Sections
< All Topics
Print

(xvi). KISI SHAKHS KI TA’AZEEM MEIN KHAREY HONEY KI MUMANIÀT [Standing to greet others]

KISI SHAKHS KI TA’AZEEM MEIN KHAREY HONEY KI MUMANIÀT:

     Kisi shakhs ki ta’zeem mein kharey honey ki mumaniat khusoosan jab keh wo shakhs Saheb-e-muqam o martaba aur logon ki nigaahon mein mu’azzam ho, Chunacha yeh mumaniat bohat si ahadees mein warid hai.

     Isi qabeel sey ye bhi hai keh jab kisi nagahaani surat-e-haal se dochaar hokar imaam khara na ho sakey aur baith kar namaz parhae aur log uske peche kharey hokar namaz parhain, Chunacha Nabi Kareem(ﷺ) ne farmaaya ke muqtadiyon ko bhi imaam ki tarha baith jana chaheye is khouf se ke kahin ajmiyon ki taqleed mein na parhjaen jo apney baron ki ta’azeem mein kharey rahtey hain, jaisa keh Sunan Abu Dawood aur Ibn e Majah ki sahih ahadees main hai keh Nabi Kareem(ﷺ) ne farmaaya:

اذا صلي الامام جالسافصلوا جلوساو اذا صلي الاما قاءما فصلوا قياما ولا تقعلوا كما يفعل اهل فارس بعظمانها

    “Jab imaam baith kar namaz parhey to tum bhi baith kar namaz parho aur jab imaam khara ho kar namaz parhey to tum bhi kharey ho kar namaz parho aur tum aisa na karo jaise Ahl-e-faris apney baron ke sath kartey hain.

[Abu Dawood: 602; Ibn majah: 1240]

     Aur aik dusri riwayat key alfaz ye hain:

ولا تعظموني كما تعظم الا عاجم بعضها بعضا

“Tum meri ta’zeem na karo jis tarha ajmi log baham aik dusrey ki kartey hain.

     Aur jaisa keh Sahih Muslim mein hai keh aik bar Nabi Kareem(ﷺ) bemari ki wajha sey baith kar namaz parha rahe the aur Sahaba apke peche kharey ho kar namaz parh rahey they, to is mouqey par Aap(ﷺ) ne farmaaya:

(إن كدتم آنفاً تفعلون فعل فارس والروم: يقومون على ملوكهم وهم قعود؛ فلا تفعلوا، ائتموا بأئمتكم: إن صلى قائماً فصلوا قياماً، وإن صلى قاعداً فصلوا قعوداً) 

     “Tum abhi ahle farees aur Rome ka amal apnaney waaley they keh wo apne baadshahon ke gird kharey rahtey hain. Aur badeshah baithey hotey hain, tum aisa na karo, tum apney imaamon ki iqtedaa karo, agar imaam khare ho kar namaz parhae tou tum kharey hokar namaz parho aur agar baith kar namaz parhae tou tum bhi baith kar namaz parho.”

[Sahih Muslim: 413]

STANDING TO GREET OTHERS

It is prohibited to stand in exaltation while greeting someone. Especially if that person holds some special position or rank. The Prophet (ﷺ), forbade that in many texts.

Among theses when he forbade the follower in prayer from standing if the Imam was sitting due to some condition of his. Also, he (ﷺ) commanded the follower to sit out of fear of imitating the foreigners who stand for their leaders. In an authentic hadeeth reported by Abu Dawud and Ibn Majah, he (ﷺ) said,

“If the Imam prays while sitting then pray sitting, and if he prays standing then pray standing. And do not do as the people of Persia do for their leaders.”[1]

In another report, “…and do not exalt me as the foreigners exalt some from among themselves.”[2]

In a narration from Muslim, when the Prophet (ﷺ) was sitting for prayer due to illness and the companions were standing, he (ﷺ) said,

“Indeed you almost did what the Persians and the Romans do. They stand for their kings while they [their Kings] are sitting.”[3]

[1] Abu Dawud #602, Ibn Majah #1240. Editor’s note: Authentic according to
[2] See Abu Dawud # 5230. Editor’s note: This version is not authentic.
[3] Muslim: 935

 کسی شخص کی تعظیم میں کھڑے ہونے کی ممانعت:

کسی شخص کی تعظیم میں کھڑے ہونے کی ممانعت خصوصاً جب کے وہ شخص صاحب مقام و مرتبہ اور لوگوں کی نگاہوں میں معظم ہو،چنانچہ یہ ممانعت بہت سی احادیث میں وارد ہے
ایک قبیل سے یہ بھی ہے کہ جب کسی کی ناگہانی صورت حال سے دوچار ہو کر امام کھڑا نہ ہو سکے اور بیٹھ کر نماز پڑھائے،اور لوگ اس کے پیچھے کھڑے ہو کر نماز پڑھیں،چنانچہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ مقتدیوں کو بھی امام کی طرح بیٹھ جانا چاہیے،اس خوف سے کہ کہیں عجمیوں کی تقلید میں نہ پڑ جائیں جو اپنے بڑوں کی تعظیم میں کھڑے رہتے ہیں،جیسا کہ سنن ابو داؤد اور ابن ماجہ کی صحیح حدیث میں نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:

اذا صلى الامام جالسا فصلوا جلوسا و اذا صلى الامام قائما فصلوا قياما كما يفعل اهل فارس بعظمائها

جب امام بیٹھ کر نماز پڑھے تو تم بھی بیٹھ کر نماز پڑھو اور جب امام کھڑے ہو کر نماز پڑھے تو تم بھی کھڑے ہوکر نماز پڑھو اور تم ایسا نہ کرو جیسے اہل فارس اپنے بڑوں کے ساتھ کرتے ہیں.

(ابو داود ٦٠٢ ابن ماجہ ١٢٤٠)

اور ایک دوسری روایت کے الفاظ یہ ہیں:

ولا تعظموني كما تعظم الاعاجم بعضها بعضا .

تم میری میری اس طرح تعظیم نہ کرو کرو جس طرح عجمی لوگ باہم ایک دوسرے کی کرتے ہیں۔

(ابو داؤد ٥٢٣٠)

اور جیسا کہ صحیح مسلم میں ہے کہ ایک بار نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم بیماری کی وجہ سے بیٹھ کر نماز پڑھا رہے تھے اور صحابہ کرام آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے پیچھے کھڑے ہو کر نماز پڑھ رہے تھے تو اس موقع پر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:

“ان كدتم آنفاتفعلوا فعل فارس و الروم يقومون علي ملوكهم وهم قعود فلا تفعلوا ائتموا بأئمتكم ان صلي قا ئما فصلواقیاما وان صلی قاعدا فصلوا قعودا۔”

تم بھی اہل فارس اور روم کا عمل اپنانے والے تھے کہ وہ اپنے بادشاہوں کے گرد کھڑے رہتے ہیں اور بادشاہ بیٹھے ہوتے ہیں، تم ایسا نہ کرو، تم اپنے اماموں کی اقتدا کرو، اگر امام کھڑے ہو کر نماز پڑھائے تو تم کھڑے ہو کر نماز پڑھو اور اگر بیٹھ کر نماز پڑھائے تو تم بیٹھ کر نماز پڑھو۔

(مسلم 413)

Table of Contents