Sections
< All Topics
Print

(iii) AURTON KE FITNE MEIN PARHNE SE ROKA GAYA [Flirtatious Women]

AURTON KE FITNE MEIN PARHNE SE ROKA GAYA:

 

MUSHABIHAT KI SHAKLON MEIN SE :

Sab se khatarnaak shakal musalmaanon ki aurton ki fitney mein mubtelah hojana hai, kyun k ye kuffaar ki aadaat mein se hai, aurton ke fitne mein parhne se murad ye hai keh unhain hashmat o waqar aur pardey se aari kar k gharon se bahar nikal diya jae taake mard is fitne mein mubtelah hojaen.

Aurton ka zikr khusoosi taur par  isliye kiya gaya kay:
  1. Aurten duniyavi araish-o-zebaish ki shouq mand hoti hain.
  2. Aurten duniyavi araish-o-zebaish mein taqleed, mushabihat aur ghuloo ki janib mael hojaati hain.
  3. Fitrat mey aurat ki paidaish mard ko ubhaarne , uske liye zaib-o-zeenat ikhtiyar karney par hui hai, isi tarha mard ki bhi paidasih e fitrat aurat ki janib mael hone par hui hai jab wo bet pardagi ikhtiyar karey aur sharm-o-haya ko lazim na pakre-

     Yahud-o-nasara aur kuffaar ke sath Akhlaaq aur aadaat aur jashan-o-tehwar mein mushabihat ki dawat baishtar sab sey pehle aurten phir bache aur kam aqal log hi dete hain.

 

      Qabil e afsoos baat ye hai k daur-e-hazir mein bohat saarey muslamaan aurton ke fitne mein mubtelah hain, Halan k Nabi Kareem(ﷺ) ne is sey sakhti ke sath bachne ki takeed ki hai, chunacha Aap(ﷺ) ne farmaaya:

فَاتَّقُوا الدُّنْيَا وَاتَّقُوا النِّسَاءَ فَإِنَّ أَوَّلَ فِتْنَةِ بَنِي إِسْرَائِيلَ كَانَتْ فِي النِّسَاءِ ‏”‏

  Tum duniya k fitne se bacho aur aurton ke fitne se bacho, kyun k bani israeel mein fitne ki ibtedah aurton se hui thi.

[Sahih Muslim: 2742]

 

Chunacha agar muamilat ki thori bhi zimmadari aurat ko dey di jae aur hudood-e-ilahi k baarey mein mard aurton ke sath thore se naram par jaen.

(Aurat ki izzat-o-touqeer shar’ai matlub hai, lekin iski izzat-o-touqeer ka ma’ana ye nahi keh  Allah Ta’aala ki nafarmaani mein iski ita’at ki jae aur mard us par apni hakmiyyat se dast kash hojae, jaise ke Allah Ta’aala ne hukm diya hai)

Sharam-o-haya aur parsi k usool ko chor den tou yehi cheez fitney ka zariya hai aur Ummat e muslimah jab is aadaat e bud ki shikaar ho jae, to wo deen aur duniya ko kho baithti hai aur is par fitney musallat hojatey hain.

 
REFERENCE:
BOOK: “KUFFAR KI MUSHABIHAT AUR ISLAMI HIDAYAT”
BY: DR.NASR AL-AQL
URDU TRANSLATED BY: ABDUL WALI ABDUL QAWI.

 

 

 FLIRTATIOUS WOMEN

This is one of the most horrible and dangerous manifestations of imitating the kufaar. Specifically we mean their abandoning decency and exposing themselves to the degree that they become tempting to men.

 

The following are some reasons for this problem:

  1. Women inherently tend to admire the glamor of the worldly life.
  2. They exaggerate in imitation and copying.
  3. The nature of the woman is to fascinate man, and to beautify herself for him. The nature of man is to be attracted to her when she uncovers and exposes herself. Many women imitate the kufaar in practices, manners and celebrations, and usually this is due to the kufaar calling the women to it first, then the children and then the impious.

Unfortunately illness of seductive women has afflicted a large number of Muslims today, and the Prophet (ﷺ) warned against this when he said,

“Beware of worldliness and beware of women, because the first of troubles for the children of Israel was women.”

[Muslim : 2842]

If a woman is given some responsibilities within Allah ‘Pala’s limits, then she does not have the right to reject her modesty and her covering, even if her husband condones or commands it. This fitna is most common among women, and it deteriorates and weakens ones religion, allowing the fitna to reign over one’s life

 

مشابہت کی شکلوں میں سب سے خطرناک شکل مسلمانوں کا عورتوں کے فتنہ میں مبتلا ہو جانا ہے

 

(3) مشابہت کی شکلوں میں سب سے خطرناک شکل مسلمانوں کا عورتوں کے فتنہ میں مبتلا ہو جانا ہے، کیوں کہ یہ کفار کی عادات میں سے ہے،عورتوں کے فتنہ میں پڑنے سے مراد یہ ہے کہ انھیں حشمت وقار اور پردے سے عاری کر کے گھروں سے نکال دیا جائے تاکہ مرد اس فتنہ میں مبتلا ہو جائیں۔


عورتوں کا ذکر خصوصی طور اس لئیے کیا کہ;


1_عورتیں دنیاوی آرائش و زیبائش کی شوق مند ہوتی ہیں۔
2-عورتیں دنیا وی آرائش و زیبائش میں تقلید،مشابہت اور غلو کی جانب مائل ہو جاتی ہیں۔
3-فطرتا عورت کی پیدائش مرد کو ابھارنے،اسکے لئیے زیب و زینت اختیار کرنے کے لئیے ہوئی ہے۔اسی طرح مرد کی بھی پیدائش فطرتا عورت کی طرف مائل ہونے پر ہوئی ہے۔جب وہ بے پردگی اختیار کرے اور شرم و حیا کو لازم نہ پکڑے۔ یہود و نصاری اور کفار کے ساتھ اخلاق وعادات اور جشن تہوار میں مشابہت کی۔

دعوت بیشتر سب سے پہلے عورتیں پھر بچے کو اور کم عقل لوگ ۔قابل افسوس بات یہ ہے کہ دور حاضر میں بہت سارے مسلمان عورتوں کے فتنہ میں مبتلا ہیں حالانکہ نبیﷺ نے اس سے سختی کے ساتھ بچنے کی تاکید کی ہے،چناچہ آپﷺنے فرمایا:


فاتقو الدنيا و اتقوا النساء فان أول فتنة بني إسرائيل كانت في النساء”


تم دنیا کے فتنہ بچو اور عورتوں کے فتنہ سے بچو،کیوں کہ بنی اسرائیل میں فتنے کی ابتدا عورتوں سے ہوئی تھی۔

(مسلم ۲۷۴۲)


چناچہ اگر معاملات کی تھوڑی بھی زمہ داری عورت کو دے دی جاۓ اور حدود الٰہی کے بارے میں مرد عورتوں کے ساتھ تھوڑے سے نرم پڑ جائیں.


(۴) کافروں سے مشابہت کے جن امور سے اللہ کے رسولﷺ نے منع فرمایا ہے،اس میں ایک یہ بھی ہے کہ یہود و نصارئ کی مشا بہت میں بالوں میں خیضاب استعمال نہ کرنا۔
جیسا کہ ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسولﷺنے فرمایا:

ان اليهود و النصارئ لا يصبغون فخالفوهم”


 عورت کی عزت و توقیر شرعا مطلوب ہے،لیکن اس کی عزت و توقیر کا معنئ یہ نہیں ہے کہ اللہ تعالیٰ کی نافرمانی میں اس کی اطاعت کی جاۓ اور مرد اس پر اپنی حا کمیت سے دست کش ہو جاۓ،جیسا کہ اللہ تعالیٰ نے حکم دیا تھا۔

( ۴)شرم و حیا اور پردہ کے اصول کو چّھوڑ دیں،تو یہی چیز فتنہ کا ذریعہ ہے اور امت مسلمہ جب اس عادت بد کی شکار ہو گئی، تو وہ دین و دنیا کو کھو بیٹھتی ہے اور اس پر فتنے مسلط ہو جاتے ہیں۔

Table of Contents