Sections
< All Topics
Print

09. Hazrat Muhammad bin Sireen (رحمہ اللہ)

Hazrat Muhammad bin Seereen (رحمہ اللہ)

“Muhammad bin Seereen jaisa mujhe koi muttaqi aur aalim dikhai na diya”

مورق العجلی

Seereen ne apna nisf deen mukammal karne ka us waqt pukhta iradah kar liya Jab usey Hazrat Anas bin Maalik (رضی اللہ عنہ) ne apni ghulami se azaad kar diya aur usey apne karobaar se waafir miqdaar mein nafa’a hone laga, Kyunkeh wo taanbe ki daig banane ka bada maahir karigar tha.

Apni Rafeeqa-e-Hayat banane ke liye uski Nazr-e-Intakhaab Hazrat Abu Bakar Siddique (رضی اللہ عنہ) ki londi Safiyah par padi.

Safiyah pari chehra, Farishta sifat, Zinda dil, Khush akhlaaq, Khush atwaar dosheezah theen. Khawateen-e-Madina mein se jis ne bhi usey dekha Markaz-e-Nigaah bana liya, Madina ki dosheezah aur Mu’ammar khawateen mein barabar har dilaziz thi, Lekin Ummahat ul Momineen ko is se bohat  pyar tha, Aur sab se badh kar Siddiqua-e-Kainat Hazrat Ayesha رضی اللہ عنھا ko to bohat hi us se mohabbat thi.

Seereen ne Ameerul Momineen  se nihayat hi Adab-o-Ahteraam se jhijhakte huye unki kaneez ka rishtah talab kiya, Hazrat Siddique-e-Akbar (رضی اللہ عنہ) apni kaneez ke mangetar ka is tarah Akhlaq-o-Deen ke aitebar se jaizah lene lage jis tarah aik shafique baap apni beti ke mangetar ka jaaizah leta hai, Is mein koi ta’ajjub ki baat nahi kyunke Safiyah unhein aulaad ki tarah aziz thi.

Phir wo inke paas aik amaanat thi, Unho ne Seereen ka badi gehri nazar se jaaizah liya, Aur achi tarah iske halaat ki chaan been ki, Jin se uske mutalliq poocha un mein se Hazrat Anas bin maalik (رضی اللہ عنہ) Sar-e-Fehrist thay. Unse jab dariyaft kiya gaya to unhone irshad farmaya: Ameer ul Momineen Safiyah ki is se shadi kar dijiye, Aap isme koi andesha na rakhen main ne ise saheeh ma’anon mein deendar, Ba akhlaaq aur khud daar paya hai.

Mera iske sath us waqt se raabta hai jab Hazrat Khalid bin Waleed ne muaarka Ayn ul Tamar mein kamyabi ke baad chalis (40) jangju qaid kar liye thay aur unhein ghulam bana kar Madina Munawwarah laye thay, Jab unhein taqseem kiya gaya to Seereen mere hisse mein aaya, Yeh meri sa’adat hai ke us jaisaa wafadar shakhs mujhe khidmat ke liye mila.

Siddique-e-Akbar (رضی اللہ عنہ) ne Seereen se Safiyah ki shadi ki haami bhar li. Aur aapne yeh musammam iradah kar liya ke ise apne ghar se is tarah Shan-o-Shaukat se pya ke ghar rawanah karunga jis tarah babul ke wehdy (ویہڑے) se dulhan ko rukhsat kiya jata hai. Inhon ne shadi ke moqa par aik pur waqar taqreeb ka ahtamam kiya.

is se pahle Madina mein us jaisi taqreeb kabhi kisi ne nahi dekhi thi, Is taqreeb mein Sahabah  رضی اللہ عنھم kaseer taadad mein shareek huye in mein atharah (18) badri Sahabah  رضی اللہ عنھم bhi thay, Nikah Kaatib-e-Wahi Hazrat Ubai bin Ka’ab (رضی اللہ عنہ) ne padhaya. Aur dulha, dulhan ke liye Khair-o-Barkat ki dua ki jis par Sahabah  karaam  رضی اللہ عنھم ne ameen kahi, Teen (3) Azwaaj-e-Mutaharrat ne dulhan ka banao singaar kiya aur bade chao se iske piya ke ghar rukhsat kiya.

Is mubarak  shadi ke nateeje mein maan baap ko Allah  ta’ala ne aik aisa honhaar ladka ata kiya jo bees (20) saal ki umar mein aik Jayyad aalim ban kar Mansa-e-Shahoor par namoodaar hua. Ayyiye is jaleel ul qadr tabiee ki Daastan-e-Hayat ke bayan ka aghaz karen.

Muhammad bin Seereen ki paidaish Ameer ul Momineen Hazrat Usman bin Affan (رضی اللہ عنہ) ki shahadat se do (2) saal pahle hui, Iski parwarish aik aise gharane mein hui jis mein Taqwa-o-Taharat ki khushboo kasturi ki manind phaili hui thi

Jab yeh khurdmand nau nihaal unfawaan shabaab ko pohcha to usne Bachashm-e-Khud dekha ke Masjid-e-Nabvi baaqiya mandah Sahabah  karaam  رضی اللہ عنھم aur Tabieen-e-Zee waqar se bhari hui hai. Is noorani mehfil mein Hazrat Zaid bin saabit, Hazrat Anas bin Maalik, Hazrat Imran bin Hussain, Hazrat Abdullah bin Umar, Hazrat Abdullah bin Abbas, Hazrat Abdullah bin Zubair aur Hazrat Abu Hurairah jaise jaleel-ul-qadr Sahabah karaam (رضی اللہ عنھم ) maujood hain, Unse faiz hasil karne ke liye yeh is tarah unki taraf lapke jis tarah koi pyasa meethay chashme ki taraf lapakta hai. Unke Qur’ani ilm, Deeni Fiqh aur Fann-e-Hadees, Hadees-e-Rasool ﷺ se khoob sairaab huye, Jis se unki aqal Hikmat-o-Ilm se aur dil Taqwa-o-Taharat se labaraiz ho gaya, Phir yeh khandan apne Naabghah-e-Rozgaar naujawan ko apne sath lekar Basrah muntaqil ho gaya aur wahan mustaqil rehaish ikhtiyaar kar li.

Basrah sheher un dinon naya naya abaad hua tha, Musalmanon ne Ameer ul Momineen Hazrat Umar Farooq-e-Aazam (رضی اللہ عنہ) ki khilafat ke akhri dinon mein is sheher ki planning ki thi, Woh is daur mein Ummat-e-Islamiyah ki beshtar zaruriyaat ko poora karta tha, Yeh Islami lashkaron ki chawni bhi tha aur Iran-o-Iraq se naye Islam qubool karne walon ke liye Taleemi-o-Tarbiyaati markaz bhi tha, Yeh sheher us Islami moa’share ki jeeti jagti tasveer tha jo duniyawi kamon ko is tarah saranjam deta hai ke jaise is ne hamesha zindah rehna ho aur ukhrawi kamon ko is tarah nibaahta hai jaise is ne kal hi maut ke munh mein chale jana ho.

Muhammad bin Seereen Basrah mein apni nayi zindagi do (2) matwazi raaston par chalte huye guzaarne lage. Unho ne din k nisf hissa ilm aur ibaadat ke liye makhsoos kar diya aur doosra nisf kamayi aur tijarat ke liye khaas kar diya. Jab tuloo’ fajr ka waqt hota aur duniya apne Rab ke noor se chamak uthti yeh Basrah ki masjid ka rukh karte, Wahan khud ilm hasil karte aur doosron ko sikhlate, Jab din chadh jata to wahan se seedhe bazar jate wahan Khareed-o-Farokht karte, Jab raat kainat par apne parde pheila deti to yeh apne ghar ke ek kone mein Allah ta’ala ke huzoor hath bandh kar khade ho jate aur phir apni aajizi wa inksaari ka muzahira karte huye rukoo wa sujood mein chale jate, Qur’an majeed ki tilawat badi hi daaraftagi ke andaz mein karte aur Rahman-o-Raheem ki khashiyat se dil aur ankhon se aansu bahate, Rote rote unki hichki bandh jaati jis se ghar walon aur qareebi padosiyun ko khatra lahaq ho jata ke kahin yeh is Aah-o- Zaari mein Allah ko pyare na ho jayein.

Woh din ke waqt Khareed-o-Farokht ki gharz se bazar mein chakkar lagate huye logon ko akhirat yaad dilate rehte aur unhein duniyawi umoor mein baseerat ikhteyar karne ki talqeen karte rehte aur unhein aisi achi achi baaton ki talqeen farmate rehte jo unke liye Allah ta’ala ke taqarrub ka baayes banti aur logon ke bahami ikhtalafaat se alag thalag rehte. Kabhi kabhi logon se mazahiya andaz mein bhi guftagu karte jis se unke ghamzadah dilon ko Farhat-o-Inbisaat naseeb hoti lekin is se logon ke dilon mein unki izzat aur waqar ki koi kami waqe’ nahi hoti, Allah ta’ala ne unko hidayat aur wajahat se nawaz rakha tha.

Unki zuban mein kamal darje ki taseer wadeeyat kar rakhi thi. Log jab bazar mein apne karobar mein magan hote lekin unhein dekhte hi chokas ho jate aur unki zubanein Yaad-e-Ilaahi mein masroof ho jaatin aur wo be saakhta لا الہ الا اللہ  aur  اللہ اکبر kehne lagte.

Unki amali zindagi logon ke liye behtareen raahnuma thi. Tijaarat mein agar do soortein pesh aa jati to aap usey ikhtiyaar kartey jo deeni lihaaz se behtar hoti khwaah unhein duniyawi taur par kitna hi nuqsaan kyun na uthaana pade.

Deen ke israar wa ramooz ko samajhne aur Halaal-o-Haraam parakhne mein basa auqaat aisa moqaf ikhteyar karte jo logon ko bada Ajeeb-o-Ghareeb nazar aata. Misaal ke taur par aik shakhs ne un par jhootha daawa kar diya ke unhone ne mere do (2) dirham dene hain.

Aapne sarihan is se inkar kar diya. Us shakhs ne kaha kya tum qasam uthate ho ke mere do (2) dirham tumhare zimme waajibul adaa nahi hain?

Uska khayaal tha ke itni haqeer raqam ki khatir yeh qasam nahi uthayenge. Lekin apne usey jawaaban haan kaha: Aur qasam utha di.

Logon ne kaha: Aye Abu Bakar sirf d0 (2) dirhamon ke liye aapne qasam utha li?

Haalan ke aapne chalis hazar (40,000) dirham mehez shak ki bina par chod diye thay jabkeh koi taajir bhi shak ki buniyad par apna itna bada nuqsan nahi karta.

Farmaya: Haan main ne qasam is liye uthayi hai. Main nahi chahta ke isey haraam khilaoun. Aur main jaanta hun ke is andaz mein hasil hone wale do (2) dirham iske liye haraam hain.

Muhammad bin Seereen ki majlis Khair-o-Barkat, Neki aur naseehat ki majlis hoti, Jab unke paas kisi ki burayi bayan ki jaati to aap fauran apni maloomaat ke mutabiq uski achai bayan karne lagte.

Aik martaba aapne dekha ke aik shakhs Hajjaj bin Yousuf ko uski wafat ke baad gaali de raha hai, Aap uski taraf mutawajjah huye aur farmaya: Bete khamosh raho.

Hajjaj ab apne Rab ke paas pahunch chuka hai. Jab tu Allah ki bargah mein pohchega to tujhe apna aik chhota sa gunah bhi Hajjaj ke bade gunah se bhaari dikhai dega.

Us din har aik ko apni padi hogi. Khoob achi tarah jaan lo Allah ta’ala qayamat ke din apni adalat mein Hajjaj se un logon ka badla lega jin par usne zulm kiye. Wahan un logon se usey badla dilayega jinhone Hajjaj par zulm kiya. Suno aaj ke baad kisi ko gali na dena. Jab koi shakhs tijarat ke safar par rawana hone lagta to aap usey yeh naseehat karte. Mere bhai! Allah se darte rehna, Apna muqaddar halaal treeqy se talash karna. Meri yeh baat palle baandh len insan ko hamesh uska muqaddar milta hai agar tum na jayez tareeqe se isey hasil karne ki koshish karoge to utna hi milega jitna tere muqaddar mein hai. Us se aik zarrah bhi zyada tum hasil nahi kar sakte.

Muhammad bin Seereen ke Banu Umayyah ke hukmranon ke sath haq Goi-o-Be baaki se pesh aane ke bohat se waqea’at Mashhoor-o-Maroof huye. Aapne hamesha unke samne Kalma-e-Haq buland kiya aur ikhlaas ke sath unhein naseehat ki.

Aik martabah Banu Umayyah ke sardar Iraq-or-Iran ke governor Umar bin Habirah Fazaari ne Muhammad bin Seereen ko mulaqat ke liye bulayaa. Aap us se milne ke liye apne bhatije ki hamrah chal diye. Jab wahan pohche to governor ne unhen khush aamdeed kaha aur badi Izzat-o-Ikaraam se pesh aaya, Takht par apne sath bithaya, Aur bohat se Deen-o-Duniya ke masail unse pooche phir yeh daryaft kiya ke Aye Abu bakar! Apne sheher ke bashindon ko kis haal mein chhod kar aaye hain?

Aapne baghair kisi lagi lapti ke irshaad farmaya:

Main ne unhein is haal mein choda ke zulm un mein har soo phaila hua hai aur aap unse ghafil hain.

Is baat par apke bhatije ne unke kandhe ki chutki li. Aapne uski taraf dekha aur farmaya: Sawal tujh se nahi kiya gaya balke mujh se kiya gaya aur main uska zimma daar hun. Bilashubah yeh aik gawahi hai jo isko chhupayega wo gunahgar hoga.

Jab majlis khatam hui to Umar bin Habirah ne usi Aizaaz-o-Ikaraam se alvidaa kaha jis tarah unka istaqbaal kiya tha, Aur un ki khidmat mein teen hazar (3000) Dinar ki aik thaili pesh ki jise lene se unhone saaf inkar kar diya.

Bhateeje ne poocha governor  ka tohfa qubool karne mein kya harj tha?

Aapne farmaya: Usne mujhe yeh tohfa apne khayaal mein mujhe acha samajhte huye diya aur iske mutabiq main ache logon mein se hun to achai ka taqaza hai ke main yeh tohfa qubool na karun.

Agar main ache logon mein se nahi hun to phir mujhe yeh tohfa qubool karne ka koi haq hi nahi hai.

Allah ta’ala ne Muhammad bin Seereen  ke Sabr-o-Istaqamat aur sadaqat ka imtehan lena chaha aur usey aik kathan mushkil mein mubtala kar diya jaisaa ke bohat se Ahl-e-Imaan Saahib-e-Azeemat aise marahil se guzarte aaye hain.

Aapne aik martabah chalis hazar (40,000) ka udhaar tel khareed liya, Jab tel ka aik bartan khola to is mein se usey aik mara hua gala sada chooha baramad hua.

Aapne dil mein socha ke tel to aik jagah kushaid kiya gaya hai. Ye nijaasat sirf isi bartan ke liye makhsoos nahi hai, Agar main is ayb ki wajah se bechne wale ki taraf lauta dun to ho sakta hai woh yahi tel doosre logon ko bech de. Ye socha to sara tail zameen par baha diya. Us se unhen bohat bada nuqsan hua aur qarz un par chadh gaya. Tail wale ne raqam ka mutaalba kiya jo ye ada na kar sake. Usne qaazi ki adalat mein muqaddama daair kar diya.

Qazi ne apko qarz ki adaigi tak jail bhej diya jab woh aik lambi muddat tak qaid mein rahe to daarogha jail unke Ilm-o-Taqwa-o-Ibadat se mutaasir ho kar kehne laga: Jab raat ho jaya kare to aap apne ghar chale jaya karen, Subah ko wapis aa jaya karen aap azadi tak is tarah karte rahen main uska zimmedaar hun.

Aapne farmaya: Nahi. Allah ki qasam main aisa nahi karunga. Daarogha jail ne poocha: Kyun? Allah aap par rehem farmaye.

Aapne irshaad farmaya: Maine is khayanat par apka moawan nahi ban sakta.

Hazrat Anas bin Maalik (رضی اللہ عنہ) ne yeh wasiyyat ki thi ke jab main faut ho jaun to mujhe Muhammad bin Seereen ghusal de aur wahi meri Namaz-e-Janaza padhaye lekin Jab aap faut huye us waqt yeh qaid mein thay, Log hukmran ke paas gaye Khaadim-e-Rasool ﷺ Jaleel-ul-Qadr sahabi ki wasiyyat usey sunai, Aur is se ijazat talab ki ke Muhammad bin Seereen wasiyyat ke mutabiq unka Namaz-e-Janaza padhayen.

Unhein hukoomat ki taraf se ijazat de di gayi lekin Muhammad bin Seereen ne kaha main us waqt tak nahi jaoonga. Jab tak tum qarz khwaah se ijazat nahi lete uska haq ki wajah se qaid mein dala gaya hun. Qarz khwaah ne unhen ijazat di, Aap qaid khane se nikle, Hazrat Anas (رضی اللہ عنہ) ki mayyat ko ghusal diya, Kafan pehnaya, Namaz-e-Janaza padhai aur phir qaid khane ki taraf laut gaye. Apne ghar walon ko dekhne bhi nahi gaye.

Muhammad bin Seereen ne sattar (70) saal Umar payi, Jab maut ka waqt aaya to unke kandhon par duniya ka bojh bohat kam tha aur akhirat ka tosha bohat zyada tha. Us daur  ki aik ibadat guzaar khatoon bayan karti hain:

Marwan Mahmali hamara padosi tha aur woh bada sharee’at ka paband aur ibadat guzaar tha jab wo faut hua to bohat gham hua. Aik roz main ne usy khwaab mein dekha, Main ne kaha: Aye Abu Abdullah! Tere Rab ne tere sath kya sulook kiya?

Usne kaha: Allah ne mujhe jannat mein daakhil kar diya. Main ne poocha phir kya hua? Usne kaha: phir mujhe Ashaabul Ameen ki taraf bhej diya gaya.

Maine poocha phir kya hua?

Usne kaha: Phir mujhe Allah ke muqarrab bandon mein bhej diya gaya. Maine poocha aapne wahan kis ko dekha? Usne kaha Hasan Basri (رحمہ اللہ) aur Muhammad bin Seereen (رحمہ اللہ) ko.

Muhammad bin Seereen ke mufassal Halat-e-Zindagi maloom karne ke liye darj zail kitaabon ka muta’ala karen:

1: Tabaqat Ibe-e-Saad                                               3/321-322.4/333
2: Shazarat ul Zahab                                                   1/138-139.6/27
3: Wafayat ul Aayan Ibn-e-Khalkan                     3/321-322.7/11-19-154.8/246
4: Kitab ul Wafayat                                                    109
5: Al Wafi Bil Wafayat(Safdi)                                   3/146
6: Sifat ul Safwah Ibn-e-Jawzi                                3/241-248
7: Tabaqat ul Huffaz                                                   3/9
8: Hilyat ul Awliya Asfahani                                     2/263-282
9: Tarikh-e-Bhagdad Khatib Bhagdadi              5/231

REFERENCE:
Book: “Hayat-e-Taba’een kay Darakhsha pahelo”
Taleef :  Dr. Abdur Rahman Rafat Al- Pasha.
Urdu Translation : By Professor Mehmood Ghaznofer

حضرت محمد بن سیرین رضی اللّٰہ عنہ

محمد بن سیرین جیسا مجھے کوئی متقی اور عالم دیکھائی نہ دیا

مورق العجلی

 

سیرین نے اپنا نصف دین مکمل کرنے کا اس وقت پختہ ارادہ کر لیا جب اسے حضرت انس بن مالک رضی اللّٰہ عنہ نے اپنی غلامی سے آزاد کر دیا اور اسے اپنے کاروبار سے وافر مقدار میں نفع ہونے لگا ، کیونکہ وہ تانبے کی دیگ بنانے کا بڑا ماہر کاریگر تھا۔
اپنی رفیقہ حیات بنانے کے لیے اس کی نظر انتخاب حضرت ابو بکر صدیق رضی اللّٰہ عنہ کی لونڈی صفیہ پر ہڑی۔


صفیہ پری چہرہ فرشتہ سیرت ، زندہ دل، خوش اخلاق ، خوش اطوار دوشیزہ تھی خواتین مدینہ میں سے جس نے بھی اسے دیکھا مرکز نگاہ بنا لیا، مدینے کی دوشیزگان اور معمر خواتین میں برابر ہر دلعزیز تھی، لیکن امہات المؤمنین کو اس سے بہت پیار تھا، اور جب سب سے بڑھ کر صدیقہ کائنات حضرت عائشہ رضی اللّٰہ عنھا کو تو بہت ہی اس سے محبت تھی۔


سیرین نے امیر المؤمنین سے نہایت ہی ادب و احترام سے جھجکتے ہوئے ان کی کنیز کا رشتہ طلب کیا، حضرت صدیق اکبر رضی اللّٰہ عنہ اپنی کنیز کے منگیتر کا اس طرح اخلاق و دین کے اعتبار سے جائزہ لینے لگے جس طرح ایک شفیق باپ اپنی بیٹی کے منگیتر کا جائزہ لیتا ہے، اس میں کوئی تعجب کی بات نہیں
کیونکہ صفیہ انہیں اولاد کی طرح عزیز تھی۔

پھر وہ ان کے پاس ایک امانت تھی ، انہوں نے سیرین کا بڑی گہری نظر سے جائزہ لیا، اور اچھی طرح اس کے حالات کی چھان بین کی ، جن سے اس کے متعلق پوچھا ان میں سے حضرت انس بن مالک رضی اللّٰہ عنہ سر فہرست تھے۔ ان سے جب دریافت کیا گیا تو انہوں نے ارشاد فرمایا: امیر المؤمنین صفیہ کی اس سے شادی کر دیجئے آپ اس سے کوئی اندیشہ نہ رکھیں میں نے اسے صحیح معنوں میں دیندار ، بااخلاق اور خوددار پایا ہے۔
میرا اس کے ساتھ اس وقت سے رابطہ ہے۔
جب حضرت خالد بن ولید نے معرکہ عین التمر میں کامیابی کے بعد چالیس جنگجو قید کر لیے تھے اور انہیں غلام بنا کر مدینہ منورہ لائےتھے، جب انہیں تقسیم کیا گیا تو سیرین میرے حصے میں آیا یہ میری سعادت ہے کہ اس جیسا وفادار شخص مجھے خدمت کے لیے ملا۔
                       


صدیق اکبر رضی اللّٰہ عنہ نے سیرین سے صفیہ کی شادی کی حامی بھر لی۔ اور آپ نے یہ مصمم ارادہ کر لیا کہ اسے اپنے گھر سے اس طرح شان و شوکت سے پیا کے گھر روانہ کروں گا جس طرح بابل کے ویہڑے سے دلہن کو رخصت کیا جاتا ہے انہوں نے شادی کے موقع پر ایک پروقار تقریب کا اہتمام کیا ۔

اس سے پہلے مدینہ میں اس جیسی تقریب کبھی کسی نے نہیں دیکھی تھی، اس تقریب میں صحابہ رضی اللّٰہ عنہ کثیر تعداد میں شریک ہوئے ان میں اٹھارہ بدری صحابہ رضی اللّٰہ عنہ بھی تھے، نکاح کاتب وحی حضرت ابی بن کعب رضی اللّٰہ عنہ نے پڑھایا۔

بدری صحابہ رضی اللہ عنہا بھی تھے , نکاح کاتب وحی حضرت ابی بن کعب رضی اللہ عنہ نے پڑھایا- اور دلہا, دلہن کے لیے خیرو برکت کی دعا کی جس پر صحابہ رضی اللہ عنہا نے آمین کہی , تین ازواج مطہرات نے دلہن کا بناؤ سنگھار کیا اور بڑے چاؤ سے اس کے پیا کے گھر رخصت کیا –
اس مبارک شادی کے نتیجے میں ماں باپ کو الّٰلہ تعالیٰ نے ایک ایسا ہو نہار لڑکا عطا کیا جو بیس سال کی عمر میں ایک جید عالم بن کر منصہ شہود پر نمودار ہوا – آئے اس جلیل القدر تا بعی کی داستان حیات کے بیان کا آغاز کریں –


محمد بن سرین کی پیدائش امیرالمئومنین حضرت عثمان بن عفان رضی اللہ عنہ کی شہادت سے دو سال پہلے ہوئی , اس کی پرورش ایک ایسے گھرانے میں ہوئی جس میں تقوی و طہارت کی خوشبو کستوری کی مانند پھیلی ہوئی تھی –
جب یہ خرومند نو نہال غفوان شباب کو پہنچا تو اس نے بچشم خود دیکھا کہ مسجد نبوی باقیماندہ صحابہ کرام رضی اللہ عنہا اور تابعین ذی وقار سے بھری ہوئی ہے – اس نورانی محفل میں حضرت زید بن ثابت رضی اللہ عنہ, حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ حضرت عمران بن حصین رضی اللہ عنہ, حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہ, حضرت عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہ حضرت عبداللہ بن زبیر رضی اللہ عنہ اور حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ جیسے جلیل القدر صحابہ کرام رضی اللہ عنہا موجود ہیں,

ان سے فیض حاصل کرنے کے لیے یہ اس طرح ان کی طرف لپکے جس طرح کوئی پیاسا میٹھے چشمے کی طرف لپکتا ہے – انکے قرآنی علم, دینی فقہہ اور فن روایت حدیث رسول ﷺ سے خوب سیراب ہوئے جس سے ان کی عقل حکمت و علم سے اور دل تقوی و طہارت سے لبریز ہو گیا , پھر یہ خاندان اپنے نابغہ روزگار نوجوان کو اپنے ساتھ لے کر بصرہ منتقل ہو گیا –
اور وہاں مستقل رہائش اختیار کر لی –

بصرہ شہر ان دنوں نیا نیا آباد ہوا تھا , مسلمانوں نے امیرالمئومنین حضرت فاروق اعظم رضی اللہ عنہ کی خلافت کے آخری دنوں میں اس شہر کی پلاننگ کی تھی, وہ اس دور میں امت اسلامیہ کی بیشتر ضروریات کو پورا کرتا تھا, یہ اسلامی لشکروں کی چھاؤنی بھی تھا اور ایران و عراق سے نئے سال قبول کرنے والوں کے لئے تعلیمی و تربیتی مرکز بھی تھا, یہ شہر اس اسلامی معاشرے کی جیتی جاگتی تصویر تھا جو دنیاوی کاموں کو اس طرح سرانجام دیتا ہے جیسے اس نے ہمیشہ زندہ رہنا ہو اور اُخروی کاموں کو اس طرح بناہتا ہے جیسے اس نے کل ہی موت کے مونہہ میں چلے جانا ہو –


محمد بن سرین بصرہ میں اپنی نئی زندگی دو متوازی راستوں پر چلتے ہوئے گزارنے لگے- انہوں نے دن کا نصف حصہ علم اور عبادت کے لئے مخصوص کر دیا اور دوسرا نصف کمائی اور تجارت کے لئے خاص کر دیا –

جب طلوع فجر کا وقت ہوتا اور دنیا اپنے رب کے نور سے چمک اٹھتی یہ بصرہ کی مسجد کا رخ کرتے وہاں خود علم حاصل کرتے اور دوسروں کو علم سکھلاتے, جب دن چڑھ جاتا تو وہاں سے سیدھے بازار جاتے وہاں خریدو فروخت کرتے, جب رات کائنات پر اپنے پردے پھیلا دیتی, تو یہ اپنے گھر کے ایک کونے میں الّٰلہ تعالیٰ کے حضور ہاتھ باندھ کر کھڑے ہو جاتے اور پھر اپنی عاجزی و انکساری کا مظاہرہ کرتے ہوئے رکوع و سجود میں چلے جاتے قرآن مجید کی تلاوت بڑی ہی دار فتگی کے انداز میں کرتے اور رحمان و رحیم کی خشیت سے دل اور آنکھوں سے آنسو بہاتے, روتے روتے ان کی ہچکی بندھ جاتی جس سے گھر والوں اور قریبی پڑوسیوں کو خطرہ لاحق ہو جاتا کہ کہیں یہ اسی آووزاری میں الّٰلہ کو پیارے نہ ہو جائیں –


وہ دن کے وقت خریدو فروخت کی غرض سے بازار میں چکر لگاتے ہوئے لوگوں کو آخرت یاد دلاتے رہتے اور انہیں دنیاوی امور میں بصیرت اختیار کرنے کی تلقین فرماتے رہتے- اور انہیں ایسی اچھی اچھی باتوں کی تلقین کرتے رہتے جو ان کے لیے الّٰلہ تعالیٰ کے تقرب کا باعث بنتیں اور لوگوں کے باہمی اختلافات سے الگ تھلگ رہتے کبھی کبھی لوگوں سے مزاحیہ انداز میں بھی گفتگو کرتے جس سے ان کے غمزدہ دلوں کو فرحت و انبساط نصیب ہوتی لیکن اس سے لوگوں کے دلوں میں ان عزت اور وقار کی کوئی کمی واقع نہ ہوتی , الّٰلہ تعالیٰ نے ان کو ہدایت اور وجاہت سے نواز رکھا تھا –

ان کی زبان میں کمال درجے کی تاثیر ودیعت کر رکھی تھی لوگ جب بازار میں اپنے کاروبار میں مگھن ہوتے لیکن انہیں دیکھتے ہی وہ چوکس ہو جاتے اور ان کی زبانیں یاد الٰہی میں مصروف ہو جاتیں اور وہ بے ساختہ *لاالہ الا الّٰلہ اور الّٰلہ اکبر* کہنے لگتے –


ان کی عملی زندگی لوگوں کے لئے بہترین راہنما تھی – تجارت میں اگر دو صورتیں پیش آجاتیں تو آپ اسے اختیار کرتے جو دینی لحاظ سے بہتر ہوتی خواہ انہیں دنیاوی طور پر کتنا ہی نقصان کیوں نہ اٹھانا پڑے –

                         


دین کے اسرار و رموز کو سمجھنے اور حلال و حرام پر کھنے میں بسا اوقات ایسا موقف اختیار کرتے جو لوگوں کو بڑا عجیب و غریب نظر آتا –
مثال کے طور پر ایک شخص نے ان پر جھوٹا دعویٰ کر دیا کہ انہوں نے میرے دو درہم دینے ہیں –
آپ نے صریحا اس سے انکار کر دیا –
اس شخص نے کہا کیا تم قسم اٹھائے ہو کہ میرے دو درہم تمہارے ذمے واجب الادا نہیں ہیں ؟
اس کا خیال تھا کہ اتنی حقیر رقم کی خاطر یہ قسم نہیں اٹھائیں گے –
لیکن آپ نے اسے جوابا ہاں کہا:
اور قسم اٹھا دی-

لوگوں نے کہا: اے ابو بکر صرف دو درہموں کے لیے آپ نے قسم اٹھالی؟

حالانکہ آپ نے چالیس ہزار درہم محض شک کی بنا پر چھوڑ دئیے تھے جبکہ کوئی تاجر بھی شک کی بنیاد پر اپنا اتنا بڑا نقصان نہیں کرتا۔
فرمایا: ہاں میں نے قسم اس لیے اٹھائی ہے ۔
میں نہیں چاہتا کہ اسے حرام کھلاؤں ۔
اور میں جانتا ہوں کہ اس انداز میں حاصل ہونے والے دو درہم اس کے لیے حرام ہیں ۔


محمد بن سیرین کی مجلس خیر وبرکت ، نیکی اور نصیحت کی مجلس ہوتی ، جب انکے پاس کسی کی برائی بیان کی جاتی تو آپ فورا اپنی معلومات کے مطابق اس کی اچھائی بیان کرنے لگتے۔
ایک مرتبہ آپ نے دیکھا کہ ایک شخص حجاج بن یوسف کو اس کی وفات کے بعد گالی دے رہا ہے ، آپ اس کی طرف متوجہ ہوئے اور فرمایا:
بیٹے خاموش رہو۔
حجاج اب اپنے رب کے پاس پہنچ چکا ہے ۔ جب تو اللّٰہ کی بارگاہ میں پہنچے گا تو تجھے اپنا ایک چھوٹا سا گناہ بھی حجاج کے بڑے گناہ سے بھاری دکھائی دے گا۔
اس دن ہر ایک کو اپنی پٹی ہو گی۔

خوب اچھی طرح جان لو کہ اللّٰہ تعالیٰ قیامت کے دن اپنی عدالت میں حجاج سے ان لوگوں کا بدلہ لے گا جن پر اس نے ظلم کیے وہاں ان لوگوں سے اسے بدلہ دلائے گا جنہوں نے حجاج پر ظلم کیا ۔ سنو! آج کے بعد کسی کو گالی نہ دینا۔
جب کوئی شخص تجارت کے سفر پر روانہ ہونے لگتا تو آپ اسے یہ نصیحت کرتے۔ میرے بھائی اللّٰہ سے ڈرتے رہنا، اپنا مقدر حلال طریقے سے تلاش کرنا ۔ میری یہ بات پلے باندھ لیں انسان کو ہمیشہ اس کا مقدر ملتا ہے اگر تم نا جائز طریقے سے اسے حاصل کرنے کی کوشش کرو گے تو اتنا ہی ملے گا جتنا تیرے مقدر میں ہے ۔ اس سے ایک ذرہ بھی زیادہ تم حاصل نہیں کر سکتے۔


محمد بن سیرین کے بنو امیہ کے حکمرانوں کے ساتھ حق گوئی و بیباکی سے پیش آنے کے بہت سے واقعات مشہور و معروف ہوئے آپ نے ہمیشہ ان کے سامنے کلمہ حق بلند کیا۔ اور اخلاص کے ساتھ انہیں نصیحت کی ۔
ایک مرتبہ بنو امیہ کے سردار عراق و ایران کے گورنر عمر بن ہبیرہ فزاری نے محمد بن سیرین جو ملاقات کے لیے بلایا آپ اس سے ملنے کے لیے اپنے بھتیجے کے ہمراہ چل دیئے ۔ جب وہاں پہنچے تو گورنر نے انہیں خوش آمدید کہا۔ اور بڑی عزت و اکرام سے پیش آیا ، تخت پر اپنے ساتھ بٹھایا ، اور بہت سے دین و دنیا کے مسائل ان سے پوچھے پھر یہ دریافت کیا کہ اے ابو بکر ۔ آپ اپنے شہر کے باشندوں کو کس حال میں چھوڑ کر آ ئے ہیں۔

آپ نے بغیر کسی لگی لپٹی کے ارشاد فرمایا:
میں نے انہیں اس حال میں چھوڑ کہ ظلم ان میں ہر سو پھیلا ہوا ہے۔ اور آپ ان سے غافل ہیں۔
اس بات پر آپکے بھتیجے نے انکے کندھے کی چٹکی لی۔ آپ نے اس کی طرف دیکھا اور فرمایا:
سوال تجھ سے نہیں کیا گیا بلکہ مجھ سے کیا گیا اور میں اس کا زمہ دار ہوں۔ بلاشبہ یہ ایک گواہی ہے جو اس کو چھپائے گا وہ گنہگار ہو گا ۔
جب مجلس ختم ہوئی تو عمر بن ہبیرہ نے اسی اعزاز و اکرام سے الوداع کہا۔ جس طرح ان کا استقبال کیا تھا، اور انکی خدمت میں تین ہزار دینار ایک تھیلی پیش کی جسے لینے سے انہوں نے صاف انکار کر دیا ۔
بھتیجے نے پوچھا گورنر کا تحفہ قبول کرنے میں کیا حرج تھا؟
آپ نے فرمایا: اس نے مجھے یہ تحفہ اپنے خیال میں مجھے اچھا سمجھتے ہوئے دیا اگر اس کے خیال کے مطابق میں اچھے لوگوں میں سے ہوں تو اچھائی کو تقاضہ ہے کہ میں یہ تحفہ قبول نہ کروں۔
اگر میں اچھے لوگوں میں سے نہیں ہوں تو پھر مجھے یہ تحفہ قبول کرنے کا کوئی حق ہی نہیں ہے۔


اللّٰہ تعالیٰ نے محمد بن سیرین کے صبر و استقامت اور صداقت کا امتحان لینا چاہا اور اسے ایک کٹھن مشکل میں مبتلا کر دیا جیسا کہ بہت سے اہل ایمان صاحب غطمیت ایسے مراحل سے گزرتے آئے ہیں ۔

آپ نے ایک مرتبہ چالیس ہزار کا ادھار تیل خرید لیا ، جب تیل کا ایک برتن کھولا تو اس میں سے اسے ایک مرا ہوا گلا سڑا چوہا برآمد ہوا ۔
آپ نے دل میں سوچا کہ تیل تو ایک جگہ کشید کیا گیا ہے ۔ یہ نجاست صرف اسی برتن کے لیے مخصوص نہیں ہے ، اگر میں اس عیب کی وجہ سے بیچنے والے کی طرف لوٹا دوں تو ہو سکتا ہے وہ یہی تیل دوسروں لوگوں کو بیچ دے۔
یہ سوچا تو سارا تیل زمین پر بہا دیا۔
اس سے انہیں بہت بڑا نقصان ہوا اور قرض ان پر چڑھ گیا۔ تیل والے نے رقم کا مطالبہ کیا ۔جو یہ ادا نہ کر سکے ۔ اس نے قاضی کی عدالت میں مقدمہ دائر کر دیا ۔

قاضی نے آپ کو قرض کی ادائیگی تک جیل بھیج دیا جب وہ ایک لمبی مدت تک قید میں رہے تو داروغہ جیل ان کے علم و عمل تقوی و عبادت سے متاثر ہو کر کہنے لگا : جب رات ہو جایا کرے تو آپ اپنے گھر چلے جایا کریں، صبح کو واپس آ جایا کریں آپ آزادی تک اس طرح کرتے رہیں میں اس کا زمہ دار ہوں ۔
آپ نے فرمایا: نہیں اللّٰہ کی قسم میں ایسے نہیں کروں گا داروغہ جیل نے پوچھا : کیوں اللّٰہ آپ پر رحم فرمائے ۔
آپ نے ارشاد فرمایا : میں اس خیانت پر آپ کا معاون نہیں بن سکتا ۔

حضرت انس بن مالک رضی اللّٰہ عنہ نے یہ وصیت کی تھی کہ جب میں فوت ہو جاؤں تو مجھے محمد بن سیرین غسل دے اور وہی میری نماز جنازہ پڑھائے لیکن جب آپ فوت ہوئے اس وقت یہ قید میں تھے ، لوگ حکمران کے پاس گئے خادم رسول ﷺ جلیل القدر صحابی کی وصیت اسے سنائی ، اور اس سے اجازت طلب کی کہ محمد بن سیرین وصیت کے مطابق ان کا نماز جنازہ پڑھائیں ۔

انہیں حکومت کی طرف سے اجازت دے دی گئی لیکن محمد بن سیرین نے کہا میں اس وقت تک نہیں جاؤں گا ۔ جب تک تم قرض خواہ سے اجازت نہیں لیتے میں اس کے حق کی وجہ سے قید میں ڈالا گیا ہوں قرض خواہ نے انہیں اجازت دی ، آپ قید خانے سے نکلے حضرت انس رضی اللّٰہ عنہ کی میت کو غسل دیا ، کفن پہنایا ، نمازِ جنازہ پڑھائی اور پھر قید خانے کی طرف لوٹ گئے اپنے گھر والوں کو بھی دیکھنے نہیں گئے ۔


محمد بن سیرین نے ستر سال عمر پائی ، جب موت کا وقت آیا تو ان کے کندھوں پر دنیا کا بوجھ بہت کم تھا اور آخرت کا توشہ بہت زیادہ تھا ۔
اس دور کے ایک عبادت گزار خاتون بیان کرتی ہیں :

مروان محملی ہمارا پڑوسی تھا اور وہ بہت بڑا شریعت کا پابند اور عبادت گزار تھا جب وہ فوت ہوا تو بہت غم ہوا ۔ ایک روز میں نے اسے خواب میں دیکھا ،
 میں نے کہا: اے ابو عبداللّٰہ تیرے رب نے تیرے ساتھ کیا سلوک کیا ہے؟
اس نے کہا: اللّٰہ نے مجھے جنت میں داخل کر دیا میں نے پوچھا پھر کیا ہوا ؟
اس نے کہا پھر مجھے اصحاب الیمین کی طرف بھیج دیا گیا ۔
میں نے پوچھا پھر کیا ہوا ؟
اس نے کہا: پھر مجھے اللّٰہ کے مقرب بندوں میں بھیج دیا گیا۔ میں نے پوچھا آپ نے وہاں کس کو دیکھا اس نے کہا حسن بصری ؒ اور محمد بن سیرین ؒ کو۔

                         


محمد بن سیرین کے مفصل حالات زندگی معلوم کرنے کے لیے درج ذیل کتابوں کا مطالعہ کریں:

 

١-طبقات ابن سعد۔
٣/ ٣٥٨- ٤/ ٣٣٣
٢-شزرات الزاھب :
١/ ١٣٨- ١٣٩ ٢٨/٦
٣-وفیات الاعیان ابن خلکان
٣/ ٣٢١- ٣٢٢
٧/ ١١- ١٩ – ١٥٤
٤-کتاب الوفیات
١٠٩ ٨/ ٢٤٦
٥-الوافی بالوفیات ( صفری)
٣/ ١٤٦
٦- صفتہ الصفوہ ابن جوزی ٢٤١/٣-٢٤٨
٧- طبقات الحفاظ ٩/٣
٨- حلیتہ الاو لیاء اصفہانی ٢٦٣/٢- ٢٨٢
٩- تاریخ بغدار خطیب بغدادی ٢٣١/٥

 

 

حوالہ:
“کتاب: حَياتِ تابِعِين کے دَرخشاں پہلوُ”
تالیف: الاستاذ ڈاکتور عبد الرحمان رافت الباشا
ترجمه: محمود غضنفر

 

Table of Contents