Sections
< All Topics
Print

16B. Hazrat Muhammad Bin Waase’ Al Azdi (رحمہ اللہ); Hamrah Qutaibah Bin musalim Al Baahli

Hazrat Muhammad Bin Waase’ Al Azdi رحمہ اللہ

Hamrah Qutaibah Bin musalim Al Baahli

Muhammad Bin Waase” Azdi ki woh aik ungli Jo Allah ta’ala ki jaanib uthi hui hai, Un hazaar qeemti talwaaron say zyadah mehboob hai jo tajurba kaar, Taiz tarraar, Jihaad kay dhani nojawaanon kay hathon mein pakdi hui hon.

(Qutaibah Bin Muslim Baahli)

Ab 87 hijri mein Hayaat-e-Musta’ar kay din guzaar rahe hain. Fakhar-e-Lashkar-e-islaam azeem faateh general Qutaibah Bin Muslim Baahli Lashkar-e-Jarraar ki qayadat karta hua Bukhara ki taraf pesh qadmi kar raha hai. Dil mein yeh azam kiye huye keh maawra’a ul nahar kay baaqi mandah ilaqajaat ko fatah kar liya jaye. Naiz Chine kay Atraaf-o-Aknaaf apnay qabzay mein lekar us kay bashindon par tax aaid kiya jaye. General Qutaibah Bin Muslim abhi Daryaa-e-Aamu ko aboor karne bhi na paya tha keh Ahl-e-Bukhara ko khatarnaak Surat-e-Haal ka ilm ho gaya, Unho ne har taraf jung kay tabal baja diye aur apne Gird-o-Nawah abaad aqwaam ko madad kay liye pukara, To har rang, Nasal, Zubaan aur mazhab kay haamil ladaaka jawaan jatthon ki surat mein unkay paas pohnchany lage yahan tak keh un ki taa’dad Lashkar-e-Islaam say kahin zyadah badh gayi, Phir yeh log jangi hathiyaaron say lais Maidan-e-Jang mein nikle aur Lashkar-e-Islaam ki pesh qadmi kay saaray raastay masdood kar diye yahan tak keh General Qutaibah Bin Muslim Baahli kay liye yeh mumkin hi na raha keh kisi jasoos ko dushman ki saffon mein rakhna andaazi karne kay liye bhej sakay aur na hi un mein say koi fard wapis aa saka jinhein dushman ki khufiya karrwayion ki report kay liye pehle say wahan bhej rakha tha.


Qutaibah Bin Muslim ne apne lashkar kay hamrah buland sheher kay qareeb morcha laga liya woh yahan jam kar baith gaye.

Dushman har roz Subah say shaam tak un kay qadam ukhaadne kay liye koshaan rehta, Jab shaam ho jaati to apnaa sa munh lekar wapis apne mehfooz aur mazboot qilon mein jaa kar panah gazeen ho jata, Yeh Surat-e-Haal musalsal do maah tak jaari rahi. General Qutaibah Bin Muslim bhi bade pareshaan thay, Unhein kuch pata nahi chal raha tha keh kya karain? Aage badhe ya peechay hatt jayen.

Is nazul tarrn Surat-e-Haal say puri Millat-e-Islamia pareshaan thi, Har jagah har ghar mein yehi charcha tha keh General Qutaibah Bin Muslim Lashkar-e-Islaam kay hamrah dushman kay narghay mein hai. Kisi mahaaz say woh nakaam nahi lauta tha aur na hi woh kabhi dushman kay aage sarnagoon hua tha.

Tamaam governor ne apne Zer-e-Asar subaajaat mein awaam un naas say appeal ki keh mawra ul naher mein ghiray huye Lashkar-e-Islaam ki kaamyabi kay liye har namaaz kay baad Khuloos-e-Dil say du’aa karain. Lehazah Masjiden Bandgaan-e-Khuda ki duaaon say goonj uthein. Masajid kay meenar namazion ki girgiraahat, Aah-o-Zaarion aur siskiyon say goonj uthe. Ayimmah kiraam har namaaz mein du’ae qanoot padhne lage, Lashkar-e-Islaam ko kamak pohnchany kay liye Khalq-e-Kaseer mahaaz par jaane kay liye aamadah hui aur un sab say aage Jaleelul qadar tab’aeen Muhammad Bin Waase’ Azdi mujahidana Shaan-o-Shoquat say jaa rahe thay. Har aik kay dil mein aik hi umang thi keh Lashkar-e-Islaam ko dushman kay narghay say nikaal kar dam lenge.


General Qutaibah Bin Muslim ka aik ajmi nazaad jasoos Aqal-o-Danish, Fahem-o-Faraasat aur Tadbeer-o-Siyasat mein mashoor tha. Uska naam Taizar tha. Dushman ne us kay sath raabta kiya, Maal-o-Daulat ka laalach day kar us ko warghalaya keh woh apni zahaanat ko baroe kaar laa kar Lashkar-e-Islaam ko Naqaabil-e-Talaafi nuqsan pohnchay aur aisi koi tadbeer Baro-e-Kaar laaye keh musalman lade baghair hamaray ilaqa chod kar wapis chale jayen.


Maal-o-Daulat ki peshkash dekh kar Taizar kay munh mein paani aa gaya, Aankhain chundhiya gayi. Woh seedha General Qutaibah Bin Muslim Baahli kay paas gaya. Uskay haan muslim commandaron ki meeting ho rahi thi. Woh bedhadak ijazat liye baghair general kay pehlu mein jaa baitha phir jhuk kar us kay kaan mein kaha: Ameer-e-Lashkar agar ho sake to ijlaas ko abhi khatam kar dain. Aap say main ne badi khufiya aur zaroori baat karni hai. General ne Ahl-e-Majlis ko chale jaane ka ishaarah kiya, Lekin Ziraar Bin Husain ko apnay paas rok liya.

Taizar jasoos ne bade raazdarana andaz mein general say kaha:

Janaab meray paas aap kay liye aham khabrain hain.

General ne kaha: Jaldi bataaye kaun si khabrain hain?

Taizar ne kaha: Ameer ul Momineen ne governor Hajjaj Bin Yousaf ko ma’zool kar diya hai. Aur us kay tamaam commandaron ko bhi ma’zool kar diya hai jo us kay taabe’ farmaan hain. Aur ma’zool kiye jaane waalon mein aap ka naam bhi aata hai. Naye commandaron ko naamzad kar diya gaya hai. Aur woh apne mansab sambhalnay kay liye daarul hukumat Damishq say rawaana ho chukay hain. Aap ki jagah lenay kay liye bhi aik commander Subha-o-Shaam pohnchany wala hai. Mera mashwara yeh hai keh aap lashkar is ilaaqay say wapis le jayen yahan say kahin door jaa kar az sare nau koi program tarteeb dain yeh aap kay liye behter hoga. Warna aap ko Naqaabil-e-Talaafi nuqsan say do chaar hona padega.


Taizar apni baat abhi puri karne hi paaya tha keh general Qutaibah Bin Muslim ne jallaad ko hukm diya keh is dhokay baaz, Ghaddar aur khaain ki gardan uda do. Usne hukm ki taa’meel karte huye chashm-o-zadan mein us ki gardan uda di. General Qutaibah Bin Muslim ne apne paas baithay Ziraar Bin Husain say kaha: Dekho roye zameen par teray aur meray siwaa kisi ko yeh khabar nahi. Main Rabb-e-Kainat ki qasam kha kar kehta hoon keh agar ladai khatam hone say pehle kisi ko tumne bataaya to tera anjaam bhi is dhokay baaz jaisa hoga. Agar koi aisa khayaal bhi dil mein aa jaye to zubaan band rakhna. Achi tarah jaan lo is raaz ka afshaan lashkar ki taaqat ko paamaal kar denay ka baa’is banega. Jis say hamein ibrat naak shikast say dochaar hona padega. Phir aap ne commandaron ko ijazat di woh aap kay paas andar aaye. Jab unho ne Taizar ko zameen par gira hua khoon mein lat pat dekha woh Hairat-o-Angusht-e-Badnidaan reh gaye.

General Qutaibah ne unsay kaha: Khauf-o-Haraas mein mubtala hone ki zaroorat nahi hai aur na hi koi tajjub ki baat hai.

Main ne aaj aik ghaddaar, Khaain aur dhokay baaz ko qatal kiya hai. Unho ne kaha: Ham to isay musalmanon ka khair khwah samajhte thay. General ne bataya ye muslamanon ka ghaddaar tha. Itna arsa yeh maar aasteen bana raha mujhe to aaj is ki asliyat ka pata chala aaj is ne aik aisa daao lagaane ki koshish ki agar main is kay chakkar mein aa jata to Lashkar-e-Islaam ko bhaari jaani maali nuqsan say do chaar hona padta, Allah ta’ala ne usey apne ghinone jurm ki saza di hai, Phir buland awaaz say kaha: Mere sher dil jawaanon! Dushman ka safaaya karne kay liye maidaan mein utro. Aik aisa zor daar hamlah karo jis say dushman kay paaon ukhad jayen. Aaj jurrat, Bahaduri aur zindah dili ki misaal qaaim kar do. Ummat-e-Islamiyah ki nigaahain tum par lagi hui hain. Namoos-e-Islaam ki kaamyabi kay liye aage badho. Fatah-o-Kaamrani tumhara muqarrar banne waali hai.


Lashkar-e-Islaam apne qaaid ka hukm paa kar dushman say nabard aazma hone kay liye maidan mein utra. Jab dono lashkar aamne saamne huye musalman dushman foj ki tayyari dekh kar ghabra gaye, General Qutaibah Bin Muslim ne haalaat ka jaiza letay huye jab Lashkar-e-Islaam mein phele huye Khauf-o-Haraas ka mushahidaa kiya to jawaan ko hausla denay kay liye maidaan mein tezi say chakkar lagaana shuru kiya. Jahan say guzarte aap ki mominaana shuja’at dekh kar mujahideen kay hausle buland ho jaate. Aik jagah ruk kar general ne chaaron taraf nazar daudaai aur pucha: Muhammad Bin Waase’ Azdi nazar nahi aa rahe woh kahan chale gaye? Mujahideen ne bataaya: Woh lashkar ki daayen jaanib khade hain.

Puchaa: Woh wahan kya kar rahe hain? Unho ne bataaya: Woh Duniya-o-Maafiha say beniyaaz apne naizay par tek lagaye nigaah upar uthaaye aasman ki taraf apni ungli say ishaara kar rahe hain. Yun maloom hota hai jaise ungli kay ishaare say Baargah-e-Ilaahi mein dushman ki tabaahi aur Lashkar-e-Islaam ki Fatah-o-Kaamrani ki apeel kar rahe hain.

Mujahideen ne pucha: Kya ham usey bula layen. General ne kaha: Nahi usey wahin apne haal meim mast rehnay dein. Phir farmaaya: Rabb-e-Kainat ki qasam mujhe us ki yeh ungli jo Allah ta’ala ki jaanib uthi hui hai un hazaar qeemti talwaaron say zyadah mehboob hai jo tajurba kaar, Taiz tarraar, Jihaad kay dhani naujawaanon kay hathon mein pakdi hui hon. Usey apni haalat meim chod do. Du’aa mein mashghool rehnay do. Woh bilashubah mustajaab ul dawat hain, Allah us ki du’aaen qubool karta hai.


Dono lashkar aamne saamne aaye, Woh aik doosary kay sath is tarah takraaye jaise samandar ki talaatum khaiz mojain aapas mein takraati hain. Mujahideen ne dat kar muqabla kiya, Allah ta’ala ne un kay dilon mein sakinat nazil ki. Yeh din bhar dushman par shamsheer zani aur teer andaazi karte rahe. Yeh silsilah badastoor shaam tak jaari raha. Shaam dhale dushman kay paaon ukhad gaye, Un kay dilon par betahasha ro’ab taari ho gaya. Woh peeth phair kar bhaag nikale. Mujahideen ne door tak un ka peecha kiya, Be-daraigh un ki gardanein udaain. Baa’z ko qaidi banaya aur jo baaqi bachay unhon ne fidiya ada kar kay sulah ka paighaam General Qutaibah ko bheja. Aur unho ne sulah par aamaadgi ka izhaar kar diya.


Qaidiyon mein aik shar pasand shakhs giraftaar ho kar aaya jo apni qaum ko muslamanon kay khilaaf bhadkaya karta tha.

Us ne general say kaha: Ameer-e-Lashkar main apna fidiya day kar qaid say aazadi chahta hoon, Aap ne pucha kya fidiya ada karoge? Usne kaha: Panch hazaar ghaz cheeni resham ka kapda. General ne lashkar kay Arbaab-e-Haal-o-Aqad say pucha tumhari kya raaye hai? Sabne kaha: Fidiya wasool kar kay isay chod diya jaye. Is Fatah-o-Kaamrani kay baad is qisam kay badqumash muslamanon ka kuch nahi bigaad sakenge, Us kapde say baitul maal mein qeemti cheez ka izafah hoga. Jis say muslamanon ko khatir khwah faidah pohchega.

General ne Muhammad Bin Waase’ Azdi say raaye talab ki. Unho ne farmaaya: Muslaman apne ghar say Maal-e-Ghaneemat ikattha karne kay liye nahi nikle aur na hi Maal-o-Doulat jama karna unka Maqasad-e-Hayaat hai, Woh to sirf Allah ki razaa haasi karne aur roye zameen par us ka hukm naafiz karne nikle hain. Meri raaye mein yeh shakhs kisi bhi waqat muslamanon kay liye khatarnaak saabit ho sakta hai. General Qutaibah Bin Muslim ne yeh baat sun kar kaha: Allah aap ko Jazaa-e-Khair ata kare. Allah ki qasam main kisi aisy shakhs ko mu’af nahi karunga jo kisi bhi tarah say musalmaan ko gazand pohanchay ki salaahiyat rakhta ho. Khwah woh puri duniya ka maal apne fidiya mein ada karne kay liye tayyar ho. Waqayi ham apne gharon say maal ikattha karne kay liye nahi nikle. Hamara asal kaam Allah kay deen ki sar bulandi aur A’adaa-e-Islaam ka mukammal khatma hai. Phir general ne us nahinjaar ko qatal karnay ka hukm saadir farmaaya.


Muhammad Bin Waase’ Azdi ka ta’alluq Banu Umaiyya kay Umra’a mein say sirf Yazeed Bin Muhallab aur Qutaibah Bin Muslim Baahli kay sath hi nahi raha. Balkeh inkay ilawah bhi kayi aik governor aur sarbraahon kay sath t’alluqaat rahe, Un mein sab say zyadah numaayan aur Qaabil-e-Rashk t’alluqaat Basrah kay governor Bilaal Bin Abi Burdah kay sath rahe.

Aik din oon ka mota khadra aur purana libaas pehnay governor kay paas aaye. Governor Bilaal ne pucha: Abu Abdullah aap ko aisa phata purana libaas pehn’nay ki kya zarurat hai?

Allah na kare koi aisi majboori hai?

Unhon ne governor ki baat suni an suni kar di aur us ka koi jawaab na diya. Unho ne ne dobara kaha: Abu Abdullah kya baat hai aap mujhe jawaab kyun nahi detay?

Farmaaya: Mujhe acha nahi lagta main apne aap ko zahid keh kar khud sataai ka irtikaab karoon aur na hi mujhe yeh pasand hai keh Faqr-o-Faaka ka izhaar kar kay apne Rab ka shikwah karun. Na main yeh andaaz ikhtiyar karna chahta hoon aur na woh. Governor ne pucha: Abu Abdullah koi zarurat ho to bataayen ham usey In sha Allah puri karenge.

Farmaaya meri aisi koi zarurat nahi jis ka sawaal main logon say karun.

Haan apne musalmaan bhai ki aik zarurat aap ki khidmat mein pesh karta hoon. Agar aap usey Allah ki tofeeq say pura kar dain to Qaabil-e-Sataaish honge aur agar pura na kar sakain to phir bhi aap par koi gila nahi balkeh aap ko m’aazoor samjha jayega.

Governor Bilaal ne kaha ham usey zaroor pura karenge. Irshaad farmaaye: Usey kya zarurat hai! Aap ne woh zarurat bata di jise usi waqt pura kar diya gaya.

Governor Bilaal ne pucha Qaza-o-Qadar kay baare mein aap ki kya raaye hai?

Farmaaya: Qayanat kay roz Allah ta’ala Qaza-o-Qadar kay mut’alliq sawaal nahi karega. Balkeh har aik se us kay amaal kay mut’alliq poocha jayega.

Governor yeh baat sun kar sharmindah hua aur khaamosh ho gaya abhi woh apni jagah par hi baitha tha keh dopeher kay khaane ka waqat ho gaya. Governor ne Muhammad Bin Waase’ ko khaane ki dawat di. Unhon ne dawat qabool karne say inkaar kar diya.

Usne bada hi zor lagaya lekin aap khaane kay liye aamadah na huye. Governor Bilaal ne naraaz ho kar kaha: Aye Abu Abdullah mere khayaal mein aap hamare khaane say koi luqma uthana makrooh samajhte hain.

Farmaaya: Nahi. Yeh baat qat’an nahi. Phir irshaad farmaaya: Aye Umraa Banu Umaiyya tum mein say jo behter hain woh hamein apni aulaad aur khandaan say bhi zyadah azeez hain. Khaane ki mujhe talab nahi warna zaroor aap kay sath khana tanawul karta.


Muhammad Bin Waase’ Azdi ko kayi baar qaazi ka ohda pesh kiya gaya lekin aap ne yeh mansab qabool karne say saaf inkaar kar diya aur us inkaar ki wajah say apne aap ko takleef mein mubtala karna gawara kar liya. Aik martabah Basrah ki police kay sar barah Muhammad Bin Munzir ne unhein apne paas bulaaya. Aap tashreef le gaye. Unho ne kaha: Iraq kay governor ka abhi abhi paighaam aaya hai ke main aap ko governor kay mansab par faaiz karoon.

Aap ne farmaaya: Mujhe yeh mansab pasand nahi main m’aafi chahta hoon. Allah ta’alaa aap par karam karay.

Usne do teen dafa apna mutaalba dohraya aur unhein majboor kiya keh qazaa ka mansab sambhal lain, Lekin aap ne badi shiddat say us ka inkaar kiya, Police kay sarbaraah ne tang aa kar kaha: Allah ki qasam aap ko yeh ohda qabool karna padega, warna main aap ko Sar-e-Aam koday laga kar ruswaa karoonga. Aap ne bade itminaan say farmaaya: Meray sath yeh sulook karna pasand karte hain to badi khushi say shoq pura kijye, Meray nazdeek duniya ki takleef aakhirat ki takleef say kahin behter hai. Police ka sarbarah yeh sun kar sharminda hua aur unhein Adab-o-Ahtraam aur Husn-e-Sulook say rukhsat kiya.


Basrah ki markazi Masjid mein Muhammad Bin Waase’ Azdi ki ilmi majlis Ilm-o-Hunar kay matwaalon kay liye Maljaa-o-Maawa aur Hikmat-o-Danish kay mutalaashion kay liye meetha chashma bani hui thi.

Tareekh-o-Siar ki kitaabain is majlis ki daastaan say bhari padi hain, Ahl-e-Majlis mein say aik shakhs ne kaha: Abu Abdullah! Mujhe nasihat kijye, Farmaaya: Main tujhe wasiyat karta hoon keh tu Duniya-o-Aakhirat ka baadshah ban jaa.

Sawaal karne waala hairaani say puchta hai keh yeh kaise ho sakta hai?

Farmaaya jo kuch logon kay qabzay mein duniya ka maal hai us say beniyaaz ho jao. To tum duniya kay badshaah ho gaye. Aur jo kuch Allah ta’ala kay haan aakhirat mein hai usey apne Husn-e-Amal say haasil karne ki koshish karo to aakhirat kay badshaah ban jaoge.

Ahl-e-Majlis mein say aik shakhs ne kaha: Janaab main aap say mohabbat karta hoon.

Farmaaya Allah aap say mohabbat karay. Jisne tujhe apni khaatir mujh say mohabbat karne ki taufeeq ‘ataa ki. Phir woh shakhs yeh kehta hua chala gya: Ilaahi main teri panaah chahta hoon keh meray sath teray liye mohabbat ki jaye, Aur tu mujh say naraaz ho. Ilaahi tu mujh say raazi ho ja meray gunah baksh de.


Muhammad Bin Waase’ Azdi jab bhi kisi ko apni Tareef-o-Tauseef bayaan kartay huye suntay to irshaad farmaaty: Agar gunahon ki boo mehsoos hoti to koi bhi shakhs meray qareeb na aa sakta kyunkeh main bohat bada gunehgaar hoon, Paapi hoon, Gunaahon ki daldal mein phansa hua hoon, Woh hamesha apne shaagirdon ko Quran-e-Majeed par amal karne aur uske saaya mein zindagi basar karne ki talqeen kiya karte thay.

Woh aksar farmaaya karte thay:

Quran-e-Majeed momin ka baagh hai, Us baagh mein jahan bhi koi farokash hoga usey khushboo aur taro taazgi mehsoos hogi, Is tarah woh hamesha kam khaane ki talqeen kiya karty thay, Woh aksar farmaaya karte thay keh jis ne kam khaya us ne Fahem-o-Faraasat, Aqal-o-Danish aur qalbi Ikhlaas-o-Riqqat mein mumtaaz maqaam haasil kiya, Khaane ki zyadati insaan ko bojhal bana deti hai aur insaani Ifkaar-o-Khayalat ko ghina deti hai.


Muhammad Bin Waase’ Azdi ne Taqwa-o-Taharat mein aik mumtaaz maqaam haasil kiya. Aik din bazaar mein unhein apna gadha farokht karte huye dekha gaya. Kisi ne pucha janaab kya aap yeh gadha meray liye pasand karte hain keh mein isay khareed loon? Farmaaya agar yeh gadha mujhe pasand hota to main isay bechta hi kyun.


Janaab Muhammad Bin Waase’ Azdi ne apni puri zindagi apne gunahon say dartay huye apne Rab kay saamne peshi kay shadeed ahsaas mein guzaar di. Aap say pucha gaya Abu Abdullah subah kaise guzri? Farmaaya: Apni maut ko qareeb samajhte huye Ummid-o-Beem ko ba’eed girdaantay huye apni bad aamali Pesh-e-Nazar rakhte huye subha guzaari, Jab yeh sawaal karne waalon kay chehron par Khauf-o-Haraas aur dehshat kay asaar dekhtay to farmaate aap ka us shakhs kay mut’alliq kiya khayaal hai jo har roz aakhirat ki taraf apni manzil ka aik marhala tay kar leta ho?


Hazrat Muhammad Bin Waase’ Azdi jab marz ul maut mein mubtala huye to ayaadat karne waalon ka aap kay ghar jamgatha ho gaya, Kasrat say log aa ja rahe thay aur bohat say aap kay ghar khade aur baithay thay.

Aap ne pehlu badal kar chehra apne azeez ki taraf kiya aur farmaaya:

Mujhe yeh baat bataao jab mujhe peshaani aur paaon say pakad kar ghaseeta jayega to yeh log mujhe koi faidah pohancha sakenge? Agar mujhe pakad kar Jahannum mein daala gaya to kya yeh log mujhe chuda sakain gay? Phir apne Rab say iltijaa karne lage.

Ilaahi main har us buray maqaam par jahan main zindagi mein khada thaa us say panaah chahta hoon.

Ilaahi har buri jaga jahan meri aamadoraft rahi us say panaah chahta hoon.

Ilaahi har bura amal jo main ne kiya aur har buri baat jo main ne kahi us say m’aafi ka talabgaar hoon, Ilaahi un tamaam gunahon ki talab dasta m’aafi chahta hoon teri izzat ka waasta mujhe m’aaf kar day, Mujh pe Nazar-e-Karam farmaa.

Main giraftaar ho kar teray huzoor pesh kiye jaane say pehle hi pur aman aur salaamti kay sath aap say mulaqaat ki dili tamanna rakhta hoon, Yeh kaha aur aap ki rooh Qafs-e-Unsari say parwaaz kar gayi.


Hazrat Muhammad Bin Waase’ Azdi kay mufassal Halaat-e-Zindagi maloom karnay kay liye darjzail kitaabon ka mutaal’a karain:

1: Tarikh-e-Bukhari                                                                           1/255
2: Tarikh-e-Shagir                                                                              1/318-319
3: Al Jarah wal Tadeel                                                                        8/113
4: Hilyat ul Awliya                                                                             2/345-357
5: Al Wafi Bil Wafayat                                                                      5/372
6: Tahzeeb ul Tahzeeb                                                                        9/499-500
7: Shazart ul Zahab                                                                             1/161
8: Tabaqat-e-Khalifa                                                                          215
9: Tahzeeb ul Kamal                                                                          1283

REFERENCE:
Book: “Hayat-e-Taba’een kay Darakhsha pahelo”
Taleef :  Dr. Abdur Rahman Rafat Al- Pasha.
Urdu Translation : By Professor Mehmood Ghaznofer

حضرت محمد بن واسع الازدی رضی اللّٰه عنہ

ہمراہ قتیبہ بن مسلم باھلی

محمد بن واسع ازدی کی وہ ایک انگلی جو اللّٰہ تعالیٰ کی جانب اٹھی ہوئی ہے ۔ ان ہزار قیمتی تلواروں سے زیادہ محبوب ہے ، جو تجربا گار ، تیز طرار ، جہاد کے دھنی نوجوانوں کے ہاتھوں میں پکڑی ہوئی ہوں ۔

(قتیبہ بن مسلم باھلی)

 

اب ٨٧ ہجری میں حیات مستعار کے دن گزار رہے ہیں – فخر لشکر اسلام عظیم فاتح جرنیل قتییہ بن مسلم باھلی لشکر جرار کی قیادت کرتا ہوا بخارا کی طرف پیش قدمی کر رہا ہے دل میں یہ عزم کیے ہوئے کہ مادراءالنہر کے باقیماندہ علاقہ جات کو فتح کر لیا جائے – نیز چین کے اطراف واکناف کو اپنے قبضے میں لیکر اس کے باشندوں پر ٹیکس عائد کیا جائے – جرنیل قتییہ بن مسلم ابھی دریائے آمو کو عبور کرنے بھی نہ پایا تھا کہ اہل بخارا کو خطرناک صورت حال کا علم ہو گیا, انھوں نے ہر طرف جنگ کے طبل بجا دئیے اور اپنے گردونواح آباد اقوام کو مدد کے لیے پکارا تو ہر رنگ, نسل , زبان اور مزہب کے حامل لڑاکا جوان جتھوں کی صورت میں انکے پاس پہنچنے لگے یہاں تک کہ ان کی تعداد لشکر اسلام سے کہیں زیادہ بڑھ گئی پھر یہ لوگ جنگی ہتھیاروں سے لیس ہو کر میدان میں نکلے اور لشکر اسلام کی پیش قدمی کے سارے راستے مسدود کر دئیے یہاں تک کہ جرنیل قتیبہ بن مسلم باھلی کے لیے یہ ممکن ہی نہ رہا کہ کسی جاسوس کو دشمن کی صفوں میں رخنہ اندازی کرنے کے لیے بھیج سکے اور نہ ہی ان میں سے کوئی فرد واپس آسکا جنہیں دشمن کی خفیہ کاروائیوں کی رپورٹ کے لیے پہلے سے وہاں بھیج رکھا تھا –


قتیبہ بن مسلم نے اپنے لشکر کے ہمراہ بلند شہر کے قریب مورچہ لگا لیا وہ یہاں جم کر بیٹھ گئے –

دشمن ہر روز صبح سے شام تک ان کے قدم اکھاڑنے کے لیے کوشاں رہتا جب شام ہو جاتی تو اپنا سا منہ لے کر واپس اپنے محفوظ اور مضبوط قلعوں میں جا کر پناہ گزیں ہو جاتا, یہ صورتحال مسلسل دو ماہ تک جاری رہی جرنیل قتیبہ بن مسلم بھی بڑے پریشان تھے, انہیں کچھ پتا نہیں چل رہا تھا کہ کیا کریں آگے بڑھیں یا پیچھے ہٹ جائیں – اس صورتحال سے پوری ملت اسلامیہ پریشان تھی, ہر جگہ ہر گھر میں یہی چرچا تھا کہ جرنیل قتیبہ بن مسلم لشکر اسلام کے ہمراہ دشمن کے نرغے میں ہے کسی محاذ سے وہ ناکام نہیں لوٹا تھا اور نہ ہی وہ کبھی دشمن کے آگے سرنگوں ہوا تھا –
تمام گورنروں نے اپنے زیر اثر صوبہ جات میں عوام الناس سے اپیل کی کہ مادراءالنہر میں گھرے ہوئے لشکر اسلام کی فتح یابی کے لیے ہر نماز کے بعد خلوص دل سے دعا کریں – لہذا مسجدیں بندگان خدا کی دعاوں سے گونج اٹھیں – مساجد کے مینار نمازیوں کی گڑگڑاہٹ آہ و زاریوں اور سسکیوں سے گونج اٹھے – آئمہ کرام ہر نماز میں دعائے قنوت پڑھنے لگے لشکر اسلام کو کمک پہنچانے کے لیے خلق کثیر محاز پر جانے کے لیے آمادہ ہوئی اور ان سب کے آگے جلیل القدر تابعی محمد بن واسع ازدی مجاہدانہ شان و شوکت سے جا رہے تھے – ہر ایک کے دل میں ایک ہی امنگ تھی کہ لشکر اسلام کو دشمن کے نرغے سے نکال کر دم لیں گے –

جرنیل قتیبہ بن مسلم کا ایک عجمی نثراد جاسوس عقل و دانش, فہم و فراست اور تدبیرو سیاست میں مشہور تھا- اس کا نام تیزر تھا دشمن نے اس کے ساتھ رابطہ کیا مال و دولت کا لالچ دے کر اس کو ور غلایا کہ وہ اپنی ذہانت کو بروئے کار لا کر لشکر اسلام کو نا قابل تلافی نقصان پہنچائے, اور ایسی کوئی تدبیر بروئے کار لائے کہ مسلمان لڑے بغیر ہمارا علاقہ چھوڑ کر واپس چلے جائیں –


مال و دولت کی پیش کش کو دیکھ تیزر کے مونہہ میں پانی آگیا آنکھیں چندیا گئیں – وہ سیدھا جرنیل قتیبہ بن مسلم باھلی کے پاس گیا – اس کے ہاں مسلم کمانڈروں کی میٹنگ ہو رہی تھی – وہ بے دھڑک اجازت لیے بغیر جرنیل کے پہلو میں جا بیٹھا پھر جھک کر اس کے کان میں کہا :
امیر لشکر اگر ہو سکے تو اجلاس کو ابھی ختم کر دیں – آپ سے میں نے بڑی خفیہ اور ضروری بات کرنی ہے جرنیل نے اہل مجلس کو چلے جانے کا اشارہ کیا, لیکن ضرار بن حصین کو اپنے پاس روک لیا –
تیزد جاسوس نے بڑے راز دارانہ انداز میں جرنیل سے کہا:
جناب میرے پاس آپ کے لیے بہت اہم خبریں ہیں –
جرنیل نے کہا:
جلدی کیجئے بتائیے کون سی خبریں ہیں –
تیزر نے کہا امیرالمئومنین نے گورنر حجاج بن یوسف کو معزول کر دیا ہے –

اور اس کے ساتھ ان تمام کمانڈروں کو بھی معزول کر دیا ہے جو اس کے تابع فرمان ہیں – اور معزول کیے جانے والوں میں آپ کا نام بھی آتا ہے-
 نئے کمانڈروں کو نامزد کر دیا گیا- اور وہ اپنے منصب سنبھالنے کے لیے دارالحکومت دمشق سے روانہ ہو چکے ہیں – آپ کی جگہ لینے کے لیے بھی ایک کمانڈر صبح و شام پہنچنے والا ہے- میرا مشورہ یہ ہے کہ آپ لشکر اس علاقے سے واپس لے جائیں یہاں سے کہیں دور جا کر از سر نو کوئی پروگرام ترتیب دیں یہ آپ کے لیے بہتر ہو گا – ورنہ آپ کو ناقابل تلافی نقصان سے دوچار ہونا پڑے گا –


تیزر اپنی بات ابھی پوری کرنے پایا ہی تھا کہ جرنیل قتیبہ بن مسلم نے جلاد کو حکم دیا کہ اس دھوکے باز, غدار اور خائن کی گردن اڑا دو- اس نے حکم کی تعمیل کرتے ہوئے چشم زدن میں اس کی گردن اڑادی- جرنیل قتیبہ بن مسلم نے اپنے پاس بیٹھے ضرار بن حصین سے کہا :
دیکھو رؤے زمین پر میرے اور تیرے سوا کسی کو یہ خبر نہیں میں رب کائنات کا قسم کھا کر کہتا ہوں کہ اگر لڑائی ختم ہونے سے پہلے کسی کو تم نے بتایا تو تیرا انجام بھی اس دھوکے باز جیسا ہو گا – اگر کوئی ایسا خیال بھی دل میں آجائے تو زبان بند رکھنا – خوب اچھی طرح جان لو اس راز کا افشا لشکر کی طاقت کو پامال کر دینے کا باعث بنے گا – جس سے ہمیں عبرتناک شکست سے دو چار ہونا پڑے گا – پھر آپ نے کمانڈروں کو اجازت دی وہ آپ کے پاس اندر آئے جب انہوں نے تیزر کو زمین پر گرا ہوا خون میں لت پت دیکھا وہ حیرت استعجاب سے انگشت بدنداں رہ گے-

جرنیل قتیبہ نے ان سے کہا :
خوف و ہراس میں مبتلا ہونے کی ضرورت نہیں اور نہ ہی کوئی ایسی تعجب کی بات ہے –
میں نے آج ایک غدار , خائن اور دھوکے باز کو قتل کیا ہے – انہوں نے کہا, ہم تو اسے مسلمانوں کا خیر خواہ سمجھتے تھے – جرنیل نے بتایا, یہ مسلمانوں کا غدار تھا اتنا عرصہ یہ مار آستین بنا رہا مجھے تو آج اس کی اصلیت کا پتہ چلا آج اس نے ایک ایسا داؤ لگانے کی کوشش کی اگر میں اس کے چکر میں آجاتا تو لشکر اسلام کو بھاری جانی مالی نقصان سے دوچار ہونا پڑتا, اللّٰہ تعالی نے اسے اپنے گھناؤ نے جرم کی سزا دی ہے, پھر بلند آواز سے کہا –
میرے شیر دل جوانو!
دشمن کا صفایا کرنے کے لیے میدان میں اترو – ایک ایسا زور دار حملہ کرو جس سے دشمن کے پاؤں اکھڑ جائیں- آج جرات, بہادری اور زندہ دلی کی مثال قائم کردو – امت اسلامیہ کی نگاہیں تم پر لگی ہوئی ہیں- ناموس اسلام کی حفاظت کے لیے آگے بڑھو فتح و کامرانی تمہارا مقدر بننے والی ہے –


لشکر اسلام اپنے قائد کا حکم پا کر دشمن سے نبرد آزما ہونے کے لیے میدان میں اترا جب دونوں لشکر آمنے سامنے ہوئے مسلمان دشمن فوج کی تعداد اور تیاری دیکھ کر قدرے گھبرائے , جرنیل قتیبہ بن مسلم نے حالات کا جائزہ لیتے ہوئے جب لشکر میں پھیلے ہوئے خوف و ہراس کا مشاہدہ کیا

تو جوانوں کو حوصلہ دلانے کے لیے لشکر میں تیزی سے چکر لگانا شروع کیا جہاں سے گزرتے- آپ کی مومنانہ شجاعت کو دیکھ کر مجاہدین کے حوصلے بلند ہو جاتے – ایک جگہ رک کر جرنیل نے چاروں طرف نظر دوڑائی اور پوچھا :
محمد بن واسع ازدی نظر نہیں آ رہے وہ کہاں چلے گئے مجاہدین نے بتایا :
وہ لشکر کی دائیں جانب کھڑے ہیں –
پوچھا: وہ وہاں کیا کر رہے ہیں انہوں نے بتایا وہ دنیا و فیما سے بے نیاز اپنے نیزے پر ٹیک لگائے نگاہیں اوپر اٹھائے آسمان کی طرف اپنی انگلی سے اشارہ کر رہے ہیں – یوں معلوم ہوتا ہے جیسے انگلی کے اشارے سے بارگاہ الٰہی میں دشمن کی تباہی اور لشکر اسلام کی فتح و کامرانی کی اپیل کر رہے ہیں – مجاہدین نے پوچھا :
کیا ہم اسے بلا لائیں –
جرنیل نے کہا :
نہیں اسے وہیں اپنے حال میں مست رہنے دیں پھر فرمایا رب کائنات کی قسم مجھے اس کی یہ انگلی جو اللّٰہ تعالیٰ کی جانب اٹھی ہوئی ہے ان ہزاروں قیمتی تلواروں سے زیادہ محبوب ہے جو تجربہ کار, تیز طرار جہاد کے دھنی نوجوانوں کے ہاتھوں میں پکڑی ہوئی ہوں – اسے اپنی حالت میں چھوڑ دو – دعا میں مشغول رہنے دو – وہ بلاشبہ مستجاب الد عوات ہیں, اللّٰہ تعالیٰ اس کی دعائیں قبول کرتا ہے –


دونوں لشکر آمنے سامنے آئے, وہ ایک دوسرے کے ساتھ اس طرح ٹکرائے جیسے سمندر کی طلاطم خیز موجیں آپس میں ٹکراتی ہیں –

مجاہدین نے ڈٹ کر مقابلہ کیا, اللّٰہ تعالیٰ نے ان کے دلوں پرسکینت نازل کی –
یہ دن بھر دشمن پر شمشیرزنی اور تیراندازی کرتے رہے – یہ سلسلہ بدستور شام تک جاری رہا – شام ڈھلے دشمن کے پاؤں اکھڑ گئے, ان کے دلوں پر بے تحاشا رعب طاری ہو گیا – وہ پیٹھ پھیر کر بھاگ نکلے مجاہدین نے دور تک ان کا پیچھا کیا, بے دریغ ان کی گردنیں اڑائیں – بعض کو قیدی بنایا اور جو باقی بچے انہوں نے فدیہ ادا کر کے صلح کا پیغام جرنیل قتیبہ کو بھیجا اور انہوں نے صلح پر آمادگی کا اظہار کر دیا –


قیدیوں میں سے ایک شرپسند شخص گرفتار ہو کر آیا جو اپنی قوم کو مسلمانوں کے خلاف بھڑکایا کرتا تھا – اس نے جرنیل سے کہا,
امیر لشکر میں اپنا فدیہ ادا کر کے قید سے آزادی چاہتا ہوں, آپ نے پوچھا کیا فدیہ ادا کرو گے,
اس نے کہا :
پانچ ہزار گز چینی ریشم کا قیمتی کپڑا جرنیل نے لشکر کے ارباب حل و عقد سے پوچھا تمہاری کیا رائے ہے :
سب نے کہا :
فدیہ وصول کر کے اسے چھوڑ دیا جائے :
اس فتح و کامرانی کے بعد اس قسم کے بد قماش مسلمان کا کچھ نہیں بگاڑ سکیں گے اس کپڑے سے بیت المال میں ایک قیمتی چیز کا اضافہ ہو گا- جس سے مسلمانوں کو خاطر خواہ فائدہ پہنچے گا –
جرنیل نے محمد بن واسع ازدی سے رائے طلب کی انہوں نے فرمایا :
مسلمانوں اپنے گھروں سے مال غنیمت اکٹھا کرنے کے لیے نہیں نکلے اور نہ ہی مال و دولت جمع کرنا ان کا مقصد حیات ہے, وہ تو صرف اللّٰہ کی رضا حاصل کرنے اور روئے زمین پر اس کا حکم نافد کرنے کے لیے نکلے ہیں

میری رائے میں یہ شخص کسی وقت بھی مسلمانوں کے لیے خطر ناک ثابت ہو سکتا ہے – جرنیل قتیبہ بن مسلم نے یہ بات سن کر کہا :
اللّٰہ آپ کو جزائے خیر عطا کرے. اللّٰہ کی قسم میں کسی ایسے شخص کو معاف نہیں کروں گا جو کسی بھی مسلمان کو گزند پہنچانے کی صلاحیت رکھتا ہو خواہ وہ پوری دنیا کا مال اپنے فدیہ میں ادا کرنے کے لیے تیار ہو واقعی ہم اپنے گھروں سے مال اکھٹا کرنے کیلئے نہیں نکلے:
ہمارا اصل کام اللّٰہ کے دین کی سر بلندی اور اعدائے اسلام کا مکمل خاتمہ ہے پھر جرنیل نے اس ناہنجار کو قتل کرنے کا حکم صادر فرمایا –

                 


محمد بن واسع ازدی کا تعلق بنو امیہ کے امراء میں سے صرف یزید بن مہلب اور قتیبہ بن مسلم باھلی کے ساتھ ہی نہیں رہا – بلکہ ان کے علاوہ بھی کئی ایک گورنروں اور سربراہوں کے ساتھ تعلقات رہے , ان میں سب سے زیادہ نمایاں اور قابلِ رشک تعلقات بصرہ کے گورنر بلال بن ابی بردہ کے ساتھ رہے –
ایک دن اون کا موٹا کھردار اور پھٹا پرانا قمیص پہنے گورنر کے پاس آئے – گورنر بلال نے پوچھا ابو عبداللّٰہ ایسا پھٹا پرانا قمیص پہننے کی آپ کو کیا ضرورت ہے ؟
اللّٰہ نہ کرے کیا کوئی ایسی مجبوری ہے ؟
انہوں نے گورنر کی بات سنی ان سنی کر دی اور اس کا کوئی جواب نہ دیا –

اس نے دوبارہ کہا :
ابو عبداللّٰہ کیا بات ہے آپ مجھے جواب کیوں نہیں دیتے ؟
فرمایا مجھے اچھا نہیں لگتا کہ میں اپنے آپ کو زاہد کہہ کر خود ستائی کا ارتکاب کروں اور نہ ہی مجھے یہ پسند ہے کہ فقروفاقہ کا اظہار کر کے اپنے رب کا شکوہ کروں نہ میں یہ انداز اختیار کرنا چاہتا ہوں اور نہ ہی وہ – گورنر نے پوچھا:
ابو عبداللّٰہ کوئی ضرورت ہو تو بتائیں ہم اسے انشاءاللّٰہ پوری کریں گے –
فرمایا میری ایسی کوئی ضرورت نہیں جس کا سوال میں لوگوں سے کروں-
ہاں اپنے مسلمان بھائی کی ایک ضرورت آپ کی خدمت میں پیش کرتا ہوں – اگر آپ اسے اللّٰہ کی توفیق سے پورا کر دیں گے تو قابل ستائیش ہونگے اور اگر پورا نہ کرسکیں تو پھر بھی آپ پر کوئی گلہ نہیں بلکہ آپ کو معزور سمجھا جائیگا –
گورنر بلال نے کہا ہم اسے ضرور پورا کریں گے – ارشاد فرمائیے اسے کیا ضرورت ہے ؟
آپ نے وہ ضرورت بتا دی جسے اسی وقت پورا کر دیا گیا –
گورنر بلال نے پوچھا قضاوقدر کے بارے میں آپ کی کیا رائے ہے-
فرمایا قیامت کے روز اللّٰہ تعالیٰ قضاوقدر کے متعلق سوال نہیں کریگا-

بلکہ ہر ایک سے اس کے اعمال کے متعلق پوچھا جائیگا – گورنر یہ جواب سن کر شرمندہ ہوا اور خاموش ہو گیا ابھی وہ اپنی جگہ پر ہی بیٹھا تھا کہ دوپہر کے کھانے کا وقت ہو گیا – گورنر نے محمد بن واسع کو کھانے کی دعوت دی –
انہوں نے دعوت قبول کرنے سے انکار کر دیا –
اس نے بڑا ہی زور لگایا لیکن آپ کھانے کے لیے آمادہ نہ ہوئے- گورنر بلال نے ناراض ہو کر کہا :
اے ابو عبداللّٰہ میرے خیال میں آپ ہمارے کھانے سے کوئی لقمہ اٹھانا مکروہ سمجھتے ہیں –
*فرمایا:*
نہیں یہ بات قطعا نہیں – پھر ارشاد فرمایا –
اے امراء بنی امیہ تم میں سے جو بہترین وہ ہمیں اپنی اولاد اور خاندان سے بھی زیادہ عزیز ہیں – کھانے کی مجھے طلب نہیں ورنہ ضرور آپ کے ساتھ کھانا تناول کرتا-

                   


محمد بن واسع ازدی کو کئی مرتبہ قاضی کا عہدہ پیش کیا گیا لیکن آپ نے یہ منصب قبول کرنے سے صاف انکار کر دیا اور اس انکار کی وجہ سے اپنے آپکو تکلیف میں مبتلا کرنا گوارہ کر لیا – ایک مرتبہ بصرے کی پولیس کے سربراہ محمد بن منزر نے انہیں اپنے پاس بلایا – آپ تشریف لے گئے اس نے کہا :
عراق کے گورنر کا ابھی ابھی پیغام آیا ہے کہ میں آپ کو قاضی کے منصب پر فائز کروں-
آپ نے فرمایا مجھے یہ منصب پسند نہیں میں معافی چاہتا ہوں اللّٰہ تعالیٰ آپ پر کرم کرے-

اس نے دو مرتبہ اپنا مطالبہ دھرایا اور انہیں مجبور کیا کہ قضا کا منصب سنبھال لیں, لیکن آپ نے بڑی شدت سے اس کا انکار کیا پولیس کے سربراہ نے تنگ آکر کہا :
اللّٰہ کی قسم آپ کو یہ عہدہ قبول کرنا پڑے گا, ورنہ میں آپ کو سرعام کوڑے لگا کر رسوا کروں گا – آپ نے بڑے اطمینان سے فرمایا میرے ساتھ یہ سلوک کرنا پسند کرتے ہیں تو بڑی خوشی سے شوق پورا کیجئے, میرے نزدیک دنیا کی تکلیف آخرت کی تکلیف سے کہیں بہتر ہے – پولیس کا سربراہ یہ جواب سن کر شرمندہ ہوا, اور انہیں ادب و احترام اور حسن سلوک سے رخصت کیا –


بصرہ کی مرکزی مسجد محمد بن واسع ازدی کی علمی مجلس علم و ہنر کے متوالوں کے لیے ملجا و ماوی اور حکمت و دانش کے متلاشیوں کے لیے میٹھا چشمہ بنی ہوئی تھی –
تاریخ و سیر کی کتابیں اس مجلس کی داستان سے بھری پڑی ہے, اہل مجلس میں سے ایک شخص نے کہا, ابو عبداللّٰہ مجھے کوئی نصیحت کیجئے, فرمایا میں تجھے وصیت کرتا ہوں کہ تو دنیا و آخرت کا بادشاہ بن جا –
سوال کرنے والا حیرانی سے پوچھتا ہے جناب یہ کیسے ہو سکتا ہے ؟
فرمایا جو کچھ لوگوں کے قبضے میں دنیا کا مال ہے اس سے بے نیاز ہو جاؤ- تو تم دنیا کے بادشاہ ہو گے – اور جو کچھ اللّٰہ تعالیٰ کے ہاں آخرت میں ہے اسے اپنے حسن عمل سے حاصل کرنے کی کوشش کرو تو آخرت کے بادشاہ بن جاؤ گے –

اہل مجلس میں سے ایک شخص نے کہا جناب میں آپ سے محبت کرتا ہوں – فرمایا اللّٰہ آپ سے محبت کرے جس نے تجھے اپنی خاطر مجھ سے محبت کرنے کی توفیق عطا کی – پھر وہ شخص یہ کہتا ہوا چلا گیا الٰہی میں تیری پناہ چاہتا ہوں کہ میرے ساتھ تیرے لیے محبت کی جائے, اور تو مجھ سے ناراض ہو الٰہی تو مجھ پہ راضی ہو جا میرے گنا بخش دے-


محمد بن واسع ازدی جب بھی کسی کو اپنی تعریف و توصیف بیان کرتے ہوئے سنتے تو ارشاد فرماتے اگر گناہوں کی بو محسوس ہوتی تو کوئی شخص بھی میرے قریب نہ آسکتا کیونکہ میں بہت بڑا گنہگار ہوں, پاپی ہوں , گناہوں کی دلدل میں پھنسا ہوا ہوں, وہ ہمیشہ اپنے شاگردوں کو قرآن مجید پر عمل کرنے اور اس کے سایہ میں زندگی بسر کرنے کی تلقین کیا کرتے تھے –
وہ اکثر فرمایا کرتے تھے –
قرآن مجید مومن کا باغ ہے, اس باغ میں جہاں بھی کوئی فروکش ہو گا اسے خوشبو اور تروتازگی محسوس ہو گی, اس طرح وہ ہمیشہ کم کھانے کی تلقین کیا کرتے تھے وہ اکثر فرمایا کرتے تھے جس نے کم کھانا کھایا اس نے فہم و فراست عقل و دانش اور قلبی اخلاص و رقت میں ممتاز مقام حاصل کیا, کھانے کی زیارتی انسان کو بوجھل بنا دیتی ہے اور انسانی افکار و خیالات کو گہنا دیتی ہے –

محمد بن واسع ازدی نے تقوی و طہارت میں ایک ممتاز مقام حاصل کیا- ایک دن بازار میں انہیں اپنا گدھا فروخت کرتے ہوئے دیکھا گیا – کسی نے پوچھا جناب کیا یہ گدھا آپ میرے لیے پسند کرتے ہیں کہ میں اسے خرید لوں فرمایا :
اگر یہ گدھا مجھے پسند ہوتا تو اسے بیچتا ہی کیوں –


جناب محمد واسع ازدی نے اپنی پوری زندگی اپنے گناہوں سے ڈرتے ہوئے اپنے رب کے سامنے پیشی کے شدید احساس میں گزار دی – آپ سے پوچھا گیا ابو عبداللّٰہ صبح کیسے گزری؟
فرمایا اپنی موت کو قریب سمجھتے ہوئے امید و بیم کو بعید گردانتے ہوئے اور اپنی بد عملی کو پیش نظر رکھتے ہوئے صبح گزاری جب یہ سوال کرنے والوں کے چہروں پر خوف و ہراس اور دہشت کے آثار دیکھتے تو ارشاد فرماتے آپ کا اس شخص کے متعلق کیا خیال ہے؟
جو ہر روز آخرت کی طرف اپنی منزل کا ایک مرحلہ طے کر لیتا ہو؟


جب حضرت محمد واسع ازدی مرض الموت میں مبتلا ہوئے تو عیادت کرنے والوں کا آپکے گھر جمگھٹا ہو گیا, کثرت سے لوگ آجا رہے تھے, اور بہت سے آپ کے گھر کھڑے اور بیٹھے تھے –

آپ نے پہلو بدل کر چہرہ اپنے عزیز کی طرف کیا اور فرمایا:
مجھے یہ بات بتاؤ جب مجھے پیشانی اور پاؤں سے پکڑ کر گھسیٹا جائیگا تو یہ لوگ مجھے کوئی فائدہ نہیں پہنچا سکیں گے اگر مجھے پکڑ کر جہنم میں ڈالا گیا تو کیا یہ لوگ مجھے چھڑا سکیں گے؟
پھر اپنے رب سے التجا کرنے لگے-
الٰہی میں ہر اس برے مقام پر جہاں میں زندگی میں کھڑا ہوا تھا اس سے پناہ چاہتا ہوں-
الٰہی ہر بری جگہ جہاں میری آمدورفت رہی اس سے پناہ چاہتا ہوں –
الٰہی ہر برا عمل جو میں نے کیا اور ہر بری بات جو میں نے کہی اس سے معافی کا طلب گار ہوں, الٰہی ان تمام گناہوں کی دست بستہ معافی چاہتا ہوں تیری عزت کا واسطہ مجھے معاف کر دے, مجھ پر نظر کرم فرما-
میں گرفتار ہو کر تیرے حضور پیش کیے جانے سے پہلے ہی پر امن اور سلامتی کے ساتھ آپ سے ملاقات کی دلی تمنا رکھتا ہوں, یہ کہا اور آپ کی روح قفص عنصری سے پرواز کر گئی –


حضرت محمد بن واسع ازدی کے مفصل حالات زندگی معلوم کرنے کے لیے درج ذیل کتابوں کا مطالعہ کریں –

١- تاریخ بخاری ٢٥٥/١
٢- تاریخ صغیر. ٣١٨/١- ٣١٩
٣- الجرح والتعدیل ١١٣/٨
٤- حلیتہ الاولیاء. ٣٤٥/٢- ٣٥٧
٥- الوافی بالوفیات ٣٧٢/٥
٦- تہزیب التہزیب ٤٩٩/٩-٥٠٠
٧- شزرات الزھب ١٦١/١
٨- طبقات خلیفہ ٢١٥
٩- تہزیب الکمال ١٢٨٣

 

حوالہ:
“کتاب: حَياتِ تابِعِين کے دَرخشاں پہلوُ”
تالیف: الاستاذ ڈاکتور عبد الرحمان رافت الباشا
ترجمه: محمود غضنفر

 

Table of Contents