Sections
< All Topics
Print

06. Hazrat Umar bin Abdul aziz aur uska farzand Abdul Malik (رحمہ اللہ تعالی)

Hazrat Umar bin Abdul aziz aur uska farzand Abdul Malik

“Kya aap jante hain ke har qaum mein aik yaktaaye rozgaar shakhsiyat hoti hai aur Banu Umaiyya ki yeh naadir shakhsiyat Umar bin Abdul Aziz hai. Qayamat ke din is akaile ko ummat ki soorat mein uthaya jaye ga.”

 (محمد بن علی بن حسین)

Jaleel-ul-Qadr tabiee Umar bin Abdul Aziz apne pesh roo khalifah Abdul Malik bin Suleiman ki qabar par mitti daal kar abhi apne haath jhaad hi rahe thay keh unhone apne irdgird zameen pe thar tharaahat ki awaz suni, Poocha yeh kya hai? Paas khade logon ne btaya: Janab apki sawari ke liye yeh sarkari gaadiyon ki Naqal-o-Harkat hai. Hazrat Umar bin Abdul Aziz ne unki taraf aik taiaranah nigaah dali aur us shakhs ki maanind kapkapaati, larzaati aur dheemi awaz se bole: Jise thakawat ne laaghar kar diya ho, Ya musalsal bedaari ne muzmahal kar diya ho. Farmaya: Mera in gaadiyon se kya waasta. Inhen yahan se peechy hata do. Mere liye meri khachhar kaafi hai woh laao main usi pe sawar hounga. Abhi khachhar par baithna hi chahte thay keh security guard ka Chaaq-o-Choband commander aapke aage aage chalne ke liye aa dhamka. Aur uske dayen bayen hifazti daste ke ghabru jawan thay, Jinke hathon mein chamakdaar naize pakade huye thay, Unki taraf dekha aur farmaya: mera in se kya kaam?

Main Ummat-e-Muslimah ka aik fard hun wese hi Subah-o-Shaam zindagi basar karta hun jis tarah doosre musalman basar karte hain, yeh keh kar aap chal pade, Log bhi apke humrah chal pade, Aap masjid mein aaye ailaan kiya gaya ke sab log masjid mein jamaa ho jayein. Ailaan sunte hi log masjid ki taraf daudey aur har taraf se giroh dar giroh woh masjid mein daakhil hone lage. Jab majma bhar gaya to aap khitaab ke liye khade huye, Hamd-o-Sanaa aur Salaat-o-Salam ke baad farmaya: Logon! Meri raaye liye baghair mere naatawan kandhon par khilafat ka bojh laad diya gaya hai, Na maine kabhi uska mutaalba kiya na musalmanon se iske mutalliq mashwara liya gaya aur na hi khilafat ki is aham zimmedaari ko apne liye pasand karta hun.

Meri taraf se tumhein khulli chutti hai jisey chaho apna khalifah muntakhib kar lo. Yeh sun kar majma bayak waqt baa awaz buland pukaar utha. Aye Ameer ul Momineen hum apko apna khalifah maante hain, Hum aap par raazi hain. Aap hukoomat ki baag dor sambhalein. Allah apka Haami-o-Naasir hoga. Jab aapne yeh Soorat-e-Haal dekhi ke koi aik bhi awaz uske khilaaf na uthi sab is par mutmayin hain ke main Masnad-e-Khilafat par baithoon, Abhi logon ka shor tha. Aap ne dubara Hamd-o-Sanaa aur Durood-o-Salam padha aur logon ko taqwah ikhtiyaar karne, Duniya se be niyaazi baratne aur aakhirat ki fikar karne ki talqeen ki, Logon ko apni maut yaad dilane ke liye aise dilsoz lehje mein talqeen karne lage jis se patthar dil bhi mom ho jayein, Gunahgaar ankhon se aansu tapak padein. Unki Zuban-e-Mubarak  se naseehat aamoz kalmaat nikal kar sunne walon ke dilon mein paiwast ho rahe thay. Phir aapne dilsoz, Thakawat numa lekin qadre buland awaz mein kaha: Jo hukmraan Allah ka farmabardaar ho uska kaha mano aur jo Allah ka nafarmaan ho uski baat manna tumhare liye zaruri nahi. Logon: Suno! Jab main Allah ta’ala ka farmabardaar rahun meri baat maante rehna aur jab kabhi Allah ki naafarmaani par utar aaun to tum mere ahkamaat ko thukra dena phir mimbar se utre seedhy ghar gaye. Apne kamre mein ja kar kuch dair sustaane ke liye bistar par daraz ho gaye, Choonke apne pesh roo khalifah ki wafat aur uska kafan dafan ki wajah se aap bohat thak chuke thay.

Ameerul Momineen Umar bin Abdul Aziz abhi apne bistar par pahlu ke bal lete hi thay ke unka satrah (17) saala farzand-e-Arjumand Abdul Malik kamre mein daakhil hua. Usne kaha: Ameerul Momineen aap kya karna chahte hain? Farmaya: Beta main thodi der sona chahta hun main bohat thak chuka hun, Bete ne kaha: Ameerul Momineen kya aap mazloom logon ki daadrassi ke baghair hi so jana chahte hain? Unka woh maal jo Zulm-o-Istabdaad se chheena gaya hai unhen wapis kaun dilayega? Farmaya: Beta! Choonke main khalifah Suleiman ki wafat ki wajah se gazishta saari raat jagta raha. Thakawat ki wajah se mere jism mein sakat nahi. In shaa Allah thoda aaram karne ke baad Namaz-e-Zuhar logon ke humrah padhunga aur phir yaqeenan mazloomon ki daadrassi hogi aur har aik ko uska haq diya jayega. Koi mahroom nahi rahega. Bete ne kaha: Ameerul Momineen iski kaun zamanat deta hai ke aap zohar tak zinda rahenge. Bete ki yeh baat sun kar Umar bin Abdul Aziz tadap uthay, Ankhon se neend jaati rahi thake huye jism mein dubarah tawanayi laut aayi aur yakdam jast laga kar baith gaye aur farmaya: Beta zara mere qareeb aao. Beta qareeb hua to usey gale laga kar maathay ko choomne lage. Aur farmaya: Allah ka shukar hai jis ne mujhe aise honhaar farzand ata kiye jo deeni aitebaar se mera muaawan banega. Phir aap uthay hukm diya ke yeh ailaan kar diya jaye jis par koi zulm hua hai woh apna muqaddama khalifah ke samne aa kar pesh kare.

Yeh Abdul Malik kaun hai? Is naujawan ki daastaan kya hai jiske mutalliq logon ka khayaal hai ke usne apne waalid ko ibaadat guzaari par uksaya, Zaahidon ki raah par chalaya aur auliyaa ki saff mein laa khada kar diya. Aaiyye ab saalih naujawan ki kahani ibteda se aapko sunate hain.

Ameerul Momineen Umar bin Abdul Aziz ke barah (12) bete aur teen (3) betiyan thin, Tamam aulad muttaqi, Parhezgaar aur honhaar thi, Apne behen bhaiyun mein Abdul Malik lk darakhshan sitarah aur Gauhar-e-Aabdaar tha. Ilawah azeen woh bohat zaheen aur Mahir Adeeb tha. Yun to woh naukhaiz jawan tha lekin Aqal-o-Daanish mein boodhon ko bhi maat karta tha. Usne neki aur taqwe ke mahaul mein parwarish payi, Us mein khaandan-e-Farooq-e-Aazam ke ausaaf paye jate thay, Khaas taur par taqwa, Pakeezgi aur khashiyat-e-Ilaahi mein Hazrat Abdullah bin Umar ke hum palla tha.

Uska chacha zaad bhai Aasim bayan karta hai keh main aik dafa Damishq gaya aur wahan apne chachere bhai Abdul Malik ke paas thehra, Abhi uski shaadi nahi hui thi. Ham ne ishaa ki namaz padhi aur sone ke liye dono apne bistar par daraz ho gaye. Abdul Malik ne charagh gul kar diya, Hum donon ne apni ankhein neend ke hawale ki jab adhi raat ko meri aankh khuli to kya dekhta hun ke Abdul Malik andhere mein khada namaz padh raha hai aur Qur’an majeed ki yeh ayat tilawat kar raha hai:

افرایت ان متعناھم سنین. ثم جا ٕ ھم ما کانوا یوعدون. ما اغنی عنھم ما کانوا یمتععون. الشعرإ ٢٧. ٢٥

Bhala dekho to agar hum inhen barson fayeda dete rahe phir unpar woh azaab aa waaqe’ ho jiska inse wada kiya jata raha, to jo faidah yeh utha rahe hain, Inke kis kaam aayenge“.

Maine dekha ke woh dil ko hila dene wali gidgidaahat aur Aah-o-Zaari ke sath baar baar is ayat ki tilawat kar raha hai aur Zaar-o-Qataar roye ja raha hai, Jab maine mehsoos kiya ke yeh Aah-o-Zaari uska kaam tamam kar degi to maine qadre oonchi awaz se لاالہ الااللہ والحمد للہ kaha: Maine yeh jumlah is andaaz mein kaha jaise koi neend se bedaar hote waqt kehta hai. Meri niyyat yeh thi ke woh meri awaz sun kar rona band kar de aise hi hua jab usne meri awaz suni woh khamosh ho gaya aisi chup saadh li jaise woh kamre mein maujood hi nai.

Is honhaar Aal-e-Farooq-e-Aazam ke naukhaiz jawan ne apne daur ke akaabir Ulama se Kitaab-o-Sunnat ka ilm haasil kiya. Qur’an-o-Hadees ke uloom se apne seene ko munawwar kiya, Deeni masaail mein faqih ki masnad par fayez huye aur nau umari ke bawajood shaami Ulamaa-o-Fuqaha par fauqiyyat haasil ki, Aik martabah Ameerul Momineen Umar bin Abdul Aziz ne shaami Ulama’a-o-Fuqaha ko ikhattha kiya aur unse yeh masley daryaft karte huye farmaya: Aye Ulamaye karaam aur fuqahaay izzaam: Main tumhein khush aamdeed kehta hun. Mere khandan mein se jin ashkhaas ne logon ka maal Zulm-o-Istabdaad se cheena hai inke mutalliq apki kya raye hai?

Sab ne yeh jawab diya: Aye Ameerul Momineen yeh kaam apke daur e hukoomat  mein nahi hua iski zimmedaari aap pe nahi aati uska gunaah usi par hoga jis ne maal ghazab kiya, Aap bari uz zimma hain, Lekin Ulama ke is bayan se aap mutmain na huye. Aik aalim jo deegar se mukhtalif raye rakhta tha kehne laga: Ameerul Momineen aap apne farzand-e-Arjumand Abdul Malik ko bulayen. Woh Ma shaa Allah ilm, Fiqh aur Aqal-o-Daanish mein mumtaaz maqaam rakhta hai. Is masley mein uski raye daryaft karen.

Usey bulaya gaya. Jab Abdul Malik paighaam ke mutabiq Darbaar-e-Khilafat mein pohcha to Ameerul Momineen ne kaha: Beta un amwaal ke mutalliq teri kya raye hai, Jo hamare chachaa ke beton ne logon se cheene hain? Kyun keh mazloom log is waqt apna haq wasool karne ke liye mere paas aaye huye hain.

Bete ne jawab diya: Abba jaan in mazloomon ki daadrassi karte huye inka maal wapis lautana apka farz hai. Agar aapne aisa na kiya to aap bhi is zulm mein barabar ke shareek samjhe jayenge. Kyun keh aap ko is zulm ka ilm ho chuka hai. Lihaza is se gullu khalaasi apka farz hai. Yeh baat sun kar Ameerul Momineen Umar bin Abdul Aziz ka chehra khil utha, Dili itminaan mila aur woh gham kaafor hua jis ne apko nidhaal kar rakha tha.

Khandan Farooq-e-Aazam ke azeem sapoot ne Damishq ke pur ronaq bazar, Lehlahaate huye taro tazah baghaat, Suhaane dilkash thande saaya daar darakht aur bal khaati hui rawan dawan nadion unke dilfaraib manaazir ko chod kar sanghlakh (سنگلاخ) sarhaddi ilaaqe ko apni rehayish ke liye muntakhib kiya taake har dam har ghadi Haalat-e-Jihaad mein rehne ki saa’adatein haasil hon. Ameerul Momineen Umar bin Abdul Aziz ko is baat ka ilm hone ke bawajood ke uska beta, Honhaar, Muttaqi, Moaddab aur parhezgaar hai phir bhi inhen andesha laahaq rehta ke kahin shaitaan ke daao mein na aa jaye woh jawani ki kharmastiyon se bohat khaufzadah thay, Woh apne farzand ke mutalliq har tarah ki maloomaat rakhte aur is se kabhi ghaflat na barat tey.

Ameerul Momineen Umar bin Abdul Aziz ke wazeer, Qazi aur Musheer janab Maimoon bin Mehraan bayan karte hain keh main aik din khalifah Umar bin Abdul aziz ke paas gaya, Woh apne bete Abdul Malik ko khatt likh rahe thay jis mein naseehat, Raahnumayi, Tanbeehah aur basharat par mabni jumle likhe us khatt mein unhon ne yeh bhi likha: Beta! Meri baat sun kar ise yaad rakhna auron ki nisbaat tera farz zyada banta hai. Zara khayaal karo. Allah Subhana-o-Ta’ala ne ham pe kitne karam kiye hain. Har chhote bade kaam mein usne hm pe be intahaa ehsaanaat kiye.

Beta! Allah ta’ala ke us fazal ko yaad karo jo usne tujh par aur tere waalidein par kiya hai. Beta! Takabbur, Nakhowat aur gharoor se bachna. Bilashubah yeh shaitaani ausaaf hain aur shaitaan mominon ka azli dushman hai.

Beta! Yeh khat main tujhe is liye nahi likh raha ke mujhe koi teri shikayat mili hai. Mujhe tum par aitemaad hai. Albattah yeh mujhe maloom hua hai keh tere dil mein khud pasandi ke jazbaat maujzan hain. Yaad rakhna agar is khudpasandi ki wajah se tu ne koi gul khilaya to main aisi sarzanish karunga jise tum zindagi bhar yaad rakhoge phir na kehna ke sakhti hui.

Wazeer-e-Mausoof  Janab Maimoon bin Mehraan kehte hain khat likh kar Ameerul Momineen ne meri taraf dekha aur farmaya: Maimoon mujhe mere bete ke sath bohat pyar hai. Mujhe andeshah hai ke yeh pyar iski tarbiyat mein aade na aa jaye aur main bhi ankhein band kar ke isi dagar par chalne lagun jis tarah aksar baap apni aulaad ke bare mein naram rawaiyyah ikhteyaar karte hain aur inke uyoob par pardah dalte rehte hain. Yeh Tarz-e-Amal aulaad ke haq mein qat’an behtar nahi hota.

Maimoon aap abhi Damishq jayein aur achhi tarah is cheez ka jayezah lein. Kahin mere bete ke dil mein takabbur, Nakhowat aur khud pasandi jaisi qabahatein to nahi payi jaatin. Kyun ke abhi woh bachha hai, Kahin shaitaan us par panja na jama le.

Janab Maimoon bayan karte hain main Darbaar-e-Khilafat se hukm paa kar Damishq ki taraf rawanah hua. Raaston ki Nasheb-o-Faraz se guzarta hua Abdul Malik ke ghar pohcha. Andar aane ki ijazat talab ki. Maine dekha ke khoobroo jawan raa’na badi inksaari ke sath safed qaleen par jalwah afroz hai. Yun maloom hota tha jaise aasmaan se zameen par mahtaab utar aya hai.

Usne aage badh kar mujhe khush aamdeed kaha: Jab main iske paas baith gaya to usne kaha: Main ne Abba jaan se aapki tareef suni hai, Mujhe ummeed hai ke Allah ta’ala apke zariye ummat ke afraad ko fayeda pohchayega.

Maine kaha aapka kya haal hai? Usne jawab diya Allah ka ehsaan aur shukar hai main bilkul theek hun lekin mujhe har waqt yeh khatka laga rehta hai ke kahin mujh se koi aisa kam sarzard na ho jaye jis se mere Waalid-e-Mohtaram ke dil ko thes pohche aur mujhe yeh bhi andeshah hai ke kahin unki mere sath mohabbat mere mutalliq durust maloomaat haasil karne mein rukaawat na ban jaye aur main unke liye aik musibaat ban jaon. Mujhe is jawan ki baatein sun kar bada ta’ajjub hua ke baap aur bete ki soch kis qadar aik doosre se milti julti hai, Maine is se poocha mujhe yeh batao tumhara guzarah kaise chalta hai? Usne bataya: Maine yhaan aate hi zameen ka aik tukda khareed liya tha aur uski qeemat maine apni aisi kamayi se ada ki hai jiske halal hone mein koi Shak-o-Shuba nahi us zameen se mujhe itna kuch mil jata hai jo mere guzaare ke liye kaafi hai. Alhamdulillah main musalmanon ke tax ka mohtaaj nahi. Allah ne mujhe us se be niyaaz kar rakha hai. Main us Rabb ul Aalameen ka behad shukr guzaar hun. Maine poocha tumhari khuraak kya hai? Usne bataya kabhi gosht, Kabhi daal aur kabhi sirka aur yahi mere liye kaafi hai.

Maine poocha kya tere dil mein khudpasandi ke jazbaat paye jate hain?

Usne bataya: Haan mere dil mein khudpasandi ke jazbaat paye jate thay. Lekin jab se Abba jaan ne mujhe samjhaya aur shafqat bhare andaz mein mujhe is qabahat se baaz rehne ki talqeen ki maine usey apne dil se bilkul nikaal diya hai. Ab mera dil bilkul saaf hai aur yeh Abba jaan ka mujh pe bohat bada ehsaan hai. Allah mere Abba jaan ko Jaza-e-Khair ata kare. Main Abdul Malik ke paas kaafi der baitha, Khul kar baatein huin, Dauraan-e-Guftagu bohat hi mufeed aur qeemti maloomaat haasil huin. Maine apni zindagi mein is se badh kar khoobsoorat, Aqal mand aur nau umri ke bawajood ba-adab aur saleeqa shuaa’ar koi naujawan nahi dekha. Jab shaam hui aik ladka uske paas aaya, Usne bataya ham faarigh ho chuke hain. Phir woh khamosh ho gaya.

Maine poocha yeh kis kam se faarigh huye hain?

Usne bataya: Hammaam se.

Maine poocha woh kaise? Usne bataya ke unhone mere liye ghusal khana khali karwaya hai, Ab main us mein nahaunga.

Maine Kaha: Janab yeh sun kar mujhe hairat hui hai. Aap se mujhe yeh tawaqqo na thi.

Mera yeh andaz dekh kar woh dar gaya usne انا للہ وانا الیہ راجعون kaha. Aur poocha chacha jaan Allah aap par rehem kare kya hua?

Maine usey kaha:yeh ghusal khana tera hai?

Us ny bataya: nahi!

Main ny kaha: phir aap ko usy khali karany ka kia haq phuchta hy? Kuin tum apny aap ko dusry logon sy bulnd tar samjhty ho. Kia tumhin Surkhab ky par lagy huiy hain? Tum ny gusal khany ky malik ko bhi nuqsan phuncaya oy aur jo log gusal khana istimal karny ki zararat mahsoos karty hain un ko bhi teri wajah sy dushwari uthana padi. Yeh sab kuch kia ha?

Tujhy yeh bat qat’an zeeb nahi deti. Who meri talkh batin sun kar pahly muskuraya aur phr bady adab sy khny laga: Chaca jan! Naraz na hun, Main gusal khany ky malik ko din bhar ki ujrat dy kar khus kar dun ga.

Main ny kaha: is tarha tun aisy israf ka irtikab karo gy jis main takabbur ki a’ameezish pai jati hy.

Yaad rakho tum bhi dosry musalmanoo jaisy ho, Aam logon ki tarha tum bhi hammam istimal karny jaya karo.

Us ny kaha: Chaca jan! dar’asal baaz uqat ganwar qisam ky loog barhanah hammam main nahaty hain, Mujhy is sy ghin aati ha. Is liy main akely nahana pasnd karta hun, Aur yahi aik tariqa ha jis sy satar ko malhoz-e-Khatir rakha ja sakta ha. Ya aap mujhy koi tadbeer batain ky main kia karun?

Maine kaha aaplogo ki faraghat ka intezaar kiya karen. Jab woh hammam mein ghusal kar ke az khud chale jayein to phir aap nahane ke liye jaya karen. Usne kaha: Main aapse wada karta hun ayindah aise hi kiya karunga. Aaj ke baad kabhi bhi din ke waqt Hammaam ka rukh nahi karunga. Darasal is ilaqey ki sardi aur raat ki khanki ka andeshah na hota to main pehle bhi din ko Hammaam ka rukh na karta. phir woh sar neecha kar ke kuch sochne laga. Phir sar uthaya aur mujhe kaha: Ba khuda yeh bat mere Abba jaan ko na batana unhen yeh baat sun kar dili koft hogi. Main nahi chahta ke woh mujh se naraz hon aur isi halat mein unka dam nikal jaye aur main door hone ki wajah se maafi bhi na maang sakun, Maimoon bayan karte hain ke main ne aise nazuk mauqa par uski Aqal-o-Danish ka imtehaan lene ka irada kiya.

Maine kaha agar Ameerul Momineen ne mujh se poocha kya dekh kar aaye ho? Tumhara kya khayaal hai main unke samne jhooth bolun?

Usne kaha: Chacha jaan aap jhooth na bolen. Is se Allah bachaye jab Abba jaan yeh sawal karen to aap poori wazahat se yeh keh dena main ne aik naa gawaar aadat dekhi thi. Lekin maine usey samjha diya aur woh baaz aa gaya. Mujhe ummeed hai ke Abba jaan posheeda ayb ko kuredenge  nahi, Kyun keh Allah ta’ala ne unhein posheedah uyoob ko kuredne se mehfooz rakha hai.

Janab Maimoon kehte hain ke main ne Umar bin Abdul aziz jaisa baap nahi dekha aur na hi Abdul Malik ke jaisa koi beta. Allah donon par apni be paaya rehmat kare.

Allah paanchwe (5) khalifah-e-Raashid Ameerul Momineen Umar bin Abdul Aziz par razi ho aur usey apne khusoosi inamaat se nawaz kar khush kar de, Uski aur uske lakht-e-Jigar Abdul Malik ki qabar ko taro taza baagheecha bana de. Jab yeh baap beta apne rab se milen to inhein salam kiya jaye. Jab yeh naik logon ke sath qayamat ke din uthaye jayein to inhein salam pesh kiya jaye. Ameen.

Ameerul Momineen Umar bin Abdul Aziz aur unke bete Abdul Malik ke mufassal Halaat-e-Zindagi maloom karne ke liye darj zail kitaabon ka muta’ala  karen:

1: Seerat-e-Umar bin Abd ul Aziz                                                    Ibe-e-Jawzi
2: Seerat-e-Umar bin Abd ul Aziz                                                   Ibe-e-Abd ul Hakim
3: Al Tabaqat ul Kubra Ibe-e-Saad                                                jild:1-2-3-4-5-6-7-8
4: Sifat ul Safwah Ibe-e-Jawzi                                                        2/113-126-127
5: Hilyat ul Awliya Abu Nuaem Asfahani                                      5/203-353-364
6: Wafayat ul Aayan Ibe-e-Khalkan                                             jild:1-2-3-4-5-6
7: Tarikh-e-Tabri                                                                                jild:1-2-3-4-5-6-7-8
8: Al Aqad ul Farid Ibe-e-Abd-e-Rabbihi                                   jild:1-2-3-4-5-6-7-8
9: Al Bayan wal Tabyeen Jahiz                                                        jild:1-2-3-4
10: Tarikh-e-Madinah Damishq Ibe-e-Asakir                            2/115-127
11: Tahzzeb ul Tahzeeb Ibe-e-Hajar Asqalani                             7/475-478

 

REFERENCE:
Book: “Hayat-e-Taba’een kay Darakhsha pahelo”
Taleef :  Dr. Abdur Rahman Rafat Al- Pasha.
Urdu Translation : By Professor Mehmood Ghaznofer

حضرت عمر بن عبد العزیز
                اور
 اس کا فرزند عبد المالك( رضي الله عنه)

 



کیا آپ
جانتے ہیں کہ ہر قوم میں ایک یکتائے روزگار شخصیت ہوتی ہے اور بنو امیہ کی یہ نادر شخصیت عمر بن عبدالعزیز ہے قیامت کے دن اس اکیلے کو امت کی صورت میں اٹھایا جائے گا۔

               ( محمد بن علی بن حسین)


جلیل القدر تابعی عمر بن عبد العزیز اپنے پیش رو خلیفہ عبد المالک بن سلیمان کی قبر پر مٹی ڈال کر ابھی اپنے ہاتھ جھاڑ ہی رہے تھے۔ کہ انہوں نے اپنے ارد گرد زمین پہ تھر تھراہٹ کی آواز سنی پوچھا یہ کیا ہے؟ پاس. کھڑے لوگوں نے بتایا: جناب آپکی سواری کے لئے یہ سرکاری گاڑیوں کی نقل و حرکت ہے۔ حضرت عمر بن عبد العزیز نے ان کی طرف ایک طائرانہ نگاہ ڈالی۔ اور اس شخص کی مانند کپکپاتی ‘ لرزتی اور دھیمی آواز سے بولے جسے تھکاوٹ نے لاغر کر دیا ہو یا مسلسل بیداری نے مضمحل کر دیا ہو۔ فرمایا۔ میرا ان گاڑیوں سے کیا واسطہ ۔ انہیں یہاں سے پیچھے ہٹا دو۔ میرے لئے میری ٹیچر کافی ہے وہ لاؤ میں اس پر سوار ہوں گا۔ ابھی ٹیچر پر بیٹھنا ہی چاہتے تھے کہ سیکورٹی گارڈ کا چاق و چوبند کمانڈر آپکے آگے آگے چلنے کے لئے آدھمکا۔ اور اس کے دائیں بائیں حفاظتی دستے کے گھبرو جوان تھے ‘ جن کے ہاتھوں میں چمکدار نیزے پکڑے ہوئے تھے ‘ ان کی طرف دیکھا اور فرمایا میرا ان سے کیا کام؟
 میں امت مسلمہ کا ایک فرد ہوں ویسے ہی صبح و شام زندگی بسر کرتا ہوں۔ جس طرح دوسرے مسلمان بسر کرتے ہیں ‘ یہ کہہ کر آپ چل پڑے لوگ بھی آپ کے ہمراہ چل پڑے آپ مسجد میں آئے۔ اعلان کیا گیا کہ سب لوگ مسجد میں جمع ہو جائیں۔ اعلان سنتے ہی لوگ مسجد کی طرف روڑے اور ہر طرف سے گروہ در گروہ مسجد میں داخل ہونے لگے۔ جب مجمع بھر گیا تو آپ خطاب کے لئے کھڑے ہوئے حمد و ثنا اور صلوۃ و سلام کے بعد فرمایا لوگو! میری رائے لئے بغیر میرے ناتواں کندھوں پر خلافت کا بوجھ لاد دیا گیا ہے ‘ نہ میں نے کبھی اس کا مطالبہ کیا۔ نہ مسلمانوں سے اس کے متعلق مشورہ لیا گیا۔ اور نہ ہی خلافت کی اس اہم ذمہ داری کو اپنے لئے پسند کرتا ہوں۔

میری طرف سے تمہیں کھلی چھٹی ہے جسے چاہو اپنا خلیفہ منتخب کر لو۔ یہ سن کر مجمع بیک وقت باواز بلند پکار اٹھا۔ اے امیر المئومنین ہم آپ کو اپنا خلیفہ مانتے ہیں۔ ہم آپ پر راضی ہیں۔ آپ حکومت کی باگ ڈور سنبھالیں اللہ آپ کا حامی و ناصر ہو گا۔ جب آپ نے یہ صورت حال دیکھی کہ کوئی ایک بھی آواز اس کے خلاف نہیں اٹھی سب اس پر مطمئن ہیں کہ میں مسند خلافت پر بیٹھوں ‘ ابھی لوگوں کا شور تھا۔ آپ نے دوبارہ حمد و ثناء اور درود و سلام پڑھا اور لوگوں کو تقوی اختیار کرنے ‘ دنیا سے بے نیازی برتنے اور آخرت کی فکر کرنے کی تلقین کی لوگوں کو اپنی موت یاد دلانے کے لیئے ایسے دلسوز لہجے میں تلقین کرنے لگے ‘ جس سے پتھر دل بھی موم ہو جائیں ‘ گنہگار آنکھوں سے آنسو ٹپک پڑیں۔ انکی زبان مبارک سے نصیحت اموز کلمات نکل کر سننے والوں کے دلوں میں پیوست ہو رہے تھے۔ پھر آپ نے دلسوز ‘ تھکاوٹ نما لیکن قدرے بلند آواز میں کہا: جو حکمران اللہ کا فرمانبردار ہو اسکا کہا مانو اور جو اللہ کا نافرمان ہو اس کی بات ماننا تمہارے لئے ضروری نہیں، لوگو: سنو! جب میں اللہ تعالی کا فرمانبردار رہوں میری بات مانتے رہنا اور جب کبھی اللہ کی نافرمانی پر اتر آؤں تو تم میرے احکامات کو ٹھکرا دینا پھر منبر سے اترے سیدھے گھر گئے۔ اپنے کمرے میں جاکر کچھ دیر ستانے کے لئے بستر پر دراز ہوگئے ‘ چونکہ اپنے پیش رو خلیفہ کی وفات اور اس کے کفن دفن کی وجہ سے آپ بہت تھک چکے تھے۔


 

امیر المئومنین عمر بن عبد العزیز ابھی اپنے بستر پر پہلو کے بل لیٹے ہی تھے کہ ان کا سترہ سالہ فرزند ارجمند عبدالمالک کمرے میں داخل ہوا۔ اس نے کہا: امیر المئومنین آپ کیا کرنا چاہتے ہیں؟ فرمایا: بیٹا میں تھوڑی دیر سونا چاہتا ہوں بہت تھک چکا ہوں ‘ بیٹے نے کہا: امیر المئومنین کیا آپ مظلوم لوگوں کی داد رسی کے بغیر ہی سو جانا چاہتے ہیں؟ ان کا وہ مال جو ظلم و استبداد سے چھینا گیا ہے انہیں واپس کون دلائے گا؟ فرمایا: بیٹا چونکہ میں خلیفہ سلیمان کی وفات کی وجہ سے گذشتہ ساری رات جاگتا رہا۔ تھکاوٹ کی وجہ سے میرے جسم میں سکت نہیں۔ ان شاءاللہ تھوڑا آرام کرنے کے بعد نماز ظہر لوگوں کے ہمراہ پڑھوں گا اور پھر یقینا ؟مظلوموں کی داد رسی ہوگی اور ہر ایک کو اس کا حق دیا جائے گا کوئی محروم نہیں رہے گا۔ بیٹے نے کہا: امیر المئومنین اسکی کون ضمانت دیتا ہے کہ آپ ظہر تک زندہ رہیں گے۔ بیٹے کی یہ بات سن کر عمر بن عبد العزیز تڑپ اٹھے ، آنکھوں سے نیند جاتی رہی تھکے ہوئے جسم میں دوبارہ توانائی لوٹ آئی اور یکدم جست لگا کر بیٹھ گئے۔ اور فرمایا: بیٹا ذرا میرے قریب آؤ۔ بیٹا قریب ہوا تو اسے گلے لگا کر ماتھے کو چومنے لگے۔ اور فرمایا اللہ کا شکر ہے جس نے مجھے ایسا ہونہار فرزند عطا کیا جو دینی اعتبار سے میرا معاون بنے گا۔ پھر آپ اٹھے حکم دیا کہ یہ اعلان کر دیا جائے جس پر کوئی ظلم ہوا ہے وہ اپنا مقدمہ خلیفہ کے سامنے آکر پیش کرے۔


 

یہ عبد الملک کون ہے؟ اس نوجوان کی داستان کیا ہے جس کے متعلق لوگوں کا خیال ہے کہ اس نے اپنے والد کو عبادت گذاری پر اکسایا زاہدوں کی راہ پر چلایا اور اولیاء کی صف میں لا کر کھڑا کر دیا۔ آئیے اب صالح نوجوان کی کہانی ابتدا سے آپکو سناتے ہیں۔

امیر المئومنین عمر بن عبد العزیز کے بارہ بیٹے اور تین بیٹیاں تھیں ‘ تمام اولاد متقی پرہیز گار اور ہونہار تھی ‘ اپنے بہن بھائیوں میں عبدالملک درخشاں ستارہ اور گوہر آبدار تھا۔ علاوہ ازیں وہ بہت ذہین اور ماہر ادیب تھا۔ یوں تو وہ نوخیز جوان تھا لیکن عقل و دانش میں بوڑھوں کو بھی مات کرتا تھا۔ اس نے نیکی اور تقوے کے ماحول میں پرورش پائی ‘ اس میں خاندان فاروق اعظم کے اوصاف پائے جاتے تھے ‘ خاص طور پر تقوے پاکیزگی اور خشیت الہی میں حضرت عبد اللہ بن عمر کے ہم پلہ تھا۔                     


 
اس کا چچا زاد بھائی عاصم بیان کرتا ہے کہ میں ایک دفعہ دمشق کیا

اور وہاں اپنے چچیرے بھائی عبد الملک کے پاس ٹھرا ‘ ابھی اس کی شادی نہیں ہوئی تھی۔ ہم نے عشاء کی نماز پڑھی اور سونے کے لیے دونوں اپنے اپنے بستر پر دراز ہو گئے عبد الملک نے چراغ گل کر دیا ‘ .ہم دونوں نے اپنی آنکھیں نیند کے حوالے کیں۔ جب آدھی رات کو میری آنکھ کھلی تو کیا دیکھتا ہوں کہ عبد الملک اندھیرے میں کھڑا نماز پڑھ رہا ہے اور قرآن مجید کی یہ آیت تلاوت کر رہا ہے:

 *افرايت ان مـتـعـنـاهـم سنين ○ ثم جاء هم ما كانوا يوعدون ○ ما أغنى عنهم ما كانوا يـمـتـعـون ○*

( الشعراء ۲۵ – ۲۷)

 

 بھلا دیکھو تو اگر ہم انہیں برسوں فائدہ دیتے رہے۔ پھر ان پر وہ عذاب آواقع ہو جس کا ان سے وعدہ کیا جاتا رہا، تو جو فائدے یہ اٹھا رہے، ہیں انکے کس کام آئیں گے.

میں نے دیکھا کہ وہ دل کو ہلا دینے والی گڑ گڑاہٹ اور آہ و زاری کے ساتھ بار بار اس آیت کی تلاوت کر رہا ہے اور زار و قطار روئے جا رہا ہے ‘ جب میں نے محسوس کیا کہ یہ آہ و زاری اس کا کام تمام کر دے گی۔ تو میں نے قدرے اونچی آواز سے لا الہ الا اللہ والحمد للہ کہا:
میں نے یہ جملہ اس انداز میں کہا جیسے کوئی نیند سے بیدار ہوتے وقت کہتا ہے۔ میری نیت یہ تھی کہ وہ میری آواز سن کر رونا بند کر دے ایسے ہی ہوا جب اس نے میری آواز سنی وہ خاموش ہو گیا ایسی چپ سادھ لی جیسے وہ کمرے میں موجود ہی نہیں۔

اس ہو نہار آل فاروق اعظم کے نوخیز جوان نے اپنے دور کے اکابر علماء سے کتاب و سنت کا علم حاصل کیا۔ قرآن و حدیث کے علوم سے اپنے سینے کو منور کیا دینی مسائل میں قیمہ کی مسند پر فائز ہوئے اور نو عمری کے باوجود شامی علماء و فقہاء پر فوقیت حاصل کی ایک مرتبہ امیر المومنین عمر بن عبد العزیز نے شامی علماء و فقہا کو اکٹھا کیا اور ان سے یہ مسئلہ دریافت کرتے ہوئے فرمایا: اے علماء کرام اور فقہائے عظام: میں تمہیں خوش آمدید کہتا ہوں۔

میرے خاندان میں سے جن اشخاص نے لوگوں کا مال ظلم و استبداد سے چھینا ہے ان کے متعلق آپ کی کیا رائے ہے؟

سب نے یہ جواب دیا اے امیر المومنین یہ کام آپکے دور حکومت میں نہیں ہوا اس کی ذمہ داری آپ یہ نہیں آتی اس کا گناہ اس پر ہو گا۔ جس نے مال غصب کیا آپ بری الذمہ ہیں ‘ لیکن علماء کے اس بیان سے آپ مطمئن نہ ہوئے۔ ایک عالم جو دیگر علماء سے مختلف رائے رکھتا تھا۔ کہنے لگا امیر المومنین آپ اپنے فرزند ارجمند عبد الملک کو بلائیں۔ وہ ماشاء اللہ علم قصہ اور عقل و دانش میں ممتاز مقام رکھتا ہے۔ اس مسئلہ میں اس کی رائے دریافت کریں۔

اسے بلایا گیا۔ جب عبد الملک پیغام کے مطابق دربار خلافت میں پہنچا تو امیر المومنین نے کہا:
بیٹا ان اموال کے متعلق تیری کیا رائے ہے ‘ جو ہمارے چچا کے بیٹوں نے لوگوں سے چھینے ہیں؟ کیونکہ مظلوم لوگ اس وقت اپنا حق وصول کرنے کے لیے میرے پاس آئے ہوئے ہیں۔

 بیٹے نے جواب دیا : ابا جان ان مظلوموں کی داد رسی کرتے ہوئے ان کا مال واپس لوٹانا آپ کا فرض ہے۔ اگر آپ نے ایسا نہ کیا۔ تو آپ بھی اس ظلم میں برابر کے شریک سمجھے جائیں گے۔ کیونکہ آپ کو اس ظلم کا علم ہو چکا ہے۔ لہذا اس سے گلو خلاصی آپ کا فرض ہے۔ یہ بات سن کر امیر المومنین عمر بن عبد العزیز کا چہرہ کھل اٹھا دلی اطمینان ملا اور وہ غم کافور ہوا جس نے آپ کو نڈھال کر رکھا تھا۔


 

خاندان فاروق اعظم کے عظیم سپوت نے دمشق کے پر رونق بازار لہلہاتے ہوئے ترو تازہ باغات ‘ سہانے دلکش ٹھنڈے سایہ دار درخت اور بل کھاتی ہوئی رواں دواں ندیوں کے دلفریب مناظر کو چھوڑ کر سنگلاخ سرحدی علاقے کو اپنی رہائش کے لئے منتخب کیا تاکہ ہر دم ہر گھڑی حالت جہاد میں رہنے کی سعادتیں حاصل ہوں۔ امیر المئومنین عمر بن عبد العزیز کو اس بات کا علم ہونے کے باوجود کہ اس کا بیٹا ہو نہار ‘ متقی مودب اور پر ہیز گار ہے پھر بھی انہیں اندیشہ لاحق رہتا کہ کہیں شیطان کے داؤ میں نہ آجائے وہ جوانی کی خرمستیوں سے بہت خوفزدہ تھے، وہ اپنے فرزند کے متعلق ہر طرح کی معلومات رکھتے اور اس سے کبھی غفلت نہ برتتے۔


 
امیر المئومنین عمر بن عبد العزیز کے وزیر ‘ قاضی اور مشیر جناب میمون بن مہران بیان کرتے ہیں کہ ‘ میں ایک دن خلیفہ عمر بن عبد العزیز کے پاس گیا وہ اپنے بیٹے عبد الملک کو خط لکھ رہے تھے جس میں نصیحت راہنمائی تنبیہہ اور بشارت پر مبنی جملے لکھے۔ اس خط میں انہوں نے یہ بھی لکھا۔ بیٹا میری بات سن کر اسے یاد رکھنا اوروں کی نسبت تیرا زیادہ فرض بنتا ہے۔ ذرا خیال کرو۔ اللہ سبحانہ و تعالی نے ہم پر کتنے کرم کئے ہیں۔ ہر چھوٹے بڑے کام میں اس نے ہم پر بے انتہا احسانات کئے۔

 

 بیٹا اللہ تعالی کے اس فضل کو یاد کرو جو اس نے تجھے پر اور تیرے والدین پر کیا ہے۔

 بیٹا تکبر ‘ نخوت اور غرور سے بچنا بلاشبہ یہ شیطانی اوصاف ہیں اور شیطان مومنوں کا ازلی دشمن ہے۔

 بیٹا یہ خط میں تجھے اس لئے نہیں لکھ رہا کہ مجھے کوئی تیری شکایت ملی ہے۔ مجھے تم پر اعتماد ہے۔ البتہ یہ مجھے معلوم ہوا ہے کہ تیرے دل میں خود پسندی کے جذبات موجزن ہیں۔ یاد رکھنا اگر اس خود پسندی کی وجہ سے تو نے کوئی گل کھلایا تو میں ایسی سرزنش کروں گا جسے تم زندگی بھر یاد رکھو گے پھر نہ کہنا کہ سختی ہوئی۔

وزیر موصوف جناب میمون بن مہران کہتے ہیں۔ خط لکھ کر امیر المئومنین نے میریطرف دیکھا اور فرمایا: میمون مجھے میرے بیٹے کے ساتھ بہت پیار ہے۔ مجھے اندیشہ ہے کہ یہ پیار اس کی تربیت میں آڑے نہ آجائے اور میں بھی آنکھیں بند کر کے اسی ڈگر پر چلنے لگوں جس طرح اکثر

باپ اپنی اولاد کے بارے میں نرم رویہ اختیار کرتے ہیں۔ اور ان کے عیوب پر پردہ ڈالتے رہتے ہیں۔ یہ طرز عمل اولاد کے حق میں قطعا بہتر نہیں ہوتا۔
 میمون آپ ابھی دمشق جائیں۔ اور اچھی طرح اس چیز کا جائزہ لیں۔ کہیں میرے بیٹے کے دل میں تکبر نخوت اور خود پسندی جیسی قباحتیں تو نہیں پائی جاتیں۔ کیونکہ ابھی وہ بچہ ہے ‘ کہیں شیطان اس پر اپنا پنجہ نہ جمالے۔

 

جناب میمون بیان کرتے ہیں۔ میں دربار خلافت سے حکم پاکر دمشق کی طرف روانہ ہوا۔ راستوں کے نشیب و فراز سے گذرتا ہوا عبد الملک کے گھر پہنچا۔ اندر آنے کی اجازت طلب کی۔ میں نے دیکھا کہ خوبرو جوان رعنا بڑی انکساری کے ساتھ سفید قالین پر جلوہ افروز ہے۔ یوں معلوم ہو تا تھا جیسے آسمان سے زمین پر متلب اتر آیا ہے۔ اس نے آگے بڑھ کر مجھے خوش آمدید کہا: جب میں اس کے پاس بیٹھ گیا تو اس نے کہا میں نے ابا جان سے آپکی تعریف سنی ہے ‘ مجھے امید ہے کہ اللہ تعالی آپ کے ذریعے امت کے افراد کو فائدہ پہنچائے گا۔

میں نے کہا آپ کا کیا حال ہے؟ اس نے جواب دیا اللہ کا احسان اور شکر ہے میں بالکل ٹھیک ہوں لیکن مجھے ہر وقت یہ کھٹکا لگا رہتا ہے کہ کہیں مجھ سے کوئی ایسا کام سرزد نہ ہو جائے جس سے میرے والد محترم کے دل کو تھیں پہنچے اور مجھے یہ بھی اندیشہ ہے کہ کہیں ان کی میرے ساتھ محبت میرے متعلق درست معلومات حاصل کرنے میں رکاوٹ نہ بن جائے۔ اور

میں ان کے لئے ایک مصیبت بن جاؤں مجھے اس نوجوان کی باتیں سن کر بڑا تعجب ہوا کہ باپ اور بیٹے کی سوچ کس قدر ایک دوسرے سے ملتی جلتی ہے میں نے اس سے پوچھا مجھے یہ بتاؤ تمہارا گزارہ کیسے چلتا ہے؟ اس نے بتایا۔ میں نے یہاں آتے ہی زمین کا ایک ٹکڑا خرید لیا تھا۔ اور اس کی قیمت میں نے اپنی ایسی کمائی سے ادا کی ہے جس کے حلال ہونے میں کوئی شک و شبہ نہیں اس زمین سے مجھے اتنا کچھ مل جاتا ہے جو میرے گذارے کے لئے کافی ہے۔ الحمدللہ میں مسلمانوں کے ٹیکس کا محتاج نہیں۔ اللہ نے مجھے اس سے بے نیاز کر رکھا ہے۔ میں اس رب العالمین کا بے حد شکر گزار ہوں۔ میں نے پوچھا تمہاری خوراک کیا ہے؟ اس نے بتایا کبھی گوشت کبھی دال اور کبھی سرکہ اور یہی میرے لئے کافی ہے۔

 

 میں نے پوچھا کیا تیرے دل میں خود پسندی کے جذبات پائے جاتے ہیں؟

 اس نے بتایا : ہاں میرے دل میں خود پسندی کے جذبات پائے جاتے تھے۔ لیکن جب سے ابا جان نے مجھے سمجھایا اور شفقت بھرے انداز میں مجھے اس قباحت سے باز رہنے کی تلقین کی۔ میں نے اسے اپنے دل سے بالکل نکال دیا ہے۔ اب میرا دل بالکل صاف ہے اور یہ ابا جان کا مجھ پہ بہت بڑا احسان ہے۔ اللہ میرے ابا جان کو جزائے خیر عطا کرے۔ میں عبد الملک کے پاس کافی دیر بیٹھا کھل کر باتیں ہوئیں ‘ دوران گفتگو بہت ہی مفید اور قیمتی معلومات حاصل ہوئیں میں نے اپنی زندگی میں اس سے بڑھ کر

خوبصورت ‘ عقلمند اور نوعمری کے باوجود با ادب اور سلیقہ شعار کوئی نوجوان نہیں دیکھا۔ جب شام ہوئی ایک لڑکا اس کے پاس آیا اس نے بتایا ہم فارغ ہوچکے ہیں۔ پھر وہ خاموش ہو گیا۔

 

میں پوچھا یہ کس کام سے فارغ ہوئے ہیں؟

اس نے بتایا: حمام سے۔

میں نے پوچھا وہ کیسے؟

اس نے بتایا۔ کہ انہوں نے میرے لیے غسل خانہ خالی کروایا ہے ، اب میں اس میں نہاؤں گا۔

 میں نے کہا: جناب یہ سن کر مجھے حیرت ہوئی ہے۔ آپ سے مجھے یہ توقع نہ تھی۔

 میرا یہ انداز دیکھ کر وہ ڈر گیا اس نے انا للہ وانا الیہ راجعون کہا۔ اور پوچھا چچا جان اللہ آپ پر رحم کرے کیا ہوا؟

میں نے اسے کہا: یہ غسل خانہ تیرا ہے؟

اس نے بتایا: نہیں۔

 میں نے کہا۔ پھر آپکو اسے خالی کرانے کا کیا حق پہنچتا ہے۔ کیوں تم اپنے آپ کو دوسرے لوگوں سے بلند تر سمجھتے ہو۔ کیا تمہیں کوئی سرخاب کے پر لگے ہوئے ہیں۔ تم نے غسل خانے کے مالک کو بھی نقصان پہنچایا ہے اور جو لوگ غسل خانہ استعمال کرنے کی ضرورت محسوس کرتے ہیں ان کو بھی تیری وجہ سے دشواری اٹھانا پڑی یہ سب کچھ کیا ہے؟

 تجھے یہ بات قطعا زیب نہیں دیتی۔ وہ میری تلخ باتیں سن کر پہلے

مسکرایا اور پھر بڑے ادب سے کہنے لگا چچا جان ناراض نہ ہوں میں غسل خانے کے مالک کو دن بھر کے اجرت دے کر خوش کر لوں گا۔
میں نے کہا: اس طرح تم ایسے اسراف کا ارتکاب کرو گے جس میں تکبر کی آمیزش سے بھی پائی جاتی ہے۔
یاد رکھو تم بھی دوسرے مسلمان جیسے ہو ‘ عام لوگوں کی طرح تم بھی حمام استعمال کرنے کے لئے جایا کرو۔
اس نے کہا چچا جان دراصل بعض اوقات گنوار قسم کے لوگ برہنہ حمام میں نہاتے ہیں مجھے اس سے گھن آتی ہے اس لیے میں اکیلا نہانا پسند کرتا ہوں ‘ اور یہی ایک طریقہ ہے جس سے ستر کو ملحوظ خاطر رکھا جا سکتا ہے۔ یا آپ مجھے کوئی تدبیر بتائیں کہ میں کیا کروں؟
میں نے کہا آپ لوگوں کی فراغت کا انتظار کیا کریں۔ جب وہ حمام میں غسل کر کے از خود چلے جائیں تو پھر آپ نہانے کے لیے جایا کریں۔اس نے کہا : میں آپ سے وعدہ کرتا ہوں آئندہ ایسے ہی کیا کروں گا۔ آج کے بعد کبھی بھی دن کے وقت حمام کا رخ نہیں کروں گا۔ دراصل اس علاقے کی سردی اور رات کی خنکی کا اندیشہ نہ ہوتا تو میں پہلے بھی دن کو حمام کا رخ نہ کرتا۔ پھر وہ سر نیچا کر کے کچھ سوچنے لگا۔ پھر سر اوپر اٹھایا اور مجھے کہا۔ بخدا یہ بات میرے ابا جان کو نہیں بتانا نہیں یہ سن کر ولی کوفت ہوگی۔میں نہیں چاہتا کہ وہ مجھ پر ناراض ہو اور اسی حالت میں ان کا دم نکل جائے اور میں دور ہونے کی وجہ سے معافی بھی نہ مانگ سکون ممیون بیان کرتے ہیں کہ میں
نے اس نازک موقع پر اس کی عقل و دانش کا امتحان لینے کا ارادہ کیا۔
میں نے کہا اگر امیرالمومنین نے مجھ سے پوچھا کیا دیکھ کر آئے ہو؟
تمہارا کیا خیال ہے میں ان کے سامنے جھوٹ بولوں؟
اس نے کہا: چچا جان آپ جھوٹ نہ بولیں۔ اس سے اللہ بچائے جب ابا جان یہ سوال کریں تو آپ پوری وضاحت سے یہ کہہ دینا میں نے ایک ناگوار عادت دیکھی تھی۔ لیکن میں نے اسے سمجھا دیا اور وہ باز آ گیا۔ مجھے امید ہے کہ اباجان پوشیدہ عیب کو کریدیں گے نہیں کیونکہ اللہ تعالی نے انہیں پوشیدہ عیوب کو کرید نے سےمحفوظ رکھا ہے۔
جناب میمون کہتے ہیں کہ میں نے عمر بن عبدالعزیز جیسا باپ نہیں دیکھا اور نہ ہی عبدالملک جیسا کوئی بیٹا اللہ دونوں پر اپنی بے پایاں رحمت کرے کرے۔
                   

 


اللہ پانچويں خلیفہ رشید امیر المومنین عمر بن عبدالعزیز پر راضی ہو۔ اور اسے اپنے خصوصی انعامات سے نوازا کر خوش کردے اس کی اور اس کے لخت جگر عبدالملک کی قبرکو تروتازہ باغیچہ بنا دے۔ جب یہ باپ بیٹا اپنے رب سے ملے تو انہیں سلام کیا جائے۔ جب یہ نئے لوگوں کے ساتھ قیامت کے دن اٹھائے جائیں۔تو انہیں سلام پیش کیا جائے۔آمین۔
 
 
 

 
 
 
امیرالمومنین عمر بن عبد العزیز اور انکے بیٹے عبدالملک کے مفصل حالات زندگی معلوم کرنے کے لیے درج ذیل کتابوں کا مطالعہ کریں ۔

 

ا۔ سیرت عمر بن عبد العزیز ابن جوزی
۲- سیرت عمر بن عبد العزیز ابن عبد الحلیم
٣-الطبقات الكبرى ابن سعد جلد
٨-٧-٦-٥-٤-٣-٢-١
٤-صفته الصفوة ابن جوزی جلد
٢ /١١٣-١٢٦-١٢٧
۵- ملیتہ الاولیاء ابو نعیم اصفهانی جلد
٥/ ٢٠٣-٣٥٣-٣٦٤
٦-وفیات الاعیان ابن خلکان جلد
٥-٤-٣-٢-١
۷۔ تاریخ طبری جز:
٨-٧-٦-٥-٤-٣-٢-١
٨-العقد الفريد ابن عبد ربه جز:
٨-٧-٦-٥-٤-٣-٢-١
۹- البیان و التسین جاخط جزء :
١-٢-٤٣
۱٠ تاریخ مدینہ دمشق ابن عساکر جلد :
٢-/١١٥-١٢٧
١١-تهذیب التهذیب ابن حجر عسقلانی
٦/ ٤٧٥- ٤٧٨

 

 

حوالہ:
“کتاب: حَياتِ تابِعِين کے دَرخشاں پہلوُ”
تالیف: الاستاذ ڈاکتور عبد الرحمان رافت الباشا
ترجمه: محمود غضنفر
Table of Contents