Sections
< All Topics
Print

14. Sa’eed Bin Musayyab (رحمہ اللہ)

Sa’eed Bin Musayyab (رحمہ اللہ)

Hazrat Sa’eed Bin Musayyab fatwa diya karte thay jab keh Sahaaba Kiraam abhi Baqa’id-e-Hayaat thay.

Moar’rikheen

Ameer ul Momineen Abdul Malik Bin Marwaan ne Hajj-e-Baitullah, Madinah munawwarah ki ziyarat aur Rauzah-e-Rasool (علیہ السلام) par Darood-o-Salaam ka nazraana paish karne ka iraada kiya. Jab maah zilqa’dah ka aghaaz hua to Ameer ul Momineen Banu Umayyah kay mu’azziz sardaaron, A’ayaan-e-Hukumat aur chand shehzaadon kay jalu mein sar Zameen-e-Hijaaz ki taraf rawaana hua. Pehlay marhale par yeh qaafilah Damishq se soye Madina kharaama kharaama Aazim-e-Safar hua.  Yeh shaahi kaafila jab kisi manzil par padaao karta, Khaime nasab kar diye jaate.  Bistar bichaa diye jaate. Ilm ki mehfilain mun’aqid ki jaatein, Takeh deeni lehaaz se Fahem-o-Faraasat mein izaafa ho, Aur dilon ko Hikmat-o-Danish kay anwaar se roshan kiya jaye.


Ameer ul Momineen ne Madinah munawwarah pahuchte hi Haram-e-Nabwi ka iraada kiya. Aur Sayyadal Mursaleen Shafee’ ul Muznibeen, Khaataman ul nabiyyin, Rehmat ul lilaalameen (ﷺ) kay Roza-e-Aqdas par haaziri dekar Durood-o-Salaam ka nazraana paish karne ki sa’adat hasil ki jis se unhein itminaan, Suroor aur dili thandak naseeb hui aur Madinah munawrah mein zyadah der tak qayaam karne ka pukhta iraada kiya.


Madinah munawwarah mein qayaam kay dauraan un ilmi halqon ne unhein bohat zyada mutaasir kiya jinse Masjid-e-Nabwi in dino abaad thi.  Aur Azeem ul martabat tab’aeen mein se nabghah asar ulmaa un halqon mein is tarah chamakte damakte dikhaai detay thay jis tarah aasmaan par taare jagmagaate hain.

Woh dekho Hazrat Urwah Bin Zubair (رحمہ اللہ) ka ilmi halqah Husool-e-Ilm-o-Danish mein mashghool hai. Yeh dekho Hazrat Sa’eed Bin Musayyib (رحمہ اللہ) ka ilmi halqah Masroof-e-Ilm-o-Amal hai udhar dekho Hazrat Abdullah Bin Utbah apne ilmi halqay mein mushkil masail hal karne mein munhamik dikhaai detay hain. Kaisa dilfareb manzar hai! Kaisa dilnasheen maahol hai! jee chahta hai keh is maahol mein gum ho jayen.  Aur yahan se baahir nikalne ko koi raasta dikhaai na de.


Aik din Ameer ul Momineen dopeher ko so kar uthe, Tabiyat qadre nasaaz thi, Darbaan ko awaaz di: Aye Maysarah. Usne kaha: Haazir Ameer ul Momineen!

Farmaaya: Abhi Masjid-e-Nabwi me jaao aur kisi jayyad aalim ko bulaao takeh woh ilmi hikayaat suna kar hamara dil behlaye.


Maysarah shaahi hukam paa kar seedha Masjid-e-Nabwi ki taraf gaya wahan pohanch kar nazar dauraai to use sirf aik hi ilmi halqah dikhaai diya jiss kay wast mein aik bawaqaar, Bar’aub shakhs aalimana Shaan-o-Shokuat kay saath ilmi gutthiyaan suljha raha tha. Aur shaagird Adab-o-Ahtraam aur mukammal sakoot kay saath baithe apne ustaad kay munh se nikalne waale qeemti alfaaz apne dilon mein mehfooz kar rahe thay. Shaikh ki umar 60 saal se qadre zaaid maloom ho rahi thi. Usne ilmi halqay se qadre door khade ho kar us bazurg ko ungli se apni taraf aane ka ishaara kiya, Shaikh ne us ki taraf na jhaanka aur na hi us ki koi parwah ki shaahi darbaan ne qadre qareeb ho kar kaha: Tumhe main ishaare se apni taraf bulaa raha hoon.

Farmaaya mujhe?

Kaha haan aur kise.

Farmaaya: Kya kaam hai?

Darbaan ne kaha: Ameer ul Momineen neend se bedaar huye to mujhe hukm dia.  Jo koi is waqat tujhe dastaan go nazar aaye usey meray paas bula laao.

Shaikh ne farmaaya: Jaao miyaan me us ka koi bhaat nahi hoon.

Sarkaari darbaan Maysarah ne kaha: Ameer ul Momineen ko aik aisa shakhs darkaar hai  jo us kay pass baith kar aalimana guftagu kare.

Shaikh ne kaha: Jise koi talab ho woh khud chal kar aata hai. Masjid-e-Nabwi mein yeh ilmi halqah bohat kushaadah daman hai.  Is mein agar woh saail ban kar shaamil hona chahta hai to saad Bismillah Chasham-e-Maa roshan dil maa shaad ilm haasil karne kay liye chal kar aaya jaata hai ilm khud chal kar nahi jaata. Darbaan yeh baatain sun kar wapis palta aur Ameer ul Momineen ki khidmat mein haazir ho kar mukammal rawadaad suna di. Yeh talkh rawadaad sun kar Khalifah Abdul Maalik Bin Marwaan gussa se tilmila utha.

Jast lagaa kar yeh kehte huye ekdam khada hua. Yaqeenan woh Sa’eed  Musayyab hoga. Kaash tu uske paas na jaata! Kaash to usse baat na karta!  Is se hamaari subki hui hai.  Jab khalifat ul muslimeen diwaan se uth kar araam karne kay liye apne haram khana mein chale gaye to chote shehzaday ne apne bade bhaai se pucha woh kaun shakhs hai jo abba huzoor kay samne akadta hai? Un kay paas aane aur unki majlis mein baithne se kanni katraata hai, Halankeh dunia in kay saamne sar Tasleem-e-Kham kiye huye aur Shahaan-e-Rome unki haibat kay samne haath bandhe khade hain, Bade bhaai ne kaha yeh woh shakhs hai jis say abba huzoor ne tery bade bhaai Waleed kay liye un ki beti ka rishta maanga thaa lekin us ne rishta dene se saaf inkaar kar diya tha.

Shehzaday ne bade ta’ajub say badbada kar pucha.

Kya waqayi usne rishta dene se inkaar kar diya tha? Usey aur kiya chahiye tha? Usne aise nojawaan ko thukraa diya Jo Ameer ul Momineen kay baad Masnad-e-Khilafat par mutmakkin hone wala hai, Bada taajjub hai us kay is na’a aqibat andeshana faisle par.  Kya usey is se bhi behtar kisi aur ki talaash hai? Charaagh Tukh-e-Zaibah lay kar dhoondhne se bhi aisa khush naseeb use nahi milega. Ya phir woh apni beti ki shaadi hi nahi karna chahta use hamesha apne ghar bithaye rakhna chahta hai.

Bade bhaai ne chote shehzaaaday ki baat sun kar kaha: Haqiqat-e-Haal ka to mujhe ilm nahi.  Paas baithe Madina kay aik baasi ne dono shehzadon ki taraf dekh kar kaha: Agar ijazat ho to mukkamal dastaan bayaan karoon?

Kyun nahi zaroor bayaan kijye. Usne bataya us ladki ki shaadi aik ghareeb, Muflis aur kangaal nojawaan kay sath tay paa gayi hai aur us ka naam Abu widaa’ hai aur woh mera padosi hai, Us ki shaadi ki dastaan bhi badi dilchasp hai jo us ne mujhe khud sunayi hai.

Abu widaa’ ne mujhe bataya keh me Husool-e-Ilm kay liye Masjid-e-Nabwi jaata rehta tha. Aur Hazrat Sa’eed bin Musayyab kay ilmi halqay mein ade Zoq-o-Shoq aur inhemaaq se baitha karta tha, Shaikh kay halqay se main chand din ghair haazir raha, Ustaad ko mujhe wahan halqay mein na dekh kar andesha hua keh mein ya to achaanak bemaar ho gya hoon ya koi aur naagahaani majboori laahaq ho gayi hai, Mere mut’alliq saathion se pucha lekin unhein bhi mere mut’alliq koi khabar na thi.

Chand dinon ke baad jab main wapas aaya, Aap mujhe dekh kar bohat khush huye, Mujhe khush aamdeed kaha aur farmaaya: Abu widaa’ itne din kahan rahe?

Main ne arz ki Ustaad-e-Mohtaram meri biwi faut ho gayi thi is liye main masroof ho gaya tha aur Shareek-e-Dars na ho saka.

Aap ne farmaaya: Abu widaa’ hamein bataya hota ham aap kay paas ghamkhwari kay liye aate aur us kay janaaze mein shareek hot. Usne kaha: Allah aap ko Jaza-e-Khair ataa kare. Main jab ghar jaane kay liye utha aap ne farmaaya:; Abhi mere paas baithiye jab tamaam shaagird uth kar chale gaye.

Aap ne farmaaya: Kya abhi tak nayi shaadi ka iraada nahi kiya? Main ne arz ki: Allah aap ko khush rakhe bhala ab kaun mujhe apni beti dega. Main aik aisa nojawaan hoon jis ki parwarish yateemi mein hui, Musalsal muflisi aur tangdasti mein zindagi kay din pure kar raha hoon meray paas do yaa teen dirham se zyadah raqam bhi nahi. Ustaad ne meri yeh Dastaan-e-Gham sun kar shafqat aur mohabbat bhare andaaz mein irshaad farmaaya: Pareshaan na hon mein apni laadli beti ki shaadi tum se karta hoon. Ustaad ki yeh baat sun kar main Angusht-o-Badnadaan reh gaya.

Maine sharmaate huye kaha aap——— phir qadre jurrat kar kay main ne kaha: Ustaad mohtaram kya aap apni beti ki shaadi mujh se karenge halaankeh aap ko meray halaat ka achi tarah ilm hai. Farmaaya: Hamare paas jab koi aisa shakhs aata hai jis kay deen aur akhlaaq se ham raazi hon to use apna banane mein khushi mehsoos karte hain, kyunkeh meray azdeek Deen-o-Akhlaaq kay lihaaz se aap bohat behtar hain is liye main tujhe apna beta banane mein khushi mehsoos karta hoon, Phir aap ne Masjid mein maujood logon ko apne paas bulaaya jab chand ashkhaas aap kay paas aa kar baith gaye to aap ne khutba-e-Nikah padh kar apni laadli aur saleeqa shia’ar beti ki shaadi mujh se kar di, Aur meher sirf do darham muqarrar kiya. Main wahan se uthaa, Khushi aur hairat kay mile jule jazbaat se apne ghar ki taraf rawaana hua mujhe koi pata nahi chal raha tha keh zubaan se kya kahoon, Kis tarah shukria adaa karoon, Inhein khayalaat mein Ghaltaan-o-Pechaan apne ghar pohonch gaya mera us din roza tha woh bhi mujhe yaad na raha? Main apne dil say kehne laga: Abu Widaa’ tujh par afsoos to ne yeh kiya kar diya?

Ab kis say qarz logay?

Kis say maal talab karogay?

Main saara din isi Gham-o-Andoh mein mubtala raha aur aane waale halaat ka muqablah karne kay liye pareshaani kay aalam mein sochta raha yahan tak keh maghrib ki azaan ho gayi. Main ne namaz adaa ki phir khaane kay liye baitha. Ghar mein roti aur zaitoon kay tail kay ilawah kuch na thaa.  Main ne abhi aik yaa do luqmay hi liye honge keh kisi ne darwaza khat khataya. Maine wahin baithay hi pucha kaun hai?

Jawaab mila Sa’eed! darwaaza kholo, Yeh naam sun kar mein sochne laga meray jaan’ne walaa Sa’eed kaun hai? Bakhudaa Hazrat Sa’eed Bin Musayyab ki taraf mera dhyaan hi nahi gaya aur na hi meray tasawwur mein tha keh woh bhi is tarah achaanak meray darwaazy par namudaar ho sakte hain. Kyunkeh gazishta chaalees saal kay arsey mein woh apne ghar aur Masjid-e-Nabwi kay ilaawah kahin nahi dekhe gaye.  Maine darwaza khola to yeh dekh kar hairat mein gum ho gaya keh saamne Hazrat Sa’eed Bin Musayyab khade hain. Dil mein khatka hua keh shayad unhon ne apni raye badal li hai.

Maine kaha: Hazrat aap ne paighaam bhej diya hota main khud aap ki khidmat mein haazir ho jaata.

Farmaya: Aaj Aap ky paas mera hi aana munsib tha. Main ny arz kia andar tashrif laiyn.

Farmaaya: Hargiz nahi mein aaj aik zaroori kaam kay liye aaya hoon.

Main ne kaha: Allah rahem kare aisa kaun sa zaroori kaam pad gaya?

Farmaaya: Kyunkeh meri beti aaj dopeher se teri shar’ai biwi ban chuki hai main jaanta hoon keh ghar mein tera koi ghamkhwaar nahi. Is liye teri biwi ko chodne aaya hoon.

Main ne badbadate huye pucha meri biwi ko aap apne hamrah laye aaye hain?

Farmaaya: Haan, mein ne chand qadam aage badh kar dekhaa.  Aik daraaz qad doshizah un kay pechay khadi hai. Phir unho ne apni beti ki taraf dekha aur irshaad farmaaya: Beti Allah kay naam aur us ki barkat se apne piyaa kay ghar qadam rakho. Beti apne miyan ki izzat karna aur ahtraam say pesh aana. Jab us ne sharmaate huye mere ghar ki dehleez par qadam rakha to woh ladkhada gayi qareeb tha keh woh zameen par girr jaati lekin sambhal gayi, Main us kay saamne Hairat-o-Istijaab ki tasweer bana khada thaa. Kuch sujhaai na de raha tha keh mein is mouqa par kya kahoon, Biwi ko chaarpayi par bithaya, Khaane ka piyala uthaa kar aik taraf rakh diya keh kahin biwi ki nazar us par naa pad jaye kyunkeh us mein roti aur zaitoon kay tail kay ilawah kuch na tha.  Main ne socha agar biwi ki nazar is saada aur mamooli khaane par pad gayi to mujhe sharminda hona padega. Phir main ne makaan ki chat par chadh kar padosiyon ko awaaz di, Unhon ne ghabraa kar pucha kya baat hai?

Main ne kaha: Hazrat Sa’eed Bin Musayyab ne aaj dopeher ko apni beti ka nikah mujh say kar diya hai, Ab woh achaanak meri biwi ko apne saath lay kar meray ghar tashreef le aaye aur yahan chod kar wapas chale gaye.  Azraah-e-Karam chand khawateen ko mere ghar bhejo takeh woh meri biwi kay paas baithain aur us dil behlaayen aur main apni waalida ko bulaa laaon woh yahan say qadre door rehti hain.

Padosiyon meim say aik budhiya ne kaha: Teri aqal thikaane hai? kya keh rahe ho keh Hazrat Sa’eed Bin Musayyab (رحمہ اللہ) ne apni beti tujh say biyaah di aur phir woh khud hi apni beti ko chhodne teray ghar aa gaye yeh kaise ho sakta hai?

Unho ne to shehzaada Waleed Bin Abdul malik ko rishta dene se inkaar kar diya tha, Yeh munh aur masoor ki daal.

Main nahi maanti yeh ho hi nahi sakta. Chaah Nisbat-e-Khaak Rabb-e-Aalim paak.

Abu Widaa’ ne kaha: Badi bee tum maano na maano yeh ho chuka hai, Yakeen nahi aata to meray ghar aa kar dekh lo. Mahjabeen dulhan ab meray aangan mein jalwah numaa hai, Meri yeh baatain sun kar chand padosi khwateen mere ghar aayin, Unho ne Bachashm-e-Khud dekha to hairaan reh gayeen, Is nayi naveli dulhan kay paas baithi chehre say ghoonghat uthaaya to husn bemisaal ki jalwah numayi pe shashdar huin.

Chehra kya tha jaise husn mehtaab us kay aangan mein utar aaya ho, Khawateen ne usey khush aamdeed kaha aur us kay Husn-o-Jamal ko rashq bhari nigaahon say dekha, Uska dil behlaane kay liye baatain karne lagin.


Thodi hi der baad mein apni Ammi jaan ko apne ghar le aaya, Jab usne meri biwi ko dekha to dil baagh baagh ho gaya.

Farmaaya: Beta ise meray sath jaane do yeh chand din meray ghar mein rahegi phir isey dulhan ki tarah sajaa kar teray paas laungi, Agar tu ne aaj meri baat na maani to mein zindagi bhar tujh say kalaam na karoongi.  Maine kaha: Ammi jaan jo aap ka hukm main sar Tasleem-e-Kham karta hoon, Mein is say sarmo bhi inhiraaf ki jurrat nahi kar sakta. Waalida mohtarma ne teen din usey apne paas rakha phir usey dulhan ki tarah sajaa kar meray ghar layi. Waqayi woh Husn-o-Jamal ki paiker Ilm-o-Amal mein mumtaaz, Quran-o-Hadees ki hafiz aur khaawand kay huqooq ka khayaal rakhne waali saleeqa shia’aar khatoon thi, Us kay saath hansi khushi chand din guzar gaye, Us kay ghar waalon ki taraf say is dauraan koi milne nahi  aaya.

Chand dinon kay baad Masjid-e-Nabwi mein Shaikh mohtaram kay ilmi halqay mein shareek hone gaya, Salaam arz kiya, Aap ne salaam ka sirf jawaab diya aur koi baat na ki, Jab ilmi majlis barkhwast hui to wahan koi baaqi na raha aap ne farmaaya: Abu Widaa’ teri begham ka kya haal hai?

Maine kaha: hashaash bashaash Khush-o-Khurram bilkul mutmayin.

Yeh sun kar Shaikh khush huye farmaaya: Alhamdulillah Chashm-e-Bad door.

Jab main ghar jaane laga to aap ne mujhe kaafi raqam inaayat ki taakeh ham  miyaan biwi ise gharelu zaruriaat mein sarf karain.


Abdul Malik Bin Marwaan kay bete ne aik roz Hazrat Sa’eed Bin Musayyab kay baare mein kaha: Yeh shakhs bhi ajeeb hai, Is shaahi khandaan ko thukraa diya, Shehzaade ko purkah ki haisiyat na di, Agar yeh rishta de deta to khud bhi aish karta aur beti bhi.

Ahl-e-Madinah mein aik shakhs ne kaha shehzada jaan is mein kaun si tajjub ki baat hai.

  • Hazrat Sa’eed Bin Musayyab (رحمہ اللہ) aik aisi Azeem shakhsiyat hai jis ne apni duniya ko aakhirat kay liye sawaari bana rakha hai.
  • Us ne apne aur khandaan kay liye baaqi rehne waali cheez ko fana hone waali cheez kay badle khareed liya hai. Bakhudaa us ne Ameer ul Momineen kay betay ko apni beti ka rishta dene mein bukhal nahi kiya, Aur naa hi yeh wajah thi keh woh shehzaade ko acha nahi samjhtaa balkeh usey sirf apni beti kay duniya kay fitnah mein mubtala hone ka andesha tha.

Aik saathi ne tajjub say pucha: Kya tum Ameer ul Momineen ko jawaab de kar apni beti ka rishta aik aam muslaman kay saath kar rahe ho?

Farmaaya meri beti mere paas amaanat hai. Main us kay haq mein hamesha behter sochta hoon.

Pucha woh kaise?

Farmaaya: Tumhara kya khayaal hai agar meri beti Banu Ummaya kay mehllaat mein muntaqil ho jaye, Shaahi faakhirana libaas zaibtan karne lage, Qeemti Saaz-o-Samaan Zer-e-Istmaal ho, khidmat guzaari kay liye kaneezain aur naukar chaakar hamma waqt us kay samnay daayen baayen Dast-o-Basta khade rahain aur phir woh apne aap ko raani, Khalifah ki begham aur khatoon-e-Awwal samajhne lage. Mujhe bataye un raa’niyon kay baad us kay deen ka kya banega?

Ahl-e-shaam mein say aik shakhs ne kaha: Hazrat Sa’eed Bin Musayyab  (رحمہ اللہ) aik nabghah rozgaar, Aalim, Zaahid aur dunia say bilkul beniyaaz thay.

Madinay kay aik baasi ne tabsarah karte huye kaha keh: Hazrat Sa’eed Bin Musayyab kabhi haq say munharif naa huye.  Woh Aksar-o-Beshtar din ko rozah rakhte aur raat ko ibaadat mein masroof rehte. Aap ne zindagi mein chalees hajj kiye, Aur musalsal chalees baras tak Masjid-e-Nabwi mein baajama’at namaz adaa ki, Hamesha pehli saff aur Takbeer-e-Aolaa mein shaamil huye.

Unhein yeh mawaqe mayassar thay keh Quresh ki jis khatoon say chaahain shaadi kar lain kekin unho ne Hazrat Abu Hurairah (رضی اللہ عنہ) ki beti ko apni biwi banane kay liye tamaam Qureshi khawateen par tarjeeh di, Usey apni Rafeeqa-e-Hayaat muntakhib kiya keh khusar kay Rasool-e-Aqdasﷺ kay saath gehre talluqaat Ahadees-e-Rasoolﷺ par dastras aur Baargah-e-Risaalat say Kasb-e-Faiz un kay nazdeek wajah tarjeeh thay.

Hazrat Sa’eed Bin Musayyab (رحمہ اللہ) ne Azwaaj-e-Mutahharaat se bhi ilm haasil kiya aur Hazrat Zaid Bin Saabit, Hazrat Abdullah bin Abbas aur Hazrat Abdullah  Umar jaise akaabir Sahaaba Kiram (رضي اللہ عنهم) kay saamne zaanuye talmand tay kiye, Hazrat Usmaan bin Affaan (رضی اللہ عنہ), Hazrat Ali  Abi taalib (رضی اللہ عنہ) aur Hazrat Sohaib Roomi (رضی اللہ عنہ) jaise Jaleelul Qadar Sahaaba say Kasb-e-Faiz kiya, Un kay Akhlaaq-o-Atwaar apnaaye aur un kay Ausaaf-o-Adaat say aarasta huye, Woh is jumle ko baar baar dohrayaa karte thay “Bandon ne Allah ta’alaa ki ita’at say apne aap ko mo’azzaz banaya aur us ki naafarmaani say Zaleel-o-Khwaar huye”

Hazrat Sa’eed Bin Musayyab (رحمہ اللہ) kay mufassal Halaat-e-Zindagi maloom karnay kay liye darjzail kitaabon ka mutaala kijye:

1: Tabaqat Ibn-e-Saad                                                              5/119
2: Tarikh Bukhari                                                                                          
3: Al Ma’arif                                                                                                   437
4: Hilyat ul Awliya                                                                                     2/161
5: Tahzeeb ul Asm’a wa Lughat                                                     1/319
6: Wafayat ul Aayan                                                                             2/375
7: Tazkirat ul Huffaz                                                                               1/51
8: Al Ibar                                                                                                        1/110
9: Al Nujoom Al Zahirah                                                                      1/228
10: Sazarat ul Zahab                                                                               1/102

 

REFERENCE:
Book: “Hayat-e-Taba’een kay Darakhsha pahelo”
Taleef :  Dr. Abdur Rahman Rafat Al- Pasha.
Urdu Translation : By Professor Mehmood Ghaznofer

حضرت سعید بن مُسعَیب رضی اللہ تعالی عنہ

 

حضرت سعید بن مُسعَیب رضی اللہ تعالی عنہ فتوی دیا کرتے تھے جب کے صحابہ کرام ابھی بقیر حیات تھے۔

                 مئور خین

 

امیرالمومنین عبدالملک بن مروان نے حج بیت اللہ ‘ مدینہ منورہ کی زیارت اور روضہ رسول علیہ السلام پر درود و سلام کا نذرانہ پیش کرنے کا ارادہ کیا۔ جب ماہ ذی القعدہ کا آغاز ہوا تو امیرالمومنین بنو امیہ کے معزز سرداروں ‘ اعیان حکومت اور چند شہزادوں کے جلو میں سرزمین حجاز کی طرف سے روانہ ہوا پہلے مرحلے پر یہ قافلہ دمشق سے سوئے مدینہ خراماں خراماں عازم سفر ہوا ‘ یہ شاہی قافلہ جب کسی منزل پر پڑاؤ کرتا خیمے نصب کر دیے جاتے۔ بستر بچھا دیے جاتے علم کی محفلیں منعقد کی جاتیں ‘ تاکہ دینی لحاظ سے فہم و فراست میں اضافہ ہو ‘ اور دلوں کی حکومت و دانش کے انواز سے روشن کیا جائے

           


امیرالمومنین نے مدینہ منورہ پہنچتے ہی حرم نبوی کا ارادہ کیا اور سید المرسلین شفیع المر نبین ‘ خاتم النبیین ‘ رحمتہ اللعالمین ﷺ کے روضہ اقدس پر حاضری دے کردرود و سلام کا نذرانہ پیش کرنے کی سعادت حاصل کی جس سے انھیں اطمینان و سرور اور دلی ٹھنڈک نصیب ہوئی اور مدینہ منورہ میں زیادہ دیر تک قیام کرنے کا ارادہ کیا۔



  مدینہ منورہ میں قیام کے دوران علمی حلقوں نے انہیں بہت

زیادہ متاثر کیا۔ جن سے مسجد نبوی ان دنوں آباد تھی۔ اور عظیم المرتیت تابعین میں سے نابغہ عصر علماء اس طرح چمکتے دمکتے دکھائی دیتے تھے جس طرح آسمان پر تارے جگمگاتے ہیں۔
وہ دیکھو حضرت عروۃ بن زبیر رضی اللہ تعالی عنہ کا علمی حلقہ حصول علم و دانش میں مشغول ہے۔ یہ دیکھو حضرت سعید بن مسیب رضی اللہ تعالی عنہا کا علمی حلقہ مصروف علم و عمل ہے ادھر دیکھو حضرت عبداللہ بن عتبہ رضی اللہ تعالی عنہا اپنے علمی حلقے میں مشکل مسائل کے حل کرنے میں منہمک دیکھائی دیتے ہیں کیسا دلفریب منظر ہے ‘ کیسا دلنشین ماحول ہے جی چاہتا ہے کہ اس ماحول میں گم ہو جائیں۔ اور یہاں سے باہر نکلنے کو کوئی راستہ دکھائی نہ دے

  ایک دن امیرالمومنین دوپہر کو سو کر اٹھے ‘ طبعیت قدرے ناساز تھی ‘ دربان کو آواز دی ارے ميسرة اس نے کہا حاضر امیرالمومنین۔
فرمایا:اب یہ مسجد نبوی میں جاؤ اور کسی جید علم کو بلاؤ تاکہ وہ علمی
حکایات سنا کر ہمارا دل بہلائے-


ميسرہ شاہی حکم پاکر سیدھا مسجد نبوی کی طرف گیا وہاں پہنچ کر نظر دوڑائی تو اسے طرف ایک ہی علمی حلقہ دکھائی دیا جس کے وسط میں ایک با وقار بار عب شخص عالمانہ شان و شوکت کے ساتھ علم گتھیاں سلجھا رہا تھا

اور شاگرد ادب و احترام اور مکمل سکوت کے ساتھ بیٹھے استاد کے منہ سے نکلنے والے قیمتی الفاظ اپنے دلوں میں محفوظ کر رہے تھے شیخ کی عمر ساٹھ سال سے قدرے زائد معلوم ہو رہی تھی اس نے علمی حلقے سے قدرے دور کھڑا ہو کر اس بزرگ کو انگلی سے اپنی طرف آنے کا اشارہ کیا شیخ نے اس کی طرف نہ جھانکا اور نہ ہی اس کی کوئی پروا کی شاہی دربان نے قدرے قریب ہو کر کہا :لڑکی کے تمہیں میں اشارے سے اپنی طرف بلا رہا ہوں۔
فرمایا مجھے ؟
کہا : ہاں اور کسے-
فرمایا کیا کام ہے؟
دربان نے کہا امیرالمومنین نیند سے بیدار ہوئے تو مجھے حکم دیا۔ جو کوئی اس وقت تجھے داستان گو نظر آئے اسے میرے پاس بلاؤ:
شیخ نے فرمایا:جاؤ میاں میں اس کا کوئی بھاٹ نہیں ہوں۔
سرکاری دربان میسرہ نے کہا : امیرالمومنین کو ایک ایسا شخص ہے درکار ہے۔ جو اس کے پاس بیٹھ کر عالمانہ گفتگو کرے۔ شیخ نے کہا جسے کوئی طلب ہو وہ خود چل کر آتا ہے مسجد نبوی میں یہ علمی حلقہ بہت کشادہ دامن ہے۔ اس میں اگر وہ سائل بن کر شامل ہونا چاہے تو صد بسم اللہ چشم مار وش دل مشاد علم حاصل کرنے کے لئے چل کر آیا جاتا ہے علم خود چل کر نہیں جایا کرتا۔ دربان یہ باتیں سن کر واپس پلٹا اور امیر المومنین کی خدمت میں حاضر ہو کر مکمل روئیداد سنادی تلخ روئیداد

سن کر خلیفہ عبد الملک بن مروان غصے سے تلملا اٹھا۔
جست لگا کر یہ کہتے ہوئے یکدم کھڑا ہوا یقینا وہ سعید بن مسیب ہوگا کاش تو اس کے پاس نہ جاتا کاش تو اس سے بات نہ کرتا۔ اس سے ہماری سبکی ہوئی ہے جب خلیفہ المسلمین دیوان سے اٹھ کر آرام کے لیے اپنے حرم خانہ میں چلے گئے تو چھوٹے شہزادے نے اپنے بڑے بھائی سے بھائی جان وہ کون شخص ہے جو ابّا حضور کے سامنے اکڑتا ہے، ان کے پاس آنے اور ان کی مجلس میں بیٹھنے سے کنی کتراتا ہے حالانکہ دنیا ان کے سامنے سر تسلیم خم کیے ہوئے اور شاہان روم ان کی جیت کے آگے ہاتھ باندھے کھڑے ہیں ، بڑے بھائی نے کہا یہ وہ شخص ہے جس سے ابا حضور نے تیرے بھائی ولید کے لیے ان کی بیٹی کا رشتہ مانگا تھا لیکن اس نے رشتہ دینے سے صاف انکار کر دیا تھا۔

شہزادے نے بڑے تعجب سے بڑبڑا کر پوچھا۔
کیا واقعی اس نے رشتہ دینے سے انکار کر دیا تھا۔ اسے اور کیا چاہیئے تھا اس نے ایسے نوجوان کو ٹھکرا دیا جو امیر المومنین کے بعد مسند خلافت پر متمکن ہونے والا ہے بڑا تعجب ہے اس کے اس ناعاقبت اندیشانہ فیصلے پر کیا اسے اس سے بھی بہتر کسی بر کی تلاش ہے ، چراغ رخ زیبا لے کر ڈھونڈنے سے بھی ایسا خوش نصیب براسے نہیں ملے گا: یا پھر وہ اپنی بیٹی کی شادی ہی نہیں کرنا چاہتا ہمیشہ اسے اپنے گھر بٹھائے رکھنا چاہتا ہے۔

بڑے بھائی نے چھوٹے شہزادے کی باتیں سن کر کہا: حقیقت حال کا تو مجھے علم نہیں۔ پاس بیٹھے مدینے کے ایک باسی نے دونوں شہزادوں کی طرف دیکھا اور کہا : اگر اجازت ہو تو مکمل داستان بیان کروں۔ کیوں نہیں ضرور بیان کیجئے اس نے بتایا اس لڑکی کی شادی ایک غریب ، مفلس اور کنگال نوجوان کے ساتھ طے پاگئی ہے اس کا نام ابو وداعہ ہے وہ میرا پڑوسی ہے اس کی شادی کی داستان بھی بڑی دلچسپ ہے جو اس نے مجھے خود سنائی۔

ابو وداعہ نے مجھے بتایا کہ میں حصول علم کے لیے مسجد نبوی میں رہتا تھا۔ اور حضرت سعید بن مسیب کے علمی حلقے میں بڑے ذوق و شوق اور انہماک سے بیٹھا کرتا تھا، شیخ کے حلقے سے میں چند دن غیر حاضر رہا، استاذ کو مجھے وہاں حلقے میں نہ دیکھ کر اندیشہ ہوا کہ میں یا تو اچانک بیمار ہو گیا ہوں یا کوئی اور ناگہانی مجبوری لاحق ہو گئی ہے، میرے متعلق ساتھیوں سے پوچھا لیکن انہیں بھی میرے متعلق کوئی خبر نہ تھی۔

چند دنوں کے بعد جب میں واپس آیا آپ مجھے دیکھ کر بہت خوش ہوئے مجھے خوش آمدید کہا: اور فرمایا: ابو وداعہ اتنے دن کہاں رہے؟
میں نے عرض کی استاذ محترم میری بیوی فوت ہو گئی تھی اس لیے میں مصروف ہو گیا اور شریک درس نہ ہو سکا۔

آپ نے فرمایا : ابو وداعہ ہمیں بتایا ہو تا ہم آپ کے پاس غمخواری کے لیے آتے اور اس کے جنازے میں شریک ہوتے میں نے کہا: اللہ آپ کو جزائے خیر عطا کرے میں جب گھر جانے کے لیے اٹھا۔ آپ نے فرمایا ابھی میرے پاس بیٹھئے جب تمام شاگرد اٹھ کر چلے گئے۔

 

آپ نے فرمایا :
کیا ابھی تک نئی شادی کا ارادہ نہیں کیا میں نے عرض کی:
 اللہ آپ کو خوش رکھے بھلا اب کون اپنی بیٹی مجھے دے گا:
میں ایک ایسا نوجوان ہوں جس کی پرورش یتیمی میں ہوئی، مسلسل مفلسی اور تنگدستی میں زندگی کے دن پورے کر رہا ہوں میرے پاس دو یا تین درہم سے زیادہ رقم بھی نہیں استاذ نے میری یہ داستان غم سن کر شفقت و محبت بھرے انداز میں ارشاد فرمایا پریشان نہ ہوں میں اپنی لاڈلی بیٹی کی شادی تم سے کرتا ہوں اپنے استاذ کے منہ سے یہ الفاظ سن کر میں انگشت بدنداں رہ گیا میں نے شرماتے ہوئے کہا آپ ۔۔۔۔۔۔۔ پھر قدرے بزات کر کے میں نے کہا:
استاذ محترم کیا آپ اپنی بیٹی کی شادی مجھے سے کریں گے حالانکہ آپ کو میرے حالات کا اچھی طرح علم ہے فرمایا، ہمارے پاس جب کوئی ایسا شخص آتا ہے جس کے دین اور اخلاق سے ہم راضی ہوں، تو اسے اپنا بنانے میں خوشی محسوس کرتے ہیں، چونکہ میرے نزدیک دین و اخلاق کے لحاظ سے آپ بہت بہتر ہیں اس لیے میں تجھے اپنا بیٹا بنانے میں خوشی محسوس کرتا ہوں، پھر آپ نے مسجد میں موجود لوگوں کو اپنے پاس بلایا جب چند اشخاص آپ کے پاس آ کر بیٹھ گئے تو آپ نے خطبہ نکاح پڑھ کر اپنی لاڈلی حسین و جمیل اور سلیقہ شعار بیٹی کی شادی مجھ سے کردی اور مہر صرف دو درهم مقرر کیا میں وہاں سے اٹھا خوشی اور حیرت کے ملے جلے جذبات سے اپنے گھر کی طرف روانہ ہوا مجھے کوئی پتہ نہیں چل رہا تھا کہ زبان سے کیا کہوں کس طرح شکریہ ادا کروں انہیں خیالات میں غلطاں و پیچاں اپنے گھر پہنچ گیا میرا اس دن روزہ تھاوہ بھی مجھے یاد نہ رہا میں اپنے دل سے کہنے لگا ابو وداعہ تجھے پر افسوس تو نے یہ کیا کر دیا؟
اب کس سے قرض لو گے ؟
کس سے مال طلب کرو گے ؟

میں سارا دن اسی غم و اندوہ میں مبتلا رہا اور آنے والے حالات کا مقابلہ کرنے کے لیے پریشانی کے عالم میں سوچتا رہا یہاں تک کہ مغرب کی اذان ہو گئی میں نے نماز ادا کی پھر کھانے کے لیے بیٹھا گھر میں روٹی اور زیتون کے تیل کے علاوہ کچھ نہ تھا۔ میں نے ابھی ایک یا دو لقمے ہی لیے ہونگے کہ کسی نے دروازہ کھٹکھٹایا میں نے وہیں بیٹھے ہوئے پوچھا کون ہے؟

جواب ملا سعید دروازہ کھولو ‘ یہ نام سن کر میں سوچنے لگا میرے جاننے والا سعید کون ہے بخدا حضرت سعید بن مسیب کی طرف میرا دھیان ہی نہیں گیا اور نہ ہی میرے تصور میں تھا کہ وہ بھی اس طرح اچانک میرے دروازے پر نمودار ہو سکتے ہیں کیونکہ گذشتہ چالیس سال کے عرصے میں وہ اپنے گھر اور مسجد نبوی کے علاوہ کہیں نہیں دیکھے گئے۔ میں نے دروازہ کھولا تو یہ دیکھ کر حیرت میں گم ہو گیا کہ سامنے حضرت سعید بن مسیب کھڑے ہیں۔ دل میں کھٹکا محسوس ہوا کہ شاید انہوں نے رائے بدل لی ہے۔

میں نے کہا :
حضرت آپ نے پیغام بھیج دیا ہوتا تو میں خود آپ کی خدمت میں حاضر ہو جاتا۔

فرمایا:
ہرگز نہیں میں آج ایک ضروری کام کے لیے آیا ہوں۔

میں نے کہا:
اللہ رحم کرے ایسا کون سا ضروری کام پڑ گیا؟

فرمایا :
چونکہ میری بیٹی آج دوپہر سے تیری شرعی بیوی بن چکی ہے میں جانتا ہوں کہ گھر میں تیرا کوئی غمخوار نہیں اس لیے تیری بیوی کو چھوڑنے آیا ہوں۔

میں نے بڑ بڑاتے ہوئے پوچھا میری بیوی کو آپ اپنے ہمراہ لےآئے ہیں۔

فرمایا :
ہاں، میں نے چند قدم آگے بڑھ کر دیکھا۔ ایک دراز قد دوشیزہ ان کے پیچھے کھڑی ہے، پھر انہوں نے اپنی بیٹی کی طرف دیکھا اور ارشاد فرمایا بیٹی اللہ کے نام اور اس کی برکت سے اپنے پیا کے گھر قدم رکھو بیٹی اپنے میاں کی عزت کرنا اور احترام سے پیش آنا جب اس نے شرماتے ہوئے میرے گھر کی دہلیز کی طرف قدم بڑھایا تو وہ لڑکھڑا گئی قریب تھا کہ زمین پر گر جاتی لیکن وہ سنبھل گئی ، میں اس کے سامنے حیرت و استعجاب کی تصویر بنا کھڑا تھا۔ کچھ سجھائی نہ دے رہا تھا کہ میں اس موقع پر کیا کہوں بیوی کو چار پائی پر بٹھایا جلدی سے کھانے کا پیالہ اٹھا کر ایک طرف رکھ دیا کہ کہیں بیوی کی نظر اس پر نہ پڑ جائے چونکہ اس میں روٹی اور زیتون کے تیل کے علاوہ کچھ نہ تھا۔ میرے خیال میں آیا کہ اگر بیوی کی نظر اس سادہ اور معمولی سے کھانے پر پڑ گئی تو مجھے شرمندہ ہونا پڑے گا پھر میں نے مکان کی چھت پر چڑھ کر پڑوسیوں کو آواز دی انہوں نے گھبرا کر پو چھا کیا بات ہے ؟

میں نے کہا :
حضرت سعید بن مسیب نے آج دوپہر اپنی بیٹی کا نکاح


مجھ سے کر دیا ہے اب وہ اچانک میری بیوی کو اپنے ساتھ لے کر میرے گھر تشریف لے آئے اور اسے یہاں چھوڑ کر واپس چلے گئے۔ از راہ کرم چند خواتین کو میرے گھر بھیجو تاکہ وہ میری بیوی کے پاس بیٹھیں اور اس کا دل بھلا ئیں اور میں اپنی والدہ کو بلا لاؤں وہ یہاں سے قدرے دور رہتی ہے۔

پڑوسیوں میں سے ایک بڑھیا نے کہا:
تیری عقل ٹھکانے ہے کیا کہہ رہے ہو کہ سعید بن مسیب رضىﷲعنه نے اپنی بیٹی تجھ سے بیاہ دی ہے اور پھر وہ خود ہی اپنی بیٹی کو چھوڑنے تیرے گھر آگئے ہیں یہ کیسے ہو سکتا ہے؟

انہوں نے تو شہزادہ ولید بن عبد الملک کو رشتہ دینے سے انکار کر دیا تھا یہ منہہ اورمسور کی دال۔

میں نہیں مانتی یہ ہو ہی نہیں سکتا چہ نسبت خاک رابعالم پاک۔ ابو وداعہ نے کہا :
بڑی بی تم مانو نہ مانو یہ ہو چکا ہے یقین نہیں آتا تو میرے گھر آکر دیکھ لو۔ مہہ جبیں دلہن اب میرے آنگن میں جلوہ نما ہے میری یہ باتیں سن کر چند پڑوسی خواتین میرے گھر آئیں انہوں نے بچشم خود دیکھا تو حیران رہ گئیں اس نئی نویلی دلہن کے پاس بیٹھیں چہرے سے گھونگٹ اٹھایا تو حسن بے مثل کی جلوہ نمائی پہ ششدر ہوئیں۔

چہرہ کیا تھا جیسے مہتاب اس کے آنگن میں اترا آیا ہو خواتین نے اسے خوش آمدید کہا اس کے حسن و جمال کو رشک بھری نگاہوں سے دیکھا اس کا دل بہلانے کے لیے باتیں کرنے لگیں۔

تھوڑی ہی دیر بعد میں اپنی امی جان کو اپنے گھر لے آیا جب اس نے میری بیوی کو دیکھا تو دل باغ باغ ہو گیا۔

فرمایا بیٹا اسے میرے ساتھ جانے دو یہ چند دن میرے گھر میں رہے گی پھر اسے دلہن کی طرح سجا کر تیرے پاس لاؤں گی اگر تو نے آج میری یہ بات نہ مانی تو میں تیرے ساتھ زندگی بھر کلام نہیں کروں گی۔ میں نے کہا امی جان جو آپ کا حکم ہو میں سر تسلیم خم کرتا ہوں میں اس سے سرمو بھی انحراف کی جرات نہیں کر سکتا۔ والدہ محترمہ نے اسے تین دن اپنے گھر میں رکھا پھر اسے دلہن کی طرح سجا کر میرے گھر لائی واقعی وہ حسن و جمال کی پیکر علم و عمل میں ممتاز قرآن و حدیث کی حافظ اور خاوند کے حقوق کا خیال رکھنے والی سلیقہ شعار خاتون تھی اس کے ساتھ جنسی خوشی کئی دن گذر گئے اس کے گھر والوں کی طرف سے اس دوران کوئی ملنے نہیں آیا۔

چند دنوں کے بعد مسجد نبوی میں شیخ محترم کے علمی حلقے میں شریک ہونے گیا، سلام عرض کیا آپ نے سلام کا صرف جواب دیا اور کوئی بات نہ کی جب علمی مجلس برخواست ہوئی تو کوئی وہاں باقی نہ رہا آپ نے فرمایا ابو وداعہ تیری بیگم کا کیا حال ہے؟

میں نے کہا ہشاش بشاش خوش و خرم بالکل مطمئن۔ یہ سن کر شیخ خوش ہوئے اور فرمایا الحمد للہ چشم بد دور۔ جب میں گھر جانے لگا تو آپ نے مجھے کافی رقم عنایت کی تاکہ ہم میاں بیوی اسے گھریلو ضروریات میں صرف کریں عبد المالک بن مروان کے بیٹے نے ایک روز حضرت سعید بن مسیب رضىﷲعنه کے بارے میں کہا:
یہ شخص بھی عجیب ہے، اس نے شاہی خاندان کو ٹھکرا دیا شہزادے کو پر کاہ کی حیثیت نہ دی اگر یہ رشتہ دے دیتا تو خود بھی عیش کرتا اور اس کی بیٹی بھی۔

اہل مدینہ میں ایک شخص نے کہا شہزادہ جان اس میں کون سی تعجب کی بات ہے۔

حضرت سعید بن مسیب رضىﷲعنه ایک ایسی عظیم شخصیت ہے جس نے اپنی دنیا کو آخرت کے لیے سواری بنا رکھا ہے۔

اس نے اپنے اور خاندان کے لیے باقی رہنے والی چیز کو فنا ہونے والی چیز کے بدلے خرید لیا ہے۔

بخدا اس نے امیر المومنین کے بیٹے کو اپنی بیٹی کا رشتہ دینے میں بخل نہیں کیا، اور نہ ہی یہ وجہ تھی کہ وہ شہزادے کو اچھا نہیں سمجھتا تھا بلکہ صرف اسے اپنی بیٹی کے دنیا کے فتنے میں مبتلا ہونے کا اندیشہ تھا۔

ایک ساتھی نے تعجب سے پوچھا:
کیا تم امیر المئومنین کو جواب دے کر اپنی بیٹی کا رشتہ ایک عام مسلمان کے ساتھ کر رہے ہو۔

فرمایا میری بیٹی میرے پاس امانت ہے میں اس کے حق میں ہمیشہ بہتر سوچتا ہوں

پوچھا وہ کیسے ؟
فرمایا تمہارا کیا خیال ہے اگر میری بیٹی بنو امیہ کے محلات میں منتقل ہو جائے شاہی فاخرانہ لباس زیب تن کرنے لگے قیمتی سازو سامان زیر استعمال ہو، خدمت گزاری کے لیے کنیزیں اور نوکر چاکر ہمہ وقت اس کے سامنے اور دائیں بائیں دست بستہ کھڑے رہیں پھر وہ اپنے آپ کو رانی خلیفہ کی بیگم اور خاتون اول تصور کرنے لگے۔ مجھے بتائیے ان رعنائیوں کےبعد اس کے دین کا کیا بنے گا؟

اہل شام میں سے ایک شخص نے کہا: کہ حضرت سعید بن مسیب رضىﷲعنه ایک نابغہ روزگار عالم ، زاہد اور دنیا سے بالکل بے نیاز تھے۔
مدینے کے ایک باسی نے تبصرہ کرتے ہوئے کہا۔ حضرت سعید بن مسیب کبھی حق سے منحرف نہ ہوئے وہ اکثر و بیشتر دن کو روزہ رکھتے اور رات کو عبادت میں مصروف رہتے آپ نے زندگی میں چالیس حج کیے اور مسلسل چالیس برس تک مسجد نبوی میں باجماعت نماز ادا کی ہمیشہ پہلی صف اور تکبیر اولی میں شامل ہوئے۔

انہیں یہ مواقع میسر تھے کہ قریش کی جس خاتون سے بھی چاہیں شادی کر لیں لیکن انہوں نے حضرت ابو ہریرہ رضىﷲعنه ان کی بیٹی کو اپنی بیوی بنانے کے لیے تمام قریشی خواتین پر ترجیح دی اسے اپنی رفیقہ حیات منتخب کیا کہ خسر کے رسول اقدس (ﷺ) کے ساتھ گہرے تعلقات احادیث رسول (ﷺ) میم پر دسترس اور بارگاہ رسالت سے کسب فیض ان کے نزدیک وجہہ ترجيح تھے۔

حضرت سعید بن مسیب رضی اللّٰہ عنہ نے ازواج مطہرات سے بھی علم حاصل کیا اور حضرت زید بن ثابت ، حضرت عبد اللّٰہ بن عباس اور حضرت عبد اللّٰہ بن عمر رضی اللّٰہ عنہ جیسے اکابر صحابہ کرام کے سامنے زانوئے تلمذ طے کیے، حضرت عثمان بن عفان رضی اللّٰه عنہ، حضرت علی بن ابی طالب رضی اللّٰہ عنہ اور حضرت صہیب رومی رضی اللّٰہ عنہ جیسے جلیل القدر صحابہ سے کسب فیض کیا انکے اخلاق و اطوار اپنائے اور ان کے اوصاف و عادات سے آراستہ ہوئے وہ اس جملے کو بار بار دھرایا کرتے تھے
 ” بندوں نے اللّٰہ تعالیٰ کی اطاعت سے اپنے آپ کو معزز بنایا اور اس کی نافرمانی سے ذلیل و خوار ہوئے “


حضرت سعید بن مسیب رضی اللّٰہ عنہ کے مفصل حالات زندگی معلوم کرنے کے لیے درج ذیل کتابوں کا مطالعہ کیجئے ۔

 

١- طبقات ابن سعد
٥/ ١١٩
٢- المعارف
٤٣٧
٣– حلیتہ الاولیاء
٢/ ١٦١
٤-تہزیب الاسماء واللغات
١/ ٣١٩
٥-وفیات الاعیان
٢/ ٣٧٥
٦-تزکرة الحفاظ
١/ ٥١
٧- العبر
١/ ١١٠
٨- النجوم الزاھرة
١/ ٢٢٨
٩- شزرات الزاھب
١/ ١٠٢

 

حوالہ:
“کتاب: حَياتِ تابِعِين کے دَرخشاں پہلوُ”
تالیف: الاستاذ ڈاکتور عبد الرحمان رافت الباشا
ترجمه: محمود غضنفر
Table of Contents