Sections
< All Topics
Print

03. Hazrat Hazrat Urwah bin Zubair (رحمہ اللہ تعالی)

Hazrat Urwah bin Zubair (رحمہ اللہ تعالی)

Jisey duniya me jannati shakhs dekhne ka shauq ho who Urwah bin Zubair (رحمہ اللہ) ko dekh le.

(Abdul Malik bin Marwaan)

Aftab apni sunehri rupehli kirnon ko Baitullah se samet’tey huye apne Rukh-e-Zeba ko Pardah-e-Ghuroob mein chhupa kar shabnam se labrez hawa ke khanak jhonkon ko khanah-e-Khuda ke pakeezah sehan mein Raqsan-o-Khuramaan rehne ka Izen-e-Aam de chukatha.

Is suhani wa dilfareib fizaa mein Sahabah karaam (رضی اللہ عنھم) aur tabi’een zee waqarاللہ اکبر aur لا الہ الا اللہ ke dilawez-o-purkaif naghmon se aur baargaah-e-Eezdi mein dilguzaaz aahon, Siskiyon aur pursoz duaon se Baitullahkifizaa ko mu’atar kar rahe thay.

Log Haibat-o-Jalal ke Mazhar-o-Istaqlaal ke paikar BaitulAllah ke irdgird giroh dar giroh halqey bana kar baith gaye. Aur apni aankhon ko khanah-e-khuda ki ziyarat se khairah karne lage. Aur sath hi mohabbaat bhare andaaz mein aik doosray se Mehw-e-Guftagu bhi thay, Rukne-e-Yamani ke qareeb khoobru, Khush shakal, Ujly, safaid aur saaf suthrey kapde pehne huye chaar (4) kadiyal jawan baithay batein kar rahe thay. Yun dikhayi deta tha ke in ka talluq kisi moazzaz gharane aur aali martabaat khandan se hai, Daryaft karne par pata chala ke wo Abdullah bin zubair (رحمہ اللہ), Musab bn zubair (رحمہ اللہ), Urwah bin zubair (رحمہ اللہ) aur Abdul malik bin marwan hain.

In chaar(4) naik fitrat Naujawanon ke darmiyaan dheeme gudaaz aur naram lehje mein Tabadlah-e-Khayal hone laga. Un mein se aik ne kaha: Aaj hum mein se har aik Aallah rabbul izzat ki baargah se apni dilpasand cheez ka mutaalba kare, ye baat sun kar wo khayalaat ki ghaibi duniya mein aur tamannaon ke Sarsabz-o-Shadab khayaali baghaat mein tawaf karne lage aur phir thori der baad in mein se aik Naujawan Abdullah bin Zubair (رحمہ اللہ) apne sar ko jhatak kar chaukas hua aur kehne laga: Meri dili khawahish hai ke main Hijaaz ka hukmaraan banun aur khilafat ka taaj mere sar par ho.

Unke bhai Musab bin Zubair (رحمہ اللہ) ne kaha: Meri dili tamanna hai ke main Koofa aur Basrah ka hukmran banun aur koi bhi mera mukhalif na ho.

Teesray Naujawan Abdul Malik bin Marwaan ne kaha: Agar tum dono itne hi pur iktafa kar baithay ho to tumhen mubarak, Suno meri dili khwahish hai ke main poori duniya ka hukmraan banun aur Hazrat Ameer Muawiyah ke baad khilafat mujhe mile lekin Hazrat Urwah bin Zubair (رحمہ اللہ) khamus hi baithe rahe,  usne kuch na kaha: Teenon Naujawan us ki taraf lapke,  Kehne lage, Khamus kyun baithe ho? Aap kuch bolte nahi? Kya irade hain? Kuch to dil ki baat zahir karo.

Usne kaha: Jo kuch tum ne manga wo tumhen mubarak ho, Meri dili tamanna ye hai ke main Aalim ba amal banun, log mujh se Qur’an-o-Hadees ka ilm seekhein aur mujh se deeni ahkamaat maloom karen aur phir aakhirat, Allah  ki raza aur Jannat ko mera muqaddar bana diya jaye.

Din guzarte gaye, Gardish-e-Zamanah se wo waqt bhi aa gaya ke hYazeed bin  Muawiyah (رحمہ اللہ) ki wafat ke baad Hijaaz,  Misr, Yaman, Khorasan aur Iraq par hukoomat karne ke liye khilafat ka taaj Hazrat Abdullah bin Zubair  (رحمہ اللہ) ke sar par rakha gaya. Phir Chashm-e-Falak ne wo dil kharash manzar bhi dekha ke inhen Baitullah keqareeb us jagah se chand qadam ke faasle par qatal kar diya gaya jahan unhon ne khalifah banne ki tamanna ka izhaar kiya tha. Hazrat Musab bin Zubair ko un ke bhai Hazrat Abdullah bin Zubair ne Iraq ka governor muqarrar kar diya tha.

Aur phir unhen bhi khilafat ke difaa ki aad mein qatal kardiya gaya.

Phir Abdul Malik bin Marwaan apne baap ki wafat ke baad khalifah bane.

Hazrat Abdullah bin Zubair (رحمہ اللہ) aur unke bhai Musab bin Zubair (رحمہ اللہ) ke qatal ke baad tamam musalamanon ne Abdul Malik ki khilafat ko bakhushi tasleem kar liya.

Phir who apne daur mein duniya bhar ke hukmranon se zyadah ahmiyat ikhteyar kar gaye aur unki hukoomat bhi sab se zyadah wasee-o-Areez Ilaqey par thi. Is tarah teenon Jawanon ki tamannayein poori huin lekin Hazrat Urwah bin Zubair ki tamanna ka kya bana? Aiyyie ab hum un ke naseehat aamoz dastan ka aghaaz kartehain.

Harzat Urwah bin Zubair (رحمہ اللہ),  Hazrat Farooq-e-Aazam ( (رضی اللہ عنہ ki wafat se aik saal pahle aik Aali shaan aur moazzaz gharane mein paida huye,  un ke waalid mohtaram Hazrat Zubair bin awaam (رضی اللہ عنہ) Hawari-e-Rasool moazzam ﷺ thay aur unhen islam ki sarbulandi ke liye sab se pahle talwar uthane ka aizaaz hasil hua aur ye un das (10) Sahabah  karaam mein se thay jinhen zindagi mein jannat ki basharat di gayi. Unki walidah Maajdah Hazrat Siddique-e-Akbar (رضی اللہ عنہ) ki beti Hazrat Asmaa thin jo Zaatun’Nataaqain ke laqab se mashhoor huin, unke nana Hazrat Siddique-e-Akbar  (رضی اللہ عنہ) thay jinhen khalifah-e-rasool علیہ السلام aur Rafeeq-e-Ghaar hone ka aizaaz hasil hai.

Unki dadi Hazrat Safiyah bint Abdul mutallib thin jo Rasool-e-Aqdas ﷺ ki phuphi thin jab unki khala Hazrat Ayesha (رضی اللہ عنہا) ki wafat hui. Unhen dafan karne ka waqt aaya to pehle ye qabar mein utre, Lahad ko apne hathon se durust kiya.

Kya is se badh kar koi Hasb-o-Nasab hai jo Hazrat Urwah(رحمہ اللہ) ko mayassar aaya? Kya is se badh kar bhi koi Izz-o-Sharf hai jo unhen hasil hua.

Gharz ye ke Urwah bin Zubair (رحمہ اللہ) ne Baitullah ke paas baith kar jis dili tamana ka izhar kiya tha wo unhen mayassa raayi. Ye ilm hasil karne ki taraf mutawajjah huye,  Ab wo jalilulqadar Sahabah karaam (رضی اللہ عنہم) jo us waqt zinda thay unhen ghaneemat samajhte huye unke gharon ke chakkar lagane lage, Unke peechy namazen padhte, Unki majlison mein baithte un se Kitaab-o-Sunnat ka ilm hasil karte,  Unho ne Hazrat Abdul Rahman bin Auf رضى الله عنه,  Hazrat Ali رضى الله عنه,  Hazrat Zaid bin Sabit رضى الله عنه,  Hazrat Abu Ayyub Ansari رضى الله عنه,  Hazrat Sayeed bin Zaid رضى الله عنه,  Hazrat Usama bin Zaid رضى الله عنه,  Hazrat Abu Hurairah رضى الله عنه,  Hazrat Abdullah bin Abbas رضى الله عنه,  Hazrat Nomaan bin Basheer رضى الله عنه aur apni khala Hazrat Ayesha رضى الله عنها se Qur’an-o-Hadith ka ilm hasil kiya aur unke hawale se mutaddid ahadees ki rawayat ka aizaaz hasil kiya yahan tak ke Madina munawwarah ke un saat (7) fuqaha mein in ka shumar hone laga jinse log deeni masaail daryaft karne ke liye rujoo kiya karte thay.

Aur hukmraan riaaya se mutalliq deeni aur duniyawi umoor niptaane ke liye unse ta’awun liya karte thay.

Jab Hazrat Umar bin Abdul azeez (رحمہ اللہ) ko Waleed bin Abdul Malik ne Madina ka governor bana kar bheja to logon ne inhen khushamdeed kaha aur unka walehaanah istaqbaal kiya. Namaz-e-Zuhar ada karne ke baad fuqaha-e-Madina ko mad’oo kiya. Un mein se Sar-e-Fehrist Hazrat Urwah bin Zubair (رحمہ اللہ) thay  jab wo tashreef lay to Umar Abdul Azeez (رحمہ اللہ) ny unhen khushaamdeed kaha aur badi Izzat-o-Ikraam se unhen apne sath bithaya phir Allah  ta’ala ki Hamd-o-Sana ke baad irshaad farmaya: Maine jis kaam ke liye tumhen apne paas bulaya yaqeenan us par tumhen Ajr-o-Sawab milega, Main ummeed rakhta hun ke tum Haq-o-Sadaqat mein mere madadgaar banoge, Main chahta hun ke har kaam ap ke mashware se paaya-e-Takmeel ko ponchaoun, Agar aap dekhenkeh koi kisi par zyadati kar raha hai ya apko ye ittlah milti hai ke kisi hukoomatke numaindey ne kisi par koi zulm rawa rakha hai to baraye meherbani mujhe zarur batayen. Is silsile mein mujhe apki madad ki zarurat hai, Ummeed hai aap zarur mera sath denge.

★ Hazrat Urwah bin Zubair (رحمہ اللہ) Ilm-o-Amal ke paika rthay. Mausam-e-Garma mein kasrat se rozy rakhte,  shab zindah daar aur zikar-e-Ilaahi se ratbullisaan rehte. Ilawah azeen kitaab-e-Ilaahi Qur’an  majeed ke sath un ki dosti misaali thi. Aksar-o-Beishtar uski tilawat mein munhamik rehte. Rozanah Qur’an majeed ke chauthayi hisse ki tilawat dekh kar kiya karte thay. Phir raat ke waqt yahi hissah nawafil mein zubani padhte, Anfawan-e-Shabaab se wafat tak unka yhi mamool raha sirf aik martabah naagha hua. Dilkharash-o-Ibratnaak waqiya sun kar apke rongtey khadey ho jayenge.

★ Hazrat Urwah bin Zubair (رحمہ اللہ) namaz ko apne dil ka sukoon aur apni ankhon ki thandak khayaal karte thay, Namaz ki halat mein yun maloom hota ke zameen par unhe jannat naseeb ho gayi hai lihaaza namaz khoob dil laga kar padhte, Us ka tamam shaa’ir intehaayi itminaan-o-Tasalli se ada karte aur har rakat mumkin had tak taweel karte, Unhone aik martabah kisi shakhs ko jaldi namaz padhte huye dekha to use apne pas bulaya aur mohabbaat bhare andaz mein farmaya: Bete kya tujhe koi aisi zarurat lahaq nahi Jo RabTa’ala ke darbar mein pesh karo?

Rabb-e-Kainat ki qasam! main to Allah ta’ala se har cheez mangta hun aur lajaajat se mangta hun yahan tak ke namak bhi.

Hazrat Urwah bin Zubair (رحمہ اللہ) nihaayat naram mijaaz, Khush akhlaaq aur bohot badey sakhi thay. Aur unka Madina`munawwarah mein sab se bada baagh tha, jis mein meethay pani ke chashmey, Ghaney saaya dar aur phaldar darakht thay, Darakhton .ki hifazat ke liye saal bhar us baagh ke ird gird deewar banaye rakhte taake maweshi aur bachhey nuqsan na pohchayen, Jab phal pak kar taiyyar ho jaty, Nigahein us ki taraf uthtin aur dil lapakte to ye apne baagh ki deewar mukhtalif maqamat se giradete, Taake aasani se log baagh mein daakhil ho kar aur paka hua lazeez phal kha kar dil shaad karein, Log aate jate baagh mein dakhil hote aur jo phal unhen pasand aata wo khate aur jaate huye jitna chahte apne humraah ghar le jate, Hazrat Urwah bin Zubair (رحمہ اللہ) jab bhi apne baagh mein dakhil hote to Qur’an majeed ki ye aayat baar baar padhte:

ولو لا اذ دخلت جنتک قلت ما شإ اللہ لا قوة الا باللہ

Waleed bin Abdul Malik ke daur-e-Hukoomat mein Hazrat Urwah bin Zubair (رحمہ اللہ) ko aik aisi aazmaish se guzarna pada ke jis mein koi aisi azeem hasti hi saabit qadam reh sakti hai jis ka dil Imaan-o-Yaqeen se labraiz ho. Khalifat ul muslimeen Waleed bin Abdul Malik ne badi mohabbaat aur ishteyaq se unhen daar ul khilafah Damishq mein mulaqat ke liye dawat di. Unhone basad-e-Shauq dawat qubool ki, Apne bade bete ko hamraah liya aur Damishq rawanah ho gaye, Jab wahan pohche to khalifah ne waleha anahandaz mein unka istaqbal kiya aur unhen shahi mehman ka aizaaz diya gaya.

Phir wahi hua jo Allah ta’ala ko manzoor tha. Basa auqaat hawayen mukhalif simat chalne lagti hain. Hua ye ke Hazrat Urwah bin Zubair (رحمہ اللہ) ka beta sawari ke shauq mein shahi Astabal mein dakhil hua, Joon hi wo aik munhzor ghodey ke qareeb aaya to usne zor se laat maari jo usky seene mein lagi aur jaan lewa saabit hui, Phir gamon se nidhaal baap jab apne laadle bete ki qabar par mitti dal raha tha to is dauran unke paon mein achanak shadeed dard hone laga, Paon mein waram paida hua aur wo badi taizi se pindli ki taraf phailne laga, Halat tashweesh naak hadd tak bigad gayi, Khalifat ul muslimeen Waleed bin Abdul Malik pareshan ho gaye, Fauri taur par shahi Itbaa (اطباء) ko kaha ke ilaaj par poori tawajjah di jaye aur is mein aik lamhe ki ghaflat bhi na barti jaye. Muaaeney ke baad tamam Itbaa (اطباء) ne mutafiqqah faislah diya ke taang kaat di jaye warnah mareez ki maut ka sabab ban jayega. Jab taang kaatne ke liye aik maahir Jarrah apne auzaar le kar hazir hua to tabeeb ne Hazrat Urwah (رحمہ اللہ) se kaha hum apko thodi si sharab pilayenge take taang katne ki zyada takleef mehsoos na ho, Aap ne ye baat sun kar farmaya: Aisa qatt’an nahi ho sakta, main haram ke zariye se apni aafiyat ki ummeed nahi rakhta.

Tabeeb ne kaha to phir koi nasha awarc heez apko pila dete hain warna takleef na qabil-e-Bardasht hogi. Aap ne farmaya: Main nahi chahta ke mere jism ka koi uzuo (عضو) is halat mein kaata jaye ke mujhe dard ka koi ehsaas bhi na ho, Aap baghair koi nasha aawar cheez diye ise kaatein, Is dard mein bhi in sha Aallah mujhe sawab milega.

Jab jarrah taang katney ke liye tayyar hua to bohat se aadmi Hazrat Urwah (رحمہ اللہ) ke qareeb aaye. Aap ne poocha: Ye jamghata kya hai? To aapko bataya gaya keh in afraad ko is liye bulaya gaya hai keh jab aapki tang katne lage to ye mazbooti se apko thaame rakhenge ho sakta hai aap shadeed dard se sambhal na saken aur ilaj mein rukawat paida ho jaye jo apke liye nuqsaan deh ho, Ye sun kar aapne farmaya: In tamam afraad ko peeche hata den inki koi zarurat nahi. Mere liye is andoha naak waqt mein sirf Allah ki yaad aur uski Hamd-o-Sana aur Tasbeeh-o-Taqdees ka naghmah alaapna hi kafi hoga, Bismillah padh kar aap apna kaam shuru karen. Meri fikar na karen mera Allah  Haami-o-Naasir hoga, Jarraah ne pahle qainchi ke sath taang ka gosht kata aur phir haddi par aari chalayi, Idhar hazrat Urwah (رحمہ اللہ) ne buland awaz se لا الہ الا اللہ اللہ اکبر padhna shuru kardiya, Jarraah apne kam mein mashghool raha aur Hazrat Urwah (رحمہ اللہ) Zikr-e-Ilahi mein mahw rahey. Taang kat gayi aur jab khoon band karne ke liye khaulte huye tail mein taang ko duboya gaya to aap behosh ho gaye, Unki poori zindagi mein yahi wo mauqaha ijis mein Qur’an  majeed ki manzil padhne mein naghah hua.

Jab Hazrat Urwah bin Zubair (رحمہ اللہ) sehatyaab ho gaye, Usey pakar kar ghaur se dekhne lage aur ise apne hath se ultaane paltaane lage. Phir dard bhare lehjay mein farmaya: Aye taang gawah rehna, mujhe Allah  ki qasam jis ne tujhy paida kiya aur tery zariye chal kar main masajid mein jata raha wo khoob achi tarah jaanta hai, Main kabhi tujhe kisi haram kaam ki taraf chala kar nhi le gaya phir Banu hazeenah ke aik maaroof shayar Ma’aan bin Aus ke barjastah ye ashaar padhe:

لعمرک ما اھویت کفی لریبہ

ولا حملتنی نحو فاحشہ رجلی

ولا قاد نی سمعی ولا بصری لما

ولا دلنی راٸی علیھا ولا عقلی

و اعلم انی لم تصبی مصیبہ

من الدھر الا قد اصابت فتی قبلی

Khalifat ul muslimeen Waleed bin Abdul Malik ko apne moazzaz mehman ki musibaat ko dekh kar bohat dili ranj hua ke chand dino mein ye apne ladley Naujawan bete aur apni aik taang se mahroom ho gaye. Aik din ye mehman khanah mein unhen dekhne ke liye jane lage to achanak Banu Abas qabeele ka aik wafd mulaqat ke liye pohonch gaya, Aap ne usey andar bula liya. Kya dekhte hain ke wafd mein aik Nabeena shakhs bhi shamil hai. Khalifah ne usse poocha ke apki nazar ko kya hua? Usne bataya: Ameer ul momineen! Qabeela Banu Abas mein sab se zyadah Maal-o-Manal aur Ahl-o-Ayaal mere paas tha. Main apna sab kuch humraah le kar apne qabeele ke ki ilaqey mein gaya aur aik nashebi jagah padao kiya, Raat ke waqt achanak haulnaak sailaab aay aaur wo sab kuch baha le gaya. Sirf aik nau-molood bacha aur aik ount mere hath lage. Ount munhzor tha. Wo rassi chhuda kar bhag nikla, main bachhey ko zameen par litaa kar ount pakadne ke liye iske peeche bhaga to mujhe bachhey ke cheekhne ki awaza ayi, Mud kar dekha to ye dehshat naak manzar dikhai diya ke aik khoon khaar bhediya bachhe ke sar ko apne khooni munh mein dabaye khada hai aur bachha zor se chilla raha hai, main usey chhudane ke liye sarpat us ki taraf dauda lekin mere wahan pohachne se pahle wo mere Lakht-e-Jigar ka sar chaba chuka tha.

Jab main usey wahin chhod kar ount pakadne ke liye bhaaga, Abhi ount ke qareeb pohcha hi tha ke usne zor se mujhe laat mari jo meri peshaani par lagi aur uski haddi toot gayi aur nazar jati rahi. To is tarah main aik hi raat mein Ahl-o-Ayaal, Maal-o-Manaal aur basaarat jaisi azeem nemat se mehroom ho gaya.

Khalifat ul muslimeen Waleed bin Abdul milk ne ye dard bhari dastaan sun kar aah bhari aur apne darbaan se kaha: Isey hamarey moazzaz mehmaan Urwah bin Zubair (رحمہ اللہ) ke paas le jaao taake wo inki Dastaan-e-Gham sun kar andazah lagayen ke un se bhi badh kar is duniya mein dukhi aur musibaat zadah insan maujood hain.

Jab Hazrat Urwah bin Zubair (رحمہ اللہ) ko shahi sawari par poore Aizaaz-o-Ikraam ke sath Madina munawwarah le jaya gaya, Aapne apne ghar mein daakhil hone se pahle Ahl-e-Khanah ko mukhatib ho kar kaha: Jo tum dekh rahe ho is se ghabrana nahi, Allah  ta’ala ne mujhe char (4) bete ata kiye, Aik usne le liya teen (3) abhi bhi baaqi hain. Uska shukar hai. Allah ne mujhe chaar aazaa ata kiye aik usne le liya teen (3) abhi bhi baaqi hain, Uska shukar hai, W`Allah! Usne thoda liya hai zyada mere paas baqi rehne diya hai. Usne zindagi mein sirf aik hi martaba aazmaish main daala hai aur beshumara afaat se mujhe bacha yahai.

Jab Ahle Madina ko apne har dil azeez Imam aur Jayyad Aalim-e-Deen, Faqeed ul misaal Muhaddis aur Qaabil-e-Rashk Faqeeh ki aamad ka pata chala to joq dar joq unki ziyarat ke liye hazir huye. Sab ne bete ki taaziyat ki aur unhen taang ki mehroomi par dilasa diya. Hazireen mein sab se behtreen taaziyati kalmaat Ibrahim bin Muhammad bin Talha kethay, Usne mulaqat ke waqt dard bhare andaz mein kaha:

Janab-e-Man! Aap ke jism ka aik hissah aur apki aulad mein se aik beta aap se pehle jannat mein pohonch chuke hain aur baqi maandah bhi in sha Aallah jannat mein jayen ge, Lekin Allah ta’ala ne apki janib se hamare liye wo cheez baqi rehne di jis ke hum mohtaj thay, Aur is se hum kabhi bhi mustaghni nahi ho sakte thay aur wo hai apka Ilm, Fiqh aur jachi tuli (جچی تلی) hui raye. Allah  ta’ala apko aur hamein in qeemti ausaaf se fayeda pohchaye. Allah apko Ajr-o-Sawab dene par qadir hai aur apke Husn-e-Hisaab ka zaamin hai.

Hazrat Urwah bin Zubair (رحمہ اللہ) zindagi bhar musalmanon ke liye Minarah-e-Hidayat, Falah-o-Behbood ke Sang-e-Meel aur Khair-o-Bhalai ke daayi rahe. Unhno ne apni aulad ki tarbiyat ka khasoosi taur par aur Abnaaye Islam ki tarbiyat ka umoomi taur par ehtamaam kiya aur unhe Pand-o-Nasaayeh karne mein koi daqeeqah-e-Faro`guzaasht nahi kiya karte thay. Yahi wajah thi ke unhone apne beton ko ilm hasil karne ki baar bar targheeb dilayi.

Aap aksar ye kaha karte thay: Mere pyare beton, ilm hasil karo aur uska haq ada karo agar tum apni qaum mein kamzor bhi huye to Allah ta’ala ilm ki barkat se tumhen mumtaz bana dega. Phir aah bhar kar kehne lage. Haaye afsos! Kya duniya mein jahil se badh kar koi badbakht hoga! Hargiz nahi.

Wo apni aulad ko is baat ki talqeen kiya karte thay keh Allah ki raah mein sadqah is tarah diya karo jis tarah hadiya ya tohfa kisi azeez ko pesh kiya jata hai.

Mere pyare beton kabhi bhi Raah-e-Khuda mein koi aisi cheez Bataur-e-Sadqah na dena jo tum apni qaum ke kisi azeez ko dete huye sharmao.

Allah to badi izzat, Shaan-o-Shaukat aur Jaah-o-Jalal wala hai, Uski azmaton ka taqazah bhi yahi hai ke jo cheez bhi uske naam par di jaye, Who bhi Qabil-e-Qadar, Dilruba, pasandidah aur har lihaz se umdah aur deedah`zaib ho.

 ★ Wo apne beton ki raahnumayi-o-Tarbiat muashrey mein basne wale logon ki misaalein de de kar kiya karte thay aur in mein Qabil-e-Jauhar ke ausaaf apnaney ki talqeen kiya karte thay. Wo aksar ye farmaya karte:

Mere pyare beton! Jab kisi shakhs ko achha kaam karte dekho to tum us se Khair-o-Bhalayi ki hi ummeed rakha karo agarcheh wo shakhs logon ki nazron mein bura hi kyun na ho.

Kyun ke usse mazeed achhe kamon ki tawaqqo rakhi ja sakti hai aur jis shakhs ko bura kaam karte dekho us se ijtanaab karo agrcheh wo logon ki nazar mein achha admi kyun na ho. Kyun ke usse kisi waqt bhi koi aur burayi sarzard ho sakti hai.

Mere pyare beton! Khoob achhi tarah yeh baat dilnasheen kar lo, kyun ke aik neki mazeed bohat si naikiyun ka pesh khaimah saabit hoti hai aur aik burayi mazeed kayi aik buraiyun ko janam dene ka bayes banti hai.

Who apne beton ko Tawaazo, Inkesaari, Husn-e-Sulook, Khush guftari aur khandah peshani se rehne ki talqeen kiya karte thay wo ye bhi farmaya karte:

Mere beton: Hikmat-o-Danayi ke ziman mein ye baat tay shudah hai jis ki baat mein mithaas ho, Chehry par muskurahat ki har dam chamak ho, Woh logon mein us shakhs se zyadah pasand kiya jata hai jo in par be dareigh maal kharch karta rehta hai, Jab dekhte ke log Aish-o-Ishrat ki taraf maayel ho rahe hain, Aur Naaz-o-Na’aam ke dildah ho chuke hain to inhen Shah-e-Umam Sultan-e-Madina ﷺ ki saadah aur Masaaib-o-Mushkilat se bharpoor zindagi yaad dilate, Madina munawwarah mein rehne wale aik maaroof Taba’I Janab Muhammad bin Munkadir bayaan karte hain ke Hazrat Urwah bin Zubair (رحمہ اللہ) mujhe mile unhone mera hath pakda aur farmaya:

Aye Abu Abdullah!

Maine kaha: ji!

Farmaya: Main aik dafa amma Ayesha رضی اللہ عنھا ki Khidmat-e-Aqdas mein hazir hua. Unho ne mujhe dekh kar farmaya: Beta! Maine kaha ji amma huzoor!

Farmaya: Allah ki qasam Shah-e-Umam Sultan-e-Madina ﷺ ke ghar chalees chalees (40 40) raatein aag nahi jalti thi, Na charagh raushan hota aur na choolha jalta, Main ny adab se arz kiya: Amma huzoor! to phir kis tarah apka guzara hua karta tha?

Farmaya: Bas khajoor aur pani se ham guzara kiya karte thay.

 ★ Hazrat Urwah bin Zubair (رحمہ اللہ) ne zindagi ki ikhattar (71) baharein dekhin jo Allah ta’ala ke Fazl-o-Karam se Khair-o-Barkat, Aman-o-Aashti aur Neki-o-Bhalayi se bharpoor thin. Aap zindagi bhar taqwa ka zareen taaj Zeb-e-Sar kiye rahe, Jab akhiri waqt aaya to apka rozatha. Ahl-e-Khanah ne rozah iftaar karne ke liye kaha lekin aap na maane.

Apki dili khuwahish thi keh main rozah Hauz-e-Kausar ke pani se sheeshe ke jannati bartan mein Hoor`Ayn ke hath se le kar iftaar karun. Unki tamanna poori hui.

Allah us peh raazi aur woha pne Allah peh raazi.

Hazrat Urwah bin Zubair ky Mufassal Halat-e-Zindagi maloom kanry ky liy darj zeel kitabun ka muta`alah karin:

1: Al Tabaqat ul Kubra Ibe-e-Sasd                      1/406, 2/382-387, 3/100, 4/167, 5/334, 8/102, 2/176
2: Hilyat ul Awliyaa Abu Nuaem Asfahani       2/176
3: Sifat ul Safwah Ibn-e-Jawzi                 2/87
4: Wafayat ul Aayan Ibn-e-Khalkan        3/255
5: Ansab ul Ashraf Allamah Bilazari  dikhiy fahrist
6: Jamharat-o-Ansab-e-Aarab Ibn-e-Hazam   dikhiy fahrist

REFERENCE:
Book: “Hayat-e-Taba’een kay Darakhsha pahelo”
Taleef :  Dr. Abdur Rahman Rafat Al- Pasha.
Urdu Translation : By Professor Mehmood Ghaznofer

 

حضرت عروہ بن زبیر(رحمہ اللہ تعالی)


جسے دنیا میں
جتنی شخص دیکھنے کا شوق ہو وہ عروہ بن زبیر رضی اللہ عنہا کو دیکھ لے –

(عبدالملک بن مروان)

 

آفتاب اپنی سنہری رو پہلی کرنوں کو بیت اللہ سے سمیٹتے ہوئے اپنے رخ زیبا کو پردہ غروب میں چھپا کر شبنم سے لبریز ہوا کے خنک جھونکوں کو خانہ خدا کے پاکیزہ صحن میں رقصاں و خراماں رہنے کا اعلان عام دے چکا ہے – اس سہانی و دلفریب فضا میں صحابہ کرام رضی اللہ عنہ اور تابعین ذی وقار اللہ اکبر اور لاالہ الا اللہ کے دلاویزو پر کیف نغموں سے اور بارگاہ ایزدی میں دلگراز آہوں سسکیوں اور پر سوز دعاؤں سے بیت اللہ کی فضا کو معطر کر رہے تھے –
لوگوں ہبیت و جلال کے مظہرو استقلال کے پیکر بیت اللہ کے اردگرد گروہ در گروہ حلقے بنا کر بیٹھ گئے – اور اپنی آنکھوں کو خانہ خدا کی زیارت سے خیرہ کرنے لگے – اور ساتھ ہی محبت بھرے انداز میں ایک دوسرے سے محو گفتگو بھی تھے , رکن یمانی کے قریب خوبرو, خوش شکل اجلے سفید اور صاف ستھرے کپڑے پہنے ہوئے چار کڑیل جوان بیٹھے باتیں کر رہے تھے – یوں دکھائی دیتا تھا کہ ان کا تعلق کسی معزز گھرانے اور عالی مرتبت خاندان سے ہے ‘ دریافت کرنے پر پتا چلا کہ وہ عبداللہ بن زبیر رحمتہ اللہ علیہ مصعب بن زبیر رحمتہ اللہ علیہ, عروہ بن زبیر رحمتہ اللہ علیہ اور عبدالملک بن مروان ہیں –


ان چار نیک فطرت نوجواں کے درمیان دھیمے گداز اور نرم لہجے میں تبادلہ خیال ہونے لگا- ان میں سے ایک نے کہا – آج ہم میں سے ہر ایک اللہ رب العزت کی بارگاہ سے اپنی دلپسند چیز کا مطالبہ کرے , یہ بات سن کر وہ خیالات کی غیبی دیا میں اور تمناؤں کے سر سبز و شاداب خیالی باغات میں طواف کرنے لگے –

 

پھر تھوڑی دیر بعد ان میں سے ایک نوجوان عبداللہ بن زبیر رحمتہ اللہ علیہ اپنے سر کو جٹھک کر چوکس ہوا اور کہنے لگا : میری دلی خواہش ہے کہ میں حجاز کا حکمران بنوں اور خلافت کا تاج میرے سر پر ہو-
ان کے بھائی مصعب بن زبیر رحمتہ اللہ علیہ نے کہا : میری دلی تمنا ہے کہ میں کوفہ اور بصرہ کا حکمران بنوں – اور کوئی بھی میرا مخالف نہ ہو –
تیسرے نوجوان عبدالملک بن مروان نے کہا : اگر تم دونوں اتنے ہی پر اکتفا کر بیٹھے ہو تو تمہیں مبارک , سنو میری دلی خواہش ہے کہ میں پوری دنیا کا حکمران بنوں اور حضرت امیر معاویہ رضی اللہ عنہ کے بعد خلافت مجھے ملے لیکن حضرت عروہ بن زبیر رحمتہ اللہ علیہ خاموش بیٹھے رہے اس نے کچھ نہ کہا : تینوں نوجوان اس کی طرف لپکے, کہنے لگے , خاموش کیوں بیٹھے ہو آپ کچھ بولتے نہیں – کیا ارادے ہیں – کچھ تو دل کی بات ظاہر کرو ؟
اس نے کہا : جو تم نے مانگا وہ تمہیں مبارک ہو میری دلی تمنا یہ ہے – کہ میں عالم باعمل بنوں لوگ مجھ سے قرآن و حدیث کا علم سیکھیں اور مجھ سے دینی احکامات معلوم کریں اور پھر آخرت اللہ کی رضا اور جنت کو میرا مقدر بنا دیا جائے –


 

دن گزرتے گئے, گردش زمانہ سے وہ وقت بھی آگیا کہ یزید بن معاویہ رضی اللہ عنہ کی وفات کے بعد حجاز, مصر, یمن, خراسان اور عراق پر حکومت کرنے کے لیے خلافت کا تاج حضرت عبداللہ بن زبیر رحمتہ اللہ علیہ کے سر پر رکھا گیا –

 

پھر چشم فلک نے وہ لخراش منظر بھی دیکھا کہ انہیں بیت اللہ کے قریب اس جگہ سے چند قدم کے فاصلے پر قتل کر دیا گیا جہاں انہوں نے خلیفہ بننے کی تمنا کا اظہار کیا تھا حضرت مصعب بن زیبر کو ان کے بھائی حضرت عبداللہ بن زبیر نے عراق کا گورنر مقرر کر دیا تھا۔
 اور پھر انہیں بھی خلافت کے دفاع کی آڑ میں قتل کر دیا گیا
پھر عبداللہ الملک بن مروان اپنے باپ کی وفات کے بعد خلیفہ بنے حضرت عبداللہ بن زبیر اور ان کے بھائی مصعب بن زبیر کے قتل کے بعد تمام مسلمان عبدالملک کے خلافت کو بخشی تسلیم کرلیا –
پھر وہ اپنے دور میں دنیا بھر کے حکمرانوں سے زیادہ اہمیت اختیار کر گئے اور ان کی حکومت بھی سب سے زیادہ وسیع و عریض علاقے پرتھی اس طرح تینوں نوجوانوں کی تمنائیں پوری ہوئی لیکن حضرت عروہ بن زبیر کی تمنا کا کیا بنا آئیں اب ہم ان کی نصیحت آموز داستان کا آغاز کرتے ہیں

حضرت عروہ بن زبیر حضرت فاروق عظیم رضی اللہ تعالی عنہ کی وفات سے ایک سال پہلے ایک عالی شان اور معزز گھرانے میں پیدا ہوئے ان کے والد محترم حضرت زبیر بن عوام رضی اللہ تعالی عنہا حواری رسول معظم صلی اللہ علیہ وسلم تھے اور انہیں اسلام کی سربلندی کے لئے سب سے پہلے تلوار اٹھانے کا اعزاز حاصل ہوا اور یہ ان دس صحابہ کرام میں سے تھے جنہیں زندگی میں جنت کی بشارت دی

کی۔ان کے والدہ ماجد حضرت صدیق اکبر رضی اللہ تعالی عنہ کی بیٹی حضرت اسماء تھیں جو ذات النطاقین کہ کب سے مشہور ہوئیں ان کے نانا حضرت ابوبکر صدیق اعظم تھے جنہیں خلیفہ رسول صلی اللہ علیہ وسلم اور رفیق غار ہونے کا اعراف حاصل ہوا
ان کی دادی حضرت صفیہ بنت عبدالمطلب تھیں جو رسول اللہ اقدس صلی اللہ علیہ وسلم کی پھوپھی اور ان کی خالہ حضرت عائشہ رضی اللہ تعالی عنہ کی وفات ہوئی۔ انہیں دفن کرنے کا وقت آیا تو پہلے یہ قبر میں اترے لحد کو اپنے ہاتھوں سے درست کیا
کیا اس سے بڑھ کر کوئی حسب و نسب حضرت عروہرضی اللہ تعالی عنہا کو میسر آیا کہ اس سے بڑھ کر بھی کوئی غزہ شرف ہے جو انہیں حاصل ہوا
غرضیکہ عروہ بن زبیر بیت اللہ کے پاس بیٹھ کر جس دلی تمنا کا اظہار کیا تھا وہ انہیں میسر آئی ۔
یہ علم حاصل کرنے کی طرف متوجہ ہوئے وہ جلیل القدر صحابہ کرام رضی اللہ تعالی عنہ جو اس وقت زندہ تھے انہیں غنیمت سمجھتے ہوئے ان کے گھروں کو چکر لگانے لگے ان کے پیچھے نمازیں پڑھتے ان کی مجلسوں میں بیٹھے ان سے کتاب و سنت کا علم حاصل کرتے انہوں نے حضرت علی رضی اللہ تعالی عنہ حضرت عبدالرحمان بن عوف رضی اللہ تعالی عنہا حضرت زید بن ثابت رضی اللہ تعالیٰ عنہا حضرت ابو ایوب انصاری رضی اللہ تعالیٰ عنہا حضرت اسامہ بن زید رضی اللہ تعالی عنہ حضرت سعید بن زید رضی اللہ تعالی عنہ حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالی عنہا حضرت عبداللہ بن

عباس رضی اللہ تعالی عنہا حضرت نعمان بن بشیر رضی اللہ تعالی عنہ اور اپنی خالہ حضرت عائشہ رضی اللہ تعالی عنہ قرآن حدیث کا علم حاصل کیا اور ان کے حوالے سے متعدد احادیث کی روایت کا اعزاز کیا یہاں تک کہ مدینہ منورہ کے ان سات فقہاء میں ان کا شمار ہونے لگا جن سے لوگ دینی مسائل دریافت کرنے کے لیے رجوع کیا کرتے تھے۔

اور حکمران رعایا سے متعلق دینی اور دنیاوی امور نپٹانے کے لیے ان سے تعاون لیا کرتے تھے ۔

جب حضرت عمر بن عبدالعزیز کو ولید بن عبدالملک مدینے کا گورنر بنا کر بھیجا تو لوگوں نے انہیں خوش آمدید کہا اور ان کا والہانہ استقبال کیا نماز ظہر ادا کرنے کے بعد فقہاء مدینہ کو مد عو کیا ۔ ان میں سے سر فہرست حضرت عروہ بن زبیر تھے ۔ جب وہ تشریف لائے تو عمر بن عبد العزیز نے انہیں خوش آمدید کہا اور بڑی عزت و اکرام سے انہیں اپنے ساتھ بٹھایا پھر اللہ تعالیٰ کی حمد وثنا کے بعد ارشاد فرمایا: میں نے جس کام کے لیے تمہیں اپنے پاس بلایا یقینا اس پرتمہیں اجر و ثواب ملے گا ‘ میں امید رکھتا ہوں کہ تم حق و صداقت میں میرے مددگار بنو گے’ میں چاہتا ہوں کے ہر کام آپ کے مشورے سے پایہ تکمیل کو پہنچاؤں ‘ اگر آپ دیکھیں کوئی کسی پر زیادتی کر رہا ہے یا آپ کو یہ اطلاع ملتی ہے کہ کسی حکومت کے نمائندے نے کسی پر کوئی ظلم روا رکھا ہے تو برائے مہربانی مجھے ضرور بتائیں۔ اس سلسلے میں مجھے آپ کی مدد کی ضرورت ہے امید ہے آپ ضرور میرے ساتھ دیں گے۔

حضرت عروہ بن زبیر رضی اللہ تعالی عنہ علم و عمل کے پيكر تھے موسم گرما میں کثرت سے روزے رکھتے شب زندہ دار اور ذکر الہی سے رطب اللسان رہتے علاوہ ازیں کتاب القران مجید کے ساتھ ان کی دوستی مثالی تھیں اکثر وبیشتر اس کی تلاوت میں منہمک رہتے ۔ روزانہ قرآن مجید کے چوتھائی حصے کی تلاوت دیکھ کر کیا کرتے تھے پھر رات کے وقت یہی حصہ نوافل زبانی پڑھتے عنفوان شباب سے وفات تک ان کا یہی معمول رہا ایک مرتبہ ناغہ ہوا۔ وہ دلخراش اور عبرت ناک واقعہ سن کر آپ کے رونگٹے کھڑے ہو جائیں گے۔
حضرت عروہ بن زبیرنماز کو اپنے دل کا سکون اپنی آنکھوں کی ٹھنڈک خیال کیا کرتے تھے نماز کی حالت میں یوں معلوم ہوتا ہے کہ زمین پر انہیں جنت نصیب ہوگئی ہے لہٰذا نماز خوب دل لگا کر پڑھتے اس کے تمام شعائر انتہائی اطمینان و تسلی سے ادا کرتے اور ہر رکعت ممکن حد تک طویل کرتے انہوں نے ایک مرتبہ کسی شخص کو جلدی نماز پڑھتے ہوئے دیکھا تو اسے اپنے پاس بلایا اور محبت بھرے انداز میں فرمایا ۔ بیٹے کیا تجھے کوئی ایسی ضرورت لاحق نہیں جو رب تعالیٰ کی دربار میں پیش کرو ؟
رب کائنات کی قسم میں تو اللہ تعالی سے ہر چیز مانگتا ہوں اور لجاجت سے مانگتا ہوں یہاں تک کہ نمک بھی

حضرت عروہ بن زبیر نہایت نرم مزاج خوش اخلاق اور بہت بڑے سہخی تھے ان کا مدینہ منورہ میں سب سے بڑا باغ تھا جس میں میٹھے پانی کے چشمے گھنے سایہ دار اور پھل دار درخت تھے درختوں کی حفاظت کے لیے سال بھر اس باغ کا ارد گرد دیوار بنائے رکھتے تا کہ موشی اور بچے نقصان نہ پہنچائیں جب پھل پک کر تیار ہو جاتا نگاہیں اس کی طرف اٹھتی اور دل لپکتے تو یہ اپنے باغ کی دیوار مختلف مقامات سے گرا دیتے تاکہ آسانی سے لوگ باغ میں داخل ہوکر اور پکا ہوا لذیذ پھل کھا کر دل شاد کریں لوگ آتے جاتے باغ میں داخل ہوتے۔ اور جو پھل انہیں پسند آتا وہ کھاتے اور جاتے ہوئے جتنا چاہتے اپنے ہمراہ گھر لے جاتے حضرت عروہ بن زبیر جب بھی اپنے باغ میں داخل ہوتے تو قرآن مجید کی یہ آیات بار بار پڑھتے

وَلَو لا اِذْ دَخَلْتَ جَنَّتَكَ مَاشَآءَاللہُ لَا قُوَّۃَ اِلابِاللہ

 

ولید بن عبدالملک کے دور حکومت میں حضرت عروہ بن زبیر کو ایک ایسی آزمائش سے گزرنا پڑا کہ جس میں کوئی ایسی عظیم ہستی ہی ثابت قدم رہ سکتی ہے جس کا دل ایمان و یقین سے لبریز ہو۔ خلیفہ المسلمین ولید بن عبدالملک نے بڑی محبت اور اشتیاق سے انہیں دار الخلافہ و مشق میں

ملاقات کے لیے دعوت دی۔ انہوں نے بصد شوق دعوت قبول کی اپنے بڑے بیٹے کو ہمراہ لیا اور دمشق روانہ ہوگئے جب وہاں پہنچے تو خلیفہ نے والہانہ انداز میں ان کا استقبال کیا اور انہیں شاہی مہمان کا اعزاز دیا گیا۔
پھر وہی ہوا جو اللہ تعالی کو منظور تھا بسااوقات ہوائیں مخالفت سمیت چلنے لگتی ہیں۔ ہوا یہ کہ حضرت عروہ بن زبیر کا بیٹا سواری کے شوق میں شاہی اصطبل میں داخل ہوا جو نہی وہ ایک مونہہ زدر گھوڑے کے قریب آیا تو اس نے زور سے لات ماری جو اس کے سینے میں لگی اور جان لیوا ثابت ہوئی پھر غموں سے نڈھال باپ جب اپنے لاڈلے بیٹے کی قبر پر مٹی ڈال رہا تھا تو اس دوران ان کے پاؤں میں اچانک شدید درد ہونے لگا پاؤں میں ورم پیدا ہوئی اور وہ بڑی تیزی سے پنڈلی کی طرف پھیلنے لگا حالت تشویش ناک حد تک بگڑ گئی خلیفہ المسلین ولید بن عبدالملک پریشان ہوگئے فوری طور پر شاہی اطبا کو کہا علاج پر پوری توجہ دی جائے اور اس میں ایک لمحہے کی غفلت بھی نہ برتی جائے۔ معائنے کے بعد تمام اطباء نے متفقہ فیصلہ دیا کہ ٹانگ کاٹ دی جائے ورنہ مریض کی موت کا سبب بن جائے گا۔
جب ٹانگ کاٹنے کے لئے ایک ماہر جراح اپنے اوزار لے کر حاضر ہوا تو طیب نے حضرت عروہ سے کہا ہم آپ کو تھوڑی سی شراب پلائیں گے تاکہ ٹانگ کٹنے کی زیادہ تکلیف محسوس نہ ہو آپ نے یہ بات سن کر فرمایا: ایسا قطعا نہیں ہو سکتا میں حرام کے ذریعے سے اپنی عافیت کی امید نہیں رکھتا

طیب نے کہا تو پھر کوئی نشہ آور چیز آپ کو پلا دیتے ہیں ورنہ تکلیف ناقابل برداشت ہو گئی۔
آپ نے فرمایا میں نہیں چاہتا کہ میرے جسم کا کوئی عضو اس حالت میں کاٹا جائے کہ مجھے درد کا کوئی احساس بھی نہ ہو آپ بغیر کوئی نشہ آور چیز دیئے اسے کاٹیں اس درد میں بھی انشاءاللہ مجھے ثواب ملے گا ۔
جب جراح ٹانگ کاٹنے کے لئے تیار ہوا تو بہت سے آدمی حضرت عروہ کے قریب آئے آپ نے پوچھا : یہ جمگھٹا کیا ہے تو آپ کو بتایا گیا کہ ان افراد کو اس لئے بلایا گیا کے جب آپ کی ٹانگ کاٹنے لگے تو مضبوطی سے آپ کو تھامے رکھیں گے ہوسکتا ہے آپ شدید درد سے سنبھل نہ سکيں۔
اور علاج میں رکاوٹ پیدا ہو جائے جو آپ کے لیے نقصان دہ ہو یہ سن کر آپ نے فرمایا ان افراد کو پیچھے ہٹا دیں ان کی کوئی ضرورت نہیں ہے۔ میرے لئے اس اندوہناک وقت میں صرف اللہ کی یاد اور اس کی حمد و ثناء اور تسبیح تقدیس کا نغمہ الاپنا ہی کافی ہوگا بسم اللہ پڑھ کر آپ اپنا کام شروع کریں۔ میری فکر نہ کریں میرا اللہ حامی و ناصر ہو گا جراح نے پہلے قینچی کے ساتھ ٹانگ کا گوشت کاٹا اور پھر ہڈی پر آری چلائی ادھر حضرت عروہ نے بلند آواز سے لا الہ الا اللہ اللہ اکبر مسلسل پڑھنا شروع کر دیا جراح اپنے کام میں مشغول رہا اور حضرت عروہ ذکر الہی میں محو رہے۔ ٹانگ کٹ گئی اور جب وہ خون بند کرنے کے لئے کھولتے ہوئے تیل میں ٹانگ کو ڈبویا تو آپ بے ہوش ہوگئے ان کی پوری زندگی میں یہی وہ موقع ہے جس میں قرآن مجید کی

منزل پڑھنے میں ناغہ ہوا
جب حضرت عروہ بن زبیر علیہ الرحمہ صحت یاب ہوگئے اسے پکڑ غور سے دیکھنے لگے اور اسے اپنے ہاتھوں سے الٹانے پلٹانے لگے۔ پھر درد بھرے لہجے میں فرمایا: اے ٹانگ گواہ رہنا مجھے اللہ کی قسم جس نے تجھے پیدا کیا اور تیرے ذریعے چل کر میں مساجد میں جاتا رہا وہ خوب اچھی طرح جانتا ہے میں کبھی تجھے کسی حرام کام کی طرف چلا کر نہیں لے گیا پھر بنوں حزینہ کے ایک معروف شاعر معن بن اوس کے برجستہ یہ اشتہار پڑھیے.

 لعمرک ما اھویت کفی لریه
ولا حملنتی نحو فاحشه رجلی
  و لا فاد نی سعی و لابصری لما
  و لا دلنی رائی علیھا ولا عقلی
و أعلم انی لم نصیبی مصیبه
 من الدھر الا قد اصابت فقی تسلی

 

خلیفہ المسلین ولید بن عبدالملک کو اپنے معذز مہمان کی مصیبت کو دیکھ کر بہت دلی رنج ہوا کے چند دنوں میں یہ اپنے لاڈلی نوجوان بیٹے اور اپنی ایک ٹانگ سے محروم ہو گئے۔ ایک دن یہ مہمان خانہ میں انہیں دیکھنے کے لیے جانے لگے تو اچانک بنو عبس قبیلے کا ایک وفد ملاقات کے لیے پہنچ گیا ؛آپ نے اس سے اندر بلا لیا ۔
کیا دیکھتے ہیں کہ وفر میں ایک نابینا شخص بھی شامل ہے ۔خلیفہ نے اس سے پوچھا کہ آپ کی نظر کو کیا ہوا اس نے بتایا :
امیرالمومنین قبیلہ بنو عبس میں سب سے زیادہ مال و منال اور اہل و عیال

میرے پاس تھا ۔ میں اپنا سب کچھ ہمراہ لے کر اپنے قبیلے کے علاقے میں گیا اور ایک نشیبی جگہ پڑاؤ کیا رات کے وقت اچانک ہولناک سلاب آیا۔ اور وہ سب کچھ بہا کر لے گیا۔ صرف ایک نومولود بچہ اور ایک اونٹ میرے ہاتھ لگے ۔ اونٹ مونہہ زور تھا ۔ وہ رسی چھڑا کر بھاگ نکلا میں بچے کو زمین پر لٹا کر اونٹ پکڑنے کے لیے اس کے پیچھے بھاگا ۔ تو مجھے بچے کی چیخنے کی آواز آئی مڑ کر دیکھا تو یہ دہشت ناک منظر دکھائی دیا کے ایک خونخوار بھیڑیا بچے کے سر کو اپنی خونی مونہ میں دبائے کھڑا ہے ۔ اور بچہ زور سے چلا رہا ہے میں اسے چھڑانے کے لیے سرپٹ اس کی طرف دوڑا لیکن میرے وہاں پہنچنے سے پہلے وہ میرے لخت جگر کا سرچباچکا تھا ۔جب میں اسے وہیں چھوڑ کر اونٹ پکڑنے کے لیے بھاگا ؛ابھی اونٹ کے قریب پہنچا ہی تھا کہ اس نے زور سے مجھے لات ماری جو میری پیشانی پر لگی اور اس کی ہڈی ٹوٹ گئی ۔اور نظر جاتی رہی ۔تو اس طرح میں ایک ہی رات میں اہل و عیال مال و منال اور بصارت جیسی عظم نعمت سے محروم ہو گیا۔

خلیفہ المسلمین ولید بن عبدالملک نے یہ درد بھری داستان سن کر آہ بھری اور اپنے دربان سے کہا :اسے ہمارے معزز مہمان عروہ بن زبیر کے پاس لے جاؤ ۔ تاکہ وہ ان کی داستان غم سن کر اندازہ لگائیں کہ ان سے بھی بڑھ کر اس دنیا میں دکھی اور مصیبت ذده انسان موجود ہیں.


جب حضرت عروہ بن زبیر کو شاہی سواری پر اعزاز و اکرام

کے ساتھ مدینہ منورہ لے جایا گیا آپ نے اپنے گھر میں داخل ہونے سے پہلے اہل خانہ کو مخاطب ہوکر کہا :جو تم دیکھ رہے ہو اس سے گھبرانا نہیں اللہ تعالی نے مجھے چار بیٹے عطا کیے ایک اس نے لے لیا تین ابھی باقی ہیں اس کا شکر ہے۔ اللہ نے مجھے چار اعضاء عطا کیے ایک اس نے لے لیا ابھی تین باقی ہیں۔
اس کا شکر ہے ۔واللہ!اس نے تھوڑا لیا ہے اور زیادہ میرے پاس باقی رہنے دیا ہے اس نے زندگی میں صرف ایک ہی مرتبہ آزمائش میں ڈالا ہے اور بے شمار آفات سے مجھے بچایا ہے.           


 

جب اہل مدینہ کو اپنے ہردلعزیز امام اور جيد عالم دین ؛فقيد المثال محدث ؛اور قابيل رشک فقيہ کی آمد کا پتا چلا تو جوق درجوق ان کی زیارت کے لئے حاضر ہوۓ۔
سب نے بیٹے کی تعزیت کی اور انہیں ٹانگ کی محرومی پر دلاسہ دیا۔ حاضرین میں سب سے بہترین تعزیتی کلمات ابراہیم محمد بن طلحہ کے تھے؛اس نے ملاقات کے وقت درد بھرے انداز میں کہا۔
جناب من! آپ کے جسم کا ایک حصہ اور آپ کی اولاد میں سے ایک بیٹا آپ سے پہلے جنت میں پہنچ چکے ہیں اور باقی ماندہ بھی انشاءاللہ جنت میں جائیں گے لیکن اللہ تعالی نے آپ کی جانب سے ہمارے لئے وہ چیز باقی رہنے دی جس کے ہم محتاج تھے؛ اور اس سے ہم کبھی بھی مستغنی نہیں ہو سکتے تھے ۔ اور وہ ہے آپ کا علم؛ فقہ اور جپی تلی ہوئی رائے اللہ تعالی آپ کو اور ہمیں ان قیمتی اوصاف سے فائدہ پہنچائے – اللہ آپکو اجرو ثواب دینے پر قادر ہے – اور آپ کے حسن حساب کا ضامن ہے –


 

حضرت عروہ بن زبیر رحتمہ اللہ علیہ زندگی بھر مسلمانوں کے لیے مینارہ ہدایت فلاح و بہبود کے سنگ میل اور خیرو بھلائی کے داعی رہے – انہوں نے اپنی اولاد کی تربیت کا خصوصی طور پر اور ابنائے اسلام کی تربیت کا عمومی طور پر اہتمام کیا – اور انہیں پندو نصائح کرنے میں کوئی وقیقہ فرد گزاشت نہیں کیا کرتے تھے – یہی وجہ ہے کہ انہوں نے اپنے بیٹوں کو علم حاصل کرنے کی بار بار ترغیب دلائی – آپ اکثر یہ کہا کرتے تھے –
میرے پیارے بیٹوں علم حاصل کرو اور اس کا حق ادا کرو اگر تم اپنی قوم میں کمزور بھی ہوئے تو اللہ تعالیٰ علم کی برکت سے تمہیں ممتاز بنا دے گا – پھر آہ بھر کر کہنے لگے –
ہائے افسوس ‘ کیا دنیا میں جاہل سے بڑھ کر کوئی بدبخت ہو گا – ہر گز نہیں!
وہ اپنی اولاد کو اس بات کی تلقین کیا کرتے تھے, کہ اللہ کی راہ میں صدقہ اس طرح دیا کرو جس طرح ہدیہ یا تحفہ کسی عزیز کو پیش کیا جاتا ہے –
میرے پیارے بیٹو کبھی بھی راہ خدا کوئی ایسی چیز بطور صدقہ نہ دینا جو تم اپنی قوم کے عزیز کو دیتے ہوئے شرماؤ –

اللہ تو بڑی عزت, شان و شوکت اور جاہ و جلال والا ہے اس کی عظمتوں کا تقاضہ بھی یہی ہے کہ وہ چیز بھی اس کے نام پر دی جائے , وہ بھی قابل قدر دلربا, پسندیدہ اور ہر لحاظ سے عمدہ اور دیدہ زیب ہو –
وہ اپنے بیٹوں کی راہنمائی معاشرے میں بسنے والے لوگوں کی مثالیں دے دے کر کیا کرتے تھے – اور ان میں قابل جوہر کے اوصاف اپنانے کی تلقین کیا کرتے تھے –
وہ اکثر یہ فرمایا کرتے –
میرے پیارے بیٹو : جب کسی شخص کو اچھا کام کرتے دیکھو- تو تم اس سے خیرو بھلائی کی ہی امید رکھا کرو – اگرچہ وہ شخص لوگوں کی نظروں میں برا ہی کیوں نہ ہو – کیونکہ اس سے مزید اچھے کاموں کی توقع رکھی جا سکتی ہے – اور جس شخص کو برا کام کرتے دیکھو اس سے اجتناب کرواگرچہ وہ لوگوں کی نظر میں اچھا آدمی کیوں نہ ہو – کیونکہ اس سے کسی وقت بھی کوئی اور بھلائی سرزد ہو سکتی ہے –
میرے پیارے بیٹو! خوب اچھی طرح یہ بات دلنشین کر لو , کیونکہ ایک نیکی مزید بہت سی نیکیوں کا پیش خیمہ ثابت ہوتی ہے اور ایک برائی مزید کئی ایک برائیوں کو جنم دینے کا باعث بنتی ہے –


 

وہ اپنے بیٹوں کو تواضع , انکساری, حسن سلوک خوش گفتاری اور خندہ پیشانی سے رہنے کی تلقین کیا کرتے تھے وہ یہ بھی فرمایا کرتے –

میرے بیٹو : حکمت و دانائی کے ضمن میں یہ بات طے شدہ ہے جس کی بات میں مٹھاس ہو, چہرے پہ مسکراہٹ کی ہر دم چمک ہو وہ لوگوں میں اس شخص سے زیادہ پسند کیا جاتا ہے جو ان پر بے دریغ مال خرچ کرتا رہتا ہے جب دیکھتے کہ لوگ عیش و عشرت کی طرف مائل ہو رہے ہیں ‘ اور نازو نعم کے دلدادہ ہو چکے ہیں تو انہیں شاہ امم سلطان مدینہ ﷺکی سادہ اور مصائب و مشکلات سے بھر پور زندگی یاد دلاتے , مدینہ منورہ میں رہنے والے ایک معروف تابعی جناب محمد بن منکرر بیان کرتے ہیں کہ حضرت عروہ بن زبیر رحمتہ اللہ علیہ مجھے ملے انہوں نے میرا ہاتھ پکڑا اور فرمایا –
اے ابو عبد اللہ –
میں نے کہا جی –
*فرمایا :*
میں ایک دفعہ اماں عائشہ رضی اللہ عنہا کی خدمت اقدس میں حاضر ہوا – انہوں نے مجھے دیکھ کر فرمایا :
بیٹا : میں نے کہا جی اماں حضور !
*فرمایا :*
اللہ کی قسم شاہ امم سلطان مدینہ ﷺکے گھر چالیس چالیس راتیں آگ نہیں جلتی تھی نہ چراغ روشن ہوتا اور نہ چولہا جلتا میں نے ادب سے عرض کیا – اماں حضور تو پھر کس طرح آپ کا گزارہ ہوا کرتا تھا –
*فرمایا :*
بس کھجور اور پانی سے ہم گزارہ کیا کرتے تھے –

حضرت عروہ بن زبیر رحمتہ اللہ نے زندگی کی اکہتر بہاریں دیکھیں جو اللہ کے فضل و کرم سے خیرو برکت امن و آشتی اور نیکی و بھلائی سے بھر پور تھیں – آپ زندگی بھر تقوے کا زریں تاج زیب سر کئے رہے, جب آخری وقت آیا – تو آپ کا روزہ تھا – ایل خانہ نے روزہ افطار کرنے کے لیے کہا لیکن آپ نہ مانے –
 آپ کی دلی خواہش تھی , کہ میں روزہ حوض کوثر کے پانی سے شیشے کے جلتی برتن میں حورعین کے ہاتھ سے لے کر افطار کروں –
ان کی یہ تمنا پوری ہوئی اللہ اس پہ راضی اور وہ اپنے اللہ پہ راضی –


 

حضرت عروہ بن زبیر رحمتہ اللہ کے مفصل حالات زندگی معلوم کرنے کے لیے درج ذیل کتابوں کا مطالعہ کریں –

 

١- الطبقات الکبری ابن سعد۔
١-٤٠٦
٢-/ ٣٨٢- ٣٨٧
٣-/ ١٠٠
٤-/ ١٦٧
٥-/ ٣٣٤
٨-/ ١٠٢

٢- حلیتہ الاولیاء ابو نعیم اصفہانی , ٢/ ١٧٦
٣- صفتہ الصفوۃ ابن جوزی,
٢/ ٨٧

٤- وفیات الاعیان ابن خلکان, ٣/ ٢٥٥
٥- انساب الاشراف علامہ بلاذری, دیکھیے فہرست
٦- جمھرۃ انساب العرب : ابن حزم

 

حوالہ:
“کتاب: حَياتِ تابِعِين کے دَرخشاں پہلوُ”
تالیف: الاستاذ ڈاکتور عبد الرحمان رافت الباشا
ترجمه: محمود غضنفر
Table of Contents