Sections
< All Topics
Print

02. MAUT KI YAAD [Frequent Remembarance of Death]

MAUT KI YAAD

 
    Imam Ibn Qudamah(رحمه الله) ne maut ki yaad ke hawalay se logon ko teen qismon mein taqseem kiya hai:

  1. Aik wo insaan hai jo keh duniyavi kamon mein buri tarha mashghul rehta hai aur duniya ki talab mein din raat aik kardeta hai- Aisa shakhs maut se ghafil rehta hai aur agar kabhi usay maut yaad bhi aati hai tou wo issay nafrat karta hai.
  1. Dusra wo insaan hai jo keh maut ko ziyada se ziyada yaad karta hai aur maut ko yaad karkay uske Dil mein Allah Ta’aala ka khouf paida hojata hai- Aur Allah Ta’aala ke khouf ki wajha se wo kasrat se tawba karte rehta hai- Aisa shakhs kasrat se maut se mohabbat karne wala hota hai aur agar uske dil mein kabhi maut ko napasand karne ka khayal aata bhi hai tou wo mehez usliye hota hai keh wo apne apko gunaahgaar tasawwur karta hai aur mazeed naikiyan kamanay ka khwahish mand hota hai- Aur uski tamanna ye hoti hai keh Allah Ta’aala ussay razi ho. Tou is tamanna ke poora karne tak agar wo maut ko napasand karta ho tou aur baat hai warna aam halaat mein maut usay pasand hi hoti hai.
  1. Aur Tesra insaan wo hai jo keh maut ko har dam yaad rakta hai aur kisi bhi lamhe ussay ghafil nahi hota – Aisa Shakhs Allah Ta’aala se jaldi mulaqat karne ki tamanna rakhta hai taake wo duniya ki pareshaaniyon se najaat paakar jald az jald nematon waale ghar mein jaa pohanchay.

    In teenon me se sabse behtar shakhs teesra hai, uske ba’ad dusra aur sabse badtar insaan pehla hai jo keh maut se mukammal taur par ghafil rehta hai.

Hazrat Abu Hurerah(رضي الله عنه) se riwayat hai keh Rasool Allah(ﷺ) ne irshad farmaaya:

 

أَکْثِرُوْا ذِکْرَ ہَاذِمِ اللَّذَّاتِ الْمَوْتَ،فَإِنَّہُ لَمْ یَذْکُرْہُ أَحَدٌ فِیْ ضَیْقٍ مِّنَ الْعَیْشِ إِلَّا وَسَّعَہُ عَلَیْہِ

“Lazzaton ko khatam kardenay waali cheez yani maut ko ziyada se ziyada yaad kiya karo, kyun keh jo shakhs  bhi usay tang haali mein yaad karta  hai Allah Ta’aala usay khush haal bana deta hai.”

[Shu’aib ul imaan; Sahih Ibn Hibban; Sahih Jamia Albani: 1211]

Aur Hazrat Abdullah bin umar(رضي الله عنه) bayan karte hain keh mein Rasool Allah(ﷺ) ke sath tha keh achaanak aik ansari aya, usne Nabi Kareem(ﷺ) ko salam kaha, phir kehne laga : Ae Allah ke Rasool! Mominon mein sabse afzal kaun hai?

    Aap(ﷺ) ne farmaya:

أَحْسَنُہُمْ أَخْلاَقًا))

“Inme jo sabse achay akhlaaq wala ho.”

Isne phir pocha : mominon mein sabse ziyada aqalmand kaun hai? Aap(ﷺ) ne farmaaya:

 

أَکْثَرُہُمْ لِلْمَوْتِ ذِکْرًا وَأَحْسَنُہُمْ لِمَا بَعْدَہُ اسْتِعْدَادًا،أُولٰئِکَ الْأکْیَاسُ)

“Inme jo sabse ziyada maut ko yaad karne wala ho aur jo maut ke baad aanay waale marahil ke liye sabse ziyada tayyari karne wala ho wohi log sabse ziyada aqalmand hain.

[Ibn Majah: 4259]

Ad Dukhan ka kehna hai keh jo  shakhs maut ko ziyada yaad karta hai uska teen tarha se ikraam kiya jaata hai: aik yeh keh usay jaldi tawba karne ki toufeeq miljaati hai- Dusra yeh keh jitna milta hai usay utne par qana’at naseeb hoti hai, Teesra yeh keh usay ibadat mein lazzat aur nishaat mehsoos hoti hai-

     Aur jo shakhs maut ko bhuladeta hai usay teen tarah se saza di jaati hai: Aik yeh ke usay jaldi tawba karne ki toufeeq nahi milti- Dusra yeh keh jitna aata hai uspar qana’at naseeb nahi hoti- Teesra yeh keh ibadat mein susti aur be dili mehsoos hoti hai.

Allah Rabbul izzat ka farmaan hai:

 

﴿ اَلَّذِیْ خَلَقَ الْمَوْتَ وَالْحَیَاۃَ لِیَبْلُوَکُمْ أَیُّکُمْ أَحْسَنُ عَمَلاً﴾

“((Allah Wo hai) jisne maut o hayat ko paida kiya taake tumhe azmaaye ke tum mein amal ke aitebaar se kaun ziyada acha hai.” 

[Surah Mulk: 68: 02]

Iske mutalliq As Saaadi ka kehna hai keh issay murad yeh hai keh tum mein kaun ziyada maut ko yaad karne wala, uski tayyari karne wala aur ussay darne wala hai.

     Jo cheez maut aur Akhirat ki yaad dilaati hai aur duniya se be raghbat kardeti hai wo hai qabristaan ki ziyarat.

     Hazrat Abu Hurerah(رضي الله عنه) bayan karte hai keh Rasool Allah(ﷺ) apni walidah ki qabr par gae tou aap khud bhi roey aur jo apke sath the aapne unhay bhi rulaya- Phir farmaaya:

 

اِسْتَأْذَنْتُ رَبِّیْ فِیْ أَنْ أَسْتَغْفِرَ لَہَا فَلَمْ یُؤْذَنْ لِیْ،وَاسْتَأْذَنْتُہُ فِیْ أَنْ أَزُوْرَ قَبْرَہَا فَأَذِنَ لِیْ،فَزُوْرُوْا الْقُبُوْرَ فَإِنَّہَا تُذَکِّرُ الْمَوْتَ))

“Main ne apne Rab se walidah ke liye Astaghfar ki ijazat talab ki lekin mjhe ijazat na mili- Phir main ne walidah ki qabr par aane ki ijazat talab ki tou ijazat milgae-Lehaza tum qabristaan ki ziyarat kiya karo kyunkeh ye (Qabren) maut ki yaad dilaati hain.”

[Sahih Muslim: 576]

        Isliye insaan ko gahe bagaahe qabristaan mein zaroor jana chaheye taake usay ibrat hasil ho aur wo apne anjaam ko yaad karke Raah-e-Rast par chal raha hai tou maut ko yaad karke isteqamat ke sath isi raah-e-rast par chalta rahe.”

REFERENCE:
BOOK: “ZAAD UL KHATEEB” JILD: 02
BY:  DR. MUHAMMAD ISHAQ ZAHID

Maut Se Jannat Tak Ka Safar – Class – 2, 11 Rabi Al Awwal 1442 – 28 Oct 2020

FREQUENT REMEMBRANCE OF DEATH

Death should thus be a constant reminder for us, and a means of controlling our desires and restraining our greed. Anas and Abi Hurayrah (رضى اللہ تعالى عنہما) reported that Allah’s Messenger(ﷺ) said:

أكثروا ذكر هاذم اللذات الموت، فإنه لم يذكره أحد في ضيق من العيش إلا وسعه عليه، ولا ذكره
في سعة إلا ضيقها عليه.

Frequently remember the destroyer of pleasures, death. None would remember it while in a tightness of living but it would expand it for him, and none would remember it while in an ease of living but it would tighten it for him? Remembering death maintains for a person a balanced view of life. He would not go to the extreme of despair in the face of afflictions, nor would he go to the extreme of arrogance and carelessness when favored by an easy life.

[Recorded by Ibn Hibban, al-Bayhaqi, and others. Verified to be authentic by al Albani in Irwd al-Ghalit no. 682]
Furthermore, when a person remembers death while performing an act of worship, he would be more likely to perfect that act. Anas (رضي الله عنه) reported that Allah’s Messenger(ﷺ)said:
أذكر الموت في صلاتك، فإن الرجل إذا ذكر الموت في صلاته الحري أن يحسن صلاته، وصل صلاة رجل لا يظن أن يصلي صلاة غيرها، وإياك وكل أمر يعتذر منه.»

“Remember death in your prayer. Verily, when a man remembers death in his prayer, he is apt to perfect his prayer. Pray the prayer of a man who does not expect to pray another prayer. And avoid every matter that would require an apology.”

Recorded by ad-Daylami (in Musnad u.l-Firdaws).’Verified to be hasan by al-Albani (as-Saheehah no. 2839).
 
 
REFERENCE: 
FUNERALS REGULATIONS & EXHORTATIONS
[Second Edition: MUHAMMAD MUSTAFA AL-JIBALY]
“COMPILED BY MONIS BEGUM”

 

 

موت کی یاد

برادرانِ اسلام ! موت کو ہر دم یاد رکھنا چاہئے اور کبھی اس سے غافل نہیں ہونا چاہئے ۔ اور ہر انسان کو اپنے ان رشتہ داروں اور دوستوں کے متعلق سوچنا چاہئے کہ جو کل تک دنیا میں اس کے ساتھ تھے اور آج مٹی کے ڈھیر تلے دب چکے ہیں ۔ بڑی حیرت ہوتی ہے اس شخص پر جو اپنے کندھوں پر کئی جنازے اٹھا چکا ہو ، اپنے ہاتھوں کئی فوت شدگان کو دفن کر چکا ہو ، اپنی آنکھوں سے قبرستان کے کئی خوفناک مناظر دیکھ چکا ہو ، اپنے کانوں سے کئی لوگوں کی اچانک موت کے واقعات سن چکا ہو اور پھر بھی اپنی موت سے غافل ہو !

امام ابن قدامہ نے موت کی یاد کے حوالے سے لوگوں کو تین قسموں میں تقسیم کیا ہے :

ایک وہ انسان ہے جو کہ دنیاوی کاموں میں بری طرح مشغول رہتا ہے اور دنیا کی طلب میں دن رات ایک کردیتا ہے ۔ ایسا شخص موت سے غافل رہتا ہے اور اگر کبھی اسے موت یاد بھی آتی ہے تو وہ اس سے نفرت کرتا ہے ۔

دوسرا وہ انسان ہے جو کہ موت کو زیادہ سے زیادہ یاد کرتا ہے اور موت کو یاد کرکے اس کے دل میں اللہ تعالیٰ کا خوف پیدا ہو جاتا ہے ۔ اور اللہ تعالیٰ کے خوف کی وجہ سے وہ کثرت سے توبہ کرتا رہتا ہے ۔ ایسا شخص موت سے محبت کرنے والا ہوتا ہے اور اگر اس کے دل میں کبھی موت کو ناپسند کرنے کا خیال آتا بھی ہے تو وہ محض اس لئے ہوتا ہے کہ وہ اپنے آپ کو گناہ گار تصور کرتا ہے اور مزید نیکیاں کمانے کا خواہشمند ہوتا ہے ۔ اور اس کی تمنا یہ ہوتی ہے کہ اس کی موت اس حالت میں آئے کہ اللہ تعالیٰ اس سے راضی ہو ۔ تو اس تمنا کے پورا ہونے تک اگر وہ موت کو ناپسند کرتا ہو تو اور بات ہے ورنہ عام حالات میں موت اسے پسند ہی ہوتی ہے۔

اور تیسرا انسان وہ ہے جو کہ موت کو ہر دم یاد رکھتا ہے اور کسی بھی لمحے اس سے غافل نہیں ہوتا ۔ ایسا شخص اللہ تعالیٰ سے جلد ملاقات کرنے کا متمنی ہوتا ہے تاکہ وہ دنیا کی پریشانیوں سے نجات پاکر جلد از جلد نعمتوں والے گھر میں جا پہنچے ۔

ان تینوں میں سے سب سے بہتر شخص تیسرا ہے ، اس کے بعد دوسرا اور سب سے بد تر انسان پہلا ہے جو کہ موت سے مکمل طور پر غافل رہتا ہے ۔

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا :

(( أَکْثِرُوْا ذِکْرَ ہَاذِمِ اللَّذَّاتِ الْمَوْتَ،فَإِنَّہُ لَمْ یَذْکُرْہُ أَحَدٌ فِیْ ضَیْقٍ مِّنَ الْعَیْشِ إِلَّا وَسَّعَہُ عَلَیْہِ))

’’ لذتوں کو ختم کردینے والی چیز یعنی موت کو زیادہ سے زیادہ یاد کیا کرو ، کیونکہ جو شخص بھی اسے تنگ حالی میں یاد کرتا ہے اللہ تعالیٰ اسے خوشحال بنادیتا ہے ۔ ‘‘

[شعب الإیمان،صحیح ابن حبان۔ صحیح الجامع للألبانی:1211 ]

اور حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ تھا کہ اچانک ایک انصاری آیا ، اس نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو سلام کہا ، پھر کہنے لگا : اے اللہ کے رسول ! مومنوں میں سب سے افضل کون ہے ؟

آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :

(( أَحْسَنُہُمْ أَخْلاَقًا))

’’ ان میں جو سب سے اچھے اخلاق والا ہو ۔‘‘

اس نے پھر پوچھا : مومنوں میں سب سے زیادہ عقلمند کون ہے ؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :

(( أَکْثَرُہُمْ لِلْمَوْتِ ذِکْرًا وَأَحْسَنُہُمْ لِمَا بَعْدَہُ اسْتِعْدَادًا،أُولٰئِکَ الْأکْیَاسُ))

’’ ان میں جو سب سے زیادہ موت کویاد کرنے والا ہواور جو موت کے بعد آنے والے مراحل کیلئے سب سے زیادہ تیاری کرنے والا ہو وہی لوگ زیادہ عقلمند ہیں ۔ ‘‘

[سنن ابن ماجہ :4259۔ وصححہ الألبانی]

الدقاق کا کہنا ہے کہ جو شخص موت کو زیادہ یاد کرتا ہے اس کا تین طرح سے اکرام کیا جاتا ہے : ایک یہ کہ اسے جلدی توبہ کرنے کی توفیق مل جاتی ہے ۔ دوسرا یہ کہ جتنا ملتا ہے اسے اتنے پر قناعت نصیب ہوتی ہے ۔ اور تیسرا یہ کہ اسے عبادت میں لذت اور نشاط محسوس ہوتی ہے ۔ اور جو شخص موت کو بھلا دیتا ہے اسے تین طرح سے سزا دی جاتی ہے : ایک یہ کہ اسے جلدی توبہ کرنے کی توفیق نہیں ملتی ۔ دوسرا یہ کہ جتنا آتا ہے اس پر قناعت نصیب نہیں ہوتی ۔ اور تیسرا یہ کہ عبادت میں سستی اور بے دلی محسوس ہوتی ہے ۔

اور اللہ رب العزت کے اس فرمان :

﴿ اَلَّذِیْ خَلَقَ الْمَوْتَ وَالْحَیَاۃَ لِیَبْلُوَکُمْ أَیُّکُمْ أَحْسَنُ عَمَلاً﴾ 

’’(اللہ وہ ہے )جس نے موت وحیات کو پیدا کیا تاکہ تمھیں آزمائے کہ تم میں عمل کے اعتبار سے کون زیادہ اچھا ہے۔ ‘‘

الملک67 :2

کے متعلق السدی کا کہنا ہے کہ اس سے مراد یہ ہے کہ تم میں کون زیادہ موت کو یاد کرنے والا ،اس کی تیاری کرنے والا اور اس سے ڈرنے والا ہے۔

جو چیز موت اور آخرت کی یاد دلاتی ہے اور دنیا سے بے رغبت کردیتی ہے وہ ہے قبرستان کی زیارت۔

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اپنی والدہ کی قبر پر گئے تو آپ خود بھی روئے اور جو آپ کے ساتھ تھے آپ نے انھیں بھی رلایا ۔ پھر فرمایا:

(( اِسْتَأْذَنْتُ رَبِّیْ فِیْ أَنْ أَسْتَغْفِرَ لَہَا فَلَمْ یُؤْذَنْ لِیْ،وَاسْتَأْذَنْتُہُ فِیْ أَنْ أَزُوْرَ قَبْرَہَا فَأَذِنَ لِیْ،فَزُوْرُوْا الْقُبُوْرَ فَإِنَّہَا تُذَکِّرُ الْمَوْتَ))

’’ میں نے اپنے رب سے والدہ کیلئے استغفار کی اجازت طلب کی لیکن مجھے اجازت نہیں ملی ۔ پھر میں نے والدہ کی قبر پر آنے کی اجازت طلب کی تو اجازت مل گئی ۔ لہٰذا تم قبرستان کی زیارت کیا کرو کیونکہ یہ ( قبریں ) موت کی یاد دلاتی ہیں ۔ ‘‘

صحیح مسلم،الجنائز باب استئذان النبی صلي الله عليه وسلم ربہ عز وجل فی زیارۃ قبر أمہ:976

اس لئے انسان کو گاہے بگاہے قبرستان میں ضرور جانا چاہئے تاکہ اسے عبرت حاصل ہو اور وہ اپنے انجام کو یاد کرکے راہِ راست پر آجائے ۔ یا اگر وہ پہلے ہی راہِ راست پر چل رہا ہے تو موت کو یاد کرکے استقامت کے ساتھ اسی راہِ راست پر چلتا رہے ۔

Table of Contents