Sections
< All Topics
Print

15. Hazrat Sa’eed bin Jubair (رحمہ اللہ)

Hazrat Sa’eed bin Jubair (رحمہ اللہ)

Hazrat Sa’eed bin Jubair (رحمہ اللہ) us waqt shaheed kar diye gaye jabkeh roye zameen par har koi us kay ilm ka mohtaaj thaa.

(Imam Ahmed Bin Hanbal (رحمه الله)

Qawi ul jussah, Bhara hua jism, Bedaar maghaz, Zinda dil, Zood fehem, Zeerak Husn-e-Akhlaaq ka paiker, Muharmaat-o-Makruhaat say daaman kash, Ubharta hua Chaaq-o-Chuband kadial Habshi jawaan, Uska siyah rang aur ghungrale baal us ki mumtaaz shakhsiyat mein koi rukawat na thay aur woh tha bhi bilkul nau umar.


Is habshi ul nasal nojawaan ne is baat ka achi tarah idraak haasil kar liya tha keh ilm hi woh maussar zariya hai jo Allah ta’ala tak pohcha sakta hai aur taqwa hi woh hamwaar raasta hai jo usey jannat tak pohchane ka ba’is banega.

Usne taqwa ka hathiyaar apne daayen haath mein liya aur ilm ka jhanda apne baayen haath mein thaama. Dono ko nihayat mazbooti say pakda aur baghair kisi kotaahi kay zindagi kay kathin safar par rawaan dawaan hua.

Bachpan hi say log usey pure inhamaak say kitaab padhta hua ya masjid kay aik kone mein Duniya-o-Mafia say bekhabar ibaadat karta hua dekhte.

Yeh thay apne daur mein musalmaanon kay Gul-e-Sir Sabd Hazrat Sa’eed Bin Jubair (رحمه الله).

Allah un par raazi hua aur woh Allah par raazi.


Hazrat Sa’eed Bin Jubair (رحمه الله) ne Hazrat Abu Sa’eed Khudri, Hazrat Adi Bin Hatim Al Taai, Hazrat Abu Moosa’ Ash’ri, Hazrat Abu Hurairah, Hazrat Abdullah bin Umar  aur Umm ul Momineen Hazrat Ayesha (رضی اللہ عنہا) say ilm haasil kiya, un kay ilaawah ilm kay beher bekaraan Hazrat Abdullah bin Abbas (رضی اللہ عنہ) kay saamne bhi zaanwy talmmuz tay kiye.


Hazrat Sa’eed Bin Jubair (رحمه الله علیه) Hazrat Abdullah bin ‘Abbas (رضی اللہ عنہما) kay sath saaye ki maanid chimte rahe, Unse Qur’an, Tafseer, Usool-e-Tafseer, Hadees, Usool-e-Hadees, Fiqh, Usool-e-Fiqh aur lughat ka ilm haasil kiya aur in uloom mein kaamil dastras haasil ki.  Yahan tak keh woh ilmi maidaan mein A’alaa-o-Arfaa’ maqaam par faayez huye, Yahan tak keh us daur ka koi fard aisa na tha. Jo unkay ilm ka mohtaaj na hua unho ne khud bhi Husool-e-Ilm-o-Danish kay liye makhtalif mumaalik ka safar ikhtiyar kiya.

Takmeel-e-Ilm kay baad Koofa mein rehayish ikhtiyar ki aur Koofa kay muallim aur Imam ban gaye.


Ramzaan mein Namaz-e-Taraweeh parhaya karte thay, Aik raat Hazrat Abdullah bin Mas’ood kay lehjay mein qira’at karte, Dosri raat Hazrat zaid Bin Saabit (رضی اللہ عنہما) ka lehja ikhtiyar karte, Yeh mut’adid qira’aton mein mahaarat rakhte thay. Jab akele namaz parhate to basa uqaat wajd mein aakar aik hi namaz mein pura Quran-e-Majeed khatam kar detay jab is aayat par guzar hota.

فَسَوْفَ يَعْلَمُوْنَ   70؀ۙ اِذِ الْاَغْلٰلُ فِيْٓ اَعْنَاقِهِمْ وَالسَّلٰسِلُ ۭ يُسْحَبُوْنَ   71؀ۙ فِي الْحَمِيْمِ ڏ ثُمَّ فِي النَّارِ يُسْجَرُوْنَ   72؀ۚ

Tarjumah: Anqareeb unhein maloom ho jayega jab toq un ki gardanon mein honge aur zanjeerain jin ko pakad kar woh kholte huye paani ki taraf khinche jayenge phir dozakh ki aag mein jhonk diye jayenge.

 [Al Momin: 71,72,73]

Isi tarah jab Waad-o-Waeed ki aayat say guzarte to badan kaanp uthta, Dil kapkapaa uthta aur aankhon se aansu jaari ho jate phir woh un Aayaat ko gidgidaate huye baar baar dohrate, Dekhne waalon ko yeh andesha laahaq ho jata keh kahin in ki maut waqe’ na ho jaye.


Hazrat Sa’eed Bin Jubair (رحمہ اللہ) har saal do martaba baitullah ka safar ikhtiyar karte, Aik martabah umray kay liye Maah-e-Rajab mein aur doosri martaba hajj kay liye Zil qa’dah mein.

Ilm-o-Irfaan, Khair-o-Barkat, Rushd-o-Hidayat-o-Islaah kay matlaashi Hazrat Sa’eed Bin Jubair (رحمہ اللہ) kay Koofa mein Jaari-o-Saari Ilm-o-Ma’arifat kay meethe chashme se sairaab hone kay liye joq dar joq chale aate shaagird ma’loomat haasil karne kay liye mukhtalif sawaal karte.

Aik shaagird ne sawaal kiya keh khashiyat kise kehte hain?

Aap ne jawaab diya: Khashiyat usey kehte hain keh tum Allah ta’alaa se aisa daro keh dar teray aur gunaah kay darmiyaan hail ho jaye.

Doosre shaagird ne sawaal kiya:  Keh Zikr-e-Ilahi kise kehte hain?

Aap ne farmaaya: Yeh Allah ta’alaa ki ita’at hi darasal Zikar-e-Ilaahi hai, Jo shakhs Allah ta’ala ki taraf mutawajjah hua aur uski ita’at bajaa laaya, Goya usne haqiqat mein Allah ta’alaa ko yaad kiya.

Jis ne Allah ta’ala se rugardaani ki aur uski ita’at na ki, Khawah woh saari raat tasbeeh aur tilaawat karta rahe usey zaakir nahi kaha jaa sakta.


Jab say Hazrat Sa’eed Bin Jubair رحمہ اللہ ne Koofa mein rehayish ikhtiyar ki thi. Yeh sheher Hajjaj Bin Yousuf kay Zair-e-Tasallut aa chuka tha. Hajjaj un dinon Iraq, Iran aur sar zameen Maawra’ ul nahar ka governor tha. Aur uska Ro’ab-o-Dabdaba, Zulm-o-Sitam, Jabar-o-Keher aur Iqtadar-o-Ikhtiyar Nuqta-e-Urooj par tha, Yeh un dinon ki baat hai jab Hajjaj Bin Yousaf ne Jaleelul Qadar Sahabi Hazrat Abdullah Bin Zubair رضي الله عنه ko qatl kar kay Banu Umayyah ke khilaf hone waali tehreek ka khatima kar diya tha, Pure Iraqi ko Banu Umayyah kay hukmaran kay taabe’ kar diya tha, Aur chaaron taraf Banu Umayyah ke khilaaf uthne waali shorash aag ko bujha diya tha, Us ne Bandgaan-e-Khuda ki gardanon par bedaraigh talwaar chalaai, Mulk kay kone kone mein usne apne Ro’ab-o-Dabdaba ki aisi dhaak bitha di keh log us ki pakad dhakad say larazne lage.


Phir Allah ta’ala ka karna aisa hua keh Hajjaj Bin Yousaf aur us ki afwaaj kay bohat bade general Abdul Rehmaan Bin Ash’as kay darmiyan ikhtalaaf paida ho gaya aur dekhte hi dekhte yeh ikhtalafaat aik aise bade fitnay ki surat ikhtiyar kargaye jisne har Rutab-o-Yaabis ko apni lapait mein lay liya. Yeh fitnah is tarah ronuma hua keh Hajjaj Bin Yousaf ne general Abdul Rehmaan Bin Ash’as ko commander bana kar Afghanistan aur Iran kay darmiyani ilaaqe Rutbeel ko fatah karnay kay liye rawaana kiya jo us waqt turkaun kay Zair-e-Iqtadaar tha, Us bahadur, Nidar aur bebaak general ne Rutbeel ka wasee’ ilaqa fatah kar liya.  Aur us kay mazboot qilay sar kar liye.  Us kay shehron aur dehaaton say bohat sa Maal-e-Ghanimat hath laga.

Phir us ne Hajjaj ko azeem fatah ki khush khabri dene kay liye aik qaasid rawana kiya aur sath hi Maal-e-Ghanimat ka paanchwan hissah bhi bhej diya takey usey baitalmaal mein shaamil kar liya jaye. Is kay ilaawah aik darkhwast bhi rawaana ki keh kuch muddat kay liye jang band rakhne ki ijaazat di jaye takeh maftuha ilaqe ka ka nizaam tarteeb diya jaa sake aur us kay Aamad-o-Kharch kay hisabaat murattab kiye jaa sakain.  Nez is kay namaloom aur door daraaz ilaaqon mein daakhil hone se pehle us ka achi tarah jaaiza liya jaa sake.  Takeh Lashkar-e-Islaam ko mohoom khatraat se bachaya jaa sake, Yeh darkhwast dekh kar Hajjaj  ghazabnaak ho gaya.  Aur jawaabi khat likha jis mein general ko buzdil, Kamina, Aur kamzor qaraar diya. Uski gardan zani aur lashkar ki qiyadat se mu’azul kar dene ki dhamki di. General Abdul Rehman Bin Ash’as ne lashkar kay group leadaron ko ikhatta kiya, Unhein Hajjaj Bin Yousaf ka khat sunaya. Aur un se mashwara liya keh ab kya mauqaf ikhtiyar kiya jaye.

Sab ne yak zubaan ho kar kaha, Governer Hajjaj ki ita’at say dastbardaar ho kar us ka datt kar muqabla kiya jaye kyunkeh Zulm-o-Sitam aur Barbariat-o-Firauniat ne musalmaanon ki zindagi ajeeran kar rakhi hai. 

General Abdul Rehmaan Bin Ash’as ne kaha: Kya sar Zameen-e-Iraq ko Hajjaj ki najasat say paak karne kay liye tum mera saath doge? Pure lashkar ne saath dene ki haami bhar li, Aur aage badh kar us kay hath par bai’t kar li.


General Abdul Rehmaan Bin Ash’as Hajjaj  par hamla aawar hone kay liye apna Lashkar-e-Jarrar lay kar rawaana hua.

Us kay aur Hajjaj kay lashkar kay darmiyan ghamasaan ka ran pada. Jis se tarfain kay bohat say afraad teh tegh huye, Lekin General Abdul Rehmaan ka palda bhaari raha, Usey maidaan Kaar-e-Zaar mein khatir khwah kamyabi haasil hui, Usey sajistaan aur Iran kay beshtar shehron par ghalba haasil ho gaya. Phir us ne Koofa aur Basrah ko Hajjaj say hathiyaane kay liye paish qadmi ka irada kya.


Fariqain kay darmiyan ladai ki aag shola jawala bani hui thi, General Abdul Rehmaan musalsal Kamyabi-o-Kaamrani say hamkinaar ho raha tha, Hajjaj aik aisi naagahaani musibat mein giraftaar hua jis se us kay Madd-e-Muqabil ko mazeed taqwiat haasil ho gayi. Hua yeh keh beshtar shehron kay baldiyati sarbarahon ne Hajjaj ki taraf khat likhe jin mein usay is naazuk Surat-e-Haal say aagah kiya keh zimmi log tax say bachne kay liye dhara dhar islaam qabool kar rahe hain, Isi tarah woh bastiyon ko chod kar badi tezi say shehron ki taraf muntaqil ho rahe hain. Jis say mulk ki aamdan kay zaraye din ba din mehdood hote jaa rahe hain.

Hajjaj  Bin Yousaf ne Basrah aur deegar ilaqajaat kay sarkaari numaindon ko tehreeri hukm diya keh jitne bhi zimmi log bastiyon say shehron mein muntaqil ho chuke hain un sab ko aik jagah jama kar liya jaye, Aur unhein dobara zabardasti un bastiyon ki taraf lauta diya jaye jinhein chod kar woh shehron ki taraf muntaqil huye thay, Khwah unhein rehaaish ikhtiyar kiye kitna hi arsa kyun na guzar chuka ho aur is silsilay mein kisi say koi riaayat na barti jaye. Sarkaari numaindon ne governer kay hukm ki taa’meel karte huye kaseer taa’dad mein un logon ko shehron say bastiyon ki taraf zabardasti dhakel diya. Unsay karobaari maraakiz cheen liye. Un kay sath aurton aur bachon ko nikaal baahir kiya. Un sab ko Zulm-o-Sitam aur barbariat ka nishana banaya gaya, Haalankeh unhein yeh bastiyan chode aik arsa beet chuka tha, Aurtain, Bachhay aur boodhe aahzaarian karne lag gaye. Dard bhare andaaz mein siskiyan lay rahe thay. Cheekh-o-Pukhaar aisi keh kaan pari awaaz sunaai na day rahi thi, Kaanon par hath rakh kar Gham-o-Andoh ki tasweer banay Zaar-o-Qataar rotay huye faryaad kar rahe thay. Madad kay liye logon ko pukaar rahe thay. Sabhi log pareshan thay keh ab kahan jayen? Kidher jayen! Hamara kya banega? Ab sar kahan chupayenge? Haaye hamari Hirmaan-e-Naseebi:

Way na kamai mata’a-e-Karwan jata raha

Karwan key dil sy ahsas-e-Zian jata raha

Allah kisi dushman ko bhi yeh din dekhne naseeb na kare, Yeh dilfigaar manzar dekh kar Basrah kay Fuqaha ha un mazloomon ki faryaad rasi aur sifaarish kay liye maidaan mein nikal aaye, lekin woh un bechaaron kay liye kuch na kar sakay, Unhein rota dekh kar yeh khud bhi rone lage, noo’ insaani par yeh Zulm-o-Sitam un say bardasht na ho saka.


General Abdul Rehmaan Bin Ash’as ne is mauqa ko ghanimat jaante huyein Mazloom-o-Maqhoor logon ko Hajjaj  kay muqablay kay liye ubhaara jis kay natijay mein Jaleelul qadar tab’aeen aur aiymmah Karaam ki aik jama’at Hajjaj ka muqablah karne kay liye tayyar ho gayi. Jis mein Sa’eed Bin Jubair رحمہ اللہ, Abdul Rehmaan Bin ya’ala Sha’bi aur Abul Bhaktari jaise azeem au martabat tab’aeen Sar-e-Fahrist thay.

Fariqeen kay darmiyan ghamasaan ka rana pada, Pehlay marhale par General Ibn-e-Ash’as ko Hajjaj kay lashkar par ghalba haasil hua phir ladai ka pansa palat gaya. Rafta rafta Maidaan-e-Jang mein Hajjaj kay qadam jamne lage aur us ki giraft mazboot hone lagi. Yahan tak keh General  Ibn-e-Ash’as zillat aamaiz shikast say dochaar hua aur apne lashkar ko Hajjaj kay Rahem-o-Karam par chod kar bhaag nikalne mein kamyab ho gaya.


Hajjaj ne munaadi karne waalon ko hukm diya keh woh shikast khurdah ladakon mein yeh ailaan kar day keh woh pehli fursat mein apni bai’t ki tajdeed kar lain, Beshtar dawat qabool karte huye dobara bai’t karne kay liye tayyar ho gaye aur baa’z ruposh ho gaye. Jangju jab bai’t kay liye aage badhe to unhein aisi andohanaak Surat-e-Haal ka saamna karna pada jis ka unhein Wahem-o-Gumaan bhi na tha, Hajjaj har aik say kehta tum ne Ameer ul Momineen ki bai’t tod kar kufr ka irtikaab kiya hai. Agar woh haan mein jawaab deta to us se bai’t lay leta aur agar woh us se inkaari hota to usey qatl kar deta. Baa’z Khauf-o-Haraas mein mubtala qatl say bachaao ki khaatir Sar-e-Tasleem-e-Kham karte huye kufr ka irtikaab kar letay aur baa’z kufr kay aiteraaf  kay liye apne aap ko aamadah na paa kar apni gardan ka nazraana paish karne kay liye tayyar ho jaate, Is zibah khana ki dilkharaash dastaane puray mulk mein Zubaan-e-Zad-e-Aam ho chuki theen jis mein hazaaron aadmi qatl kar diye gaye thay, Aur sirf chand aadmi apne kufr ka aiteraaf kar kay bach nikalne mein kaamyab ho gaye thay.


Qabilah-e-Khsa’am ka aik umar raseeda buzurg dono girohon say alag thalag daryaae Faraat kay parlay kinaare par jaa baitha, Jab usey doosray logon kay sath pakad kar Hajjaj kay darbaar mein laaya gaya to usne kaha: Jab say ladaai ki aag bhadki hai main dariyaa kay kinaare bilkul alag thalag ladai ka natijah waazeh hone kay intezaar mein baitha raha. Jab aap ghaalib aa gaye, Kaamyabi-o-Karam ne aap kay qadam choom liye mein bai’t karne kay liye aap ki khidmat mein haazir ho gaya hoon. Hajjaj yeh sun kar bhadak utha. Kehne laga: Tera kuch na rahe! Tera satyanash ho! Tu itne der bheegi billi ban kar baitha raha tune Ameer ki qayadat mein ladai kyun na ki? Phir usey daant pilaate huye kaha:

Kya tu apne kufr ki gawaahi deta hai?

Usne kaha: Yeh meri badbakhti hogi keh main assi saal Allah ta’ala ki ibaadat mein masroof raha. Aur us kay baad main ab apne kufr ka itiraaf kar loon.

Hajjaj ne kaha agar aiteraaf nahi karoge to main tujhe qatl kar doonga.

Us ne kaha: Jo ji mein aaye karo main kufr ka aiteraaf  qat’an nahi karoonga. Meri ab umar hi kya rehi hai Charaagh-e-Sahri hoon, Timtimaa raha hoon, Phadphadaa raha hoon abhi bujha keh abhi gul hua.

Main subha shaam apni maut ka muntazir hoon.

Jo karna hai kar lo…………

Idhar aa piyary! hunar azmain

Tu sitam aazma ham jigar azmain


Phir Hajjaj ne Kameel Bin ziyad nakh’ai ko bulaya us se kaha: Tum apne kufr ka aiteraaf  kartay ho? Us ne kaha: Allah ki qasam main apne kufr ki gawaahi hargiz nahi doonga.

Hajjaj ne kaha: Main tujhe qatl kar doonga.

Farmaaya:: Jo karna hai kar lo, Allah ta’ala kay haan jaane ka waqt muqarrar hai, Maut kay baad hisaab hoga.

Hajjaj ne kaha: Allah kay haan muqaddimah teray khilaaf chalaya jayega, Na keh haq mein!

Farmaaya: Haan agar tujhe qayamat kay din qaazi bana diya gaya to phir muqaddimah teri marzi say chalega.

Hajjaj ne cheekh kar jallaad say kaha isey qatl kar do.

Jallaad aage badha talwaar nikaali aur Ibn-e-Ziyad nakh’ai ki gardan uda di.


Aik shakhs ko Hajjaj kay saamne pesh kiya gaya jo har waqt uska mazaaq udaya karta tha, Uthtay baithtay Hajjaj kay khilaaf harzah suraai us ka dilpasand mashghala tha.

Hajjaj ne kaha: Aaj main apne saamne aik aise shakhs ko dekh raha hoon jo har waqt mujhe bura bhala kehta rehta hai, Mera khayaal hai keh yeh meray saamne apne kufr ka qat’an aiteraaf nahi karega jis kay natijay mein iski gardan uda di jayegi.

Hajjaj ne kaha: Kya tum apne kufr ka aiteraaf kartay ho?

Usne haath baandh kar kaha: Janab mein to roye zameen par basnay waale tamaam kaafiron say badh kar kaafir hoon. Janab mera kya puchtay hain main to in tamaam kaafiron ka bhi baap hoon jo is waqt duniya mein maujood hain.  Khudara meri gardan na udaayen, Jo ji mein aaye mujh say kehelwa lain, Allah ki qasam mein to us firaun say bhi bada kaafir hoon jo maikhein gaad kar logon ko halaak kiya karta tha.  Us shakhs kay munh se kufr ka aiteraaf sun kar Hajjaj  ne us ka raasta chod diya, Haalankeh woh uske qatl kay liye gussay say daant pees raha tha. Aur us kay khoon ka pyasa tha. S


Halaakat khaiz aur khaufnaak maqaam ki dilkharaash dastaane har taraf phail chuki thein. Jahan hazaaron raasikh aqeedah momin bedaraigh maut kay ghaat utaar diye gaye.  Aur baa’z kamzor dil khauf kay maare apne par kufr ka daagh laga kar bach nikalne mein kaamyab ho gaye. Sa’eed Bin Jubair رحمہ اللہ ko yaqeen ho gaya keh agar mujhe Hajjaj kay saamne paish kiya gaya to do suraton mein say aik ka hona zaroori hai teesri surat nahi hogi.

Yaa meri gardan uda di jayegi.

Yaa mujhe kufr ka irtikaab karna hoga.

Yeh dono suratain aisi hain keh in mein say jo zaahiri taur par meethi maloom hoti hai woh haqiqat mein utni hi zyadah kadwi hai lehazah unho ne chup kar bhaag jaane ko tarjeeh di. Woh Allah ki Wasee’-o-Areez zameen mein Hajjaj kay kaarindon say aankh bacha kar bhaag nikalne mein kaamyab ho gaye. Door daraaz ka safar tay kartay huye Makkah mu’azzmah kay qareeb aik basti mein panah guzeen ho gaye. Us mein puray das saal rahe. Yeh Arsah-e-Daraaz Hajjaj kay dil mein Ghaiz-o-Ghazab ki aag ko sard karne kay liye kaafi hona chahiye tha aur isi tarah un kay dil mein jo Hajjaj kay mut’alliq keena aur bughaz paaya jata tha usey zaail karne kay liye kaafi hona chahiye tha.


Lekin wahan aik aisa waaqia ronuma hua jo kisi kay Wahem-o-Gumaan mein bhi na tha. Hua yeh keh Makkah mu’azzmah mein Banu Umayyah ka naya governer muqarrar kiya gaya jis ka naam Khalid Bin Abdullah Al Qusairi tha. Sa’eed Bin Jubair kay saathion ne uski sakhat geeri aur tursh rawi ki wajah say khatrah mehsoos kiya, Baa’z mukhlis ahbaab ne Hazrat Sa’eed say kaha:

Ab jisay Makkah ka governer muqarrar kiya gaya hai, Allah ki qasam hamein us say khatra hai keh woh aap ko nuqsaan pohchayega. Hamari baat maanein azrahe karam is sheher say chale jayen, Aap ne farmaaya:: Allah ki qasam mein pehlay Iraq say bhaaga yahan aa kar panah gazeen hua.

mujhe aisa bhi nahi karna chahiye tha wahin reh kar mujhe halaat ka muqabla karna zyadah mozun tha, Main apni us kamzori par pehlay hi bohat sharamsaar hoon.  Lekin ab maine pukhta irada kar liya hai, Ab mein yahin rahoonga kahin nahi jaaonga jo bhi meray paish aaye usey khanda peshaani say qubool karoonga.


Governer-e-Makkah Khalid Bin Waleed ne wahi Tarz-e-Amal ikhtiyar kiya jis ka logon ko andesha tha. Jab usey Hazrat Sa’eed Bin Jubair رحمہ اللہ ki rehaaish ka ilm hua to usne police ko hukm diya keh woh unhein giraftaar kar kay Hajjaj  Bin Yousaf kay paas wasit sheher mein le jaye, Police ne Shaikh kay ghar ka muhaasra kar liya, Aakhir kaar unhein giraftaar kar kay Hajjaj  Bin Yousaf ki taraf chalne ko kaha gaya.

Aap baghair kisi ahtijaaj kay wasit sheher ki taraf rawaana huye chalne lag gaye, Apnay saathion par alwidaa’i nigah daali farmaaya: Mujhe lagta hai ab Zaalim-o-Jaabir Hajjaj kay hathon mujhe qatl kar diya jayega.

Hazrat Sa’eed Bin Jubair رحمہ اللہ bayaan kartay hain keh aik raat ham teen saathi ibaadat mein masroof rahay. Du’aa ki lazzat aur mithaas ka ahsaas hua to ji bhar kar Allah kay Huzoor du’aaen ki aur uski baargah mein dil khol kar gidgidaaye phir ham ne Allah ta’ala say iltijaa ki keh woh hamein shahaadat ki maut naseeb farmaaye.

Meray dono saathi shahaadat ki tal’at say sarfaraaz huye lekin main abhi tak us ki intezaar mein hoon, Aap ki aik choti beti namudaar hui.

Usne dekha keh aap ko giraftaar kar liya gaya hai, Woh aap say chimat kar Zaar-o-Qataar rone lagi, Hazrat ne bade Pyar-o-Mohabbat say us bachi ko apne seenay say alag kya aur kaha meri pyaari beti! Apni Ammi ko mera paighaam pohcha dena keh ab In sha Allah jannat mein mulaqaat hogi, Yeh keh kar aap sooye manzil rawaana huye.


Jab us Abid, Zahid, shab zindah daar, Aalim, Faazil aur azeem ul martabat shakhsiat ko Hajjaj  Bin Yousaf kay darbaar mein pesh kiya gaya, Hajjaj ne unhein keena parwar nigaahon say dekha aur bade haqaarat aamaiz lehjay mein pucha tera naam kya hai?

Farmaaya:: Sa’eed Bin Jubair.

Hajjaj ne kaha: Nahi balkeh tera naam Shaqi bin Kusair hai.

Farmaaya:: Meri Waalida meray naam kay mut’alliq tujh say behter jaanti hain.

Hajjaj ne pucha: Hazrat Muhammad ﷺ kay baare mein tera kya khayaal hai?

Farmaaya: Woh Aulaad-e-Adam kay sardaar, Nabi Mustafa, Shafee’ ul Maznibeen, Sayeed ul Mursileen, Shaah-e-Umam Sultan-e-Madinah saari makhlooq mein sab say a’alaa, arfa’, Ajmal, Akmal aur Bahter-o-Bartar hain. Risaalat ka taaj un kay sar par sajaaya gaya. Aapne Amaanat-e-Risaalat ki adaaigi ka haq ada kar diya, Aap ne Allah ki razaa kay liye Quran-e-Majeed kay ahkamaat logon tak pahunchne mein koi kasar na uthaa rakhi. Aap ne Bani noo’ insaan ki rehnumaai kay liye tan, Man, Dhan ki baazi lagaai.

Hajjaj ne pucha: Hazrat Abu bakkar Siddique (رضی اللہ عنہ) kay baare mein tumhara kya khayaal hai? 

Farmaaya:: Woh Siddique hain, Rasulullah kay Khalifa hain, Unho ne sa’adat ki zindagi basar ki, Duniya say Qaabil-e-Rashk andaaz mein kooch kiya, Nabi (ﷺ) kay tarikay par chale aur us mein sarmu bhi koi tabdeeli na ki.

Hajjaj ne pucha Hazrat Umar bin Khattaab رضی اللہ عنہ kay baare mein tumhara kya khayaal hai?

Farmaaya:: Woh Farooq hain Jin kay zariye Allah ta’ala ne haq aur baatil kay darmiyan farq kiya, Woh Rasool-e-Aqdas ﷺ ki muraad hain, Unhein Allah ta’ala say maang kar liya, Woh zindagi bhar Rasool-e-Aqdasﷺ  aur Siddique-e-Akbar (رضی اللہ عنہ) kay raaste par chale, Aap ne zindagi bhar Qaabil-e-Fakhr kaarname sar anjaam diye, Qaabil-e-Rashk zindagi basar ki aur Jaam-e-Shahaadat nosh kiya.

Hajjaj ne pucha: Hazrat Usman (رضی اللہ عنہ) kay mut’alliq kya khayaal hai?

Farmaaya:: Woh Jaish-e-Ushrah ko tayyaar karne waale.

  • Madinah munawwarah mein Bair-e-Rooma ko khareed kar waqf karne waale.
  • Jannat mein apna ghar banaane waale.
  • Rasool-e-Akramﷺ ki do betion kay shohar ban kar Zulnoorain ka ai’zaaz haasil karne waale hain.
  • Un ki Shaadi Nabi Akram ﷺ ne wahi Ilaahi kay mutaabiq ki.
  • Aur aakhir mein Zulm-o-Sitam ka nishaana bana kar shaheed kar diye jaane waale hain.

Hajjaj ne pucha Hazrat Ali رضي الله عنه kay baare mein tumhara kya khayaal hai?

Farmaaya: Woh Rasool-e-Aqdasﷺ kay chacha zaad bhaai.

  • Musalmaanon mein sab say pehlay Islaam qabool karne waale Sayyedah Fatimatul Zohra kay khaawand, Ahl-e-Jannat kay nojawaanon kay sardaar, Hasan aur Husain kay waalid, Aur zindagi mein jannat ki bashaarat paane waale.

Hajjaj ne pucha Banu Umayyah mein tujhe kaun sa khalifah pasand hai?

Farmaaya: jo apne khaaliq ko pasandeeda hai.

Hajjaj ne pucha in mein say kaun apne khaaliq ko pasandeeda hai?

Farmaaya:: Iska ilm us zaat ko hai jo un kay raaz hay zaaron say khoob achi tarah waaqif hai.

Hajjaj ne pucha: Mere mutalliq tumhara kya khayaal hai?

Farmaaya: Meri raye tumhein achi nahi lagegi.

Hajjaj ne kaha mein zaroor sun’na chahta hoon.

Farmaaya: Meri ma’loomat kay mutaabiq tu kitaab ul Allah ka dushman hai aur aise kaam karta hai jis say Teray Ro’ab-o-dabdabah ki dhaak baithay, Aur yeh andaaz tujhe halaakat ki taraf lay jaa raha hai aakhir kaar tujhe yeh jahannum mein dhakel dega.

Hujja ne yeh baatain suntay hi aag bagoolah ho kar kaha:

Allah ki qasam! Mein tujhy zaroor qatl kar doonga.

Farmaaya: tu meri dunia kharaab kar dega mein teri aakhirat barbaad kar doonga.

Hajjaj ne kaha: Tum apne qatl kay liye kaun sa tariqa pasand karte ho.

Farmaaya: Aye Hajjaj! Balkeh tu apne qatl ka tariqa muntakhib kar, Allah ki qasam jis andaaz mein tu mujhe qatl karega who hi andaaz qayamat kay roz tujhe qatl karne kay liye ikhtiyar kiya jayega.

Hajjaj ne pucha kya tu chahta hai keh mein tujhe m’aaf kar doon.

Farmaaya: agar aisa bhi hua to woh m’aafi Allah ki jaanib say hogi, Tu mujhe chod kar apne ghinone jurm say bari na ho sakega.

Hajjaj Bin Yousaf ghusse say aag bagulah hua aur darbaan say kaha: Talwaar aur chamray ki chaadar le aao.

Yeh sun kar Sa’eed Bin Jubair رحمہ اللہ muskuraye. Hajjaj ne pucha tum kyun muskurate ho?

Farmaya: Teri jurrat aur teray mut’alliq Allah ta’ala ki burdbaari dekh kar muskuraaya hoon.

Hajjaj ne hukm diya arey jallaad isay qatl kar do.

Aap ne qiblah rukh munh kiya aur kaha:

اِنِّىْ وَجَّهْتُ وَجْهِيَ لِلَّذِيْ فَطَرَ السَّمٰوٰتِ وَالْاَرْضَ حَنِيْفًا وَّمَآ اَنَا مِنَ الْمُشْرِكِيْنَ  

79؀ۚ

“Tarjumah: Main yaksoo hokar apna chehra us zaat ki taraf karta hoon jiss ne aasmanon aur zameen ko paida kiya aur mein mushrikon mein say nahi hoon”

(Surat ul Ana’am, Ayat:79)

 

Hajjaj ne kaha: Is ka munh qibla ki taraf say hata do.

Aap ne farmaaya:

فَاَيْنَـمَا تُوَلُّوْا فَثَمَّ وَجْهُ اللّٰهِ ۭ

Jis taraf bhi munh phero usi taraf Allah hai

Hajjaj ne kaha: say ondhay munh litaa do.

Farmaaya:

مِنْهَا خَلَقْنٰكُمْ وَفِيْهَا نُعِيْدُكُمْ وَمِنْهَا نُخْرِجُكُمْ تَارَةً اُخْرٰى 55؁

Isi say ham ne tumhein paida kya hai isi mein ham tumhein lautayenge aur isi say dobara tumhein nikaalenge

Hajjaj ne ghusse say daant peestay huye kaha: Allah kay is dushman ko zibah kar do, Main ne zindagi mein Aayaat-e-Qurbaani is say zyadah yaad rakhne waala nahi dekha.

Hazrat Sa’eed Bin Jubair رحمہ الللہ ne du’aa kay liye haath uthaaye aur kaha: Ilaahi meray baad Hajjaj  ko kisi par musallat na karna.


Hazrat Sa’eed Bin Jubair رحمہ اللہ kay qatl ko abhi pandrah din bhi na guzre thay keh Hajjaj Bin Yousaf shadeed bukhar mein mubtala ho gaya, Kabhi behosh ho jata aur kabhi hosh mein aata jab aankh lagti to cheekh maar kar uthta aur kehta keh Sa’eed Bin Jubair ne mera gala pakad rakha hai, Sa’eed Bin Jubair  رحمہ اللہ mujh say puchta hai bata tu ne mujhe qatl kyun kiya? Phir Hajjaj bacchon ki tarah rone lagta hai aur kehta hai bhala Sa’eed Bin Jubair say mera kya waasta! Mujhe kya ho gaya? Duniya waalon Sa’eed ko mujh say peechay hataa do, Sa’eed Bin Jubair رحمہ اللہ say mujhy bacha lo, Mein maara gaya, Mein loota gaya, Main Tabah-o-Barbaad ho gaya, Jab Hajjaj Bin Yousaf mar gaya aur usey dafnaya gaya to aik shakhs ne usey khwaab mein dekha aur us say pucha: Aye Hajjaj! jin ko tune qatl kiya un ka badla tujh say kaise liya gaya?

Us ne kaha: Har qatl kay badlay Allah ta’ala ne mujhe aik baar qatl kiya lekin Sa’eed Bin Jubair رحمہ اللہ kay badlay mujhe satyar baar qatl kiya gaya.

Hazrat Sa’eed Bin Jubair رحمہ اللہ kay mufassal Halaat-e-Zindagi maloom karnay kay liye darjzail kitaabon ka muta’ala karain:

1: Tabaqat Ibn-e-Saad                                                                              6/256
2: Al Zuhd (Imam Ahmed bin Hanbal)                                           370
3: Tarikh ul Bukhri                                                                                         3/461
4: Akhbar ul Quzat                                                                                         2/411
5: Tabaqat ul Fuqaha Sheerazi                                                             82
6: Wafayat ul Aayan                                                                                   2/371
7: Tarikh-e-Islam                                                                                        4/2
8: Tazkirat ul Huffaz                                                                                    1/71
9: Al Ibar                                                                                                         1/112
10: Al Bidayah Wal Nihaya                                                                     9/96-98
11: Al Aqd ul Sameen                                                                                    4/549
12: Al Nujoom ul Zahirah                                                                              1/228
13: Tabaqat ul Mufassirin                                                                            1/181
14: Shazarat ul Zahab                                                                                     1/108

REFERENCE:
Book: “Hayat-e-Taba’een kay Darakhsha pahelo”
Taleef :  Dr. Abdur Rahman Rafat Al- Pasha.
Urdu Translation : By Professor Mehmood Ghaznofer

حضرت سعید بن جبیر رضی اللّٰہ عنہ

حضرت سعید بن جبیر رضی اللّٰہ عنہ اس وقت شہید کر دیئے گئے جبکہ روئے زمین پر کوئی اس کے علم کا محتاج تھا ۔

(امام احمد بن حنبل ؒ )

 

قوی الحبشہ ، بھرا ہوا جسم، بیدار مغز ، زندہ دل ، زور فہم ، زیرک حسن اخلاق کا پیکر ، محرمات و مکروہات سے دامن کش ، ابھرتا ہوا چاق و چوبند کڑیل حبشی جوان اس کا سیاہ رنگ اور گھنگریا لے بال اس کی ممتاز شخصیت میں کوئی رکاوٹ نہ تھے اور وہ تھا بھی بالکل نو عمر۔

                       


اس حبشی النسل نوجوان نے اس بات کا اچھی طرح ادراک حاصل کر لیا تھا کہ علم ہی وہ مؤثر ذریعہ ہے جو اللّٰہ تعالیٰ تک پہنچا سکتا ہے اور تقوی ہی وہ ہموار راستہ ہے جو اسے جنت تک پہنچانے کا باعث بنے گا۔
اس نے تقوی کا ہتھیار اپنے دائیں ہاتھ میں لیا اور علم کا جھنڈا اپنے بائیں ہاتھ میں تھاما ۔ دونوں کو نہایت مضبوطی سے پکڑا اور بغیر کسی کوتاہی کے زندگی کے کٹھن سفر پر رواں دواں ہوا۔
بچپن ہی سے لوگ اسے پورے انہماک سے کتاب پڑھتا ہوا یا مسجد کے ایک کونے میں دنیا و ما فیھا سے بے نیاز عبادت کرتا ہوا دیکھتے ۔
یہ تھے اپنے دور میں مسلمانوں کے گل سر سبد حضرت سعید بن جبیر علیہ الرحمتہ ۔
اللّٰہ اس پر راضی اور وہ اللّٰہ پر راضی۔

حضرت سعید بن جبیر ؒ نے حضرت ابو سعید خدری ؒ حضرت عدی بن حاتم الطائی رضی اللّٰہ عنہ ، حضرت ابو موسی اشعری رضی اللّٰہ عنہ ، حضرت ابو ہریرہ رضی اللّٰہ عنہ ، حضرت عبد اللّٰہ بن عمر رضی اللّٰہ عنہ اور ام المؤمنین حضرت عائشہ رضی اللّٰہ عنھا سے علم حاصل کیا، ان کے علاوہ علم کے بحر بیکراں حضرت عبد اللّٰہ بن عباس رضی اللّٰہ عنہ کے سامنے بھی زانوئے تلمذ طے کیے ۔


حضرت سعید بن جبیر ؒ حضرت عبداللّٰہ بن عباس رضی اللّٰہ عنہ کے ساتھ سائے کی مانند چمٹے رہے، ان سے قرآن ، تفسیر ، اصول تفسیر ، حدیث ، اصول حدیث ، فقہہ، اصول فقہہ اور لغت کا علم حاصل کیا اور ان علوم میں کامل دسترس حاصل کی۔ یہاں تک کے وہ علمی میدان میں اعلیٰ و ارفع مقام پر فائز ہوئے ، یہاں تک کہ اس دور کا کوئی فرد ایسا نہ تھا ۔ جو ان کے علم کا محتاج نہ ہوانہوں ے خود بھی حصول علم و دانش کے لیے مختلف ممالک کا سفر اختیار کیا۔

تکمیل علم کے بعد کوفہ میں رہائش اختیار کی اور اہل کوفہ کے معلم اور امام بن گئے۔

رمضان میں نماز تراویح پڑھایا کرتے تھے ، ایک رات حضرت عبد اللّٰہ بن مسعود رضی اللّٰہ عنہ کے لہجے میں قرات کرتے دوسری رات حضرت زید بن ثابت رضی اللّٰہ عنہ کا لہجہ اختیار کرتے ، یہ متعدد قراتوں میں مہارت رکھتے تھے، جب اکیلے نماز پڑھتے تو بسا اوقات وجد میں آکر ایک ہی نماز میں پورا قرآن مجید ختم کر دیتے جب اس آیت پر گزر ہوتا۔

فسوف یعلمون اذ الاغلال فی آعناقھم و السلاسل یسحبون فی الحمیم ثم فی النار یسجرون
 ۝المؤمن ٧١

ترجمہ: عنقریب انہیں معلوم ہو جائے گا جب طوق ان کی گردنوں میں ہوں گے اور زنجیریں جن سے پکڑ کر وہ کھولتے ہوئے پانی کی طرف کھینچے جائیں گے پھر دوزخ کی آگ میں جھونک دئیے جائیں گے۔

اسی طرح جب وعدو وعید کی آیات سے گزر ہوتا تو بدن کانپ اٹھتا، دل کپکپا اٹھتا اور آنکھوں سے آنسو جاری ہو جاتے پھر وہ ان آیات کو گڑگراتے ہوئے باربار دھراتے ، دیکھنے والوں کو یہ اندیشہ لاحق ہو جاتا کہ کہیں ان کی موت واقع نہ ہو جائے۔

حضرت سعید بن جبیر رضی اللّٰہ عنہ ہر سال دو مرتبہ بیت اللّٰہ کا سفر اختیار کرتے ایک مرتبہ عمرے کے لیے ماہ رجب میں اور دوسری مرتبہ حج کے لیے ذی القعدہ میں۔

علم و عرفان، خیروبرکت، رشدوہدایت و اصلاح کے متلاشی حضرت سعید بن جبیر رضی اللّٰہ عنہ کے کوفہ میں جاری و ساری علم ومعرفت کے میٹھے چشمے سے سیراب ہونے کے لئے جوق در جوق چلے آتے۔ شاگرد معلومات حاصل کرنے کے لیے مختلف سوال کرتے، ایک شاگرد نے سوال کیا کہ خشیت کسے کہتے ہیں ؟

آپ نے جواب دیا: خشیت اسے کہتے ہیں کہ تم اللّٰہ تعالیٰ سے ایسا ڈرو کہ یہ تیرے اور گناہ کے درمیان حائل ہو جائے۔
دوسرے شاگرد نے سوال کیا۔ کہ ذکر الہٰی کسے کہتے ہیں؟
آپ نے فرمایا اللّٰہ تعالیٰ کی اطاعت ہی دراصل ذکر الہٰی ہے، جو شخص اللّٰہ تعالیٰ کی طرف متوجہ ہوا اور اس کی اطاعت بجا لایا، گویا اس نے حقیقت میں اللّٰہ تعالیٰ کو یاد کیا،
جس نے اللّٰہ تعالیٰ سے روگردانی کی اور اس کی اطاعت نہ کی خواہ وہ ساری رات تسبیح اور تلاوت کرتا رہے، اسے ذاکر نہیں کہا جاسکتا ۔
جب سے حضرت سعید بن جبیر رضی اللّٰہ عنہ نے کوفہ میں رہائش اختیار کی تھی ۔یہ شہر حجاج بن یوسف کے زیر تسلط آچکا تھا ۔ حجاج ان دنوں عراق،

ایران اور سر زمین ماوراءالنہر کا گورنر تھا۔ اور اس کا رعب و دبدبہ ، ظلم و ستم ،جبرو قہر اور اقتدار و اختیار نقطہ عروج پر تھا ، یہ ان دنوں کی بات ہے جب حجاج بن یوسف نے جلیل القدر صحابی حضرت عبداللّٰہ بن زبیر رضی اللّٰہ عنہ کو قتل کر کے بنو امیہ کے خلاف برپا ہونے والی تحریک کا خاتمہ کر دیاتھا پورے اعراق کو بنو امیہ کے حکمران کے تابع کر دیا تھا، اور چاروں طرف بنوا میہ کے خلاف اٹھنے والی شورش کی آگ کو بجھادیا تھا ، اس نے بند گان خدا کی گردنوں پر بے دریغ تلوار چلائی، ملک کے کونے کونے میں اپنے رعب و دبدبہ کی ایسی دہاک بٹھا دی کہ لوگوں کے دل اس کی پکڑ دھکڑ سے لرزنے لگے ۔

پھر اللّٰہ تعالیٰ کا کرنا ایسا ہوا کہ حجاج بن یوسف اور اس کی افواج کے ایک بہت بڑے جرنیل عبد الرحمان بن اشعث کے درمیان اختلافات پیدا ہو گئے ، اور دیکھتے ہی دیکھتے یہ اختلافات ایک ایسے بڑے فتنے کی صورت اختیار کر گئے جس نے ہر رطب و یابس کواپنی لپیٹ میں لے لیا ۔ یہ فتنہ اس طرح رونما ہوا کہ حجاج بن یوسف نے جرنیل عبد الرحمان بن اشعث کو کمانڈر بنا کر افغانستان اور ایران کے درمیانی علاقے رتبیل کو فتح کرنے کے لیے روانہ کیا۔ جو اس وقت ترکوں کے زیر اقتدار تھا ، اس بہادر ، نڈر اور بے باک جرنیل نے رتبیل کا وسیع علاقہ فتح کرلیا ۔ اور اس کے مضبوط قلعے سر کر لیے ۔
اس کے شہروں اور دیہاتوں سے بہت سا مال غنیمت ہاتھ لگا۔
پھر اس نے حجاج کو تعظیم کی خوشخبری دینے کے لیے ایک قاصد راوانہ کیا اور اس کے ساتھ ہی مال غنیمت کا پانچواں حصہ بھی بھیج دیا تا کہ اسے بیت المال میں شامل کر لیا جائے ۔

اس کے علاوہ ایک درخواست بھی روانہ کی کہ کچھ مدت کے لیے جنگ بند رکھنے کی اجازت دے دی جائے تا کہ مفتوحہ علاقے کا نظام ترتیب دیا جا سکے۔ اور اس کے آمد و خرچ کے حسابات مرتب کیے جا سکیں ۔ نیز اس کے نا معلوم اور دور دراز علاقوں میں داخل ہونے سے پہلے اس کا اچھی طرح جائزہ لیا جا سکے ۔ تا کہ لشکر اسلام کو موہوم خطرات سے بچایا جا سکے ، یہ درخواست دیکھ کر حجاج غضبناک ہو گیا۔ اور جوابی خط لکھا جس میں جرنیل کو بزدل ، کمینہ اور کمزور قرار دیا ۔ اس کی گردن زونی اور لشکر کی قیادت سے معزول کر دینے کی دھمکی دی ۔ جرنیل عبد الرحمان بن اشعت نے لشکر کے گروپ لیڈروں کو اکٹھا کیا انہیں حجاج بن یوسف کا خط سنایا ۔ اور ان سے مشورہ لیا کہ اب کیا موقف اختیار کیا جائے ۔
سب نے ایک زبان ہو کر کہا ، گورنر حجاج کی اطاعت سے دستبردار ہو کر اس کا ڈٹ کر مقابلہ کیا جائے کیونکہ ظلم و ستم اور بربریت و فرعونیت نے مسلمانوں کی زندگی اجیرن کر رکھی ہے ۔
جرنیل عبد الرحمان بن اشعت نے کہا: کیا سر زمین عراق کو حجاج کی نجاست سے پاک کرنے کے لیے تم میرا ساتھ دوگے۔ پورے لشکر نے پورا ساتھ دینے کی حامی بھر لی ، اور آگے بڑھ کر اس کے ہاتھ پر بیعت کر لی ۔
جرنیل عبد الرحمان بن اشعت حجاج پر حملہ آور ہونے کے لئے اپنا لشکر جرار لے کر روانہ ہوا۔
اس کے اور حجاج کے لشکر کے درمیان گھمسان کا رن پڑا ۔ جس سے طرفین کے بہت سے افراد تہہ تیغ ہوئے۔

لیکن جرنیل عبدالرحمان کا پلہ بھاری رہا اسے میدان کار زار میں خاطر خواہ کامیابی حاصل ہوئی اسے سجستان اور ایران کے بیشتر شہروں پر غلبہ حاصل ہو گیا, پھر اس نے کوفہ اور بصرہ کو حجاج سے ہتھیانے کے لیے پیش قدمی کا ارادہ کیا –
فریقین کے درمیان لڑائی کی آگ شعلہ جوالہ بنی ہوئی تھی, جرنیل عبدالرحمان مسلسل کامیابی و کامرانی سے ہمکنار ہو رہا تھا, حجاج ایک ایسی ناگہانی مصیبت میں گرفتار ہوا جس سے اس کے مد مقابل کو مزید تقویت حاصل ہو گئی- ہوا یہ کہ بیشتر شہروں کے بلدیاتی سربراہوں نے حجاج کی طرف خط لکھے جن میں اسے اس نازک صورت حال سے آگاہ کیا کہ ذمی لوگ ٹیکس سے بچنے کے لیے دھڑا دھڑ اسلام قبول کر رہے ہیں اسی طرح وہ بستیوں کو چھوڑ کر بڑی تیزی سے شہروں میں منتقل ہو رہے ہیں – جس سے ملک کی آمدن کے ذرائع دن بدن محدود ہوتے جا رہے ہیں –
حجاج بن یوسف نے بصرہ اور دیگر علاقہ جات کے سرکاری نمائندوں کو تحریری حکم دیا کہ جتنے بھی ذمی لوگ بستیوں سے شہروں میں منتقل ہو چکے ہیں ان سب کو ایک جگہ جمع کر لیا جائے, اور انہیں دوبارہ زبردستی ان بستیوں کی طرف لوٹا دیا جائے جنہیں چھوڑ کر وہ شہروں کی طرف منتقل ہوئے تھے, خواہ انہیں رہائش اختیار کیے کتنا ہی عرصہ کیوں نہ گزر چکا ہو اور اس سلسلے میں کسی سے کوئی رعایت نہ برتی جائے – سرکاری نمائندوں نے گورنر کے حکم کی تعمیل کرتے ہوئے, کثیر تعداد میں ان لوگوں کو شہروں سے بستیوں کی طرف زبردستی دھکیل دیا –

ان سے کاروباری مراکز چھین لیے – ان کے ساتھ عورتوں اور بچوں کو نکال باہر کیا – ان سب کو ظلم و ستم اور بربریت کا نشانہ بنایا گیا, حالانکہ انہیں یہ بستیاں چھوڑے ایک عرصہ بیت چکا تھا, عورتیں, بچے اور بوڑھے آہوزاریاں کرنے لگے – درد بھرے انداز میں سسکیاں لے رہے تھے – چیخ و پکار ایسی کہ کان پڑی آواز سنائی نہ دے رہی تھی, سروں پر ہاتھ رکھ کر غم و اندوہ کی تصویر بنے زارو قطار روتے ہوئے فریاد کر رہے تھے – مدد کے لیے لوگوں کو پکار رہے تھے سبھی لوگ پریشان تھے کہ اب کیا کریں؟
کدھر جائیں؟
ہمارا کیا بنے گا؟
اب سر کہا چھپائے گے ہائے ہماری حرمان نصیبی –
اللّٰہ کسی دشمن کو بھی یہ دن دیکھنے نصیب نہ کرے یہ دلفگار منظر دیکھ کر بصرہ کے فقہاء ان مظلوموں کی فریاد رسی اور سفارش کے لیے میدان میں نکل آئے, لیکن وہ ان بیچاروں کے لیے کچھ نہ کر سکے, انہیں روتا دیکھ کر یہ بھی خود بھی رونے لگے, نوع انسانی پر یہ ظلم و ستم ان سے برداشت نہ ہو سکا –
جرنیل عبدالرحمان بن اشعث نے اس موقع کو غنیمت جانتے ہوئے ان مظلوم و مقہور لوگوں کو حجاج کے مقابلے کے لیے ابھارا جس کے نتیجے میں جلیل القدر تابعین اور آئمہ کرام کی ایک جماعت حجاج کا مقابلہ کرنے کے لیے تیار ہو گئی – جس میں سعید بن جبیر رضی اللّٰہ عنہ عبدالرحمن بن یعلی شعبی اور ابوالخجتری جیسے عظیم المرتبت تابعین سر فہرست تھے –

فریقین کے درمیان گھمسان کا رن پڑا پہلے مرحلے میں جرنیل ابن اشعث کو حجاج کے لشکر پر غلبہ حاصل ہوا پھر لڑائی کا پانسہ پلٹ گیا – رفتہ رفتہ میدان جنگ میں حجاج کے قدم جمنے لگے اور اس کی گرفت مضبوط ہونے لگی – یہاں تک کہ جرنیل ابن اشعث ذلت آمیز شکست سے دو چار ہوا اور اپنے لشکر کو حجاج کے رحم کرم پر چھوڑ کر بھاگ نکلنے میں کامیاب ہو گیا –


حجاج نے منادی کرنے والے کو حکم دیا کہ وہ شکست خوردہ لڑاکوں میں یہ اعلان کر دے کہ وہ پہلی فرصت میں اپنی بیعت کی تجدید کر لیں بیشتر دعوت قبول کرتے ہوئے دوبارہ بیعت کرنے کے لیے تیار ہو گئے اور بعض روپوش ہو گئے – جنگجو جب بیعت کے لیے آگے بڑھے تو انہیں ایسی اندوہناک صورتحال کا سامنا کرنا پڑا جس کا انہیں وہم و گمان بھی نہ تھا, حجاج ہر ایک سے کہتا تم نے امیرالمومنین کی بیعت توڑ کر کفر کا ارتکاب کیا ہے؟
 اگر وہ ہاں میں جواب دیتا تو اس سے بیعت لے لیتا اور اگر وہ اس سے انکاری ہوتا تو اسے قتل کر دیتا – بعض خوف و ہراس میں مبتلا قتل سے بچاؤ کی خاطر سر تسلیم خم کرتے ہوئے کفر کا ارتکاب کر لیتے اور بعض کفر کے اعتراف کے لیے آپکو آمادہ نہ پا کر اپنی گردن کا نذرانہ پیش کرنے کے لیے تیار ہو جاتے اس ذبح خانہ کی دلخراش داستانیں پورے ملک میں زباں زد عام ہو چکی تھیں –

جس میں ہزاروں آدمی بے دریغ قتل کر دئیے گئے تھے ، اور صرف چند آدمی اپنے کفر کا اعتراف کر کے بچ نکلنے میں کامیاب ہوگئے تھے ۔


قبیلہ خثعم کا ایک عمر رسیدہ بزرگ دونوں گروہوں سے الگ تھلگ دریائے فرات کے پرلے کنارے پر جا بیٹھا جب اسے دوسرے لوگوں کے ساتھ پکڑ کر حجاج کے دربار میں لایا گیا ، تو اس نے کہا : جب سے لڑائی کی آگ بھڑکی ہے ، میں دریا کے کنارے بالکل الگ تھلگ لڑائی کا نتیجہ واضح ہونے کے انتظار میں بیٹھا رہا۔ جب آپ غالب آ گئے کامیابی وکامرانی نے آپکے قدم چوم لیے میں بیعت کرنے کے لیے آپ کی خدمت میں حاضر ہو گیا ہوں۔
حجاج یہ سن کر بھڑک اٹھا: کہنے لگا تیرا کچھ نہ رہے تیرا ستیاناس ہو، تو اتنی دیر بھیگی بلی بن کر بیٹھا رہا تو نے امیر کی قیادت میں لڑائی کیوں نہ کی۔پھر اسے ڈانٹ پلاتے ہوئے کہا۔
کیا تو اپنے کفر کی گواہی دیتا ہے؟
اس نے کہا یہ میری بدبختی ہوگی کہ اسی سال میں اللّٰہ تعالیٰ کی عبادت میں مصروف رہا۔ اور اس کے بعد میں اب اپنے کفر کا ارتکاب کر لوں۔
حجاج نے کہا اگر اعتراف نہیں کرو گے تو میں تجھے قتل کر دوں گا۔
اس نے کہا: جو جی میں آئے کرو میں کفر کا قطعا اعتراف نہیں کرونگا ۔ میری اب عمر ہی کیا باقی رہ گئی ہے چراغ سحری ہوں ٹمٹما رہا ہوں ،

پھڑ پھڑ ا رہا ہوں ابھی بجھا کہ ابھی گل ہوا۔
میں صبح شام اپنی موت کا منتظر ہوں ۔
جو کرنا ہے کر لو ۔۔۔۔۔

حجاج نے اپنے جلاد سے کہا اس بوڑھے کی گردن اڑا دو ۔ اس نے حکم کی تعمیل کرتے ہوئے چشم زدن میں گردن اڑادی۔ حجاج کے ہمنواؤں اور مخالفوں نے اس عمر رسیدہ بزرگ کے قتل کو افسردہ نگاہوں سے دیکھا اور سبھی یہ دلخراش منظر دیکھ کر کانپ اٹھے ۔


پھر حجاج نے کمیل بن زیاد نخعی کو بلایا اس سے کہا: کیا تم اپنے کفر کا اقرار کرتے ہو؟ اس نے کہا: اللّٰہ کی قسم میں اپنے کفر کی گواہی ہرگز نہیں دوں گا حجاج نے کہا: میں تجھے قتل کر دوں گا۔
فرمایا: جو کرنا ہے کر لو، اللّٰہ تعالیٰ کے ہاں جانے کا وقت مقرر ہے ، موت کے بعد حساب ہوگا ۔
حجاج نے کہا: اللّٰہ کے ہاں مقدمہ تیرے خلاف چلا جائے گا نہ کہ حق میں!

فرمایا: ہاں اگر تجھے قیامت کے دن قاضی بنا دیا گیا تو پھر مقدمہ تیری مرضی سے چلے گا۔

حجاج نے چیخ کر جلاد سے کہا اس کو قتل کر دو۔

جلاد آگے بڑھا تلوار نکالی اور ابن زید نخعی کی گردن اڑا دی ۔

ایک ایسے شخص کو حجاج کے سامنے پیش کیا گیا جو اس کا ہر وقت مزاق اڑایا کرتا تھا، اٹھتے بیٹھتے حجاج کے خلاف ہرزہ سرائی اسکا دلپسند مشغلہ تھا۔

حجاج نے کہا: آج میں اپنے سامنے ایک ایسے شخص کو دیکھ رہا ہوں جو ہر وقت مجھے برا بھلا کہتا رہتا ہے میرا خیال ہے کہ یہ میرے سامنے اپنے کفر کا قطعا اقرار نہیں کرے گا جس کے نتیجے میں اس کی گردن اڑا دی جائے گی ۔

حجاج نے کہا کیا تم اپنے کفر کا اعتراف کرتے ہو؟

اس نے ہاتھ باندھ کر کہا: جناب میں تو روئے زمین پر بسنے والے تمام کافروں سے بڑھ کر کافر ہوں ۔ جناب میرا کیا پوچھتے ہیں میں تو ان تمام کافروں کا بھی باپ ہوں جو اس وقت اس دنیا میں موجود ہیں ۔ خدارا میری گردن نہ اڑائیں جو جی میں آئے مجھ سے کہلوالیں، اللّٰہ کی قسم میں تو اس فرعون سے بھی بڑا کافر ہوں جو میخیں گاڑ کر لوگوں کو ہلاک کیا کرتا تھا ۔ اس شخص کے منہ سے اپنے کفر کا اعتراف سن کے حجاج نے اس کا راستہ چھوڑ دیا ، حالانکہ وہ اس کے قتل کے لیے غصے سے دانت پیس رہا تھا۔ اور اس کے خون کا پیاسا تھا ہلاکت خیز اور خوفناک مقام کی دلخراش داستانیں ہر طرف پھیل چکی تھیں ۔ جہاں ہزاروں راسخ عقیدہ مومن بے دریخ موت کے گھاٹ اتار دئیے گئے ۔ اور بعض کمزور دل خوف کے مارے اپنے پر کفر کا داغ لگا کر بچ نکلنے میں کامیاب ہو گئے ۔

سعید بن جبیر رضی اللّٰہ عنہ کو یقین ہو گیا، کہ اگر مجھے حجاج کے سامنے پیش کیا گیا تو دو صورتوں میں سے ایک کا ہونا ضروری ہے تیسری صورت نہیں ہو گی۔

یا میری گردن اڑا دی جائے گی ۔
یا مجھے کفر کا ارتکاب کرنا ہوگا۔
یہ دونوں صورتیں ایسی ہیں کہ ان میں سے جو ظاہری طور پر زیادہ میٹھی معلوم ہوتی ہے وہ حقیقت میں اتنی ہی زیادہ کڑوی ہے لہذا انہوں نے چھپ کر بھاگ جانے کو ترجیح دی ۔ وہ اللّٰہ کی وسیع سر زمین میں حجاج کے کارندوں سے آنکھ بچا کر بھاگ نکلنے میں کامیاب ہو گئے ۔ دور دراز کا سفر طے کرتے ہوئے مکہ معظمہ کے قریب ایک بستی میں پناہ گزین ہو گئے ، اس میں پورے دس سال رہے۔ یہ عرصہ دراز حجاج کے دل میں غیض و غضب کی آگ کو سرد کرنے کے لیے کافی ہونا چاہیئے تھا اور اسی طرح انکے دل میں جو حجاج کے متعلق کینہ اور بغض پایا جاتا تھا اسے زائل کرنے کے لیے کافی ہونا چاہیے تھا۔


لیکن وہاں ایک ایسا واقعہ رونما ہوا جو کسی کے وہم وگمان میں بھی نہ تھا ۔ ہوا یہ کہ مکہ میں بنو امیہ کا ایک نیا گورنر مقرر کیا گیا جس کا نام خالد بن عبداللّٰہ القسری تھا ۔ سعید بن جبیر رضی اللّٰہ عنہ کے ساتھیوں نے اس کی سخت گیری اور ترش روی کی وجہ سے خطرہ محسوس کیا بعض مخلص احباب نے حضرت سعید سے کہا :

حضرت سعید سے کہا:
اب جسے مکہ کا گورنر مقرر کیا گیا ہے اللّٰہ کی قسم ہمیں اس سے خطرہ ہے کہ وہ آپکو نقصان پہنچائے گا ۔ ہماری بات مانیں ازراہ کرم اس شہر سے چلے جائیں ، آپ نے فرمایا ، اللّٰہ کی قسم میں پہلے عراق سے بھاگا یہاں آکر پناہ گزین ہوا مجھے ایسا بھی نہیں کرنا چاہیے تھا وہیں رہ کر مجھے حالات کا مقابلہ کرنا زیادہ موزوں تھا ، میں اپنی اس کمزوری پر پہلے ہی بہت شرمسار ہوں ۔ لیکن اب میں نے پختہ ارادہ کر لیا ہے ، اب میں یہیں رہوں گا کہیں نہیں جاوں گا جو بھی میرے پیش آئے میں اسے خندہ پیشانی سے قبول کروں گا۔


گورنر مکہ خالد بن عبد اللّٰہ نے وہی طرزِ عمل اختیار کیا جس کا لوگوں کو اندیشہ تھا۔ جب حضرت سعید بن جبیر رضی اللّٰہ عنہ کی رہائش کا علم ہوا تو اس نے پولیس کو حکم دیا کہ وہ انہیں گرفتار کر کے حجاج بن یوسف کے پاس واسط شہر میں لے جائے، پولیس نے شیخ کے گھر کا محاصرہ کر لیا ، آخرکار انہیں گرفتار کر کے حجاج بن یوسف کی طرف چلنے کو کہا گیا۔

آپ بغیر کسی احتجاج کے واسط شہر کی طرف روانہ ہوئے چلنے لگے اپنے ساتھیوں پر الوداعی نگاہ ڈالی اور فرمایا مجھے لگتا ہے کہ اب ظالم و جابر حجاج کے ہاتھوں مجھے قتل کر دیا جائے گا ۔
حضرت سعید بن جبیر رضی اللّٰہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ ایک رات ہم تین ساتھی عبادت میں مصروف رہے۔ دعا کی لزت اور مٹھاس کا احساس ہوا تو جی بھر کر اللّٰه کے حضور دعائیں کیں۔

اور اس کی بارگاہ میں دل کھول کر گڑگڑائے پھر ہم نے اللّٰہ تعالیٰ سے التجا کی کہ وہ ہمیں شہادت کی موت نصیب فرمائے ۔
میرے دونوں ساتھی شہادت کی طلعت سے سرفراز ہوئے لیکن میں ابھی تک اس کی انتظار میں ہوں ، آپ کی ایک چھوٹی بیٹی نمودار ہوئی ، اس نے دیکھا کہ آپ کو گرفتار کیا گیا ہے وہ آپ سے چمٹ کر زاروقطار رو نے لگی ، حضرت نے بڑے پیار و محبت سے اس بچی کو اپنے سینے سے الگ کیا اور کہا میری پیاری بیٹی اپنی امی کو میرا پیغام پہنچا دینا کہ اب ان شاءاللّٰہ جنت میں ملاقات ہوگی، یہ کہہ کر آپ سوئے منزل روانہ ہوئے ۔


جب اس عابد زاہد ، شب زندہ دار ، عالم ، فاضل اور عظیم المرتبت شخصیت کو حجاج بن یوسف کے دربار میں پیش کیا گیا ۔ حجاج نے انہیں کینہ پرور نگاہوں سے دیکھا اور بڑے حقارت آمیز لہجے میں پوچھا تیرا نام کیا ہے ؟

فرمایا: سعید بن جبیر ۔
حجاج نے کہا: نہیں بلکہ تیرا نام شقی بن کسیر ہے۔
فرمایا میری والدہ میرے نام کے متعلق تجھ سے بہتر جانتی ہیں ۔
حجاج نے پوچھا حضرت محمد ﷺ کے بارے میں تیرا کیا خیال ہے ؟
فرمایا وہ اولاد آدم کے سردار ، نبی مصطفیٰ ، شفیع المزنبین ، سید المرسلین ،شاہ امن سلطان مدینہ ، ساری مخلوق میں سب سے اعلیٰ ، ارفع، اجمل، اکمل اور بہتر و برتر ہیں ۔ رسالت کا تاج ان کے سر پر سجایا گیا ۔ آپ نے امانت رسالت کی ادائیگی کا حق ادا کر دیا آپ نے اللّٰہ کی رضا کے لیے قرآن مجید کے احکامات عام لوگوں تک پہنچانے میں کوئی کسر باقی اٹھا نہ رکھی ۔
آپ نے بنی نوع انسان کی راہنمائی کے لیے تن، من دھن کی بازی لگائی۔
حجاج نے پوچھا حضرت ابوبکر صدیق رضی اللّٰه عنہ کے بارے میں تمھارا کیا خیال ہے ؟ فرمایا وہ صدیق ہیں رسول اللّٰہ کے خلیفہ ہیں، انہوں نے سعادت حاصل زندگی بسر کی دنیا سے قابل رشک انداز میں کوچ کیا، نبی صلی اللّٰہ علیہ وآلہ وسلم کے طریقے پر چلے اور اس میں سرمو بھی کوئی تبدیلی نہ کی۔
حجاج نے پوچھا حضرت عمر بن الخطاب کے بارے میں تمھارا کیا خیال ہے ؟

فرمایا: وہ فاروق ہیں جن کے ذریعے اللّٰہ تعالیٰ نے حق اور باطل کے درمیان فرق کیا ، وہ رسول اقدس ﷺ کی مراد ہیں ، انہیں اللّٰہ تعالیٰ سے مانگ کر لیا ، وہ زندگی بھر رسول اقدس ﷺ اور صدیق اکبر رضی اللّٰہ عنہ کے راستے پر چلے ، آپ نے زندگی بھر قابل فخر کارنامے سر انجام دئیے، قابل رشک زندگی بسر کی اور جام شہادت نوش کیا ، حجاج نے پوچھا: حضرت عثمان رضی اللّٰہ عنہ کے متعلق کیا خیال ہے ۔

فرمایا: وہ حبش عسرہ جو تیار کرنے والے ۔
مدینہ منورہ میں بر رومہ کو خرید کر وقف کرنے والے ۔
جنت میں اپنا گھر بنانے والے۔
رسول اکرم ﷺ کی دو بیٹیوں کے شوہر بن کر ذوالنورین کا اعزاز حاصل کرنے والے ہیں ۔

ان کی شادی نبی اکرم نے وحی الہٰی کو مطابق کی۔
اور آخر میں ظلم و ستم کا نشانہ بنا کر شہید کر دیئے جانے والے ہیں
حجاج نے پوچھا حضرت علی رضی اللّٰہ عنہ کے بارے میں تمھارا کیا خیال ہے ؟
فرمایا: وہ رسول اقدس ﷺ کے چچا زاد بھائی ۔
مسلمانوں کے سب سے پہلے اسلام قبول کرنے والے سیدہ فاطمہ الزہراء کے خاوند ، اہل جنت کے نوجوانوں کے سردار حسن اور حسین کے والد، اور زندگی میں جنت کی بشارت پانے والے۔
حجاج نے پوچھا بنو امیہ میں سے تجھے کونسا خلیفہ پسند ہے۔
فرمایا جو اپنے خالق کو پسندیدہ ہے۔
حجاج نے پوچھا ان میں سے کون اپنے خالق کو پسندیدہ ہے۔
فرمایا ، اس کا علم اس ذات کو ہے جو ان کے راز ہائے دروں سے خوب اچھی طرح واقف ہے ۔
حجاج نے پوچھا: میرے متعلق تمھاری کیا رائے ہے ، تمھارا کیا خیال ہے۔
فرمایا میری رائے تجھے اچھی نہیں لگے گی۔
حجاج نے کہا میں ضرور سننا چاہتا ہوں ۔
فرمایا میری معلومات کے مطابق تو کتاب اللّٰہ کا دشمن ہے اور ایسے کام کرتا ہے جس سے تیرے رعب و دبدبہ کی دھاک بیٹھے ، اور یہ انداز تجھے ہلاکت کی طرف لے جا رہا ہے آخر کار تجھے یہ جہنم میں دھکیل دے گا ۔
حجاج نے یہ باتیں سنتے ہی آگ بگولہ ہو کر کہا ۔
اللّٰہ کی قسم میں تجھے ضرور قتل کر دوں گا ۔
فرمایا تو میری دنیا خراب کر دے گا میں تیری آخرت برباد کر دوں گا ۔
حجاج نے کہا: تم اپنے قتل کے لیے کونسا طریقہ پسند کرتے ہو۔
فرمایا اے حجاج بلکہ تو اپنے قتل کا طریقہ منتخب کر: اللّٰہ کی قسم جس انداز سے تو مجھے قتل کرے گا وہی انداز قیامت کے روز تجھے قتل کرنے کا اختیار کیا جائے گا۔
حجاج نے پوچھا کیا تو چاہتا ہے کہ میں تجھے معاف کر دوں۔
فرمایا اگر ایسا بھی ہوا تو وہ معافی اللّٰہ کی جانب سے ہوگی ، تو مجھے چھوڑ کر اپنے گھناونے جرم سے بری نہ ہو سکے گا۔
حجاج بن یوسف غصے سے آگ بگولہ ہوا اور دربان سے کہا ، تلوار اور چمڑے کی چادر لے آؤ ۔
یہ سن کے سعید بن جبیر رضی اللّٰہ عنہ مسکرائے۔ حجاج نے پوچھا تم کیوں مسکرائے ہو؟
فرمایا تیری جرات اور تیرے متعلق اللّٰہ تعالیٰ کی بربادی دیکھ کر مسکرایا ہوں ۔
حجاج نے حکم دیا ارے جلاد اسے قتل کر دو آپ نے قبلہ رخ منہ کیا اور کہا:


 وجھت وجھی للذی فطر السموت والارض حنیفا وما انا من المشرکین


 ترجمہ: میں یکسو ہو کر اپنا چہرہ اس ذات کی طرف کرتا ہوں جس نے آسمانوں اور زمین کو پیدا کیا اور میں مشرکوں میں سے نہیں ہوں ۔
حجاج نے کہا اس کا منہ قبلہ کی طرف سے ہٹا دو۔
آپ نے فرمایا : فاینما تولو افثم وحه اللّٰہ
“جس طرف بھی منہ پھیرو اسی طرف اللّٰہ ہے ۔”
حجاج نے کہا اسے اوندھے منہ لٹا دو۔
فرمایا


منھا خلقنا کم وفیھا نعید کم ومنھا نخرجکم تارہ اخری


اسی سے ہم نے تمھیں پیدا کیا ہے اسی میں ہم تمھیں لوٹائیں گے اور اسی سے دوبارہ تمھیں نکالیں گے۔

حجاج نے غصے سے دانت پیستے ہوئے کہا:

 “اللّٰہ کے اس دشمن کو قتل کر دو میں نے زندگی میں آیات قرآنی کو اس سے زیادہ یاد رکھنے والا کوئی نہیں دیکھا ۔”

حضرت سعید بن جبیر رضی اللّٰہ عنہ نے دعا کے لیے ہاتھ اٹھائے اور کہا الہیٰ میرے بعد حجاج کو کسی پر مسلط نہ کرنا ۔


حضرت سعید بن جبیر رضی اللّٰہ عنہ کے قتل کو ابھی پندرہ دن نہ گزرے تھے کہ حجاج بن یوسف شدید بخار میں مبتلا ہو گیا، کبھی بے ہوش ہو جاتا اور کبھی ہوش میں آتا جب آنکھ لگتی تو چیخ مار کر اٹھتا اور کہتا کہ سعید بن جبیر نے میرا گلا پکڑ رکھا ہے ۔

سعید بن جبیر ؒ مجھ سے پوچھتا ہے بتاؤ تو نے مجھے قتل کیوں کیا ، پھر حجاج بچوں کی طرح رونے لگتا اور کہتا بھلا سعید بن جبیر ؒ سے میرا کیا واسطہ مجھے کیا ہو گیا ، دنیا والو سعید کو مجھ سے پیچھے ہٹا دو سعید بن جبیر رضی اللّٰہ عنہ سے مجھے بچا لو ، مین مارا گیا ، میں لوٹا گیا میں تباہ و برباد ہو گیا، جب حجاج بن یوسف مر گیا اور اسے دفنا دیا گیا تو ایک شخص نے اسے خواب میں دیکھا اور اس سے پوچھا ، اے حجاج جن کو تو نے قتل کیا ان کا بدلہ تجھ سے کیسے لیا گیا ۔
اس نے کہا ہر قتل کے بدلے اللّٰہ تعالیٰ نے مجھے ایک بار قتل کیا لیکن سعید بن جبیر ؒ کے بدلے مجھے ستر بار قتل کیا گیا ۔


حضرت سعید بن جبیر ؒ کے مفصل حالات زندگی معلوم کرنے کے لیے درج ذیل کتابوں کا مطالعہ کریں ۔

 

١– طبقات ابن سعد
٦/ ٢٥٦
٢- الزھد (امام احمد بن حنبل). ٣٧٠
٣- تاریخ البخاری
٣/ ٤٦١
٤- اخبار القصناة
٢/ ٤١١
٥- طبقات الفقہاء شیرازی
 ٨٢
٦- وفیات الاعیان
٢/ ٣٧١
٧- تاریخ الاسلام
٤/ ٢
٨- تذکرۃ الحفاظ
١/ ٧١
٩- العبر
١/ ١١٢
١٠- البدایتہ والنہایتہ
٩/ ٩٦- ٩٨
١١- العقدالثمین
٤/ ٥٤٩
١٢- النجوم الزاہرہ
١/ ٢٢٨
١٣-طبقات المفسرین
١/ ١٠٨
١٤-شزرات الزاھب
١/ ١٠٨

 

حوالہ:
“کتاب: حَياتِ تابِعِين کے دَرخشاں پہلوُ”
تالیف: الاستاذ ڈاکتور عبد الرحمان رافت الباشا
ترجمه: محمود غضنفر

Table of Contents