Sections
< All Topics
Print

08. YAHUD O NASARA KI PAIRVI [Follow the Jews and the Christians]

YAHUD O NASARA KI PAIRVI:

 

Hazrat Abu Sayed Al Khudri(رضي الله عنه) se riwayat hai keh Rasool Allah(ﷺ) ne irshad farmaaya:

لَتَتَّبِعُنَّ سَنَنَ مَنْ قَبْلَکُمْ شِبْرًا بِشِبْرٍ،وَذِرَاعًا بِذِرَاعٍ،حَتّٰی لَوْ دَخَلُوْا جُحْرَ ضَبٍّ لَدَخَلْتُمُوْہُ،قَالُوْا : یَارَسُوْلَ اللّٰہِ ! اَلْیَہُوْدُ وَالنَّصَارَی؟ قَالَ : فَمَنْ؟

 

  “Tum yaqeenan pehli ummatoun kay taur tareeqoun par yun chalogay jaise aik balisht dusri balisht kay aur aik haath dusre haath kay barabar hota hai- Hatta keh agar wo saanday ki bill mein dakhil hongay tou tum bhi usme dakhil hogay” Unho ne kaha: Ae Allah kay Rasool! Yahud o nasara kay tareeqoun par? Tou Aap(ﷺ) ne farmaaya: (wo nahi) tou aur kaun?

[SAHIH AL BUKHARI: 3456]

 

   Hazraat muhatram! Jin alaamat qayamat ka zikr in ahadees mein kiya gaya hai inme se baishtar ka zahur hochuka hai, Maslan ilm ki kami aur jahalat ka ghalba, Aurtoun ki kasrat, Qatal, Sharab noshi aur zina kaari ka aam hona, Jahiloun ka mufti ban jana- Khaas taur jo alamat Aakhri hadees mein bayan ki gae hai aur wo musalmaanoun ka yahudo nasara kay taur tareeqoun par chalna,

    Isiliye Allamah Iqbal ne kaha tha:

   Waza’ mein tum ho nasara tou tamddan mein hanud yah musalmaaan hain jinhay dekh kay sharmaey yahud.

(وضع میں تم ہو نصاری تو تمدن میں ہنود یہ مسلمان ہیں جنہیں دیکھ کے شرمائیں یہود)
 

 

 
REFERENCE:
BOOK: “ZAAD UL KHATEEB” JILD: 02
BY:  DR. MUHAMMAD ISHAQ ZAHID

 

Maut Se Jannat Tak Ka Safar,Class-23, Shaikh Yasir AlJabri Madani, 24 Shabaan 1442 – 07 April 2021

Follow the Jews and the Christians

 

حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ أَبِي مَرْيَمَ، حَدَّثَنَا أَبُو غَسَّانَ، قَالَ حَدَّثَنِي زَيْدُ بْنُ أَسْلَمَ، عَنْ عَطَاءِ بْنِ يَسَارٍ، عَنْ أَبِي سَعِيدٍ ـ رضى الله عنه ـ أَنَّ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏”‏ لَتَتَّبِعُنَّ سَنَنَ مَنْ قَبْلَكُمْ شِبْرًا بِشِبْرٍ، وَذِرَاعًا بِذِرَاعٍ، حَتَّى لَوْ سَلَكُوا جُحْرَ ضَبٍّ لَسَلَكْتُمُوهُ ‏”‏‏.‏ قُلْنَا يَا رَسُولَ اللَّهِ، الْيَهُودَ وَالنَّصَارَى قَالَ ‏”‏ فَمَنْ ‏”‏‏.‏

 

Narrated Abu Sa`id:
The Prophet (ﷺ) said, “You will follow the wrong ways, of your predecessors so completely and literally that if they should go into the hole of a mastigure, you too will go there.” We said, “O Allah’s Messenger (ﷺ)! Do you mean the Jews and the Christians?” He replied, “Whom else?” (Meaning, of course, the Jews and the Christians.)

 

[SAHIH AL BUKHARI: 3456]

 

REFERENCE: Sunnah.com

 

یہود ونصاری کی پیروی

 

حضرت ابو سعید الخدری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا :

(( لَتَتَّبِعُنَّ سَنَنَ مَنْ قَبْلَکُمْ شِبْرًا بِشِبْرٍ،وَذِرَاعًا بِذِرَاعٍ،حَتّٰی لَوْ دَخَلُوْا جُحْرَ ضَبٍّ لَدَخَلْتُمُوْہُ،قَالُوْا : یَارَسُوْلَ اللّٰہِ ! اَلْیَہُوْدُ وَالنَّصَارَی؟ قَالَ : فَمَنْ؟))

 

’’ تم یقینا پہلی امتوں کے طورطریقوں پر یوں چلو گے جیسے ایک بالشت دوسری بالشت کے اور ایک ہاتھ دوسرے ہاتھ کے برابر ہوتا ہے حتی کہ اگر وہ سانڈہ کی بل میں داخل ہو ں گے تو تم بھی اس میں داخل ہو گے ‘‘ انھوں نے کہا : اے اللہ کے رسول ! یہود ونصاری ( کے طریقوں پر) ؟ تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : ( وہ نہیں ) تو اور کون ؟ ‘‘

 صحیح البخاری :3456،صحیح مسلم :2669

 

حضرات محترم ! جن علاماتِ قیامت کا ذکر ان احادیث میں کیا گیا ہے ان میں سے بیشتر کا ظہور ہو چکا ہے، مثلا علم کی کمی اور جہالت کا غلبہ ، عورتوں کی کثرت ، قتل ،شراب نوشی اورزنا کاری کا عام ہونا ، جاہلوں کا مفتی بن جانا ۔ خاص طور جو علامت آخری حدیث میں بیان کی گئی ہے اور وہ ہے مسلمانوں کا یہود ونصاری کے طورطریقوں پر چلنا ۔اسی لئے علامہ اقبال نے کہا تھا :
وضع میں تم ہو نصاری تو تمدن میں ہنود یہ مسلمان ہیں جنہیں دیکھ کے شرمائیں یہود.

 

ریفرنس:
کتاب:”زادالخطیب” جلد:دوم
ڈاکٹر محمد اسحاق زاہد

 

 

Table of Contents