Sections
< All Topics
Print

04. Hazrat Rabee’ bin Khusaym  (رحمہ اللہ تعالی)

Hazrat Rabee’ bin Khusaym  (رحمہ اللہ تعالی)

Aye abu yazeed!

Agar tujhe Rasool ﷺ dekh lete to zarur tujh se pyar karte.

( عبد اللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ )

Hazrat Hilal bin Asaaf (رحمہ اللہ) ne apne mehman Munzir bin Ya’ala Suari (رحمہ اللہ) se kaha: Kya main apko Sheikh Rabee’ bin Khusaym ki ziyarat ke liye na le chaloon?

Taake chand ghadi un se Imaan-o-Yaqeen ki baatein hon. Munzir (رحمہ اللہ) ne kaha kyun nahi! Zarur chalein. Main Koofah aya hi is liye hoon taake apke mohtaram Sheikh Rabee’ bin Khusaym ki ziyarat kar sakun aur kuch arsah Imaan-o-Yaqeen ke dilawaiz mahaul mein guzarne ki sa’adat hasil ho sake lekin kya hamein ziyarat ki ijazat bhi mil sakegi? Kyunke mujhe pata chala hai ke jab se un peh faalij ka hamla hua hai woh apne ghar ke hi hokar reh gaye hain, Hamesha wahin Yaad-e-Ilaahi mein masroof rehte hain aur logon se mulaqat mein qadre dilchaspi nahi rakhte.

Hilaal bin Asaaf (رحمہ اللہ) bole: Baat to apki durust hai jab se woh Koofah mein farokash huye hain unka Tarz-e-Amal aisa hi dekhne mein aya hai. Lekin beemari ne chandaan koi tabdeeli paida nahi ki hai. Hazrat Munzir (رحمہ اللہ) ne kaha: To phir unke paas jane mein koi harj nahi lekin apko maloom hona chahiye in mashayekh ke mijaaz bade hi Naram-o-Naazuk hua karte hain, Apki raye kya hai ke Dauran-e-Mulaqat hum Sheikh se sawalat karen ya khamoshi se baithen aur woh jo apni marzi se baat karen wahi sunen?

Hazrat Hilal bin Asaaf (رحمہ اللہ) bole:

Agar aap Rabee’ bin Khusaym (رحمہ اللہ) ke paas mukammal  aik saal tak bhi baithtey rahen woh nahi bolenge jab tak tum khud unse baat nahi karoge, Woh qat’an guftagu mein pehel nahi karenge kyun ke unka kalaam Zikar-e-Ilaahi par mushtamil hota hai aur khamoshi Ghaur-o-Fikr par mabni hoti hai. Hazrat Munzir (رحمہ اللہ) ne kaha phir aiyye Allah ka naam lekar unke paas chalte hain. Dono Sheikh ke paas gaye, Salam arz ki aur poocha janab Sheikh kya haal hai?

Farmaya: Haal kya poochte ho aisa natawaan, Kamzor aur gunahgaar hun jo apne Allah ka rizq khata hun aur apni maut ka muntazir hun, Hazrat Hilal (رحمہ اللہ) bole: Koofah mein aik maahir Tabeeb aaya hai, Ijaazat ho to ilaj ke liye bula len?

Farmaya: Hilal (رحمہ اللہ)! main janta hun ke dawaa barhaq hai, Ilaj karana sunnat hai, Lekin maine Aad, Samood, Ashaab-e-Ras aur unke darmiyan  aane wali qaumon ke halaat ka baghor jayezah liya hai. Maine duniya mein un aqwam ke lalach aur duniyavi Saaz-o-Samaan mein unki hareesanah dilchaspi ko dekha hai, Woh hum se zyadah taqatwar aur Saahib-e-Haisiyat thay un mein maahir At’baa bhi maujood thay. Woh log beemar bhi hote thay. Ab dekhiye! Na koi moallij raha na koi mareez, Sab fanaa ho gaye, Unka Naam-o-Nishaan na rha phir gehri aur lambi soch ke baad farmaya: Haan aik beemari aisi zarur hai jiska ilaj zarur karwana chahiye. Hazrat Munzir (رحمہ اللہ) ne moaddebanah andaz mein poocha: Woh kaunsi beemari hai?

Farrmaya: Is roohani beemari ka naam hai “Gunah”.

Poocha: Uska ilaj kis dawaa se kiya jaye?

Farrmaya: Astaghfar se. Hazrat Munzir (رحمہ اللہ) ne poocha shifaa kaise hogi?

Farmaya: Aisi sachi tauba ki jaye ke woh phir gunah dubarah na ho. Phir hamari taraf ghaur se dekha aur bade zordar andaz mein farmaya: Posheedah andaz mein kiye gaye gunah logon ki nazron se to makhfi rehte hain lekin Allah ta’ala ke samne to woh zahiri hote hain, Kyun ki uske samne to koi cheez makhfi nahi, Who Allam ul Guyoob (علام الغیوب) hai, Woh seenon key bhed khoob achhi tarah janta hai. Chup kar gunah karna aik khatarnaak roohani bemari hai. Iski dawaa talash karo. Hazrat Munzir (رحمہ اللہ) ne poocha: Aap khud hi bata dijiye iski dawaa kya hai?

Farmaya: Khaalis aur sachhi taubah hai, Jise ‘Taubatun Nasuh’ kehte hain, Phir Zaar-o-Qataar rone lage yahan tak ke unki daadhi mubarak aansuon se bheeg gayi.

Hazrat Munzir (رحمہ اللہ) ye ajeeb munzir dekh kar kaha: Mohtaram bada taajjub hai aap ro rahe hain? halaanke apki Ibaadat, Taqwa, Khashiyat aur Ikhlaas ka har taraf charcha hai.

Farmaya: Sad afsos! haaye gham!

Bhala main kyun na roun? Main ne Bachashm-e-Khud aisi azeem qaum ko dekha hai ke hum unke muqabley mein baune nazar aate hain. Yaani Sahabah karaam رضوان اللہ علیہم اجمعین ki muqaddas jamaat.

Hazrat Hilal (رحمہ اللہ) bayan karte hain keh hum baithay Sheikh mohtaram se baatein kar rahe thay, Itne mein unka beta andar aaya, Pahle usne adab se salam kiya phir kaha:

Abba jaan! Ammi ne apke liye bohat umdah meetha aur lazeez pakwan tayyar kiya, Unki dili khuwahish hai ke aap is mein se kuch zarur tanawul karen. Ijazat ho to main le aaun? Farmaya: Le aao. Jab beta woh umdah pakwan laane ke liye kamre se bahir nikla to aik sawali ne darwazah khatkhatayaa, Apne kaha usey andar bula lo. Main ne dekha ke aik paragaanda haal, Budha aadmi phate purane kapde pehne, Jhoomta hua andar aa rha hai aur uske munh se raalein tapak rahi hain, Chehry mohry se woh majzoob nazar aa raha tha. Woh sehen mein khada ho gaya. Main abhi Hairat-o-Istejaab mein dooba hua us bechare ko dekh rha tha itne mein Sheikh ka beta aik bade thaal mein meetha pakwan le aaya. Sheikh ne apne bete se kaha yeh thaal is sawali majzoob ke samne rakh do. Usne hukm ki tameel karte huye thaal uske samne rakh diya to woh shakhs us par toot pada, Haalat yeh thi ke uski raalein khane par gir rahi thin aur badastoor khane mein juta hua tha yahan tak ke woh thaal ko chat kar gaya. Bete ne bari afsurdagi se kaha: Abba jaan, Allah ki by’panah rehmatein aap par nazil hon, Ammi ne to bade jatan se ye pakwan apke liye tayyar kiya tha, Hamari dili khuwahish thi ke aap tanawul karte, Lekin aapne aik aise shakhs ko ye khila diya jise itna bhi pata nahi ke usne kya khaya aur uska maza kya tha.

Sheikh ne farmaya: Beta agar yeh shakhs nahi jaanta to kya hua hamara parwardigaar Allah to jaanta hai, Phir Qur’an  majeed ki yeh ayat tilawat ki:

لَنْ تَنَالُوا الْبِرَّ حَتّٰى تُنْفِقُوْا مِمَّا تُحِبُّوْنَ ڛ)آل عمران: 92)

Yeh baatein ho rahi thin ke Sheikh ka aik qareebi rishtedaar aaya aur usne ye andohanaak khabar di ke Hazrat Hussain (رضی اللہ عنہ) ko Maidan-e-Karbala mein shaheed kar diya gaya hai. Sheikh ne yeh gham naak khabar sun kar kaha:  انا للہ وانا الیہ راجعون  Aur sath Qur’an majeed ki yeh ayat padhi:

قُلِ اللّٰهُمَّ فَاطِرَ السَّمٰوٰتِ وَالْاَرْضِ عٰلِمَ الْغَيْبِ وَالشَّهَادَةِ اَنْتَ تَحْكُمُ بَيْنَ عِبَادِكَ فِيْ مَا كَانُوْا فِيْهِ يَخْتَلِفُوْنَ  

(الزمر: 46)

Sheikh ki zuban mubarak se sirf itni si baat sun kar tasalli na hui to usne daryaft kiya: Hazrat Hussain (رضی اللہ عنہ) ki shahadat ke baare mein apki kya raaye hai?

Farmaya: Un sab ko Allah hi ki taraf lautna hai aur wahi unka hisaab lega.

Hazrat Hilal (رحمہ اللہ) farmate hain: Main ne dekha ke zuhar ka waqt qareeb aa raha hai silsalah-e-Kalam munqataa ho jayega, Maine arz kiya: Janab mujhe koi naseehat kijiye.

Aap ne farmaya:  Aye Hilal logon ke munh se apni tareef sun kar kahin dhokha na kha jana. Log to sirf tere zaahir ko dekhte hain, Tere batin ka inko kya ilm? Dekho meri yeh baat palle baandh lo, Tum apne aamaal ki janib rawan dawan raho aur har woh amal jo Allah ki raza ke liye na kiya jaye woh bekar hai who akaarat  jayega, Uski koi Qadr-o-Qeemat nahi.

Hazrat Munzir (رحمہ اللہ) ne kaha: Mujhe bhi koi naseehat kijiye Allah aapko jazaye khair ata kare.

Farmaya: Apne ilm ke mutabiq Allah se daro. Jis cheez ka tujhe ilm na ho usey kisi Aalim  ke supurd karo aur khud bhi usi ki taraf ruju karo.

Aye Munzir kabhi aisa na kehna ke Allah ki taraf ruju karta hun. Agar ruju na kiya yeh jhooth likha jayega. Balke hamesha yeh dua karo. Aye Allah meri taraf ruju farma, Main Darmandah-o-Bekas hun, Mujhy maaf kardy aur is tarha kabhi jhota na ho ga.

Aye Munzir! Khoob achhi tarah jaan lo: Insani guftagu mein لا الہ الا الله  ،الحمد للہ، الله اکبر,  سبحان الله khair ki talab, Shar se panaah, Neki ka hukm, Burayi se rokne aur Qur’an  majeed ki tilawat ke ilawah kisi aur baat mein Khair-o-Barkat nahi hai. Deen ki baat karo warna khamosh hi raho.

Hazrat Munzir  (رحمہ اللہ) bole: Janab hum itni der apke paas baithay, aapki qeemti baton aur dilpazeer naseehaton se faizyaab huye. Lekin aap ne apni guftagu ke dauran koi shayr nahi padha halaanke aapke ham’Asar bataur istadlaal guftagu ke dauran shayr padhte hain. Iski kya wajah hai?

Sheikh ne farmaya: Jo bhi is duniya mein kaha jata hai usey fauran likh liya jata hai aur woh qayamat ke din padh kar sunaya jayega, Main nahi chahta ke mere naama amaal mein koi shayr likha jaye aur qayamat ke din woh mujhe padh kar sunaya jaye.

Phir farmaya: Suno! Apni maut ko kasrat se yaad kiya karo. Woh Pardah-e-Ghaib mein hardam tumhari muntazir hai, Jab nazr se ujhal kisi piyare ki ghair hazri taweel ho jati hai to uska wapis lautna qareeb ho jata hai aur ghar waly hardam uski raahein takte rehte hain, Yeh keh kar woh itna roye ke aansuon ki jhadi lag gayi, Phir farmaya: Kal jab shadeed zalzala mein zameen ko reza reza kar diya jayega, Parwardigaar Ghaiz-o-Ghazab mein hoga, Farishte saff baandhe khade honge, Aur jahannam ko la hazir kiya jayega. Batao phir hum kya kar sakenge?

Hazrat Munzir (رحمہ اللہ) bayan karte hain ke jab Sheikh rabee (رحمہ اللہ) ne baat khatam ki idhr Zuhar ki azaan hone lagi, Bete se kaha aao chalein Allah ka bulawa aa gaya hai, Bete ne hum se kaha abba ji ko sahara dene mein mera sath dijiye, Dain taraf se bete ne sahara diya aur bayen taraf se main ne aur hum unhe lekar masjid ki taraf chale, Haalat yeh thi ke Sheikh ke donon paon zameen mein ghaseetey ja rahe thay. Hazrat Munzir (رحمہ اللہ) ne kaha:

Janab Abu Yazeed (رحمہ اللہ) aap mazoor hain, Allah ki taraf se aap ko rukhsat hai. Aap namaz ghar mein hi padh lete! Farmaya: Aap theek kehte hain. Lekin maine moazzan ko yeh kehte huye suna, aao kamyabi ki taraf! Daudo kamraani ki taraf! jo shakhs Kamyaabi-o-Kaamrani ki taraf bulaye uski awaz pe labbaik kehte huye jaana chahiye, Khwah ghutnon ke bal chal kar kyun na jana pade.

kya aapko maloom hai ke Rabee’ bin Khusaym hain kaun?

Yeh Kibaar-e-Taba’een mein se thay. Yeh apne daur mein un aath afraad mein se thay jin mein Zuhd-o-Taqwa intahaa darje ka paaya jata tha. Yeh khaalis Arabi thay, Aur khandani aitebaar se muzar(مضر) peh jaa kar unka silsala nasab nbi akram ﷺ ke sath mil jata tha.

Bachpan se unki tarbiyat Allah ki Ita’at ke mahaul mein hui, Ladakpan taqwa ke mahaul mein guzra, Raat ke waqt unki walidah so jati, Subah uthti to kya dekhti keh uska beta ghar ke aik kone mein hath baandhe khada Allah ta’ala se sargoshiyan karne mein mahw hai, Duniya-o-Mafiha se beniyaz namaz mein mustaghraq hai, Muhabbat-o-Shafqat se bharpoor lehje mein awaz deti, Bete Rabee’ tujhe kya hua? Kya neend nahi aati? Mere pyare bete ab to so jao. Woh jawab dete Amma jaan! Bhala woh shakhs kaise so sakta hai jispe raat ki tareeki cha gayi ho aur usey dushman ke hamle ka andesha ho, Yeh sun kar boodhi Amma ke aansu behne lage aur usne bete ko duyein di.

Jab Hazrat Rabee’ (رحمہ اللہ) jawaan huye to unke sath taqwa bhi ana jawan hua aur Khashiyat-e-Ilaahi ka jazbah bhi isi tarah parwan chadha.

Raat ki tareeki mein jabke log gehri neend soye huye hote thay woh is qadar gidgidaate aur giryah zaari karte keh unki ghighhi band ho jati. Boorhi Amma ko apne laadle bete ki is haalat par taras aane lagta aur Andesha-e-Haye daron mein mubtala ho kar awaz deti: Mere pyare bete maa sadqe! tujhe hua kya hai? Kya koi jurm kar baithe ho? Kya kisi ko qatal kiya hai? Maa ne ghabraahat mein poocha beta mujhe batao maqtool kaun hai? Batao kise qatal kar baithe ho? Taake hum usky wursaa ki Mannat-o-Samaajat karen. Ho sakta hai woh tujhe maaf kar den. Bakhuda agar maqtool ke waaris teri aahon, Siskiyun aur giryah zaariyon ko dekh len mujhe ummeed hai woh tujhe maaf kar denge. Usne kaha: Amma jaan aapne unse baat na karen main ne apne aap ko qatal kiya hai. Maa ne poocha kaise? Farmaya gunahon se apne aap ko qatal kiya hai.

Hazrat Rabee’ bin Khusaym (رحمہ اللہ) Hazrat Abdullah bin Masood (رضی اللہ عنہ) ke Shagird-e-Rasheed thay aur Hazrat Abdullah bin Masood (رضی اللہ عنہ) khoobsoorat aur Shakl-o-Soorat mein tamam Sahabah  se badh kar Rasool-e-Aqdas ﷺ se mushabehat rakhte thay. Hazrat Rabee’ (رحمہ اللہ) ke apne Ustaad Abdullah bin Masood (رضی اللہ عنہ) ke sath Talluqaat-o-Rawabit aise hi thay jaise aik farmabardaar bete ke apne walid se hote hain. Ustaad bhi apne shagird se aise hi pyaar karte jaise baap apne iklaute bete se pyar karta hai. Lihaza Hazrat Rabee’ (رحمہ اللہ) apne Ustaad ke haan bila ijazat aa jaya karte thay, Hazrat Abdullah bin Masood (رضی اللہ عنہ) jab Rabee’ bin Khusaym ke dil ki safayi ikhlaas aur Husn-e-Ibaadat ko dekhte to dil mein hasrat paida hoti. Kaash mera yeh shagird Nabi Akram ﷺ ki zindagi mein hota, Unhen is Taakheer-e-Zamaani ka afsos hota, Yeh farmaya karte thay: Aye Abu Yazeed! agar tujhe رسول اللہ ﷺ Bachashm-e-Khud dekh lete to yaqeenan tujh se mohabbaat karte aur yeh bhi farmaya karte: Aye Rabee’ jab bhi main tujhe dekhta hun mujhe Allah ta’ala ki bargaah mein Khushoo-o-Khuzuu karne wale log yaad aa jate hain.

Is silsile mein Hazrat Abdullah bin Masood (رضی اللہ عنہ) koi mubalghah araayi se kaam nahi lete thay. Balke waaqiya yeh hai ke Hazrat Rabee’ bin Khusaym (رحمہ اللہ) Khashiyat-e-Ilaahi, Taqwa-o-Pakeezgi ke us Aa’la-o-Arfa muqam par fayez thay ke is tabqey mein koi bhi uska saani na tha. Unse is silsile mein aise waqiyaat manqool hain jo hamesha Islami tareekh ke safhaat mein Masl-e-Aftab-o-Mehtab chamakte damakte rahenge. Unka aik mukhlis qareebi saathi bayan karta hai, Main Hazrat Rabee’ bin Khusaym (رحمہ اللہ) ke sath bees (20) saal raha. Main ne use hamesha wahi baat karte suna jise farishte ehteraam se lekar aasman ki taraf chadhte hain phir yeh ayat tilawat ki:

اِلَيْهِ يَصْعَدُ الْكَلِمُ الطَّيِّبُ وَالْعَمَلُ الصَّالِحُ يَرْفَعُهٗ

Abdul Rehman bin Ajlaan bayan karte hain main aik raat Hazrat Rabee’ (رحمہ اللہ) ke paas soya, Jab unhen yaqeen ho gaya ke main gehri neend so gaya hun unhone namaz padhna shuru kar di aur namaz mein yeh ayat oonchi awaz mein padhne lage:

اَمْ حَسِبَ الَّذِيْنَ اجْتَرَحُوا السَّيِّاٰتِ اَنْ نَّجْعَلَهُمْ كَالَّذِيْنَ اٰمَنُوْا وَعَمِلُوا الصّٰلِحٰتِ ۙ سَوَاۗءً مَّحْيَاهُمْ وَمَمَاتُهُمْ ۭ سَاۗءَ مَا يَحْكُمُوْنَ        21؀ۧ

Tarjumah: “Woh log gumaan karte hain jinhone gunah kiye ke hum unko bana denge in logon jaisa jo Imaan laye aur nek amal kiye. Barabar hai inka jeena marna. Bohat bura hai jo woh kehte hain.”

Woh raat bhar namaz mein baar baar yahi ayat padhte rahe aur Zaar-o-Qatar rote rahe.

Hazrat Rabee’ (رحمہ اللہ) ke Khauf-e-Khuda aur Khashiyat-e-Ilaahi ke mutalliq bhi bohat se waqeyaat mashhoor hain, Un mein se aik dard angaiz yeh waaqiya unke qareebi saathiyon ne bayan kiya. Farmaate hain ke hum Darya-e-Faraat ke kinaare par pohnche, Wahan aik jalti hui lohe ki bhatti ko dekha jis mein se aag ke shararey ooper uthh rahe thay, Aag mein tezi paida karne ke liye patthar ka koila us mein istemaal kiya ja raha tha, Jab Hazrat Rabee’ ne aag ka yeh manzar dekha to wahin theher gaye, Jism mein larzah taari ho gaya. Is tarah kapkapaaye ke hum ghabraagaye. Is manzar se mutaasir ho kar woh Qur’an majeed ki yeh ayat padhne  lage:

اِذَا رَاَتْهُمْ مِّنْ مَّكَانٍۢ بَعِيْدٍ سَمِعُوْا لَهَا تَغَيُّظًا وَّزَفِيْرًا 12؀وَاِذَآ اُلْقُوْا مِنْهَا مَكَانًا ضَيِّقًا مُّقَرَّنِيْنَ دَعَوْا هُنَالِكَ ثُبُوْرًا 13۝ۭ

Padhte padhte ghashi kha kar gir pade, Hosh aane tak hum wahin baithey rahe, Phir hum ne unhe ghar pohchaya.

Hazrat Rabee’ bin Khusaym (رحمہ اللہ) ne apni poori zindagi maut ke intezaar mein guzar di, Aur Allah ta’ala se mulaqat ke liye hama dam tayyar rahe, Jab maut ka waqt qareeb aaya unki beti aah zaari karne lagi, Isey rota dekh kar farmaya: Chup karo beta roti kyun ho? Tere baap ko to bohat behtar cheez mil rahi hai, Phir unki rooh Qafas-e-Unsari se parwaaz kar gayi.

Hazrat Rabee’ bin Khusaym (رحمہ اللہ) ke liye mufassal Halat-e-Zindagi maloom karne ke liye darj zail kitaabon ka muta’ala  kijiye:

1: Tahzib ul Tahzib Ibn-e-Hajar                                  
2: Hilyat ul Awliya Abu Nuaem Asfhani                                  2/105-118
3: Sifat ul Safwah                                                                         3/59-68
4: Kitab ul Zuhd Imam Ahmed bin Hanbal                           336
5: Al Aqdul Fareed
6: Al Ma’araf Ibn-e-Qutaibah   dikhiy fahrist
7: Jamhart-o-Ansab-e-Arab                                                  201
8: Al Tabaqat ul Kubra Ibn-e- Saad                                      6/10

REFERENCE:
Book: “Hayat-e-Taba’een kay Darakhsha pahelo”
Taleef :  Dr. Abdur Rahman Rafat Al- Pasha.
Urdu Translation : By Professor Mehmood Ghaznofer

حضرت ربیع بن خثیم (رحمہ اللہ تعالی)

 


اے ابو یزید

اگر تجھے رسول ﷺ دیکھ لیتے تو ضرور تجھ سے پیار کرتے۔

(عبد اللّٰہ بن مسعود رضی اللہ عنہ)


 

حضرت ہلال بن اسافؒ نے اپنے مہمان منزربن یعلی ثوری ؒ سے کہا: کیا میں آپ کو شیخ ربیع بن خثیم کی زیارت کے لیے نہ لے چلوں؟
تاکہ چند گھڑی ان سے ایمان و یقین کی باتیں ہوں۔

منزرؒ نے کہا کیوں نہیں ضرور چلیں ، میں تو کوفہ آیا ہی اس لیے ہوں تاکہ آپ کے محترم شیخ ربیع بن خثیم کی زیارت کر سکوں اور کچھ عرصہ ایمان و یقین کے دلآویز ماحول میں گزارنے کی سعادت حاصل ہو سکے لیکن کیا ہمیں زیارت کی اجازت بھی مل سکے گی؟ کیونکہ مجھے پتہ چلا ہے کہ جب سے ان پہ فالج کا حملہ ہوا ہے۔ وہ اپنے گھر کے ہی ہو کر رہ گئے ہمیشہ وہیں یاد الٰہی میں مصروف رہتے ہیں اور لوگوں سے ملاقات میں قدرے دلچسپی نہیں رکھتے ۔

ہلال بن اساف بولے ! بات تو آپ کی درست ہے جب سے وہ کوفہ میں فروکش ہوئے ہیں ان کا طرز عمل ایسا ہی دیکھنے میں آیا ہے لیکن بیماری نے چنداں کوئی تبدیلی نہیں کی ہے۔

حضرت منزرؒ نے کہا تو پھر ان کے پاس جانے میں کوئی حرج نہیں لیکن آپ کو معلوم ہونا چاہیئے ان مشائخ کے مزاج بڑے ہی نرم و نازک ہوا کرتے ہیں آپ کی رائے کیا ہےکہ دوران ملاقات ہم شیخ سے سوالات

کریں یا خاموشی سے بیٹھیں اور وہ جو اپنی مرضی سے بات کریں وہی سنیں۔

حضرت ہلال بن اساف بولے۔

اگر آپ ربیع بن خثیمؒ کے پاس مکمل ایک سال تک بھی بیٹھے رہیں وہ نہیں بولیں گے جب تک تم خود ان سے بات نہیں کرو گے وہ قطعاً گفتگو میں پہل نہیں کریں گے کیونکہ ان کا کلام ذکر الہٰی پر مشتمل ہوتا ہے۔اور خاموشی غور و فکر پر مبنی ہوتی ہے۔
حضرت منزرؒ نے کہا پھر آئیے اللّٰہ کا نام لے کر ان کے پاس چلتے ہیں ۔ دونوں شیخ کے پاس گئے سلام عرض کی اور پوچھا جناب شیخ کیا حال ہے؟
فرمایا:حال کیا پوچھتے ہو ایسا ناتواں ، کمزور اور گنہ گار ہوں جو اپنے اللہ کا رزق کھاتا ہوں اور اپنی موت کا منتظر ہوں حضرت ہلال ؒ بولے کوفہ میں ایک ماہر طبیب آیا ہے اجازت ہو ، تو علاج کے لیے بلالیں؟

فرمایا: ہلال ؒ میں جانتا ہوں کہ دواء برحق ہے علاج کرانا سنت ہے ، لیکن میں نے عاد ، ثمود ، اصحاب رس اور انکے درمیان آنے والی قوموں کے حالات کا بغور جائزہ لیا ہے ۔ میں نے دنیا میں ان اقوام کے لالچ اور دنیاوی سازو سامان میں ان کی حریصانہ دلچسپی کو دیکھا ہے وہ ہم سے زیادہ طاقت ور اور صاحب حیثیت تھے ان میں ماہر اطباء بھی موجود تھے ۔ وہ لوگ بیمار بھی ہوتے تھے ۔ اب دیکھئے نہ کوئی معالج رہا نہ کوئی مریض سب فنا ہوگئے ان کا نام و نشان نہ رہا پھر گہری اور لمبی سوچ کے بعد فرمایا : ہاں ایک بیماری ایسی ضرور ہے جس کا علاج ضرور کرانا چاہیے حضرت منزرنے مئودبانہ انداز میں پوچھا وہ کونسی بیماری ہے۔

فرمایا: اس روحانی بیماری کا نام ہے “گناہ”

پوچھا:۔ اس کا علاج کس دواء سے کیا جائے۔
فرمایا: استغفار سے۔
حضرت منزرؒ نے پوچھا شفا کیسے ہو گی؟
فرمایا: ایسی سچی توبہ کی جائے کہ وہ پھر گناہ دوبارہ نہ ہو ۔ پھر ہماری طرف غور سے دیکھا اور بڑے زوردار انداز میں فرمایا پوشیدہ انداز میں کیے گئے گناہ لوگوں کی نظروں سے تو مخفی رہتے ہیں۔لیکن اللّٰہ تعالیٰ کے سامنے تو وہ ظاہری ہوتے ہیں ، کیونکہ اس کے سامنے تو کوئی چیز مخفی نہیں وہ علام الغیوب ہے ، وہ سینوں کے بھید خوب اچھی طرح جانتا ہے۔
چھپ کر گناہ کرنا ایک خطرناک روحانی بیماری ہے ۔ اس کی دواء تلاش کرو ۔ حضرت منزرؒ نے پوچھا : آپ خود ہی بتا دیجیے اس کی دواء کیا ہے
فرمایا : خالص اور سچی توبہ ہے جسے تو بتہ النصوح کہتے ہیں ، پھر زارو قطار رونے لگے یہاں تک کہ ان کی داڑھی مبارک آنسوؤں سے بھیگ گئی۔
حضرت منزرؒ نے یہ عجیب منظر دیکھ کر کہا ۔ محترم بڑا تعجب ہے آپ رو رہے ہیں ، حالانکہ آپ کی عبادت ، تقوی خشیت اور اخلاص کا ہر طرف چرچا ہے۔
فرمایا : صدافسوس ہا ئے غم۔

بھلا میں کیوں نہ روؤں میں نے بچشم خود ایسی عظیم قوم کو دیکھا ہے کہ ہم ان کے مقابلے میں بونے نظر آتے ہیں ۔ یعنی صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین کی مقدس جماعت حضرت ہلال بیان کرتے ہیں ، کہ ہم بیٹھے شیخ محترم سے بات کر رہے تھے ۔

اتنے میں ان کا بیٹا اندر آیا پہلے اس نے ادب سے سلام کیا پھر کہا۔

ابا جان امی نے آپ کے لیے بہت عمدہ میٹھا اور لزیز پکوان تیار کیا ان کی دلی خواہش ہےکہ آپ اس میں سے کچھ ضرور تناول کریں ۔ اجازت ہو تو میں لے آؤں فرمایا لے آؤ ۔ جب بیٹا وہ عمدہ پکوان لانے کے لیے کمرے سے باہر نکلا تو ایک سوالی نے دروازہ کھٹکھٹایا آپ نے کہا اسے اندر بلا لو میں نے دیکھا کہ ایک پراگندہ حال بوڑھا آدمی پھٹے پرانے کپڑے پہنے جھومتا ہوا اندر آرہا ہے اور اس کے مونہہ سے رالیں ٹپک رہی ہیں چہرے مہرے سے وہ مجذوب نظر آرہا تھا ۔ وہ صحن میں کھڑا ہو گیا ۔ میں ابھی حیرت و استعجاب میں ڈوبا ہوا اس بیچارے کو دیکھ رہا تھا اتنے میں شیخ کا بیٹا ایک بڑے تھال میں میٹھا پکوان لے آیا شیخ نے اپنے بیٹے سے کہا یہ تھال اس سوالی مجذوب کے سامنے رکھ دو ۔ اس نے حکم کی تعمیل کرتے ہوئے تھال اس کے سامنے رکھ دیا ۔ تو وہ شخص اس پر ٹوٹ پڑا حالت یہ تھی کہ اس کی رالیں کھانے پر گر رہی تھیں اور بدستور کھانے میں جتا ہوا تھا یہاں تک کہ وہ تھال کو چٹ کر گیا ۔ بیٹے نے بڑی افسردگی سے کہا : اباجان اللّٰہ کی بے پناہ رحمتیں آپ پر نازل ہوں امی نے تو بڑے جتن سے یہ پکوان آپ کے لیے تیار کیا تھا ہماری دلی خواہش تھی کہ آپ تناول کرتے لیکن آپ نے ایک ایسے شخص کو یہ کھلا دیا جسے اتنا بھی پتہ نہیں کہ اس نے کیا کھایا اور اس کا مزا کیا تھا۔

شیخ نے فرمایا:
بیٹا اگر یہ شخص نہیں جانتا تو کیا ہوا ہمارا پروردگار اللّٰہ تو جانتا ہے پھر قرآن مجید کی کی یہ آیت تلاوت کی ۔
 *لن تنالوا البر حتی تنفقوا مما تحبون،*
آل عمران ۔٩٢
یہ باتیں ہو رہی تھیں کہ شیخ کا ایک قریبی رشتہ دار آیا اور اس نے یہ اندوہناک خبر دی کہ حضرت حسینؓ کو میدان کربلا میں شہید کر دیا گیا ہے ، شیخ نے یہ غمناک خبر سن کر کہا:
انا للّٰہ وانا الیہ راجعون اور ساتھ ہی قرآن مجید کی یہ آیت پڑھی۔

 

*قُلِ اللّٰہُمَّ فَاطِرَ السَّمٰوٰتِ وَ الۡاَرۡضِ عٰلِمَ الۡغَیۡبِ وَ الشَّہَادَۃِ اَنۡتَ تَحۡکُمُ بَیۡنَ عِبَادِکَ فِیۡ مَا کَانُوۡا فِیۡہِ یَخۡتَلِفُوۡنَ ﴿۴۶﴾-الزمر-٤٦*

 

شیخ کی زبان مبارک سے صرف اتنی سی بات سن کر تسلی نہ ہوئی ۔ تو اس نے دریافت کیا: حضرت حسین رضی اللہ عنہ کی شہادت کے بارے میں آپ کی کیا رائے ہے۔
فرمایا : ان سب کو اللّٰہ ہی کی طرف لوٹنا ہے اور وہی ان کا حساب لے گا۔ حضرت ہلالؒ فرماتے ہیں میں نے دیکھا کہ ظہر کا وقت قریب آرہا ہے سلسلہ کلام منقطع ہو جائے گا میں نے عرض کیا : جناب مجھے کوئی نصیحت کیجئے ۔

آپ نے فرمایا ، اے ہلال لوگوں کے منہہ سے اپنی تعریف سن کر کہیں دھوکہ نہ کھا جانا ، لوگ تو صرف تیرے ظاہر کو دیکھتے ہیں تیرے باطن کا ان کو کیا علم : دیکھو میری یہ بات پلے باندھ لو تم اپنے عمل کی جانب رواں دواں رہو ، اور ہر وہ عمل جو اللّٰہ کی رضا کے لیے نہ کیا جائے وہ بے کار ہے وہ اکارت جائے گا اس کی کوئی قدرو قیمت نہیں ۔
حضرت منزرؒ نے کہا مجھے بھی کوئی نصیحت کیجئے اللّٰہ آپ کو جزائے خیر عطا کرے۔
فرمایا: اپنے علم کے مطابق اللہ سے ڈرو جس چیز کا تجھے علم نہ ہو اسے کسی عالم کے سپرد کرو اور خود بھی اسی کی طرف رجوع کرو۔
اے منزر کبھی ایسا نہ کہنا کہ میں اللّٰه کی طرف رجوع کرتا ہوں ۔ اگر رجوع نہ کیا یہ جھوٹ لکھا جائے گا ۔ بلکہ ہمیشہ یہ دعاکرو۔

اے اللّٰه میری طرف رجوع فرما میں درماندہ و بے کس ہوں مجھے معاف کردے اور اس طرح کبھی تو جھوٹا نہ ہو گا۔

اے منزر خوب اچھی طرح جان لو: انسانی گفتگو میں لا الہ الا اللّٰہ الحمدللہ ، اللّٰہ اکبر سبحان اللہ ، خیر کی طلب ، شر سے پناہ، نیکی کے حکم برائی سے روکنے اور قرآن مجید کی تلاوت کے علاوہ کسی اور بات میں خیروبرکت نہیں ہے ۔ دین کی بات کرو ورنہ خاموش رہو۔
حضرت منزرؒ بولے : جناب ہم اتنی دیر آپ کے پاس بیٹھے آپ کی قیمتی باتوں اور دلپذیر نصیحتوں سے فیضیاب ہوئے ۔ لیکن آپ نے اپنی گفتگو کے دوران کوئی شعر نہیں پڑھا حالانکہ آپکے ہم عصر بطور استدلال گفتگو کے دوران شعر پڑھتے ہیں ۔ اس کی کیا وجہ ہے؟

شیخ نے فرمایا ، جو بھی اس دنیا میں کہا جاتا ہے اسے فوراً لکھ لیا جاتا ہے اور وہ قیامت کے دن پڑھ کر سنایا جائے گا میں نہیں چاہتا کہ میرے نامہ اعمال میں شعر لکھا جائے ، اور قیامت کے دن وہ مجھے پڑھ کر سنایا جائے ۔
پھر فرمایا: سنو ! اپنی موت کو کثرت سے یاد کیا کرو ۔ وہ پردہ غیب میں ہر دم تمھاری منتظر ہے ، جب نگاہوں سے اوجھل کسی پیارے کی غیر حاضری طویل ہو جاتی ہے تو اس کا واپس لوٹنا قریب ہو جاتا ہے اور گھر والے ہر دم اس کی راہیں تکتے رہتے ہیں ، یہ کہہ کر وہ اتنا روئے کی آنسوؤں کی جھڑی لگ گئی ، پھر فرمایا:
 کل جب شدید زلزلے میں زمین کو ریزہ ریزہ کر دیا جائے گا پروردگار غیض و غضب میں ہوگا فرشتے صف باندھے کھڑے ہونگے ، اور جہنم کو لا حاضر کیا جائے گا بتاؤ پھر ہم کیا کر سکیں گے ، حضرت ہلال بیان کرتے ہیں کہ جب شیخ ربیع ؓ نے بات ختم کی ادھر ظہر کی اذان ہونے لگی بیٹے سے کہا آؤ چلیں اللّٰہ کا بلاوا آگیا ہے بیٹے نے ہم سے کہا اباجی کو سہارا دینے میں میرا ساتھ دیجیے ، دائیں طرف سے بیٹے نے سہارا دیا اور بائیں طرف سے میں نے اور ہم انہیں کے کر مسجد کی طرف چلے حالت یہ تھی کہ شیخ کے دونوں پاؤں زمین میں گھسٹتے جا رہے تھے۔
حضرت منزر ؒ نے کہا :
جناب ابو یزیدؒ آپ معذور ہیں اللہ کی طرف سے آپ کو رخصت ہے ۔ آپ نماز گھر میں ہی پڑھ لیتے فرمایا :
 آپ ٹھیک کہتے ہیں ۔ لیکن میں نے مؤزن کو یہ کہتے ہوئے سنا ، آؤ کامیابی کی طرف دوڑو کامرانی کی طرف جو شخص کامیابی و کامرانی کی طرف بلائے اس کی آواز پہ لبیک کہتے ہوئے جانا چاہیے خواہ گھٹنوں کے بل چل کر کیوں نہ جانا پڑے۔


کیا آپکو معلوم ہے کہ ربیع بن خشیم ہیں کون ؟

یہ کبار تابعین میں سے تھے یہ اپنے دور میں آٹھ افراد میں سے تھے جن میں زہدو تقی انتہا درجے کا پایا جاتا تھا –
یہ خالص عربی تھے , اور خاندانی اعتبار سے مضر پہ جا کر ان کا سلسلہ نسب نبی اکرمﷺکے ساتھ مل جاتا تھا بچپن سے ان کی تربیت اللّٰہ کی اطاعت کے ماحول میں ہوئی لڑکپن تقوی کے ماحول میں گزرا رات کے وقت ان کی والدہ سو جاتی صبح اٹھتی تو کیا دیکھتی کہ اس کا بیٹا گھر کے ایک کونے میں ہاتھ باندھے کھڑا اللّٰہ تعالیٰ سے سرگوشیاں کرنے میں محو ہے , دنیا دمافیھا سے بے نیاز نماز میں مستغرق ہے , محبت و شفقت سے بھر پور لہجے میں آواز دیتی بیٹے ربیع تجھے کیا ہوا ؟
کیا نیند نہیں آتی : میرے پیارے بیٹے اب تو سو جاؤ – وہ جواب دیتے اماں جان !
بھلا وہ شخص کیسے ہو سکتا ہے جس پہ رات کی تاریکی چھا گئی ہو – اور اسے دشمن کے حملے کا اندیشہ ہو یہ سن کر بوڑھی اماں کے آنسو بہنے لگے اور اس نے بیٹے کو دعائیں دیں –
جب حضرت ربیعؒ جوان ہوئے تو ان کے ساتھ تقوی بھی توانا و جوان ہوا – اور خشیت الٰہی کا جزبہ بھی اسی طرح پروان چڑھا –

رات کی تاریکی میں جبکہ لوگ گہری نیند سوئے ہوئے تھے وہ اس قدر گڑ گڑاتے اور گریہ زاری کرتے کہ ان کی گھگھی بندھ جاتی – بوڑھی اماں کو اپنے لاڈلے بیٹے کی حالت پر ترس آنے لگتا :
اور اندیشہ ہائے دروں میں مبتلا ہو کر آواز دیتی : میرے پیارے بیٹے ماں صدقے تجھے ہوا کیا ہے ؟
کیا کوئی جرم کر بیٹھے ہو کیا کسی کو قتل کیا ہے :
ماں نے گھبراہٹ میں پوچھا بیٹا مجھے بتاؤ مقتول کون ہے , بتاؤ کسے قتل کر بیٹھے ہو – تاکہ ہم اس کے ورثاء کی منت سماجت کریں – ہو سکتا ہے وہ تجھے معاف کر دیں – بخدا اگر مقتول کے وارث تیری آہوں سسکیوں اور گریہ زاریوں کو دیکھ لیں مجھے امید ہے وہ تجھے معاف کردیں گے –
اس نے کہا – اماں جان آپ ان سے بات نہ کریں میں نے اپنے آپ کو قتل کیا ہے – ماں نے پوچھا کیسے ؟
فرمایا گناہوں سے اپنے آپ کو قتل کیا ہے –


 

 حضرت ربیع بن خشیمؒ حضرت عبداللّٰہ بن مسعود رضی اللّٰہ عنہ کے شاگرد رشید تھے – اور حضرت عبداللّٰہ بن مسعود رضی اللّٰہ عنہ خوب صورت اور شکل و صورت میں تمام صحابہ سے بڑھ کر رسول اقدس ﷺ سے مشاہبت رکھتے تھے حضرت ربیع رضی اللّٰہ عنہ کے اپنے استاذ عبداللّٰہ بن مسعود رضی اللّٰہ عنہ کے ساتھ تعلقات و روبط ایسے ہی تھے جیسے ایک فرمانبردار بیٹے کے اپنے والد سے ہوتے ہیں – استاذ بھی اپنے شاگرد سے ایسے ہی پیار کرتے جیسے باپ اپنے اکلوتے بیٹے سے پیار کرتا ہے –

لہذا حضرت ربیعؒ اپنے استاذ کے ہاں بلا اجازت آجایا کرتے تھے , حضرت عبداللہ بن مسعود رضی اللّٰہ عنہ جب ربیع بن خشیم کے دل کی صفائی – اخلاص اور حسن عبادت کو دیکھتے تو دل میں حسرت پیدا ہوتی – کاش میرا یہ شاگرد نبی اکرم ﷺ کی زندگی میں ہوتا , انہیں اس تا خیر زمانی کا افسوس ہوتا , یہ فرمایا کرتے تھے :
اے ابو یزید اگر تجھے رسول اللّٰہﷺ بچشم خود دیکھ لیتے تو یقینا تجھ سے محبت کرتے – اور یہ بھی فرمایا کرتے –
اے ربیع جب بھی تجھے دیکھتا ہوں اللّٰہ تعالیٰ کی بارگاہ میں خشوع خضوع کرنے والے لوگ یاد آجاتے ہیں –


 

اس سلسلہ میں حضرت عبداللّٰہ بن مسعود رضی اللّٰہ عنہ کوئی مبالغہ آرائی سے کام نہیں لیتے تھے – بلکہ واقعہ یہ ہے کہ حضرت ربیع بن خشیم رحمتہ اللّٰہ خشیت الٰہی , تقوی و پاکیزگی کے اس اعلی وارفع مقام پر فائز تھے کہ اس طبقے میں کوئی بھی اس کا ثانی نہ تھا – ان سے اس سلسلے میں ایسے واقعات منقول ہیں جو ہمیشہ اسلامی تاریخ کے صفحات میں مثل آفتاب و مہتاب چمکتے دمکتے رہیں گے ان کا ایک مخلص قریبی ساتھی بیان کرتا ہے میں حضرت ربیع بن خشیم کے ساتھ بیس سال رہا میں نے اسے ہمیشہ وہی بات کرتے سنا جسے فرشتے احترام سے لے کر آسمان کی طرف چڑھتے ہیں پھر یہ آیت تلاوت کی –

الیہ یصعد الکلم الطیب والعمل الصالح یرفعہ-

 

عبدالرحمان بن عجلان بیان کرتے ہیں میں ایک رات حضرت ربیعؒ کے پاس سویا جب انہیں یقین ہو گیا کہ میں گہری نیند سو گیا ہوں انہوں نے نماز پڑھنا شروع کر دی اور نماز میں یہ آیت اونچی آواز میں پڑھنے لگے-

 

ام حسب الذین اجترحوا السیات ان نجعلھم کالالذین آمنو وعملوا الصالحات سواء محیاھم ومماتھم ساء ما یحکمون –

ترجمہ :
وہ لوگ گمان کرتے ہیں جنہوں نے گناہ کئے کہ ہم ان کو بنا دیں گے ان لوگوں جیسا جو ایمان لائے اور نیک عمل کئے – برابر ہے ان کا جینا اور مرنا بہت برا ہے جو کہتے ہیں –
وہ رات بھر نماز میں بار بار یہی آیت پڑھتے رہے اور زارو قطار روتے رہے –
حضرت ربیعؒ کے خوف خدا اور خشیت الٰہی کے متعلق بھی بہت سے واقعات مشہور ہیں ان میں سے ایک دردانگیز یہ واقعہ ان کے قریبی ساتھیوں نے بیان کیا فرماتے ہیں کہ ہم دریائے فرات کے کنارے پر پہنچے وہاں ایک جلتی ہوئی لوہے کی بھٹی کو دیکھا جس میں سے آگ کے شرارے اوپر اٹھ رہے تھے آگ میں تیزی پیدا کرنے کے لیے پتھر کا کوئلہ اس میں استمعال کیا جا رہا تھا , جب حضرت ربیع نے آگ کا یہ منظر دیکھا تو وہیں ٹھر گئے, جسم میں لرزہ طاری ہو گیا – اس طرح کپکپائے کہ ہم گبھرا گئے –
اس منظر سے متاثر ہو کر وہ قرآن مجید کی یہ آیت پڑھنے لگے –

 

اذا راتھم من مکان بعید سمعو الھا تغیظا و زفیرا و اذ لقوا فیھا مکانا ضیقا مقرنین دعوا ھنالک ثبورا ۔

 

پڑھتے پڑھتے غشی کھا کر گر پڑے ہوش آنے تک ہم وہیں بیٹھے رہے،پھر ہم نے انہیں گھر پہنچایا ۔


 

حضرت ربیع بن خشیمؒ نے اپنی پوری زندگی موت کے انتظار میں گزار دی ، اور اللّٰہ تعالیٰ سے ملاقات کے لیے ہمہ دم تیار رہے ، جب موت کا وقت قریب آیا ، تو ان کی بیٹی آہ وذاری کرنے لگی اسے روتا دیکھ کر فرمایا : چپ کرو بیٹا روتی کیوں ہو ، تیرے باپ کو تو بہت بہتر چیز مل رہی ہے ، پھر انکی روح قفص عنصری سے پرواز کر گئی ۔


حضرت ربیع بن خشیمؒ رحمہ اللّٰہ کے لیے مفصل حالات زندگی معلوم کرنے کے درج ذیل کتابوں کا مطالعہ کیجئے ۔

 

١-تہزیب التہذیب ابن حجر
٢-حلیتہ الاولیاء ابو نعیم اصفہانی ٢/ ١٠٥- ١١٨
٣-صفتہ الصفوة ٣/ ٥٩- ٦٨
٤- کتاب الزھد – احمد بن حنبل ٣٣٦
٥-العقد الفرید
٢-المعارف ابن قتیبہ دیکھئے فہرست
٧-جمہرة انساب العرب. ٢٠١
٨-الطبقات الکبریٰ ابن سعد ٦/ ١٠

 

 

حوالہ:
“کتاب: حَياتِ تابِعِين کے دَرخشاں پہلوُ”
تالیف: الاستاذ ڈاکتور عبد الرحمان رافت الباشا
ترجمه: محمود غضنفر
Table of Contents