Sections
< All Topics
Print

10. AZAAB-E-QABR AUR USKI AZMAISH SE NAJAAT DENAY WAALAY BAAZ AMAL [Some Good Deeds offers protection from the punishment in the grave]

AZAAB-E-QABR AUR USKI AZMAISH SE NAJAAT DENAY WAALAY BAAZ AMAL:

1. DUSHMAN KI SARHAD PAR PEHRA DENA:

 

     Hazrat Suleman(رضي الله عنه) se riwayat hai keh Rasool Allah(ﷺ) ne farmaaya:

 

(( رِبَاطُ یَوْمٍ وَلَیْلَۃٍ خَیْرٌ مِّنْ صِیَامِ شَہْرٍ وَقِیَامِہٖ،وَإِنْ مَّاتَ جَرٰی عَلَیْہِ عَمَلُہُ الَّذِیْ کَانَ یَعْمَلُہُ ، وَأُجْرِیَ عَلَیْہِ رِزْقُہُ، وَأُمِنََ الْفَتَّانَ ))

 

“Dushman ki sarhad par (Allah kay raste mein) aik din aur aik raat pehra dena aik maah kay rozon aur uskay qayam se behtar hai- Aur agar wo usi halat mein marjaey tou uska wo amal jaari rehta hai jo wo kiya karta tha- aur usi par uska rizq jaari kardiya jaata hai- aur usay azmaish mein dalnay waale (Azaab-e-qabr) se mehfooz kardiya jaata hai.”

 

[Sahih Muslim: 1913]

 

2. SHAHADAT PAANA:

 

Hazrat miqdad bin Ma’dikarb (رضي الله عنه) se riwayat hai keh, Rasool Allah(ﷺ) ne farmaya:

 

(( لِلشَّہِیْدِ عِنْدَ اللّٰہِ سِتُّ خِصَالٍ : یُغْفَرُ لَہُ فِیْ أَوَّلِ دَفْعَۃٍ،وَیُرٰی مَقْعَدَہُ مِنَ الْجَنَّۃِ،وَیُجَارُ مِنْ عَذَابِ الْقَبْرِ،وَیَأْمَنُ مِنَ الْفَزَعِ الْأَکْبَرِ،وَیُوْضَعُ عَلٰی رَأْسِہٖ تَاجُ الْوَقَارِ،اَلْیَاقُوْتَۃُ مِنْہُ خَیْرٌ مِّنَ الدُّنْیَا وَمَا فِیْہَا،وَیُزَوَّجُ اثْنَتَیْنِ وَسَبْعِیْنَ زَوْجَۃً مِنَ الْحُوْرِ الْعِیْنِ، وَیُشَفَّعُ فِیْ سَبْعِیْنَ مِنْ أَقَارِبِہٖ

 

“Shaheed ke liye (khusoosi taur) par Allah kay yahan chay(6) inamaat hain: Pehla qatra khoon par uski maghfirat kardi jaati hai aur usay jannat mein uska thikana dikhaya jaata hai- aur usay azaab-e-qabr se mehfooz rakha jaata hai- aur wo badi ghabrahat se bhi mehfooz raheta hai- aur uske sar par taaj-e-waqar rakha jaata hai jiska aik moti duniya se aur duniya kay andar jo kuch hai usay bahetar hai- aur uski moti ankhon waali hooroun mein se bahattar(72) biwiyon se shadi ki jaegi- aur uske sattar(70) rishtedaaron kay baare mein uski sifarish ko qubool kiya jaega.”

 

[Tirmidhi: 1663]

 

Is hadees mein jis shaheed kay fazaiyl zikr kiye gae hain yeh wo shaheed hai jisme shuhadain uhud ki sharaiyt jama’ hon aur wo yeh hain:
(A) Wo musalmaan sipay saalar ke jhanday talay jama’ hokar larhne waali fauj mein kalimatullah ko buland karne ki khatir kuffar se qitaal karte huey maara jaey.

 

(B) Wo maidan-e-qitaal mein zakhmi hokar mara ho.

 

(C) Uske wurasa ne uski shahadat kay badlay mein koi maali mua’wza na liya ho.

 

 3. HAR RAAT SURAH MULK KI TILAWAT KARNA AUR USPAR AMAL KARNA:

 

Hazrat Abu Hurerah(رضي الله عنه) se riwayat hai keh: Rasool Allah(ﷺ) ne farmaaya:

 

إِنَّ سُوْرَۃً مِّنَ الْقُرْآنِ : ثَلَاثُوْنَ آیَۃً ، شَفَعَتْ لِرَجُلٍ حَتّٰی غُفِرَ لَہُ ، وَہِیَ سُوْرَۃُ تَبَارَکَ الَّذِیْ بِیَدِہِ الْمُلْکُ)

 

“Beshak Qur’an mein aik surat ne ‘jiski tees aayaat hai’ aik admi kay haq mein sifarish ki yahan tak keh uski bakhshish kardi gae- aur wo “Surah Mulk” hai. 

 

[Tirmidhi: 2891; Abu Dawood: 1400; Ibn Majah: 3786]

 

 

     Aur Hazrat Abdullah bin masood(رضي الله عنه) kehete hain: “Jo shakhs har raat Surah Mulk ki tilawat karta rahe Usay Allah Ta’aala azaab-e-qabr se mehfooz rakhega aur ham Rasool Allah(ﷺ) kay zamane mein usay (اَلْمَانِعَۃ) “Bachaanay waali surat” kaha karte the.

 
[Sahih Targheeb o tarheeb: 1475]

 

 

Khud Rasool Allah(ﷺ) bhi raat ko Surah Sajdah aur Surah Mulk padhkar hi soya karte the.

 

[Tirmidhi: 2892]

 

4. PAIT KI BIMARI SE MARNA:

 

Hazrat Abdullah bin yasaar(رحمه الله) bayan karte hai keh main baitha hua tha keh Hazrat sulemaan bin sarad(رضي الله عنه) aur hazrat khalid bin Arfata(رضي الله عنه) ne apas mein yeh baat zikr ki keh aik admi faut hogaya hai aur uski maut pait ki bemari ki wajah se ayi hai- Un dono ne is khwaahish ka izhaar kiya keh kash wo bhi is admi kay janazay mein shareek hote- Aur unme se aik ne dusre se kaha : kiya Allah ke Rasool(ﷺ) ne irshad nahi farmaaya tha keh:

 

(( مَنْ یَّقْتُلْہُ بَطْنُہُ فَلَنْ یُّعَذَّبَ فِیْ قَبْرِہٖ ))

 

“Jisay uske pait (ki beemari) maar de usay qabr mein azaab hargiz nahi diya jaega.”

      Tou unme se dusre ne kaha: kyun nahi ye waqiyatan Rasool Allah(ﷺ) ka irshad hai. 

 

[Tirmidhi: 1064; Sunan Nasai: 2052; Wa Saheeha Albani]

 

 5. JUMU’AH KAY DIN YA JUMU’AH KI RAAT KO MARNA:

 

      Hazrat Abdullah bin Amr bin al aas(رضي الله عنه) ka bayan hai keh Rasool Allah(ﷺ) ne irshad farmaaya:

 
(( مَا مِنْ مُسْلِمٍ یَّمُوْتُ یَوْمَ الْجُمُعَۃِ أَوْ لَیْلَۃَ الْجُمُعَۃِ إِلَّا وَقَاہُ اللّٰہُ فِتْنَۃَ الْقَبْرِ

 

“Jis musalmaan shakhs ki maut jumu’ah kay din ya Jumu’ah ki raat ko aaey Allah Ta’aala usay qabr kay fitne se bacha leta hai.”

[Tirmidhi: 1074]

 

Allah Ta’aala se dua hai keh ham sabko azab-e-qabr se mahfooz rakhe…Aameen.

 

 
REFERENCE:
BOOK: “ZAAD UL KHATEEB” JILD: 02
BY:  DR. MUHAMMAD ISHAQ ZAHID
Maut Se Jannat Tak Ka Safar,Class – 15, Shaikh Yasir AlJabri Madani, 10 February 2021

Some Good Deeds offers protection from the punishment in the grave

1. The virtue of guarding the frontier in the cause of Allah (Glorified and Exalted is He):

حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ بَهْرَامَ الدَّارِمِيُّ، حَدَّثَنَا أَبُو الْوَلِيدِ الطَّيَالِسِيُّ، حَدَّثَنَا لَيْثٌ، – يَعْنِي ابْنَ سَعْدٍ – عَنْ أَيُّوبَ بْنِ مُوسَى، عَنْ مَكْحُولٍ، عَنْ شُرَحْبِيلَ بْنِ السَّمِطِ، عَنْ سَلْمَانَ، قَالَ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم يَقُولُ ‏ “‏ رِبَاطُ يَوْمٍ وَلَيْلَةٍ خَيْرٌ مِنْ صِيَامِ شَهْرٍ وَقِيَامِهِ وَإِنْ مَاتَ جَرَى عَلَيْهِ عَمَلُهُ الَّذِي كَانَ يَعْمَلُهُ وَأُجْرِيَ عَلَيْهِ رِزْقُهُ وَأَمِنَ الْفَتَّانَ ‏”‏ ‏.‏

It has been narrated on the authority of Salman who said:
I heard the Messenger of Allah (ﷺ) say: Keeping watch for a day and a night is better (in point of reward) than fasting for a whole month and standing in prayer every night. If a person dies (while, performing this duty), his (meritorious) activity will continue and he will go on receiving his reward for it perpetually and will be saved from the torture of the grave.

[Sahih Muslim: 1913]

2. Regarding The Rewards For The Martyr:

عَنِ الْمِقْدَامِ بْنِ مَعْدِيكَرِبَ، قَالَ قَالَ
رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏ “‏ لِلشَّهِيدِ عِنْدَ اللَّهِ سِتُّ خِصَالٍ يُغْفَرُ لَهُ فِي أَوَّلِ دَفْعَةٍ وَيَرَى مَقْعَدَهُ مِنَ الْجَنَّةِ وَيُجَارُ مِنْ عَذَابِ الْقَبْرِ وَيَأْمَنُ مِنَ الْفَزَعِ الأَكْبَرِ وَيُوضَعُ عَلَى رَأْسِهِ تَاجُ الْوَقَارِ الْيَاقُوتَةُ مِنْهَا خَيْرٌ مِنَ الدُّنْيَا وَمَا فِيهَا وَيُزَوَّجُ اثْنَتَيْنِ وَسَبْعِينَ زَوْجَةً مِنَ الْحُورِ الْعِينِ وَيُشَفَّعُ فِي سَبْعِينَ مِنْ أَقَارِبِهِ ‏”‏ ‏.‏ قَالَ أَبُو عِيسَى هَذَا حَدِيثٌ صَحِيحٌ غَرِيبٌ ‏.‏

Narrated Al-Miqdam bin Ma’diykarib:
That the Messenger of Allah (ﷺ) said: “There are six things with Allah for the martyr. He is forgiven with the first flow of blood (he suffers), he is shown his place in Paradise, he is protected from punishment in the grave, secured from the greatest terror, the crown of dignity is placed upon his head – and its gems are better than the world and what is in it – he is married to seventy two wives along Al-Huril-‘Ayn of Paradise, and he may intercede for seventy of his close relatives.”
[Abu ‘Eisa said:] This Hadith is Hasan Sahih.

[Tirmidhi: 1663]

3. The Virtue Of Surat Al-Mulk:

حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ، قَالَ حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ، قَالَ حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، عَنْ قَتَادَةَ، عَنْ عَبَّاسٍ الْجُشَمِيِّ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏ “‏ إِنَّ سُورَةً مِنَ الْقُرْآنِ ثَلاَثُونَ آيَةً شَفَعَتْ لِرَجُلٍ حَتَّى غُفِرَ لَهُ وَهِيَ سُورَةُ تَبَارَكَ الَّذِي بِيَدِهِ الْمُلْكُ ‏”‏ ‏.‏ هَذَا حَدِيثٌ حَسَنٌ ‏.‏

Narrated Abu Hurairah:
that the Prophet (ﷺ) said: “Indeed there is a Surah in the Qur’an of thirty Ayat, which intercedes for a man until he is forgiven. It is [Surah] Tabarak Alladhi Biyadihil-Mulk.”

[Tirmidhi: 2891; Abu Dawood: 1400; Ibn Majah: 3786]

4. Whoever is killed by his stomach:

حَدَّثَنَا عُبَيْدُ بْنُ أَسْبَاطِ بْنِ مُحَمَّدٍ الْقُرَشِيُّ الْكُوفِيُّ، حَدَّثَنَا أَبِي، حَدَّثَنَا أَبُو سِنَانٍ الشَّيْبَانِيُّ، عَنْ أَبِي إِسْحَاقَ السَّبِيعِيِّ، قَالَ قَالَ سُلَيْمَانُ بْنُ صُرَدٍ لِخَالِدِ بْنِ عُرْفُطَةَ أَوْ خَالِدٌ لِسُلَيْمَانَ أَمَا سَمِعْتَ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم يَقُولُ ‏ “‏ مَنْ قَتَلَهُ بَطْنُهُ لَمْ يُعَذَّبْ فِي قَبْرِهِ ‏”‏ ‏.‏ فَقَالَ أَحَدُهُمَا لِصَاحِبِهِ نَعَمْ ‏.‏ قَالَ أَبُو عِيسَى هَذَا حَدِيثٌ حَسَنٌ غَرِيبٌ فِي هَذَا الْبَابِ وَقَدْ رُوِيَ مِنْ غَيْرِ هَذَا الْوَجْهِ ‏.‏

Abu Ishaq As-Sabi’i said:
“Sulaiman bin Surad said to Khalid bin Urfutah – or, Khalid said to Sulaiman – ‘Did you hear the Messenger of Allah saying: “Whoever is killed by his stomach then he will not be punished in the grave”?’ One of them said to the other: “Yes.”

[Tirmidhi: 1064; Sunan Nasai: 2052; Wa Saheeha Albani]

5. One Who Died On Friday:

عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَمْرٍو، قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏ “‏ مَا مِنْ مُسْلِمٍ يَمُوتُ يَوْمَ الْجُمُعَةِ أَوْ لَيْلَةَ الْجُمُعَةِ إِلاَّ وَقَاهُ اللَّهُ فِتْنَةَ الْقَبْرِ ‏”‏ ‏

Abdullah bin Amr narrated that:
The Messenger of Allah said: “No Muslim dies on the day of Friday, nor the night of Friday, except that Allah protects him from the trials of the grave.”

[Tirmidhi: 1074]

MAY ALLAH PROTECT ALL OF US FROM TORNAMENT OF GRAVE..AAMEEEN YA RAB

REFERENCE:  Sunnah.com

عذابِ قبراور اس کی آزمائش سے نجات دینے والے بعض اعمال

عزیزان گرامی ! جیسا کہ ہم پہلے خطبہ کے آخر میں عرض کر چکے ہیں کہ قبر میں مومن کو جنت کی نعمتیں عطا کی جاتی ہیں اور مومن کا عمل ہی اس کا بہترین ساتھی ہوتاہے جواس کی قبر کو منور کرتا ہے ۔ اس کے علاوہ بعض اعمال ایسے ہیں جو خاص طور پر مومن کو عذابِ قبر سے نجات دلانے والے ہیں اور وہ یہ ہیں :

۱۔ دشمن کی سرحد پر پہرہ دینا

حضرت سلمان رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :

(( رِبَاطُ یَوْمٍ وَلَیْلَۃٍ خَیْرٌ مِّنْ صِیَامِ شَہْرٍ وَقِیَامِہٖ،وَإِنْ مَّاتَ جَرٰی عَلَیْہِ عَمَلُہُ الَّذِیْ کَانَ یَعْمَلُہُ ، وَأُجْرِیَ عَلَیْہِ رِزْقُہُ، وَأُمِنََ الْفَتَّانَ )) 

’’ دشمن کی سرحد پر( اللہ کے راستے میں ) ایک دن اور ایک رات پہرہ دینا ایک ماہ کے روزوں اور اس کے قیام سے بہتر ہے ۔ اور اگر وہ اسی حالت میں مر جائے تو اس کا وہ عمل جاری رہتاہے جو وہ کیا کرتا تھا ۔ اور اسی پر اس کا رزق جاری کردیا جاتا ہے ۔ اور اسے آزمائش میں ڈالنے والے ( عذابِ قبر ) سے محفوظ کردیا جاتاہے ۔ ‘‘

الترمذی :1071وحسنہ الألبانی [2] صحیح مسلم :1913

۲۔ شہادت پانا

حضرت مقداد بن معدیکرب رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :

(( لِلشَّہِیْدِ عِنْدَ اللّٰہِ سِتُّ خِصَالٍ : یُغْفَرُ لَہُ فِیْ أَوَّلِ دَفْعَۃٍ،وَیُرٰی مَقْعَدَہُ مِنَ الْجَنَّۃِ،وَیُجَارُ مِنْ عَذَابِ الْقَبْرِ،وَیَأْمَنُ مِنَ الْفَزَعِ الْأَکْبَرِ،وَیُوْضَعُ عَلٰی رَأْسِہٖ تَاجُ الْوَقَارِ،اَلْیَاقُوْتَۃُ مِنْہُ خَیْرٌ مِّنَ الدُّنْیَا وَمَا فِیْہَا،وَیُزَوَّجُ اثْنَتَیْنِ وَسَبْعِیْنَ زَوْجَۃً مِنَ الْحُوْرِ الْعِیْنِ، وَیُشَفَّعُ فِیْ سَبْعِیْنَ مِنْ أَقَارِبِہٖ ))

’’ شہید کیلئے ( خصوصی طور ) پر اللہ کے ہاں چھ انعامات ہیں :پہلے قطرۂ خون پر اس کی مغفرت کر دی جاتی ہے اور اسے جنت میں اس کا ٹھکانا دکھا دیاجاتا ہے ۔ اور اسے عذابِ قبر سے محفوظ رکھا جاتا ہے ۔ اور وہ بڑی گھبراہٹ سے بھی محفوظ رہتا ہے ۔ اور اس کے سر پر تاجِ وقار رکھا جاتا ہے جس کا ایک موتی دنیا سے اور دنیا کے اندر جو کچھ ہے اس سے بہتر ہے ۔ اور اس کی موٹی آنکھوں والی حوروں میں سے بہتر (۷۲) بیویوں سے شادی کی جائے گی ۔ اور اس کے ستر رشتہ داروں کے بارے میں اس کی سفارش کو قبول کیا جائے گا ۔ ‘‘

سنن الترمذی : 1663۔ وصححہ الألبانی

اس حدیث میں جس شہید کے فضائل ذکر کئے گئے ہیں یہ وہ شہید ہے جس میں شہدائے احد کی شرائط جمع ہوں اور وہ یہ ہیں :

۱۔ وہ مسلمان سپہ سالار کے جھنڈے تلے جمع ہو کر لڑنے والی فوج میں کلمۃ اللہ کو بلند کرنے کی خاطر کفار سے قتال کرتے ہوئے مار اجائے ۔
۲۔وہ میدانِ قتال میں زخمی ہو کر مرا ہو ۔
۳۔ اس کے ورثاء نے اس کی شہادت کے بدلے میں کوئی مالی معاوضہ نہ لیا ہو ۔

۳۔ ہر رات سورۃ الملک کی تلاوت کرنا اور اس پر عمل کرنا

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :

(( إِنَّ سُوْرَۃً مِّنَ الْقُرْآنِ : ثَلَاثُوْنَ آیَۃً ، شَفَعَتْ لِرَجُلٍ حَتّٰی غُفِرَ لَہُ ، وَہِیَ سُوْرَۃُ تَبَارَکَ الَّذِیْ بِیَدِہِ الْمُلْکُ)) 

’’ بے شک قرآن میں ایک سورت نے ‘جس کی تیس آیات ہیں ‘ ایک آدمی کے حق میں سفارش کی یہاں تک کہ اس کی بخشش کردی گئی ۔ اور وہ ہے سورۃ الملک ۔ ‘‘

سنن الترمذی :2891، ابو داؤد :1400، ابن ماجہ :3786۔و صححہ الألبانی

اور حضرت عبد اللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ کہتے ہیں : ’’ جو شخص ہر رات سورۃ الملک کی تلاوت کرتا رہے اسے اللہ تعالیٰ عذابِ قبر سے محفوظ رکھے گا اور ہم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانے میں اسے (اَلْمَانِعَۃ) ’’بچانے والی سورت‘‘ کہا کرتے تھے۔ ‘‘

سنن النسائی ۔ حسنہ الألبانی فی صحیح الترغیب والترہیب:1475

خود رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم بھی رات کو سورۃ الم تنزیل ( السجدۃ ) اور سورۃ الملک پڑھ کر ہی سوتے تھے ۔

سنن الترمذی:2892۔ وصححہ الألبانی

۴۔ پیٹ کی بیماری سے مرنا

حضر ت عبد اللہ بن یسار رحمہ اللہ بیان کرتے ہیں کہ میں بیٹھا ہوا تھا کہ حضرت سلیمان بن صرد رضی اللہ عنہ اور حضرت خالد بن عرفطۃ رضی اللہ عنہ نے آپس میں یہ بات ذکر کی کہ ایک آدمی فوت ہو گیا ہے اور اس کی موت پیٹ کی بیماری کی وجہ سے آئی ہے ۔ ان دونوں نے اس خواہش کا اظہار کیا کہ کاش وہ بھی اس آدمی کے جنازے میں شریک ہوتے۔ اور ان میں سے ایک نے دوسرے سے کہا : کیا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد نہیں فرمایا تھا کہ

(( مَنْ یَّقْتُلْہُ بَطْنُہُ فَلَنْ یُّعَذَّبَ فِیْ قَبْرِہٖ ))

’’ جسے اس کے پیٹ ( کی بیماری ) مار دے اسے قبر میں عذاب ہرگز نہیں دیا جائے گا ۔ ‘‘

تو ان میں سے دوسرے نے کہا : کیوں نہیں ، یہ واقعتا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد ہے ۔ 

سنن الترمذی:1064،والنسائی:2052۔ وصححہ الألبانی

۵۔ جمعہ کے دن یا جمعہ کی رات کو مرنا

حضرت عبد اللہ بن عمرو بن العاص رضی اللہ عنہ کا بیان ہے کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشادفرمایا:

(( مَا مِنْ مُسْلِمٍ یَّمُوْتُ یَوْمَ الْجُمُعَۃِ أَوْ لَیْلَۃَ الْجُمُعَۃِ إِلَّا وَقَاہُ اللّٰہُ فِتْنَۃَ الْقَبْرِ))

’’ جس مسلمان شخص کی موت جمعہ کے دن یا جمعہ کی رات کو آئے اللہ تعالیٰ اسے قبر کے فتنہ سے بچا لیتا ہے ۔‘‘

سنن الترمذی:1074۔ وحسنہ الألبانی
 

اللہ تعالیٰ سے دعا ہے کہ وہ ہم سب کو عذابِ قبر سے محفوظ فرمائے ۔ آمین

ریفرنس:
کتاب:”زادالخطیب” جلد:دوم
ڈاکٹر محمد اسحاق زاہد

Table of Contents