Allah ki lanat ho unho ne anbiya ki qabron par masajid bana liye hain, Ayesha(رضى اللہ تعالى عنہما) kehti hain keh Aap apni ummat ko is shirkiya amal se daraana chahtey they.

[Bukhari Maa Al Fatah Al Baari: 435, 436; Muslim: 531]

 

 Umme Habeeba (رضى اللہ تعالى عنہما) aur Umme Salmah (رضى اللہ تعالى عنہما) kay qissay mein Nabi kareem(ﷺ) ka irshad hai jo unho ne sar zameen habsha mein aik girja ghar , uski khubsurti aur usme moujood tasweeroun ko dekha tha, Aap(ﷺ) ne unki baat sunkar farmaaya tha:

أُولَئِكَ إذَا كانَ فِيهِمُ الرَّجُلُ الصَّالِحُ فَمَاتَ، بَنَوْا علَى قَبْرِهِ مَسْجِدًا، وصَوَّرُوا فيه تِلكَ الصُّوَرَ، فَأُولَئِكَ شِرَارُ الخَلْقِ عِنْدَ اللَّهِ يَومَ القِيَامَةِ.

“Jab unme koi naik admi marjata tou uski qabar par masjid banadetay aur usme ye tasweeray banakar rakhletay, wo Allah kay nazdik badtareen makhluq hain.”

[Bukhari maa fatah al bari: 426]

 

Yeh intehaee khatarnaak umoor hai jin mein aj musalmaan maloos hain.

 

REFERENCE:
BOOK: “KUFFAR KI MUSHABIHAT AUR ISLAMI HIDAYAT”
BY: DR.NASR AL-AQL
URDU TRANSLATED BY: ABDUL WALI ABDUL QAWI.

ELEVATING THE GRAVES

Building upon graves, taking them as nu/slit1s, usage of images, and hanging of pictures.

These issues have been mentioned in many texts, summarizing them;

-From Muslim and others, ‘Ali (radhi Allahu ‘anhu) narrated,

“The Messenger of Allah (ﷺ) commanded me to flatten any elevated grave which I find, and to destroy any images which I find.”        

[Muslim : 969]

Ibn Abi ‘Asim reports from Mu’awiyyaah (radhi Alla.hu ‘anhu) with an authentic chain of narrators,

“The leveling of the graves is from the sunan, and the Jews and Christians elevated them, so do not imitate them in that.”

Al itidhaa al-Siraat al-Mustaqeem 1/342. Editor’s note; although there are many authentic texts in this regard, for this one in particular, we were unable to verify beyond Ibn Taymiyah’s claim that it is authentic.

Meaning by that, that they erected structures over the graves. This problem – elevation of the graves or erecting structures over them – is one of the major trials of the Muslims according to the hadeeth of the Prophet(ﷺ) “You will pursue the sunan of those before you…” This led to taking graves of Prophets as masjids, meaning either building a structure over them, or building a masjid over them and praying in that masjid.

This also lead to building over the graves of righteous people, either by burying them inside of the masjids, or building it over them after burial. All of which is forbidden. A similar case would be visiting the graves for the purpose of supplication, or to supplicate to it’s inhabitants in lieu of Allah, or sacrificing at those sites or for them. All of which is typical of the actions of the Jews and the Christians, and the Prophet (ﷺ) warned severely against such practices.

From Muslim is a report, that the Messenger (ﷺ) five nights before he died said,

“…Beware that those before you took their Prophets graves as masjids, so do not take the graves as masjids! Surely I have forbidden you from that!!”

[Muslim : 532]

 

And as well in the Two Sahihs the Prophet (ﷺ) said,

“Allah fought the Jews for taking the graves of their Prophets as masjids.”

And in the wording collected by .Muslim it is,

“Allah cursed the Jews and the Christians, they took the Prophets’ graves as masjids.”‘

Al-Bukhari. See Fath ttl-Bari : 437

 

`Aishah (and Ibn ‘Abaas) said,

“During the illness which killed the Messenger (ﷺ) … he said ‘Allah curse the Jews and the Christians, they had taken their Prophets graves as masjids,’ and he warned us from what they did.”

Concerning the story of Umm Salamah or Umm Habeebah who told of the beauty and the pictures in an Ethiopian Church, he (ﷺ) warned;

“Those are the kind of people who when a pious worshipper dies or a righteous man they build a masjid upon his grave and they paint pictures in it, they are the worst creatures according to Allah azza wa jail .”

 Both hadeeths are from al-Bukhari, they are #531 and #528 in Fath art-Bari

 

This is a tremendous problem which the Muslims are afflicted with today.

 

 

 

(2): قبروں کو اونچی کرنا ان پر عمارت تعمیر کرنا، انہیں سجدہ گاہ بنانا اور مجسمے اور تصویریں نصب کرنا؛


ان امور کا ذکر بہت ساری احادیث میں آیا ہے میں ذیل میں سے انہیں مختصر ذکر کرتا ہوں

صحیح مسلم وغیرہ میں حضرت علی رضی اللہ عنہ سے مروی ہے انہوں نے فرمایا۔


“امرني رسول الله صلى الله عليه وسلم الله ان لا ادع قبرا مشر فا الا سويته ولا ثمنالا الا طمسته.

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مجھے حکم دیا کہ میں کوئی اونچی قبر نہ چھوڑو ں مگر اسے زمین سے برابر کر دوں، اور کوئی مجسمہ نہ چھوڑ ں مگر اسے مٹا دوں ۔

(مسلم حدیث نمبر 967)


ابن ابی عاصم نے صحیح سند کے ساتھ روایت کیا ہے کہ معاویہ رضی اللہ انہوں نے کہا۔


“تسوية القبور القبور من السنن وقد رفعت اليهود والنصارى فلا تشبهوا بهم”

.قبروں کو زمین سے برابر رکھنا سنت ہے یہود و نصاریٰ نے قبروں کو اونچا کیا لہذا تم ان کی مشابھت اختیار نہ کرو۔

(اقتضاء الصراط المستقیم1 /342 )


قبروں پر عمارت تعمیر کرنا نا یا ان کو اونچی کرنا اس دور کی ایک بڑی مصیبت ہے جس میں دنیا کے مختلف خطوں میں مسلمان مبتلا ہیں جس سے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے اس فرمان کی تصدیق ہوتی ہے؛


“لتركين سنن من كان قبلكم.”

تم لوگ ضرور بالضرور اپنے سے پہلے لوگوں کے راستے پر چلو گے۔


انبیاء کے قبروں کو عبادت گاہ بنانا یعنی ان پر عمارت تعمیر کرنا مسجد بنانا اور نماز پڑھنا اسی حکم میں داخل ہیں ہے اسی طرح نیک لوگوں کی قبروں پر عمارت تعمیر کرنا۔یا مسجدوں میں نیک لوگوں کو دفن کرناخواہ وہ دفن مسجد کی تعمیر کے بعد ہی ہو۔

ممانعت ان تمام امور کو شامل ہے۔ نیز قبروں کے پاس دعا کرنے کے لئے بار بار آنا جانا یا اللہ کے سوا قبر والوں کو پکارنا یا نیکی کے کاموں کے ذریعہ ان کا تقرب چاہنا، یہ سب کچھ یہودونصاری کے افعال میں سے ہے اور نبی ﷺ نے ان سے بچنے کی انتہائی تختی کے ساتھ تاکید کی ہے۔ صحیح مسلم میں ہے کہ نبی ﷺ نے اپنے انتقال سے پانچ روز پہلے فرمایا: 


انـي أبـرأ الى الله أن يكون لي منكم خليلا فان الله قد اتخذني خليلا كـمـا اتخذ ابراهيم خليلا و لو كنت متخذا من أمتي خليلا لاتخذت أبا بكر خليلا ألا و أن من كان قبلكم كانوا يتخذون قبور انبیاء هم مساجد ألا فلا تتخذوا
القبور مساجد فاني أنهاكم عن ذلك“

میں اللہ کے حضور اس بات سے اعلان براءت کرتا ہوں کہ تم میں سے کوئی میرا خلیل ہو، اس لئے کہ اللہ نے مجھے اپناخلیل بنالیا ہے اور اگر میں اپنی امت میں سے کسی کو اپنا خلیل بناتا تو ابوبکر کو بناتا ،آ گاہ رہو کہ تم سے پہلے جو قو میں گزری ہیں وہ اپنے انبیاء کی قبروں کو سجدہ گاہ بنالیتی تھیں ،خبر دار! تم قبروں کو سجدے کی جگہ نہ بنانا میں تمھیں ایسا کرنے سے روکتا ہوں ۔

( مسلم حدیث نمبر۵۳۲)

 

صحیح بخاری ومسلم میں ہے کہ نبی ﷺ نے فرمایا: ۳۷

“قاتل الله اليهود اتخذوا قبور انبياء هم مساجد“

مہبود پر اللہ کی لعنت ہو کہ انھوں نے اپنے انبیاء کی قبروں کو سجدہ گاہ بنالیا۔

( بخاری مع فتح الباری حدیث ۴۳۷ )

 

اور صحیح مسلم کے الفاظ یوں ہیں:

“لعن الله اليهود و النصارى اتخذوا قبور انبیاء هم مساجد“

یہود و نصاری پر اللہ کی لعنت ہو کہ انہوں نے اپنے انبیاء دنیا کی قبروں کو سجدہ گاہ بنا لیا یا.

مسلم حدیث نمبر ( 530)

 


عائشہ رضی اللہ تعالی عنہ اور عبداللہ بن عباس رضی اللہ تعالی عنہ بیان کرتے ہیں.

“لما ننزل برسول الله صلى الله عليه وسلم اي مرض موته طفق بطرح خميصة على وجهه فاذا اغتم بها كشفهاو قال و هو كذلك: لعنة الله على اليهود والنصارى اتجلوا قبور انبياءهم مساجد يحذر ما صنعوا.”

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم جب مرض الموت کے عالم میں تھے تھے تو چادر بار بار اپنے چہرے پر ڈالتے اور جب اس سے سانس گھٹنے لگتی تو ہٹا دیتے، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اسی حال میں فرمایا یہود و نصاریٰ پر اللہ کی لعنت ہو انھوں نے اپنے انبیاء کی قبروں پر مساجد بنا لیئے۔ عائشہ رضی اللہ تعالی عنہا کہتی ہیں کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنی امت کو اس قسم کے شرکیہ اعمال سے ڈرانا چاہتے تھے ۔

(بخاری مع فتح الباری 436,435 مسلم 531 )

 

ام حبیبہ اور ام سلمی رضی اللہ عنہ کے قصے میں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد ہے جو انہوں نے:


ام حبیبہ رضی اللہ عنہ ان کا نام رملہ بنت ابوسفیان بن حرب تھا۔ انہوں نے اپنے شوہرعبد اللہ بن جحش الاسدی کے ساتھ حبشہ کی جانب ہجرت کی لیکن جب انکے شوہر نے نصرانیت اس نے اختیار کرتے ہوئے انہیں اپنی زوجیت سے جدا کر دیا تو، سن 7ھجری میں ان کی شادی نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے ہوئی اس طرح وہ ازواج مطہرات میں سے تھیں۔
*ام سلمہ رضی اللہ عنہ ان کا نام نام ہند بنت ابو امیہ تھا انہوں نے اپنے شوہر ابو سلمہ کے ساتھ حبشہ کی جانب ہجرت کی لیکن جب ان کے شوہر کا وہ غزوہ احد میں لگے زخم کے سبب انتقال ہو گیا تو شوال سن 4 ہجری میں ان کی شادی نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے ہوئی۔( از مترجم۔)

 

سرزمینِ حبشہ میں ایک گرجا گھر اس کی خوبصورتی اور اس میں موجود تصویروں کو دیکھا تھا آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان کی بات سن کر فرمایا :


“اؤلءك القوم اذا مات العبد صالح او الرجل الصالح بنواعلى قبره مسجدا وصوروا فيه تلك الصوره شرار الخلق عند الله عز وجل. “


جب انکا کوئی نیک آدمی مرجاتا تو اسکی قبر پر مسجد بنا دیتے اور اس میں یہ تصویر یں بنا کر رکھ لیتے، وہ اللہ کے نزدیک بد ترین مخلوق ہیں۔


(بخاری مع فتح الباری426,مسلم528)

 

یہ نہایت خطرناک امور ہیں جن میں آج مسلمان ملوث ہیں۔

Table of Contents