Sections
< All Topics
Print

01. QURB-E-QAYAMAT

QURB-E-QAYAMAT

ROZ-E-QAYAMAT….NISHAANIYAN AUR HOULNAAKIYAN:

 

      Sabse pehle hamain is baat par pukhta yaqeen hona chaheye keh ham sabko aur poori  bani noee(نوع)  insaaniyat ko marne ke baad dobara zinda hona aur Allah Ta’aala ke samne paish hona hai.

 

Allah Ta’aala farmaata hai:

 

زَعَمَ الَّذِیْنَ کَفَرُوا أَن لَّن یُبْعَثُوا قُلْ بَلَی وَرَبِّیْ لَتُبْعَثُنَّ ثُمَّ لَتُنَبَّؤُنَّ بِمَا عَمِلْتُمْ وَذَلِکَ عَلَی اللّٰہِ یَسِیْرٌ﴾

 

“Kaafiron ka khayal yeh hai keh unhay dubara zinda nahi kiya jaega- Kehdijie keh kyun nahi Allah ki qasam! Tumhain zaroor bil zaroor uthaaya jaega- phir jo kuch tum ne kiya hai uski tumhe khabar di jaegi aur yeh kaam Allah par intehaee asaan hain.” 

[Surah Taghaboon :64: 07]

 

QURB-E-QAYAMAT:

 

     Phir hamain is baat par bhi pukhta yaqeen hona chaheye keh jis din hamain Allah Ta’aala kay samne paish hona hai wo intehaee qareeb hai jaise keh Allah Ta’aala ka farmaan hai:

 
﴿تَعْرُجُ الْمَلَائِکَۃُ وَالرُّوحُ إِلَیْْہِ فِیْ یَوْمٍ کَانَ مِقْدَارُہُ خَمْسِیْنَ أَلْفَ سَنَۃٍ. فَاصْبِرْ صَبْرًا جَمِیْلاً . إِنَّہُمْ یَرَوْنَہُ بَعِیْدًا . وَنَرَاہُ قَرِیْبًا﴾

 

“Jiski taraf Farishte aur rooh charhkar jaatay hain, Aik aise din mein jiski miqdaar pachaas hazar saal ki hai- pas aap achi tarah sabr karen- Beshak yeh isko door samjh rahe hain aur ham usay qareeb hi dekhtay hain.”

[Surah Ma’arij:70: 4-7]

 

   Aur Hazrat Anas bin Malik(رضي الله عنه) se riwayat hai keh Rasool Allah(ﷺ) ne farmaaya:

 

(( بُعِثْتُ أَنَا وَالسَّاعَۃُ کَہَاتَیْنِ وَضَمَّ السَّبَّابَۃَ وَالْوُسْطیٰ

 

“Aap(ﷺ) ne angasht shahadat aur darmiyaani ungli ko milakar farmaaya: Main aur qayamat is tarah bhejay gae hain jaise ye do ungliyan hain.”

[Sahih Muslim: 2950]

 

     Is hadees ka aik ma’ana yeh bayan kiya gaya hai keh main akhri Nabi hoon, mere ba’ad koi aur nabi nahi aega balkeh mere ba’ad qayamat hi aaegi jaise keh angasht shahadat kay ba’ad darmiyaan waali ungli hi hai aur un donon kay darmiyaan koi aur ungli nahi.

 

 
QAYAMAT KAB AAEGI:

 

Qayamat ka waqt sirf Allah Ta’aala ko maloom hai jaise kay Allah Ta’aala ka farmaan hai:

 

﴿یَسْأَلُونَکَ عَنِ السَّاعَۃِ أَیَّانَ مُرْسَاہَا قُلْ إِنَّمَا عِلْمُہَا عِندَ رَبِّیْ لاَ یُجَلِّیْہَا لِوَقْتِہَا إِلاَّ ہُوَ ثَقُلَتْ فِیْ السَّمَاوَاتِ وَالأَرْضِ لاَ تَأْتِیْکُمْ إِلاَّ بَغْتَۃً یَسْأَلُونَکَ کَأَنَّکَ حَفِیٌّ عَنْہَا قُلْ إِنَّمَا عِلْمُہَا عِندَ اللّٰہِ وَلَکِنَّ أَکْثَرَ النَّاسِ لاَ یَعْلَمُونَ﴾

 

“Yeh log aapse qayamat kay mutalliq suwaal karte hain keh iska wuqoo’ kab hoga?

     Aap farmaadijie keh iska ilm tou sirf mere Rab hi kay paas hai- usay uske waqt par sirf wohi zahir karega- Wo asmaanon aur zameen mein bada bhaari(Hadsa) hoga- wo tum par achaanak aapadegi- Wo apse us tarah poochte hain jaise goya ap uski tahqeeqat karchukay hain- Aap farmaadijie keh uska ilm khaas Allah hi kay paas hai lekin aksar log nahi jantay.” 

[Surah Ar’af:07: 187]

 

Aur Farmaaya:

 

یَسْأَلُونَکَ عَنِ السَّاعَۃِ أَیَّانَ مُرْسَاہَا. فِیْمَ أَنتَ مِن ذِکْرَاہَا. إِلَی رَبِّکَ مُنتَہَاہَا. إِنَّمَا أَنتَ مُنذِرُ مَن یَخْشَاہَا. کَأَنَّہُمْ یَوْمَ یَرَوْنَہَا لَمْ یَلْبَثُوا إِلَّا عَشِیَّۃً أَوْ ضُحَاہَا﴾

 

“Wo apse qayamat ke baare mein poochte hai keh iska wuqoo pazeer hone ka waqt kaunsa hai? Iska bayan karne se apka kiya talluq hai? Iske ilm ki inteha tou apke Rab ki janib hai- Aap tou sirf daraane waale hain- jis roz yeh usay dekhlegay tou unhay aisa lagega keh jaise wo sirf din ka akhri hessa ya awal hessa hi duniya mein rahe hain.” 

[Surah Naziat:79: 42-46]

 

     Aur Hadees-e-Jibreel mein hai keh Hazrat Jibreel(علیہ السلام) ne Imaan, Islam, aur Ehsaan kay mutalliq suwalaat karne kay ba’ad Nabi kareem(ﷺ) se poocha : mjhe qayamat kay mutalliq bataeye! Tou Aap(ﷺ) ne farmaaya:

 

(( مَا الْمَسْؤُوْلُ عَنْہَا بِأَعْلَمَ مِنَ السَّائِلِ

 

“Jis se is kay mutalliq suwaal kiya jaraha hai wo suwal karne walay se ziyada nahi janta.”

[Sahih Al Bukhari: 50]

 

 

REFERENCE:
BOOK: “ZAAD UL KHATEEB” JILD: 02
BY:  DR. MUHAMMAD ISHAQ ZAHID
Maut Se Jannat Tak Ka Safar,Class-16, Shaikh Yasir AlJabri Madani, 05 Rajab 1442 – 17 February 2021

The knowledge of the Hour

زَعَمَ ٱلَّذِينَ كَفَرُوٓا۟ أَن لَّن يُبْعَثُوا۟ ۚ قُلْ بَلَىٰ وَرَبِّى لَتُبْعَثُنَّ ثُمَّ لَتُنَبَّؤُنَّ بِمَا عَمِلْتُمْ ۚ وَذَٰلِكَ عَلَى ٱللَّهِ يَسِيرٌۭ
 

The disbelievers claim they will not be resurrected. Say, ˹O Prophet,˺ “Yes, by my Lord, you will surely be resurrected, then you will certainly be informed of what you have done. And that is easy for Allah.”

[Surah Taghaboon :64: 07]

تَعْرُجُ ٱلْمَلَـٰٓئِكَةُ وَٱلرُّوحُ إِلَيْهِ فِى يَوْمٍۢ كَانَ مِقْدَارُهُۥ خَمْسِينَ أَلْفَ سَنَةٍۢ ٤
فَٱصْبِرْ صَبْرًۭا جَمِيلًا ٥
إِنَّهُمْ يَرَوْنَهُۥ بَعِيدًۭا ٦
وَنَرَىٰهُ قَرِيبًۭا ٧

˹through which˺ the angels and the ˹holy˺ spirit1 will ascend to Him on a Day fifty thousand years in length

So endure ˹this denial, O  Prophet,˺ with beautiful patience.

They truly see this ˹Day˺ as impossible,

but We see it as inevitable.

[Surah Ma’arij:70: 4-7]

عَنْ سَهْلِ بْنِ سَعْدٍ، قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏.‏ وَحَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ، – وَاللَّفْظُ لَهُ – حَدَّثَنَا يَعْقُوبُ، عَنْ أَبِي حَازِمٍ، أَنَّهُ سَمِعَ سَهْلاً، يَقُولُ سَمِعْتُ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم يُشِيرُ بِإِصْبَعِهِ الَّتِي تَلِي الإِبْهَامَ وَالْوُسْطَى وَهُوَ يَقُولُ ‏ “‏ بُعِثْتُ أَنَا وَالسَّاعَةُ هَكَذَا ‏”‏ ‏.‏

This hadith has been reported by Sahl b. Sa’d that he heard Allah’s Messenger (ﷺ) as saying:
I and the Last Hour are (close to each other) like this (and he, in order to explain it) pointed (by joining his) forefinger, (one) next to the thumb and the middle finger (together).

[Sahih Muslim: 2950]

يَسْـَٔلُونَكَ عَنِ ٱلسَّاعَةِ أَيَّانَ مُرْسَىٰهَا ۖ قُلْ إِنَّمَا عِلْمُهَا عِندَ رَبِّى ۖ لَا يُجَلِّيهَا لِوَقْتِهَآ إِلَّا هُوَ ۚ ثَقُلَتْ فِى ٱلسَّمَـٰوَٰتِ وَٱلْأَرْضِ ۚ لَا تَأْتِيكُمْ إِلَّا بَغْتَةًۭ ۗ يَسْـَٔلُونَكَ كَأَنَّكَ حَفِىٌّ عَنْهَا ۖ قُلْ إِنَّمَا عِلْمُهَا عِندَ ٱللَّهِ وَلَـٰكِنَّ أَكْثَرَ ٱلنَّاسِ لَا يَعْلَمُونَ ١٨٧

They ask you ˹O Prophet˺ regarding the Hour, “When will it be?” Say, “That knowledge is only with my Lord. He alone will reveal it when the time comes. It is too tremendous for the heavens and the earth and will only take you by surprise.” They ask you as if you had full knowledge of it. Say, “That knowledge is only with Allah, but most people do not know.”

[Surah Ar’af:07: 187]
 
يَسْـَٔلُونَكَ عَنِ ٱلسَّاعَةِ أَيَّانَ مُرْسَىٰهَا ٤٢
فِيمَ أَنتَ مِن ذِكْرَىٰهَآ ٤٣
إِلَىٰ رَبِّكَ مُنتَهَىٰهَآ ٤٤
إِنَّمَآ أَنتَ مُنذِرُ مَن يَخْشَىٰهَا ٤٥
كَأَنَّهُمْ يَوْمَ يَرَوْنَهَا لَمْ يَلْبَثُوٓا۟ إِلَّا عَشِيَّةً أَوْ ضُحَىٰهَا ٤٦

They ask you ˹O Prophet˺ regarding the Hour, “When will it be?”

But it is not for you to tell its time.

That knowledge rests with your Lord ˹alone˺.

Your duty is only to warn whoever is in awe of it.

On the Day they see it, it will be as if they had stayed ˹in the world˺ no more than one evening or its morning.

[Surah Naziat:79: 42-46]

مَا الْمَسْؤُوْلُ عَنْہَا بِأَعْلَمَ مِنَ السَّائِلِ 

“When will the Hour be established?” Allah’s Messenger (ﷺ) replied, “The answerer has no better knowledge than the questioner. But I will inform you about its portents.

[Sahih Al Bukhari: 50]

REFERENCE: Sunnah.com

روزِ قیامت ۔۔۔۔۔۔نشانیاں اورہولناکیاں

پہلا خطبہ :

برادران اسلام ! اس سے پہلے ہم ایک خطبۂ جمعہ موت سے متعلق اور ایک خطبہ قبر سے متعلق دے چکے ہیں جبکہ آج کا خطبہ روزِ قیامت سے متعلق ہے ۔ اللہ تعالیٰ سے دعا ہے کہ وہ ہم سب کا خاتمہ ایمان اور عمل صالح پر فرمائے۔ ہمیں سوئے خاتمہ سے محفوظ رکھے ، قبر وحشر کی حسرتوں سے بچائے اور ہمیں اپنے فضل وکرم سے جنت الفردوس نصیب فرمائے ۔ آمین

سب سے پہلے ہمیں اس بات پر پختہ یقین ہونا چاہئے کہ ہم سب کو اور پوری بنی نوع انسانیت کو مرنے کے بعد دوبارہ زندہ ہونا اور اللہ تعالیٰ کے سامنے پیش ہونا ہے۔
اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں :

﴿زَعَمَ الَّذِیْنَ کَفَرُوا أَن لَّن یُبْعَثُوا قُلْ بَلَی وَرَبِّیْ لَتُبْعَثُنَّ ثُمَّ لَتُنَبَّؤُنَّ بِمَا عَمِلْتُمْ وَذَلِکَ عَلَی اللّٰہِ یَسِیْرٌ﴾

’’ کافروں کا خیال یہ ہے کہ انہیں دوبارہ زندہ نہیں کیا جائے گا ۔ کہہ دیجئے کہ کیوں نہیں اللہ کی قسم ! تمھیں ضرور بالضرور اٹھایا جائے گا ۔ پھر جو کچھ تم نے کیا ہے اس کی تمھیں خبر دی جائے گی اور یہ کام اللہ پر انتہائی آسان ہے ۔ ‘‘

التغابن64 :7

قربِ قیامت :

پھر ہمیں اس بات پر بھی پختہ یقین ہونا چاہئے کہ جس دن ہمیں اللہ تعالیٰ کے سامنے پیش ہوناہے وہ انتہائی قریب ہے جیسا کہ اللہ تعالیٰ کا فرمان ہے :

﴿تَعْرُجُ الْمَلَائِکَۃُ وَالرُّوحُ إِلَیْْہِ فِیْ یَوْمٍ کَانَ مِقْدَارُہُ خَمْسِیْنَ أَلْفَ سَنَۃٍ. فَاصْبِرْ صَبْرًا جَمِیْلاً . إِنَّہُمْ یَرَوْنَہُ بَعِیْدًا . وَنَرَاہُ قَرِیْبًا﴾

’’ جس کی طرف فرشتے اور روح چڑھ کر جاتے ہیں ، ایک ایسے دن میں جس کی مقدار پچاس ہزار سال کی ہے ۔ پس آپ اچھی طرح صبر کریں ۔ بے شک یہ اس کو دور سمجھ رہے ہیں اور ہم اسے قریب ہی دیکھتے ہیں ۔ ‘‘

المعارج70:7-4

اورحضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :

(( بُعِثْتُ أَنَا وَالسَّاعَۃُ کَہَاتَیْنِ وَضَمَّ السَّبَّابَۃَ وَالْوُسْطیٰ ))

’’ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے انگشت ِ شہادت اور درمیانی انگلی کو ملا کرفرمایا : میں اور قیامت اس طرح بھیجے گئے ہیں جیسے یہ دو انگلیاں ہیں ۔ ‘‘

صحیح مسلم:2949

اس حدیث کا ایک معنی یہ بیان کیا گیا ہے کہ میں آخری نبی ہوں ، میرے بعد کوئی اور نبی نہیں آئے گا بلکہ میرے بعد قیامت ہی آئے گی جیسا کہ انگشت ِ شہادت کے بعد درمیان والی انگلی ہی ہے اوران دونوں کے درمیان کوئی اور انگلی نہیں ہے ۔

قیامت کب آئے گی ؟

قیامت کا وقت صرف اللہ تعالیٰ کو معلوم ہے جیسا کہ اللہ تعالیٰ کا فرمان ہے :

﴿یَسْأَلُونَکَ عَنِ السَّاعَۃِ أَیَّانَ مُرْسَاہَا قُلْ إِنَّمَا عِلْمُہَا عِندَ رَبِّیْ لاَ یُجَلِّیْہَا لِوَقْتِہَا إِلاَّ ہُوَ ثَقُلَتْ فِیْ السَّمَاوَاتِ وَالأَرْضِ لاَ تَأْتِیْکُمْ إِلاَّ بَغْتَۃً یَسْأَلُونَکَ کَأَنَّکَ حَفِیٌّ عَنْہَا قُلْ إِنَّمَا عِلْمُہَا عِندَ اللّٰہِ وَلَکِنَّ أَکْثَرَ النَّاسِ لاَ یَعْلَمُونَ﴾

’’ یہ لوگ آپ سے قیامت کے متعلق سوال کرتے ہیں کہ اس کا وقوع کب ہو گا ؟ آپ فرما دیجئے کہ اس کا علم تو صرف میرے رب ہی کے پاس ہے ۔ اسے اس کے وقت پر صرف وہی ظاہر کرے گا ۔ وہ آسمانوں اور زمین میں بڑا بھاری ( حادثہ ) ہو گا ۔ وہ تم پر اچانک آ پڑے گی ۔ وہ آپ سے اس طرح پوچھتے ہیں جیسے گویا آپ اس کی تحقیقات کر چکے ہیں ۔ آپ فرما دیجئے کہ اس کا علم خاص اللہ ہی کے پاس ہے لیکن اکثر لوگ نہیں جانتے ۔ ‘‘

الأعراف7:187
اور فرمایا :﴿یَسْأَلُونَکَ عَنِ السَّاعَۃِ أَیَّانَ مُرْسَاہَا. فِیْمَ أَنتَ مِن ذِکْرَاہَا. إِلَی رَبِّکَ مُنتَہَاہَا. إِنَّمَا أَنتَ مُنذِرُ مَن یَخْشَاہَا. کَأَنَّہُمْ یَوْمَ یَرَوْنَہَا لَمْ یَلْبَثُوا إِلَّا عَشِیَّۃً أَوْ ضُحَاہَا﴾

’’وہ آپ سے قیامت کے بارے میں پوچھتے ہیں کہ اس کے وقوع پذیر ہونے کا وقت کون سا ہے ؟ اس کے بیان کرنے سے آپ کا کیا تعلق ہے ؟ اس کے علم کی انتہاتو آپ کے رب کی جانب ہے ۔ آپ تو صرف ڈرانے والے ہیں ان لوگوں کو جو اس سے ڈرتے ہیں ۔ جس روز یہ اسے دیکھ لیں گے تو انھیں ایسے لگے گا کہ جیسے وہ صرف دن کا آخری حصہ یا اول حصہ ہی ( دنیا میں ) رہے ہیں ۔ ‘‘

النازعات79 :46-42

اور حدیثِ جبریل میں ہے کہ حضرت جبریل ( علیہ السلام ) نے ایمان ، اسلام اور احسان کے متعلق سوالات کرنے کے بعد نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے پوچھا: مجھے قیامت کے متعلق بتائیں ! تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :

(( مَا الْمَسْؤُوْلُ عَنْہَا بِأَعْلَمَ مِنَ السَّائِلِ ))

’’ جس سے اس کے متعلق سوال کیا جا رہا ہے وہ سوال کرنے والے سے زیادہ نہیں جانتا ۔ ‘‘

صحیح البخاری:50، صحیح مسلم:8

ریفرنس:
کتاب:”زادالخطیب” جلد:دوم
ڈاکٹر محمد اسحاق زاہد

Table of Contents